Husna Novel by Huma Waqas – Episode 9

0
حسنیٰ از ہما وقاص – قسط نمبر 9

–**–**–

اور یہ دوربین ہے نہ اسی سے دیکھتا رہتا پتہ نہیں کیا ۔۔۔ ۔منب نے ناک چڑھا کر سر ہوا میں مارا تھا ۔۔۔
زندگی دیکھتا ہوں یار اس سے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ روبن نے گہری سانس لی اور ہاتھ میں پکڑی دوربین کو اونچا کر کے آنکھوں کے سامنت کیا لبوں پر میٹھی سی مسکراہٹ تھی ۔۔۔
اچھا واہ ۔۔۔۔ ۔۔۔ منب نے ہاتھ کو ہوا میں خم دیا اور ہونٹ باہر نکالے ۔۔۔
جا۔۔۔۔ پھر سمرن ۔۔۔ جی لے اپنی زندگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ منب نے قہقہ لگایا ۔۔۔
آج بہت دن بعد روبن بھی یوں بے آواز ہنسا تھا کہ دانت لبوں کے اندر نظر آۓتھے۔۔۔
*******
فضا تین دن ہو گۓ ہیں حازق نہ تو میرے کسی مسیج کا جواب دے رہا ہے اور نہ ہی میری کال اٹھا رہا ہے ۔۔۔ حسنیٰ نے روہانسی آواز میں فون کے دوسری طرف موجود فضا سے کہا تھا۔۔۔
وہ بے حال سی چھت پر کھڑی لب کچل رہی تھی ۔۔۔ ہلکے سے فیرزوی رنگ کی پیروں تک آتی فراک ہوا سے ہل رہی تھی ۔۔۔ موٹی موٹی آنکھوں میں پانی بھرا تھا ۔۔۔ چھوٹی سی ناک کا اوپری حصہ سرخ ہو رہا تھا اور بہانے سے لایا گیا چاۓ کا کپ ہنوز چھوٹی سی میز پر دھرا تھا ۔۔ جس کے گرد مکھیاں منڈلا رہی تھیں ۔۔۔
ہمم۔ممم رکو میں کوشش کرتی ہوں پھر بتاتی ہوں تمہیں ۔۔۔فضا نے اسے تسلی دی تھی ۔۔۔
تین دن سے اچانک ہی حازق اس سے ہر رابطہ ختم کر چکا تھا وہ اس کے کسی مسیج کا کوٸ جواب نہیں دے رہا تھا ۔۔ وہ اگر فون کرتی تھی تو وہ فون کٹ کر دیتا تھا ۔۔۔ رشتہ پکا ہو چکا تھا ۔۔ حسنیٰ کی جان پر بن گٸ تھی اور حازق تھا کہ اس کی کوٸ خبر نہیں تھی ۔۔۔
وہ رشتے کا کیا بنا۔۔۔۔۔۔۔۔ فضا نے کچھ یاد آجانے پر تجسس سے پوچھا تھا۔۔۔
وہ بھی فاٸنل ہو نے جا رہا ہے ۔۔۔ یار مجھے نہیں کرنی اس پھٹیچر کلرک سے شادی اس سے اچھا تو میرے بھاٸ کما لیتے ہیں ۔۔۔ پتا نہیں سب کو کیا نظر آیا ہے اس میں ۔۔۔حسنیٰ نے دانت پیس کر کہا اور چھوٹی سی ناک کے نتھنے پھول گۓ تھے ۔۔۔
مجھے حازق سے ہی کرنی شادی ہر صورت میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ بچوں کی طرح پیر پٹخ کر وہ سامنے رکھی کرسی پر آ کر بیٹھ چکی تھی ۔۔۔
پر پہلے اب یہ بات تو کنفرم ہونے دو کیا حازق کو بھی تم سے کرنی شادی یا نہیں ۔۔۔ فضا نے رک رک کر اپنا خدشہ ظاہر کیا ۔۔
ایسے کیوں کہہ رہی ہو تم۔۔۔ حسنیٰ نے رونے جیسی آواز نکالی تھی ۔۔۔ اور چہرے پر آۓ بال پیچھے کیے تھے ۔۔۔
ٹھیک کہہ رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ فضا نے گہری سانس لی ۔۔
ایسے مت کہو فضا ۔۔۔۔ میرا دل بند ہو رہا ہے ۔۔۔ حسنیٰ نے سینے پر ہاتھ رکھا اور پھر آنسو گال بھگو رہے تھے
ارے ۔۔۔ یار حسنیٰ پہلے تو یہ پریٹنڈ کرنا بند کرو کہ تم اس سے بہت محبت کرتی ہو ۔۔۔ فضا کی بے زار سی آواز دوسری طرف سے ابھری ۔۔
کرتی تو ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ حسنیٰ نے آنسوٶں میں ڈوبی بھار ی آواز میں کہا ۔۔۔
وہ سچ ہی تو کہہ رہی تھی وہ کرتی تھی محبت اپنے خوابوں سے ۔۔۔ دولت سے ۔۔۔۔ مہنگے پر آساٸش گھر سے ۔۔۔۔ سونے سے۔۔۔ قیمتی کپڑوں اور گاڑیوں سے۔۔۔۔ نوکروں کی ریل پیل سے۔۔۔۔ ہاں وہ حازق سے محبت کرتی تھی ۔۔۔
بس کرو تم ۔۔۔ اسے محبت نہیں کہتے جب تمہیں ہو گی تو پتا چلے گا کیا ہوتی ہے محبت ۔۔۔ فضا نے لفظ چبا چبا کر ادا کیے تھے ۔۔۔
اچھا چلو بھاشن دینا بند کرو تنہیں تو جیسے بہت پتا ہے نہ محبت کسے کہتے ہیں اور کسی طریقے سے پتا چلاٶ کیوں بات نہیں کر رہا حازق ۔۔۔ حسنیٰ کو ہمیشہ سے اس کے سمجھانے سے بہت چڑ تھی اور اب بھی وہ شروع ہو رہی تھی
اچھا بند کرو فون ذرا ۔۔۔ کرتی ہوں ۔۔۔ فضا کی پر سوچ آواز ابھری تھی ۔۔۔
فون بند کرنے کے بعد حسنیٰ پھوٹ پھوٹ کر رو دی تھی ۔۔۔ اس بات سے بلکل بے خبر کہ اس کے گال پر بہتے آنسو اس وقت کسی کے دل پر اثر کر رہے ہیں ۔۔۔ اور وہ بے چین ہو گیا ہے کہ اتنا ہنسنے چہکنے والی لڑکی تین دن سے اتنی اداس کیوں ہے اور آج کیوں اتنا رو رہی ہے ۔۔۔
************
زبیر ۔۔۔ تھنکیو سو مچھ ۔۔۔ شہروزی نے سیاہ رنگ کا بریف کیس میز پر رکھ کر ہاتھ سے اس کی طرف اشارہ کیا ۔۔۔
میم اس کی کیا ضرورت ہے پھر کبھی بھی کوٸ کام ہو بندہ حاضر ہے ۔۔۔ زبیر نے مسکراتے ہوۓ تھوڑا سا جھک کر سینے سے نیچے ہاتھ رکھا۔۔۔
زبیر شہروزی کے آفس میں اس کی میز کے سامنے مہدب انداز میں کھڑا تھا ۔۔۔
نعمان کی جاسوسی کا اس ہر مہینے موازہ ملنے کے باوجود اب شہروزی اسے بھاری رقم تحفے میں دے رہی تھی ۔۔۔ جو اس سیاہ بریف کیس میں نقد کی صورت میں تھی ۔۔۔
ہممم ۔۔۔ ضرور ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ شہروزی نے بھی مسکرا کر کہا ۔۔۔
جی اجازت پھر ۔۔۔۔۔۔۔ زبیر نے کیس کے ہینڈل میں ہاتھ ڈال کر اسے میز پر سے اٹھایا اور لب بھینچے
جی جی ۔۔۔۔۔۔۔ شہروزی نے مسکرا کر جانے کی اجازت دی
زبیر کے جانے کے بعد ۔۔۔ ایک گہری سانس لیتے ہوۓ پاس پڑے فون کو اٹھا کر ڈاٸل پر کچھ نمبر دباۓ اور ریسور کان پر رکھا
نعمان کو میرے آفس میں بھیجیں ۔۔۔۔۔۔۔ بہت مدھم سی نرم آواز میں کہہ کر ریسور پھر سے رکھ دیا اور نظروں کو بیرونی دروازے پر جما لیا ۔۔۔
دل پھٹنے جیسا احساس تھا ۔۔۔ واصف سے کوٸ اولاد نہیں ہوٸ تھی اسے ساری عمر ممتا کے لیے یوں ہی تڑپی تھی ۔۔۔ سال میں کتنے چکر اس ننھی سی قبر پر لگاتی تھی وہ ۔۔ یہ سوچ کر کہ ہاں اس کی بھی اولاد اس دنیا میں آٸ تھی وہ بے اولاد نہیں تھی ۔۔ بس وہ سو رہی تھی اس مٹی کے ڈھیر میں پر اس بات سے وہ یکسر بے خبر تھی کہ یہ چھوٹی سی قبر محض ایک مٹی کا ڈھیر ہے اور کچھ بھی نہیں اس کا جنا ہوا تو زندہ سلامت ہے ۔۔ وہ ہو بہو اپنے باپ پر گیا تھا ۔۔ حسن ولید۔۔۔۔۔ شہروزی کی پہلی اور آخری محبت ۔۔۔
دروازے پر ہلکی سی دستک نے خیالوں کی دنیا سے باہر نکالا تھا ۔۔۔ بے تاب ہو کر دروازے کی طرف دیکھا ۔۔۔
میم مۓ آٸ ۔۔۔ کم ان ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ کھڑا تھا اس کا شہزادہ۔۔۔ خوبرو ۔۔ کشادہ ماتھا ۔۔ چوڑا سینا ۔۔۔ گہری آنکھیں ۔۔۔ خوبصورت لب ۔۔۔ بھورے سنہری بال ۔۔ موچھیں ۔۔۔ اور بڑھی ہوٸ شیو کی وجہ سے رعب دار چہرہ ۔۔۔۔
جی۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ممتا سے تڑپتی ہوٸ آواز ابھری تھی ۔۔۔
دل کیا دوڑ کر جاۓ سینے سے لگاۓ ماتھا چومے ہاتھ چومے۔۔۔ بتاۓ اسکو کہ تو اس کوک سے جنا ہے میرے لال ۔۔۔ پر ۔۔۔۔ پر۔۔۔ وہ پوچھے گا سوال۔۔۔۔ ہاۓ۔۔۔۔ۓ۔۔۔۔ۓ۔۔۔۔۔ وہ پوچھے گا ۔۔۔۔
میم۔۔۔۔۔۔ نعمان نے خیالوں میں کھوٸ ساکن سی شہروزی کو پکارا ۔۔۔
اسے آفس میں آ کر کھڑے ہوۓ پانچ منٹ ہو گۓ تھے اور شہروزی بلکل خاموش خیالوں میں کھوٸ اسے تکے جا رہی تھی ۔۔۔
نعمان کے پکارنے پر وہ چونکی ۔۔۔ جلدی سے جزبات پر قابو پایا ۔۔۔
بیٹھیں ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سامنے کرسی کی طرف اشارہ کیا
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نعمان پریشان سا کرسی کو گھسیٹتا ہوا بیٹھ گیا تھا
شہروزی پھر چپ چاپ تھی بس اسے عجیب سی نظروں سے دیکھے جا رہی تھی ۔۔۔۔
کاش ۔۔۔۔۔ کاش۔۔۔۔۔ اس کو بتا سکوں چیخ چیخ کر تم میرے بچے ہو ۔۔۔ میرے بیٹے پوری دنیا کو بتا سکوں ۔۔۔ کاش ۔۔۔۔ شہروزی کا دل جیسے کوٸ مٹھی میں بند کر رہا تھا ۔۔۔
میم۔۔۔ کوٸ کام ۔۔۔۔۔۔۔۔ نعمان نے بے چین ہو کر پھر سے سوال کیا ۔۔۔
آں۔۔۔۔ ہاں ۔۔۔ ہے کام ۔۔۔۔۔۔۔۔ شہروزی نے تھوک نگل کر گلے میں پھنسے آنسو کے گولے کو نگلا تھا ۔۔۔ اور پلکوں کو جھپک کر نظریں چراٸیں ۔۔۔
جی بولیں میم ۔۔۔۔۔ مہدب بھاری ۔۔۔ آواز۔۔۔
آپ۔۔۔۔ وہ میں ۔۔۔۔۔آپ کی۔۔۔۔ پرموشن کر رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ شہروزی نے ایک فاٸل میز پر رکھی اور گیلی آنکھوں سے مسکراتے ہوۓ نعمان کی طرف دیکھا ۔۔۔
جس پر حیرت کا پہاڑ ٹوٹا تھا ۔۔۔ اس ک قسمت اس پر دن بدن مہربان تھی ۔۔۔
جی۔۔۔۔۔ کیا ۔۔۔۔ میم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ خوشی کے مارے اٹک اٹک سا گیا تھا ۔۔۔الفاظ زبان کا ساتھ نہیں دے رہے تھے
جی۔۔۔۔ آپ کل سے ایم ڈی کی سیٹ پر بیٹھیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔ شہروزی کی مسکراہٹ اور گہری ہوٸ تھی ۔۔۔ محبت سے لبریز آنکھیں اپنے بیٹے کو دیکھ دیکھ کر ٹھنڈی ہو رہی تھیں ۔۔۔
میم۔۔۔۔ پر ۔۔۔۔ میں۔۔۔۔۔۔۔نعمان کو سمجھ نہیں آ رہا تھا وہ کیا کرے اس لمحے ۔۔۔
پر۔۔۔۔ور۔۔۔۔ کچھ نہیں ۔۔۔ آپ کا کام بہت اچھا ہے بیٹا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دل سے نکلی آواز
جی۔۔۔۔۔ مجھے سمجھ نہیں آ رہا کیا کہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ نعمان بار بار مسکرا رہا تھا ۔۔۔
حسنیٰ کو تلاش کرتے ہوۓ دو ماہ ہو چلے تھے اور وہ ان دو ماہ میں ایک بار بھی نہیں مسکرایا تھا اور آج یہ مسکراہٹ ایسے تھی جیسے کسی بنجر زمین پر برسوں بعد پانی کی بوندیں بارش کی صورت پڑی ہوں ۔۔۔
کچھ بھی کہنے کی ضرورت نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ شہروزی نے محبت سے مسکرا کر کہا وہ اپنے رونے کو بمشکل روکے ہوۓ تھی ۔۔۔
آنسوٶں کا بند بس ٹوٹنے کو تھا ۔۔۔
جاٸیں آپ پھر ۔۔۔۔۔۔۔۔ تیزی سے سنجیدہ لہجے میں نعمان کو جانے کا کہا
کیونکہ اگر وہ ایک لمحہ بھی اور رکتا تو وہ رو دیتی اس کے سامنے ۔۔۔جو و ہر گز نہیں چاہتی تھیں ۔۔۔ کیونکہ وہ ڈرتی تھیں اس کے سوالوں سے جو وہ کرے گا یہ حقیقت جان لینے کے بعد کہ وہ اس کا بیٹا ہے اور اگر اس کا بیٹا تھا تو اس رات وہ کوڑے میں کیوں پھینکا گیا تھا ۔۔۔ اور ان سوالوں کے جواب۔۔۔۔ کتنے مشکل تھے یہ اسی کا دل جانتا تھا ۔۔۔
جی جی ۔۔۔۔۔نعمان فاٸل کو اٹھا کر گہری مسکراہٹ اور چمکتی آنکھوں کے ساتھ باہر نکل گیا تھا
************
تمھارے ساتھ مسٸلہ کیا ہے ۔۔۔ عفت نے زور سے حسنیٰ کے بازو کو جھٹکا دیا تھا ۔۔۔
جو منہ پھلاۓ کمرے کے بوسیدہ سے پلنگ پر گھٹنوں میں منہ دیے بیٹھی تھی ۔۔۔
امی۔۔۔۔ وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ رونے جیسی صورت بنا کر چہرہ اوپر اٹھا کر عفت کی طرف دیکھا۔۔۔۔ جو خونخوار نظروں سے اسے گھور رہی تھیں ۔۔۔ جو بار بار ہر رشتے سے انکار کر دیتی تھی اور اب جو رشتہ آیا تھا عامر کو اور حسن کو بہت پسند آیا تھا اور وہ اس
17
کے بارے میں بے حد سنیجیدہ ہو چکے تھے ۔۔۔
کیا وہ وہ ۔۔۔۔ تمھارے بھاٸ نے آج بلا لیا ہے ان لوگوں کو رسم کے لیے۔۔۔۔ عفت نے دانت پیس کر غصے سے دیکھا
امی ۔۔۔ مجھے ایک بہت ہی امیر لڑکا پسند کرتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔حسنیٰ نے سر کو مزید جھکا دیا تھا اور گھٹی سی آواز میں کہا
عفت تو جیسے ایک لمحے کے لیے ساکن ہو گٸ تھیں وہ چپ چاپ کھڑی تھیں ۔۔۔ وہی ہوا جسکا شک تھا ۔۔۔ شزا کتنی دفعہ تو اسے یہ کہ چکی تھی کہ حسنیٰ کے لچھن اسے سہی نہیں لگتے ہیں لیکن دل تھا کہ حسنیٰ پر اندھا اعتماد کرتا تھا بیٹی کو تھی اور شزا بہو تھی ۔۔۔
امی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حسنیٰ نے روہانسی صورت بنا کر ساکن کھڑی عفت کے ہاتھ کو تھاما تھا ۔۔۔
امی وہ رشتہ بھیجے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پھر سے عفت کے ہاتھ کو ہلایا تھا جو کوٸ جواب نہیں دے رہی تھیں ۔۔۔
نہیں کوٸ ضرورت نہیں ہم کیسے نبھا پاٸیں گے اتنے امیروں کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔ عفت نے سختی سے حسنیٰ کے ہاتھ سے اپنا ہاتھ چھڑوایا اور سپاٹ لہجے میں کہا ۔۔۔
حسنیٰ جلدی سے پلنگ سے نیچے اتری تھی ۔۔۔۔
امی پلیز کچھ دیر اور انتظار کر لیں۔۔۔۔۔۔ حسنیٰ نے روہانسی آواز میں کہتے ہوۓ عفت کے آگے ہاتھ جوڑ دیے تھے ۔۔۔
عفت نے ماتھے پر شکن ڈال کر گھور کر دیکھا ۔۔۔ حسنیٰ با قاعدہ رو پڑی اور جھٹکے سے عفت کے گلے لگی تھی ۔۔۔
بیٹی تھی اور سب سے چھوٹی لاڈلی اس کا بلک بلک کے رونا ممتا کے سخت دل کو بھی پسیج گیا تھا ۔۔ اپنے سے الگ کر کے عفت مے اس کے چہرے کو محبت سے دونوں ہاتھوں میں لیا تھا ۔۔وہ ہچکیاں لے لے کر رو رہی تھی ۔۔۔
تو منگنی کر لے ۔۔۔ اگر اس کا رشتہ آ گیا تو میں راضی کر لوں گی تیرے بھاٸیوں کو ۔۔۔۔۔۔۔ عفت نے مدھم مگر محبت بھرے لہجے میں کہا
امی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حسنیٰ نے خوشی سے عفت کو گلے لگایا تھا ۔۔۔
جبکہ وہ پھیکی سی مسکراہٹ سے مسکرا دیں تھیں ۔۔۔
******
ہممم منگنی ہے یا نکاح۔۔۔ منب نے پیچھے سے کندھے پر ہاتھ مارا تھا ۔۔۔
مجھے کیا معلوم۔۔۔۔۔۔۔۔روبن نے مدھم سی آواز میں کہا پر آنکھوں کے سامنے سے دوربین کو نہیں ہٹایا تھا ۔۔۔
اسی چھت پر جہاں وہ روز اسے دیکھتا تھا آج وہاں اس کی کوٸ تقریب ہو رہی تھی ہلکے سے تربوزی رنگ کے جوڑے میں اداس سی بیٹھی تھی چھت پر ہی چھوٹا سا سٹیج بنا تھا لوگ رنگ برنگے جوڑوں میں سٹیج کے سامنے لگی کرسیوں پر بیٹھے تھے کچھ لوگ کھڑے تھے ۔۔۔ بچے دوڑ رہے تھے ۔۔۔
کیوں اس سیراب کے پیچھے بھاگتا ہے ۔۔۔ منب نے پھر سے روبن کے کان کے قریب آ کر کہا
میں کہاں بھاگتا ہوں بس اسے دیکھتا ہی تو ہوں ۔۔۔ روبن نے ٹھنڈی آہ بھری تھی۔۔۔
پاگل جب وہ کسی صورت تیری ہو نہیں سکتی پھر اس سے کیا ملتا تجھے دیکھنے سے ۔۔۔۔ منب نے سگریٹ کا کش لگایا تھا۔۔
سکون۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔ بہت گہری آواز تھی ۔۔۔
تو کب سے ایسا ہو گیا میری جان کے لڑکی کی صورت کا دیدار تجھے سکون دے ۔۔۔ منب نے قہقہ لگایا تھا ۔۔۔
کچھ سمجھ نہیں آتا مجھے بھی روز جب اس چھت کے زینے
اترکر نیچے جاتا ہوں تو یہ سوچ کر جاتا ہوں کہ کل اسے نہیں دیکھوں گا ۔۔۔ روبن نے دوربین کو نیچے کیا اور چہرہ نیچے جھکا کر اسے ناخن سے کھرچا
اور اگلے دن پتا نہیں کیا بے چینی ہوتی ہے ۔۔۔ میں یہاں ہوتا ہوں ۔۔۔ مجھے لگتا ہے جب بھی میں اسے دیکھتا ہوں تو میں اپنے سارے غم بھولنے لگتا ہوں ۔۔۔ روبن جزبات کی رو میں بولے جا رہا تھا
ابے۔۔۔۔۔ عشق وشق تو نہیں کر بیٹھا اس سے ۔۔۔ اس کی رسم ہو رہی کوٸ ۔۔۔ اور کون ہے کیا ہے تجھے کیا معلوم ۔۔۔ منب نے ہاتھ روبن کے چہرے کی طرف کیا اور پریشان لہجے میں کہا
جانتا ہوں وہ کچھ بھی نہیں ہے میری لیکن یہ دل جو ہے نہ یہ مانتا ہی نہیں ۔۔۔ روبن نے پھر سے اسے دیکھنا شروع کر دیا تھا ۔۔۔
وہ آج اور بھی غضب ڈھا رہی تھی ۔۔۔
مجھے سمجھ آ گیا ہے مسٸلہ ۔۔۔ منب نے تھپکی دی روبن کی پیٹھ پر ۔۔۔
کیا ۔۔۔ روبن نے کھوۓ سے انداز میں کہا جبکہ وہ ہنوز دوربین آنکھوں پر سجاۓ اس لڑکی کو دیکھنے میں مصروف تھا ۔۔۔
سمپل۔۔۔ تو قید میں ہے اور کوٸ ایکٹیویٹی نہیں ہے بس اس کو دیکھتا ہے ۔۔۔ منب نے سگریٹ نیچے پھینکا اور پاٶں سے مسل دیا ۔۔۔
اوپر سے وہ حسین بلا ہے پوری سالی ۔۔۔ منب نے اشارہ اس چھت کی طرف کیا اور معنی خیز مسکراہٹ دی
ابے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ روبن نے ایک جھٹکے سے منب کا گریبان دبوچا تھا ۔۔۔
ارے بس بس۔۔۔۔کیا ہو گیا ۔۔۔ ۔۔۔ منب نے گریبان چھڑواتے ہوۓ کہا
کچھ نہیں بولنا اس کے بارے میں سمجھا ۔۔۔ روبن نے دانت پیس کر کہا ۔۔۔
منب کے چہرے پر مکا تان کر وہ پورے غصے میں کھڑا تھا
ابے تو پاگل واگل ہو گیا ہے کیا ۔۔۔ اس لڑکی کے لیے مجھ پر مکا تان لیا ۔۔۔ منب نے غصے سے خود کو الگ کیا ۔۔۔
ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔ روبن نے لب بھینچے اور چہرہ نیچے جھکا لیا
منب سر جھٹک کر نیچے اتر گیا تھا ۔۔۔ اور وہ وہیں پر کھڑا تھا ۔۔۔۔ پریشان حال اسے خود نہیں پتا تھا اسے کیا ہوا تھا
************
سر یہ ڈزاٸنگ ڈیپارٹمنٹ ہے ۔۔۔۔ نعمان کو جگہ دیتا ہوا آدمی بڑے مہدب انداز میں گویا ہوا ۔۔۔
نعمان ایم ڈی کی سیٹ پر آنے کے بعد آج پہلے دن راونڈ پر آیا تھا ۔۔۔
ہممم۔۔۔ کتنے ورکرز ہیں ہمارے پاس ۔۔۔ نعمان نے دروازہ کھول کر اندر داخل ہوتے ہوۓ کہا ۔۔۔
بہت سی لڑکیاں اور لڑکے کپڑے سلاٸ کرنے میں مصروف تھے ۔۔۔
سر یہ مینول ڈیپارٸٹمنٹ ہے یہاں سیون ہینڈرڈ لوگ ہیں کام کر رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ آدمی نے ایک فاٸل نعمان کی طرف بڑھاٸ ۔۔۔
نعمان بہت مصروف انداز میں فاٸل دیکھنے میں مصروف تھا ۔۔۔
ہمممم۔۔۔ گڈ ۔۔۔۔ ۔۔۔ نعمان نے فاٸل بند کر کے سامنے کھڑے آدمی کی طرف بڑھاٸ ۔۔۔
مجھے فاٸلز چیک کرنی ہیں ۔۔۔ سٹاک کی ۔۔۔ نعمان نے پینٹ کی جیبوں میں ہاتھ ڈالے اور آگے بڑھا۔۔۔
وہ کام کرتے ہوۓ لوگوں کے بیچ میں سے گزر رہا تھا ۔۔۔ کچھ لوگ سلاٸ کر رہے تھے اور کچھ کڑھاٸ ۔۔۔
وہ سیاہ گاٶن میں نقاب کیے سلاٸ کرنے میں مصروف تھی جب ڈٸیپارٹمنٹ کے بیرونی دروازے سے داخل ہوتے شخص کو دیکھ کر سانس اٹک گٸ وہ جہاں سے بھی گزر رہا تھا لوگ کھڑے ہو رہے تھے۔۔۔
ارے ۔۔۔ نیو ایم ڈی ہے ۔۔۔ ساتھ والی لڑکی نے سر گوشی کی ۔۔۔ اور وہ سن ہو گٸ تھی۔۔۔ چلتی مشین میں بری طرح انگلی آٸ تھی ۔۔۔ چیخ ابھری تھی اس کو بہت سے لوگوں نے بھاگ کر مشین بند کی تھی ہاتھ زخمی ہو چکا تھا ۔۔۔ اور خون بہہ رہا تھا ۔۔۔
کیا ہوا ان کو ۔۔۔۔ نعمان ایک دم سے قریب آیا ۔۔۔
سیاہ گاٶن اور نقاب میں سے دو آنکھیں اوپر اٹھ کر فورا جھکی تھیں ۔۔۔۔

 

 

پورے چھ ماہ بعد آج گھوم کر وہ اسی کے سامنے تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آہ ۔۔۔۔ہ۔۔۔ہ۔۔۔انگلی سے زیادہ دل میں ٹیس اٹھی تھی ۔۔ ان چھ ماہ میں کوٸ ایک لمحہ بھی تو ایسا نہیں گزرا تھا جب اس نے نعمان کو یاد نہ کیا ہوا ۔۔۔ لیکن کس منہ سے واپس آتی وہ کہاں اب نعمان کے قابل رہی تھی وہ تو اب خود سے نظریں ملانے کے قابل نہیں رہی تھی اس دن اگر مونال پر بابا اسے نہ بچاتے تو شاٸد وہ ایک اور بہت بڑے گناہ کی مرتکب ہو چکی ہوتی ۔۔۔۔
لیکن یہ خبر نہیں تھی کہ وہ رلتی کھلتی پھر سے یوں اسی کے سامنے آ جاۓ گی ۔۔۔ سوچا تھا ساری عمر یوں ہی اس کے نام پر گزار دوں گی اس کی منکوحہ کے طور پر ۔۔۔۔۔ پر کبھی نعمان کے سامنے نہیں جاٶں گی لیکن ۔۔۔۔
اللہ ۔۔۔۔۔ مجھے پہچان نہ لے ۔۔۔۔ حسنیٰ نے نظریں بلکل نیچے کر لی تھیں ۔۔۔ وہ سر پر ہی تو کھڑا تھا ۔۔ حسنیٰ کی نظریں اسکے جوتے پر پڑی تھیں ۔۔۔ اور یک لخت اسکا بوسیدہ پھٹا ہوا جوتا نظروں کے سامنے آ گیا تھا ۔۔۔۔ جس کمپنی میں وہ بابا کی سفارش پر ایک چھوٹی سی ورکر کے طور پر کام کرتی تھی وہ اس کی کمپنی کا ایم ڈی تھا ۔۔۔
اسے ابھی یہاں کام کرتے ہوۓ ایک ماہ ہوا تھا ۔۔۔ کتنی مشکل سے خود کو زندگی کی طرف لانے میں کامیاب ہوٸ تھی کتنی مشکل سے بابا نے اسے یہ نوکری دلاٸ تھی ۔۔۔ حازق کے پیچھے تو سب برباد کر ہی چکی تھی۔۔۔ نہ پڑھاٸ مکمل کر پاٸ تھی اور اب تو کچھ نہ بچا تھا کچھ بھی نہیں۔۔۔۔ نہ ماں نہ بھاٸ بہنیں جن کو وہ خود غرضی میں کھو چکی تھی اور پھر ایک شوہر کا رشتہ جس کے اب وہ قابل تک نہ رہی تھی ۔۔۔۔ کتنا مضبوط کر کے خود کو وہ پورے پانچ ماہ بعد گھر سے نکلی تھی ۔۔۔۔ لیکن آج نعمان کو یوں دیکھ کر سب ڈھیر ہو گیا تھا ۔۔
سر فنگر شاٸد بری طرح مشین میں آٸ ہے ۔۔۔۔ نعمان کے ساتھ کھڑے آدمی نے وضاحت دی تھی
پانی پلاٸیں ان کو ریسٹ روم میں لے کر جاٸیں فوراً۔۔۔ نعمان نے پریشان سی صورت بنا کر کہا۔۔۔
جی جی ۔۔۔۔ سر ۔۔۔۔ ۔۔۔۔ پاس کھڑی لڑکی نے حسنیٰ کو سہارا دے کر اٹھایا تھا ۔۔۔
ایک اور لڑکی حسنیٰ کے ہاتھ کو اوپر اٹھا رہی تھی۔۔ خون بہت تیزی سے بہہ رہا تھا جیسے ہی حسنیٰ اٹھ کر کھڑی ہوٸ تھی زمین پر بہت سے قطرے گرے تھے۔۔۔
اوہ بات سنیں بہت برا زخم ہے ۔۔۔۔ ان کو ہاسپٹل لے جاٸیں ۔۔۔۔۔۔۔۔نعمان نے پریشانی سے ساتھ کھڑے آدمی کو کہا تھا۔۔۔۔۔
حسنیٰ ۔۔۔ نے اس کے بعد ایک دفعہ بھی نظر اٹھا کر نہیں دیکھا تھا ۔۔۔ دو لڑکیاں اب اسے بیرونی دروازے کی طرف لے کر جا رہی تھیں ۔۔۔ اور وہ آدمی کسی کو آفس کال کر رہا تھا ۔۔۔
آپ سب احتیاط سے کام کیا کریں ۔۔۔ حسنیٰ کو عقب سے نعمان کی با رعب آواز سناٸ دے رہی تھی ۔۔۔
اب وہ باقی لوگوں کو ہداٸت کر رہا تھا ۔۔۔
*********
پھپھو۔۔۔۔۔ پھپھو۔۔۔۔۔۔ وہ کمر پر ہاتھ دھرے واصف ولاز کے بہت بڑے نفیس اور قیمیتی فرنیچر اور سجاوٹ کی چیزوں سے سجے لاونج میں کھڑی تھی ۔۔۔
گھگنرالے بال شانوں پہ بکھیرے چھوٹی سی ڈھیلی سی اونچی شرٹ کے نیچے تنگ نیلے رنگ کی جینز زیب تن کیے لبوں کو ایک دوسرے سے ملاۓ۔۔۔ جس کی وجہ سے گال کے ڈمپل واضح ہو رہے تھے ۔۔۔ وہ ارد گرد شہروزی کی تلاش میں نظریں دوڑا رہی تھی ۔۔۔ سفید رنگ کے کپڑوں میں ملبوس ایک ملازم تین اٹیچی لیے اس کے پاس سے گزرتا ہوا گیا تھا ۔۔۔۔
اور ایسے ہی نظریں دوڑاتی وہ ایک دم سے زینے کی طرف دیکھ کر بھر پور طریقے سے مسکرا دی تھی ۔۔۔
شہروزی مسکراتی ہوٸ زینے اتر رہی تھی ۔ وسیع سفید ٹاٸلز والا زینہ گول گھومتے ہوۓ اوپری حصے کو لاونج سے ملا رہا تھا۔۔۔
ارے۔۔۔۔۔ واہ۔۔۔۔ پہنچ گٸ میری جان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شہروزی نے محبت سے اپنی بھتیجی کی طرف دیکھا ۔۔۔
جی ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ تقریباً بھاگتی ہوٸ شہروزی کی طرف بڑھی ۔۔۔ لب کھل رہے تھے اور آنکھیں چمک رہی تھیں ۔۔۔
شہروزی کے ساتھ گرم جوشی سے گلے مل کر وہ چہکنے کے سے انداز میں ہنس رہی تھی اس کی شہروزی سے محبت بچپن سے ہی ایسی تھی ۔۔۔ شہروزی کے بعد وہ ہی لڑکی تھی جو ملک انور کی بڑی حویلی کی رونق تھی ۔۔۔ ہیر اطہر ۔۔۔۔
شہروزی کے اکلوتے بھاٸ ملک اطہر کی بیٹی ۔۔۔۔شہروزی کی جان دلاری ۔۔۔ وہ میٹرک کے بعد لاہور میں پڑھنے کے غرض سے آٸ تھی ۔۔۔ اور اب اسے یہیں واصف ولاز میں شہروزی کے ساتھ رہنا تھا ۔۔۔
شہروزی کی خوشی دیدنی تھی کیونکہ ہیر کے گھر آ جانے سے خاموشی کا راج ہر وقت قاٸم رکھنے والا واصف ولاز مدھر سے کھنکتے قہقوں سے گونج اٹھا تھا ۔۔۔
کیسی ہیں آپ۔۔۔۔ لاڈ سے شہروزی کے کندھے پر سر رکھ کر ہیر نے کہا
بلکل ٹھیک میری جان ۔۔۔ بیٹھو ۔۔۔۔ شہروزی نے گال تھپتھپا کر اسے بیٹھنے کے لیے اشارہ کیا
پھپھو بیٹھنا ویٹھنا نہیں ہے مجھے شاور لینا ہے اور پھر خوب سارا سونا ہے ۔۔۔ ۔۔۔۔ ہیر نے چہکتے ہوۓ شہروزی کے گلے میں بازو ڈالے اور ناک بڑی ادا سے اوپر چڑھاٸ ۔۔۔۔
اوکے ۔۔۔۔ رضیہ۔۔۔۔ رضیہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شہروزی نے گردن کو خم دے کر آواز لگاٸ ۔۔۔
کچھ دیر میں ہی ملازمہ ہاتھ باندھے حاضر تھی ۔۔۔
ہیر کو اس کا کمرہ دکھاٶ۔۔۔۔ شہروزی نے رضیہ کو کہتے ہوۓ مسکرا کر پھر سے ہیر کی طرف دیکھا
جی میم۔۔۔۔ ۔۔۔ رضیہ نے تھوڑا سا سر جھکایا اور پھر ہیر کی طرف دیکھا
جاٶ۔۔۔ شام کو لان میں ملتے ہیں چاۓ کے ساتھ ۔۔ شہروزی نے پھر سے ہیر کے گال کو محبت سے تھپکا تھا
******
فضا ۔۔۔ شادی جلدی رکھ دی ہے ان لوگوں نے ۔۔۔۔۔۔۔ پریشانی سے بھری آواز کے ساتھ وہ لب کچلتی فون کے دوسری طرف موجود فضا کو اپنا دکھڑا سنا رہی تھی ۔۔۔
چھت کے کرسی پر دونوں ٹانگوں کو اوپر سمیٹے گھٹنوں پر چہرہ رکھے ۔۔۔ سادہ سی اونچی قمیض کے ساتھ گھیرے دار شلوار زیب تن کیے بالوں کو بے نیازی سے شانوں پر بکھراۓ ۔۔ جن میں کنگھی نہ کرنے کی وجہ سے نیچے کی طرف کتنے ہی بل آ گۓ تھے اداس صورت بناۓ بیٹھی تھی ۔۔۔
عفت کے کہنے پر وہ عابد سے منگنی کر چکی تھی ۔۔ لیکن اب ان کے جلدی مچانے پر عامر اور حسن شادی کے لیے راضی ہو چکے تھے ۔۔۔ حسنیٰ کی جان پر بن آٸ تھی۔۔۔
حسنیٰ ۔۔۔ تو بتا تو چکی ہوں تمہیں اتنی دفعہ وہ کہہ رہا ہے نہیں کرنی اس کو تم سے شادی کیوں ضد پر اڑی ہو۔۔۔ فضا نے ڈانٹنے کے سے انداز میں کہا ۔۔۔
وہ حازق سے بات کر چکی تھی جس نے یہ بہانہ بنا کر ٹال دیا تھا کہ اس کے پیرنٹس اس شادی کے لیے بلکل راضی نہیں ہو رہے ہیں وہ اپنے سٹیٹس میں ہی اس کی شادی کرنا چاہتے ہیں ۔۔۔ فضا پہلے بھی بہت دفعہ یہ بات حسنیٰ کو باور کرا چکی تھی لیکن حسنیٰ تو کسی صورت پیچھے ہٹنے کو تیار نہیں تھی وہ مختلف نمبر بدل بدل کر بھی حازق سے رابطہ کرنے کی کوشش کر چکی تھی ۔۔۔ حازق کیسے اپنے سارے وعدے بھول سکتا ہے جینے مرنے کی قسمیں بھول سکتا ہے ۔۔۔بس دل کو یہ خلش یہ پھانس سکون نہیں دے رہی تھی حازق اس جیسی حسین لڑکی کو کیسے اتنی آسانی سے بھول سکتا ہے کیسے چھوڑ سکتا ہے ۔۔۔ قصے کہانیوں میں تو لڑکے گھر بار چھوڑ دیتے حازق کیسے ایسے خاموش ہو گیا ۔۔۔
پلیز۔۔۔۔ پلیز ۔۔۔۔ اسے کہو میرے ساتھ ایسا مت کرے ۔۔۔ ۔۔۔۔ حسنیٰ باقاعدہ رو دی تھی ۔۔۔
ایک ہفتے بعد شادی رکھ دی گٸ تھی اور وہ بےحال تھی سارے خواب بکھر گۓ تھے ۔۔۔ اور دل تھا کسی صورت بھی عابد جیسے معمولی کلرک کے ساتھ شادی پر راضی نہیں ہو رہا تھا۔۔۔
پاگل لڑکی وہ چھوڑ چکا ہے تمہیں ۔۔۔ فضا نے دانت پیس کر ہزار دفعہ دہراۓ ہوۓ الفاظ پھر سے اس کے سامنے دھراۓ تھے ۔۔۔
فضا ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ وہ ناسمجھی کے انداز میں پھوٹ پھوٹ کر رو دی تھی ۔۔۔۔
دل تھا کہ مانتا ہی نہیں تھا کہ کہ اس کی قسمت بھی ایسی ہو سکتی ہے اسے تو لگتا تھا وہ اتنی حسین ہے کوٸ شہزادہ اس کی قسمت میں آۓ گا ۔۔ اسے اپنی محل کی ملکہ بناۓ گا اور شہزادہ آ بھی تو گیا تھا حازق کی صورت میں ہاں وہ شکل سے تو شہزادہ نہیں تھا لیکن دولت سے وہ شہزادہ ہی تھا اور وہ خود کو حازق کے ساتھ اتنا آگے تک سوچ چکی تھی کہ اب واپسی بہت کٹھن تھی ۔۔۔
حسنیٰ جہاں شادی ہو رہی ہے چپ چاپ کر لو سمجھی۔۔۔۔ فضا نے غصے میں بھری آواز میں کہا ۔۔۔
تم بھی سب کے ساتھ مل جاٶ ۔۔۔ کوٸ میرا دکھ نہیں سمجھتا بھاڑ میں جاٶ تم بھی ۔۔۔ حسنیٰ نے بھاری آواز میں روتے ہوۓ کہا۔۔۔
فون بند کرنے کے بعد وہ پھر سے پھوٹ پھوٹ کر رو دی تھی ۔۔۔ اور دو چھت کے فاصلے پر دیوار کی باڑ میں سے جھانکتی دو آنکھوں سے یہ منظر دل میں اتر کر دل کی بستی میں اتھل پتھل مچا گیا تھا ۔۔۔۔
********
یہ کیا ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دروازہ کھولتے ہی ان کی نظر حسنیٰ کے ہاتھ پر بندھی پٹی پر پڑی تھی۔۔۔
وہ پچپن سال کے لگ بھگ ایک بوڑھا شخص تھا جو اپنی عمر سے بھی زیادہ ضعیف دکھتا تھا ۔۔۔ سر کے بال اور داڑھی میں بس کہیں کہیں سیاہ بال موجود تھے ۔۔۔ آنکھوں پر چشمہ ٹکا تھا ۔۔۔ ڈھیلا سا کرتا اور شلوار پہن رکھا تھا ۔۔۔
بابا ۔۔۔وہ آج ہاتھ مشین میں آ گیا ۔۔۔۔۔۔۔ حسنیٰ نے مدھم سی آواز میں کہا اور ان کے اطراف سے ہوتی ہوٸ کمرے میں داخل ہوٸ تھی اور وہ اب بھی وہیں پریشان حال سے کھڑے تھے۔۔۔
مونال کے سنان گوشے سے جس دن کود کر وہ اپنی جان دینے والی تھی اس دن بابا نے ہی اسے بچایا تھا ۔۔۔ اس کا بازو پکڑ کر وہ کھینچتے ہوۓ اسے ایک طرف لے گۓ تھے اور پھر اس کے چہرے پر ایک زور کا تھپڑ لگایا تھا۔۔۔ حسنیٰ کو وہ اس دن زبردستی اپنے اس چھوٹے سے گھر میں لے آۓ تھے وہ یہاں تنہا رہتے تھے۔۔۔۔ حسنیٰ اس رات بے حال تھی پھر وہ کتنے دن بخار میں تپتی رہی اور بابا نے اس کی تیماداری میں کوٸ کسر نہ چھوڑی تھی ان کی شخصیت ایسی تھی کہ حسنیٰ ان سے کچھ بھی نہیں چھپا سکی تھی ۔۔۔ اور پھر انھوں نے حسنیٰ
18
کو زندگی میں واپس لانے کے لیے چھ ماہ لگا دیے تھے ۔۔۔ وہ ایک چھوٹی سی ملازمت کرتے تھے .۔۔۔ حسنیٰ کو ان کے بارے میں صرف یہ پتہ تھا وہ عمر قید کے بعد جیل سے کچھ عرصہ پہلے ہی رہا ہو کر آۓ ہیں ۔۔۔ بقول ان کے یہاں ان کا کوٸ نہیں ہے اب وہ اپنے ماں باپ کے اکلوتے بیٹے تھے وہ کسی جھوٹے قتل کیس میں پھنس گۓ تھے اور جوانی پوری جیل میں ہی بسر کر دی تھی۔۔۔۔
دکھاٶ مجھے ۔۔۔۔ کیسے آیا ۔۔۔ یہ ۔۔۔۔۔۔۔۔ بابا نے قریب ہو کر اس کا ہاتھ تھاما تھا۔۔۔
یہ تین مرلے کا چھوٹا سا گھر تھا ۔۔۔ جس کی حالت بھی کوٸ اچھی نہیں تھی ۔۔۔ بابا بمشکل اس گھر کا کرایہ ادا کرتے تھے ۔۔ لیکن حسنیٰ کو اب یہ گھر اور بابا کی شفقت جنت لگنے لگی تھی ۔۔۔ چھ ماہ کے عرصے میں اس نے بابا سے زندگی کے وہ سبق پڑھے تھے جو اسے نے اپنی زندگی میں کبھی نہیں پڑھے تھے۔۔۔ اسے باہر نکلتے ڈر لگتا تھا ۔۔۔ با با لاہور میں رہتے تھے اور اس دن وہ اسلام آباد تبلیغ کے سلسلے میں کسی گروہ کے ساتھ گۓ تھے اور مونال کے سنسان گوشے میں وہ بھی اپنی زندگی کے پرانے باب ہی کھولے بیٹھے تھے جب انھہیں حسنیٰ وہاں نظر آٸ تھی ۔۔۔ حسنیٰ کے پاس نہ تو کوٸ ڈاکیومنٹس تھے نہ کچھ اور بہت مشکل سے واصف ٹیکسٹاٸل میں اسے سفارش پر ایک ورکر کی ملازمت ملی تھی اور ایسا کرنا ضروری بھی بہت تھا کیونکہ اب وہ بابا پر بوجھ بنتی جا رہی تھی ۔۔۔ انھوں نے تو کبھی نہیں کہا تھا لیکن اسے خود اب بری طرح یہ محسوس ہونے لگا تھا ۔۔ جدید فیشن سے لیس رہنے والی حسنیٰ کو اب اس سیاہ گاٶن میں بھی اپنا آپ برہنہ ہی لگتا تھا ۔۔۔
بابا پریشان نہ ہوں اب ٹھیک ہے ۔۔۔ حسنیٰ نے پھیکی سی مسکراہٹ چہرے پر سجا کر کہا ۔۔
لیکن یہ سب ۔۔۔۔ دھیان سے کام کیا کرو بیٹی ۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ اب گلاس میں پانی ڈالے اس کی طرف بڑھا رہے تھے ۔۔۔
کیسا عجیب سا رشتہ تھا اس کا بابا کے ساتھ ۔۔۔ وہ بھی بے آسرا تھے اور حسنیٰ کا بھی اب دنیا میں کوٸ اور ٹھکانا نہیں تھا۔۔۔
بابا نعمان۔۔۔۔۔۔۔۔ پانی کا ایک سپ لے کر حسنیٰ نے نظریں جھکا کر کہا۔۔۔
نعمان ۔۔۔۔ کہاں ملا تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔ بابا نے چونک کر اسے دیکھا۔۔۔
وہ بابا کو اپنی پوری داستان سنا چکی تھی۔۔۔ ان کی شخصیت ہی ایسی تھی وہ ان سے کچھ بھی نہیں چھپا سکی تھی ۔۔۔
اسی کمپنی کا ایم ڈی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ حسنیٰ کی نظریں ا ب بھی جھکی ہوٸ تھیں
حسنیٰ جاٶ ۔۔۔ جاٶ۔۔۔۔۔۔ اس کے پاس۔۔ بابا پھر سے اسے وہی کہہ رہے تھے جو وہ اسے پہلے ہر بار کہتے تھے
بابا ۔۔۔ وہ مجھے چھوڑ دے گا ۔۔۔ طلاق دے دے گا ۔۔۔۔ حسنیٰ کی آنکھوں میں پھر سے نمی آ گٸ تھی ۔۔۔
کچھ مت بتاٶ اسے ۔۔۔۔ ۔۔۔ بابا نے اس کے ہاتھ سے گلاس پکڑ کر پاس پڑے میز پر رکھا تھا۔۔۔
اسے نہیں بتاتی لیکن میرا اپنا ضمیر ۔۔۔ مجھے کیسے سکون آۓ گا بابا۔۔۔ میں نے بہت سے لوگوں کو دھوکا دیا ہے پر اسے نہیں ۔۔۔۔ اب نہیں۔۔۔ حسنیٰ پھر سے رو دی تھی
لیکن مجھے لگتا ہے تمہیں جانا چاہیے اس کے پاس۔۔۔ بابا نے پھر سے اس کے سر پر ہاتھ رکھ کر شفقت سے کہا تھا۔۔۔
بابا۔۔۔۔۔ پلیز۔۔۔۔ حسنیٰ نے بے چارگی سے کہا۔۔۔
اچھا ۔۔۔۔ کھانا کھاٶ گی لگاٶں تمھارے لیے ۔۔۔۔ وہ فوراً بات بدل گۓ تھے کیونکہ ہر دفعہ جب وہ اسے نعمان کے پاس جانے کے لیے کہتے تھے وہ ان کو دھمکی دیتی تھی وہ ان کو بھی چھوڑ کر چلی جاۓ گی ۔۔۔
نہیں پہلے نماز پڑھوں گی اس کے بعد۔۔۔دھیرے سے کہتی ہوٸ وہ کمرے کی طرف بڑھ گٸ تھی ۔۔۔
********
سن میں آج گھر نہیں آٶں گا ۔۔ ۔۔۔۔۔۔ روبن نے فون کان کو لگا کر سرگوشی کے انداز میں کہا اور ایک نظر سامنے تیز تیز قدم اٹھاتی چادر میں لپٹی لڑکی کی طرف ڈالی
کہاں ہے تو ۔۔۔ سب خیریت ہے نہ۔۔۔۔۔۔۔ منب نے پریشان سے لہجے میں پوچھا
اس کو لاہور میں رہتے پانچ ماہ ہونے کو آۓ تھے ۔۔۔ اب وہ رات کو اکثر باہر نکل جاتا تھا اب بھی رات کے تین بج رہے تھے جب وہ سگریٹ کے کش لگاتا ہوا واپس گھر کی طرف جاتے جاتے اس گھر کے دروازے کو تکنے لگا تھا جہاں وہ حسینہ روز شام کو چھت پر جلوہ گر ہوتی تھی ۔۔ گھر برقی قمقوں سے سجا ہوا تھا ۔۔۔ پتہ نہیں کیا وجہ تھی وہ ایک اندھیرے سے گوشے میں دیوار سے ٹیک لگا کر کھڑا ہو چکا تھا اور گھر کی طرف دیکھ رہا تھا یقینً اسی کی شادی ہو گی ۔۔۔ دل عجیب سی گھٹن کا شکار ہوا تھا ۔۔۔ کیا تھا یہ ۔۔۔ وہ اس لڑکی کو روز شام کو اتنا دیکھتا تھا کہ اب خوابوں میں بھی وہ آنے لگی تھی ۔۔۔ خواب بھی عجیب ہی تھے کبھی وہ خواب میں اس کے گلے لگی ہوتی تو کبھی وہ اس کے پیچھے بھاگ رہا ہوتا تھا ۔۔۔
اچانک دھیرے سے گھر کا دروازہ کھلا تھا۔۔۔ اور کوٸ دبے قدموں گھر سے باہر نکلا تھا ۔۔ نکلنے والے کا انداز اتنا پرسرار تھا کہ روبن نے فوراً سگریٹ پھینک کر اس پر پاٶں ر کھا تھا ۔۔۔
جیسے ہی وہ گھر کے دروزے سے تھوڑی سی آگے ہوٸ تو چادر چہرے سے سرک گٸ تھی ۔۔۔
اففف۔۔۔۔ یہ وہی چہرہ تھا ۔۔ جو اس کی روح کی غزا بن چکا تھا ۔۔۔ وہ چادر میں لپٹی بار بار چور نظروں سے پیچھےمڑ کر دیکھ رہی تھی ۔۔۔ اور چہرے کو ڈھک رہی تھی
اوہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ بھاگ رہی تھی گھر سے۔۔۔۔ روبن کے ذہن میں اس کا روتا بلکتا چہرہ گھوم گیا تھا ۔۔۔ اور جسم سن ہوا تھا وہ گھر سے بھاگ رہی تھی اتنی رات کو اکیلی کچھ ہو نہ جاۓ اس کے ساتھ دل نے خطرے سے آگاہ کیا تھا ۔۔۔ اور وہ جو اس کی کچھ نہیں لگتی تھی اس لمحے اسے اپنی سب کچھ لگی تھی ۔۔۔۔
اس نے فوراً منب کو فون ملا کر اپنے نا آنے کی اطلاع دی تھی اور خود بے ساختہ اس سے کچھ فاصلے پر اس کے پیچھے ہو لیا تھا ۔۔۔
ہاں سب ٹھیک ہے ۔۔۔۔ بعد میں بات کرتا ہوں ۔۔۔۔ منب کی بات کا عجلت میں جواب دے کر وہ فون بند کر چکا تھا اور اب وہ حسنیٰ کے پیچھے تھا ۔۔۔ جو تیز تیز مین سڑک کی طرف رواں دواں تھی ۔۔۔۔
***********
کیسا ہے آپ کا زخم اب ۔۔۔ حسنی کے عقب سے بھاری مردانہ آواز ابھری تھی ۔۔۔
وہ جھٹکا سا کھا گٸ تھی ۔۔۔ نعمان بلکل اس کے پیچھے کھڑا تھا۔۔۔۔ وہ سٹاک فاٸلز چیک کرنے آج پھر سے مینول ڈٸپارٹمنٹ کے پاس سے گزر رہا تھا جب اچانک دو دن پہلے کا واقع یاد آنے پر وہ ورکنگ ھال میں آ کر حسنی کے سر پر کھڑا تھا۔۔۔
حسنیٰ کا دل حلق میں آ گیا تھا ۔۔۔ نظریں فوراً جھکا لی اور ہاتھوں کو چھپایا۔۔۔۔ افف یہ کیوں آ گیا پھر سے ۔۔۔۔ نہیں میں بولوں گی تو۔۔۔۔ اففف کیا کروں اب وہ بری طرح پھنس گٸ تھی ۔۔۔
سر آج تو بہت بہتر ہے پر بہت مشکل سے کام کر رہی ہے یہ ساتھ بیٹھی فرحیہ نے جب حسنیٰ کو خاموش دیکھا تو فوراً اس کی وکالت کی تھی ۔۔۔
حسنیٰ نے سکھ کا سانس لیا تھا۔۔۔۔
آپ کو لیو دے رہا ہوں ون ویک کی گھر جاٸیں ریسٹ کریں ۔۔۔ نعمان کی آواز پھر سے اس کے سر پر ابھری تھی ۔۔۔
حسنیٰ نے سر دھیرے سے ہاں میں ہلایا تھا۔۔۔
بہت بہت شکریہ سر آپ بہت اچھے ہیں ۔۔۔۔ فرحیہ نے پھر سے دانت نکال کر کہا ۔۔۔
آپ کتنا لیتی ہیں ان سے ۔۔۔ نعمان نے بھنویں اچکا کر فرحیہ کی طرف دیکھا ۔۔۔
جی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ فرحیہ نے ناسمجھی کے انداز میں نعمان کی طرف دیکھا۔۔۔
مطلب ان کی جگہ بولنے کا کام آپ کرتی ہیں نہ تو کتنا لیتی ہیں ان سے ۔۔۔ نعمان نے طنز کے لہجے میں کہا۔۔۔۔

 

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: