Hisar e Ishqam Novel by Pari Saa – Episode 7

0
حصارِ عشقم از پری سا – قسط نمبر 7

–**–**–

چلو آو۔۔۔۔
امان اسےاپنے پیچھے آنے کا اشارہ کرتا آگے بڑھ گیا۔۔۔۔باہر کی بانسبت اندر سے گھر کی حالت کافی اچھی تھی۔۔۔۔۔سامنے ہی تخت پر سلک کی ساڑھی میں ملبوس حسینہ باٸی براجمان تھی۔۔۔
امان نے بازو سے پکڑ کر ماہم کو آگے کیا۔۔۔۔۔لو ہوگیا تمھارا کام،پیسہ کدھر ہے میرا؟۔۔۔۔۔
ماہم کو دیکھتے ہی حسینہ باٸی کی آنکھیں چمک اٹھیں۔۔۔۔”ارے واہ چھوکرے،کیا مال لایا ہے اس بار” گاو تکیے کے نیچے سے حسینہ باٸی نے نیلے نوٹوں کی گڈی نکال کر امان کی طرف اچھالی۔۔۔۔۔
ماہم کی سمجھ میں صورت حال آٸی تو اسکی ریڑھ کی ہڈی سنسنااٹھی۔۔۔
اس نے الٹے قدموں باہر کی طرف دوڑ لگادی۔۔۔۔۔۔محبت کے جال میں پھنساکر امان اسکا سوداکرنے آیا تھا۔۔۔۔۔۔
اسے بھاگتے دیکھ کر امان نے تیزی سے بڑھ کر اسے پکڑا۔۔۔۔کہاں بھاگ رہی ہو میری جان۔۔۔۔۔۔بڑی بھولی تھیں تم باقی سب لڑکیوں سے ذرا جلدی پٹ گٸیں زیادہ محنت نہیں کرنی پڑی مجھے۔۔۔”سنبھالو بیگم حسینہ”۔۔۔اصلیت دکھاکر امان حسینہ باٸی سے مخاطب ہوا جو کہنی کے بل بیٹھی دلچسپی سے یہ تماشا دیکھ رہی تھی۔۔۔۔ایک جانب دیکھ کر اس نے اشارہ کیا تو دو دراز قامت آدمی مزاحمت کرتی ماہم کو پکڑے اندر کی طرف لے جانے لگے لیکن دھان پان سی اس لڑکی میں نجانے کہاں سے اتنی طاقت آگٸی تھی۔۔۔۔۔۔۔تم نے اچھا نہیں کیا زلیل انسان،کمینے۔۔۔۔۔وہ امان کی طرف دیکھتی ہذیانی انداز میں چلاتی ساتھ ساتھ خود کو چھڑانے کی کوشش میں ہلکان ہورہی تھی۔۔۔۔۔امان کے ہونٹوں پر مسکان بکھرگٸی۔۔۔۔۔۔۔حسینہ باٸی،میرا حصہ ابھی باقی ہے،اس نے آنکھ مار کر ماہم کو ہوس بھری نگاہوں سے دیکھا۔۔۔۔۔کبھی موقع ہی نہیں دیا یار،آج ہی موقع لگا اور تمھاری خدمت میں حاضری دینے چلاآیا،جلد آونگا۔۔۔۔۔۔ماہم کی طرف اشارہ کرتا وہ نوٹوں کی گڈی ہوا میں اچھالتا پکڑتا چلاگیا۔۔۔۔۔۔ماہم کے حواس اسکا ساتھ چھوڑنے لگے تھے،اگلے ہی لمحے وہ تیوراکر گرپڑی۔۔۔۔۔آنکھوں کے آگے اندھیرا تھا،سیاہ اندھیرا،اور شاید اب اسکی قسمت میں بھی۔۔
_______________________________
نازنین کے منہ سے ساری بات سن کر رشل کا دماغ گھوم گیا۔۔۔۔۔۔۔وہ جلے پیر کی بلی بنی شاہ زیب کا انتظار کررہی تھی،سارہ کا دماغ تو وہ خود بھی ٹھکانے لگاسکتی تھی لیکن وہ چاہتی تھی نازنین اور شاہ زیب دونوں اپنی زبانی سب گھر والوں کےسامنے سارہ ک گھٹیا حرکت کا پردہ فاش کریں،اسے شاہ زیب پر بھی غصہ آرہا تھا جس نے تحقیق کرنے کی ضرورت ہی محسوس نہ کی تھی،شام کو شاہ زیب آفس سے آیا تو رشل تنتناتی ہوٸی اسکے سامنے پہچ گٸی۔۔۔
کیا ہوا گڑیا؟سب ٹھیک ہے؟
شاہ زیب کا موڈ خوشگوار تھا،رشل کے گھورنے پر وہ ایک دم فکرمند ہواٹھا۔۔۔۔
آپکو یاد ہوگا آپ دونوں کی رخصتی سے پہلے نازو کتنی ڈسٹرب رہنے لگی تھی،رشل نے پاس کھڑی نازنین کی طرف اشارہ کرتے بات شروع کی،”ہاں یاد ہے”شاہ زیب نے ایک نظر نازنین پر ڈالی۔۔۔۔۔جانتے ہیں یہ کیوں ایسی ہوگٸی تھی؟
اس نے سوال کیا۔۔۔۔۔
“نہیں”
شاہ زیب بھاٸی سارہ چڑیل نے اسے کہا تھا کہ آپ کسی اور سے محبت کرتے ہیں اور مجبوری میں بچپن کے اس رشتے کو نبھارہے ہیں۔۔۔۔۔رشل کے کہے الفاظ شاہ زیب کو حیرت میں ڈال گٸے۔۔۔۔۔
“لیکن اس نے ایسا کیوں کیا”
یہ تو اسی سے پوچھیۓ گا،اور دوسری بات برا۶ت والے دن نازو کا موبائل کھوگیا تھا،اس وقت کسی نے دھیان نہیں دیا اور صبح اسکا موبائل کمرے میں ہی تھا۔۔۔۔۔۔۔مجھے یقین ہے وہ میسجز والا کارنامہ بھی اسی ڈاٸن کا ہے۔۔۔۔۔رشل دانت چباکر یوں بولی جیسے اسکے دانتوں کے درمیان سارہ کی گردن ہو۔۔۔۔۔
شاہ زیب کا دماغ گھوم گیا تھا،رشل نے ایک نظر خاموش کھڑے نازنین اور شاہ زیب پرڈالی۔۔۔۔۔۔
غلطی آپ دونوں کی ہے جسکی سزا آپ دونوں کاٹ چکے اب باری ہے اصل قصوروار کی۔۔۔۔۔۔
ابھی تو وہ ڈاٸن یہاں موجود نہیں ہے،کل سنڈے ہے اور مجھے یقین ہے وہ ہمیشہ کی طرح ضرور ٹپکے گی،آپ دونوں سب کے سامنے اسکی حرکتوں کا بھانڈا پھوڑیں گے انڈرسٹینڈ۔۔۔۔
رشل نے انگلی سےباری باری دونوں کی طرف اشارہ کرکے سوالیہ انداز میں ابرو اچکاٸے۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے۔۔۔۔۔۔”یہ مدھم سی آواز نازنین کی تھی”۔۔۔۔۔شاہ زیب بھی اب سارہ کو نہیں بخشنے والا تھا۔۔۔۔۔۔
رشل مطمئن سی اپنے کمرے میں آگٸی،اسکے ایگزامز چل رہے تھے،صبح کے پیپر کو اسے دوبارہ ریواٸس کرنا تھا۔۔۔۔۔
__________________________________
حسینہ باٸی کے خلاف انہیں ٹھوس ثبوت چاہیۓ تھا،اسکے لیۓ انکی ٹیم کے پاس بڑا زبردست پلان تیار تھا،۔۔۔۔۔
یہ شام کا وقت تھا،نچلی منزل پر جانا منع تھا پھر بھی عینا نیچے چلی آٸی،حسینہ باٸی شاید سونے گٸی تھی۔۔۔ادھر ادھر محتاط نگاہوں سے دیکھتی وہ مین ڈور کی طرف بڑھنے لگی تھی،دیکھنے والے کو یہ لگتا کہ وہ بھاگنے کی کوشش کررہی ہے۔۔۔۔۔تب ہی گلابو نے شور مچادیا۔۔۔۔۔۔
بیگم حسینہ ،خوابِ خرگوس کے مزے بعد میں لےلے نا ،یہ چھوکری بھاگنے لگی ہے۔۔۔۔۔
آہ،چھوڑو مجھے ڈاٸن جیسی لپ سٹک والی۔۔۔۔۔۔گلابو نے اسکا نازک بازو دبوچ رکھا تھا تب عینا نے اپنی ایکٹنگ کے جوہر دکھاٸے۔۔۔۔۔۔۔اینا کونڈا،آٸندہ مجھے ڈاٸن جیسی لپ اسٹک والی کہا تو چھوڑوں گا نہیں یاد رکھنا۔۔۔۔وکی نے دانت چباکر دھیمی آواز میں سرگوشی کی۔۔۔۔۔اسی اثنا میں سب وہاں چلے آٸے۔۔۔۔حسینہ باٸی بھی ہکا بکا سی ساڑھی سنبھالے عینا کہ سر پر پہچ چکی تھی،سب کا دھیان عینا کی طرف تھا،وکی خاموشی سے حسینہ باٸی کے کمرے میں داخل ہوا اور سنگھار میز پر رکھے پھولوں کے گلدان میں سپاٸےکیمرہ لگاکر باہر نکل آیا،دو سے تین منٹ کی کارواٸی تھی،حسینہ باٸی نے عینا کا نازک بازو اپنے موٹے ہاتھ میں جکڑ کر جھٹکا دیا۔۔۔۔۔ہوشیاری دکھاٸے گی تو ہوشیاری،کمینی اب دیکھ ،تیرا بندوبست کرتی ہوں اب۔۔۔
ہاٸے ہاٸے میں نہ بتاتی تو تم سوتی ہی رہ جاتیں حسینہ بیگم،شکر کرو میں ہر وقت ادھر ادھر کڑی نظر رکھتی ہوں۔۔۔۔۔۔گلابو نے اپنی تعریف کی اور غیر محسوس انداز میں حسینہ باٸی کا دھیان کسی اور طرف کرادیا۔۔۔۔۔
ہاں ہاں تجھے تو انعام ملے گا ۔۔۔۔۔۔۔حسینہ باٸی فوراً بولی۔۔۔۔۔
ابھی اس جنم جلی کو لے جا اور کمرے میں بند کردے،اس پہ نظر رکھیو اب ۔۔۔۔۔۔حسینہ باٸی نے عینا کو وکی کی طرف دھکیلا۔۔۔۔۔تم فکر ہی نہ کرو،گلابو کس لیۓ ہے۔۔۔۔۔۔چل ری کمبخت۔۔۔۔۔
وکی نے ہاتھ نچاکر حسینہ باٸی سے کہا اور عینا کا بازو پکڑ کر کھینچتی ہوٸی اوپری منزل کی طرف بڑھ گیا۔۔۔
__________________________________
حسبِ توقع سارہ اور حمیرا پھپھو صبح ہی صبح آگٸی تھیں۔۔۔۔۔۔رشل کا بس نہیں چل رہا تھا کہ اسے کچا چباجاٸے۔۔۔۔۔۔ناشتے سے فارغ ہوکر سب گپ شپ میں مصروف تھے۔۔۔۔۔۔
جب نازنین بول اٹھی۔۔۔۔۔آپ سب کو ایک ضروری بات بتانی ہے۔۔۔۔سب ایکدم چپ ہوکر اسکی طرف متوجہ ہوٸے تھے۔۔۔۔۔۔شاہ زیب کسی اور سے محبت کرتا ہے آپ لوگ جانتے ہیں؟بڑی ماما آپ کو تو پتا ہی ہوگا۔۔۔۔۔۔
نازنین کی آواز پر سب کو سانپ سونگھ گیا تھا گویا۔۔۔۔سارہ بھی ایک لمحے کو گھبرااٹھی۔۔۔۔۔۔ت ….تم سے کس نے کہا؟
بڑی ماما کے لہجے میں حیرت تھی۔۔۔۔۔۔کیا بکواس ہے یہ؟۔۔۔۔شاہ زیب کے بابا غصے سے اٹھ کر شاہ زیب کی طرف بڑھے،نازنین فوراً شاہ زیب کے سامنے آکھڑی ہوٸی۔۔۔۔۔۔یہ بات مجھے سارہ نے بتاٸی ہے ۔۔۔۔
نازنین کی بات پر سارہ کی سٹی گم ہوگٸی تھی۔۔۔۔۔۔جب کے سب سارہ کو دیکھنے لگے تھے جسکے چہرے سے گھبراہٹ صاف ظاہر تھی،حمیرا پھپو کا بھی سارہ سےمختلف حال نہ تھا۔۔۔۔۔یہ میسجز دیکھیں آپ لوگ،یہ رخصتی کی رات کو مجھے نازنین کے نمبر سے ملے،اس میں نازنین نے کہا کہ وہ کسی اور کو پسند کرتی ہے۔۔۔۔کسی کی سمجھ میں نہیں آرہا تھا کہ یہ ہو کیا رہا ہے۔۔۔۔
نازنین کا موبائل اسکے کمرے سے سارہ نے اٹھاکر یہ میسجز شاہ زیب بھاٸی کو کیۓ تاکہ وہ نازو سے بدظن ہوجاٸیں۔۔۔۔۔اب کے رشل نے وثوق سے کہا۔۔۔۔۔۔۔ج جھوٹ بول رہے ہو تم سب۔۔۔الزام لگارہے ہو مجھ پر۔۔۔۔۔۔سارہ نے منہ کھولا۔۔۔۔۔
الزام تو تم نے لگایا ہے ہم دونوں پر،سارہ کیا ملا تمھیں یہ کرکے؟۔۔۔۔۔
جانتی ہو کتنی اذیت سہی ہے میں نے۔۔۔۔۔۔۔نازنین جیسے پھٹ پڑی تھی۔۔۔۔۔بولتے بولتے اسکی آواز رندھ گٸی تھی۔۔۔۔۔۔یہی وجہ تھی جو ہم دونوں کے بیچ ایک سرد مہری کی دیوار کھڑی ہوگٸی تھی۔۔۔۔۔۔۔شاہ زیب کی رگیں غصے سے تن گٸی تھیں۔۔۔۔”کیوں کیا تم نے ایسا”اب کے تیمور آفندی غصے سے پوچھ بیٹھے،مم ۔ممی نے مجھے کہا تھا۔۔۔۔۔
سارہ نے گھبراہٹ میں اصل بات اگلی۔۔۔۔۔۔ہاں میں نے کروایا ہے یہ سب۔۔۔۔۔۔
حمیرا پھپھو کے اطمینان سے بولنے پر سب حیرانگی سے انہیں دیکھنے لگے۔۔بچپن میں یہ رشتے طے کرتے وقت میری کسی نے راٸے لینا ضروری نہ سمجھا۔۔۔میری کتنی خواہش تھی کہ میری بیٹی میرے بھاٸی کہ گھر آٸے۔۔۔تو اپنی خواہش پوری کرنے کے لٸے آپ اس حد تک گرگٸیں۔۔۔۔۔یہ رشل تھی۔۔۔۔۔آج کے بعد اس گھر میں قدم مت رکھنا تم۔۔۔۔شاہ زیب اور شاہ زین نے شاید پہلی مرتبہ اپنے بابا کو اتنے طیش میں دیکھا تھا۔۔۔۔ساری بات معلوم ہونے پر شاہ زین کو بھی دکھ ہوا تھا۔۔۔۔۔۔دادو خاموش تماشائی بنی بیٹھی تھیں،ان کے پاس گویا الفاظ ختم ہوگٸے تھے۔۔۔۔۔۔حمیرا تنتناتی ہوٸی سارہ کو لے کر باہر نکل گٸیں۔۔
________________________________
شاہ زیب بیڈ پر لیپ ٹاپ لیے کام میں مصروف تھا،نازنین ڈریسنگ مرر کے سامنے بیٹھی ہاتھوں پر لوشن لگارہی تھی،شاہ زیب کا دھیان بھٹک بھٹک کر اسی طرف جارہا تھا۔۔۔۔۔۔نازنین اپنے کام سے فارغ ہوکر بالوں میں برش کرنے لگی پھر اٹھ کر بیڈ کی دوسری طرف لیٹ گٸی۔۔۔۔کتنا کام رہتا ہے زیب۔۔۔؟
سونے سے پہلے اس نے پوچھا۔۔۔۔۔۔بس ذرا سا،وہ دھیان کام کی طرف لگاتا بولا۔۔۔۔۔اوکے،چاٸے یاں کافی تو نھیں چاہیۓ؟
نازنین کے فکرکرنے پر دلکش مسکراہٹ شاہ زیب کے لبوں پر بکھرگٸی۔۔۔۔۔۔نہیں تم آرام کرو میری جان۔۔۔۔وہ لیپ ٹاپ سکرین پر نگاہیں جماتا بولا۔۔۔۔۔۔کچھ دیر بعد اس نے لیپ ٹاپ بند کیا اور نیم دراز ہوگیا۔۔۔۔۔نازنین اسکی طرف پشت کیۓ شاید سوچکی تھی۔۔۔۔۔اسکی نیند خراب ہونے کے ڈر سے شاہ زیب نے نرمی سے اسکا بازو پکڑا،آہستگی سے نازنین کا رخ اپنی طرف کرکے اب کہنی کے بل لیٹا اسکے چہرے کو تک رہا تھا۔۔۔۔۔چہرے پر آٸی۔ریشمی شاہ زیب نے انگلیوں کی مدد سے پرے کیں تو نازنین نے ایک آنکھ کھول کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔اوہ…..تم جاگ رہی ہو۔۔۔۔۔
نازنین نے اثبات میں اوپر نیچے سر ہلادیا۔۔۔۔۔سوٸی کیوں نہیں؟
ایسی حرکتیں کروگے تو کیسے نیند آٸے گی۔۔۔۔۔نازنین نے معصومیت سے پلکیں چھپک کر اپنے گال پر رکھے شاہ زیب کے ہاتھ کی طرف اشارہ کرکے کہا۔۔۔۔۔۔۔شاہ زیب کا قہقہ بے اختیار تھا۔۔۔۔۔۔اب وہ مکمل اسکے حصار میں تھی۔۔۔۔۔۔
____________________________________
ہر چھ ماہ میں ایک تاریخ رکھی جاتی جب آغا دلاور خود وہاں آتا،اس دوران اغوا۶ کی جانے والی تمام لڑکیاں اسکے حوالے کردی جاتیں۔۔۔۔۔اس ماہ کی چوبیس تاریخ اس کام کے لٸے مقرر ہوٸی تھی۔۔۔۔۔
حسینہ باٸی کے کمرے میں کیمرہ لگانے کے بعد انکا کام آسان ہوگیا تھا۔۔۔ساری ضروری معلومات بآسانی ان تک پہچ گٸی تھیں۔۔۔۔۔۔
حسینہ باٸی آنے والے وقت سے بے نیاز چوبیس تاریخ کے انتظار میں تھی۔۔
_____________
کیا بکواس ہے؟
شاہ زین کی دھاڑ گونجی۔۔۔۔
گھر سے اطلاع آٸی تھے کہ رشل اب تک گھر نہیں پہچی،یونی سے ڈراٸیور لینے گیا لیکن وہ وہاں ہوتی توآتی ناں،انتظار کرکے وہ واپس آگیا۔۔۔۔۔
ڈراٸیونگ کرتے اسکے ہاتھ مضبوطی سے سٹیرنگ پر جمے تھے،کچھ دیر میں رش ڈراٸیونگ کرتا وہ گھر پہچا۔۔۔۔۔۔سب کے چہرے سے پریشانی و فکرمندی جھلک رہی تھی،بڑی ماما اور دادو اسکی خیریت کی دعا کرتے نہ تھک رہی تھیں۔۔۔
___________________________________
پچھلے ایک گھنٹے سے زین پاگلوں کی طرح رشل کو ڈھونڈرہا تھا،شام کے گہرے ہوتے ساٸے دیکھتے اسکے حواس جھجھنانے لگے تھے۔۔۔۔۔
“کہاں ہو تم رشل”انگوٹھے اور شہادت کی انگلی کی مدد سے اس نے آنکھیں دباٸیں۔۔۔۔۔
دفعتاًمیسج ٹون بجی تو اس نے سیل دیکھا۔۔۔۔سکرین پر جگمگاتے الفاظ گویا اس میں برقی لہر دوڑاگٸے تھے۔۔۔۔۔۔
“رشل اس وقت حسینہ باٸی کے کوٹھے پر ہے”
وکی کا میسج تھا۔۔۔۔۔مجھے اسکے پاس جانا ہوگا۔۔۔۔خودکلامی کرتا وہ کار اڑاتا فہد کے پاس پہچا۔۔۔۔۔اطلاع ملنے پرپانچ منٹ تک انسپکٹر دلاور بھی وہاں حاضر ہوچکا تھا۔۔
ساری بات سن کر وہ لوگ بھی پریشان ہواٹھے،سب سے زیادہ انہیں جو چیز حیرت میں ڈال رہی تھی وہ شاہ زین کی بے صبری تھی،وہ جلد سے جلد وہاں جانا چاہتا تھا۔۔۔۔۔۔آج سے پہلے انہوں نے زین کی ایسی حالت نہ دیکھی تھی۔۔۔۔۔
یہ جلد بازی ہوگی سر،ہمیں ٹھنڈے دماغ سے کچھ سوچنا ہوگا۔۔۔۔۔دلاور کے کہنے پر زین نے سرد نگاہوں سے اسے گھورا۔۔۔۔۔۔ابھی کہ ابھی وکی سے رابطہ کرو۔۔۔۔۔حکم ملنے پر دلاور نے وکی کو میسج دیا،وکی سے بات کرنے کے بعد اب زین خاصہ مطمئن تھا،عینا کو پہلے سے الرٹ کردیا گیا تھا۔۔۔
__________________________________
گراونڈ فلور پر اس وقت کافی چہل پہل تھی،حسینہ باٸی اپنے مخصوص تخت پربیٹھی تھی،کچھ نٸے چہرے آجارہے تھے،پاس ہی رشل کو شبو پکڑے کھڑی تھی،وہ اسے اوپر لےجانا چاہ رہی تھی لیکن وہ رشل تھی،شبو کو کتنے ہی گھونسے وہ مارچکی تھی حتیٰ کے بال بھی کھینچنے سے گریز نہیں کررہی تھی حلق پھاڑ کر چلانا ساتھ ساتھ جاری تھا،گلابو حسینہ باٸی کی منظورِنظر ہوگٸی تھی آجکل،اسے بلایا گیا رشل کو قابو کرنےکے لٸے لیکن اس نےبھی دو پنچ کھاکر دور رہنے میں عافیت جانی،آخر کو جس طرح وہ بال کھینچ رہی تھی گلابو کا پھانڈا پھوٹنا یقینی تھا۔۔۔۔۔۔داخلی دروازے پر دیگر گاڑیوں کے ساتھ ایک کار آرکی،اس میں سے ایک شخص نکل کر اندر کی طرف بڑھا،لمباچوڑا،بلیو جینز کے ساتھ بلیک جیکٹ پہنے جیکٹ کا ہڈ سر پر ٹکاٸے ساتھ سن گلاسز لگارکھے تھے۔۔۔۔وہ ایس پی شاہ زین تھا۔۔مصنوعی داڑھی نے اسکی اصل پہچان چھپارکھی تھی،اس وقت وہاں ایس پی شاہ زین نہیں ایک انجان شخص موجودتھا۔۔۔۔گلابو تیر کی طرح ہال میں داخل ہوتےاس شخص کی طرف بڑھی،بیگم حسینہ،اس بندے کی بات کررہی تھی ۔۔۔۔۔بلند آواز سے بول کر اب وہ حسینہ باٸی کے کان میں گھسی رازدارانہ انداز اختیار کرگٸی۔۔۔
“مال دار پارٹی ہے”۔۔
بیگم حسینہ نے چاپلوسانہ مسکراہٹ سے چہرہ سجاکر گلابو کو ہی آگے کا کام سونپا۔۔۔۔۔شاہ زین نے شورشرابے میں ایک طرف رشل کو بھی دیکھ لیا تھا اور اسکا دل چاہا تھا حسینہ باٸی سمیت اس پوری عمارت کو آگ لگادے۔۔۔۔۔۔
اس لڑکی کو لے آو۔۔۔۔۔شاہ زین آہستہ آہستہ رشل کی طرف بڑھا۔۔۔
“دور رہو مجھ سے”۔۔۔۔۔رشل خود کو چھڑانے کی مشق مسلسل جاری رکھتے حلق کے بل چلاٸی۔۔۔۔۔۔
ہاٸے بابو،اس چھوکری کا ریٹ زیادہ ہے۔۔۔۔۔اوپر سے نیا مال ہے،الٹی کھوپڑی کی بھی لگتی ہے۔۔۔گلابو دوپٹہ لہراتی شاہ زین اور رشل تک پہچی۔۔۔۔۔۔
منظور ہے۔۔۔۔وہ رشل پر نظریں جماٸے بولا۔۔۔
نہیں،تم…تمھارا قتل کردونگی زلیل انسان اگر مجھے ہاتھ بھی لگایا تو۔۔۔۔۔وہ غصے کی شدت سے کانپتی آواز میں دھاڑی۔۔۔۔۔زین نے نوٹوں کی گڈی حسینہ باٸ کی طرف اچھالی اور رشل کا بازو پکڑ کر گلابو کی معیت میں آگے بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔ایک نظر اس نے چاروں طرف ڈالی،دو مضبوط جسامت کے آدمی داخلی دروازے پہ جم کے کھڑی تھے،اسےہوش سے کام لینا تھا جوش سے نہیں،اگر وہ ابھی نکلنے کی کوشش کرتا تو پورا پلان چوپٹ ہوجاتا۔۔۔۔
گلابو نے ایک کمرے کے آگے رک کر زین کو دیکھا،آنکھوں ہی آنکھوں میں الرٹ رہنے کی تلقین کی گٸی اور زین رشل کو لیۓ اندر آگیا۔۔۔۔۔
رشل کو اس نے جھٹکے سے چھوڑا تو وہ لڑکھڑاکررہ گٸی۔۔۔۔زین نے دروازہ لاک کیا اور جیسے ہی پلٹا رشل اس پر جھپٹ پڑی۔۔۔اسکے ہاتھ میں گلدان تھا جو اس نے وہیں سے اٹھایا تھا۔۔۔
“جنگلی بلی،ہٹاو اسے”زین نے اسےپرے دھکیلا لیکن وہ ناں مانی تو اسکے دونوں ہاتھ اپنے ہاتھوں میں جکڑ لیۓ۔۔۔۔۔۔گلدان ہاتھ سے لے کر وہ کارپیٹ پہ پھینک چکا تھا۔۔۔۔۔۔
ہاتھ مت لگانا مجھے تم جانتے نہیں میں کون ہوں۔۔۔۔۔وہ غصے سے ایک بار پھر چلاٸی۔۔۔۔۔۔”کون ہو”؟
زین نے اسکے ہاتھ مضبوط گرفت میں جکڑے اسکی آنکھوں میں دیکھ کر پوچھا۔۔۔
“ایس پی شاہ زین کی بیوی ہوں میں “۔۔۔۔اسے پتا چلا توتمہیں ذندہ دفن کردے گا ۔۔۔۔۔
شاہ زین اسکی بات پر بےساختہ قہقہ لگایا۔۔۔۔ایک لمحہ لگا تھا اسے فام میں آنے میں۔۔۔۔۔
اس نے آہستگی سے رشل کو آزاد کردیا تو رشل چونک کر اسے دیکھنے لگی۔۔۔۔۔۔
پھر ایک طنزیہ مسکراہٹ رشل کے لبوں پر رقص کرنے لگی۔۔۔۔۔۔[ڈرگیا….شاہ زین تم کسی کام تو آٸے۔۔۔۔۔رشل دل میں خود سے مخاطب تھی کہ اسے اپنے ہاتھ پر سرسراہٹ سی محسوس ہوٸی۔۔۔۔۔غیر محسوس طریقے سے وہ اسکے کافی نزدیک کھڑی تھی اور شاہ زین کے بھاری ہاتھ کی انگلیاں اسکے بازو نرمی سےچھورہی تھیں۔۔۔۔۔ایک کرنٹ سا اسکے اندر دوڑگیا۔۔۔
گھٹیاانسان،تمھاری ہمت کیسے ہوٸی مجھے چھونے کی۔۔۔۔۔۔۔اس سے پہلے کے وہ پیچھے ہوتی زین نے کمر سے پکڑ کر اسے ساتھ لگایا۔۔۔۔۔
“کچھ غلط کیا ہے کیا”اب وہ بھولپن سے پوچھ رہا تھا۔۔۔۔رشل کا خون کھول اٹھا۔۔۔۔۔اب کے وہ ناخنوں سے اسکے منہ پر حملہ کرنے لگی،تم جنگلی ہو پوری کی پوری۔۔۔۔۔زین نے بمشکل خود کا بچاو کیا۔۔۔۔۔۔۔
نکل جا اس کمرے سے ورنہ زندہ نہیں چھوڑونگی۔۔۔۔۔ہانپتی ہوٸی وہ سانس درست کرنے لگی۔۔۔
“اتنی سی جان میں اتنا دم ہے”زین نے مضبوط بازو سینے پرباندھ کر دلچسپی سےاسے دیکھا۔۔۔۔۔۔
رشل نے صرف خونخوار نظروں سے گھورنے پر اکتفا کیا۔۔۔۔۔۔ایک بات تو طے تھی سامنے کھڑا شخص فولاد کا بنا تھا جیسے،اتنی مار کھاکر بھی مزے سے کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔
زین نے آہستہ سے قدم بڑھاٸے تو وہ کرنٹ کھاکر پیچھے ہوٸی۔۔۔
د…دیکھو پلیز،مجھ سے دور رہو۔۔۔۔اسکی ہمت جواب دینے لگی تھی.وہ جب سے یہاں لاٸی گٸی تھی مسلسل ہاتھ پاوں چلارہی تھی۔۔۔۔
“ہاہ،،،،اتنی جلدی ہار مان گٸیں”۔۔۔۔۔۔زین نے مصنوعی حیرانگی ظاہر کی۔۔۔۔۔۔اب وہ بلکل اسکے نزدیک کھڑا تھا۔۔۔دور رہو مجھ سے۔۔۔۔
“تمھیں چھونے کا پرمنٹ رکھتا ہو”زین نے اسکی پتلی حالت سے مزہ لیا۔۔۔۔۔اب وہ ہڈ سر سے اتار چکا تھا۔۔۔۔۔۔۔
رشل غور سے اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔شاہ زین نے اسکی آنکھوں میں دیکھتے مصنوعی داڑھی بھی خود سے الگ کردی،رشل آنکھیں پھاڑے حیرت کے سمندر میں غوطہ زن تھی۔۔
“تم یہاں”
“ہاں”شاہ زین کو اپنے سامنے دیکھ کر اسکی جان میں جان آٸی تھی،اسکی عزت محفوظ تھی اسکے اندر ایک سکون سا اترگیا۔۔۔۔۔۔لیکن شاہ زین کے ہوتے اسکا سکون سے رہنا بھلا ممکن تھا۔۔۔۔۔؟
“تو تم ایسی جگہوں پر بھی جاتے ہو”اب وہ سینے پر ہاتھ باندھے تفتیشی انداز میں اسے گھوررہی تھی،شاہ زین نے سر پیٹا،وہ اسے بچانے کی خاطر آیا تھا اور وہ کیا مطلب لے رہی تھی۔۔۔
تمھاری کوٸی کُل سیدھی نہیں،دماغ میں بھوسا بھرا ہے کیا۔۔۔۔۔بیوقوف لڑکی!
تمھاری وجہ سے اس وقت میں اس جگہ کھڑا ہوں سمجھیں۔۔
اوہ ….اچھا!
تمھیں کیسے پتا کہ میں یہاں ہوں،تفتیشی انداز ہنوز برقرار تھا۔۔۔۔۔شاہ زین کویقین ہونے لگا واقعی وہ ایک پولیس والے کی بیوی ہے،۔۔۔۔۔۔پتا لگالیا،آخر پولیس والا ہوں۔۔۔۔۔۔۔
ہنہہ|ٹپوری پولیس والے۔۔۔۔رشل نے ہنکارا بھرا۔۔۔۔۔۔۔کچھ دیر پہلے والا ڈروخوف کہیں دور جاسویا تھا۔۔۔۔۔۔اب وہ اطمینان سے بیڈ پر بیٹھی تھی۔۔۔۔
کب چلنا ہے یہاں سے؟
شاہ زین کی طرف دیکھتے اس نے ایسے پوچھا جیسے بڑا آسان کام ہو یہاں سے ابھی نکلنا۔۔
“حلوہ ہے کیا”۔۔۔زین نے چباچباکر کہا اور جیکٹ اتار کر وہی اچھال دی۔۔۔۔۔۔۔اب وہ بھی بیڈ پر مزے سے لیٹا تھا۔۔۔۔۔۔اسکے لیٹتے ہی رشل اچھل کر کھڑی ہوٸی تھی کہ لیٹے لیٹے ہی زین نے کلاٸی پکڑ کر کھینچا۔۔۔۔۔ٹوٹی ڈال کی طرح وہ سیدھی اسکے کشادہ سینے پر گری۔۔۔۔۔زین نے دونوں ہاتھوں سے اسکے گردمضبوط حصار باندھا۔۔
“چھ چھوڑو مجھے کیا کررہے ہو تم بیہودہ انسان”اس اچانک افتاد پر وہ بوکھلاکر اٹھنے کی کوشش کرنے لگی لیکن زین نے اسکی یہ کوشش بری طرح ناکام بنادی تھی۔۔۔۔۔۔
موقع اچھا ہے۔۔۔۔۔۔زین نے چڑانے کی غرض سے آنکھ دباکر کہا۔۔۔۔۔میں تمھارا سر پھاڑدونگی اگر تم نے ایسا ویسا کچھ کیا۔۔۔۔
وہ لال پیلی ہونے لگی تھی۔۔۔۔
“ایسا ویسا”زین نے معنی خیز انداز میں سرگوشی کی۔۔۔۔۔۔اسکا ارادہ رشل کو صرف تنگ کرنے کا تھا لیکن اب وہ بے اختیار سا ہونے لگا تھا اسے اتنے قریب پاکر۔۔۔۔۔۔۔
آنکھوں میں خمار ساابھرنے لگا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
“زین پلیز لیو می”رشل بے بسی سے رونے والی ہوگٸی۔۔۔۔۔زین نے خود پر ضبط کرتے اسے دور کرنے میں ہی عافیت جانی۔۔۔۔۔اس سے پہلے کے جذبات کا سمندر اسے بہالے جاتا۔۔۔۔۔وہ اسے آزاد کرتا اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔مجھے ابھی کے ابھی گھر جاناہے۔۔۔۔رشل کے کہنے پر زین نے بغور اسے دیکھا۔۔۔۔
ہم ابھی نہیں جاسکتے،ناممکن ہے۔۔۔۔یہاں
کوٸی میری اصل پہچان سے واقف نہیں،میں سب کی نظر میں ایک گاہگ ہوں جس نے تمھاری قیمت اداکی ہے۔۔۔۔۔۔یوں جانا سب کو شک میں ڈال سکتا ہے۔۔۔۔۔اور ایسی جگہ میں تمھیں چھوڑ کر نہیں جاسکتا۔۔۔۔۔۔ٹراٸے ٹو انڈرسٹینڈ۔۔۔۔۔۔
نہیں مجھے گھر لے کر جاو میں تمھارے ساتھ اکیلے اس روم میں نہیں رہ سکتی۔۔۔۔۔۔غصے سے سرخ پڑتے چہرے کے ساتھ وہ ضدی لہجے میں گویا ہوٸی۔۔۔۔۔
پاسبل نہیں ہے یار،تم ریلیکس ہوکر سوجاوکچھ نہیں کررہا میں۔۔۔۔۔زین نے کمرے میں نگاہ دوڑاتے کہا۔۔۔۔کونے میں تھری سیٹر صوفہ رکھا تھا،حالانکہ وہ کافی چھوٹا تھا زین کےلٸے لیکن گزارہ تو کرنا تھا اسلیۓ وہ اس پر نیم دراز ہوگیا۔۔۔۔۔۔رشل ابھی تک شش و پنچ میں پڑی اسے گھور رہی تھی۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: