Hisar e Ishqam Novel by Pari Saa – Episode 6

0
حصارِ عشقم از پری سا – قسط نمبر 6

–**–**–

یہ کون ہے؟
حسینہ باٸی نے خوشبو نامی چھکے کے برابر اورنج کپڑوں میں ملبوس وکی کی طرف اشارہ کیا۔۔۔۔۔
بیگم حسینہ،یہ گلابو ہے گلابو،قسم سے بڑی اچھی ہے۔۔۔۔۔بیچاری کام کرنا چاہتی ہے۔۔۔۔۔۔خوشبو نے لجاجت سے کہا۔۔۔۔۔۔جبکہ بیگم حسینہ کی نظریں دراز قامت گلابو کے ایکسرے کرنے میں مصروف تھیں۔۔۔۔۔۔ہممممم ٹھیک ہے لے جا۔۔۔۔۔۔۔
چند لمحوں بعد حسینہ باٸی کی اجازت ملنے پر وکی نے سکون کا سانس لیا۔۔۔۔۔۔”رک”
گلابو….ناچنا آتا ہے؟
پیچھے سے حسینہ باٸی نے آواز دی۔۔۔۔ہاٸے جی بڑا اچھا آتا ہے۔۔۔۔۔۔گلابو نے ایک ادا سے بالوں پر ہاتھ پھیر کر کہا۔۔۔۔۔ٹھیک ہے جا۔۔۔
تو کہاں رہے گی گلابو،سیڑھیوں سے اوپر آتے خوشبو نے تالی مار کر ہاتھ کمر پر ٹکایا اور پرسوچ انداز میں گلابو کو دیکھا۔۔۔
چل شبنم سے پوچھ لوں۔۔۔۔اگلے ہی لمحے بولتی وہ ایک کمرے میں داخل ہوگٸی۔۔۔۔۔۔شبو ہونٹوں پر لپ اسٹک لگانے میں مصروف تھی جبکہ ماہم نیچے قالین پر بیڈ سے ٹیک لگاٸے بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔وکی نے پہلی نظر میں اس لڑکی کو پہچان لیا جس سے عینا کی بات ہوٸی تھی،ہر کمرے میں دو دو تین تین لوگ تھے ،یہ کون ہے؟۔۔۔۔۔شبو نے سوالیہ انداز میں وکی کو دیکھا،یہ گلابو ہے ،نٸی آٸی ہے،بڑا اچھا ناچتی ہے ۔۔۔۔۔۔خوشبو کے ہر کسی کو بڑھاچڑھاکر بتانے پر وکی کو اپنے ٹھمکے کی فکر ستانے لگی۔۔۔۔۔کسی نے ناچنے کا بول دیا تو؟اس نے دور کا سوچا۔۔۔۔۔۔ماہم نے بیزار سی نظر اس پر ڈال کر رخ پھیر لیا تھا۔۔۔۔ٹھیک ہے،آتجھے کمرہ دکھادوں۔۔۔۔۔شبو نے کہا اور آگے بڑھ گٸی،وکی اور خوشبو بھی اسکی پیروی کرنے لگے تھے۔۔۔۔۔کمرے میں داخل ہونے پر وکی کو حیرت کا شدید جھٹکا لگا،سامنے عینا کھڑی تھی،سن چھوکری،یہ گلابو ہے۔۔۔۔۔ اب سے تیرے ساتھ رہے گی۔۔۔۔۔اطلاع دے کر عینا کے بدلتے تاثرات دیکھے بنا خوشبو اور شبو چلی گٸیں۔۔۔۔۔۔عینا کا دل چاہا اس نٸی مصیبت پہ کچھ کرڈالے،جبکہ وکی کا دل بلیوں اچھل رہا تھا۔۔۔۔۔
کیا دیکھ رہی ہو تم؟
ڈاٸن جیسی لپ اسٹک والی۔۔۔عینانے خود کو گھورتی گلابو کو بری طرح لتاڑا۔۔۔۔۔۔”ہاٸے جانِ من دیکھ رہی ہوں تو کتنی حسین ہے”عینا کے جلے بھنے انداز پر وکی گلابو نے چھیڑا۔۔۔۔
اوقات میں رہو اپنی،عینا کو اس طرز تخاطب پرپتنگےلگ گٸے۔۔۔۔۔اچھی طرح سناکر عینا آگے بڑھ گٸی۔۔۔ہاٸے بات تو سن لے ظالم حسینہ۔۔۔۔وکی نے مزہ
لٸا۔۔
_________________
نازنین نے ناشتے کی ٹرے شاہ زیب کے سامنے رکھی۔۔۔۔ڈاٸننگ ٹیبل پر سب موجود تھے،شاہ زیب نے سنجیدگی سے ناشتہ کرتا رہا،سارہ کو ان دونوں کے بیچ کھنچاو محسوس کرکے دلی خوشی ہورہی تھی،اس نے جلتی نظر نازنین پر ڈالی اور ناشتے کی طرف متوجہ ہوگٸی،رشل کو نازنین اور شاہ زیب کے درمیان بنی سردمہری کی دیوار بڑی کھل رہی تھی جسے شاید بڑی ماماسمیت سب ہی نے محسوس کیا تھا۔۔۔۔۔نٸے جوڑے والی کوٸ بات نہ تھی ان میں،نہ وہ میٹھی نظروں کا تبادلہ نہ وہ دلآویز مسکراہٹ،جو پہلے ان دونوں کا خاصا رہی تھی،۔۔۔۔حمیرہ پھپھو اور سارہ بڑی مسرور تھیں۔۔۔۔۔
__________________________________
پروکٹاس(پریکٹس)نہیں کرے گی تو ناچنا کیسے آٸے گا تجھے؟شبو نے گلابو کو گھورا۔۔۔۔۔۔[لو اب یہ دن آگٸے ہیں کہ چھکا بن کر ناچنا پڑرہا ہے۔۔۔۔۔
وکی نے خود پر کنٹرول رکھ کر پوزیشن سنبھالی۔۔۔۔۔۔فل ساونڈ میں میوزک بج رہا تھا۔۔
موقع دیکھ کر عینا کمرے سے نکل آٸی۔۔۔۔۔صبح سے اسے شبو یاں کوٸی اور نظر نہیں آیا تھا۔۔۔۔سیڑھیاں چڑھتی عینا تیسری منزل پر آگٸی۔۔۔۔۔بیچ میں ہال کمرہ تھا جسکے چاروں طرف پردے پڑے تھے،اور نچلی منزل کی طرح کاریڈور میں قطار در قطار کمرے بنے تھے۔۔۔۔۔تیز میوزک کی آواز اسی ہال کمرے سے آرہی تھی۔۔۔۔۔دبے قدموں آگے بڑھ کر عینا نے ذرا سا پردہ ہٹاکر جھانکا تو ڈھیروں رنگ برنگی آنچل دکھاٸی دیۓ۔۔۔۔۔زرق برق پیراہن میں یہ کچھ چھکے اور کچھ لڑکیاں تھیں۔۔۔۔۔بیچ میں عینا کو کل والا گلابو نامی چھکا کھڑا دکھاٸی دیا،کمر پر دوپٹہ باندھے وہ ناچنے کی تیاری کیۓ بیٹھا تھا۔۔۔۔۔۔۔چل شروع بھی ہوجا جنم جلی۔۔۔۔۔۔”پاس کھڑی شبو نے کہا۔۔۔۔فل ساونڈ میں بجتے گانے کی بدولت اسکی آواز دب کر رہ گٸی تھی”۔۔۔
بڑی دق
ہاٸے ہاٸے اسی نے کہا تھا،خوشبو نے ایک ساتھ دو تالیاں مار کر کہا۔۔۔۔
چل سیٹ کرالے ٹھمکا،دکھنے میں دیکھ کیسی آفت ہے،ایک بار سیکھ گٸی تو عیش ہی عیش۔۔۔۔۔۔پاس بیٹھے ایک چھکے نے مشورہ دیا۔۔۔
عینا نے پردہ چھوڑا اور ان سب پر لعنت بھیجتی آگے بڑھ گٸی۔۔۔۔۔۔۔
اسے نہیں پتا تھا کہ گلابو درحقیقت ان کی ٹیم کا وکی ہے۔۔۔۔
چاروں طرف گھوم پھر کر جاٸزے لیتی وہ سب سے نیچے والی منزل میں آگٸی۔۔۔۔۔۔حسینہ باٸی کا تخت خالی تھا۔۔۔۔۔۔عینا آگے بڑھی تو حسینہ باٸی کی آواز کانوں سے ٹکراٸی۔۔۔۔۔
اس مہینے کی چوبیس تاریخ پکی کرو صاحب،کمال کا مال آیا ہے اس بار۔۔۔۔۔۔۔ہاں ہاں تم فکر مت کرو بس میرا پیسہ تیار رکھنا۔۔۔۔۔۔۔عینا کے کان کھڑے ہوگٸے یہ الفاظ سن کر۔۔۔۔۔۔اس نے کھڑکی سے اندر جھانک کر دیکھا،حسینہ باٸی تپاٸ پر فون لیۓ بیٹھی تھی۔۔۔۔۔پشت کھڑکی کی طرف تھی اسکی۔۔۔۔۔۔
“اس مہینے کی چوبیس”عینا کے لبوں کو مسکراہٹ نے چھوا۔۔۔۔۔تب ہی کسی نے اسکا دوپٹہ پکڑ کر ہلایا۔۔۔۔۔۔وہ کرنٹ کھاکر پلٹی۔۔۔
______________________________________
ہاٸے ہاٸے قسم سے بڑا تھک گٸی ہوں شبو،ذرا دیر کو آرام کرلوں؟وکی نے کمر پر ہاتھ رکھ کر چہرے سے تھکاوٹ ظاہر کی۔۔۔۔۔۔جا ری دفع ہوجا۔۔۔۔تو کسی کام کی نہیں ہے کمبخت۔۔۔۔۔۔شبو نے تیز نظروں سے گھورکر کہا اور دوسروں کی طرف متوجہ ہوگٸی۔۔۔۔۔۔وکی عینا کے پاس جانے کے ارادے سے فوراً وہاں سے نکلا۔۔۔۔۔کمرے میں دیکھا تو عینا وہاں نہیں تھی،ہر جگہ ڈھونڈ کر وہ نیچے آیا تو عینا حسینہ باٸی کے کمرے کی کھڑکی کے پاس کھڑی نظر آٸی۔۔۔۔۔۔اسکی جرات پر پیچ و تاب کھاتا وہ آگے بڑھا اور اسکے دوپٹے کا کونا تھام کر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔اگر حسینہ باٸی یاں کسی اور کی نظر میں عینا کی یہ حرکت آجاتی تو وہ مشکوک ہوجاتی۔۔۔۔۔اور انکا کام اور مشکل ہوجاتا۔۔۔۔۔عینا نے گھبراکر پیچھے دیکھا،وکی کو اسکے صبیح چہرے پر گبھراہٹ صاف دکھاٸی دے رہی تھی۔۔۔۔۔اگلے ہی لمحے اس نے عینا کا ہاتھ تھاما اور اسے لیۓ سیڑھیاں چڑھنے لگا۔۔۔۔۔۔
مم…..میں بس یونہی کھڑی تھی،کہاں لے کر جارہی ہو تم مجھے۔۔۔۔۔۔عینا نے اسکی گرفت سے ہاتھ چھڑانا چاہا لیکن یہ گرفت بہت مضبوط تھی۔۔۔۔۔۔عینا کا دل ذور ذور سے دھڑک رہا تھا۔۔۔۔۔اگر گلابو نے منہ کھولا تو کیا ہوگا؟یہ سوال اسکے سامنے چکرارہا تھا۔۔۔۔۔۔۔عینا نہیں جانتی تھی وہ کب سے اسکے پیچھے کھڑی تھی،شاید اس نے دیکھا تھا کہ عینا نے حسینہ باٸی کی باتیں سنی ہیں۔۔۔۔۔
گلابو نے کمرے میں لاکر عینا کا ہاتھ چھوڑا اور مڑ کر دروازہ لاک کردیا۔۔۔
دیکھو گلابو تم……..ششش…..!
عینا کی بات کاٹ کر وکی نے چپ رہنے کا اشارہ کیا اور آہستگی سے مصنوعی بالوں کی وگ سر سے الگ کردی۔۔۔۔۔عینا نے غور سے اسے دیکھا اور اگلے ہی لمحے اسکے دماغ میں جھماکا سا ہوا۔۔۔۔۔
“وقاص”……؟
تصدیق کے لیۓ اس نے پورا نام لیا۔۔۔۔۔
“ہاں”
ت….تم یہاں کیسے مطلب……
چھوڑو سب باتوں کو یہ بتاو حسینہ باٸی کے کمرے کے باہر کھڑی کیا کررہی تھیں،کوٸی تمھیں وہاں دیکھ لیتا تو جانتی ہو کیا ہوتا۔۔۔۔۔۔
“کچھ نہیں ہوتا”
وکی کے فکرمندانہ انداز پرعینا نے اطمینان سے کہا۔۔۔۔
حسینہ باٸی کسی سے کال پر بات کررہی تھی۔۔۔۔۔۔۔
کہہ رہی تھی اس مہینے کی چوبیس تاریخ پکی کرو۔۔۔۔۔
“چوبیس تاریخ”؟؟
وکی نے عینا کی بات غور سے سنی اور پیشانی مسلنے لگا تب ہی کسی نے دروازہ بجایا۔۔۔۔۔۔۔
دونوں نے چونک کر دروازے کی سمت دیکھا۔۔۔۔۔
وکی نے دوبارہ وگ سر پر لگاٸی اور تپاٸی پر چادر اوڑھ کر لیٹ گیا۔۔۔۔
عینا نے دروازہ کھولا تو سامنے ملازمہ کھانا
لیۓ کھڑی تھی۔۔۔۔
___________________________________
کیا ہوا ہے تمھیں؟۔۔۔۔۔۔رشل کے کمرے میں آنے پر نازنین اٹھ کربیٹھ گٸی،بخار سے جسم ٹوٹ رہا تھا۔۔۔۔۔”کچھ نہیں بس ذرا سا بخار ہے”۔۔۔۔نازنین پھیکی مسکراہٹ کے ساتھ بولی۔۔۔۔۔رشل نے ماتھا چھوا تو اسے بہت تیز بخار تھا۔۔۔۔۔یہ ذرا سا بخار ہے نازو؟تم خیال کیوں نہیں رکھ رہیں اپنا۔۔۔۔۔۔
اسکی بات پر نازنین گود میں پڑے ہاتھوں کو گھورنے لگی۔۔۔۔خود کی پرواہ کرنا چھوڑدی تھی اس نے۔۔۔۔۔
“شاہ زیب بھاٸی نے کچھ کہا ہے؟”….
رشل نے بغور اسکا چہرہ تکتے سوال کیا۔۔۔۔۔
نہیں شاہ زیب نے کچھ نہیں کہا۔۔نازنین جلدی سے بولی۔۔۔۔۔اسی اثنا میں شاہ زیب ذروازہ دھکیلتا اندر داخل ھوا۔۔۔۔۔تم نے بات کلیٸر کرلی تھی؟رشل نے آہستگی سے سوال کیا۔۔۔۔نازنین کی آنکھوں میں آنسوں جھلملانے لگے تھے۔۔۔۔۔رشل کا دل کٹ کر رہ گیا اسکی حالت پر۔۔۔۔۔شاہ زیب نے گھڑی ہاتھ سے اتارکر رکھتے ہوٸے ڈریسنگ مرر سے نازنین کو دیکھا،ایک لمحے کو دل کسی نے مٹھی میں بھینچ لیا تھا۔۔۔۔۔۔اگلے ہی لمحے ایک عجیب سا جوار بھاٹا اسکے اندر سراٹھانے لگا۔۔۔۔۔نازنین نے جو بھی کیاوہ ایک طرف، لیکن شاہ زیب کے دل میں آج بھی صرف وہ تھی،وہ اسکے آنسوں برداشت نہیں کرسکتا تھا۔۔۔۔”بات کرنی ہے تم سے”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ نازنین سے مخاطب ہوا تو رشل نازنین کا رخسار تھپتھپاتی خاموشی سےاٹھ گٸی،اسے حیرانی ہوٸی تھی نازنین کے ساتھ شاہ زیب کے اجنبی رویے پر۔اگر شاہ زیب کسی اور کو چاہتا تھا تب بھی اسے نازنین کے ساتھ ایسا رویہ نہیں رکھنا چاہیۓ تھا۔۔۔رشل کےنکلتے ہی شاہ زیب نازنین کے پاس آبیٹھا۔۔۔۔۔نازنین پاوں سمیٹے گٹھنوں کے گرد بازو باندھے خالی خالی نظروں سے اسے دیکھ رہی تھی،محبت سے دوری ایسے ہی تڑپاتی ہے،شاہ زیب کے دل میں درد سا اٹھا،نازنین کی اس حالت کو وہ کسی اور زاویۓ سے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔ہلکے نیلے رنگ کے فراک میں کندھوں پر دوپٹہ پھیلاٸے وہ کملاٸ ہوٸی لگ رہی تھی۔۔۔۔بڑی بڑی آنکھوں پر ساٸہ فگن خم دار پلکیں ہم وقت بھیگی بھیگی سی رہنے لگی تھیں۔۔۔۔۔۔
شاہ زیب نے کچھ پیپرز اسکی سمت بڑھاٸے،نازنین نے ناسمجھی سے وہ پیپرز تھام کر دیکھنے لگی۔۔۔۔۔۔
پیروں کے نیچے سے زمین
نکلنا کسے کہتے ہیں یہ آج اسکی سمجھ میں آیا تھا۔۔۔۔۔وہ پھٹی پھٹی نگاہوں سے شاہ زیب کا چہرہ تک رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔وہ ڈاٸیورس پیپرز تھے۔۔۔۔۔
شاہ زیب نے بغور اسکے زرد پڑتے چہرے کو دیکھا۔۔۔۔
“یہی تو چاہتی تھیں ناں تم”
خوش ہوجاو۔۔۔۔۔۔اب..
اسکے لہجے میں درد بول رہا تھا۔۔۔۔کیسی محبت تھی یہ۔۔۔۔۔
محبت پاکر محبت کھونے چلا تھا۔۔۔۔۔۔اسے خود پر ہنسی آنے لگی۔۔۔۔۔۔۔کیا جرات تھی،اس نے ایک لمحے کو پتھر بن کر خود کو تکتی نازنین کی آنکھوں میں جھانکا تو دنگ رہ گیا۔۔۔۔۔
یہ آنکھیں…یہ تو کچھ اور ہی کہہ رہی تھیں۔۔۔۔ان میں تو محبت ہارجانے کا دکھ ہلکورے لے رہا تھا۔۔۔۔۔۔
شاہ زیب نے بے اختیار ہاتھ بڑھاکر اسکی پلکیں چھولیں۔۔۔۔۔اتنا تو حق رکھتا تھا وہ….
تمھاری خوشی میں ہی میری خوشی ہے ناز۔۔۔۔۔۔۔نازنین نے ذخمی نظروں سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔اگلے ہی لمحے ضبط کا ہر بندھن ٹوٹ گیا۔۔۔۔۔۔
یہ کیسی محبت تھی زیب۔۔۔؟یونہی ختم ہوگٸی،تم نے تو مجھے کہیں کا
نہ چھوڑا زیب۔۔۔۔۔۔وہ ایک دم اچھل کر اسکا کالر جکڑے چلارہی تھی۔۔۔۔۔۔
جبکہ شاہ زیب حیرت کے سمندر میں غوطہ زن تھا۔۔اسے ایک لمحے کو اسکی دماغی حالت پر شبہ ہوا۔۔۔
پلیز…..تمھیں اللہ کا واسطہ مجھے طلاق مت دو،میں کبھی تمھاری اور تمھاری محبت کے بیچ نہیں آونگی،کبھی تم سے اپنا حق نہیں مانگوں گی کوٸی شکوہ زبان پر نہیں لاونگی بس…بس خود سے دور مت کرو۔۔۔۔۔۔
روتے روتے اسکی ہچکی بندھ گٸی تھی،شاہ زیب کی شرٹ چھوڑتی اب وہ اسکے کندھے سے لگی ہارے ہوٸے انداز میں کہتی بری طرح رورہی تھی۔۔۔۔”کیا کہہ رہی ہو تم” تم کسی اور سے محبت کرتی ہو یہ تم ہی نے کہا تھا ناں ؟۔۔۔۔۔
شاہ زیب نے اسکا آنسووں سے بھیگا چہرہ ہاتھوں کے پیالے میں تھام کر پوچھا۔۔۔۔۔اپنی زبان سے یہ ذکر کرنااسے کتنا
تکلیف دہ لگا یہ اسکا دل جانتا تھا۔۔۔۔۔
میں نے ہر لمحہ صرف تم سے محبت کی ہے زیب،میں تمھارے بغیرمرجاونگی۔۔۔۔اپنے چہرے کے گرد رکھے شاہ زیب کے ہاتھ اس نے زور سے پکڑ رکھے تھے جیسے اسے کہیں جانے ناں دینا چاہتی ہو۔۔۔۔۔۔
کیوں کیا پھر تم نے ایسا،جانتی ہو میرے دل پر کیا گزری ہے،لمحہ لمحہ مرتا رہا ہوں میں،یہ سوچ ہی جان لیوا تھی کہ تمھیں کسی اور سےمحبت ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ تم سے کس نے کہا….نازنین کی بھیگی آنکھوں میں ہزار سوال تھے۔۔۔۔۔
شاہ زیب نے موبائل اسکے سامنے کیا،سکرین پر نظر پڑتے ہی نازنین حیرت سے گنگ رہ گٸی،شاہ زیب نے وہ میسجز اب تک سنبھال رکھے تھے جو برات کی رات نازنین کے نمبر سے موصول ہوٸے تھے۔۔۔۔۔۔یہ…یہ میں نے نہیں کیۓ۔۔۔۔قسم لے لو زیب یہ میں نے نہیں کیۓ۔۔۔۔۔وہ نفی میں سر کو ہلانے لگی۔۔۔۔شاہ زیب کے دل میں سکون سا اترآیا تھا کہ نازنین صرف اسکی ہے،وہ بے وفا نہیں ہے۔۔۔۔۔۔یہ حرکت کس کی تھی فلحال اس نے اس بات کو رہنے دیا۔۔۔۔۔۔
تم اندازہ نہیں کرسکتیں مجھ پر کیا گزری ہے،نازنین کے ہاتھ اپنے مضبوط ہاتھوں میں تھام کر اس نے لبوں سے لگالیۓ۔۔۔۔۔ایک تڑپ تھی اسکے انداز میں۔۔۔۔۔
عـــــروج سارے کمال سارے
تیری چاہت پہ وار دیں گے
اگر رہا نہ گلوں کا موسم
اپنے اشکوں کا ہار دیں گے
اور پیار ایسا کہ پیار کو بھی
پیار اپنے پے پیار آئے….
جس کو خوابوں میں ڈھونڈتے ہو
درحقیقت وہ پیار دیں گے
پڑے ضرورت تو غم نہ کرنا
میرے دلبر حکم تو کرنا
بہا کے اپنا لہو سرراہ
تمھارا “صدقہ” اتار دیں گے
______________________________________
یہ گلابو کہاں مرگٸی۔۔۔۔۔
خوشبو نے جھلاکر سڑک پر نگاہ دوڑاتے کہا۔۔۔۔کچھ دیر پہلے تک وکی اسکے ساتھ ہی تھا،خوشبو کا دھیان ادھر ہونے پر غائب ہوگیا۔۔۔۔
خوشبو اسے آوازیں دیتی رہ گٸی لیکن وہ ہوتا تو آتا،وہ تو اس وقت شاہ زین کے سامنے بیٹھا تھا۔۔۔۔۔رات اس نے بات کی تھی شاہ زین سے،بہت کچھ پلان کرنا تھا لیکن سب باتیں فون پر نہیں ہوسکتی تھیں۔۔۔۔۔عینا کو اس نے آج کے پلان کے بارے میں بتارکھا تھا۔۔۔۔۔۔
اسکے دماغ میں کچھ اور ہی چل رہا تھا۔۔۔۔
______________________________________
کیوں لاٸے ہو مجھے یہاں؟
جانے دو مجھے تمھیں اللہ کا واسطہ۔۔۔۔۔۔
اس بے بس لڑکی کی چیخ و پکار عینا کے کانوں تک بآسانی پہچ رہی تھی۔۔۔۔۔۔اسکا خون کھول رہا تھا۔۔۔۔۔یہ آٸے دن کا معمول تھا،لڑکیوں کی آہ فغاں یہاں معمول کی بات تھی۔۔۔۔۔۔۔۔اس پورے گینگ کو جڑسے اکھاڑپھینکنے کا عزم کررکھا تھا اس نے۔۔۔۔۔نجانے کتنی لڑکیوں کی چیخیں اس جگہ سے منسلک تھیں۔۔۔۔۔۔اس دن ملی سبز آنکھوں والی لڑکی کی کہانی سن کر اسکا دل بھی رونے لگا تھا۔۔۔۔۔۔۔ہر وجود کی اپنی ایک کہانی تھی۔۔۔۔۔۔۔
بے صبری سے وکی کا انتظار کرتی وہ یہاں وہاں ٹہل رہی تھی۔۔۔۔۔۔کافی دیر انتظار کرنے کے بعد وہ ماہم کے پاس چلی آٸی۔۔۔۔۔۔ہمیشہ کی طرح وہ سبز آنکھیں ویرانیوں سے سجی تھیں۔۔۔۔۔۔وہ ویرانیوں کو اپنا مقدر سمجھے بیٹھی تھی لیکن قسمت اب کیا دکھانے والی تھی اس سے ناواقف تھی۔۔۔۔۔
اس نے اس جہنم میں ایک غم گسار پاکر اپنا آپ اسکے سامنے کھول کر رکھ دیا تھا،عینا نےمحسوس کیا وہ ہر بات کا جواب ہوں ہاں میں دیتی یاں خاموش بیٹھی رہتی…
گزرا ہوا وقت کسی فلم کی طرح آنکھوں کے آگے چلتا رہتا۔۔۔۔۔۔عینا کی سوچوں سے لاعلم وہ اپنے ماضی میں گم تھی۔۔۔
_____________________________________
“کیسی ہو میری جان”؟
امان کے طرز تخاطب پر ہمیشہ کی طرح اسکا چہرہ سرخ ہو اٹھا۔۔۔۔۔ٹھیک آ…آپ کیسے ہیں؟
تم سے بات کرنے کے بعد بلکل فٹ….وہ بشاشت سے بولا۔۔۔۔۔۔
امان اپنے پیرینٹس کو کب لاٸینگے آپ؟ پرپوزلز کا منع کرتے کرتے میں تھک چکی ہوں،اب تو عجیب سی شرمندگی ہونے لگی ہے۔۔۔۔۔
بس اگلے ہفتے جاوں گا گھر..یار پاپا کو منانا پڑے گا میں ہمت نہیں کرپارہا۔۔۔۔۔۔ہمیشہ کی طرح امان نے ٹال دیا۔۔۔۔۔
وہ پریشانی کی وجہ سے پڑھاٸی پر بھی توجہ نہیں دے پارہی تھی۔۔۔
اسے خود پر غصہ آتا تھا کبھی کبھی کہ کیوں امان کا بڑا ہوا ہاتھ تھام بیٹھی؟
وہ فطرتاً خاموش طبع لڑکی تھی،یونی میں اسکی کسی سے دوستی نہ تھی۔۔۔۔۔
امان دوسرے ڈیپارٹ کا تھا،اکثر وہ اسے آتے جاتے دیکھتا رہتا،اور کبھی کبھی کلاس بنک کرکے ماہم کے ڈیپارٹ کے چکر کاٹتا دکھاٸی دیتا۔۔۔۔۔
نجانے کہاں سے ماہم کا فون نمبر حاصل کیا تھا،اسکے ہزاروں میسجز ماہم کو موصول ہوتے لیکن وہ اگنور کردیتی ۔۔۔۔وہ ایسے کسی معاملے میں پڑنا
نہیں چاہتی تھی،گھر کی پریشانیاں ویسے ہی ہر وقت سر پر مسلط رہتی تھیں۔۔۔۔۔۔اسکے بابا کا تین سال پہلے انتقال ہوچکا تھا،گھر میں صرف وہ اور اسکی ماں رہتی تھیں،یونی سے آکر ماہم ایک کوچنگ میں پڑھاتی تھی جس سے ملنے والی رقم میں بمشکل ان ماں بیٹی کے اخراجات پورے ہورہے تھے،دو کمرے پر مشتمل گھر ذاتی تھا یہ بھی غنیمت تھا،باپ کے انتقال کے بعد پینشن وغیرہ کا کوٸی سسٹم ہی نہ تھا کہ وہ مقامی بازاروں میں معمولی سے کپڑہ فروش تھے۔۔۔۔۔۔ماہم کی ماں کو دل کا عارضہ تھا،وہ جلد سے جلد اسکی شادی کردینا چاہتی تھیں۔۔۔۔۔امان
کی طرف متوجہ ہوتے وقت ایک عجیب سا ڈر تھا،اسے یہ سب پسند نہیں تھا لیکن امان کی باتیں اور محبت بھرے لہجے کہ آگے وہ بے بس ہوجاتی جب وہ کہتا کہ تم ایک محبت کرنے والے شخص کو اپنی خودساختہ سوچوں کے جنگل میں بھٹکتے بھٹکتے ہی کھودوگی اور پھر پچھتاوگی۔۔۔۔۔تب وہ سوچ میں پڑجاتی،ہر مکاری و عیاری سے پاک دل اسکی محبت پر یقین کرنے کو کہتااور جب امان کہتا کہ میں تم سے بے انتہا محبت کرتا ہوں تمھارے بغیر مرجاونگا تب وہ خود سے ہارجاتی۔۔۔۔۔آخر تھی تو ایک بھولی بھالی لڑکی ناں جو زمانے کے فریبوں سے ناواقف تھی۔۔۔۔۔۔
ماہم کی ماں امان کے بارے میں جانتی تھیں اور جلد سے جلد اسے امان کے ساتھ رخصت کرنے کا سوچے بیٹھی تھیں،ہر دن وہ ماہم سے امان کے والدین کی بابت پوچھتیں اور وہ کوٸی نہ کوٸی بہانہ گڑھ دیتی،اس نے اپنی امی کو یہ نہیں بتایا تھا کہ امان کے ماں باپ اس رشتے سےراضی نہیں ہیں،وہ امان کی طرف سے انہیں بدظن نہیں کرنا چاہتی تھی۔۔۔۔۔۔۔یونی سے ہی واپسی پر ایک دم امان اس سے کہنے لگا کہ امی اسی شہر میں کچھ دن خالہ کے گھر رہنے آٸی ہیں اور تمھیں دیکھنا چاہتی ہیں۔۔۔۔۔ماہم نے انکار کرنا چاہا لیکن ہمیشہ کی طرح اس لفظوں کے کھلاڑی کی اداکاری کے سامنے مانتے ہی بنی۔۔۔۔۔امان نے اسے یقین دلایا کہ خالہ کے گھر امی اور خالہ دونوں ہیں اور خالہ ہمارے بارے میں سب جانتی ہیں۔۔۔۔اسی بارے میں مشاورت اور تمھیں دیکھنے امی اتنی دور یہاں آٸی ہیں۔۔۔۔۔شش و پنج کا شکار وہ پہلی مرتبہ اسکے ساتھ جانے کو راضی ہوگٸی تھی۔۔۔۔۔۔امان اسے ایک انجان علاقے میں لے آیا،سامنے ایک معمولی سی تین منزلہ بلڈنگ کھڑی تھی۔۔۔۔۔یہ ہے آپکی خالہ کا گھر،ماہم نے سراٹھاکر جاٸزہ لیا۔۔۔۔۔۔اسے جلد گھر پہچنا تھا کہ اسکی امی انتظار کررہی تھیں،جنہیں میسج کرکے اس نے آدھا گھنٹہ لیٹ آنے کے بارے میں بتادیا تھا۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: