Hisar e Ishqam Novel by Pari Saa – Episode 8

0
حصارِ عشقم از پری سا – قسط نمبر 8

–**–**–

زین نے اسے نظرانداز کرتے آنکھوں پر بازو رکھ لیا،کچھ دیر بعد اس نے بازو ہٹاکر دیکھا تو رشل ہنوز بیٹھی تھی۔۔۔۔۔۔بوجھل ہوتی آنکھیں بتارہی تھیں کہ نیند سے اسکا براحال ہے،زین اٹھ کربیڈ کی طرف بڑھا وہ جلدی سے پیچھے ہوگٸی۔۔۔۔۔۔وہ بھاگنے کا پورا ارادہ کیۓ الرٹ بیٹھی تھی۔۔۔۔۔زین کو اسکی حالت پر زور کی ہنسی آٸی تھی۔۔۔۔۔۔
“محافظ ہوں تمھارا،آرام سے سوجاو”اب کے ین نے ذرا سختی سے کہا،رشل نے سمٹ کر نیم دراز ہوتے کمبل اوپر اچھی طرح ڈالا اور سونےکی کوشش کرنے لگی۔۔۔۔۔زین نے صوفے پر لیٹے لیٹے دیکھا وہ آنکھوں کی جھریوں سے اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔
“ویسے خود کو میری مسز تو مانتی ہو تم،آج قبول کیا مجھے اچھا لگا”۔۔۔۔۔۔۔زین کی آواز پر وہ خود کو کوسنے لگی،ذرا سی دیر میں ہی آنکھیں بوجھل ہونے لگی تھیں۔۔
_________________________________
رات کے کسی پہر شاہ زین نے رشل کو جگایا۔۔۔۔۔
کیا مصیبت ہے تمھیں سونے دو مجھے۔۔۔۔۔اٹھو میڈم گدھے گھوڑے بیچ کر ایسے سورہی ہو جیسے اپنے بیڈروم میں ہو۔۔۔۔۔زین نے سرگوشی میں چباچباکر لفظ ادا کیۓ تو رشل آنکھیں مسلتی اٹھ بیٹھی۔۔۔۔۔”کونسی آفت آگٸی”اب وہ حسب عادت گھوررہی تھی زین کو۔۔۔۔۔۔ہمیں ابھی یہاں سے نکلنا ہوگا۔۔۔۔۔۔
“ابھی مگر کیسے”ایک دم سے رشل کی نیند غائب ہوٸی تھی۔۔۔۔۔۔اٹھو جلدی کرو۔۔۔۔۔۔رشل فوراً کمبل پرے کرتی اٹھ کر کھڑی ہوگٸی۔۔۔۔۔کیا ٹائم ہورہا ہے؟
دروازے کی طرف بڑھتے اس نے سوال کیا۔۔۔۔۔وہاں کہاں جارہی ہو۔۔۔یہاں سے۔۔۔۔۔زین نے کھڑکی کی طرف بڑھتے اشارہ کیا۔۔۔۔۔کک کیا،کھڑکی سے؟ہڈیاں تڑواوگے تم میری۔۔۔۔۔رشل نے کھڑکی سے باہر جھانک کر فکر مندی سے کہا۔۔۔۔۔۔کھڑکی سے نیچے تک کافی فاصلہ تھا جہاں ایک رسی پہلے ہی مضبوطی سے باندھ دی گٸی تھی۔۔۔۔۔اسے پکڑ کر اترو نیچے۔۔۔۔۔زین نے رشل کے ہواٸیاں اڑے چہرے کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔نن نہیں میں کیسے؟گرجاونگی میں ۔۔۔۔۔۔
ویسے تو بڑی جھانسی کی رانی بنی پھرتی ہو۔۔۔۔۔زین نے اسے کھاجانے والی نظروں سے گھور کر طنزیہ لہجے میں کہا۔۔۔۔۔بھاڑ میں جاو تم ٹپوری پولیس والے۔۔۔۔۔۔میں کسی صورت یہاں سے نہیں اترنے والی۔۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے میں جارہا ہوں تم حسینہ باٸی کےباڈی گارڈ کے فرائض انجام دیا کرنا۔۔۔۔۔۔زین نے سرسری لہجے میں کہہ کر واقعی کھڑکی پر چڑھ کر موٹی رسی تھام لی۔۔۔۔۔۔۔ا…ایک منٹ !
رشل جلدی سے بولی۔۔۔۔۔۔ڈر اسکی آواز میں صاف ظاہر تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہچکچاتے ہوٸے وہ کھڑکی پر چڑھ گٸی۔۔۔۔۔۔۔زین مجھے ڈر لگ رہا ہے۔۔۔۔۔۔بس رونے کی کسر رہ گٸی تھی گویا۔۔۔۔۔زین کو اس پر ترس آنے لگا۔۔۔۔۔اچھا ایک راستہ ہے لیکن اس میں تمھیں پرابلم ہوگی۔۔۔۔۔آنکھوں میں شرارت بھرکر وہ گویا ہوا۔۔۔۔۔۔”کیا”رشل جلدی سے پوچھ بیٹھی۔۔۔۔۔۔پاس آکر مجھے زور سے پکڑو،میں اترتا ہوں بس تم چھوڑنا مت۔۔۔۔۔زین کے آٸیڈیے پر رشل نے آنکھیں نکالیں۔۔۔۔۔نہیں میں ایسے نہیں جاونگی۔۔۔۔۔۔۔
عجیب عورت ہو،ہر بات میں ہی تمھیں مسٸلہ ہے،بیٹھی رہو یہیں میں جارہا ہوں۔۔۔۔۔اسکی غصے سے کہی تمام باتوں کو چھوڑ کر رشل نے صرف ایک بات پکڑی۔۔۔۔۔”تم نے مجھے عورت کہا،عورت”۔۔۔۔۔۔۔وہ صدمے و غصے سے ملے جلے تاثرات چہرے پر سجاٸے بولی۔۔۔۔۔کیوں عورت نہیں ہو؟ غلط کہا کیا؟زین نے اچھنبے سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔ہنہہ فضول آدمی۔۔۔اسکے فوراً حساب برابر کرنے پر زین کے لب مسکرااٹھے۔۔۔۔۔۔اب تم چل رہی ہو یاں حسینہ باٸی کے ساتھ رہنا ہے؟اب کے اس نے جانے کو پر تولتے ایسی سنجیدگی سے کہا کہ رشل سب بھول بھال اسکے ساتھ جانے کو راضی ہوگٸی۔۔۔۔۔چل رہی ہوں،اس نے ذرا جھجھک کر زین کے کندھوں پر ہاتھ رکھے۔۔۔۔۔۔ہم کپل ڈانس نہیں کررہے،زین نے ذرا دورکھڑے اپنے کندھے پر ہاتھ رکھنے والی حرکت کو دیکھتے چباچباکر کہا۔۔۔۔۔۔۔کیوں کیا ہوا۔۔۔۔۔رشل یونہی کھڑے کھڑے کمال بے نیازی سے گویا ہوٸی۔۔۔۔ٹھیک ہے گرجاوتومجھے الزام مت دینا۔۔۔۔۔زین نے کندھے اچکاٸے..اب ٹھیک ہے۔۔۔۔رشل نے دل میں اسے لتاڑتے اسکی گردن کے گرد ہاتھ باندھے۔۔۔۔۔۔۔زین کا دل چاہا اپنا سر پیٹ لے۔۔۔۔اگلے ہی لمحے اس نے جھٹکے سے رشل کو اپنی نزدیک کیا اور اسے خود سے لگاٸے اپنے اور اسکے گرد رسی باندھ دی۔۔۔بیہودہ انسان۔۔۔۔نیچے اترنےکے لیۓ تیار زین کو خونخوار نظروں سے دیکھتے رشل نے کہنا ضروری سمجھا۔۔۔۔۔۔جنگلی شیرنی۔۔۔۔۔زین بھی کہا پیچھے رہنے والا تھا۔۔۔۔۔۔۔
کھڑکی سے نیچے رسی کے ذریعے اترتے رشل کا دل دھک دھک کررہا تھا۔۔۔۔۔۔کس کے پکڑو ورنہ نیچے گری تو ہڈی پسلی لازمی ٹوٹے گی۔۔۔۔۔زین کے کہنے پر اس نے بے اختیار گروفت مضبوط کی،زین کے لب آپ ہی آپ مسکرااٹھے۔۔۔۔۔۔زمین پر قدم رکھتے ہی رشل کی جان میں جان آٸی۔۔۔۔۔۔یہ اس عمارت کا پچھلا حصہ تھا،کچرہ ہر طرف پھیلا تھا…..آہستہ آہستہ قدم زمین پر رکھتے وہ دونوں آگے بڑھ رہے تھے۔۔۔۔مجبوراً زین کو یہ راستہ اختیار کرنا پڑا تھا کیونکہ عمارت کے اندر ہر طرف پہرے دار تھے۔۔۔۔۔۔داخلی دروازے کے پاس ایک آدمی کرسی پر بیٹھا سورہا تھا،یقیناً وکی نے اپنا کام اچھے سے کیا تھا۔۔۔۔۔۔زین نے ذرا سا دروازہ کھولا اور رشل کا ہاتھ پکڑے سڑک پرآگیا،چند قدم چلنے کے بعد حسب توقع کچھ دور انکی گاڑی تیار کھڑی تھی،فہد ڈراٸونگ سیٹ پر بیٹھا ان ہی کا منتظر تھا،زین نے رشل کو دروازہ کھول کر اندر بٹھایااور پیچے ہونے لگا تو بے اختیار رشل اسے پکار بیٹھی۔۔۔
“زین”کیا ہوا؟
تم بھی چلو ساتھ کہاں جارہے ہو اب؟ وہ خوفزدہ تھی۔۔۔۔زین نے اسکے ہاتھ مضبوطی سے تھام لیۓ۔۔۔۔۔۔ڈرنے کی کوٸی ضرورت نہیں ،اب تم سیو ہو،یہاں سے سیدھی گھر جاو،فہد تمھیں لے جاٸے گا،گھر میں نے نازنین کو بتادیا ہے،مجھے ابھی واپس جانا ہوگا کیونکہ ہمارے اچانک غائب ہونے سے انہیں شک ہوسکتا ہے۔۔۔۔اسکی بات پررشل نے اثبات میں سر ہلادیا۔۔۔۔۔
ٹیک کیٸر۔۔۔۔۔۔۔۔زین جانے کو مڑا تو پیچھے سے رشل کی مدھم سی سرگوشی ابھری،زین کے لب دلکش مسکراہٹ سے سج گٸے۔۔۔۔۔۔فہد کو سب سمجھاکر وہ دوبارہ اس عمارت میں داخل ہوا چوکیدار ہنوز بے خبر سورہا تھا۔۔۔۔۔۔۔زین نے دروازہ بند کیا اور پچھلے راستے سے رسی کی مدد سے دوبارہ اسی کمرے میں جاپہچا،رسی اس نے کھول دی تھی اوپر آکر۔۔۔۔۔۔بیڈ پر بیٹھتے آگے کے پلان کے بارے میں سوچنے لگا،جب تک نازنین اور فہد کی طرف سے رشل کے خیریت سے گھر پہچنے کی اطلاع نہ آجاتی اسے سکون نہ آتا۔۔۔رشل کے معاملے میں وہ کچھ زیاہ ہی پازیسو تھا۔۔۔
_________________________________
اے شبو،یہ اتنی تیاریاں کس لٸے ہونے لگیں؟ گلابو نے تعجب سے تھوڑی پر انگلیاں ٹکا کر یہاں وہاں دیکھتے کہا۔۔۔۔۔۔شبو خود بھی آٸینے کے آگے کھڑی اپنا حسن سنوارنے کی ناکام کوششوں میں جتی تھی۔۔۔۔۔۔کل پروگرام ہونا ہے ایک،شبو نے بنا گلابو کی طرف دیکھے بے دھیانی سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔ہاٸے وہی تو پوچھ رہی ہوں کیسا پروگرام کچھ مجھے بھی تو پتا چلے؟۔۔۔۔۔گلابو نے زوردار تالی مارتے چمک کر کہا۔۔۔۔۔۔ہمارا کوٸی کام نہیں اس مسٸلے سے،شبو نے ٹیڑھی نظروں سے گلابو کو دیکھا۔۔۔۔۔۔
اے گلابو،بیگم حسینہ نے بلایا ہے تجھے۔۔۔۔۔۔
ایک مردانہ وجود زرتار پیلا جوڑا پہنے نمودار ہوا۔۔۔۔۔۔گلابو نے اثبات میں سر ہلایا اور باہر کی طرف بڑھ گٸی۔۔۔۔
_________________________________
حسینہ باٸی تخت پربیٹھی تھی تب شاہ زین رات والاحلیہ بناٸے سر پر ہڈ ٹکاٸے سیڑھیوں سے اترا،یہ تقریباً صبح ساڑھے دس کاوقت تھا۔ۓ۔۔۔۔۔گلابو بھی اسی اثنا میں وہاں آپہچی۔۔۔۔۔۔وہ چھوکری کیسی لگی بابو،ابھی کیا کررہی ہے؟،گلابو نے حسینہ باٸی کو دکھانے کے لیۓ آنکھیں گھماکر پوچھا،کمرے میں پڑی ہے۔۔۔۔۔۔زین نے بے تاثر لہجے میں کہا اور باہر نکل گیا۔۔۔۔۔۔۔اب گلابو حسینہ باٸی کی طرف بڑھی،مجھے یاد کیا ؟ایک ادا سے اس نے پوچھا۔۔۔۔۔کافی دیر تک وہ بغور حسینہ باٸی کی باتیں سنتی رہی پھر اٹھ کھڑی ہوٸی۔۔۔۔۔سمجھ گٸی سب؟حسینہ باٸی نے تصدیق چاہی۔۔۔۔۔ہاں ہاں سب سمجھ گٸی تم فکر ہی نہ کرو۔۔۔۔۔شبو نے ہاتھ مخصوص انداز میں ہوا میں چلایا اور اوپر کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔الے گلابو،اس چھوکری کو دیکھ لیو،حسینہ باٸی نے پیچھے سے آواز لگاکر رشل کو دیکھنے کا کہا۔۔۔۔۔۔۔اچھا۔۔۔۔۔۔گلابو اثبات میں سر ہلاتی آگے بڑھ گٸی،کچھ دیر بعد وہ سیڑھیوں پہ کھڑی حسینہ باٸی سے مخاطب تھی۔۔۔۔۔
وہ چھوکری سوٸی پڑی ہے ابھی تک۔۔۔۔۔۔
“چل ٹھیک ہے،حسینہ باٸی نے پان منہ میں دباتے کہا”۔۔۔۔
_______
اس ناول کے تمام جملہ حقوق #ناول_محل_ویب کے پاس محفوظ ہیں،اس ناول کے کسی بھی حصے کو کسی پیج بلاگ وغیرہ پر پوسٹ کرنے کی اجازت نہیں،بصورت دیگر ناول محل ویب ہر طرح کی چارہ جوٸی کرنے کا حق رکھتی ہے))
💞حصارِعشقم💞
از:پری سا✒
پندرویں قسط(15)
شاہ زین اور اسکی ٹیم پوری طرح الرٹ تھی،آج چوبیس تاریخ تھی اور انہیں بس اب وکی کے میسج کا انتظار تھا،آغادلاور آج برا پھنسنے والاتھا،شاہ زین کو اسکے خلاف ٹھوس ثبوت چاہیۓ تھا تاکہ وہ اس پرہاتھ ڈال سکے اور آج اسے رنگے ہاتھوں پکڑ کر یقیناً اسکا پتہ صاف ہوجانے والا تھا۔۔۔۔۔۔حسینہ باٸی کی ایک ایک حرکت پر اسکی نظر تھی۔۔۔۔۔
______________________________________
کیا کہہ رہے ہو بابو!
حسینہ باٸی کے چہرے پر ہواٸیاں اڑرہی تھیں،اتفاق سے اسکا چہرہ خفیہ کیمرے کی جانب ہی تھا،شاہ زین اور اسکی ٹیم سامنے رکھے لیپ ٹاپ پر نظریں جماٸے بڑے غور سے یہ سب دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔۔
ٹھ ٹھیک ہے۔۔۔۔دوسری طرف سے بات مکمل ہونے پر حسینہ باٸی نے فون رکھ دیا۔۔۔۔۔
اب وہ پریشان صورت لیۓ شبو کو آوازیں لگارہی تھی۔۔۔۔
شبو کمرے میں آٸی تو حسینہ باٸی فوراً اسکی طرف بڑھی۔۔۔۔۔صاحب کا فون آیا تھا،آج کا پلان کینسل ہے۔۔۔شبو حیرت سے منہ پر ہاتھ رکھ گٸی۔۔۔۔
ہاٸے کیوں؟ اتنی تیاریاں جو کیں اسکا کیا۔۔۔۔؟
بھاڑ میں گٸیں تیاریاں،صاحب کہتا ہے خطرہ ہےیہاں اسے۔۔۔۔اور اگر وہ خطرے میں ہے تو ہم بھی خطرے میں ہیں۔۔۔۔۔۔
حسینہ باٸی آنکھیں چھوٹی کیۓ کچھ سوچتی بولی،شبو ابھی تک حیرت کے سمندر میں غوطہ زن تھی۔۔۔۔۔
واٹ دا ہیل۔۔۔۔۔
شاہ زین نے ذور سے ٹیبل پر مکا مارا تھا۔۔۔۔۔باقی سب بھی بری طرح بدمزہ ہوٸے تھے اسطرح پلان چوپٹ ہونےپر۔۔۔۔۔
_____________________________________
آغا دلاور ایک شاطر شخص تھا،انڈرورلڈ میں پردہ پوش رہ کر کام کرتا تھا،اسکے آدمی ہر طرف پھیلے ہوٸے تھے،ان ہی کی کارکردگی تھی کہ انہیں یہ خبرملی تھی،اسکےخلاف پلان بنایا جارہاہے۔۔۔۔۔اب کی بار اس نے کچھ اور ہی سوچ رکھا تھا۔۔۔۔
حسینہ باٸی صبح والے شاک سے بڑی پریشان بیٹھی تھی کہ ایک اور خبر اسے ہلاگٸی۔۔۔۔۔گلابو نے آکر جو اطلاع دی وہ اسکے پیروں کےنیچے سے زمین نکالنے کو کافی تھی۔۔۔۔۔۔گلابو کا کہنا تھا کہ جب دوبارہ وہ کل رات لاٸی جانے والی لڑکی کے کمرے میں گٸی تو وہ غاٸب تھی۔۔۔۔۔۔ایک عدد رسی وہ ثبوت کے طور پر لے آٸی تھی۔۔۔۔۔
یہ کیسے ہوسکتا ہے،یہاں سے کسی کا بھاگ جانا ناممکن ہے۔۔۔۔۔
چوکیدار کو بلا شبو۔۔۔۔۔۔
حسینہ باٸی جلتے توے پر بیٹھی تھی جیسے۔۔۔۔۔چوکیدار کے آنے پر اس پر برس پڑی۔۔۔۔۔کہاں مرگیا تھا تو جو وہ چھٹانک بھرکی چھوکری بھاگ گٸی؟۔۔۔۔۔۔۔میں تو وہی تھا بیگم حسینہ!اسکے منمنانے پر بیگم حسینہ نے غضب ناک نظروں سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔کیمرے کس لیۓ لگارکھے ہیں گلابو چیک کرا۔۔۔۔۔
اسکے کہنے پر وکی کے لبوں پر مسکان ابھرنے لگی جسے لبوں میں ہے بمشکل دباکراثبات میں سرہلادیا۔۔۔۔۔سی سی ٹی وی کیمراز سب کے سب کل رات سے بند پڑے تھے۔۔۔۔۔اوریہ یقیناً وکی کی کارستانی تھی۔۔۔۔۔
وہ کوٸی عام لڑکی نہ تھی،شبو نے لقمہ دیا۔۔۔۔۔۔
حسینہ باٸی اب مغلظات بکتی اپنا غصہ ٹھنڈا کرنے کی کوشش کررہی تھی اور گلابو اسے تسلیاں دلاسے دے کر اور وہاں کھڑے لوگوں کو ڈانٹ ڈپٹ کر اپنے نمبر بڑھاری تھی۔۔۔
______________________________________
آج رشل کا آخری پیپر تھا،یونی سے آنے کے بعد سے وہ بے خبر سورہی تھی،شاہ زین گھر آیا تو لاونج میں بیٹھے سب چاٸے سے لطف اندوز ہورہے تھے۔۔۔۔شاہ زین بھی کی چین گھماتا انکے ساتھ جابیٹھا۔۔۔۔گھر کا ماحول اب کافی حد تک نارمل تھا،سب خوشگوار انداز میں باتیں کررہے تھے۔۔۔۔
شیرنی نظر نہیں آرہی؟
شاہ زین نے نازنین سے پوچھا تو وہ بے اختیار مسکرادی،سدھر جاو تم۔۔۔۔۔
زین بیٹا تم سے ایک ضروری بات کرنی ہے۔۔۔۔۔۔بابا کے مخاطب کرنے پر وہ سیدھا ہوبیٹھا۔۔۔۔۔”جی میں سن رہا ہوں”چاٸے کا کپ ہونٹوں سے لگاتے اس نے کہا۔۔۔۔۔۔
زیب اور نازنین کےساتھ ہی ہم تمھاری اور رشل کی رخصتی بھی چاہتے تھے خیر اب رشل بھی ایگزامز سے فارغ ہے،اب رخصتی ہوجانی چاہیۓ کیا خیال ہے؟
بابا کی بات سن کر شاہ زین کا دل بلیوں اچھلنے لگا ۔۔۔۔۔۔
جیسا آپ لوگ مناسب سمجھیں۔۔۔۔وہ تابعداری کے تمام ریکارڈ توڑتا اچھے بچوں کی طرح بولا ۔۔۔شاہ زیب اور نازنین اسکے انداز پر مسکرانے لگے تھے۔۔۔۔۔۔رشل سے بھی کسی نے پوچھا یاں آپ ہی آپ فیصلے کرکے بیٹھ گٸے ہو،پتا ہے یہ بات چھیڑنے پر پچھلی بار کیا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔دادو سب کو دیکھتی دور کی کوڑی لاٸی تھیں۔۔۔۔۔۔۔”رشل راضی ہے دادو آپ فکر نہ کریں”۔۔۔۔۔زین کے اچانک کہنے پر سب اسے دیکھنے لگے۔۔۔۔رات کو وہ خود آپ سب کو اپنی رضامندی دے دے گی۔۔۔زین کپ رکھ کر اٹھتا اعتماد سے بولا۔۔۔۔۔۔۔۔اس کی بات پر دادو سمیت سب مطمئن سے ہوگٸے تھے لیکن وہ رشل کو بھی اچھی طرح جانتے تھے۔۔۔۔۔
______________________________________
سر فلحال سب معاملات ٹھنڈے پڑگٸے ہیں،وقاص کی طرف سے اطلاع ملی ہے۔۔۔۔۔ٹھیک ہے آغا کے اگلے قدم کا انتظار رھے گا،حسینہ باٸی پہ نظر رکھنا۔۔۔۔۔کاریڈور میں قدم بڑھاتے شاہ زین نے کال پر موجود دلاور سے کہا اور کال کٹ کردی۔۔۔۔۔۔رشل کے کمرے کے باہر وہ کھڑا تھا،دروازہ لاک تھا،”تو وقت آگیا مسز شاہ زین”شاہ زین نے مسکراکر ڈور ناک کیا۔۔۔۔۔۔
رشل کی نیند بہت پکی ہواکرتی تھی تقریباًپانچویں بار دروازہ بجنے پر اس نے دروازہ کھولا۔۔۔۔۔
“تم،تم آگٸے واپس”شاہ زین کو سامنے دیکھ کر رشل حیرت سے بولی۔۔۔۔۔۔
ہاں تو کیا ساری زندگی وہیں پڑا رہونگا؟شاہ زین نے ابرو اچکاٸے۔۔۔۔۔۔
“ٹھیک ہے میں سونے لگی”رشل نے ایک ہاتھ سے جماٸی روکتے دروازہ بند کرنے کی کوشش کی لیکن شاہ زین پیج میں آگیا۔۔۔۔۔۔۔اور کتنا سونے کا ارادہ ہے؟یونی سے آنےکے بعد سے سوتی رہی ہو۔۔۔۔۔امتحان ختم ہونے پر خوش ہو؟۔۔۔۔۔۔۔اب کے شاہ زین نے رشل کو ساٸیڈ پر کرتے ہوٸے اندر قدم رکھا اور دروازہ لاک کردیا۔۔۔۔۔۔
تم کیوں میرا دماغ خراب کرنے آجاتے ہو زین؟ دشمن ہو تم میرے،پلیز جاو مجھے سونا ہے۔۔۔۔۔۔۔وہ غصہ ضبط کرتی بولی۔۔۔۔۔”سنو مسز”ہماری رخصتی طے ہوگٸی ہے۔۔۔۔۔۔ایک ہفتہ ہے تمھارے پاس،پھر تم اور میں……
کیا بکواس ہے۔۔۔۔۔۔زین کے آگ لگانے والے انداز پر وہ بری طرح تپ اٹھی تھی۔۔۔۔۔
رات تک تم خود جاکر سب کو اپنی رضامندی دوگی انڈرسٹینڈ۔۔۔۔۔۔زین کو نجانے کیسے یہ خوش فہمی ہوگٸی تھی کہ کیا پتا گھی سیدھی انگلی سے نکل جاٸے لیکن وہ غلط تھا اسکا اندازہ اسے جلد ہوگیا تھا۔۔۔۔۔۔۔
میں نھیں دونگی اپنی رضامندی سمجھے،اپنی خوش فہمیاں اپنے پاس رکھو۔۔۔۔۔۔
خوش فہمیاں فلحال چھوڑو اور بھی بہت چیزیں ہیں پاس رکھنے کو،جن میں سے ایک تو یہ ہے۔۔۔۔۔زین نے ایک خاکی لفافہ رشل کی جانب بڑھایا۔۔۔۔۔۔دیکھنا چاہوگی؟اٹس ویری سپیشل۔۔۔۔۔۔معنی خیزی سے اسے دیکھتا وہ بولا،رشل نے بے اختیار اس لفافے کو تھام کر کھولا،وہ کچھ تصویرں تھیں۔۔۔۔۔۔۔جنھیں دیکھ کر رشل کو گویا سانپ سونگھ گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
“یہ…..یہ سب”؟اس نے پھٹی پھٹی نگاہوں سے سامنے کھڑے زین کو دیکھا جسکے چہرے پر دلکش مسکراہٹ سجی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔وہ دلچسپی سے سینے پر بازو باندھےرشل کے تاثرات دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔”پسند آٸیں”اسکے پوچھنے پر رشل نے بے اختیار اسے تھپڑ رسید کرنا چاہا لیکن زین نے ہوامیں ہی اسکا ہاتھ تھام لیا۔۔۔۔۔۔جھٹکے سے موڑ کر اس نے رشل کو پشت سے اپنے ساتھ لگایا تھا۔۔۔۔۔۔گھٹیا انسان،تمھاری ہمت کیسے ہوٸی یہ سب….
وہ غصے سے کانپتی آواز میں پھنکاری،کارپیٹ پر بکھری اپنی اور شاہ زین کی قابلِ اعتراض تصاویر اسکا خون کھولارہی تھیں۔۔۔۔۔
زین نے سختی سے بن جل مچھلی کی طرح پھڑپھڑاتی رشل کو اپنے ساتھ لگاٸے جکڑ رکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ایک جنون تھا اسکے انداز میں۔۔۔۔۔۔۔
“میرے علاوہ کسی اور کا سوچنا بھی مت،تم صرف میری ہو”اپنے دماغ میں اچھی طرح یہ بات بٹھالو ورنہ میں وہ کرونگا جسکے بارے میں تم نے سوچا بھی نہیں ہوگا۔۔۔۔۔۔۔اسکی گرفت ڈھیلی پڑی تھی شاید۔۔۔۔
رشل کے کان کے پاس وہ سرگوشیانہ لہجے میں بول رہا تھا،اپنے بالوں اور کان پر ہوتی سرسراہٹ اسکی ریڑھ کی ہڈی میں سنسنی دوڑارہی تھی۔۔۔۔۔۔میں مرجاونگی زین،تم سے شادی نہیں کرونگی،نہیں ہونے دونگی تمھیں اپنے مقصد میں کامیاب،وہ خود کو چھڑاتی مڑ کر زین کو دیکھتی ہذیانی انداز میں چلاٸی۔۔۔۔۔۔
“شوق سے مرجاو،تمھارے مرنے کے بعدجب میں سب کو یہ تصویریں دکھاونگا تو سب کیا سوچیں گے تمھارے بارے میں…..چہ چہ شرم آنی چاہیۓ تمھیں”۔۔۔۔۔۔۔۔
سب یہی سمجھیں گے کہ منہ پر تو میرے لٸےاپنی ناپسندیگی کا اظہار کرتی رہیں اور پیٹھ پیچھے،زین کے لب معنی خیز انداز میں مسکرانے لگے۔۔۔۔۔۔۔
“خبردار جو تم نے ایسا کیا”اب زین کا کالر اسکی مٹھیوں میں جکڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔مرنے کا ارادہ کینسل؟۔۔۔۔زین نے اپنے کالر سے اسکے دونوں ہاتھ ہٹاکر اسکی کمر کے پیچھے باندھ دٸیے۔۔۔۔۔۔اگر تم نے رات تک سب کو نہیں بتایا کہ تم راضی ہو،تو میں سب کو یہ تصویریں دکھادونگا۔۔۔۔۔۔ان کے بیج بمشکل چند انچ کا فاصلہ تھا،رشل گردن اٹھاکر اسے قہربار نظروں سے گھورہی تھی۔۔۔۔۔۔کمینے انسان،بہت شوق ہے ناں تمھیں مجھے اپنی زندگی میں شامل کرنے کا،تمھاری زندگی عذاب بنادونگی میں،چھوڑونگی نہیں تمھیں۔۔۔۔۔۔اسکی دھمکیوں کا زین پر کوٸی خاص اثر نہیں ہوا تھا،زین نے ذراسا جھک کر اپنی ناک رشل کی ڈاٸمنڈ نوزپن سے سجی ناک سے مس کی۔۔۔۔۔۔رشل نے فوراً سے پیشتر رخ پھیرلیا۔۔۔۔،زین نے آہستگی سے اسے خود سے الگ کیا اور ایک دلکش مسکراہٹ رشل کی طرف اچھالتا باہر نکلنےلگا،رشل پاگلوں کی طرح کارپیٹ پر بیٹھتی ان تمام تصاویر کے ٹکڑے کرنے لگی تھی۔۔۔۔۔”میرے پاس اور بھی ہیں”زین نے دروازے کے پاس پہچ کر بنا رخ موڑے کہا اور باہر نکل گیا۔۔۔۔۔۔
_______
اس ناول کے تمام جملہ حقوق #ناول_محل_ویب کے پاس محفوظ ہیں،اس ناول کے کسی بھی حصے کو کسی پیج بلاگ وغیرہ پر پوسٹ کرنے کی اجازت نہیں،بصورت دیگر ناول محل ویب ہر طرح کی چارہ جوٸی کرنے کا حق رکھتی ہے))
💞حصارِعشقم💞
از:پری سا✒
سولویں قسط(16)
اگلے ہفتے سے گھر میں شادی شروع ہے اور کوٸی تیاری ہی نہیں ۔۔۔۔۔
ڈاٸننگ ٹیبل پر سب موجود تھے تب دادو نے بات چھیڑی۔۔۔۔۔سب ہی غیر مطمئن تھے جیسے یقین نہ ہو کہ رشل اتنی آسانی سے رضامند ہوجاٸیگی۔۔۔۔۔دادو کی بات پر رشل نے پہلو بدلا اور دل میں شاہزین کو دوچار موٹی موٹی گالیوں سے نوازہ،یہ سب اسی لومڑکی وجہ سے تو ہورہا تھا۔۔۔۔۔۔اسکے ہنوز خاموش رہنے پر سب نے ایک دوسرے کو دیکھا۔۔۔۔۔۔جبکہ زین کا اطمينان قابل دید تھا،وہ آرام سے بیٹھا بیف پلاو سے بھرپور انصاف کررہا تھا۔۔۔۔۔
رشل کی شاپنگ بھی تو رہتی ہے بتاو بھلا کسی کو کوٸی فکر ہی نہیں۔۔۔۔۔۔رشل تم صبح نازنین اور بہو کے ساتھ چلی جانا اپنی پسند کا براٸیڈل ڈریس لینے۔۔۔۔
اب کی بار دادو نے چشمے کے پیچھے سے بغور رشل کا چہرہ تکتے تیر پھینکا۔۔۔۔۔۔
رشل نے چمچ مضبوطی سے ہاتھ میں جکڑا جیسے وہ چمچ نہیں چاقو ہو جسے وہ شاہزین کی گردن اڑانے کا ارادہ رکھتی ہو۔۔۔۔۔زین نے پانی کا گلاس لبوں سے لگاتے ایک نظر رشل کو دیکھا جو اسے ہی دیکھ بلکہ گھور رہی تھی۔۔۔۔۔غیر محسوس طریقے سے زین نے موبائل کے ساتھ چھیڑ خانی کرتے رشل کا دھیان ٹیبل پر موبائل کے نیچے رکھے لفافے کی طرف دلایا جو اس نے دھمکی کے طور پر رکھاتھا۔۔۔۔۔۔۔رشل کا بس نھیں چل رہا تھا کیا کرڈالے۔۔۔۔۔۔
رشل بیٹا تم دل سے راضی ہو ناں؟
بڑی ماما کی پریشان سی آواز ابھری تو اس نے چونک کر انہیں دیکھاپھر ایک نظر تیمور صاحب پر ڈالی جو سوالیہ نظروں سے اسے ہی دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔زین کو ایک لمحے کو بے چینی سی ہونے لگی۔۔۔۔۔۔یوں محسوس ہوتا تھا جیسے اسکی جان سولی پر لٹکی ہو۔۔۔۔۔
رشل کی خاموشی پر زین نے موبائل اور لفافہ تھاما۔۔۔۔چہرے پر خطرناک حد تک سنجیدگی طاری تھی۔۔۔۔۔یہی وہ لمحہ تھا جب رشل بول اٹھی۔۔۔۔
“میں راضی ہوں”زین کے لبوں پر بڑی دلفریب مسکان رقص کرنے لگی تھی۔۔۔۔۔۔جبکہ باقی سب بھی یک دم ہلکے پھلکے سے ہوگٸے تھے۔۔۔۔۔
____________________________________
تو تم ہمارے بغیر شادی کررہے ہو؟وکی کی طرف سے میسج موصول ہونے پر زین مسکراہٹ دباگیا۔۔۔۔۔۔وکی بری طرح تپا ہوا تھا۔۔۔۔۔وہ حسینہ باٸی کے کوٹھے پر تھا جسکی وجہ سے شادی میں شرکت ناممکن تھی اور عینا بیچاری بھی محض شکوہ کرکے رہ گٸی تھی ۔۔۔۔۔۔۔وکی کے کتنے ہی شکایتی پیغامات اسے موصول ہوچکے تھے۔۔۔۔۔۔
اور اب گلابو عرف وکی بذات خود وہاں آمود ہواتھا۔۔۔۔فہد نے بڑی مشکل سے ہنسی دباٸی تھی گلابی لباس میں ملبوس گلابو کو دیکھ کر۔۔۔۔۔۔
“مجبوری ہے یار”۔۔۔ویسے تم چاہو تو شرکت کرسکتے ہو۔۔۔۔زین نے چہرے پر سنجیدگی طاری کیۓ پرسوچ انداز میں کہا جبکہ آنکھوں میں شرارت ناچ رہی تھی۔۔۔۔۔”کیسے”وکی نے فوراًپوچھا۔۔۔۔۔
تم مہمانوں کو انجواٸے کرانا ساتھ اپنے جیسی ایک دو چھمک چھلو پکڑلانا۔۔۔۔۔۔
زین کی بات فہد نے مکمل کی جبکہ وکی منہ کھولے ان دونوں کو تک رہا تھا،جب تک اسے بات سمجھ آٸی زین اور فہد ہنس ہنس کر دہرے ہوچکے تھے۔۔۔۔۔اسکا ٹھمکا اتنا اچھا نہیں جو مہمانوں کو انجواٸے کراسکے۔۔۔۔۔۔اب کے زین نے لقمہ دیا تھا۔۔۔۔۔۔
وکی کی شکل دیکھنے والی تھی۔۔۔۔۔۔دیکھ لونگاتم لوگوں کو،وکی نے دو انگلیوں کی مدد سے واچ یو کا اشارہ کیا تو ایک بار پھر قہقے گونج اٹھے،اب کے ان میں وکی کے چھت پھاڑ قہقے بھی شامل تھے۔۔۔۔۔۔
_______________________________________
مہمان آنا شروع ہوچکے تھے،گھر میں خوب رونق لگی تھی،ایک طرف لڑکیاں ڈھولکی لیۓ بیٹھی تھیں،رشل اور شاہ زین کی مہندی تھی آج۔۔۔۔۔۔۔دادو سمیت سب بہت خوش تھے سواٸے رشل کے۔۔۔۔۔۔پٹر پٹر بولنے والی رشل کو خاموش دیکھ کر سب حیرت زدہ سے تھے۔۔۔۔۔۔مہندی کی رسم خوش اسلوبی سے نمٹاٸی جارہی تھی جب نازنین دادو اور بڑی ماما کے پاس آٸی،وہ کچھ پریشان سی دکھاٸی دے رہی تھی۔۔۔۔۔۔
کیا ہوا بیٹا؟

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: