Hijab Novel By Amina Khan – Episode 19

0
حجاب از آمنہ خان – قسط نمبر 19

–**–**–

۔
یہ کیسے ممکن ہے کوئی محبوب سے نور مانگے اور اُس کو نور نہ ملے ۔۔۔۔۔۔کوئی اُس سے سکون مانگے اور اُس کو سکون نا ملے ۔۔۔۔۔۔وہ تو مانگنے پہ اپنا آپ دے دیتا ہے ۔۔۔۔۔۔وہ تو مانگنے پہ خود دل میں اتر جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔جو خود کو ہمارے سپرد کر دے وہ کوئی اور چیز کیسے نہیں دے گا ۔۔۔۔۔۔وہ عطا کرنے والا ہے وہ عطا کرتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔
۔
کوئی اپنے دل سے ایک نا محرم کو بھول جانا مانگے تو وہ کیسے نہیں بھولا دے اُس کو ۔۔۔۔وہ اپنے بندے کو ایسے درد میں کیسے رکھ سکتا ہے وہ اُس کو پل پل کی ازیت میں کیسے مبتلا کر سکتا ہے ۔۔۔۔۔یہ جن لوگوں کے دل سے درد نہیں جاتا وہ اپنے لیے مانگتے نہیں ہوں گے ۔وہ اُس کے در پہ کسی نا محرم کا بھول جانا نہیں مانگتے ۔۔۔۔۔وہ تو اُس کے در پہ بیٹھ کے نا محرم کو مانگتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔محبوب سے محبوب کے بجائے کسی اور کو مانگتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اُس ذات کو تو نفرت ہے شرک سے وہ اپنی محبت میں شراکت کدھر برداشت کرتا ہے ۔۔۔۔۔وہ پھر اور درد دیتا ہے اتنا درد کے انسان اُس سے اُس کو مانگنے پہ مجبور ہو جاتا ہے۔۔۔۔۔۔۔وہ اُسی کے ہاتھوں اُس کو درد دیتا ہے جس کو ہم سجدوں کے بعد مانگتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔یہ دنیا کی محبتیں تو بس دُکھ درد تکلیف اور ازیت دیتی ہیں۔۔۔۔۔۔کھبی کسی کو دیکھا ہے کوئی سچی محبت کرے اور وہ خوش رھے؟ ۔۔۔۔۔۔عشق مجازی تو بس ایک سیڑھی ہے محبوب کے در تک جانے کی۔۔۔۔۔ہم خوشی میں کب اُس کو یاد کرتے ہیں ہم کب بات بات پہ الحمدللہ کہتے ہیں؟ وہ جب ہمیں ایک چیز عطا کرتا ہے ہم اُس کی عطا کی ہوئی چیز کو بھول جاتے ہیں اور دوسری طلب کرتے ہیں ۔۔۔۔وہ رحمان ہمیں وہ بھی دے دیتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ہم کب اُس چیز کے مل جانے پہ شکرانے کے نوافل پڑھتے ہیں ۔۔۔۔ہمیں تو یاد بھی نہیں ہوتا محبوب نے ہمیں نوازا تھا ۔۔۔۔۔۔۔لیکن جب ہمیں محبت ہوتی ہے وہ محبت عشق بنتی ہے ۔۔۔ہم مسجدوں کا رخ کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔تہجد پڑھتے ہیں ۔۔۔۔۔وظفے کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔بس صرف ایک شخص کی محبت میں اُس کو پانے کی خاطر ۔۔۔۔۔۔۔پھر وہ ہمیں اور درد دیتا ہے باز دفعہ تو اُس شخص کے ہاتھوں ہمیں ذلیل کرواتا ہے تا کہ ہم پلٹیں اُس کی طرف جو ہماری محبتوں کا وارث ہے ۔۔۔۔۔۔
۔
۔
زرمینہ نے ایک نا محرم کو نہیں مانگا تھا ، اُس نے تو اُس کا بھول جانا مانگا تھا ۔تو کیسے ممکن تھا کہ وہ اُس کو سکون نا دے ، نور نہ دے ۔۔۔۔۔
۔
اللہ پاک آپ نے زرمینہ گل کو سکون نہیں دیا اپنا نور بخشا ہے ۔۔۔۔۔میں نے تو آپ سے اُس شخص کا بھول جانا مانگا تھا آپ نے تو مجھے اپنا آپ ہی دے دیا ……
۔
وہ جائے نماز پے بیٹھی سکون کے آنسوں بہا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔اور رب کا شکر ادا کر رہی تھی ۔۔۔۔۔اُس رب العالمین کا جو مانگنے پہ خود کو سونپ دیتا ہے ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ اٹھا بالکنی کے پاس گیا کھڑکی کھولی اور صبح کا نظارہ کرنے لگا وہ جو ہلکی ہلکی چاندنی میں تھی ہلکی ہلکی اندھیرے میں تھی ۔۔۔۔۔۔ایسے بھی عید کی صبح میں کچھ عجیب سا سحر ہوتا ہے جو انسان کو اپنے اندر جھکڑ لیتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ عجیب سی پرسکون صبح ہوتی ہے جو سکون قلب دیتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔
وہ واشروم گیا ۔۔۔۔۔شاور لینے کے بعد اُس نے سفید سوٹ پہنا ۔۔۔۔۔۔اور اُس کے اوپر کالے رنگ کی واسکٹ پہنی ۔۔۔۔۔۔وہ شلوار قمیص میں ہمیشہ سے بہت دل نشین لگتا تھا ۔۔۔۔۔۔کوئی بھی اُس کو دیکھے اور فدا ہو جائے ۔۔۔۔۔۔ما شاء اللہ کیے بغیر نا رہے سکے ۔۔۔۔۔۔
وہ شیشے کے سامنے کھڑا ہوا پرفیوم لگائی ۔۔۔۔۔اپنی داڑھی پہ ہاتھ مارا ۔۔۔۔۔۔اُس کے چہرے پہ داڑھی ایسے سجتی تھی جیسے پھولوں پہ شبنم کے قطرے ۔۔۔۔۔۔
۔
اب وہ عید کی نماز کے لیے بلکل تیار ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔تیار ہونے کے بعد وہ سب کو عید کا سلام کرتا تھا ۔۔۔۔۔۔ماں سے پیار لیتا ۔۔۔باپ کے ہاتھ چومتا اور بہنوں کو گلے سے لگاتا ۔۔۔۔۔۔اور باری باری پانچویں کو عیدی دیتا ۔۔۔۔۔۔
۔
آج وہ تیار ہونے کے بعد شیشے کے سامنے کھڑا ہوا اور آنکھیں بند کیں ۔۔۔۔۔۔آنکھیں بند کرتے ہی اُس لڑکی کا سراپا اُس کی نگاؤں میں گھوما ۔۔۔۔۔۔اُس کے چہرے پہ مسکراہٹ آئی ۔۔۔۔۔۔
اور لبوں سے بے اختیار نکلا ۔۔۔۔۔
۔
“عید مبارک میرے دل کی ملکہ”
۔
اُسی مسکراہٹ کے ساتھ اُس نے آنکھیں کھولی اور پھر سے بولا “عید مبارک ہو تمہیں “
۔
وہ جب بھی شیشے کے سامنے کھڑا ہوتا اُس کو لگتا وہ لڑکی اُس کے سامنے کھڑی ہے ۔۔۔۔۔اُس کو آنکھوں میں ہے ۔۔۔اُس کو مسکراہٹ میں ہے ۔۔۔۔۔۔اُس کے اندر ہے ۔۔۔۔۔جب وہ اُس کے اندر بستی ہے اُس کو اپنے آپ میں ہی وہ نظر آتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔اور وہ گھنٹوں اُس کو دیکھتا ہے۔۔۔۔
۔
ملکہ میں دعا کرتا ہوں اگلي عید پہ تم میرے ساتھ اس شیشے کے سامنے کھڑی ہو ۔۔۔۔۔۔میں شیشے کو دیکھنے کے بجائے تمھیں دیکھا کروں ۔۔۔۔۔۔ملکہ جب تم ساتھ ہو گی میں راتوں کو آٹھ آٹھ کے شکرانے کے نوافل پڑھوں گا ۔۔۔۔۔۔میں کیسے خدا کا شکر ادا کروں گا تمہارے ملنے پہ ۔۔۔۔۔۔
۔
وہ شیشے کے سامنے کھڑے ہو کہ خود سے ہی باتیں کرنے لگا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔
زری کون سے کپڑے پہنو گی ……میں نے دونوں سوٹ پریس کر لیے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
رقیہ بیگم نے ایک بازو پے سُرخ اور ایک پہ سفید سوٹ رکھتے ہوئے اُس سے پوچھا ۔۔۔۔۔
۔
“اماں کوئی بھی رکھ دیں نا “
وہ شیشے کی طرف مڑی اپنے خوبصورت لمبے بالوں کو تولیے سے خشک کر رہی تھی ۔۔۔۔
۔
زری ایک بار دیکھ لو تا کہ میں ایک رکھ لوں اور دوسرا الماری میں لگا لوں ۔۔۔۔۔۔تم نے تو دیکھے بھی نہیں ہیں اپنے عید کے کپڑے۔ ۔۔۔۔۔پتا نہیں کون سی دنیا میں ہو تم آجکل۔۔۔۔۔۔۔
۔
انہوں نے کپڑے ٹھیک کرتے ہوئے اُس کو کہا ۔۔۔۔۔۔
۔
اُس کا مسلسل چلتا ہاتھ ایک دم روکا ۔۔۔۔۔۔جن کے دل ہی مر گئے ہوں اُن لوگوں کے لیے کون سی خوشیاں اور کون سے عیدیں ہوتی ہیں ۔۔۔۔۔۔
۔
“اماں آپ کچھ بھی رکھ لیں جو آپ کو اچھا لگتا ہے “
۔
اُس نے اُدھر ہی کھڑے کھڑے ماں کو کہا ۔۔۔۔۔
۔
“مجھے تو تم پہ سُرخ جوڑا بہت اچھا لگتا ہے زری میری بیٹی یہ پہن کے ہمیشہ ہی شہزادی لگتی ہے “
انھوں نے سُرخ فروق کو دیکھتے ہوئے بہت پیار سے کہا ۔۔۔۔۔
۔
“ٹھیک ہے اماں وہی چھوڑ دیں میں وہی پہنوں گی “
۔
اُس نے ماں کو مسکراتے ہوئے کہا اور گیلا تولیہ واشروم میں رکھنے گی ۔۔۔۔
۔
“اماں میری جیکٹ کدھر ہے “
سلطان اونچا اونچا بولتا ہوا زری کے کمرے میں آیا ۔۔۔۔
۔
“ایک تو مجال ہے سلطان تمھیں کوئی چیز مل جائے “
۔
“اماں اتنا دیکھا ہے نہیں ہے نا آپ دیکھ کے دیں نا”
۔
“اچھا چلو میں دیکھتی ہُوں جیکٹ آنکھوں کے سامنے ہو گی اور یہ ڈھونڈنے اِدھر آیا ہے “
۔
انھوں نے دونوں سوٹ اُس کے بیڈ پہ رکھے اور سلطان کے ساتھ باہر نکلنے لگیں ۔۔۔۔۔
۔
“زری دوسرا سوٹ الماری میں لگا لینا پھر “
۔
انھوں نے دروازے سے ہی بیٹی کو کہا ۔۔۔۔۔۔جو بھائی کے کمرے میں آنے پہ سر پہ دوپٹہ لیے واشروم سے باہر نکلی تھی ۔۔۔۔۔۔۔
۔
“جی اماں میں رکھ لوں گی “
وہ بیڈ کے پاس آئی اور سُرخ جوڑا اٹھایا جو اُس نے ابھی پہننا تھا ۔۔۔۔۔
.
اُس نے جیسے ہی سُرخ جوڑا اٹھایا اُس کی نظر سفید جوڑے پہ پڑی ۔۔۔۔۔اُس کا دل ایک دم سے دھڑکا ۔۔۔وہ وہیں بیڈ پہ بیٹھی ۔۔۔۔۔۔سُرخ جوڑا سائڈ پہ رکھا اور سفید جوڑے پہ نرمی سے ہاتھ مارنے لگی۔۔۔۔۔۔۔آج سے پہلے اُس کو سفید رنگ اس قدر اچھا نہیں لگا تھا جتنا وہ اُس کو آج لگ رہا تھا ۔۔۔۔
۔
اُس نے سُرخ جوڑا وہیں بیڈ پہ چھوڑا اور سفید جوڑا لے کے واشروم چلی گئی ۔۔۔۔۔جو اُس کو اب پہننا تھا ۔۔۔۔
۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔”امی آج تو بہت خوش لگ رہی ہیں آپ “
کھیر کا پیالہ پکڑتے ہوئے اُس نے ماں سے کہا جو بہت خوشی خوشی باتیں کر رہی تھیں ۔۔۔۔
نماز کے بعد وہ دوستوں سے ملنے چلا گیا تھا اور اب گھر آیا تھا۔۔۔۔۔۔
۔
“بات ہی خوشی کی ہے وجی “
انھوں نے فاطمہ کی طرف دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
۔
“ایسی کون سی خوشی کی خبر ہے جس کے لیے آپ اتنا خوش ہیں”
۔
وہ پانچوں بہنوں کے درمیان بیٹھا ماں سے پوچھ رہا تھا ۔۔۔۔بابا گھر پہ موجود نہیں تھے وہ ماں کے ہی کمرے میں بیٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔
۔
“تمہارے چچا جان آئے تھے وجی “
انہوں نے اُسی خوشی سے کہا ۔۔۔۔آج اُس نے ایک عرصے کے بعد ماں کے چہرے پہ اس قدر خوشی دیکھی تھی ۔۔۔۔۔اس بات کا تو وہ اندازہ لگا سکتا تھا کہ خوشی کی نوعیت کچھ زیادہ ہی بڑی ہے تب ہی تو سب کے چہرے چمک رہے ھیں ۔۔۔۔۔سوائے فاطمہ کے ۔۔۔۔وہ کچھ اُلجھی اُلجھی اور پریشان نظر آ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔
۔
“چچا جان ہمارے گھر؟”
اُس نے بڑی حیرت سے پوچھا ۔۔۔۔۔وہ لوگ تو اتنے عرصے سے خفا تھے پھر اچانک یوں اُن کے گھر آنا ۔۔۔۔۔۔
۔
” بھائی صاحب فاطمہ کا رشتہ اپنے بڑے بیٹے دانیال کے لیے مانگ رہے تھے “
۔
انہوں نے فاطمہ کی طرف دیکھتے ہوئے اُسی خوشی سے کہا جو نظریں جھکائے بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔
۔
اماں یہ تو بہت بہت خوشی کی خبر ہے ۔۔۔۔اس طرح تو ہمارا خاندان پھر سے جوڑ جائے گا ۔۔۔۔اور آپی کی شادی کے لیے تو اتنی دعائیں مانگی ہیں میں نے ۔۔۔۔بہت خوش ہوں میں اماں اُس نے بہن کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔جو ابھی بھی کچھ اُلجھی سی تھی ۔۔۔۔۔
۔
“بھائی ایک خوشی کی خبر اور بھی ہے “
خدیجہ نے اُس کے کندھے پے اپنا ماتھا رکھتے ہوئے سرگوشی سے کہا !
۔
“ایک اور خوشی کی خبر ؟”
اُس نے کھیر کی چمچ منہ میں لے جاتے ہوئے خوشی سے پوچھا ۔۔۔۔۔
۔
“ہاں ہاں ایک اور خوشی کی خبر “
زینب نے پر جوش سے لہجے میں اُس کو دیکھتے ہوئے کہا جو اب بھی کھیر کھاۓ جا رہا تھا اور ساتھ ساتھ مسکرا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔
۔
بھائی صاحب نے اپنی بیٹی کے رشتے کے لیے تمہارا کہا ہے وجی ۔۔۔۔فاطمہ کا دانیال سے اور امامہ کا تم سے رشتہ تہے کیا ہے انھوں نے۔۔۔۔۔۔اور تمہارے ابو بھی مان گے ہیں۔۔۔۔۔۔امامہ بہت اچھی لڑکی ہے سب سے بڑی بات فاطمہ بھی اب اپنے گھر کی ہو جائے گی۔۔۔۔۔انھوں نے فاطمہ کا رشتہ تبھی مانگا ہو گا تاکہ امامہ کی شادی تم سے ہو سکے۔ ۔۔۔۔اور امامہ تو مجھے شروع سے ہی تمہارے لیے بہت پسند تھی ۔۔۔۔۔
۔
وہ خوشی سے بولے جا رہی تھی ۔۔۔۔۔فاطمہ نے بھائی کو دیکھا جس کا کھیر سے بھرا ہوا چمچ منہ کے پاس ہی روکا ۔۔۔۔۔اُس کے چہرے کا ایک دم رنگ بدلا ۔۔۔۔۔مسکراہٹ ایک دم غائب ہوئی ۔۔۔۔۔ہونٹوں پہ عجیب سی سفیدی آئی ۔۔۔۔آنکھوں کو چمک ایک دم مدہم ہوئی ۔اُس کو لگا کچھ ہی دیر میں وہ بحوش ہو جائے گا ۔۔۔۔
۔
“لگتا ہے میرا بھائی خوشی سے بولنا بُھول گیا ہے”
زینب نے بھائی کو تنگ کرنے والے انداز میں کہا ۔۔۔۔۔اِس وقت فاطمہ کے علاوہ اُس کی کیفیت کوئی نہیں سمجھ سکتا تھا ۔۔۔۔۔کسی کو اندازہ نہیں تھا اُس پہ کیسی بجلی گری ہے۔۔۔۔۔۔۔اُس کو کیسا رنج ملا ہے۔ ۔۔۔۔ایک طرف بہن کی زندگی اُس کی خوشیاں تھیں اور دوسری طرف اُس کی محبت ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ سفید جوڑا پہنے شیشے کے سامنے آئی ۔۔۔۔۔سفید فروق پہ سُرخ دوپٹہ لیے ، بال کھولے وہ کسی جگہ کی شہزادی لگ رہی تھی۔ ۔۔۔۔ وہ میکپ نہیں کرتی تھی ۔۔۔۔۔میکپ کے نام پہ وہ صرف لیپ گلو لگا لیا کرتی تھی۔۔اُس کے خوبصورت لمبے بال کمر سے نیچے تک گر رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔جو اُس کی خوبصورتی میں اور اضافہ کر رہے تھے ۔۔۔۔۔
۔
“سفید جوڑا مجھ پہ اتنا بھی اچھا لگ سکتا ہے “
اُس نے شیشے کے سامنے کھڑے ہو کے خود کو دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔اور کمرے میں آ گئی ۔۔۔۔
۔
کمرے میں آتے ہی اُس نے بیڈ پہ پڑا موبائل اٹھایا اور what’s app کھولا ۔۔۔۔۔۔وہ what’s app کھولتے ہی سب سے پہلے گروپ میں جاتی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔
اُس نے سب کے میسیج دیکھے جس میں سب نے ایک دوسرے کو عید مبارک کہا تھا ۔۔۔۔ایک دوسرے کو دعائیں دی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔ٹیچرز کو میسیج کیے ہوئے تھے اور ٹیچرز نے جواب بھی دیے تھے ۔۔۔۔۔۔۔اُس کا دل بس ایک ہی نام کو دیکھنے کے لیے دھڑک رہا تھا۔۔۔۔۔سب نے اُس کا نام لکھا تھا “
“عید مبارک وجدان سر “
وہ بار بار اُس نام کو دیکھے جا رہی تھی ۔۔۔۔۔مگر اُس کا دل اُس کے ہاتھ سے لکھے ہوئے کو دیکھنا چاہتا تھا ۔۔۔۔آنکھیں اُس کا نام دیکھنے کے لیے ترس رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔وہ ایک ایک میسیج پڑھ رہی تھی کہیں تو اُس نے جواب دیا ہو گا ۔۔۔۔۔وہ سٹوڈنٹس کو اتنی لیفٹ نہیں دیتا تھا ۔۔۔۔۔تب ہی اُس نے دوسرے ٹیچرز کی طرح ایک ایک بچے کو جواب نہیں دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔وہ جیسے جیسے دیکھ رہی تھی اُس کا ویسے ویسے دل ڈوب رہا تھا ۔۔۔۔۔۔اُس کی محروم آنکھیں بس اُس کا لکھا ہوا جواب دیکھنا چاہتی تھیں۔۔۔۔۔۔
اُس نے جوں ہی نیچے کیا اُس کو ایک میسیج نظر آیا ۔۔۔جس پہ اُس کی آنکھیں بند ہوئیں آنکھوں کے کونوں سے پانی نکلا ۔۔۔
۔
“خیر مبارک آپ سب کو بھی عید کی خوشیاں مبارک ہوں۔ خوش رہیں سب مولا سب کو خوش رکھے”
۔
اُس نے وہ میسیج کہی بار پڑھا ۔۔۔۔۔۔
۔
“اُس نے سب کو دعا دی تھی سب کو عید کی مبارک باد دی تھی “
۔
اُس کے نیچے لڑکیوں کے جوابات کے ڈھیر لگے تھے ۔۔۔۔سب لڑکیوں نے اُس کے میسیج کا جواب دیا تھا ۔سوائے زرمینہ گل کے ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔
وہ خالی سے ذہن کے ساتھ اپنے کمرے میں آیا ۔۔۔اُس کو سمجھ ہی نہیں آ رہی تھی یہ کیا ہوا ہے ۔۔۔۔وہ تو بہن کے لیے خوش ہو رہا تھا ۔۔۔۔یہ اُس کے ساتھ کیا ہو گیا ہے ۔۔۔۔۔کیا بہن کی خوشیوں کی قیمت اُس کو ادا کرنی پڑے گی ؟ کیا اُس کو بہن کی خوشیوں کے لیے خود کو قربان کرنا پڑے گا ؟
۔
وہ اپنے کمرے میں ادھر سے اُدھر ٹہلنے لگا اور سگریٹ پہ سگریٹ پینے لگا ۔۔۔۔۔آج اُس کی آنکھوں میں آنسوں نہیں تھے ۔۔۔۔۔آج اُس کی آنکھوں میں موت کی سی کیفیت چھائی ہوئی تھی ۔۔۔جیسے مرنے سے پہلے کسی کی آنکھوں کی کیفیت ہو ۔۔۔۔۔۔ایسی کیفیت کے بندہ اُس کی آنکھوں میں دیکھے تو خوف آئے ۔۔۔۔۔۔
۔
“ایسا کیسے ہو سکتا ہے میرے ساتھ “
اُس نے کھڑے کھڑے ہی منہ پہ ہاتھ مارا اور پسینہ صاف کیا ۔۔۔۔یہ پسینہ اُس کو گرمی سے نہیں آ رہا تھا یہ پسینہ اُس کو خوف سے آ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔اُس کو خوف تھا بہن کی خوشیاں چھین جانے کا ۔۔۔۔ملکہ کو کھو دینے کا ۔۔۔۔۔۔
۔
اُس نے دنیا میں دو ہی تو چیزیں چاہیں تھی ایک اپنی ملکہ اور دوسرا بہنوں کی شادی اُن کی خوشیاں ۔۔۔۔
۔
کیا میری بہن کو خوشیاں مجھے خود کو مار کے دینی پڑیں گی ؟
ملکہ نا ملی تو میں تو ایسے بھی مر ہی جاؤں گا ۔۔۔۔۔اُس کے بغیر تو میں ایک منٹ بھی نہیں جی سکوں گا ۔۔۔۔۔میں نے تو اپنی ملکہ کے سواء کسی لڑکی کا تصوّر بھی نہیں کیا ۔۔۔۔”
۔”میں ملکہ کو تو کسی اور مرد کے ساتھ دیکھ سکتا ہوں مگر میں خود کو ملکہ کے سواء کسی عورت کے ساتھ نہیں دیکھ سکتا”
۔
یا اللہ میرا امتحان ہی لینا ہے تو مجھے معذور کر دے کہ میں ساری زندگی اپنے پیروں پہ چل نہ سکوں ۔۔۔۔۔مجھے اندھا کر دے تا کہ میں کچھ دیکھ نہ سکوں ۔۔۔۔میری زبان لے لے تا کہ میں کچھ بول نہ سکوں ۔۔۔۔۔۔۔
اے عزتوں والے رب وجدان تم سے ایک لمحے کے لیے بھی گلا نہیں کرے گا ۔۔۔۔تمھارا دیا ہوا یہ امتحان خوشی خوشی قبول کر لے گا
۔
۔۔۔۔مگر میرے مالک مجھ پہ ایسی آزمائش نا ڈال جس کو میں جھل ہی نہ سکوں ۔۔۔۔۔۔مجھ پہ رحم کر میرے ملک ۔۔۔۔۔
۔
وہ وہی بیٹھا سر کو سجدے میں رکھا اور اونچا اونچا رونے لگا ۔۔۔۔۔
۔
ایک طرف میری بہن ہے وُہ بہن جس کو میں نے ہمیشہ اپنا دوست مانا ۔۔۔۔۔جو میری بہن سے زیادہ میری ماں کا درجہ رکھتی ہے ۔۔۔۔۔جو ضرورت پڑنے پہ میری ماں میری دوست میری استاد سب کچھ بن جاتی ہے ۔۔۔۔۔جس کی خوشیوں کے لیے دِن رات میں نے دعا کی ہے ۔۔۔۔۔۔جو میری اور ابو کی عزت میں ہمارے گھر بیٹھی ہے ۔۔۔۔جس نے ایک دن بھی نہیں کہا میری شادی ہو جانی چاہیے ۔۔۔اتنے اچھے اچھے رشتے اُس کے لیے آئے ۔۔۔مگر وہ نہیں بولی ۔۔۔۔۔وہ چپ رہی ۔۔۔۔صبر کرتی رہی ۔۔۔۔۔اپنی خوشیوں کو قربان کرتی رہی۔۔۔۔
ایک طرف میری حیاؤں والی بہن ہے اور دوسری طرف میری محبوبہ جس کے بغیر میں ایک سانس نہیں لے سکتا ۔۔۔۔۔۔جس کے بغیر میں نے اب زندگی کا تصور بھی نہیں کیا ۔۔۔۔۔جس کو میں دِن رات مانگتا ہُوں ۔۔۔۔جس کے بغیر مجھے دنیا میں کوئی اور نظر نہیں آتا ۔۔۔۔۔۔
۔
میں کیا کروں گا اب میں کس کو چنوں گا ۔۔۔۔؟ اپنی بہن کی خوشیاں یا اپنی زندگی ؟
۔
وہ وہی بیٹھے بیٹھے روئے جا رہا تھا اور کانپتے ہاتھوں کے ساتھ سگریٹ منہ کے اندر کر رہا تھا ۔۔۔
۔
“میں کس کو چنوں گا اب میرے مالک اپنی بہن کی خوشیاں یا اپنی زندگی؟”
۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: