Dil Hai Ke Manta Nahi Novel By Faiza Ahmed – Episode 1

0
دل ہے کہ مانتا نہیں از فائزہ احمد – قسط نمبر 1

–**–**–

” ایم سی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جو ببل چیونگم چباتے ہوئے جینز میں ہاتھ ڈالے اور بیگ کو کندھے سے لٹکائے کالج کے مین اینٹرس سے داخل ہو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔اپنی نام کے پکار پر رکی اور دائیں سائیڈ دیکھا جہاں اس کی بیسٹ فرینڈ کرن اس کی ہی طرف چلی آرہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کہا ہوا مومنہ نے اسکی پریشان صورت دیکھ کر پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”تم چلو میرے ساتھ پھر بتاتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔کرن نے اس کا ہاتھ پکڑ کرکینٹین کی طرف لے جاتے ہوئے کہا” ۔۔۔۔۔۔۔۔اب بولو بھی۔۔۔۔۔منہ پر بارہ کیوں بجائے ہوئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔منہ نے ٹانگ پر ٹانگ رکھ کر بیٹھتے ہوئے کرن سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار ڈیڈ نہیں مان رہے ۔۔۔۔۔خضر کے لیے ۔۔۔کرن نے آنکھوں میں نمی لیے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اف مجھے لگا پتا نہیں کیا ہوا ہو گیا ۔۔۔۔۔میں پہلے سے ہی جانتی تھی کہ انکل نہیں مانے گئے ۔۔۔مومنہ نے چیونگم کا ببل پھوڑتے ہوئے لاپرواہی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں تمہارے لیے یہ اتنا بڑا مسلہ نہیں ہے لیکن میرے لیے یہ زندگی اور موت کا مسلہ ہے ۔۔۔۔کرن نے ہاتھ کی انگلیاں مڑورتے ہوئے پریشان سے لہجے میں کہا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا پریشان نا ہو میں ہوں نا ۔۔۔۔۔۔تمہاری شادی جب بھی ہو گئی خضر سے ہی گئی آئی پرومس یو ۔۔۔۔۔سو ریلکس رہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے ویٹر کو اشارا کر کے اپنی طرف بلاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”خوش کردیا یار آج کی پارٹی میری طرف سے ۔۔۔۔۔۔خضر نے چیئر پر بیٹھتے ہوئے جوش سے کہا کیونکہ مومنہ کو سب جانتے تھے کہ وہ اگر ایک بار پرومس کردے تو پھر اسے پورا کر کے ہی چھوڑتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے دونوں کو گھورتے ہوئے ویٹر کو فریش جوس لانے کو کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے تم دونوں کو محبت وغیرہ کے چکر میں نہیں پڑنا چاہئے تھا مومنہ نے اپنے گردن تک آتے بالوں کو ہاتھوں سے سنوارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں ؟۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں نے اس سر پھری کو گھورتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سٹینڈ لینے کی ہمت جو نہیں ہے تم دونوں میں، اور چلیے ہیں محبت کرنے ۔۔۔۔۔مومنہ نے ٹرے سے اورنج جوس کا گلاس پکڑتے ہوئے انہیں چڑایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں نے منہ بنایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار میں اپنے گھر والوں کو تو منا ہی لوں گا ۔۔۔۔۔۔لیکن کرن کے گھر والے مانے تو نا ۔۔۔۔۔۔۔خضر نے بھی جوس کا گلاس منہ سے لگاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ابو دوسری برادری میں شادی کے خلاف ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اس معاملے میں کسی کی نہیں سنتے ۔۔۔۔۔ردا نے پریشانی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اف چھوڑ دو تم دونوں مجھے اب اور بور کرنا ۔۔۔۔۔اور اٹھو کلاس میں چلیں ۔۔۔۔۔پہلا پریڈ تو تم دونوں میرا مس کروا ہی چکے ہو اب اور کی گنجائش نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے بیگ کندھے پر رکھتے ہوئے دونوں کو اٹھانے کا اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”وہ دونوں بھی اس کے ساتھ اٹھے اور کلاس کی طرف بڑھے ۔۔۔۔۔۔وہ تینوں فورتھ ائیر کے سٹوڈنٹ تھے ۔۔۔۔۔۔۔اور تینوں ہی رچ فیملی سے بیلونگ کرتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خضر ایک خوش شکل شرارتی نوجوان تھا ۔۔۔۔”کرن مومنہ کی فرینڈ خوبصورت شکل وصورت کی مالک تھی ۔۔۔۔۔جس کے بال گردن تک ہی تھے ۔۔۔۔ خضر اور کرن دونوں ایک دوسرے کو پسند کرتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”جبکہ مومنہ ۔۔۔۔جسے سب ایم سی کہتے تھے گندمی رنگت اور تیکھے نقوش کی مالک تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بال کبھی گردن سے نیچے نہیں آئے تھے لمبے بالوں سے اسے ویسے ہی چڑ تھی ۔۔۔۔۔وہ تینوں ایورج سٹوڈینٹ تھے ۔۔۔۔۔۔اور تینوں ہمیشہ ایک ساتھ ہی پائے جاتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔مومنہ باسکٹ بال پلیئر تھی ۔۔۔۔۔۔جو باسکٹ بال کو جنون کی حد تک کھیلتی تھی ۔۔۔۔اور ہمیشہ جیتتی بھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔وہ ہمیشہ تنگ جینز پر لوز شرٹ پہنے رہتی تھی ۔۔۔۔۔قمیض شلوار میں آج تک کبھی کسی نے اسے نہیں دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یونیورستی میں اس نے سبھی کو باور کروایا ہوا تھا کہ سب اسے ایم سی کہیں ۔۔یعنی مومنہ چوہدری”
آپ پریشان ہیں ۔۔۔۔۔۔اس نے بیک پر ہاتھ باندھتے ہوئے پریشان سے بیٹھے چوہدری الیاس سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم ،نہیں تو آو بیٹھو ۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس نے سنبھلتے ہوئے اسے بیٹھنے کا اشارا کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیوں پریشان ہیں ۔۔۔۔اس نے انکے سامنے بیٹھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”تمہیں کیسے پتا چل جاتا ہے کہ میں پریشان ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس نے شفقت سے اسے دیکھتے ہوِے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔وہ ہلکا سا مسکرایا ۔۔۔۔۔آپ جانتے تو ہیں میں آپ کو کبھی بھی پریشان نہیں دیکھ سکتا ۔۔۔۔۔۔اس لیے جلدی سے سے بتائں اپنی پریشانی کی وجہ ۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے سنجیدگیطسے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مومنہ کی وجہ سے ہوں ۔۔۔۔۔۔۔الیاس صاحب نے ماتھا مسلتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں جانتا تھا وہی وجہ ہوں گئی ۔۔۔۔۔۔۔اس نے ماتھے پر پڑے بال انگلیوں سے پیچھے کرتے ہوئےکہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ملک صفدر کا فون آیا تھا ۔۔۔۔۔۔دھمکی دی ہے اس نے ۔۔۔۔۔الیاس صاحب نے بے بسی سے کہا “۔۔۔۔۔۔کیسی دھمکی ۔۔۔۔۔اس کی یہ جرت کہ میرے ہوتے ہوئے وہ آپ کو دھمکی دے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے چیئر سے کھڑے ہوتے ہوئے غصے سے بھر پور لہجے میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پارس میں اسی لیے تمہیں نہیں بتا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔بابا چوہدری ۔۔۔۔۔۔۔میں آپکا خادم اور مخافظ ہوں اور میرے ہوتے ہوئے کوئی آپ کو دھمکی دے میں یہ کبھی براداشت نہیں کروں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے ان کے قدموں میں بیٹھ کر اخترام سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے ہمیشہ اپنا بیٹا ہی مانا ہے تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔انہوں نے اس کے کندھے کو تھامتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔”لیکن خقیقت تو یہی ہے نا کہ میں آپ کے ملازم کا بیٹا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے خقیقت پسندی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پارس ۔۔۔۔۔۔انہوں نے اسے تنبیہی گھوری سے نوازا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس مسکرایا ۔۔۔۔۔۔۔اچھا بتائیں کیا چاہتے ہیں آپ ۔۔۔۔۔۔۔۔اُس نے اٹھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔”میں کوئی رسک نہیں لینا چاہتا تم جاو اور مومنہ کو خود لے آو ۔۔۔۔۔مجھے تمہارے علاوہ کسی اور پر زرا بھی اعتبار نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس نےاسے غور سے دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کا خکم سر آنکھوں پر لے آوں گا میں انہیں آپ پریشان مت ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے سنجیدگی سے انہیں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اس بار مومنہ آتی ہے تو اسے اپنے پیار کے جال میں پھانسو ۔۔۔۔۔میں نے خود سنا ہے بابا چوہدری اس نوکر(پارس) سے کہہ رہے تھے کہ وہ مومنہ کی جلد ہی شادی کرنا چاہتے ہیں ۔۔۔۔۔عفت نے اپنے لاپروا سے بیٹے کو گھورتے ہوئے کہا ۔۔۔جو صوفے پر لیٹا ایپل کھانے کے ساتھ ساتھ انکی باتیں بھی سن رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور آپ کی بھانجی کا کیا ہو گا ہوں۔۔۔۔۔۔۔زین نے بھنویں اچکاتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شادی تو تمہاری میری بھانجی سے ہی ہو گئی ۔۔۔۔۔لیکن پہلے مومنہ سے کروں گئی ،ایک بار بس اسکی ساری جائیداد ہماری ہو جائیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عفت نے لالچ سے کہتے ہوئے اسے باور کرویا کہ شادی تو صرف اس کی عائلہ سے ہی ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔زین نے نفی میں سر ہلاتے ہوئے ایپل کا بڑا سا بائیٹ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔جبکہ عفت اب کچھ اور ہی سوچنے میں مصروف تھی۔۔۔۔۔”
مومنہ باسکٹ بال کھیل رہی تھی جب اسے نانو کا فون آیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔جی نانو ۔۔۔۔۔اس نے پھولی ہوئی سانسوں کو درست کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومی تم باز نہیں آو گئی۔۔۔۔پھر سے باسکٹ بال کھیل رہی ہو ۔۔۔۔۔۔ابھی ایک ہفتہ پہلے تمہیں کھیلتے ہوئے چوٹ لگئی تھی اور اب پھر سے ۔۔۔۔۔۔لیکن سنتی کب ہو تم کسی کی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا ۔۔۔۔۔۔مومنہ کھلکھلائی ۔۔۔۔۔۔نانو آپ بھی نا ۔۔۔۔۔۔یار میں کھیلوں تو ٹھیک رہتی ہوں لیکن اگر نا کھیلوں تو بیمار ہو جاتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے بینچ پر بیٹھتے ہوئے شرارتی لہجے میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا کل پارس آئے گا تمہیں لینے تین بجے تک ۔۔۔تیاری کر لینا تم ۔۔۔۔۔۔کیاااا ۔۔۔میں نہیں آوں گئی ابھی ایک ہفتہ پہلے ہی تو آئی ہوں ۔۔۔۔مومنہ نے منہ بسورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بس میری طبیعت تھوڑی ٹھیک نہیں تھی تو تمہیں دیکھنا چاہتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن خیر تم منع کر رہی تو کوئی بات نہیں جیسے تمہاری مرضی ۔۔۔۔۔۔۔۔انہوں نے مصنوعی لاچار آواز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے آپ کو بی پی تو ٹھیک ہے نا ۔۔۔۔۔میں کل خود آکر چیک کروں گئی آپ کو آپ تو اپنا بلکل خیال نہیں رکھتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے بینچ پر سے کھڑے ہو کر پریشانی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس مسکرائے اور دل ہی دل میں خود کو داد دی اتنی اچھی ایکٹینگ کرنے پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ورنہ مومنہ کو منانا بھینس کے آگے بین بجانے جیسا ہی تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“آپ بیس منٹ پندرا سیکنڈ لیٹ ہیں ۔۔۔۔۔۔میں کوئی آپ کا باڈی گارڈ نہیں جو سارا دن کھڑا آپ کا ویٹ کرتا رہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے ہاتھ پر باندھی واچ پر ٹائم دیکھتے ہوئے سنجیدگی سے کہا۔۔۔۔”ہاں بلکل باڈی گارڈ نہیں ہو. . . لیکن ملازم تو ہو نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے تیکھے چتونوں سے اس گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔”
پارس اسے اگنور کیے جا کر گاڑی میں بیٹھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔او ہیلو بیٹھ کہاں رہے ہو یہ لیگج کون اٹھائے گا ۔۔۔۔ہاں ۔۔۔۔۔۔اس نے کمر پر ہاتھ رکھ کر خاکمانہ لہجے میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری آپ خود اٹھائیں ۔۔۔۔میں آپ کا ملازم نہیں چوہدری بابا کا ملازم ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے گاڑی کو سٹارٹ کرتے ہوئے بے تاثر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے اسے غصے سے گھورا ۔۔۔۔۔جو بلیک سوٹ جس کے بازو کہنیوں تک موڑے ہوئے ،براون چادر کندھوں پر رکھے اپنی شفاف گندمی رنگت میں وہاں کھڑی کئی لڑکیوں کے دلوں کو دھڑکا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔”مومنہ نے اسے دل میں ہزاروں گالیوں سے نوازتے ہوئے اپنا سامان گاڑی کی پچھلی سیٹ پر رکھا سامان بھی کیا تھا صرف ایک ہینڈ کیری ۔۔. ۔۔۔۔۔۔۔آپ پیچھے بیٹھیں ۔۔۔۔اُس نے اسے گاڑی کا اگلا دروازہ کھولتے دیکھ کر سنجیدگی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔ میں آج تک پیچھے نہیں بیٹھی ہوں۔۔۔۔۔۔اور ویسے بھی یہ گاڑی میرے نانو کی ہے میں جہاں مرضی بیٹھوں میری مرضی ۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے بے نیازی سے کہتے ہوئے آنکھوں پر نظر کا چشمہ لگایا اور اندر بیٹھی اور بے نیازی سے سامنے دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پارس نے سنجیدگی سے سر ہلایا جسے اس کے نانو کے لاڈ پیار نے کچھ زیادہ ہی بیگاڑ دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے سوچتے ہوئے گاڑی ڈرائیو کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن تبھی گاڑی پر گولیوں سے حملہ کیا گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مومنہ کی چیخ پوری گاڑی میں گونجی تھی۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: