Ishq Aisa Ho To Novel by Huma Waqas – Episode 3

0
عشق ایسا ہو تو از ہما وقاص – قسط نمبر 3

–**–**–

ماہین رضا ولد رضا اشہد آپکو زیغم حسن ولد حسن احمد سے نکاح قبول ہے۔۔۔ یہ الفاظ اب تیسری دفعہ اسکے کانوں میں پڑے تھے۔۔ وہ ساکت ہاسپٹل کے بینچ نما بیڈ پر دلہن بنی بیٹھی تھی۔۔ایک مجبور۔۔ باپ کی محبت کے آگے زیر دلہن۔۔۔جسکی زندگی پل بھر میں کیا سے کیا ہونے جا رہی تھی۔۔
وہ جس نے کبھی بھول کے بھی یہ سوچنا گوارا نہیں کیا تھا۔۔ آج وہ زیغم حسن کی زندگی کا اہم حصہ بننے جا رہی تھی۔۔۔
ماہا بیٹا۔۔۔ رضا کی کانپتی ہوٸی آواز سے ایک دم وہ چونکی۔۔۔ ان کی طرف دیکھا اور انکی آنکھوں کی بے بسی۔۔۔ بہت کچھ کہہ رہی تھی۔۔۔ ایک ایسا باپ جس کی صرف ایک اولاد ۔۔وہ بھی بیٹی۔۔۔جس کی شادی کے دن اسکی بارات نا آٸی ہو۔۔۔ جس کو اپنی زندگی کا کوٸی بھروسہ نا ہو۔۔۔
قبول ہے۔۔ اسکے گلے سے گھٹی سی آواز نکلی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بمب ہی تو تھا جو زارا نے اسکے سر پر پھوڑا تھا۔۔۔ وہ حیران ہی تو تھا۔۔۔
وہ کیسے مان گٸی ہے یہ بات۔۔۔
نکاح نامے پہ دستخط کرتے وقت تک بس ایک ہی بات اسے پریشان کر رہی تھی۔۔۔
تو ماہین رضا ۔۔۔ قدرت کو تمھاری ھار ہی منظور تھی۔۔۔
نکاح کی دعا کے بعد اس نے اپنے منہ پر ہاتھ پھیرا۔۔۔۔
واٸیٹ قمیض شلوار۔۔ میں بکھرے سے بال لیے وہ فتح کے گھوڑے پرسوار وہ شھزادہ تھا۔۔۔ جو بنا چاہے ہر بازی جیت گیا تھا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رضا اب واپس گھر آ گۓ تھے۔۔۔ ماہا انکے سینے سے لگی مسلسل رٶے جا رہی تھی۔۔۔
سب لوگ موجود تھے۔۔۔ٕ
رضااشہد تین دن بعد ڈسچادج ھو کر گھر لوٹے تھے۔۔۔
زیغم بھی ان کے ساتھ آج ہی گھر آیا تھا۔۔
زیغم نے کن اکھیوں سے اس کی طرف دیکھا۔۔ رو رو کے آنکھیں سوجا رکھی تھیں۔ پنک ہونٹ اتنے خشک تھے ۔۔وہ بے ساختہ اس ظالم حسینہ کو دیکھنے میں اتنا گم تھا ۔۔ کہ احساس ہی نہیں ہوا اسد اسکو نوٹ کر رہا تھا۔۔۔۔
اسد نے زور سے اسکے کندھے پہ اپنا کندھا مارا۔۔
اس نے چونک کر اس کی طرف دیکھا ۔۔۔اسد نے آنکھ ماری۔۔
بیغیرت۔۔۔۔ زیغم نے دانت پیستے ھوۓ اسے کہا۔۔۔
زیغم بیٹا ادھر آٶ۔۔۔ رضا نے ۔۔ زیغم کو اپنے پاس بلایا۔۔۔
وہ انکی بغل میں بیٹھی تھی ۔۔وہ دوسری طرف سے ہوتا ہوا رضا کے پاس بیٹھ گیا۔۔۔
رضا نے زیغم کا ھاتھ اپنے ھاتھ میں لیا مسکرا کے دیکھا۔۔
اس نے ان کی مسکراہٹ کا جواب اپنی مسکراہٹ سے دیا۔۔۔
انھوں نے اسکا ھاتھ اچانک پکڑ کر ماہا کے ہاتھ میں دے دیا۔۔دونوں کو جیسے کرنٹ ہی تو لگا تھا۔۔۔
انھوں نے زیغم کی ھتیلی پہ ماہاکا ھاتھ رکھ کر زیغم کی ھتیلی کو بند کر دیا۔۔۔
ماہا کا چہرہ غصے میں سرخ ہو گیا۔۔۔
اس نے فورا اپنا ہاتھ پیچھے کھینچنا چاہا۔۔۔
پر یہ کیا زیغم نے گرفت مظبوط کر لی تھی۔۔۔
رضا انکو نصیحت کرنے میں مصروف تھے۔۔ اور سارے انکی طرف متوجہ تھے۔۔ ماہا نے نگواری سے زیغم کی طرف دیکھا۔۔
وہ پہلے سے ہی اس کا ہاتھ چھڑانے کی کوشش کو ناکام کرتے ھوۓ اسی کی طرف دیکھ رھا تھا۔۔۔ گہری آنکھوں میں کیا تھا۔۔۔ بدلہ۔۔۔۔۔ اسکا دل دھک سا رہ گیا۔۔۔۔۔۔ کیا اب وہ اپنی ہر تزلیل کا بدلہ لے گا مجھ سے ۔۔۔۔ اف خدایا۔۔۔۔ یہ کیا ہو گیا۔۔۔۔
کیا کچھ نہیں تھا اسکی آنکھوں میں۔۔۔
ماہین رضا اب یہ ھاتھ قسمت نے میرے ھاتھ میں دیا ھے ۔۔۔ ایسے تو نہیں چھوڑوں گا۔۔۔ اسکا نرم گداز سا ھاتھ اسکے مظبوط ھاتھ میں گم سا ہی تو ہو گیا تھا۔۔۔
اسکی گرفت اتنی مظبوط ہوتی جا رہی تھی کہ تکلیف سے ماہا کی آنکھوں میں پانی آ گیا۔۔۔ وہ ایک دم سے رونے لگی۔۔۔ زیغم کے ھاتھ کی گرفت ایک دم ختم ہوٸی۔۔۔
سب لوگ اس کی طرف متوجہ ھو گۓ۔۔۔ وہ ہچکی کے ساتھ روتی ہوٸی رضا کے سینے سے لگ گٸی۔۔۔۔
ایک دم سے خاموشی چھا گٸی سب جانتے تھے۔۔۔۔
وہ ایسا نہیں چاہتی تھی۔۔۔۔۔ لیکن سب یہ مانتے تھے کہ وہ بیوقوفی کے سوا کچھ نہیں کرتی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
بابا میں اسکے ساتھ ہر گز دبٸی نہیں جاٶں گی۔۔۔۔وہ تو اس دن سے اپنے کمرے سے باہر نہیں نکلی تھی اور بابا چاھتے تھے کہ وہ زیغم کے ساتھ دبٸی چلی جاۓ۔۔۔۔۔ اسکا سر پھٹ رھا تھا۔۔۔
زیغم کی سیٹ فاٸنل ہو گٸی تھی اسکی دو دن بعد سے جواینگ تھی۔۔۔ اور اسے اس بات کی خبر اب ہو رہی تھی کہ اسکی بھی سیٹ ھو چکی ہے اور وہ ساتھ جا رہی اسکے۔۔۔۔
وہ جسے اپنے گھر میں وہ برداشت نہیں کرتی تھی اب اس کے ساتھ اسکے سوا اور کوٸی نہیں ہو گا۔۔۔۔۔
ماہا تمہیں پتہ ہے نہ تمھارے بابا کو کوٸی سٹریس نہیں دے سکتے۔۔۔ وہ پیر پٹختی۔۔ رضا کے کمرے سے نکلی تھی جب صبا اس کے پیچھے آ کر اس کے کمرے میں اسے سرزنش کرنے لگی۔۔۔۔
اس نے بیچارگی سے اپنی ماں کی طرف دیکھا۔۔۔ انھوں نے فورا اسے گلے سے لگا لیا۔۔ ان کی آواز بھر گٸی تھی۔۔۔
ماہا زیغم بہت اچھا نیک بچہ ہے۔۔۔۔صبا کی آواز زہر کی طرح اسکے کانوں میں پڑ رہی تھی۔۔۔
یہی تو وہ الفاظ تھے جن سے اسے چڑ تھی ۔۔۔زیغم وہ۔۔ زیغم یہ۔۔۔۔
اس نے نگواری سے خود کو صبا سے الگ کیا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایرپوٹ پہ وہ بچوں کی طرح رو رہی تھی۔۔۔سب ہی تو آۓ تھے۔۔۔۔ وہ اسکے برابر کھڑا یوں مسکرا رہا تھا جیسے کوٸی جنگ فتح کی ہو۔۔۔
ماہین رضا اب رونے کی باری تمہاری ہے۔۔۔ اسے وہ سارے لمحے رات بھر یاد آۓ۔۔۔ اس کی اکڑ۔۔ غرور۔۔۔اور اب یہ ۔۔۔ جس دن سے انکا نکاح ھوا تھا تب سے وہ اسکے سامنے نہیں آٸی تھی۔۔۔ اور آج ۔۔۔ اسکیے پہلو میں وہ لڑکی بیٹھی تھی جس نے اسے اتنی تکلیفں دی۔۔۔اس کی پل پل تزلیل کی۔۔۔ آج ماہین زیغم بن کر اسکے ساتھ بیٹھی تھی۔۔۔۔
دونوں کے درمیان خاموشی تھی۔۔۔ پر ایک کے چہرے پر ناگواری اور بیزار پن تھا۔۔۔ جب کے دوسرے کے چہرے پر برسوں بعد سکون تھا۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: