Dil Hai Ke Manta Nahi Novel By Faiza Ahmed – Last Episode 2

0
دل ہے کہ مانتا نہیں از فائزہ احمد – آخری قسط نمبر 2

–**–**–

گولیاں گاڑی کے ٹائر اور شیشوں پر برسائی گئی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔پارس نے جلدی سے کانوں پر ہاتھ رکھے چیختی ہوئی مومنہ کو اپنی طرف کھینچ کر نیچے کی طرف جھکایا تھا۔۔۔۔۔۔اور جلدی سے اپنی گن نکالی ۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں ہوگا آپ کو ریلکس رہیں ۔۔۔۔۔۔پارس نے کہہ کر اٹھ کر باہر کی طرف فائر کیا ۔۔۔۔۔۔ان لوگوں نے جلدی سے گاڑی نکالی ان کا مقصد صرف انہیں ڈرانا تھا مارنا نہیں۔۔۔۔۔۔پارس گاڑی سے باہر نکلا لیکن تب تک وہ لوگ گاڑی نکال لے گئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے موبائیل نکالا اور کسی کو فون ملایا ۔۔۔۔۔۔عدیل ایک گاڑی کا نمبر نوٹ کرو ۔۔۔۔۔۔اور اس میں ایک بھی آدمی مجھے زندہ سلامت نہیں چاہئے ۔۔۔۔۔۔۔اور اگر کوئی سلامت رہا تو تم سلامت نہیں رہو گئے سمجھے ۔۔۔۔۔۔پارس نے غصے سے کہہ کر فون بند کیا اور گاڑی کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ ابھی بھی نیچے جھکی ہلکا ہلکا کانپ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ ٹھیک ہیں ۔۔۔۔۔پارس نے اس کے پاس جھک کر تشوش سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے غصے سے سر اٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔تم کسی کام کے نہیں ہو ۔۔۔۔ایسے خفاظت کرو گئے تم میری ہاں ۔۔۔۔۔۔۔اگر مجھے کچھ ہوجاتا تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے اس کے کندھے کو جھنجھور کر پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے گہری سانس خارج کی ۔۔۔۔۔۔آپ بلکل ٹھیک ہیں کچھ نہیں ہوا آپ کو۔۔۔۔۔۔۔پارس نے جیسے اسے باور کروایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے اسے اگنور کر کے گاڑی سٹارٹ کی ۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ غصے سے پیچ و تاب کھا کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے تیز ڈرائیونگ کرتے ہوئے ایک گھنٹے میں گاوں پہنچ چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ سفر میں کبھی پریشانی سے ادھر ادھر دیکھتی کہ کوئی انکے پیچھے تو نہیں ۔۔۔۔۔۔پھر اسے دیکھتی جو ہونٹ بھینچے ڈرائونگ کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
وہ کب سے چوہدری الیاس کے گلے لگی رورہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس سامنے ہاتھ باندھے کھڑا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس بھی کرو مومی کیوں رو رہی ہو جانتی ہو نا نانو کو تمہارے آنسو تکلیف دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔نانو وہ لوگ آخر کب میرا پیچھا چھوڑیں گئے ایک ہی دفعہ مار دیں تاکہ یہ روز روز کا تماشا تو ختم ہو نا ۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے انکی شال سے ناک منہ صاف کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔پارس نے اس کی اس عادت کو کوفت سے دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مومنہ میری بچی آپ ٹھیک تو ہو نا ۔۔۔۔۔مجھے تو ابھی تمہارے ماموں نے بتایا ہے ۔۔۔۔۔۔۔میرا تو سن کر کلیجہ ہی منہ کو آگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عفت نے اس گلے لگاتے ہوئے مصنوعی فکر مندی جتائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مامی میں ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے دوبارہ نانو کے کندھے پر سر رکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے تم کیا کر رہے تھے ہاں بچی کو اگر کچھ ہو جاتا تو ۔۔۔۔۔۔عفت نے اسے گھورتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔جس کے ماتھے پر بل پڑے تھے عفت کی بات پر ۔۔۔۔۔۔۔عفت تم ایسا کرو سیدہ سے کہہ کر کھانا لگواوں مومی کو بھوک لگی ہو گئی۔۔۔۔۔۔الیاس صاحب نے بات کو بدلتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔عفت نے بظاہر تو سر ہلایا لیکن دل میں وہ پیچ و تاب کھا کر رہ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
اف یار اور نہیں کھیل سکتا میں ۔۔۔۔زین نے گھٹنوں پر ہاتھ رکھ ہانپتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا بڑھکیں تو بڑی مار رہے تھے (میں آج تمہیں ہرا کر رہوں گا ) مومنہ نے کمر پر ہاتھ رکھیں زین کی نقل اتاری ۔۔۔۔۔۔۔۔زین نے اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا تو تمہیں کھیلنے کے علاوہ اور آتا بھی کونسا کام ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زین نے کھڑے ہوتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ بلیک ٹروزر اور ریڈ شرٹ میں ملبوس ابھی اسے کرارا سا جواب دینی ہی والی تھی۔۔۔۔کہ وہ چونکی تھی حویلی میں پولیس کی دو وین آتے ہوئے دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اور زین خیرت سے پولیس کو وین سے نکلتا ہوا دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔جب پارس نے آکر پولیس کو وہی روکے کچھ کہہ ر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ پولیس کیوں آئی ہے یار زین نے مومنہ سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس نے ناسمجھی سے کندھے اچکائے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔بی بی آپ کمرے میں چلی جائیں ۔۔۔۔۔۔۔تب ہی وہاں ایک ملازم نے آکر مومنہ سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔کیوں ؟۔۔۔۔۔مومنہ نے سینے پر ہاتھ باندھ کر تیکھے انداز میں پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی وہ پارس نے کہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جبکہ زین بھی اب پارس کے پاس کھڑا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے اسے گھورا اور پولیس وین کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔جب پارس نے جلدی سے اس کی طرف آکر اسکی کلائی پکڑی اور کمرے کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ خیرت سے اس کے ساتھ کھینچتی چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے اس کے کمرے کے دروازے کے باہر اس کا ہاتھ چھوڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ غصے سے اسکی طرف پلٹی ۔۔۔۔۔۔۔۔how can u do this,ہمت کیسے ہوئی تمہاری میرا ہاتھ پکڑنے کی ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے غصے سے اس کے قریب ہوتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری بات کا جواب دو ملازم ہو تو ملازم ہی رہو ۔۔۔۔۔۔وہ جو اسے اگنور کیے جانے ہی والا تھا ۔۔۔۔۔مومنہ نے اس کے سامنے آتے ہوئے غصے سے پیچ وتاب کھاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کمرے سے باہر مت نکلیے گا ۔۔۔۔۔۔پارس اسے انگلی سے وارننگ دیتا چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔ہاہ۔۔۔۔۔۔مومنہ نے خیرانی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔تمہاری تو میں آج نانو سے شکایت لگواتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ پیر پٹختی ہوئی کمرے کمرے میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
پولیس کیوں آئی تھی آج ۔۔۔۔۔۔۔۔ملک فائق نے چائے کا گھوںٹ لیتے ہوئے پریشان بیٹھے چوہدری الیاس سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ مومنہ کی کسٹڈی کا دعوا کر دیا ہے ان لوگوں نے ۔۔۔۔۔۔۔۔ چوہدری الیاس نے ٹھنڈی چائے کا گھونٹ لیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو یہ اتنا بڑا مسلہ نہیں ہے مومنہ بالغ ہے وہ اپنا فیصلہ خود کر سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔ملک فائق نے اپنے دوست کی پریشانی کم کرنی چاہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ملک صفدر نے دھمکی دی ہے یا تو ہم مومنہ کو ان کے خوالے کر دیں یا پھر وہ مومنہ کو کڈنیپ کروا لے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس نے اپنی پیشانی کو مسلتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم ،ایک مشورا دوں تمہیں اگر تمہیں برا نا لگے تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ملک فائق نے باہر کھڑے فون پر بات کرتے ہوئے پارس کو غور سے دیکھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہو یار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”تمہاری بات کا کب برا مانا ہے میں نے جو اب مانوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”چوہدری الیاس نے اپنے جگری دوست کو محبت سے دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یار مومنہ کی شادی کردو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہمم میں بھی یہی سوچ رہا تھا لیکن یار کوئی اچھا لڑکا بھی تو ملے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس نے پریشانی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر غور سے اپنے آس پاس دیکھو تو شاید لڑکا دھونڈھنے کی تمہیں ضرورت نہ پڑے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مطلب ۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس نے الجھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔سامنے دیکھو اور بتاو یہ لڑکا اپنی مومی کے لیے کیسا رہے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدر الیاس نے الجھتے ہوئے سامنے دیکھا جہاں دور پارس گارڈن میں کھڑا فون پر کسی سے بات کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”چوہدری الیاس نے چونک کر ملک فائق کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہارا مطلب ہے پارس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں یار تم خود سوچو ان لوگوں نے مومی کو کتنی بار مقصان پہنچانے کی کوشش کی لیکن ہر بار انہیں پارس کی وجہ سے منہ کی کھانی پڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ملک فائق نے چوہدری الیاس کو دلائل دئیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار لوگ کیا سوچیں گئے۔۔۔۔۔۔اور مومی تم جانتے تو پارس اسے ایک آنکھ نہیں باتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور تم شادی کی بات کر رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہم مومی کی شادی پارس سے عارضی طور پر کریں گئے جب ہمیں کوئی اچھا سا اس کی خفاظت کرنے والا ملے گا تو ہم یہ شادی ختم کر دیں گئے تم اس بارے میں پارس سے بات کر لینا۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں لیکن مومی کو مت بتانا اس کنٹریکٹ میرج کے بارے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار یہ ٹھیک نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔اس طرح دو دو زندگیاں برباد ہوں گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس نے پریشانی سے کہا…………..”سوچ لو ۔۔۔۔۔پھر آگے تمہاری مرضی ۔۔۔۔۔۔۔۔ملک فائق نے پارس کو اندر آتے دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
پارس تم فارغ ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس نے اس کا دروازہ نوک کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔جی آئیے آپ کے لیے میں فارغ ہی ہوں ۔۔۔۔۔اس فائل کو بند کرتے اخترام سے کھڑے ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے ڈسٹرب تو نہیں کیا تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پلیز بابا چوہدری آپ اتنے فارمل کب سے ہو گئے ہیں۔۔۔۔۔پارس نے انہیں اپنے جگہ دیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آج اگر میں تم سے کچھ مانگوں تو دو گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔چویدری الیاس نے ہچکچاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آپ کے لیے تو میری جان بھی خاظر ہے۔۔۔۔۔پارس نے ان کے قدموں میں بیٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔چوہدری الیاس نے نظریں جھکاتے ہوئے سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔وہ مجبور تھے اپنی نواسی کی محبت میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
مومنہ بارش میں باہر رات کے 9 بجے باسکٹ بال کھیل رہی تھی جب اس نے زور سے بال کو کک ماری جو باہر آتے پارس کے پیروں سے ٹکڑایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔پارس نے اپنے پیروں میں گری بال کو دیکھا اور پھر ایک نظر بارش میں بھیگے کپڑوں میں ملبوس مومی کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔جو اسے گھورتے ہوئے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے اس کی ڈریسنگ کو نا پسندگی سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر
بابا چوہدری کی آواز اس کے کانوں میں گونجی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کو رات کے اس وقت اختیاط کرنی چاہیئے۔۔۔۔۔۔۔پارس نے ارد گرد دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بات سنو تم اپنی اوقات میں رہنا سیکھو ۔۔۔۔مومنہ نے اس کی آنکھوں میں آنکھیں ڈالتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے ایز یو وش ۔۔۔کھیلیں پھر آپ باہر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے لاپراہی سے کندھے اچکاتے ہوئے کہا” ۔۔۔۔۔۔۔۔نانو نے اسے کچھ زیادہ ہی سر چڑہایا ہوا ہے ۔۔۔۔مومنہ نے منہ بناتے ہوئے سوچا ۔۔۔۔۔۔۔۔پارس اب کچن کی طرف بڑھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ بھی کچن کی طرف بڑھی تاکہ دیکھے کیا کر نے گیا وہ اس وقت کچن میں ۔۔۔۔۔۔۔۔پارس کچن میں کوکنگ رینج کے پاس کھڑا چائے بنا رہا تھا جب وہ اندر آئی”۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے بھی چائے چاہئے ۔۔۔۔۔مومنہ نے بال کو اوپر کی طرف اچھالتے ہوئے اسے خکم دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری میں ملازم ہوں ۔۔۔۔۔۔ماسٹر شیف نہیں ۔۔۔۔۔۔اس نے چائے کو مگ میں ڈالتے ہوئے بے تاثر انداز میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے لیے بنائی ہے تو میرے لیے بھی بنادو ۔۔۔۔۔۔مومنہ نے گھور کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔پارس نے اسے ایک نظر دیکھا اور پھر اسے اپنا چائے کا کپ پکڑا کر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مومنہ نے خیرت سے ایک نظر اسکی پشت کو دیکھا اور پھر بھاپ اڑھاتی چائے کو ۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
ختم شد
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: