Hijab Novel By Amina Khan – Episode 31

0
حجاب از آمنہ خان – قسط نمبر 31

–**–**–

وہ ہجر کی راتیں ، وہ محبوب کی یادیں !
پوچھو کسی عاشق سے کیا بن کے گزرتی ہیں !
۔
وہ نائٹ ڈریس پہنے ۔۔۔۔ہاتھ میں چائے کا کپ پکڑے ۔۔۔۔۔بالکنی میں کھڑا چاند کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔چاند میں اُس کا عکس عیاں تھا ۔۔۔۔وہ حجاب میں ۔۔۔نقاب لیے خوبصورت آنکھوں سے مسکرا رہی تھی ۔۔۔۔۔جیسے اُس کو دیکھ رہی ہو ۔۔۔۔۔اظہارِ محبت اپنی آنکھوں سے کر رہی ہو ۔۔۔۔۔
۔
“ملکہ ! کوئی تم سے بھی زیادہ پر نور ہے ؟ دیکھو چاند کا حُسن تمہارے سامنے پھیکا پھیکا ہے ۔۔۔۔تم سے زیادہ کوئی خوبصورت نہیں ہے ۔۔۔۔۔
۔
لوگ ہونٹوں پہ مرتے ہیں ۔۔۔۔مُسکراہٹ پہ فدا ہوتے ہیں ۔۔۔۔محبوب کے بالوں پہ جان دیتے ہیں۔۔۔۔۔پیروں کی خوبصورتی کے قائل ہوتے ہیں۔۔۔۔۔۔ہم مر مٹے ہیں اپنے محبوب کی کالی آنکھوں پہ ۔۔۔۔اُس کے حجاب پہ ۔۔۔۔اُس کے کندھے پے پڑی چادر کے “
۔
“چادر ؟”
۔۔وہ بیٹھی تھی۔ بار بار حجاب ٹھیک کر رہی تھی ۔۔۔۔وہ کھڑی ہوئی مگر چادر نہیں تھی ۔۔۔۔اُس کی چادر کدھر تھی ۔۔۔۔؟ آج پہلی دفعہ اُس کو چادر کے بغیر دیکھا ۔۔۔۔مگر چادر کیوں نہیں لی ہوئی تھی اُس نے ؟ وہ تو کھبی چادر کے نہیں ہوتی مگر آج کیوں ؟
۔
وہ چائے کا کپ ہونٹوں کے ساتھ لگاتا ہوا ادھر اُدھر ٹھلنے لگا ۔۔۔۔جیسے سوچ رہا ہو ۔۔۔۔۔۔اُس کو یاد کر رہا ہو ۔۔۔۔جو آج پہلی دفعہ چادر کے بغیر اُس کو نظر آئی تھی ۔۔۔۔۔
۔۔
“بھائی “
“جی بیٹا “
“امی بولا رہی ہیں آپکو “
“ابو بھی ہیں پاس ؟”
“جی وہ بھی ہیں “
خدیجہ نے دروازے پہ ہی کھڑے ہوتے ہوئے اُس کو کہا ۔۔۔۔جو چائے کا کپ ہاتھ میں لیے گھوم رہا تھا سوچ رہا تھا ۔۔۔۔۔
۔
“ٹھیک ہے بیٹا آتا ہوں میں”
بہن کے جاتے ہی سوچوں کا رُخ بدلا ۔۔۔۔۔اب کی بار سوچوں میں پریشانی آئی تھی ایک گہری پریشانی ۔۔۔۔
۔
وہ جانتا تھا کس سلسلے میں اُس کو بلایا گیا ہے ۔۔۔۔۔۔وہ جانتا تھا وہ خبر اُس کے دل پہ تیر بن کے لگے گی ۔۔۔۔وہ جانتا تھا آج وہ اپنی زندگی سے ہار جائے گا ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ جی اج بہت دُکھی ہوں میں ۔۔۔۔بہت دُکھ ہے مجھے ۔۔۔آپکو پتا ہے اماں نے مجھ سے چادر لے لی آج ۔۔۔۔۔آپکو پتا ہے اللہ جی مجھے ایسے لگا جیسے آج میرے پاس کچھ نہیں ۔۔۔۔جیسے سب مجھے ہی دیکھ رہے ہیں۔۔۔۔۔۔آپ کو پتا ہے سب مجھ پہ باتیں کر رہے تھے آج ۔۔۔۔مجھے لوگوں کی عجیب عجیب نظروں سے وحشت ہوتی ہے اللہ جی ۔۔۔۔۔
۔
وہ آنکھوں سے موتی اپنی ڈائری پہ گرا رہی تھی ۔۔۔۔اور جلدی جلدی لکھ رہی تھی ۔جیسے اُس نے بہت کچھ لکھنا ہے ۔اللہ جی کو ایک ایک بات بتانی ہے ۔۔۔۔۔لکھتے ہوئے اُس نے اتنی بھی زحمت نہیں کی کہ وہ ہاتھ سے آنسوں صاف کر لے ۔۔۔۔اُس کو بس لکھنا تھا اپنا درد اپنا گم لکھنا تھا ۔
۔
اللہ جی میں نے کیا بہت بڑا گناہ کر دیا ؟ اللہ جی میں نے تو نہیں کہا تھا کہ میری اُن سے بات ہو ۔۔۔۔بس ہو گئی نا اللہ جی۔ ۔ اب تو نہیں ہوتی نا ۔۔۔
۔
آخری بات پہ اُس کے ہاتھ روکے۔ ۔۔۔آنکھوں سے خاموش موتی گرنے لگے ۔۔۔۔قلم نے ساتھ چھوڑا ۔۔۔۔
۔
“اللہ جی مجھے بہت یاد آتے ہیں وُہ”
خاموشی نے اب سسکیوں کو جگہ دی ۔۔۔۔۔وہ جو بغیر آواز کے بہتے چلے جا رہے تھے ۔۔۔۔۔اب سسکیوں میں بدلنے لگے۔ ۔۔۔ڈائری کو دل کے ساتھ لگائے۔ ۔۔۔۔۔سر کو بیڈ پہ رکھے ۔۔سسکتے ہوئے بس یہیں کہے جا رہی تھی ۔۔۔
“مجھے یاد آتے ہیں وہ”
“اللہ جی مجھے بہت یاد آتے ہیں وہ”
۔
“اللہ جی آپ کچھ کریں نا ، کچھ ایسا کریں نا کہ سب کچھ ٹھیک ہو جائے ۔۔۔۔۔بس مجھے یہ درد کم ہو جائے۔ ۔۔۔جو مجھے جینے نہیں دیتا ۔۔۔۔میری سانسوں کی ازیت ختم ہو جائے ۔۔۔۔۔”
۔
“اللہ جی مجھے تو کچھ پتا بھی نہیں تھا کہ کیا ہے یہ کیوں ہے یہ ۔۔۔۔۔اللہ جی میرے دل سے نکال لیں وجدان کو ۔۔۔۔۔اُن کے ہونے سے مجھے درد ہوتا ہے۔۔۔۔۔۔مجھے بہت درد ہوتا ہے اللہ جی “
اُس نے اپنا منہ بیڈ کی طرف کیا ۔۔۔۔۔اُس کے گلے کی رگیں سامنے نظر انے لگیں ۔۔۔۔اُس نے ایک ہاتھ سے بیڈ کی چادر کو اپنی مٹھی میں لیا ۔۔۔۔اُس کے منہ سے چیخیں نکلیں ۔۔۔۔۔جیسے آج اُس کے ضبط کی حدیں ختم ہوئی ہوں ۔۔۔۔۔اُس نے خود پہ قابو پایا ۔۔۔۔اوپر ہوئی آنسوؤں کو اپنے بازوں سے صاف کرنے لگی۔ ۔۔۔۔گہری گہری سانسیں لینے لگی ۔۔۔۔کھلے بالوں کے ساتھ ایک ہاتھ میں ڈائری لیے کھڑی کے پاس آئی ۔۔۔پردے پیچھے کیے۔۔۔۔۔۔ آسمان کو دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔چاند اُس کے بلکل سامنے تھا ۔۔۔۔وہ چاند جس کو دیکھ کہ وہ محبوب کی زیارت کرتی تھی ۔۔۔۔۔۔
۔
“خان صاحب آپ دیکھ رہے ہیں نا یہ چاند “
اُس نے چاند کو دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔جیسے اُس کے دل کو الہام ہوا ہو۔ ۔۔اُس کا محبوب بھی اِس چاند کا دیدار کرتا ہے ۔۔۔۔
۔
اُس نے آنکھیں بند کیں ۔۔۔۔۔دل کو سکون آیا ۔۔۔۔درد کی لہر اُس کا وجود نچوڑ کے باہر نکلی۔ ۔۔۔۔آنکھیں کھولتے ہی اُس نے ڈائری دیکھی ۔۔۔۔۔وہیں زمین پہ بیٹھی ۔۔۔۔۔ایک ایک صفحہ پڑھنے لگی ۔۔۔۔۔اپنے ہی لکھے درد پہ رونے لگی۔ ۔۔۔۔۔اُس نے قلم اٹھایا اور مزید درد لکھنے لگی ۔۔
۔
بہتی ہوئی آنکھوں کی روانی میں مرے ہیں!
کچھ خواب میرے عین جوانی میں مرے ہیں
روتا ہو ں میں ان لفظوں کی قبروں پہ کئی بار
جو لفظ میری شعلہ بیانی میں مرے ہیں
کچھ تجھ سے یہ دوری بھی مجھے مار گئی ہے
کچھ جذبے میرے نقل مکانی میں مرے ہیں
قبروں میں نہیں ہم کو کتابوں میں اتارو
ہم لوگ محبت کی کہانی میں مرے ہیں
اس عشق نے آخر ہمیں برباد کیا ہے
ہم لوگ اسی کھولتے پانی میں مرے ہیں
کچھ حد سے زیاد ہ تھا ہمیں شوق محبت
اور ہم ہی محبت کی گرانی میں مرے ہیں!
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“وجدان اُس لڑکی کا گھر کدھر ہے ؟ “
وہ نظریں جھکائے اُس خبر کا انتظار کر رہا تھا جو اُس کے دل پہ عذاب بن کے گزرے گی ۔۔۔۔اُس کو لگا تھا اب اُس کو کہا جائے گا بھول جاؤ اُس لڑکی کو ۔۔۔۔
۔
“ج ۔۔۔۔ج۔۔۔۔جی امی ؟ مطلب؟”
۔
اُس نے ماں کی اِس بات پہ اوپر دیکھا ۔۔۔۔۔اُن کا مسکراتا چہرہ دیکھا ۔۔۔۔۔اُس کو لگا جیسے وہ اب بول نہیں سکے گا ۔۔۔۔اُس کی زبان اُس کا ساتھ نہیں دے گی۔۔۔۔۔
۔
“ہاں تمہارے ابو اور میں نے یہ فیصلہ کیا ہے ۔۔۔۔۔ہم اُن کے گھر جائیں گے ۔۔۔۔۔تمہارے رشتے کی بات کریں گے “
انہوں نے شوہر کی طرف دیکھتے ہوئے مسکرا کے کہا ۔۔۔۔۔اور شوہر نے بھی اُن کی اِس بات پہ بغیر بولے آنکھوں میں چمک لیے اپنا سر ہلایا ۔۔۔۔
۔
“لیکن ابو ….”
اُس کی حیران ہوتی آنکھوں نے چھلکنا شروع کیا ۔۔۔۔دل ہواؤں میں اڑنے لگا ۔۔۔۔۔۔اُس کو لگا جیسے وہ کوئی خواب دیکھ رہا ہے ۔۔۔۔حقیقت میں یہ کہاں ممکن تھا ۔۔۔
۔
“امی آپ سچ ۔۔۔۔سچ کہے رہی ہیں؟”
اُس نے ماں سے اٹکتے اٹکتے پوچھا ۔۔۔۔جیسے وہ اپنی سنی ہوئی بات کی تصدیق چاہتا ہو ۔۔۔۔جیسے اُس کے کان ایک بار پھر وہ بات سوننا چاہتے ہوں ۔۔۔۔جس کے لیے نا جانے اُس نے کتنی دعائیں مانگی ہیں کتنی منتیں مانگیں تھیں ۔۔۔
۔
“جی بچے سچ کہے رہی ہوں”
انہوں نے آج سے پہلے بیٹے کو اتنا خوش نہیں دیکھا تھا ۔۔۔۔۔اُن کو لگا جیسے آج اُن کے سینے کو ٹھنڈک پہنچ گی ۔۔۔۔۔جیسے بہت تیز آگ لگی تھی۔ ۔آج وہ بھج گئی ۔۔۔۔۔
۔
“شکریہ ابو “
وہ بہتے اشکوں کے ساتھ باپ کے پاس آیا۔ ۔۔۔اُن کے قدموں میں بیٹھا ۔۔۔۔۔دونوں ہاتھ اپنے ہاتھوں میں لیے ۔۔۔۔۔باری باری دونوں ہاتھوں پہ پیار کیا ۔۔۔۔۔۔اور پھر عقیدت کے ساتھ اپنی دونوں آنکھوں پہ لگائے ۔۔۔۔۔جیسے کوئی کسی پیر کے ہاتھ چومتا ہے ۔۔۔۔ویسے وہ اپنے باپ کے چوم رہا تھا۔۔۔۔
۔
باپ کی آنکھوں میں نمی آئی ۔۔۔۔اور انہوں نے پیار سے اُس کے سر پہ ہاتھ پھیرا ۔۔۔۔
۔
“امی آپ کا بہت شکریہ “
پھر وہ اٹھا ماں کے پاس آیا ۔۔۔۔ماں کے قدموں میں بیٹھا ۔۔۔۔وہ جو پاؤں بیڈ پہ رکھے لیٹی تھیں ۔۔۔۔باری باری اُن کے پاؤں چومے ۔۔۔۔۔۔وہ اٹھیں ۔۔۔اُس کو اپنے پاس کیا اپنے سینے سے لگایا ۔۔۔۔اُس کی آنکھوں کے آنسوؤں صاف کیے ۔۔۔اور بچوں کی طرح اُس کے منہ کے دونوں طرف پیار کیا ۔۔۔ایک پیار بھرا بھوسہ دیا ۔۔۔۔۔
۔
اب اُس کو اٹھنا تھا شکرانے کے نوافل پڑھنے تھے ۔۔۔۔اللہ کے حضور سجدہ دینا تھا ۔۔۔(سجدہ تشکر )…..
پھر اُس کو چاند کو دیکھنا تھا ۔۔۔۔۔ملکہ کو بتانا تھا ۔۔۔اُس کو اپنے دل کی آواز سے خوش خبری دینی تھی ۔۔۔۔۔۔
۔
“امی میں آتا ہوں”
اُس کا بس نہیں چل رہا تھا ۔۔۔۔وہ اونچا اونچا چیخے ۔سب کو بتائے ۔۔۔اُس کے ماں باپ راضی ہیں ۔۔۔۔اُس کی خوشی میں خوش ہیں ۔۔۔۔۔وہ اٹھا ۔۔۔۔باہر گیا ۔۔۔۔اب آنسوؤں کے ساتھ چہرے پہ مسکراہٹ تھی ۔۔۔۔ایک خوبصورت مسکراہٹ ۔۔۔۔۔
۔
“کدھر کدھر کدھر “
کمرے سے باہر نکلتے ہی اُس کو پانچوں بہنوں نے گھیر دیا۔۔۔۔۔۔اُس کو درمیان میں کھڑا کر کے اپنے ہاتھوں کے سلاخوں کے اندر کر دیا ۔۔۔۔۔۔
۔
“کدھر بھاگ رہے ہیں آپ جناب”
زینب نے اُس کو گھور کے دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔وہ کب سے دروازے کے باہر کھڑی کان لگائے سن رہی تھیں ۔۔۔۔۔جیسے بھائی سے زیادہ اُن کو ڈر ہو ۔۔۔۔اور بھائی سے زیادہ اُن کو خوشی ۔۔۔۔۔
۔
“اللہ بچائے میری جان کہ وجدان غنڈوں میں پھس گیا “
اُس نے گھومتے ہوئے باری باری سب کو دیکھا ۔۔۔۔۔اور مسکراتے ہوئے کانوں کو ہاتھ لگاتے ہوئے بہنوں کو کہنے لگا ۔۔۔۔۔
۔
“نا جی نا اتنی آسانی سے ہم آپ کو چھوڑ دیں ایسا کیسے ہو سکتا ہے “
اُسی طرح ہاتھوں میں ہاتھ ڈالے
گول گول گھومتے ہوئے سب نے ایک ساتھ کہا ۔۔۔۔
۔
“کیا چائیے یہ تو بتاؤ ظالمو “
اُس نے مصنوعی سی ناراضگی دیکھاتے ہوئے کہا۔۔۔جیسے اُنکی قید بہت سخت ہو ۔۔۔۔۔
۔
“ہمیں تو بہت اچھی سی ٹریٹ چائیے “
فاطمہ نے مسکراتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔
۔
“آپی آپ بھی اِن چوڑیلوں کے ساتھ مل گیں”
۔
اُس نے گول گھومتے ہوئے فاطمہ کی طرف دیکھ کے کہا ۔۔۔۔
۔
“یہ تو ہمارا حق ہے وجی ٹریٹ تو ہم اچھی خاصی لیں گے “
۔۔
“اچھا دس دس روپے بہت ہیں سب کے لیے؟”
اُس نے اپنا وولٹ نکالا اور دس دس کے نوٹ نکالنے لگا۔ ۔۔۔
۔
اُس کے وولٹ باہر نکالتے ہی سب بہنوں نے اُس پہ دعویٰ بول دیا ۔۔۔۔اُس کو نیچے لیٹا کے ۔۔۔۔۔اُس کا وولٹ چھین لیا ۔۔۔۔۔
۔
“اللہ جی مجھے بچائیں”
زمین پہ لیٹے لیٹے وہ اونچا اونچا چلانے لگا ۔۔۔
۔
“بتاؤ بتاؤ کتنے پیسے ہیں ؟”
“سب آپس میں حلف حلف کریں گے “
“نہیں میں چھوٹی ہوں مجھے زیادہ ملیں گے “
“کیوں زیادہ ملیں گے سب کو برابر برابر ملیں گے “
پانچویں اُس کا وولٹ لے کے پیسوں کو دیکھنے لگیں ۔۔۔۔۔
۔
“یہ مجھے دے دیں نا کل آپ لوگوں کو باہر کھانے پے لے کے جاؤں گا “
اُس نے اپنے کپڑے ٹھیک کرتے ہوئے کہا ۔۔۔
۔
“نہیں نہیں وہ بھی ہو گا اور ہم یہ پیسے بھی لیں گے “
“اچھا بھئ لے لو سب لے لو ۔۔۔میری شہزادیوں سے اچھے تو نہیں یہ “
اُس نے مسکراتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔اور باری باری بہنوں کو اپنے دل سے لگایا ۔۔۔اُن کے ماتھے پہ بھوسہ دیا ۔۔۔۔۔
۔
“اچھا پیسے لے لیے نا وولٹ تو واپس کر لو”
“یہ لیں جاناں کیا یاد رکھیں گے آپ “.
زینب نے مسکراتے ہوئے اُس کی طرف خالی وولٹ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔
۔
“اب اجازت ہو تو جاؤں میں؟”
اُس نے کمرے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
۔
“جی جی جناب اجازت ہے اب آپ کو جائیں جائیں”
زینب نے اُس کو بازوں سے پکڑتے ہوئے کہا ۔۔۔اور مسکرانے لگی ۔۔۔۔
۔
“وجی “
وہ جا ہی رہا تھا کہ فاطمہ نے اُس کو آواز دی ۔۔۔
“جی آپی “
وہ پیچھے مڑا ۔۔۔۔وہ اُس کے پاس گی ۔۔۔اُس کو اپنے دل سے لگایا ۔۔۔۔ماتھے پہ پیار کیا ۔۔۔۔
“بہت مبارک ہو میری جان”
۔
بہن کے پیار نے اُس کو ایک بار پھر کمزور کر دیا ۔۔۔اُس کی آنکھوں میں نمی آئی ۔۔۔۔۔ بہن کو گلے سے لگایا۔۔۔۔۔اُن دونوں کو گلے سے لگتا دیکھ کے ساری بہنیں پاس آئیں ۔۔۔۔۔۔ سب نے اُس کو اپنی باہوں کے گہرے میں لیا ۔۔اور شکر ادا کرنے لگیں۔۔۔۔
۔
اُن کے گھر آج ایک عرصے بعد خوشی آئی تھی۔۔۔اور وہ خوشیاں منا رہے تھے ۔۔۔۔۔
۔
” وہاں موجود کس کو خبر تھی خوشیاں بس تھوڑے وقت کی ہوتی ہیں “
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“یا اللہ تیرا لاکھ لاکھ شکر ہے وجدان اِس قابل نہیں تھا ۔۔۔جتنی تو نے اُس کو خوشی دی ہے ۔۔۔۔۔بہت خوش ہوں میں اللہ بہت خوش ہُوں ۔اتنا خوش ہُوں کے میرا دل چاہتا ہے آج پوری رات میں سجدے سے نہ اٹھوں ۔۔۔۔رو رو کے تمھارا شکریہ ادا کروں “
۔
وہ اپنے کمرے میں آیا ۔۔۔۔وضو بنایا ۔۔۔۔۔جائے نماز پے بیٹھا ۔۔۔۔۔اور خدا کے حضور شکرانے کے نوافل ادا کرنے لگا ۔۔۔۔نا جانے کتنے گھنٹوں سے وہ یوں ہی جائے نماز پے بیٹھے خدا کا شکر ادا کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔اُس کی ثناء بیان کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔اُس کوبتا رہا تھا وہ کتنا خوش ہے آج ۔۔۔۔۔کتنا مطمئن ہے ۔۔۔۔۔کتنا پر سکون ہے ۔۔۔۔۔
۔
“اے اللہ تو نے آج مجھ پہ بہت احسان کیا ہے ۔۔۔۔۔مجھ گناہگار کے لیے منزل تک پہنچنے کا راستہ بنایا ہے ۔۔۔۔۔راستہ مجھے مل گیا ہے ۔منزل تک بھی رسائی ہو جائے گی۔۔۔۔۔۔اِن شاء اللہ میری ملکہ اب میری ہو جائے گی ۔”
۔
۔
جائے نماز بچھائے وہ دعا کر کے اٹھا۔۔۔۔۔۔بالکنی کے پاس آیا ۔۔۔۔کھڑکی کے پردے پیچھے کیے ۔۔۔۔۔آسمان کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔وہ چاند جس کو اُس نے کچھ وقت پہلے دیکھا تھا ۔۔۔اُس کے مقابلے میں اب زیادہ چمک رہا تھا۔ ۔۔۔زیادہ روشن تھا ۔۔۔جیسے وہ اُس کو مبارک باد دے رہا ہو ۔۔۔۔اُس کی خوشی میں خوش ہو رہا ہو ۔۔۔۔۔
۔
“سنو ملکہ ! تمہارے وجدان کی دعائیں سن لی گئیں ہیں۔۔۔۔۔۔اُس کو تم تک پہنچنے کا راستہ مل گیا ہے۔۔۔۔۔۔بس تم انتظار کرنا ۔۔۔وجدان کا انتظار کرنا ۔۔اُس وجدان کا جو تمہیں دیوانوں کی طرح چاہتا ہے ۔۔۔۔تمھیں خدا سے مانگتا ہے “
۔
“تمھیں پانے کے لیے ہر منت مانگی ہے میں نے ۔۔تم مجھے مل جاؤ نا ملکہ ۔۔۔میں اپنی جان کا نظرانہ دے کے منتیں پوری کروں گا ۔۔۔بس ایک دفعہ تم میری ہو جاؤ ملکہ “
۔
وہ اپنی خوشی کو سنبھال نہیں پا رہا تھا ۔۔۔اُسے لگ رہا تھا آج وہ خوشی سے پاگل ہو جائے گا ۔۔۔۔وہ بار بار شیشے کے آگے جاتا خود کو دیکھتا ۔۔۔۔اپنے چہرے کی مسکراہٹ کو دیکھتا ۔۔۔۔اپنی خوشی پہ خود ہی خوش ہوتا۔ اور خود ہی ما شاء اللہ کہتا ۔۔۔۔جیسے اپنی ہی نظر سے ڈر رہا ہو ۔۔۔۔۔۔کہیں اُس کی خوشیوں کو اُس کی اپنی ہی نظر نہ لگ جائے ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اماں میں چاہتی ہوں اب ہمیں زرمینہ کی شادی کا سوچنا چاہئے “
رقیہ بیگم نے اماں کے کمرے میں بیٹھ کے اُن کو کہا ۔۔۔
۔
“تمھیں اچانک سے اُس کی شادی کا خیال کیسے آ گیا “
اماں کی جگہ ابراہیم صاحب نے ان کو جواب دیا ۔۔۔جیسے اُن کو بیوی کی اِس بات پہ بہت حیرت ہوئی ہو۔۔۔۔۔۔
۔
“میں تو ایسے ہی کہے رہی تھی ۔۔۔۔۔اُس کی شادی کی عمر ہے ۔۔۔اور بچیوں کی شادی وقت پہ ہی کی کوئی اچھی ہوتی ہے “
۔
“کوئی بات ہوئی ہے کیا ؟ “
اماں نے بیٹے کی طرف دیکھتے ہوئے اُن سے پوچھا ۔۔۔
۔
“نہیں نہیں اماں بات تو کوئی بھی نہیں ہوئی ۔۔اتنے رشتے آ رہے ہیں زرمینہ کے ۔۔۔۔یوں روز روز رشتے ٹھکرانا اچھی بات تو نہیں”
۔
انہوں نے اپنے دل کی پریشانی کو چھپاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
۔
“ٹھیک کہے رہی ہو تم ۔۔۔یوں رشتے ٹھکرانا ایک گناہ ہے ۔۔۔۔۔بار بار بیٹیوں کے لیے اچھے رشتے نہیں آتے “
اماں نے رقیہ بیگم کی بات پہ اُن کا ساتھ دیا ۔ اُن کے دل کو سکون ہوا ۔۔۔۔۔۔
۔
“ہماری زرمینہ گل کو رشتوں کی کوئی کمی نہیں ہے اماں ۔۔۔۔ابھی وہ پڑھ رہی ہے ۔۔۔۔جب تک اُس کی تعلیم مکمل نہیں ہوتی ۔۔۔۔میں اُس کی شادی نہیں کروا سکتا “
۔
“مگر ابراہیم صاحب …….۔
۔
“مجھے لگتا ہے میں نے اپنی بات کر لی ہے
اب کی بار ابراہیم صاحب کا لہجہ ایسا تھا کہ وہ کچھ بول نا سکیں ۔۔۔مگر دل کا حال وہ بہت اچھے سے جانتی تھیں ۔۔۔۔وہ چاہتی تھیں جلد از جلد زرمینہ کی شادی ہو جائے ۔۔۔
۔
اُن کی عزت کی حفاظت ایسی میں تھی۔ ۔۔۔۔زرمینہ کی شادی ہو جائے وہ اپنے گھر کی ہو جائے ۔۔۔
۔
اِس عمر میں بچیاں بھک جاتی ہیں ۔۔۔۔۔خواب دیکھتی ہیں ۔۔۔یہ کچی عمر کے خوابوں کی کہاں کوئی تعبیر ہوتی ہے ۔۔۔۔
شادی ہو جانے کے بعد سب ٹھیک ہو جاتا ہے ۔۔۔۔۔وہ سب بھول جاتی ہیں ۔۔۔۔۔۔ان شاء اللہ میری زرمینہ بھی سب بُھول جائے گی ۔۔۔۔۔
۔
انہوں نے آنکھیں بند کر کے ایک گہرا سانس لیا اور اپنے دل میں کہنے لگیں۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“یہ چاند ایک دم اتنا کیسے روشن ہو گیا “
وہ کھڑکی کے پاس کھڑی چاند کو دیکھ رہی تھی ۔۔۔
۔
چاند کو تو وہ کب سے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔مگر یہ ایک دم سے کیسے اتنا روشن ہو گیا ۔۔۔۔جیسے چاندنی میں نہا رہا ہو ۔۔۔۔۔جیسے کوئی فرشتہ آسمان سے اُتر آیا ہو اور سارا عالم نور ہی نور ہو گیا ہو ۔۔۔۔
۔
اُس نے آنکھیں بند کیں ۔۔۔۔جیسے اُس نور کو اپنے اندر اُتار رہی ہو ۔۔۔۔۔
۔
آنکھیں بند کرتے ہی اُس کو لگا جیسے اُس کو سکون مل رہا ہے ۔۔۔۔۔جیسے کہیں کوئی بہت خوش ہے وہ اپنی خوشی سے اُس کے بے قرار دل کو قرار دے رہا ہے ۔۔۔۔۔
۔
جیسے اللہ نے اج اُس کو خوشی کی بشارت دی ہو ۔۔۔۔۔اُس کے دل میں سکون اُتارا ہو ۔۔۔۔۔
۔
“اللہ جی میرے دل کو ایسے ہی پر سکون رکھا کریں نا۔ ۔۔میرے دل میں اپنا ایسے ہی نور ڈالا کریں نا ۔”
۔
اُس نے آسمان کی طرف دیکھا اور دعا کرنے لگی ۔۔۔۔دعا میں اللہ جی سے شکایت کرنے لگی ۔۔۔۔
۔
وہ ہمیشہ اللہ جی سے گِلہ کرتی تھی ۔۔۔۔اپنے چھوٹے چھوٹے گلے بھی وہ اللہ جی سے کیا کرتی تھی ۔۔۔۔اُس کو بہت حیرت ہوتی تھی اُن لوگوں پے جو یہ کہتے تھے اللہ جی گلوں پہ خفا ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔اُن کا بس شکر ادا کیا کرو ۔۔۔۔۔
وہ تو اللہ جی سے ناراض بھی ہوتی تھی۔ ۔۔۔اور ناراضگی کی صورت میں اُن سے بات کرنا چھوڑ دیا کرتی تھی ۔۔۔اور پھر خود ہی منا بھی جاتی ۔۔۔یا پھر اُس کو مانا لیا جاتا ۔۔۔۔اُس کو جس چیز کا دل چاہتا اللہ جی کسی نہ کسی وسیلے سے اُس تک وہ چیز پہنچا دیتے ۔۔۔۔۔اور وہ خوش ہو جاتی ۔۔۔اور اِس طرح دونوں میں بات چیت کا سلسلہ پھر سے شروع ہو جاتا ۔۔۔۔۔
۔
وہ ہمیشہ یہ سوچتی تھی اللہ جی تو اپنے بندے سے محبت کرتے ہیں ۔۔۔۔اور جہاں محبت ہوتی ہے وہاں شکایتیں بھی ہوتی ہیں ۔وہاں ناراضگی بھی ہوتی ہے ۔۔۔۔۔اور جہاں ناراضگی ہوتی ہے وہیں تو گہری محبت ہوتی ہے ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: