Harma Naseeb Na Thay By Huma Waqas – Last Episode 18

0
حرماں نصیب نہ تھے از ہماوقاص – آخری قسط نمبر 18

–**–**–

سوٸ نہیں ابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے بھنویں اچکا کر کہا۔۔۔ اور سامنے بیڈ پر بیٹھی ندوہ کی طرف دیکھا۔۔۔۔
آپ کا ویٹ کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے محبت بھری مسکراہٹ چہرے پر سجا کر مدھر سی آواز میں کہا۔۔۔
تارز تانیہ اور حبان کو خوب تنگ کرنے کے بعد اب کمرے میں آیا تھا ۔۔۔ اور اس کی امید کی بلکل برعکس ندوہ نہ صرف جاگ رہی تھی بلکہ پورے اعتماد کے ساتھ بیٹھی مسکرا رہی تھی۔۔۔۔
اچھا میرا ۔۔۔۔ وہ کیوں۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے چہرے پر امڈ آنے والی خوشی پر قابو پایا اور مسکراہٹ دبا کر کہا۔۔۔۔
بات جو کرنی تھی۔۔۔ کیا سنیں گے آپ ۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے مسکراہٹ دبا کر بلش ہوتے ہوۓ کہا۔۔۔۔
تارز کے چہرے پر چھپی ہوٸ خوشی اور دبی مسکراہٹ دل کو گدگدانے اور شرارت بڑھانے کا سبب بن رہی تھی ۔۔۔
کیا کہنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے چہرے پر زبردستی کی سنجیدگی طاری کرتے ہوۓ کہا۔۔۔
ندوہ نےشرما کر چہرہ نیچے کیا تھا۔۔۔۔ وہ بھی آج اس ادکار کو اپنی ادکاری کے جوہر دکھا رہی تھی۔۔۔۔
افف یہ شرمانا۔۔۔۔۔۔ تارز نے دھیرے سے اپنے دھڑکتے دل پر ہاتھ رکھا تھا۔۔۔ یہ وہ لمحہ تھا جس کا برسوں انتظار کیا تھا۔۔۔۔۔ ندوہ بھی کہے کہ وہ اس سے محبت کرتی ہے ۔۔۔اور آج وہ لمحہ آن پہنچا تھا۔۔۔۔
کہو ۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز اس کے جھکے چہرے پر محبت بھری نظر گاڑتا ہوا آگے بڑھا تھا۔۔۔ جبکہ لب جاندار مسکراہٹ کے زیر اثر تھے۔۔۔
وہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے دونوں ہاتھوں کی انگلیوں کو آپس میں پھنسایا تھا۔۔ اور لب کا ایک کونا دانتوں میں دبایا۔۔۔۔
تارز اس کے اس انداز پر دل مسوس کر رہ گیا تھا۔۔۔ کر بھی دے اظہار۔۔۔۔۔۔ اب بس ہوٸ پڑی۔۔۔۔۔ دل کی بڑھتی رفتار کانوں کے پردے پھاڑنے لگی تھی۔۔
میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ندوہ نے لرزتی پلکوں کے ساتھ گھٹی سی آواز میں کہا۔۔۔
تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تارز نے خمار آلودہ آواز میں کہا۔۔۔ وہ اس کے رک جانے پر بھرپور طریقے سے مسکرا رہا تھا۔۔۔۔۔
میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ چاہ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے ایک دم سے جھکا چہرہ اوپر اٹھایا تھا۔۔۔
وہ جو محبت سے دانت نکالے اس کی طرف دیکھ رہا تھا ۔۔ فورا منہ بند کیا۔۔۔
ندوہ نے بمشکل ابھرتے قہقے پر قابو پایا تھا۔۔۔
کیا۔۔۔۔۔….. تارز نے خجل ہو کر کان کھجایا۔۔۔
کہنا یہ تھا آپ پرسوں چلے جاٸیں لاہور ۔۔۔ میری تو یونیورسٹی میں ابھی دو ہفتے اور آف چل رہا تو وہ بھی میں یہاں تانیہ اور پھپھو کے ساتھ گزار کر آنا چاہتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے روانی سے کہا جبکہ آنکھیں شرارت سے چمک رہی تھیں اور لب بھر پور طریقے سے مسکراہٹ دبا رہے تھے۔۔۔۔
کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے پوری آنکھیں پھیلا کر منہ کھلا چھوڑا تھا۔۔۔ جبکہ ماتھے پر ایک دم سے عجیب سے بل نمودار ہوۓ تھے۔۔۔۔۔ بھنویں اپنی جگہ سے اوپر ہوٸ تھیں۔۔
جی۔۔۔۔۔ کیوں کیا ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوی نے معصوم سی شکل بنا کر پلکوں کو جھپکایا تھا۔۔۔ اور چہرہ ایسے انجان بنایا جیسے اس کی غیر ہوتی حالت کو جانتی تک نہ ہو۔۔۔۔
تم نے یہ بات کرنی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے دانت پیس کر آنکھیں نکالتے ہوۓ کہا۔۔۔۔
ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے انجان بن کر کندھے اچکاۓ۔۔۔۔
نہ۔۔۔نہیں کوٸ ضرورت نہیں چلو میرے ساتھ ہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے ایک دم سے گڑ بڑا کر غصے سے کہا۔۔۔
دل ڈوب گیا تھا۔۔۔ تو کیا اس نے محبت کا اظہار نہیں کرنا تھا۔۔ اور دو ہفتے اور یہاں رکنا چاہتی ۔۔۔ دماغ خراب ہے کیا اس کا۔۔۔ تارز نے دانت پیستے ہوۓ سوچا تھا۔۔۔
میں نے اجازت تو نہیں مانگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نےاس کی حالت سے محزوز ہوتے ہوۓ کہا۔۔۔
تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے پھر حیرانی سے منہ پھلا کر دیکھا تھا۔۔۔
میں نے تو صرف بتایاہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے بچوں کی طرح کندھے اچکا کر کہا۔۔۔
اچھا اب اپنی جگہ پر جاٸیں نیند آ رہی۔۔۔۔۔۔۔۔ مصنوعی مصروف سی شکل بنا کر ندوہ نے کہا اور اپنا کمبل اس کے نیچے سے کھینچا جو خوشی میں اس کے پاس اس کے کمبل پر ہی آ کر بیٹھ گیا تھا۔۔۔
تارز حیران پریشان سی شکل بنا کر اٹھا تھا لب کچلتا ہوا پر سوچ انداز میں وہ اپنی جگہ کی طرف آیا تھا۔۔۔
تو کیا اس نے محبت کا اظہار نہیں کرنا تھا۔۔۔۔۔۔ کیوں ایسے کیسے ۔۔۔ وہ بے دلی سے اسے دیکھ رہا تھا جو اب مزے سے آنکھیں موند کر چت لیٹی ہوٸ تھی۔۔۔چہرہ بھی بلکل پر سکون تھا۔۔۔ جو تارز کو اور بے چین کر رہا تھا۔۔۔۔
عروہ سے تو کہہ رہی تھی بہت محبت کرتی ہے مجھ سے ۔۔۔ اظہار کے طریقے پوچھ رہی تھی ۔۔ تو یہ سب ۔۔۔ ایک دم سے تارز کا ناک اور منہ بچوں کی طرح پھول گیا تھا ۔۔۔
تیزی سے آگے ہو کر ندوہ کے بازو کو پکڑ کر اس کا رخ اپنی طرف موڑا۔۔۔وہ جو پرسکون انداز میں آنکھیں موندے دل ہی دل میں مسکرا رہی تھی سٹپٹا کر آنکھیں کھولیں تھیں۔۔۔
تم رہ کر دکھانایہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے ناک پھلا کر دانت پیستے ہوۓ کہا۔۔۔
ندوہ کو وہ جی جان سے پیارا لگ رہا تھا اس وقت پر کیا کرتی جناب کی ادکاری کے وار آج جناب پر ہی چلانے تھے۔۔۔۔۔۔
ہا۔۔۔۔۔۔آپ لے جا کر تو دکھاٸیں ۔۔۔ اچھی دھونس ہوٸ یہ۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے بھی مصنوعی غصہ دکھاتے ہوۓ کہا۔۔۔
تمہیں ۔۔۔ یہی بات کرنی تھی مجھ سے صرف۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے بچارگی سے امید کی ایک کرن کو تھامتے ہوۓ کہا تھا۔۔۔
رات گزرے جا رہی تھی۔۔۔ اور وہ ظالم اظہار بھی نہیں کر رہی تھی ۔۔۔ دل تو چاہ کہ زبردستی ہی اظہار کرا ڈالے ۔۔۔ پر پھر وہ لمحہ جس کے لیے یہ سب کیا۔۔۔
بلکل۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے آنکھیں سکیڑ کر کہا اور تھوڑا سا پیچھے ہوٸ ۔۔۔
تارز اتنا قریب تھا کہ دل کی رفتار پر قابو پانا مشکل ہو رہا تھا اور ابھی وہ کمزور پڑنا نہیں چاہتی تھی۔۔۔
اب سونے دیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز کو ایک ہاتھ سے تھوڑا سا پیچھے کرتی ہوٸ۔۔۔ وہ مسکراہٹ دبا کر لیٹی تھی اور فورا منہ پر کمبل تان کر بھر پور انداز میں مسکرا دی تھی۔۔۔
افف بہت تنگ کر رہی ہوں نہ۔۔۔۔ لب دانتوں میں دبا کر محبت سے سوچا۔۔۔۔
تارز کچھ دیر الجھن میں وہیں بیٹھا رہا پھر خود سے الجھتا ہوااپنی جگہ پر لیٹ چکا تھا۔۔۔۔
***************
ندوہ میرے ساتھ ہی جاۓ گی۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے امیلٹ منہ میں رکھتے ہوۓ رعب سے کہا تھا۔۔۔ اور کن اکھیوں سے کھانے کے میز پر بیٹھے سب لوگوں کو دیکھا۔۔۔
کیوں۔۔۔۔۔۔۔ آرام سے بیٹھو تم ۔۔۔ جب سے شادی ہوٸ ہے تمھارے ساتھ ہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سیما نے خفگی سے گھورتے ہوۓ کہا۔۔۔
وہ جب تک سو کر اٹھا ندوہ پورے گھر والوں کو اپنے ساتھ ڈرامے میں شامل کر چکی تھی۔۔۔اب ناشتے کے میز پر سب لوگ تارز کو تنگ کر کے محزوز ہو رہے تھے۔۔۔۔
مما میرے اتنے کام ہوتے وہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے بے چارگی سے ماتھے پر بل ڈال کر سیما سے کہا۔۔۔
تارز بھاٸ ۔۔۔۔ میں اور امی غیر ہیں کیا ۔۔۔ پچھلے پورے ہفتے کتنا خیال رکھا آپکا ۔۔۔۔۔۔۔۔ حدفہ نے مصنوعی خفگی دکھاتے ہوۓ کہا۔۔۔
میں یہ بات نہیں کر رہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز ایک دم سے گڑ بڑا گیا تھا سب لوگ ندوہ کا ساتھ دے رہے تھے اور وہ بھی بچوں کی طرح معصوم سی شکل بناۓ سب میں ایسے مظلوم بنی بیٹھی تھی جیسے وہ کوٸ جلاد نما شوہر ہوتا۔۔۔
تو پھر بر خوردار صبر کرو ۔۔۔ کچھ نہیں ہوتا ۔۔۔ ہماری بہو ہے ۔۔۔ اور اتنی رونق ہے اس کے ساتھ گھر میں۔۔۔۔۔۔۔ ابتہاج نے اہنی بھاری آواز میں ڈانٹنے کے سے انداز میں کہا ۔۔۔ اور پیار سے ساتھ بیٹھی ندوہ کے سر پر ہاتھ پھیرا۔۔۔
اتنے دن سے آپ لوگوں کے پاس ہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے سر نیچے کرتے ہوۓ بڑبڑانے کے انداز میں کہا۔۔۔
سب لوگوں نے ایک دوسرے کی طرف شرارت سے دیکھا اور مسکراہٹ دباٸ۔۔۔
سب کو پھرکی کروانے والا آج خود سب کے چکر میں بری طرح پھنسا بیٹھا تھا ۔۔۔ ایک ہفتہ ندوہ کے بنا اتنی مشکل سے گزارا تھا اب پھر دو ہفتے ۔۔۔۔۔۔۔۔
تارز نے چہرہ اوپر اٹھا کر دانت پیستے ہوۓ ندوہ کی طرف دیکھا جو اب بڑے لاڈ سے سیما کے ساتھ لگی بیٹھی تھی اور چور نظر سے مسکراہٹ دباتی اسے دیکھ رہی تھی ۔۔جو بے حال ہوا جا رہا تھا۔۔تارز کی بے تابی اس کے دل پر گدگدی کر رہی تھی۔۔۔۔
تارز ۔۔۔ میرے لیے رک رہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ تانیہ نے مدھم سی آواز میں سب کی باتوں میں اپنا حصہ ڈالا تھا۔۔۔۔
تانیہ بھابھی آپ لوگوں کو ایک دوسرے کو ٹاٸم دینا چاہیے ۔۔۔ نٸ نٸ شادی ہوٸ ہے۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے چہرے پر زبردستی مسکراہٹ لا کر تانیہ کی طرف دیکھتے ہوۓ کہا۔۔۔
توبہ ہے کیسا اتاولا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کشور نے دوپٹہ منہ میں دبا کر کہا۔۔۔
سب لوگ زور زور سے ہنسنے لگے تھے۔۔۔۔۔
پھپھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جس سے یہ سب سیکھا نام لے دوں پھر۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے آنکھ کا کونا دبا کر کشور کی طرف شرارت سے دیکھا۔۔۔۔
آۓ ۔۔۔۔ ہاۓ ۔۔۔۔۔ کمبخت مارے پھپھی ہوں تیری شرم کر بخش دے مجھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کشور نے ہاتھ جوڑ کر شرماتے ہوۓ کہا۔۔۔
سب لوگوں کے قہقے سے گھر گونج اٹھا تھا۔۔۔۔
ندوہ ۔۔۔۔ پیکنگ کرو ۔۔۔ پھر رات کو ولیمے کے بعد اتنی تھکاوٹ ہو گی پیکنگ نہیں ہو گی۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے ڈھیٹ بن کر پھر سے ندوہ کو حکم چلانے کے انداز میں کہا۔۔۔
ندوہ نے روہانسی شکل بنا کر ابتہاج کی طرف دیکھا تھا۔۔۔۔
ندوہ ۔۔۔۔ کوٸ ضرورت نہیں بیٹا۔۔۔ اس کو دیکھ لوں گا میں ۔۔۔۔۔۔۔ابتہاج نے رعب دار آواز میں کہا۔۔۔
ٹھیک ہے پھر ۔۔۔ تارز کرسی غصے سے کھسکا کر اٹھا تھا۔۔۔
نانا ابو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز پیر پٹختا ہوا داٶد کو آوازیں دیتا وہاں سے نکلا تھا۔۔۔
اس کے جاتے ہی سب کے قہقے فضا میں گونجے تھے۔۔۔۔تانیہ بھی تارز کی پارٹی چھوڑ کر ندوہ کے ساتھ مل گٸ تھی۔۔۔
**************
کیا ہے تمہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے دانت پیس کر قریب ہو کر کہا تھا۔۔۔
آپکو کیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے چھوٹی سی ناک چڑھا کر چڑانے کے انداز میں کہا۔۔۔
تمہیں سارا پتا ہے مجھے کیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے خفگی سے منہ پھلایا18
ولیمے کے بعد سب لوگ گھر آ چکے تھے ۔۔۔کیونکہ کل سب رشتہ داروں کی واپسی تھی تو آج سب کزنز نےمل کر رتجگے کا پروگرام بنایا تھا۔۔۔ ولیمے کی تقریب میں تو تارز اتنا مصروف رہا کہ ندوہ ہاتھ نہیں آٸ تھی ۔۔۔ صبح اس نے موباٸل نکالنے کے الماری کا لاکر کھولا تو وہاں کچھ بھی نہیں تھا۔۔۔ندوہ کا زیور پڑا تھا۔۔۔۔ کچھ دیر سوچنے کے بعد اسے سب سمجھ آنے لگا تھا۔۔اب گھر آ کر وہ فارغ ہو کر اسے تلاش کرتا ہوا یہاں آیا تھا تو سب مل کر بیٹھے تھے ۔۔۔ بڑے ایک طرف گپ شپ کر رہے تھے اور چھوٹے سب ایک طرف شور مچا رہے تھے۔۔۔
کمرے میں کیوں نہیں آ رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے پھر سے ندوہ کے کان میں سرگوشی کی ۔۔۔۔
ارے کیوں۔۔۔ سب نے رت جگے کا پروگرام بنایا ہے۔۔۔ اچھا لگتا محفل سے اٹھ کر جانا ۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے جھینپ کر سرگوشی میں ہی جواب دیا ۔۔۔
چلو چلو تارز آ گیا ۔۔۔ تارز کا گٹار دو اسے۔۔۔ شہنام نے تالی بجا کر سب کو متوجہ کیا تھا۔۔
کہاں سب فری ہو رہے ہو۔۔۔ میرا کوٸ موڈ نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے ندوہ کو گھور کر دیکھا اور پھر سب کو کہتا ہوا واپس پلٹا۔۔۔
میں گاتی ہوں ۔۔۔۔ ندوہ نے مدھر سی آواز میں کہا۔۔۔
تارز کے کمرے کی طرف جاتے قدم رکے تھے۔۔۔۔
سب لوگوں کا شور گونج اٹھا تھا۔۔۔۔۔سٹیاں اور مختلف آوازیں۔۔۔
ارے۔ےے۔ےے۔ے کیا بات ہے۔۔۔۔۔ آپ بھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ شہنام نے جوش میں اونچی آواز میں کہا۔۔۔
چلیں چلیں ۔۔۔ یہاں بیٹھیں بھابھی ۔۔۔۔ فروا نے جلدی سے جگہ بناٸ تھی۔۔۔ صوفے پر ۔۔۔
ندوہ مسکراہٹ دباتی ہوٸ ۔۔۔ بیٹھی تھی پھر ایک چور نظر پیٹھ کر کے کھڑے تارز پر ڈالی ۔۔۔ جو رک تو گیا تھا لیکن پلٹا نہیں تھا۔۔۔۔
اوۓ۔۔۔۔ ہوۓ۔۔۔۔۔ شہنام نے معنی خیز انداز میں کہا۔۔۔۔
خبیث ۔۔۔ پلٹ۔۔۔۔۔ تیرے اس دن والے گانے کا جواب جانی۔۔۔۔ شہنام نے سیٹی مار کر تارز سے کہا۔۔۔۔
تارز جان لیوا مسکراہٹ چہرے پر سجاۓ پلٹا تھا۔۔۔۔ اور گہری نظر سب کے درمیان میں بیٹھی ندوہ پر ڈالی ۔۔۔ جو گلابی ہو رہی تھی۔۔۔۔
شروع بھابھی ۔۔۔۔ شازیہ نے جوش میں کہا۔۔۔۔
ندوہ نے پلکیں گرا لی تھیں۔۔۔۔ اور پھر دھیرے سے اس کی مدھر آواز نے سب کو سحر زدہ کر دیا تھا۔۔۔۔
میرے ہاتھ میں ۔۔۔۔۔ تیرا ہاتھ ہو۔۔۔
ساری جنتیں۔۔۔۔۔ میرے ساتھ ہوں۔۔۔۔۔
تو جو پاس ہو ۔۔۔۔۔۔۔پھر کیا یہ جہاں ۔۔۔۔۔۔۔
تیرے پیار میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہو جاٶں فنا۔۔۔
ندوہ کو اپنے چہرے پر گہری آنکھوں کی تپش محسوس ہو رہی تھی۔۔۔۔
جتنے پاس ہے۔۔۔۔۔خوشبو سانس کے
جتنے پاس ہونٹوں کے سرگم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جیسے ساتھ ہیں۔۔۔۔۔۔۔ کروٹ یار کے
جیسے ساتھ باہوں کےسنگم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
او۔۔۔۔۔و۔و۔وو۔و۔و۔ ہو۔۔۔۔۔۔و۔و۔۔و۔و۔ شہنام نے سیٹی بجاٸ تھی ۔۔۔۔
جتنے پاس پاس ۔۔۔۔۔۔خوابوں کے نظر۔۔۔۔۔
اتنے پاس تو رہنا ہمسفر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب لوگ تارز کے چہرے کی طرف دیکھ رہے تھے جو ۔۔۔ چہرے پر پیار بھری مسکراہٹ لیے کھڑا تھا۔۔۔۔وہ حیران تھا وہ اتنا اچھا گا لیتی ہے۔۔۔ بچپن سے کبھی اس کی آواز ایسے سنی ہی نہیں تھی۔۔۔
توجو پاس ہو۔۔۔۔ پھر کیا یہ جہاں
تیرے پیار میں ۔۔۔۔۔ ہو جاٶں فنا۔۔۔۔۔۔۔
ندوہ نے گانا ختم کیا تھا۔۔۔۔ سب لوگ تالیاں بجا بجا کر گھر سر پر اٹھا رہے تھے۔۔۔۔ ندوہ نے دھیرے سے نظر اٹھا کر دیکھا تھا اور پھر دھک سی رہ گٸ وہ پہلے ہی معنی خیز انداز میں اسی کی طرف دیکھتے ہوۓ مسکرا رہا تھا۔۔۔۔جلدی سے پلکوں کی جھالر نیچے گراٸ تھی۔۔۔۔
چل اٹھ یہاں سے ۔۔۔ تارز نے گھور کر فروا کو کہا جو ندوہ کے ساتھ بیٹھی تھی۔۔۔
رشوت دیں پہلے۔۔۔۔۔۔ فروا نے شرارت سے ہاتھ آگے کیا۔۔۔
یہ لے۔۔۔۔ تارز نے سکہ نکال کر اس کے ہاتھ پر رکھا۔۔۔۔
اٹھ شاباش ۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے فروا کو پچکارتے ہوۓ کہا ۔۔۔
جو منہ بسورتے وہاں سے اٹھی تھی۔۔۔
ندوہ بلش ہوتے ہوۓ مسکراہٹ دبا رہی تھی۔۔۔
یہ اظہار تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے بیٹھتے ہی ندوہ کے کان میں سرگوشی کی تھی۔۔۔۔
کس بات کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے نچلا لب دانتوں میں دبا کر شرارت سے چہرہ اوپر اٹھایا تھا۔۔۔۔
کیوں تنگ کر رہی ہو۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے خمار آلودہ آواز میں سرگوشی کی ۔۔۔۔
سب لوگ اب اپنی اپنی باتوں میں لگے ہوۓ تھے۔۔۔
وہ تو آپ کر رہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے دھیرے سے کہا۔۔۔۔
موباٸل کہاں میرا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے مسکراہٹ دبا کر شریر انداز میں کہا تھا۔۔۔
وہ تو چوری ہو گیا تھا نہ اس دن ھال میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے معصوم سے انداز میں پلکیں جھپکاتے ہوۓ کہا۔۔۔
ندوہ نے پھر سے موباٸل الماری سے اٹھا لیا تھا۔۔۔ تارز کو اور تنگ کرنے کے ارادے سے۔۔۔
ٹکر۔۔۔۔۔ ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے لب دانتوں میں دبا کر شرارت سے کہا۔۔۔
آپ کو پسند ہے نہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے ناک چڑھاتے ہوۓ کہا۔۔۔۔
اور بھی بہت کچھ پسند ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے ارد گرد سب کی طرف دیکھتے ہوۓ کشن کو گود میں رکھا اور کشن کے نیچے سے ندوہ کے ہاتھ کو تھاما تھا۔۔۔
ندوہ نے چونک کر سب کی طرف دیکھا تھا۔۔۔۔ سب لوگ بے نیازی سے گپ شپ لگا رہے تھے ایک دوسرے کا مزاق بنا بنا کر قہقے لگا رہے تھے۔۔۔۔
کمرے میں آنا ذرا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ کے کان میں پھر سے سرگوشی ہوٸ تھی۔۔۔
وجود میں جیسے بجلی سی کوند گٸ تھی ۔۔۔۔ پلکیں بری طرح گالوں پر کپکپا گٸ تھیں ۔۔۔۔
نہیں۔۔۔۔۔ ندوہ نے دھیرے سے کہا تھا ۔۔۔۔
اٹھا کر لے جاٶں گا پتہ ہے نہ میرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے ہاتھ پر گرفت ایک دم سے مضبوط کی تھی ۔۔۔
نہیں۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے ہاتھ چھڑوانے کی کوشش کی۔۔
پیکنگ کرو کمرے میں آ کر ۔۔۔ اب اس اظہار کے بعد تو ہر گز نہیں چھوڑ کر جاٶں گا۔۔۔ تارز نے رعب سے کہا۔۔۔
پیکنگ میں کر چکی ہوں۔۔۔ ندوہ نے شرارت سے دیکھا۔۔۔
بہت تنگ کیا نہ ۔۔۔ اس کا بھی بدلہ لوں گا۔۔۔ تارز نے مصنوعی خفگی دکھاتے ہوۓ کہا۔۔۔
بھی۔۔۔۔ اور کیا کیا۔۔۔ ندوہ نے روہانسی شکل بنا کر دیکھا۔۔۔
بہت کچھ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے دھیرے سے ماتھے کے نشان پر ہاتھ رکھا تھا۔۔۔
ندوہ جھینپ گٸ تھی۔۔۔۔۔۔۔ گڑ بڑا کر ارد گرد دیکھا ۔۔۔۔ پھر تیزی سی ہاتھ چھڑا کر وہاں سے اٹھی تھی۔۔۔۔
تارز کچھ دیر وہیں بیٹھا مسکراتا رہا تھا ۔۔۔ پھر سب کے جھرمٹ میں سے نظر بچاتا ہوا کمرے میں آیا تھا۔۔۔
جہاں محترمہ منہ تک کمبل تانے لیٹی تھیں۔۔۔
مجھے پتہ ہے نہیں سو رہی تم ۔۔۔۔ تارز نے شرٹ کے کف بٹن کھولتے ہوۓ اس کے سر پر کھڑے ہو کر کہا۔۔۔۔
کوٸ جواب نہیں آیا تھا۔۔۔
تارز نے ایک جھٹکے سے کمبل اٹھایا تھا۔۔۔
نیند آ رہی مجھے ۔۔۔۔ ندوہ نے مسکراہٹ دباتے ہوۓ جھکی پلکوں سے کہا۔۔۔
نیند کی ایسی کی تیسی۔۔۔۔۔ تارز نے ایک دم سے اٹھایا تھا۔۔۔
اللہ۔۔۔۔۔تارز ۔۔۔۔۔۔ اتاریں نیچے۔۔۔۔۔
تارز بڑے انداز میں واش روم کی طرف بڑھ رہا تھا۔۔۔۔
ایسے تو معاف نہیں کروں گا ۔۔۔ ۔۔۔ ایک دم سے شاور کے نیچے لا کر ندوہ کو کندھے سے اتارا تھا۔۔۔
پاگل ہو گۓ ہیں کیا۔۔۔ ندوہ قہقہ لگا رہی تھی۔۔۔۔
ہاں ہو گیا ہوں ۔۔۔۔۔ کھڑی رہو آرام سے ۔۔۔۔ تارز نے مسکراہٹ دبا کر مصنوعی رعب دکھایا تھا۔۔۔
پلیز ۔۔۔ تارز ۔۔۔ یہ نہیں۔۔۔۔۔ ندوہ نے روہانسی شکل بنا کر کہااور ہاتھ چھڑوانا چاہا۔۔۔
یہی ۔۔۔۔ سکون میرے۔۔۔یہی۔۔۔۔۔۔ تاراز نے شرارت سے دیکھا اور شاور ایک دم سے چلا تھا۔۔۔۔
تارز ۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے مصنوعی غصہ دکھایا تھا۔۔۔
تارز تھوڑا سا آگے بڑھا تھا ۔۔۔ پھر رک گیا ۔۔۔۔
ایک منٹ ۔۔۔۔ فٹ فاٸلر چھپا دوں ذرا۔۔۔۔ تارز نے شرارت سے پیچھے سنک کی طرف دیکھا۔۔۔۔
پھر دونوں کا قہقہ ۔۔۔۔ پانی کی گرتی بندوں کے شور میں گھل گیا تھا۔۔۔۔
**************
تم زیادہ ہی خراب ہوتی جا رہی ہو۔۔۔ ۔۔۔۔ تارز نے مصنوعی خفگی دکھاتے ہوۓ کہا۔۔۔۔
نہیں ۔۔۔۔۔ اٹھاٸیں۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ بچوں کی طرح باہیں کھولے کھڑی تھی۔۔۔۔
یار۔۔۔۔ کسی دن تو رحم کیا کرو۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے ایک نظر ندوہ پر ڈالی ایک نظر سیڑھیوں پر۔۔۔۔
کیوں۔۔۔۔ آپ نے خود ہی تو عادت ڈالی ۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے شرارت سے دیکھ کر کہا۔۔۔
وہ دونوں رات گۓ تک نیچے سب کے ساتھ گپ شپ کرتے تھے پھر اوپر جاتے تھے جب سب اپنے اپنے کمروں میں چلے جاتے تھے ۔۔۔ تارز ندوہ کو اٹھا کر اوپر لے جاتا تھا۔۔۔
کسی دن گریں گے دونوں سیڑھیوں سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تارز نے ڈرانے کے انداز میں کہا۔۔۔
نہیں گریں گے ۔۔۔ تینوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ندوہ نے شرارت سے نچلا لب دانتوں میں دبا کر کہا۔۔۔
تینوں۔۔۔۔ کیا۔۔۔ کیا۔۔۔ مطلب۔۔۔۔۔ تارز نے خوشگوار حیرت کے زیر اثر منہ کھول کر کہا۔۔۔
اور پھر قہقہ لگاتے ہوۓ جوش سے اسے اٹھایا تھا۔۔۔۔
مجھے پتہ ہے ۔۔۔۔ آپ کبھی نہیں گراٸیں گے مجھے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔ ندوہ نے کان کے قریب ہو کر سرگوشی کی تھی۔۔۔
کبھی بھی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ موٹی۔۔۔۔ تارز نے ہنسی دباتے ہوۓ شرارت سے کہا۔۔۔

–**–**–
ختم شد
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: