Ishq Aisa Ho To Novel by Huma Waqas – Episode 6

0
عشق ایسا ہو تو از ہما وقاص – قسط نمبر 6

–**–**–

گھٹنوں میں منہ دے کر وہ ایسے بیٹھی تھی کہ دل نہیں تھا ۔۔ منہ اوپر اٹھاۓ۔۔۔ماہین رضا سب کچھ تو ہار گٸ اسکے سامنے۔۔۔ اپنا غرور۔۔ اپنی اکڑ۔۔۔پل بھر میں اسکی طاقت کے آگے وہ ڈھیر۔۔ ہو گٸ تھی۔۔۔ کتنا مظبوط تھا وہ۔۔ اسکے نازک بازو اسے دھکیل بھی نہ سکے۔۔۔
آنسو ہار کے تھے یہ تکلیف کے وہ سمجھ نہیں پا رہی تھی۔۔۔اسے لگ رہا تھا۔۔ جیسے۔۔ غرور۔۔ اکڑ کے ساتھ ساتھ اسکی ہڈیاں بھی ٹوٹ گٸ ھوں۔۔۔
وہ آٸینے کے سامنے کھڑی تھی۔۔۔ اف۔۔۔۔ کیسے کلاٸی بازو۔۔ گردن پر نشان پڑ گۓ تھے۔۔۔ وہ پھوٹ پھوٹ کے رو دی۔۔۔ اسے زیغم سے خوف آنے لگا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پتہ نہیں اب تک وہ کتنی سگریٹ پھونک چکا تھا۔۔۔۔ جب وہ گھر سے نکلا تھا تو تین بج رہے تھے رات کے۔۔۔
زیغم حسن یہ تھا تمھارے اندر کا جانور۔۔۔۔ بس یہ تھی برداشت تمھاری مردانگی کی۔۔۔ وہ خود کو کوس رہا تھا۔۔۔۔
دماغ ایسے شل ہوا تھا۔۔۔ کہ اس وقت کچھ سمجھ ہی نہیں آ رہا تھا۔۔۔اسےاب افسوس ہو رہا تھا۔۔۔ اب کیسے سامنا کرے گا وہ ماہا کا۔۔۔۔ سہی ہی تو کہہ رہی تھی وہ ۔۔۔ کتنی گھٹیا حرکت کی تھی اس نے۔۔۔ ماہا کو تو وہ۔۔۔ سنا آیا تھا۔۔۔ کہ یہ حق اسکا۔۔۔ لیکن خود اچھی طرح جانتا تھا کہ یہ حق یوں تو نہیں لیا جاتا۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔
وہ دماغ بھی تو ایسے کردیتی تھی اپنی باتوں سے۔۔ پہلے۔ یہی غصہ چیزوں پر اترتاتھا۔۔۔ اور اب اس پر۔۔۔ کیا کرے غصہ ایسا ہی تھا۔۔۔۔ لیکن بلاوجہ کسی پرنہیں آتا تھا۔۔۔ وہ تو حرکتیں ہی ایسی کر دیتی تھی۔۔۔۔
وہ بوجھل قدموں سے گھرکی طرف واپس جانے لگا۔۔۔ ساری رات اور پھر سارا دن باہر گزار کر اب بس ہو گٸ تھی اسکی۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لاک کھلنے کی آواز پر اسکا دل دھک سے رہ گیا۔۔۔۔ جیسے ہی وہ اندر داخل ہوا۔۔ وہ بھاگ کہ کر کمرے میں گھس گٸی۔۔۔ اور لاک لگا لیا۔۔۔
اسے کیا ہوا۔۔۔ زیغم کو اس کے انداز پر حیرانی ہوٸ۔۔
اگلےہی لمحے اسکے ذہن نے اسے جواب بھی دے دیا۔۔۔۔
اور میرا حق ہےجب میں چاہوں تب تب لوں گا۔۔۔۔۔ اسکے اپنے الفاظ اسکے کانوں میں گونجے تھے۔۔۔ اوہ۔۔۔ تو کیا۔۔ ماہین رضا جس نے ساری عمر اس سے خوف نہیں کھایا اب مجھ سے ڈررہی تھی۔۔۔اچانک اسکے ہونٹ خود ہی مسکرا دیے تھے۔۔
وہ تو یہ سوچ کر آیا تھا۔۔ اب پھر وہ اسے جھنجوڑے گی اسے مارے گی اپنی تزلیل کا بدلہ لے گی۔۔
لیکن یھاں تو الٹا ہی حساب تھا۔۔۔۔۔
اس نے جینز کی پا کٹ سے کمرےکی کیز نکالی اور باہر سے لاک کھول دیا۔۔۔
جیسے ہی وہ کمرے میں داخل ہوا وہ دھک سے رہ گٸی۔۔۔
اس نےاپنے گرد بڑی سی چادر اوڑہ رکھی تھی۔۔ بال بکھرے ہوے تھے۔ ۔۔۔ آنکھیں سوجی ہوٸی تھیں۔۔ ھونٹ سرخ ہو رہے تھے۔۔۔ نا ک بھی رو رو کر سرخ کر رکھا تھا۔۔۔۔
زیغم کا دل چاہا وہ ایک دم سے سینے سے لگا لے اسکے سارے زخموں پر مرہم رکھ دے جو اسکی وجہ سے تھے۔۔۔۔ وہ خود اپنے اس دل کے خیال پرچونک گیا۔۔۔۔
ماہا نے ایک نظر خوف سے اس پر ڈالی۔۔۔ اور بھاگ کر واش روم میں بند ہو گٸی تھی۔۔۔
وہ ماتھے پر ھاتھ رکھے۔۔۔ بیڈ پر بیٹھ گیا ۔۔۔
اب اسکو کون سمجھاۓ میں کچھ نہیں کروں گا اب اسکے ساتھ۔۔۔بس وہ ایک ایسا لمحہ تھا جب نہیں رہا مجھے خود پر کنٹرول۔۔۔۔
وہ آدھا بیڈ پر لیٹا تھا۔۔ لیکن اسکی ٹانگیں نیچے لٹک رہی تھیں۔۔
پتہ نہیں کب اسکی آنکھ لگی اور وہ سو گیا تھا۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
واش روم میں اتنی گھٹن اور گرمی تھی۔۔ کل رات سے اس نے کچھ کھایا بھی نہیں تھا۔۔۔ چکر آ رہے تھے اس گرمی میں۔۔۔
پر وہ کیا کرے۔۔۔ باہر وہ وحشی بیٹھا تھا۔۔۔جو زبردستی کو اپنا حق سمجھتا تھا۔۔۔ جاہل جانور۔۔۔ اسکے آنسو نکل رہے تھے۔۔۔
اور سب کیسے اسےفرشتہ مانتے تھے۔۔۔ زیغم یہ زیغم وہ۔۔۔
کیا کروں کس سے مدد مانگوں اچانک دل خراب ھونے لگا تھا اسکا۔۔۔
وہ بھاگ کر فلش کی طرف گٸی۔۔۔۔
پاوں اچانک پھسلا تھا۔۔۔ وہ نیچے گری تھی شاٸید پاٶں پر موچ تھی۔۔۔ قے سے اسکی شرٹ خراب ہو گٸی تھی۔۔۔
اس نے اٹھنے کی کوشش کی۔۔ پر پاٶں میں بہت تکلیف تھی۔
اس نے زبردستی خود کو اٹھانے کی کوشش کی۔۔۔۔۔ پر ناکام رہی ۔۔۔ قے پھر سے آ رہی تھی۔۔۔ اسکے کپڑے ھاتھ خراب ہو گۓ تھے۔۔۔ اچانک سب گھومنے لگا تھا۔۔۔
آنکھوں کے آگے اندھیرا آیا۔۔ اور پھر اسے ہوش نہیں رہا۔۔۔
وہ واش روم کے فرش پر ڈھیر پڑی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسکی آنکھ جب کھلی تو صبح کے سات بج رہے تھے۔۔۔ کل کی افس سے لیو لے چکا تھا اور آج ویکنڈ تھا۔۔۔۔
حواس تھوڑے بحال ہوۓ تو اچانک ماہا کا خیال آیا۔۔۔
کیا وہ ابھی بھی واش روم میں ہے۔۔۔ پاگل لڑکی۔۔۔۔ وہ سر جھٹک کےاٹھا تھا۔۔۔۔
وہ کتنی دیر سے دروازہ بجا رہا تھا۔۔۔کوٸی جواب نہیں اسکی جان پر بن گٸ۔۔۔
اس نے اپنے کندھے کو زور زور سے دروازے پر مارنا شروع کیا پھر۔۔ ٹانگیں ماری۔۔ دروازے کا لاک ٹوٹا ۔۔۔
اندر وہ بے حس ٶ حرکت پڑی ہوٸی تھی۔۔۔
اسکے پاٶں کے نیچے سے زمین نکل گٸی تھی۔۔۔
وہ تیزی سے آگے بڑھا۔۔۔ فورا اسکو اٹھایا۔۔۔ وہ بے حس ٶ حرکت۔۔۔ اسکےباہوں میں ڈھلک گٸی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
درد تھا۔۔۔ ماہا کی آنکھ کھلی۔۔۔
وہ بیڈ پر لیٹی تھی۔۔۔ داٸیں ہاتھ پر ڈرپ لگی تھی۔۔۔۔ زیغم سامنے صوفے پر۔۔۔ سر نیچے جھکاۓ بیٹھا تھا۔
۔ایک آدمی کھڑا اسکی ڈرپ چیک کر رہا تھا۔۔۔ حلیے سے ڈاکٹر لگ رہا تھا۔۔۔۔
سارا منظر اسکےذہن میں گھوم گیا۔۔۔ کہ کیا کچھ ہوا تھا حبس زدہ واش روم میں ۔۔۔
اچانک اسکا دماغ ٹھنکا۔۔ اسکی شرٹ چینج تھی۔۔۔ ھاتھ صاف تھے۔۔
تو کیا۔۔۔ زیغم نے یہ سب کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماہا کی آنکھ کھلی دیکھ کر وہ تیزی سے کاوچ سے اٹھ کر اسکی طرف بڑھا۔۔۔
اب کسی طبعیت ہے۔۔۔وہ نرم لحجے میں پوچھ رہا تھا۔۔۔
ماہا نے جواب دیے بنا رخ دوسری طرف موڑ لیا۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: