Hisar e Ishqam Novel by Pari Saa – Episode 10

0
حصارِ عشقم از پری سا – قسط نمبر 10

–**–**–

تم سورہی ہو؟۔ڈنر کےبعد وہ دونوں کمرے میں آٸے تو رشل اطمینان سےاپنا تکیہ اور کمفرٹر سنبھالتی صوفے کی ظرف بڑھ گٸی۔۔۔۔۔۔زین نے گھور کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔
ہاں میں سورہی ہوں،دکھاٸی نہیں دیتا؟۔۔۔۔۔
رشل نے جلے کٹے انداز میں جواب دے کر کمفرٹر منہ تک اوڑھ لیا۔۔۔۔۔۔
رشل اٹھو اور میرے ساتھ پیکنگ کرواو۔۔۔۔۔
زین اسکے سر پر کھڑا بول رہا تھا لیکن رشل کے کان پر جوں تک نہ رینگی۔۔۔۔۔
میں کچھ کہہ رہا ہوں!
اب کے وہ ذرا سختی سے بولا ساتھ ہاتھ بڑا کر رشل کا کمفرٹر بھی کھینچ لیا۔۔۔۔۔
بدتمیز انسان۔۔۔۔۔۔۔دو ادھر یہ۔۔۔۔۔رشل اٹھ کر بیٹھتی اسے گھور کر دیکھنے لگی۔۔۔۔شاہ زین نے اسکے کمفرٹر لینے کے لیۓ آگے بڑھاٸے گٸے ہاتھ کو پکڑ کر اپنی طرف کھینچا۔۔۔۔۔۔
نہیں جاو گی میرے ساتھ؟
“نہیں نہیں نہیں”رشل نے غصہ سےبول کر اسکے سینے پر ہاتھ رکھ کر اسے دور کرنا چاہا لیکن ہمیشہ کی طرح ناکام رہی۔۔۔۔۔۔
تو تم نہیں جاوگی میرے ساتھ؟۔۔۔۔۔
زین نے دوبارہ سوال دوہرایا۔۔۔۔”بہرے ہو؟”
اب کی بار رشل چڑ کر بولی لیکن اگلے لمحے اسکی ساری بیزاریت بوکھلاہٹ میں تبدیل ہوچکی تھی کیونکہ زین نے اسے بازووں میں اٹھاکر بیڈ پر اچھال دیا تھا۔۔۔۔۔۔اب وہ چہرے پر خطرناک حد تک سنجیدگی سجاٸے اسکی طرف بڑھ رہا تھا۔۔۔۔۔”نہیں جاوگی میرے ساتھ؟”۔۔۔۔
“یہ…..یہ کیا…طریقہ ہے؟”
اس نے بوکھلاکر اٹھنا چاہا لیکن تب تک زین اسکے قریب پہچ چکا تھا۔۔۔۔۔
یاں تو میری یہ بات مانو…
یاں وہ….
زین نے سرگوشیانہ لہجے میں کہتے اسکے سامنے دو آپشن رکھے۔۔۔۔۔۔
تم زبردستی مجھے نہیں لے جاسکتے ہو،جب مجھے تم جیسے انسان کے ساتھ جانا ہی نہیں ہے تو……
اسکی چلتی زبان کو بریک لگا جب زین نے اسے خود سے بے حد قریب کیا۔۔۔۔۔
یہ کیا بیہودگی ہے۔۔۔۔۔
وہ بے طرح چیخی تھی اسکی گرفت میں۔۔۔۔۔
بیہودگی نہیں،بیوی ہو میری۔۔۔۔۔۔۔زین نے اسکی بولتی بند کردی۔۔۔۔۔۔۔
ز….زین پلیز۔۔۔۔
……ششش……ساٸلینس
رشل نے کچھ کہنا چاہا جب زین نے اسکے لبوں پر انگلی رکھ کر چپ کرادیا۔۔۔رشل کرنٹ کھاکر رہ گٸی تھی۔۔۔۔۔۔۔
لیو می زین۔۔۔۔۔پلیز!
اسکی ساری بہادری نجانے کہاں جاسوٸی تھی اس لمحے۔۔۔۔۔۔
میں نے تمھیں دو آپشن دیۓ اور تم نے یہ چنا سو اب چپ رہو بلکل۔۔۔۔۔۔
زین بے حسی سے بولا تو رشل کی ریڑھ کی ہڈی میں سنسناہٹ دوڑنے لگی۔۔۔۔رخساروں پر بلاوجہ ہی لالی بکھرنے لگی۔۔۔۔۔۔زین نے بھرپور نظروں سے اسے دیکھا۔۔۔
“مم میں تیار ہوں…چلنے کے لیۓ”
وہ لڑکھڑاتے لہجے میں بولی۔۔۔
اب میرا ارادہ کینسل ہوگیا ہے Mi Alma۔۔۔۔تم نے دیرکردی۔۔۔۔وہ اسکی آنکھوں میں جھانک رہا تھا۔۔۔۔۔۔جسکی ساری بہادری پل بھر میں ہوا ہوگٸی تھی۔۔۔۔۔زین کے ہاتھوں گویا اسکی کمزوری آگٸی تھی۔۔۔۔۔۔
نن….نہیں پلیز چھوڑدو مجھے،میں تمھاری پیکنگ بھی کردونگی۔۔۔۔۔۔پلیز پلیز۔۔
وہ منت بھرے لہجے میں بولی توزین مزید اسے پریشان کرنے کا ارادہ کرتا اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔۔”دیٹس گڈ”اب جلدی پیکنگ شروع کرو۔۔۔۔۔
اب وہ اپنے موبائل پر انگلیاں چلاتا وارڈروب سے کپڑے نکالنے کے لیۓ اس طرف بڑھ گیا۔۔۔۔۔
رشل کی حالت دیکھ کر اسے ہنسی آرہی تھی۔۔۔۔
“بڑی آٸی شیرنی”۔۔۔۔۔۔
اس نے مسکراہٹ دباکر بیڈ پر اپنے کپڑے رکھتے ہوٸے ایک نظر رشل پرڈالی۔۔۔۔۔۔
“ٹپوری پولیس والا،تم ہو ہی ٹپوری کہیں کے”۔۔۔۔۔۔
وہ منہ میں بڑبڑاتی اٹھ کھڑی ہوٸی۔۔۔۔۔ابھی پیکنگ کا مرحلہ سر کرنا باقی تھا۔۔
____________________________
“اے گلابو”۔۔۔۔۔
چل جلدی آجا ڈانس کالاس شروع ہوگٸی ہے۔۔۔۔۔تیرا ٹھمکا سیٹ کرانا ہے۔۔۔۔۔
شبو نے سیڑھیاں چڑھتی گلابو کو دیکھ کر کہا اور مصنوعی بالوں کی چٹیا داٸیں باٸیں جھلاتی آگے بڑھ گٸی۔۔۔۔۔۔
وکی کے ماتھے پر بے اختیار بل پڑگٸے تھے۔۔۔۔۔وہ کمرے کے دروازے پہ پہچا تو عینا باہر نکل رہی تھی جسکے نتیجے میں وکی کے مضبوط شانے سے اسکا سر ٹکراگیا۔۔۔۔۔۔
“گلابو میڈم اندھی ہوگٸیں ہیں”عینا نے غصے میں سر سہلاتے اسے گھورا۔۔۔۔۔جبکہ وکی اسکے جان بوجھ کر گلابو کہنے پر بری طرح تپ چکا تھا۔۔۔۔۔شبو کی بات پر آنے والے غصے کو عینا نے ہوادے ڈالی تھی۔۔۔۔۔
“دانت کم نکالو اینا کونڈا”کراٸے پر لے کر آٸی ہو بتیسی؟
وہ چڑ کر بولتا اندر داخل ہوگیا۔۔۔۔۔
کیا ہوا منہ کیوں پھولا ہوا ہے ہماری گلابو کا؟۔۔۔۔۔
عینا کے سوال پر وکی کو پتنگے لگ گٸے تھے گویا۔۔۔۔
“ڈانس کالاس کا انویٹیشن ملا ہے”۔۔۔۔۔۔
کالاس؟ عینا نے کلاس کو کالاس بولنے پر اسے سوالیہ نظروں سے دیکھا۔۔۔۔۔
“ہاں کالاس”۔۔۔۔۔اب یہ لوگ میرا ٹھمکا سیٹ کرانے کی فکر میں مرے جارہے ہیں۔۔۔۔
“ڈیم اٹ”وکی نے مکا بنا کر اپنے دوسرے ہاتھ پر دے مارا۔۔۔۔۔اس کی دیکھ کر عینا نے بڑی مشکل سے ہنسی ضبط کی تھی۔۔۔۔۔۔
“تو جاو،ڈانس کالاس میں ٹھمکا سیٹ کرانے”۔۔۔۔۔۔
افسوس یہ ٹھمکا تم زین سر کی شادی سے پہلے سیٹ کرالیتے تو کسی بہانے شرکت کا موقع تو ملتا۔۔۔۔۔۔
عینانے اسکے ذخموں پر نمک چھڑک کر قہقہ لگایا تو وکی نے گھورکر اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔
“یہ آنکھیں افف”۔۔۔۔
وکی کے لاٸنر لگی آنکھوں سے گھورنے پر عینانے پھر اسے چھیڑا۔۔۔۔۔۔
وکی نے اٹھ کر جانے میں ہی عافیت جانی۔۔۔۔
عینا کونڈا کی توپوں کا نشانہ بننے سے کہیں بہتر تھا وہ شبو کی ڈانس کالاس میں شامل ہوجاتا۔۔۔۔۔۔۔
اپنے پیچھے اسے عینا کا چھت پھاڑ قہقہ سنائی دیا تھا۔۔۔۔۔۔
“نمونی”۔۔۔۔۔۔وکی نے رخ موڑ کر تپے ہوٸے انداز میں کہا۔۔۔۔۔
نمونی تو ابھی تم نظر آرہی ہو گلابو باجی۔۔۔۔۔۔
وہ باز آنے والی چیز ہی کہا تھی۔۔۔۔
___________________________
سب کی محبتیں نصیحتیں وصول کرنے کے بعد وہ اب اپنی مطلوبہ سیٹ پربیٹھ چکے تھے،چند منٹوں بعد جہاز آسمان کی بلندیوں میں پرواز کررہا تھا۔۔۔۔
رشل نے ایک سرد آہ لبوں سے خارج کی اور سیٹ کی پشت سے سر ٹکاکر آنکھیں موند لیں۔۔۔۔۔
زین کے لبوں پر بڑی آسودہ سی مسکراہٹ رقص کناں تھی۔
چل پیر سائیں کوئی آیّت پُھونک
کوئی ایسا اِسمِ اعظم پڑھ
وہ آنکھیں میری ہو جائیں
کوئی صوم صلوٰۃ دُرُود بتا
کہ وجّد وُجُود میں آ جائے
کوئی تسبیح ہو کوئی چِلا ہو
کوئی وِرد بتا
وہ آن ملے
مُجھے جینے کا سامان ملے
گر نہیں تو میری عرضی مان
مُجھے مانگنے کا ہی ڈھنگ سِکھا
کہ اشّک بہیں میرے سجّدوں میں
اور ہونٹ تھرا تھر کانپیں بّس
میری خاموشی کو بھّید مِلے
کوئی حرف ادا نہ ہو لیکن
میری ہر اِک آہ کا شور وہاں سرِ عرش مچّے
میرے اشکوں میں کوئی رنگ مِلا
میرے خالی پن میں پُھول کِھلا
مُجھے یار ملا
سرکار ملا
اے مالک و مُلک، اے شاہ سائیں
مُجھے اور نہ کوئی چاہ سائیں
مری عرضی مان، نہ خالی موڑ
مُجھے مان بہت مرا مان نہ توڑ
چل پیر سائیں کوئی آیّت پُھونک
کوئی ایسا اِسمِ اعظم پڑھ
وہ آنکھیں میری ہوجائیں
____________________________
“تو ہوگیا”?
عینانے وکی کو دیکھتے ہی سوال داغا۔۔۔۔
“کیا”وکی نے سوالیہ انداز میں اسے دیکھا۔۔۔۔۔
ٹھمکا سیٹ ہوگیا؟۔۔۔۔
عینا نے مسکراہٹ ضبط کرتے اسے چڑایا تو وکی نے کھاجانے والی نظروں سے اسے گھورا۔۔۔۔۔۔
“ہاں ہوگیا،دکھاوں کیا”۔۔۔۔۔
اسکے تپ کر بولنے پر عینا ہنس پڑی تھی۔۔۔۔۔۔۔
زین سر سے بات ہوٸی تمھاری۔۔۔۔۔۔
ہنسی تھمی تو اس نے پوچھا۔۔۔۔۔
وکی کسی گہری سوچ میں گم تھا۔۔۔۔۔۔
“وقاص”?
عینا کی پکار پر اس نے عینا کو دیکھا۔۔۔۔۔۔
اب ہمیں بڑے محتاط انداز میں سب کرنا ہوگا۔۔۔۔۔
آغا نے پلان بدل دیا ہے۔۔۔۔
اب وہ یہاں نہیں آٸے گابلکہ..
سنجیدگی سے کہتے وکی کی بات ادھوری تھی کہ دروازہ کھولا گیا۔۔۔۔۔۔
دونوں نے فوراً دروازے کی سمت دیکھا جہاں شبو کھڑی تھی۔
________________
شبو کے چہرے پر ابھرنے والے تاثرات ان دونوں کے دماغ میں خطرے کی گھنٹی بجارہے تھے۔۔۔۔
واہ رے گلابو،تو تو بڑی تیز نکلی،،،،بلکہ نکلا۔۔۔۔۔۔وقاص۔۔۔۔
شبو نے وہیں کھڑے کھڑے تالیاں بجاکر سن کھڑے وکی کو مخاطب کیا پھر ایک نظر عینا پر ڈالی۔۔۔۔۔
تو،تو بھی ملی ہوٸی ہے اسکے ساتھ؟۔۔۔
شبو فوراً پلٹ کر جانے لگی تھی،اسکا ارادہ بھانپ کر وکی اور عینا ایک ساتھ تیر کی طرح اسکی طرف بڑھے تھے۔۔۔۔۔وکی نے زور سے اسکے منہ پر ہاتھ جمارکھا تھا وہ بری طرح ہاتھ پیر ماررہی تھی۔۔۔۔۔۔۔وکی اسے کھینچ کربلکل کمرے کے اندر ہوگیا تو جلدی سے عینا نے دروازے کی کنڈی چڑھادی۔۔۔۔
میں سب بتادوں گی حسینہ بیگم کو تم لوگ…..
وکی کا ہاتھ ہٹاکر وہ دھمکی آمیز لہجے میں بولی تو عینا نے وکی کے اشارے پر پلنگ کے نیچے سے رسی نکال لی۔۔۔۔۔۔
اگلےچند منٹوں میں وہ شبو کے ہاتھ پاوں رسی سے باندھ کر کلوروفام کے ذریعے اسے بیہوش کرچکےتھے۔۔۔۔۔۔شبو کے منہ پر ٹیپ اور آنکھوں کے اوپر سیاہ پٹی بندھی تھی۔۔۔۔یہ تمام ضروری اشیا۶ وکی ہی وہاں لایا تھا۔۔۔۔۔۔
کیا کریں اب اسکا؟
عینا کے چہرے پر تفکر پھیلا تھا۔۔۔۔وکی نے عینا کے سوال پر پرسوچ انداز میں بیہوش پڑی شبو کو دیکھتے پیشانی مسلی۔۔۔۔۔۔
زین سر کو انفارم کرنا ہوگا پہلے۔۔۔
وکی کے کہنے پر عینا نے اثبات میں سر ہلادیا اسی اثنا میں دروازہ بجنے لگا۔۔۔۔۔
جلدی اٹھاو اسے۔۔۔۔
عینا نے بجلی کی سی تیزی سے شبو کی طرف لپک کر وکی سے کہا۔۔۔۔دونوں نے مل کر اسے پلنگ کے نیچے چھپاکر اوپر سے چادر گرادی تھی۔۔۔۔
اس کارواٸی سے غارغ ہوکر وکی نے دروازہ کھولا تو وہاں چمبیلی نامی چھکا کھڑا تھا۔۔
“کیاہوا رےچمبیلی”
ہاٸےشبو تیرے پاس جانے کا بول کر آٸی تھی،کب سے ڈھونڈ رہی ہوں کہاں ہے؟۔۔۔۔
چمبیلی نے سوالیہ نظروں سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔
“میرے پاس تو نہیں آٸی وہ”
وکی نے کمال بے نیازی سے ہاتھ جھٹک کر کہا۔۔
ہاٸے ہاٸے اسے کہاں ڈھونڈتی پھروں اب میں۔۔۔۔
چمبیلی ایک ساتھ دو تالیاں مارتی بیزاری سے بڑبڑاتی آگے بڑھ گٸی۔۔
_____________________________
“او شٹ”
سکرین پر نظر پڑھتے ہی زین کے منہ سے بے اختیار نکلا۔۔۔۔۔
“ایک جگہ بہت سے چوہے رہتے ہیں،ایک بلی بھی وہاں آبستی ہے،چوہوں کو نھیں پتا ہوتا اور ایک دن ایک چوہا بلی کو دیکھ لیتا ہے بدلے میں بلی اسے پکڑ لیتی ہے،آدھا چوہا کھاکر وہ باقی وہیں پھینک دیتی ہے جس سے گھر کے مکین بہت پریشان ہوجاتے ہیں اور چوہے کو اٹھاکر باہر پھینکنے کا فیصلہ کرتے ہیں۔۔۔۔اسی لیۓ کہتے ہیں کہ دشمن سے ہمیشہ بچ کر رہنا چاہیۓ”
کوڈورڈز میں اسے جو انفارميشن دی گٸی تھی وہ اسے پریشان کرگٸی ۔۔۔۔۔وہ ہمیشہ سے کال اور میسجز پر اسی طرح بات کیا کرتے تھے اسی لیۓ اصل بات سمجھنے میں اسے کسی قسم کی دقت نہیں ہوٸی تھی۔۔۔۔۔اب مشکل یہ تھی کہ وہ خود یہ معاملہ نہیں دیکھ سکتا تھا کیونکہ وہ رشل کے ساتھ آج صبح ہی لندن پہچاتھا۔۔۔۔
وہ اس وقت فریش ہوکربیڈ پر نیم دراز تھا جبکہ رشل باتھ لینے گٸی تھی۔۔۔۔۔
وہ دونوں لندن کے ایک فاٸیو سٹار ہوٹل میں موجود تھے۔۔۔۔۔
زین موبائل ساٸیڈ میں رکھتا کچھ سوچنے لگا تھا۔۔۔۔۔دفعتاً اسے ایک خیال آیا۔۔
____________________________
وہ دونوں اس وقت The abbey restaurant میں ڈنر کے لیۓ آٸے تھے۔۔۔۔۔رشل مسلسل زین کو نظر انداز کررہی تھی۔۔۔۔زین نے دیکھا ان سےپیچھے والی ٹیبل پر ایک گوری آکر بیٹھی ھے۔۔
رشل پر ایک نگاہ ڈالتا وہ اٹھ کر اس طرف بڑھ گیا۔۔۔۔
رشل نے پلٹ کر دیکھنا ضروری نہ سمجھا کہ وہ کہاں گیا ہے ،وہ اپنی پلیٹ پر جھکی کھانے میں مصروف رھی۔۔۔۔جب کافی دیر بعد بھی زین نہ آیا تو رشل نے نوالا منہ میں ڈال کر بلاارادہ ہی پیچھے مڑ کر دیکھا۔۔۔۔۔وہ زین کی تلاش میں یہاں وہاں نظر دوڑارہی تھی جب اسکی نظر بلکل پیچھے والی ٹیبل پہ بیٹھی لڑکی اور ساتھ بیٹھے اس لڑکی سے ہنس ہنس کر باتیں کرتےزین پر پڑی۔۔
منہ میں موجود نوالہ وہ چبانا بھول گٸی تھی جیسے۔۔۔۔۔
زین اس لڑکی کے سامنے والی چیٸر پر بیٹھا بے تکلفی سے اسکے ساتھ گپیں ہانکنے میں مصروف تھا۔۔۔۔۔۔وہ دیکھ چکا تھا کہ رشل اسے ہی دیکھ رہی ہے۔۔۔۔اب نظر انداز کرنے کی باری زین کی تھی۔۔۔۔۔۔چند منٹ تک رشل اسےگھورتی رہی۔۔۔۔
نجانے کیوں اسے برا لگ رہا تھا زین کا کسی لڑکی کے ساتھ یوں بے تکلف ہونا۔۔۔۔۔۔
ہنہہ،میں کیوں سوچ رہی ہوں ایسا،مجھے کیا تم کچھ بھی کرو۔۔۔
دل میں زین کومخاطب کرتی وہ رخ موڑ کر کھانے کی طرف متوجہ ہوگٸی لیکن کھانے سے بھی جیسے دل اچاٹ ہوگیا تھا۔۔
نا چاہتے ہوٸے بھی اس نے ذرا کی ذرا پلٹ کر ایک چور نظر پیچھے ڈالی لیکن اب وہاں کوٸی نہیں تھا۔۔۔۔۔زین اور وہ لڑکی دونوں غائب تھے۔۔۔
کسےڈھونڈرہی ہو مسز؟
زین کی آواز پر وہ چونک کر سامنے دیکھنے لگی۔۔۔۔زین اپنی جگہ پر بیٹھا شرارت بھری نظروں سے اسے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔
رشل کو فوراً اپنی غلطی کا احساس ہوا۔۔۔
اب یہ ٹپوری پولیس والا سمجھے گا میں اسے دیکھ رہی تھی،ویسے میں اسے ہی تو دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔
منہ ہی منہ میں بڑبڑاتی وہ پرس کندھے پر ڈال کر اٹھ کھڑی ہوٸی۔۔۔
“ارے کیا ہوا؟کھانا تو ٹھیک سے کھاو”
اسکے کھڑے ہونے پر زین فوراً بولاتوووہ اسے گھورنے لگی۔۔
نہیں کھانا مجھے۔۔۔۔
لیکن کیوں؟۔۔
اسکے تپے ہوٸےانداز پر زین نے بمشکل ہنسی ضبط کی۔۔۔۔۔
بس نہیں کھانا۔۔۔۔
“تم جیلس ہورہی ہو”۔۔۔۔وہ جانے لگی تھی جب زین کی آواز نے اسکے قدم جکڑے۔۔۔۔۔
اوہ…واو…..مسز شاہ زین۔۔۔۔۔
جیلس پیوپل۔۔۔۔زین نے دل جلانے والی مسکراہٹ لبوں پر سجاٸے آنکھوں میں شرارت بھر کر رشل کو دیکھا۔۔
زین نے بے اختیار قہقہ لگایا کیوں کہ رشل پرس ٹیبل پر پٹخنے کے انداز میں رکھتی دوبارہ کرسی گھسیٹ کر بیٹھ چکی تھی۔۔۔۔اس کے بے ہنگم قہقے پر آس پاس بیٹھے لوگ بھی ان کی طرف متوجہ ہوگٸے تھے۔۔۔۔۔۔
“اسٹوپڈ ہو پورے”رشل نے یہاں وہاں چور نظروں سے دیکھتے زین کو گھرکا۔۔۔۔
“جیسے بھی ہیں،تمھارے ہیں”وہ کرسی کی پشت سے ٹیک لگاٸے سینے پر ہاتھ رکھتا سر کو خم دے کر ذرا سا جھکتا ڈراماٸی انداز میں بولا۔۔۔۔۔۔رشل کا دل چاہا سارے برتن اٹھاکر اسکے سر پر دے مارے۔۔۔۔
پلیٹ اپنی طرف کرتے رشل نے ایک جتاتی نظر زین پرڈالی۔۔۔۔۔۔زین نے عین اسی لمحے ایک آنکھ دبادی۔۔۔۔رشل پھر سےگڑبڑاکر یہاں وہاں دیکھنے لگی تھی۔
_____________________________________________
آغا کا کہنا تھا وہ سب خطرے میں ہیں،ان ہی کے گیٹگ میں سے ہے کوٸی جو ان سے غداری کررہا ہے۔۔۔۔۔شبو کے غائب ہونے کی خبر پر آغا بھی چونک اٹھا تھا شبو اس گینگ کی پرانی ممبر تھی،حسینہ باٸی تو بن جل کی مچھلی کی طرح تڑپ اٹھی تھی شبو کی گمشدگی کی خبرپر۔۔۔۔۔۔گلابو نے بڑی چالاکی کا مظاہرہ کرتے خود پر کسی کا شک نہیں جانے دیا تھا۔۔۔۔
زین کو وہ لوگ تمام حالات سے آگاہ کرچکے تھے بس اب پلان کو عملی جامہ پہناٸے جانے کا انتظار تھا۔۔۔
_________________________________________
جہاں ہاتھ بھی نہ سجھائی دے
وہ وہاں بھی مجھکو دکھائی دے
وہ جو لا مکاں کا مقیم ہے
مجھے ڈھرکنوں میں سنائی دے
وہ مبہوت سا تھا۔۔۔۔اسکے لبوں سے آزاد ہونے والے الفاظ بھی اسے سمجھ نہیں آرہے تھے۔۔۔۔شعور سے لاشعور کا سفر لمحوں میں طے ہوا تھا گویا۔۔۔۔۔۔
کک..کون ہو تم؟۔۔۔۔
دیکھو پلیز….مم….میرے پاس مت آنا۔۔۔۔۔۔
اسکے کانپتے لبوں سے ٹوٹے پھوٹے الفاظ برآمد ہوٸے۔۔۔۔
یہ…یہ..سب رکھ لو مگر….مجھے کچھ مت کہنا میں ہاتھ جوڑتی ہوں۔۔۔۔اس نے اپنے کانوں سے سونے کے ٹاپس اور ہاتھوں سے وہ انگوٹھی اتارکر وہاں رکھ دی جو اسکی ماں کی تھی۔۔۔۔۔جو اسے بے حد عزیز تھی۔۔۔۔
ان آنکھوں سے دو بے بس سے موتی ٹوٹ کر بکھرنے پر وہ جیسے ہوش کی دنیامیں لوٹا۔۔۔۔
اب کے اس نے بغور اسکی اڑی ہوٸی رنگت اور ڈرا سہماانداز دیکھا۔۔۔۔۔
اس نے کتنی دعائيں کی تھیں کہ اس پر یہ وقت نہ آٸے،وہ جو کچھ کرچکی تھی اسکا خمیازہ بھگتنا باقی تھا۔۔۔۔۔ایک جھوٹی محبت اسے کہاں سے کہاں لے آٸی تھی،یہ وہ دلدل تھی جہاں ایک بار آکر کسی کا نکل جانا ناممکنات میں سے تھا۔۔۔۔
مگر اسکے دل میں ایک موہوم سی امید تھی۔۔۔۔۔
اب تک وہ خود کو بچاتی آٸی تھی،اب تک اس پر کسی کی نظر نہیں گٸی تھی،لیکن آج حسینہ باٸی نے اسے نہیں بخشا تھا۔۔۔
ہمیشہ کی طرح گم سم وہ بیٹھی تھی جب ایک شخص کمرے میں داخل ہوا۔۔۔۔
ڈریں مت …
ریلیکس رہیں….فہد کے منہ سے نکلنے والے الفاظ پر ماہم نے سہمی ہوٸی نظروں سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔خود پر اس نے بڑا سا دوپٹہ اچھی طرح لپیٹ رکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔
اسکی بڑی بڑی آنکھیں انجانے خوف سے لبریز تھیں۔۔۔۔کچھ تو تھا ان آنکھوں میں جو فہد کو اپنا دل رکتا محسوس ہوا۔۔۔۔۔
فہد پاس پڑی چیٸر پر جابیٹھا۔۔۔۔۔
“آپ جو بھی ہیں چلے جاٸیں یہاں سے پلیز”
میں وہ نہیں…جج..جو آپ سمجھ رہے ہیں۔۔۔۔۔
ماہم کی لرزتی آواز ابھری۔۔۔۔۔۔
وہ بری طرح ڈری ہوٸی تھی،یقیناً فہد کو غلط سمجھ بیٹھی تھی۔۔۔۔
فہد نے سر اٹھاکر پھر ان
آنکھوں میں دیکھا۔۔۔۔۔۔جن میں ایک سمندر موجزن تھا۔۔۔۔۔
ماہم اسکے چلے جانے کے انتظار میں تھی،مگر وہ دونوں ہاتھوں کو باہم ملاٸے زمین کو گھورتا وہیں بیٹھا رہا،وہ ابھی وہاں سے نہیں جاسکتا تھا کیونکہ اس نے جو قیمت یہاں داخل ہونے کی ادا کی تھی اسکے مطابق اسے رات یہیں گزارنی تھی۔۔۔۔۔
وہ جس کام کے لٸے آیا تھا وہ کام اسےکرنا تھا۔۔۔۔۔۔
لیکن نجانے کیوں اسکا دل چاہا تھا وہ ان آنکھوں کو دیکھتا رہے ،وہ آنکھیں جو اسے لمحہ بھر میں اپنا اسیر کرگٸی تھیں۔۔۔۔۔۔۔
بلآخر ایک فیصلہ کرتا وہ جھٹ سے اٹھا اور دروازے کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔ماہم کے بے جان وجود میں جیسے جان پڑگٸی تھی۔۔۔
ڈور لاک کرلیں۔۔
بنارخ موڑے کہتا وہ باہر نکل گیا،ماہم نے دوڑ کر دروازہ بند کیا تھا
_____________________________
وکی اور عینا کی مدد سے بیہوش پڑی گلابو کو رسیوں کے ذریعے نیچے اتارکر بڑی چالاکی سے وہ مین روڈ پر تیار کھڑی انسپکٹر دلاور کی کار تک لے آیا تھا۔۔۔۔۔۔چوکیدار اور سی سی ٹی وی کیمروں کی طرف سے وہ پوری طرح مطمئن تھا،اسے وکی کی صلاحيتوں پر مکمل بھروسہ تھا۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: