Hoor e Janat Novel by Usama Rahman Mani – Episode 1

0
حور جنت از اسامہ رحمن مانی – قسط نمبر 1

Download in PDF
–**–**–

سگنل ریڈ ہونے پر مانی نے بریک لگائی ہی تھی کہ لیفٹ سایئڈ پر بیٹھے صارم کے شیشے پر کسی کا ہاتھ پڑاـ۔۔صارم جو کہ ہیڈفونز لگائے انگلش میوزک انجوائے کر رہا تھا،،ایک دم چونکا مگر جب اس نے دیکھا کہ یہ تو کسی فقیرنی کا ہاتھ ہے اس نے بنا کوئی تاثر دیئے دوبارہ سے ٹیک لگا لی اور آنکھیں بند کر لیں۔۔۔۔۔یہ۔۔فقیر بھی نا۔۔۔مانی سر جھٹک کر بڑبڑایا۔۔۔اسی اثنا میں دوبارہ فقیرنی نے اپنا عمل دہرایا تو صارم نے شیشہ آہستہ سے نیچے کیا۔۔۔قبل اس کے کہ وہ کچھ کہتا مانی نے گاڑی چلا دی۔۔۔صارم بس ایک جھلک ہی اس فقیرنی کو دیکھ سکا تھا،،جو خود بھی صارم ہی کی جانب سوالیہ نظروں سے دیکھ رہی تھی۔۔۔میلے کپڑوں میں ملبوس وہ قریباً سترہ سالہ لڑکی تھی جس کے ہاتھ پاؤں اور چہرے پر گرد و مٹی اور میل کی تہیں جمی ہوئی تھیں۔۔۔بال کھلے اور الجھے ہوئے تھے۔۔۔مگر آنکھیں۔۔۔۔اس کی آنکھیں تو اس کی اپنی معلوم ہی نہ ہوتی تھیں۔۔۔کیا ہی دلکشی تھی ان سرمئی آنکھوں میں۔۔۔نین کیا تھے کسی شراب کا ایک گہرا سمندر تھے کہ جس میں کوئی بھی اتر جائے تو تہ در تہ ڈوبتا ہی چلا جائے۔۔۔اور شاید۔۔۔اس ایک پل کے اندر ہی صارم اس سمندر میں قدم رکھ چکا تھا۔۔۔

**********

صارم پھر سے سیدھا ہو کر بیٹھ گیا اور کانوں میں لگے ہیڈ فونز درست کرنے لگا۔۔۔
جلدی کر مانی تھوڑی اسپیڈ تیز کر یار مجھے ڈنر سے پہلے واپس پہنچنا ہے۔۔۔تمہیں پتہ تو ہے میرے ڈیڈ اپنے اصولوں کے کتنے پابند ہیں اور میں ٹائم پہ نہ پہنچا تو پھر سے انسلٹ کریں گے۔۔۔
اف کتنا ڈرتا ہے یار صارم تُو۔۔۔اب تیز ہی تو چلا رہا ہوں بابا اور کتنی تیز چلاؤں۔۔۔ٹریفک بھی تو دیکھ۔۔۔

**********

صارم اور مانی بیسٹ فرینڈز تھے اور لاہور کے LDS کالج میں بی ایس سی کے اسٹوڈنٹس تھے۔۔۔دونوں کا تعلق اپر کلاس خاندانوں سے تھا، اور اکثر ہی ویک اینڈ پر شاپنگ مالز وغیرہ جانا ان کا معمول تھا۔۔۔آج بھی وہ مال ہی سے واپس آ رہے تھے۔۔۔۔
چلو باس۔۔۔۔کل ملتے ہیں پھر۔۔ہمم۔۔۔۔صارم کے عالیشان گھر کے سامنے بریک لگاتے ہوئے مانی نے کہا۔۔۔۔اوکے۔۔۔۔۔بائے۔۔۔۔
صارم گاڑی سے اترتے ہوئے بولا۔۔۔

**********

آ گئے تم۔۔۔سارا دن باہر ہی گزار دیا۔۔۔پتہ بھی تھا کہ تمہارے پاپا کے گیسٹ آ رہے ہیں۔۔۔تمہیں گھر ہونا چاہیے تھا۔۔۔مانی کے گھر آتے ہی اس کی والدہ نے آڑے ہاتھوں لے لیا۔۔۔
کیا ماما۔۔۔۔۔پاپا کے گیسٹ سے میرا کیا لینا دینا۔۔۔اس نے ہاتھ کے اشارے سے کہا اور اندر چلا گیا۔۔۔

**********

رات کے دو بج چکے تھے نیند صارم کی آنکھوں سے کوسوں دور تھی۔۔۔وہ خود کو بالکل فریش محسوس کر رہا تھا۔۔۔اس وقت اس کے پاس کرنے کو بھی کچھ نہ تھا۔۔۔مام ڈیڈ بھی سو چکے تھے۔۔۔اس نے واٹس ایپ اوپن کیا تو مانی کا لاسٹ سین 12:25 آ رہا تھا۔۔۔اس وقت صارم کے ذہن میں دن والا واقعہ چل رہا تھا۔۔۔چائنہ چوک میں ان کا رکنا اور وہ فقیرنی۔۔۔اور پھر صارم اس کی آنکھوں کو سوچنے لگا۔۔۔ایک انجانی سی مسکراہٹ اس کے لبوں پر تھی۔۔۔وہ بس اتنا ہی جانتا تھا کہ اس مسکراہٹ کا کچھ تعلق اسی واقعے سے تھا۔۔۔آخر وہ باہر آگیا۔۔۔اور لان میں ٹہلنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات اپنے آخری حصے میں تھی۔۔۔مگر صارم کو دیکھ کر یوں لگ رہا تھا جیسے ابھی کئی گھنٹوں کی نیند سے جاگا ہو۔۔۔اب بھی وہ بالکل تازہ دم لگ رہا تھا۔۔۔
اسنے ٹائم دیکھا تو چار بجنے میں صرف پانچ منٹ باقی تھے۔۔۔
بے اختیار اس کے منہ سے نکلا۔۔۔تیرا اک نظر وہ دیکھنا۔۔۔پھر وہ واپس آ کر لیٹ گیا۔۔۔میرے سارے شوق بدل گیا۔۔۔اس نے لب ہلائے اور آنکھیں موند لیں۔۔۔

**********

صارم ایک بیس سالہ نوجوان تھا۔۔۔اچھے قد کاٹھ کا تھا اور خوبصورت بھی تھا۔۔۔غرض اسکی عمر کے کسی بھی نوجوان میں پائی جانے والی خوبیاں اس میں بھی موجود تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگلے روز وہ کالج سے واپسی پر گھر جانے کی بجائے اپنی بائیک مخالف سمت میں لے گیا۔۔۔اس کا رخ چائنہ چوک کی جانب تھا۔۔۔۔۔۔۔

**********

وہ اسے باآسانی وہاں نظر آ گئی۔۔۔کل کی طرح آج بھی وہ راہگیروں اور سگنل پر رکنے والی گاڑی والوں کے سامنے ہاتھ پھیلا رہی تھی۔۔۔۔۔۔صارم کچھ دیر وہاں کھڑا رہا پھر گھر لوٹ آیا۔۔۔اب بھی اس کے دماغ پر وہ معصوم صورت فقیرنی تھی۔۔۔اور ہونٹوں پر رات والی مسکان۔۔۔۔اس نے کھانا بھی ٹھیک سے نہ کھایا۔۔۔یوں لگتا تھا جیسے وہ کسی خوشی کے حاصل ہونے پر کھانا کھانا ہی بھول بیٹھا ہے۔۔۔ایک مرتبہ اس کا جی چاہا وہ دوبارہ وہاں جائے اور وہ دروازے تک گیا بھی۔۔۔”صاف ظاہر ہو رہا تھا کہ وہ کسی بات کو لے کر مضطرب ہے”۔،۔۔۔مگر شام ہو جانے کے باعث،، یہ سوچ کر کہ اب تک وہ وہاں سے جا چکی ہو گی،، اس نے اپنا ارادہ بدل دیا۔۔۔اور پھر چائنہ چوک اس کے گھر سے کچھ قریب بھی نہ تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج کی رات بھی صارم کے لئیے گزشتہ رات سے مختلف نہ تھی۔۔۔۔۔۔رات گئے تک وہ کروٹیں بدلتا رہا مگر نیند اس کی آنکھوں کے آس پاس بھی نہ پھٹکی۔۔۔۔۔۔۔

**********

آج صارم کو وہاں کھڑے ہوتے ہوئے چوتھا دن تھا۔۔۔۔ان چار دنوں میں صارم کو اس فقیرنی کی ہر ادا اچھی لگنے لگی تھی۔۔۔۔سوائے ایک کے کہ وہ لوگوں کے سامنے ہاتھ پھیلا رہی تھی۔۔۔۔صارم کچھ سوچنے لگا۔۔۔۔کیوں نہ میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ارے۔۔صارم تو یہاں کھڑا کیا کر رہا ہے۔۔۔گھر کیوں نہیں گیا ابھی تک۔؟۔۔۔۔۔۔مانی جو اپنے کسی کام سے چائینہ چوک آ نکلا تھا۔۔۔صارم کو وہاں کھڑا دیکھا تو اس کے پاس آ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صارم بھی مانی کو وہاں دیکھ کر حیران ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں۔۔۔۔۔میں۔۔۔۔۔۔۔وہ۔۔۔۔۔۔تم یہاں کیا کر رہے ہو۔؟۔۔۔۔صارم سے کوئی جواب نہ بن پڑا تو اس نے الٹا مانی سے ہی سوال کر ڈالا۔۔۔۔۔۔۔
کام سے آیا تھا۔۔۔۔تمہیں یہاں دیکھا تو آ گیا تمہارے پاس۔۔۔۔۔اچھا بتا بھی۔۔۔یہاں کھڑا کیا کر رہا ہے تُو۔۔۔۔۔مانی نے پھر پوچھا۔۔۔۔
یار وہ میں۔۔۔۔اُس کو دیکھ رہا تھا۔۔۔صارم نے سر کے اشارے سے اسے سامنے دیکھنے کو کہا۔۔۔۔۔
کون؟۔۔کسے؟۔۔۔مجھے تو وہاں کوئی نظر نہیں آ رہا۔۔۔۔ویسے۔۔۔۔یہ کب شروع کیا تُو نے۔۔؟۔۔۔ہیں۔۔؟۔۔بتا نا کون ہے؟۔۔۔کب گزرتی ہے یہاں سے؟۔۔۔۔مانی نے صارم کو کہنی مارتے ہوئے سوالات کی بوچھاڑ کر ڈالی۔۔اور وہ بھی اپنی جگہ درست تھا کیونکہ سوائے ایک فقیرنی کے اسے کوئی لڑکی وہاں نہیں دکھائی دے رہی تھی۔۔۔۔صارم نے مانی کو متعجب نظروں سے یوں دیکھا جیسے کہ رہا ہو۔۔۔تیرے سامنے ایک حسینہ کھڑی ہے۔۔اور تجھے دکھ نہیں رہی۔۔۔”مگر مانی صارم کی آنکھوں سے نہیں دیکھ سکتا تھا”۔۔۔۔۔۔۔میں اسی کی بات کر رہا ہوں مانی۔۔۔صارم بولا۔۔۔۔
کون؟۔۔۔یہ فقیرنی؟۔۔۔مانی نے تضحیک آمیز لہجے میں حیرت سے کہا تو صارم کے چہرے کے تاثرات تبدیل ہو گئے۔۔۔۔صاف معلوم ہو رہا تھا کہ اسے مانی کا یہ لہجہ برا لگا ہے۔۔۔
اچھا بھئی۔۔میں تو چلا۔۔۔تو راہ تکتا رہ اپنی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس نے لفظ “اپنی” کو شوخ انداز میں کھینچا اور وہاں سے جانے لگا۔۔۔وہ اب بھی یہی سمجھ رہا تھا کہ صارم اس سے حقیقت چھپا رہا ہے اور اسکو نہیں بتانا چاہتا کہ وہ کس کا انتظار کر رہا ہے۔۔۔اس کو تجسس ضرور ہوا مگر اسے کریدنے کی بجائے فی الحال اس نے وہاں سے جانا ہی مناسب سمجھا۔۔۔۔مانی کے جانے کے بعد صارم بھی وہاں سے چل دیا۔۔۔۔اس دوران وہ فقیرنی اس سب سے بے نیاز اپنے کام میں مشغول رہی۔۔۔۔۔۔

**********

اگلے روز بھی صارم چھٹی کے بعد چائنہ چوک میں کھڑا تھا۔۔۔۔وہ اس کے پاس جانا چاہتا تھا۔۔مگر گھبرا رہا تھا۔۔۔وہ بلا شبہ اس فقیرنی سے زیادہ خوبصورت تھا۔۔اور اس سے کئی گنا زیادہ مال و دولت اس کے پاس تھا۔۔۔مگر وہ اس فقیرنی کو خود پر فوقیت دے رہا تھا۔۔۔اسی لیئے کہ وہ عاشق تھا۔۔۔وہ فقیرنی۔۔۔اس کی محبوبہ تھی۔۔۔اور سچ ہے عشق تو بادشاہ کو بھی ہو جائے تو وہ بادشاہ کہاں رہتا ہے۔۔وہ تو عاشق بن جاتا ہے۔۔۔۔۔ایک عاشق ہی تو ہے جس کی پہچان صرف عاشق ہی سے ہوتی ہے خواہ وہ بادشاہ ہو یا فقیر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صارم کی پیشانی پر چند قطرے پسینے کے بھی تھے۔۔۔۔اِس تمام صورتحال میں وہ اُس کے پاس پہنچ گیا۔۔۔۔اور کہا۔۔۔”سنو”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ پیچھے مڑی اور فوراً اس کی جانب لپکی۔۔۔اس کا خیال تھا کہ شاید صارم پیسے دینے کے لیئے اسے بلا رہا ہے۔۔۔۔اس نے فوراً اپنا ہاتھ صارم کے سامنے کر دیا۔۔۔۔جسے صارم نے نا دانستہ طور پر تھام لیا۔۔۔۔وہ گھبرا سی گئی۔۔۔۔اور گھبراہٹ بنتی بھی تھی۔۔۔۔یہ اس کے لیئے صرف نیا نہیں بلکہ غیر معمولی بھی تھا۔۔۔اس نے کچھ نہ سمجھتے ہوئے اپنا ہاتھ چھڑا کر پیچھے کر لیا۔۔۔وہ دونوں ہی اک دوسرے کو دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صارم پھر بولا۔۔۔تمہارا نام کیا ہے۔۔۔صارم کی آواز میں ہلکی سی کپکپاہٹ تھی۔۔۔اور ایسا آج تک صارم کے ساتھ شاذونادر ہی ہوا تھا کہ وہ کسی سے بات کرتے ہوئے گھبرا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔
جی۔۔۔رانی۔۔۔۔۔اس نے کہا۔۔۔۔وہ مسسل صارم پر نظریں جمائے ہوئے تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم یہ لوگوں سے۔۔۔۔کیوں مانگتی ہو؟۔۔۔اس کے منہ سے بے اختیار نکلا۔۔۔۔۔۔۔
ابا بھیجتا ہے نا مجھے صاحب۔۔۔۔اس نے جواب دیا۔۔۔۔۔مگر وہ کیوں بھیجتا ہے؟۔۔۔صارم کا سوال اب بھی وہی تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیسے مانگنے کے لیئے۔۔۔رانی بولی۔۔۔۔۔۔۔۔صارم اس کا جواب سن کر مسکرا دیا۔۔۔۔۔یہ تو وہ بھی جانتا تھا کہ پیسے ہی مانگنے بھیجتا ہے،،وہ تو یہ جاننا چاہتا تھا کہ وہ “پیسے مانگنے” کیوں بھیجتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اب رانی کا باپ بھی تو فقیروں کے ہی خاندان سے تعلق رکھتا تھا،، تو جہاں سب کا ایک ہی کام ہو وہاں اس اکیلے کو بھلا کون خودداری کا درس دیتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تم۔۔۔۔۔اگر تم۔۔۔۔۔اگر میں۔۔۔۔۔۔صارم کے منہ سے الفاظ نہیں نکل پا رہے تھے۔۔۔۔تمہاری ماں نہیں ہے کیا۔۔۔اچانک اس نے پوچھا
ہے نا۔۔۔۔۔کون؟۔۔ماں۔؟۔۔۔۔نہیں نہیں۔۔۔۔ماں تو نہیں ہے۔۔۔۔وہ تو کب کی مر جو گئی ہے۔۔۔۔رانی نے اس طرح بتایا جیسے صارم سب کچھ جانتا ہو۔۔اور وہ اسے یاد دلا رہی ہو۔۔۔۔۔
تو تمہارے ابّا کیا کرتے ہیں۔۔۔؟وہ بھی یہی کرتے ہیں؟۔۔۔صارم نے پوچھا تو اس نے پلکوں کو جنبش دیتے ہوئے سر ہلا دیا۔۔۔۔پھر ناک سکیڑ کر بولی،،۔کوئی اور کام آتا ہی نہیں ہے ہم کو۔۔۔کیا کریں۔۔۔۔وہ یہ بات بھول ہی گئی تھی کہ صارم ابھی پانچ منٹ پہلے ہی ملا ہے اس سے۔۔۔۔۔۔۔
رانی۔۔۔کیا تمہیں بھوک لگی ہے؟۔۔۔اچانک صارم نے پوچھا تو رانی نے ایک مرتبہ پھر دلچسپ انداز میں پلکوں کو سکیڑ کر نفی میں سر ہلا دیا۔۔۔۔اس بار اس کی بائیں گال نے بھی اس کا ساتھ دیا تھا۔۔۔۔۔۔
اس کی بھولی اور معصومانہ اداؤں،، اور بے تکلفی کو دیکھتے ہوئے صارم کی آنکھوں میں نمی سی اتر آئی تھی مگر وہ ہلکا سا مسکرایا اور دوبارہ گویا ہوا۔۔۔۔
اچھااا۔۔۔رانی تم۔۔۔۔لوگوں سے مانگنا چھوڑ دو۔۔صارم کا لہجہ اتنا نرم تھا کہ رانی ایک دم چپ سی ہو گئی اور ساکت ہو کر اسے دیکھنے لگی۔۔۔۔۔
شاید اسے اب جا کر پہلی بار احساس ہوا تھا کہ اس کے سامنے کوئی اجنبی کھڑا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔
مجھے کرنا پڑے گا۔۔۔میری مجبوری ہے۔۔۔اور ابا پوچھے گا تو۔؟۔۔کیا کہوں گی؟۔۔۔رانی کا سر جھک گیا۔۔۔
دیکھو رانی۔۔۔۔مجھ سے جو ہو سکے گا میں تمہارے لئیے کروں گا۔۔۔میں تمہیں دوں گا پیسے۔۔پر اب تم کسی اور سے مت مانگنا پلیز۔۔۔ٹھیک ہے نا؟۔۔۔صارم نے اپنائیت بھرے لہجے میں کہا تو رانی نے حیرت سے سر ہلا دیا۔۔۔میں کل آؤں گا۔۔۔چلتا ہوں۔۔۔صارم جانے کے لئے پلٹا۔۔۔وہ اب بھی بدستور اسے جاتے ہوئے دیکھ رہی تھی۔۔۔

**********

یہ کیا چل رہا ہے صارم؟ صارم کو گھر میں داخل ہوئے چند منٹ ہی گزرے تھے کہ سائرہ بیگم نے پوچھا۔۔۔کیا ہوا ماما؟۔۔وہ بولا۔۔۔
تم۔۔۔کسی فقیرنی کے ساتھ کھڑے تھے؟
ہاں تو۔۔۔کسی کی مدد کرنے میں کیا برا ہے؟۔۔۔صارم نے جواباً کہا۔۔۔
مگر مانی کا کہنا ہے کہ تم اس کے ساتھ گپیں ہانک رہے تھے۔۔۔۔تم ہوش میں تو ہو۔۔۔اپنا اسٹینڈر دیکھو مانی ایٹ لِیسٹ۔۔۔آخر تمہیں کیا ہمدردیاں پیدا ہو رہی ہیں یہ لوئر کلاس لوگوں سے۔۔۔کسی نے دیکھ لیا تو کیا سوچے گا۔۔۔کچھ تو خیال کرو ہماری عزت کا۔۔۔
کیا ماما۔۔۔بھلا کسی غریب سے بات کر لینے سے عزت میں فرق پڑ جاتا ہے؟۔۔۔سائرہ بیگم غصے میں مسلسل بولتی ہی چلی گئیں تو صارم دھیما پڑ گیا۔۔۔
اتنے بچے نہ بنو صارم۔۔۔۔تمہارے ڈیڈ کو پتہ چل گیا تو پھر۔۔۔تمہیں اچھی طرح پتہ ہے اپنے ڈیڈ کا۔۔۔اپنے لیول سے نیچے وہ بات تک نہیں کرتے کسی سے۔۔۔ سائرہ بیگم پھر بولیں۔۔۔
واٹ اسٹینڈر ماما؟۔۔۔آپ ایک ہی بات کے پیچھے کیوں پڑ گئی ہیں۔۔۔۔اور رہی بات لوگوں کی تو لوگوں کا کیا۔۔۔وہ دیکھیں گے۔،،ہنسیں گے اور چلے جائیں گے۔۔۔۔یہی تو کام ہے نا ان کا۔۔۔صارم دانت پیستے ہوئے بولا اور اپنے روم میں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس کا مطلب مانی آج بھی وہاں آیا تھا۔۔۔صارم کے ذہن میں جھماکا ہوا۔۔۔
تم نے ماما کو کیا بتایا ہے مانی۔۔۔؟ صارم نے فوراً مانی کو فون کر کے پوچھا۔۔۔
وہی۔۔۔جو پاگلوں والی حرکتیں تم کر رہے ہو۔۔۔مانی نے لاپرواہی سے کہا۔۔۔
کیا غلط کیا ہے میں نے؟۔۔۔صارم اب بھی سنجیدہ تھا۔۔۔
دیکھو صارم۔۔۔۔میں نے نوٹ کیا ہے کچھ دنوں سے جو چینج آیا ہے تم میں۔۔۔میں تم سے پھر کہتا ہوں خود کو پہچانو۔۔۔تمہیں کوئی اپنے لیول کی لڑکی نہیں ملی؟۔۔۔مانی نے اسے سمجھانے والے انداز میں کہا تو صارم آہستگی سے بولا۔۔۔اپنایئت سی ہو گئی ہے مجھے اُس سے۔۔۔میں اس کی جانب کھینچتا چلا جا رہا ہوں مانی۔۔۔صارم بے اختیار بول رہا تھا۔۔۔
افوہ۔۔۔مانی نے غصے سے فون کاٹ دیا۔۔۔۔
صارم کی آنکھیں رانی کا تصور کرنے لگیں۔۔۔وہ زیر لب مسکرا دیا۔۔۔

**********

رانی۔۔۔۔۔اگلے دن صارم نے وہاں جاتے ہی رانی کو پکارا تو وہ فوراً اس کے پاس آ گئی۔۔۔
اس نے وعدے کے مطابق کچھ رقم اسے دی جو اس نے بخوشی لے لی۔۔۔
سارا دن کسی سے کچھ نہیں مانگا میں نے۔۔۔رانی نے یوں کہا جیسے وہ کسی بڑے امتحان میں کامیاب ہوئی ہو۔۔۔
صارم کے چہرے پر ہلکی سی مسکراہٹ تھی۔۔جسے رانی نے بھانپ لیا۔۔۔تم بہت اچھی ہو رانی۔۔۔۔۔میرا نام صارم ہے۔۔۔صارم نے رانی کے پوچھے بغیر ہی اپنا نام بتایا۔۔۔اور ہاتھ ملانے کے لیے آگے بڑھا دیا۔۔۔رانی نے بھی کچھ نہ سمجھتے ہوئے ہاتھ ملا لیا۔۔۔شاید وہ یہ یقین کرنا چاہ رہی تھی کہ یہ سب حقیقت ہے کیونکہ آج تک کسی نے اس سے نرم لہجے میں بات تک نہیں کی تھی۔۔۔بلکہ ہمیشہ دھتکارا ہی تھا۔۔۔تو پھر یہ فرشتہ کون تھا۔۔۔رانی کی آنکھوں میں ممنونیت کی نمی تھی۔۔۔۔۔
صارم تو وہاں سے چلا آیا مگر رانی کے لیے قدم ہلانا بھی مشکل ہو گیا۔۔۔وہ صارم کو یوں دیکھ رہی تھی جیسے کچھ پل مزید روکنا چاہ رہی ہو۔۔۔

**********

رانی تینوں ہو کی گیا اے؟۔۔۔پانی مکنے والا ہے اور تو ضائع کرے جا رہی ہے۔۔۔رانی کوئی چوتھی مرتبہ منہ دھو کر آئی تو اس کے باپ کرم داد نے غصے بھرے لہجے میں استفسار کیا۔۔۔
کچھ بھی نہیں ابا۔۔۔نہیں مُکتا پانی۔۔۔رانی نے ہنستے ہوئے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگلی صبح جب رانی گھر سے نکلنے لگی تو اس نے اچھے سے ہاتھ منہ دھویا۔۔۔اور الجھے میلے بالوں میں کنگھی پھیرنے لگی۔۔۔اسے کنگھی پھیرتے دیکھ کر یوں لگا جیسے کسی بنجر اور کھردری زمین پر ٹریکٹر چلا رہی ہو۔۔۔بار بار اس کے بالوں میں کنگھی پھنس رہی تھی نجانے وہ ٹوٹی پھوٹی کنگھی اسے مل کہاں سے گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اے تو کیا کر رہی ہے رانی۔؟۔۔۔۔ایس طرح جایئں گی تاں کسی نے تجھے کچھ نہیں دینا۔۔۔کرم داد نے رانی کو یہ سب کرتے دیکھا تو حیرت زدہ انداز میں بولا۔۔۔۔۔۔۔کچھ تو مل جائے گا۔۔۔۔رانی نے ان سنی کرتے ہوئے جواب دیا اور باہر چلی گئی۔۔۔۔۔کرم داد کچھ پل اسے دیکھتا رہا پھر کندھے اچکا کے اس کی مخالف سمت میں چل دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رانی کا کچھ دن سے یہی معمول تھا۔۔وہ اپنی طرف سے خوب سنور کے نکلتی اور واپسی پر پیسے بھی لے آتی۔۔۔مگر کرم داد جان گیا تھا کہ اب وہ پہلے کی نسبت کم پیسے لانے لگی ہے۔۔۔اس نے رانی کو سمجھایا کہ وہ یوں سج سنور کر نہ نکلا کرے ورنہ کم پیسے ہی ملیں گے اور پھر وہ ٹھیکیدار کو کیا جواب دیں گے؟۔۔۔۔۔۔مگر رانی نے کان نہ دھرے۔۔۔۔۔۔۔۔کرم داد کو حیرت کا جھٹکا تو تب لگا جب ایک روز رانی اپنے ساتھ دو لفافے لیئے گھر میں داخل ہوئی۔۔۔۔۔۔یہ کیا ہے رانی؟۔۔۔اس نے چھوٹتے ہی پوچھا۔۔۔۔۔ایک میں جوتے ہیں اور دوسرے میں کپڑے۔۔۔رانی اپنے باپ سے نظریں ملائے بغیر بولی۔۔۔۔۔۔پر یہ تجھ کو دئیے کس نے ہیں؟۔کرم داد نے پوچھا مگر رانی خاموش رہی۔۔۔جب صارم یہ لفافے اس کو تھما رہا تھا وہ تب ہی جانتی تھی کہ وہ ابا کو جواب نہیں دے پائے گی اور اس نے صارم سے کہا بھی۔۔۔۔مگر صارم نے اصرار کیا تو وہ لے آئی۔۔۔۔میں کل خود آؤں گا تمہارے گھر تو بتا دوں گا تمہارے ابا کو۔۔۔صارم یہ کہہ کر کہ وہاں سے چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اُدھر مانی بھی صارم کی روزانہ جاسوسی کرتا،، اور اس کے والدین کو اس سے آگاہ کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔مگر آج کا واقعہ سننے کے بعد تو امتیاز صاحب (صارم کے والد) کو یقین ہو گیا کہ صارم اس کی محبت میں گرفتار ہو چکا ہے۔۔۔وہ غصے میں بھرے ہوئے صارم کے کمرے میں چلے آئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صارم۔۔۔یہ میں کیا سن رہا ہوں۔۔۔انہوں نے پوچھا۔۔۔
آئی نو ڈیڈ آپ وہی بات کرنے آئے ہیں اور میں نے ماما کو بھی بتایا تھا کہ میں اوور اسپیڈنگ نہیں کرتا بس ہلکی سی ٹکر ہوئی تھی اور میں۔۔۔۔۔۔صارم بول رہا تھا کہ امتیاز صاحب تلملا کر کہنے لگے۔۔۔۔۔کیا اوور اسپیڈ۔۔۔کیا ٹکر۔۔۔۔میں اس فقیرنی کی بات کر رہا ہوں۔۔۔انہوں نے زور دیتے ہوئے کہا۔۔۔
کیا میں جان سکتا ہوں اتنی مہربانیاں کس لیئے۔۔۔؟۔۔۔۔۔۔
صارم۔۔۔۔میں تم سے پوچھ رہا ہوں۔۔۔۔۔اس کے خاموش کھڑے رہنے پر امتیاز صاحب نے دوبارہ پوچھا۔۔۔۔
ڈیڈ کیا برا ہے اگر میں نے کسی کی ہیلپ کر دی تو۔۔۔صارم بولا۔۔۔۔
مگر مانی نے تمہیں کچھ لفافے دیتے ہوئے بھی دیکھا تھا۔۔۔امتیاز صاحب نے کہا۔۔۔
ہممم۔۔۔اس میں کپڑے اور جوتے تھے۔۔۔اس نے جواب دیا۔۔۔
خوب۔۔۔بہت خوب۔۔۔اچھی بات ہے۔۔۔امتیاز صاحب کا لہجہ طنزیہ تھا۔۔۔۔۔مگر کیا میں جان سکتا ہوں کہ یہ سب کچھ اسی ایک فقیرنی کے لیئے ہی کیوں؟۔۔تم۔۔۔
امتیاز صاحب کی بات مکمل ہونے سے پہلے ہی صارم چلّایا۔۔۔فقیرنی نہیں ہے وہ۔۔۔اس نے مانگنا چھوڑ دیا ہے اب وہ نہیں مانگتی۔۔۔
ہاں مجھے محبت ہے اس سے۔۔۔وہ میری ہے۔۔۔میں کسی سے کوئی مدد نہیں مانگتا۔۔۔سب کچھ خود کر رہا ہوں اُس کے لئیے۔۔۔
صارم چپ ہو جاؤ۔۔۔صارم کے مسلسل بولنے پر سائرہ بیگم بھی وہاں آ گیئں۔۔۔
صارم نے دیکھا کہ دونوں ہی اس کے خلاف ہیں تو وہ تیزی سے باہر جانے لگا۔۔۔
رکو صارم۔۔۔۔امتیاز صاحب نے کہا تو وہ رک گیا۔۔۔
تم آئندہ وہاں نہیں جاؤ گے۔۔میں تمہاری وجہ سے ان دو ٹکے کے لوگوں سے تعلق نہیں جوڑ سکتا نہ ہی مجھے اپنی انسلٹ کرانی ہے اپنے فرینڈ سرکل میں۔۔۔۔امتیاز صاحب خود پسندی اور تکبر میں ڈوبے ہوئے بولے۔۔۔۔
صارم یہ سن کر باہر نکل گیا۔۔۔مگر اس کے جانے کے انداز سے ہی امتیاز صاحب کو اندازہ ہو گیا کہ اس نے ان کی ایک بھی بات کو سیریس نہیں لیا۔۔۔صارم کو اس سب سے کوئی غرض نہ تھی۔۔۔انہوں نے دوبارہ روکا مگر اس بار وہ نہ رکا۔۔۔اور نہ ہی اسے روکنا کسی طور فائدے مند تھا۔۔۔

**********

بول رانی۔۔۔یہ سب کس نے دیا ہے تجھے؟۔۔۔
کرم داد نے پھر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔رانی بھی کب تک چپ رہتی۔۔۔اس نے اپنے باپ کے سامنے سارا ماجرا بیان کر دیا۔۔۔
کرم داد جانتا ہی تھا کہ رانی سادہ دل اور بھولی ہے۔۔۔وہ اسے سمجھانے لگا۔۔۔دیکھ رانی۔۔۔اِے امیر لوگ دو دن ہی پُچھتے ہیں پھر بھُل جاتے ہیں۔۔۔تُو۔۔۔توُ اپنا کَم کر اسی پر دھیان دے۔۔۔۔۔۔مگر رانی کو اپنے باپ کی باتیں جھوٹ لگ رہی تھیں۔۔۔ وہ صارم کو اس کے دل سے جان چکی تھی۔۔۔خیر کرم داد کے سامنے تو وہ خاموش رہی۔۔۔

**********

تو میرا دوست ہے یا دشمن۔؟۔۔صارم نے اگلے روز کالج جاتے ہی مانی سے پوچھا۔۔۔
دشمن۔۔۔اس نے ہنستے ہوئے جواب دیا۔۔۔۔
اسی لیئے تم روزانہ وہاں میری جاسوسی کرنے آتے ہو؟۔۔۔صارم بولا۔۔۔
نہیں۔۔۔تمہارا ڈرامہ دیکھنے آتا ہوں۔۔۔کافی اچھا ہوتا ہے۔۔۔مانی نے پھر اپنے روایتی انداز میں کہا۔۔۔
تم مجھے روک نہیں سکتے مانی۔۔۔مجھے کسی کی کوئی پرواہ نہیں…کوئی کچھ بھی کہتا رہے۔۔۔
صارم جزباتی ہو کر بول رہا تھا۔۔
آخر تجھے ہو کیا گیا ہے صارم۔۔۔ایک اُس منحوس بھکارن کے لیئے تو ہم سب سے لڑ رہا ہے؟۔۔۔اب مانی بھی غصے میں تھا۔۔۔
ایک زناٹے دار تھپڑ مانی کے گالوں پر پڑا۔۔وہ ہکا بکا رہ گیا۔۔۔
وہ نہیں، تُو منحوس ہے مانی۔۔۔صارم کی آنکھوں میں آنسو چمکنے لگے۔۔۔اس کے بعد دونوں میں پورا دن کوئی بات نہ ہوئی۔۔۔

**********

ارے۔۔۔ امتیاز صاحب۔۔۔۔۔۔شام کے وقت امتیاز صاحب کے ایک واقف ملک جواد نے ان کو سینٹرل پارک میں دیکھا تو انہیں پکارا۔۔۔امتیاز صاحب جو کہ ٹراؤزر کی جیبوں میں ہاتھ ڈالے چہل قدمی کر رہے تھے فوراً انہوں نے اپنے دائیں جانب دیکھا۔۔۔وہاں ملک جواد کھڑے تھے۔۔۔جو کہ ایک مشہور سافٹ ویئر انجینئر تھے۔۔۔
جواد صاحب۔۔۔کسیے ہیں آپ۔۔امتیاز صاحب نے پوچھا۔۔۔وہ کچھ پریشان سے لگ رہے تھے۔۔۔
میں بالکل ٹھیک۔۔آپ کے سامنے ہی ہوں۔۔۔پر آپ بتایئے۔۔۔آپ کو کیا ہو گیا۔۔۔میں جانتا ہوں آپ یہاں تب ہی آتے ہیں جب آپ کی کچھ طبیعت سہی نہ ہو۔۔۔۔ملک جواد مسکرائے۔۔۔
ہمم۔۔۔بس زرا ہلکا سا سر درد تھا۔۔۔۔اسی لیئے یہاں چلا آیا۔۔۔امتیاز صاحب نے کہا۔۔۔
ہمم اچھا کیا۔۔۔اوہ ہاں وہ احمر۔۔۔کچھ۔۔بات کر رہا تھا کہ صارم۔۔کوئی فقیرنی وغیرہ۔۔۔ایسا کچھ۔۔۔ملک جواد نے انگلیاں گھماتے ہوئے اگلوانے کے سے انداز میں کہا۔۔۔
اچھا۔۔۔کیا کہ رہا تھا۔۔۔؟ امتیاز صاحب انجان بنتے ہوئے بولے۔۔۔
اس نے صارم کو جھگڑا کرتے سنا تھا کسی دوست سے۔۔۔نام یاد نہیں اس کا۔۔۔ملک جواد بولے۔۔۔
کہہ رہا تھا صارم کسی۔۔فقیرنی سے پیار ویار کرتا ہے۔۔۔۔۔اور یہ بھی بتا رہا تھا کہ کالج میں ہوتے ہوئے بھی وہ کہیں اور ہی کھویا رہتا ہے۔۔۔
ملک جواد کی باتیں سن کر امتیاز صاحب چہرے پر مصنوعی مسکراہٹ لاتے ہوئے بولے۔۔نہیں ملک صاحب ایسا۔۔۔تو کچھ نہیں ہے میرے علم میں۔۔۔ہاں مگر میں ضرور پوچھوں گا صارم سے اس بارے میں۔۔۔اچھا ملک صاحب۔۔۔میں چلتا ہوں۔۔۔آپ گھر آئیے گا نا کبھی۔۔۔امتیاز صاحب تیزی سے بولے۔۔۔
“احمر ملک جواد صاحب کا بیٹا تھا اور صارم اور مانی کا کلاس میٹ تھا۔۔۔اور آج تو اُن دونوں کا جھگڑا ہی کچھ ایسا تھا کہ احمر سمیت سب ہی ان کی جانب متوجہ ہو گئے تھے”۔۔۔
جی۔۔۔میں ضرور آؤں گا۔۔۔ملک جواد بولے
امتیاز صاحب وہاں سے چل دیئے۔۔۔مگر جیسے ہی وہ ملک جواد کی نظروں سے اوجھل ہوئے انہوں نے فوراً مانی کو فون کر دیا۔۔۔دو مرتبہ تو دیر تک بیل بجتی رہی مگر اس نے ریسیو نہ کیا۔۔انہوں نے فون واپس جیب میں رکھ لیا۔۔۔پانچ منٹ بعد ان کا فون بجنے لگا۔۔۔انہوں نے ریسیو کیا تو دوسری جانب مانی تھا۔۔۔
ہیلو انکل آپ کال کر رہے تھے۔۔۔مانی بولا۔۔۔وہ میں میچ کھیل رہا تھا تو پتہ نہیں چلا۔۔۔ابھی چیک کیا۔۔۔
ہاں مانی۔۔۔تم ایسا کرو سینٹرل پارک میں آ جاؤ۔۔۔مجھے کچھ کام ہے تم سے۔۔۔امتیاز صاحب بولے۔۔۔
اوکے میں۔۔۔میں آ جاتا ہوں۔۔۔اس نے کچھ سوچتے ہوئے کہا۔۔۔ویسے سب ٹھیک ہے انکل.؟..اس نے پوچھا.
ہاں۔۔۔تم آؤ بتاتا ہوں۔۔۔امتیاز صاحب نے جواب دیا۔۔۔
مانی کے آتے آتے شام رات میں بدل چکی تھی۔۔۔
8 بجے مانی سینٹرل پارک میں داخل ہوا اور امتیاز صاحب کی بتائی ہو جگہ پر پہنچ گیا۔۔۔
امتیاز صاحب اب بھی ٹہل رہے تھے مگر اب ان کے ٹہلنے کے انداز سے بے چینی صاف جھلک رہی تھی۔۔۔
آؤ مانی۔۔۔وہ مانی کے آتے ہی بولے۔۔۔پھر قریب ہی بینچ پر بیٹھ گئے اور اس کو بھی بیٹھنے کا کہا۔۔۔
کیا ہوا تھا آج کالج میں؟۔۔۔انہوں نے پوچھا۔۔۔
مانی نے پہلے تو حیرت سے انہیں دیکھا پھر سارا واقعہ بیان کر دیا۔۔۔
میرے ساتھ وہاں چلو جہاں وہ رہتی ہے۔۔۔امتیاز صاحب یہ کہتے ہوئے اٹھ کھڑے ہوئے۔۔۔
مانی بیٹھا رہا۔۔۔چلو مانی۔۔۔وہ پھر بولے۔۔۔
انکل وہ۔۔۔آپ جانتے ہیں چائنہ چوک کافی دور ہے یہاں سے اور ہمیں جاتے جاتے بھی بہت ٹائم لگ جائے گا۔۔۔مانی نے جواب دیا۔۔۔
کوئی بات نہیں ہم جلدی واپس آ جائیں گے بس تم چلو۔۔۔
ان کے چہرے سے غیض و غضب عیاں ہو رہا تھا۔۔۔
مانی کو مجبوراً اٹھنا ہی پڑا۔۔۔
امتیاز صاحب کار میں بیٹھے جب کہ مانی نے اپنی بائیک اسٹارٹ کی اور اب دونوں چائنہ چوک کی جانب رواں دواں تھے۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔چائنہ چوک کے دائیں جانب واقع اس اندھیری بستی میں 9 بجے ہی ہو کا عالم طاری تھا۔۔۔مانی نے اشارے سے انہیں رکنے کا کہا۔۔۔انہوں نے رانی کے گھر سے تھوڑا دور اپنی گاڑی پارک کی۔۔۔اب وہ مانی کے ساتھ اس کے گھر جا رہے تھے۔۔۔
انکل۔۔۔اس وقت آپ یہاں آئے ہیں۔۔۔۔رانی اور اس کا باپ تو سو چکے ہوں گے اب تک۔۔۔دیکھیں کہیں کوئی روشنی تو دِکھ نہیں رہی۔۔۔مانی بولا۔۔۔
ہمم۔۔تو رانی نام ہے اُس مہارانی کا۔۔۔امتیاز صاحب سر جھٹک کر بولے۔۔۔
چلتے ہوئے وہ اُن کے ٹھکانے تک پہنچے۔۔۔گھر کیا تھا۔۔۔ایک وحشت ناک سا جھونپڑا تھا۔۔۔جہاں امتیاز صاحب جیسا شخص تو کچھ پل بھی نہ رک پائے۔۔۔دروازے کی جگہ ٹین کی چادر لگی ہوئی تھی۔۔۔اسی کو کھٹکھٹایا گیا۔۔۔کچھ لمحوں بعد ہی کرم داد باہر نکل آیا۔۔۔
وہ ایک آنکھ آدھی بند کیئے ہوئے جبکہ دوسری ہاتھ سے مَسل رہا تھا۔۔۔معلوم ہو رہا تھا کہ وہ گہری نیند سے جاگا ہے۔۔۔جی ۔۔۔صاحب۔۔۔آپ کون؟ وہ بولا۔۔۔
میرا نام امتیاز احمد ہے۔۔اور میں صارم کا والد ہوں۔۔امتیاز صاحب بولے۔۔۔
جی۔۔۔کون صارم۔۔۔پھر اچانک کچھ یاد آنے پر اس کے منہ سے نکلا۔۔۔اوہ۔۔۔اور اس کا ہاتھ بھی آنکھ پر ہی رہ گیا۔۔۔
بابا میں تم سے بہت ضروری بات کرنے آیا ہوں۔۔۔جیسے ہی امتیاز صاحب نے یہ کہا۔۔۔کرم داد خوفزدہ ہو گیا اور بول پڑا۔۔۔صاحب۔۔ہم غریب فقیر ہیں۔۔۔ہم کو خوف آتا ہے یہ پیار محبت سے۔۔۔
میں نے سمجھا دیا ہے رانی کو۔۔وہ اب نہیں ملے گی آپ کے لڑکے سے۔۔۔وہ تیزی سے بول رہا تھا اور اس کی ساری نیند اڑ چکی تھی۔۔۔
یہ ٹھیک ہے بابا کہ وہ اب نہیں ملے گی اس سے۔۔۔مگر۔۔۔وہ ضرور ملے گا۔۔۔وہ باز نہیں آئے گا۔۔۔میں جانتا ہوں اس کو۔۔۔تمہیں یہاں سے جانا ہو گا بابا۔۔۔امتیاز صاحب پھر گویا ہوئے۔۔۔
کرم داد کے چہرے پر ہوائیاں اڑنے لگیں۔۔ اور وہ کہنے لگا۔۔۔یہ۔۔۔یہ آپ کیا کہ رہے ہیں باؤ جی میں تو۔۔۔
ہاں بابا۔۔۔تمہیں کل صبح ہی یہاں سے کراچی جانا ہو گا۔۔۔میں سارا انتظام کر لوں گا۔۔۔بس تم رانی کو لے کر چلے جاؤ کراچی۔۔۔ایک دوست ہیں میرے تمہیں ان کا پتہ دے دیتا ہوں وہ تمہیں کوئی کام بھی دے دیں گے اور رہنے کو جگہ بھی۔۔۔مگر تمہیں صبح لازمی نکلنا ہے۔۔۔اب امتیاز صاحب کے چہرے پر کچھ پریشانی کے تاثرات تھے جیسے ان کو اچانک ہی کچھ خیال آیا ہو۔۔۔
کل صبح؟ کرم داد نے پوچھا۔۔۔
ہاں کل صبح۔۔۔وہ بولے۔۔۔یہ۔۔۔یہ پیسے رکھو۔۔۔تمہارے کام آئیں گے اور اپنا نمبر دے دو مجھے۔۔۔انہوں نے جیب سے چند نوٹ نکالتے ہوئے کہا۔۔۔
فون تو نہیں ہے جی میرے پاس۔۔۔وہ بولا۔۔۔
اوہ۔۔۔اچھا۔۔۔تمہارا نام کیا ہے۔۔۔اب جا کر امتیاز صاحب کو خیال آیا کہ وہ اس کا نام ہی پوچھ لیں۔۔۔
کرم داد۔۔۔وہ بولا۔۔۔
اچھا کرم داد۔۔۔میں اب چلتا ہوں۔۔۔امتیاز صاحب نے کہا اور جانے کے لئیے مڑے۔۔۔
صاحب جی۔۔۔کرم داد نے آواز دی۔۔۔
ہمم۔۔۔انہوں نے اسے مڑ کر دیکھا۔۔۔
وہ۔۔۔اگر۔۔۔ہم کچھ دن تک چلے جائیں اگر وہ۔۔۔وہ کچھ بول نہیں پا رہا تھا۔۔۔
کیوں۔۔۔صبح جانے میں کیا ہے۔؟۔۔اب ان کے تیور بگڑنے لگے۔۔۔
اتنی جلدی میں آپ نے بولا ہے ۔۔۔کرم داد بول رہا تھا کہ امتیاز صاحب اس کا ہاتھ پکڑے اپنی گاڑی کے پاس لے گئے۔۔۔یہاں آؤ کرم داد۔۔۔وہ کیا ہے کہ مجھ سے۔۔ایک غلطی ہو گئی ہے۔۔۔
دیکھو اگر کل تم یہاں رکے اور صارم کو رانی نے کچھ بھی بتا دیا تو۔۔۔تم نہیں جانتے کیا کچھ ہو سکتا ہے۔۔۔
اس لئیے اب تم یہاں نہیں رک سکتے۔۔۔امتیاز صاحب نے فکرمند لہجے میں کہا۔۔۔
میں رانی کو کچھ نہیں بتاؤں گا۔۔۔تو وہ صارم کو کیسے بتائے گی۔۔۔کرم داد اب بھی مہلت چاہ رہا تھا۔۔۔امتیاز صاحب کے اس اچانک حکم سے وہ گھبرا سا گیا تھا۔۔۔اتنی اچانک یہاں سے کراچی جانا۔۔۔اس کے لئیے کچھ آسان نہ تھا۔۔۔
دیکھو کرم داد۔۔۔یہ بھی ہو سکتا ہے کہ رانی نے سب کچھ سن لیا ہو۔۔۔امتیاز صاحب نے شبہ ظاہر کیا تو کرم داد خاموش ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پھر کہنے لگا۔۔۔ہمارے پاس تو ابھی گڈی کی ٹکٹ بھی نہیں ہے۔۔۔
او یار۔۔۔اوپن ٹکٹ لے لینا جا کے۔۔۔تمہارے پاس کونسا زیادہ سامان ہے۔۔۔امتیاز صاحب بھی اس کے بڑھتے ہوئے تحفظات سے تنگ آ کر ہاتھ نچاتے ہوئے بولے اور واپس چل دیئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دوسری جانب امتیاز صاحب کا شک بھی صحیح تھا۔۔۔رانی سب سن چکی تھی۔۔۔اُس دن کے بعد سے رانی کہاں اتنی جلدی سوئی تھی جو آج اسے نیند آ جاتی۔۔۔اور پھر اس غریب خانے میں کوئی دروازہ نام کی تو چیز بھی نہیں تھی کہ آواز اندر نہ آتی۔۔۔مگر رات کے اس پہر وہ کچھ بھی کرنے سے قاصر تھی۔۔۔
وہ رات اس نے کس طرح گزاری۔۔۔یہ وہ ہی جانتی تھی۔۔۔زندگی میں پہلی بار تو اسے جینے کی وجہ ملی تھی۔۔۔پہلی مرتبہ اس نے جینا چاہا تھا تب ہی اس کے گلے میں نیا پھندا ڈل گیا۔۔۔وہ رات اس کو اپنی آخری رات لگ رہی تھی۔۔۔وہ خواہش کر رہی تھی کہ اب اس کی آنکھیں بند ہوں اور پھر کبھی نہ کھلیں۔۔۔وہ آنکھیں جن پر صارم بس ایک جھلک دیکھتے ہی دل ہار بیٹھا تھا، اُن حسین آنکھوں میں اب وہ خود ہی بجھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات بھر وہ جاگتی رہی اور بے سدھ پڑی اپنے اندر پیدا ہونے والا شور سنتی رہی۔۔۔جو کہ کبھی کبھی موت کے سکوت میں بھی تبدیل ہو جاتا۔۔۔

صبح جب کرم داد اُٹھا تو رانی سوتی بن گئی۔۔۔کرم داد نے اُسے اٹھایا اور ساری بات بتائی۔۔۔
رانی نے لاکھ منتیں کی کہ میں نہیں جاؤں گی ابا۔۔۔مجھے کہیں نہیں جانا۔۔۔تو کرم داد نے بھی نرم لہجے میں کہا۔۔۔رانی وہ بڑے لوگ ہیں کچھ بھی کر سکتے ہیں۔۔۔تُو سمجھتی کیوں نہیں ہے۔۔۔کرم داد کا یہ کہنا تھا۔۔وہ بھولی بھالی رانی ایک سمجھ دار سی ہو گئی اور خاموش ہو گئی۔۔۔پھر اچانک سپاٹ لہجے میں بولی۔۔۔ابا آج بس آخری بار مجھے ملنے دے پھر چلیں گے۔۔۔وہ اپنے محبوب، اپنے صارم سے بس ایک آخری بار ملنا چاہتی تھی۔۔۔
ایک بار تو کرم داد کا بھی دل پسیج گیا۔۔۔اور اس نے سوچا کیوں نہ آج رک ہی جائے۔۔۔
آخر رانی کا انداز ہی ایسا تھا گویا کوئی قریب المرگ شخص اپنی آخری خواہش بیان کر رہا ہو۔۔۔تو کرم داد کے دل پر اثر کیوں نہ کرتی۔۔۔
مگر اچانک اسے امتیاز صاحب کی رات کہی گئی بات یاد آ گئی۔۔۔اگر رانی نے صارم کو بتا دیا تو”..

وہ فوراً بولا۔۔۔رانی تُو جھلی ہو گئی ہے۔۔۔ہماری بھلائی اسی میں ہے کہ ہم یہاں سے آج ہی نکلیں۔۔۔اُس نے کہا اور کپڑے کی ایک میلی سی گٹھری جس میں کچھ ضروری سامان رکھا تھا اسے زور سے گرہ لگائی۔۔۔۔۔۔۔۔

**********

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: