Ishq Aisa Ho To Novel by Huma Waqas – Episode 7

0
عشق ایسا ہو تو از ہما وقاص – قسط نمبر 7

–**–**–

ماہا کو بری طرح بریک ڈاٶن ھوا تھا۔۔۔ ویسے بہت مظبوط بننے والی ماہا۔۔ نازک ہی تھی۔۔ زیغم کو۔۔۔ رہ رہ کر خود پر غصہ آ رہا تھا۔۔۔
آپ ان کو۔۔ کچھ نرم غزا کھلاٸیں۔۔ ڈاکٹر نے باہر نکلتے ہوۓ زیغم کو چند تاکید کی۔۔۔
دیکھیں ابھی۔۔ آپ کی واٸف کو اٹھ کر بیٹھنے پربھی چکر آٸیں گے۔۔ ان کو وٶمٹ کی وجہ سے ویکنس ہوٸی ہے۔۔۔
اور ابھی ہاٸی ڈوز۔۔۔ دی ہے۔۔۔ ان کا خیال رکھیں۔۔۔
وہ کمرے میں واپس آیا تو اس کے ہاتھ میں سوپ کا باٶل تھا۔۔۔
ماہا ۔۔۔ ماہا۔۔۔ نرم لحجے میں پکارتا ہوا وہ بیڈ کے قریب صوفے پر بیٹھ گیا۔۔۔
ماہا نے ناگواری سے آنکھیں کھولی۔۔۔ اب یہ کیا ڈرامے کر رہا ہے یہ اسکی نفرت کا کیا انداز ہے۔۔۔ اسکا دل نہیں کر رہا تھا۔۔ وہ اسکی طرف دیکھے بھی۔۔۔۔
ماہا۔۔ اٹھ کے بیٹھو۔۔۔ اس نے سوپ ساٸیڈ ٹیبل پر رکھ دیا۔۔۔ اور اسکی کمر کے پیچھے تکیے لگانےلگا۔۔۔
ماہا کا دل تو کر رہا تھا۔۔ اس کی بات تک نہ سنے پر اسکے غصے سے اب خوف آنے لگا تھا۔۔
اور بھوک بھی لگی تھی۔۔۔ وہ اسکے سہارے سے اٹھ بیٹھی۔۔۔
میں خود کھا لوں گی۔۔ نقاہت بھری آواز تھی۔۔۔
اس نے باٶل پکڑنے کے لیے ہاتھ بڑھایا۔۔۔
اسکے ھاتھ کانپ رہے تھے۔۔۔
میں کھلاتا ہوں۔۔۔ اس نے ماہا کے ہاتھ نیچے کیے۔۔۔
میں کھا لوں گی۔۔۔ ماہا کے چہرے پہ ناگواری تھی۔۔۔
میں کھلا رہا ہوں نہ۔۔۔ زیغم نے تھوڑے سخت لحجے میں کہا۔۔۔
وہ بچوں کی طرح سہم گٸی اوپر سے بھوک اتنی لگی ہوٸی تھی اسے۔۔۔۔
وہ چپ چاپ سے سوپ پینے لگی۔۔۔ زیغم کی عجیب سی نظریں اسے پریشان کر رہی تھیں۔۔۔ اوپر سے شرٹ چینج ھونے والی بات سے اسے گھبراہٹ ہو رہی تھی۔۔۔ وہ بار بار کبھی شرٹ درست کر رہی تھی توکبھی بازو۔۔۔ اس کی ہمت نہیں ہو رہی تھی۔۔ زیغم کو نظراٹھا کر دیکھے۔۔۔۔
کیا مصیبت ہے۔۔ سوپ ختم ہونے پر نہیں آ رہا تھا۔۔۔ وہ دو دفعہ زیغم۔۔۔ کو ھاتھ کے اشارے سے منع کر چکی تھی۔۔ لیکن وہ بضد تھا۔۔ کہ پورا ختم کرو۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک دم دل خراب ھونا شروع ہوا۔۔ تھا۔۔ وہ اٹھنے کی کوشش کرنے لگی۔۔ لیکن سر گھوم رہا تھا۔۔ زیغم فورا اٹھ کر اسکے قریب آیا۔۔۔۔
قے۔۔ ۔ بڑی مشکل سے۔۔ ماہا سے صرف اتنا ہی کہا گیا تھا۔۔۔
بڑی عجلت میں زیغم نے اسے کمر سے سہارا دے کر بٹھایا۔۔۔
ساری قے زیغم کے ہاتھ کو اور پینٹ کو گندہ کر گٸی تھی۔۔۔
اف۔۔ وہ ایک دم سے شرمندہ ہوٸی۔۔۔
کوٸی بات نہیں ۔۔۔ زیغم نے نرمی سے کہا۔۔۔ اور دوسرے ہاتھ سے اسکی کمر کو سہلایا۔۔۔۔
وہ اپنے ہاتھ دھو کر آیا۔۔ اب ماہا کا منہ صاف کر رہا تھا۔۔۔ اسکی پینٹ ابھی بھی گندی تھی۔۔۔
وہ حیرانگی سے اسکا چہرہ دیکھ رہی تھی۔۔ کوٸی ناگواریت نہیں تھی۔۔۔ کوٸی گھن نہیں تھی اسکے چہرے پر۔۔
اب وہ واش روم میں چلا گیا تھا۔۔
میں اسکی جگہ ہوتی تو اسے مرنے کے لیے چھوڑ دیتی وہ کتنا خیال کر رہا تھا۔۔ لیکن کیوں۔۔۔ وہ الجھ گٸی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ آج تین دن بعد افس کے لیے ریڈی ہو رہا تھا ساتھ ساتھ اسے ہدایت کر رہا تھا۔۔۔
بیڈ سے زیادہ مت اٹھنا… ناشتہ بنا ہوا ہے۔۔ ریسٹ کرنا زیادہ۔۔۔
وہ خاموش تھی۔۔۔
اسکا یہ نیا ہی روپ تھا۔۔۔۔ جس سے وہ انجان تھی۔۔۔۔ کیا اسے اس سے نفرت نہیں تھی۔۔۔ یا یہ سب صرف وہ ڈر کر رہا تھا۔۔۔۔
یا پھر ترس کھا رہا تھا۔۔۔ کیا تھا سب۔۔۔۔ وہ اس دن سے الجھن کا شکار تھی۔۔۔
آج طبعیت کافی بہترتھی اسکی۔۔۔ ہکا ہلکا محسوس کر رہی تھی۔۔۔۔
لیکن وہ ریسٹ کرتی رہی۔۔۔…
اب اسی طرح کی روٹین چل نکلی تھی دونوں میں بس خاموشی کا راج تھا اب وہ بد تمیزی نہیں کرتی تھی ۔۔۔
زیغم بڑے پیار سے بات کرتا ۔۔۔ لیکن وہ ابھی بھی الجھن کا شکار تھی اس کی بات کا کم ہی جواب دیتی تھی۔۔۔
طبیعت بھی کچھ بوجھل سی رہنے لگی تھی۔۔۔
وہ چپ چپ رہنے لگی تھی الجھنے لگی تھی ۔۔ پورا ایک ماہ ہو گیا تھا اسی طرح۔۔۔ اب وہ خاموشی سے ایک طرف لیٹ جاتی تھی۔۔۔ زیغم رات کو دیر سے آتا اور سو جاتا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ھمیں پاکستان جانا ہے ۔۔۔ زیغم نے اچانک افس سے جلدی آ کراسے پیکنگ کرنے کا کہا۔۔۔ وہ پریشان ھوگٸی تھی۔۔۔
کچھ نہیں بس ویسے ہی۔۔ چھٹیاں ملی ہیں مجھے وہ اس سے نظریں چرا کر بات کر رہا تھا۔۔۔
کیسے کہہ دیتا اس سے کہ اس کے جان سے پیارے بابا اب اس دنیا میں نہیں ہیں۔۔۔۔
وہ ابھی کچھ دن پہلے تو بہتر ہوٸی تھی۔۔۔۔۔
ڈاکٹر نے اسے سٹریس دینے سے منع کیا تھا۔۔۔۔
وہ تو خود اپنے آنسو بڑی مشکل سے چھپا رہا تھا اس سے۔۔۔۔
ماہا کو وہ الجھا سا لگا تھا۔۔۔۔ لیکن وہ اس سے ابھی اتنی بے تکلف نہیں ہوٸ تھی۔۔۔ کہ اس سے اس کی پریشانی کا سبب پوچھتی۔۔۔۔
وہ جلدی سے اپنی پیکنگ کرنے میں مصروف ہو گٸی۔۔۔۔۔کیو نکہ انھیں فوری نکلنا تھا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دھماکہ ہی تو تھا اس کے لیے۔۔۔۔۔۔
اسکے پیارے بابا نہیں رہے تھے۔۔۔ وہ لپٹ لپٹ کے رو رہی تھی۔۔۔۔
اس کے بابا اسکی جان تھے۔۔۔۔
جنازہ اٹھانے کے لیے آدمی آٸے اسکو کسی نے پکڑ کر کھڑا کیا تھا۔۔۔۔۔
اچانک اس کی آنکھوں کے آگے اندھیرا چھا گیا تھا۔۔۔ وہ لو گوں کے بیچ کھڑی دھڑام سے گری تھی۔۔۔۔۔
ایک دم شور اٹھا ماہا کو سنبھالو۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ گر گٸی ہے۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ڈاکٹر ۔۔۔۔ زیغم تیزی سے آگے بڑھا تھا۔۔۔۔
باقی سب گھر کی پریشانی میں تھے اور وہ اکیلا ھاسپٹل میں ماہا کے ساتھ تھا۔۔۔
آپکی واٸف ہیں ۔۔۔ ڈاکٹر نے سوالیہ نظروں سے پوچھا۔۔۔
جی ڈاکٹر شی از ماٸی واٸف۔۔۔۔ کیسی ھے وہ۔۔۔ پریشانی اس کے چہرے پرواضح تھی۔۔۔
وہ ٹھیک ہیں پر ابھی بےھوش ہیں۔۔۔۔ پر سوری۔۔۔ سر آپ کی واٸف کا مسکیرج ھوا ہے ۔۔۔ شی واز اکسپکٹنگ۔۔۔۔ بٹ بہت ارلی پریگینینسی تھی ان کے سٹریس کی وجہ سے سروایو نہیں کر پاٸی۔۔۔۔۔
انکو ابھی فل بیڈ ریسٹ کراٸیں ۔۔۔ بیسٹ لک فور نکیسٹ ٹاٸم یہ تو اللہ کے کام ہیں۔۔۔ ڈاکٹر اسکا کندھا تھپتھپا کر اسے تسلی دے رہی تھی۔۔۔۔
ڈاکٹر پلیز میری ایک ریکوسٹ ہے آپ سے۔۔۔ ڈاکٹر مڑنے لگی تھی جب اس نے روکا اسے۔۔۔۔
ڈاکٹر پلیز میری واٸف سے اس بات کا ذکر مت کرۓ گا۔۔۔ اسے نہیں پتہ تھا ابھی۔۔۔ میں نہیں چاہتا وہ سٹریس لے۔۔۔۔۔
کیا ایساہوسکتا اسے پتہ نا چلےکہ اس کا مسکیرج ہوا ہے۔۔
جی جی۔۔۔ بہت ایرلی سٹیج تھی ۔۔ ٹھیک ہے انھیں نہیں بتاٸیں گے پر خیال کریں اسکا۔۔۔
اوکے شکریہ ڈاکٹر ۔۔۔ زیغم نے تشکر بھری نظروں سے دیکھا۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تین دن بعد اسے ہوش آیا تھا۔۔۔۔ وہ ہاسپٹل کے بیڈ پر تھی۔۔۔۔
اس نے نظر گھوما کر ارد گرد کا جاٸزہ لیا زیغم دیوار سے سر ٹکا کر بیٹھا تھا۔۔۔
آہستہ آہستہ ھوش بحال ہو رہے تھے اسکے۔۔۔۔
بابا سسکی نکلی اسکی۔۔۔
زیغم تیزی سے اسکے پاس آیا ۔۔۔
وہ بیڈ سے اترنے کی کوشش کر رہی تھی۔۔۔۔
اوہ نہیں نہیں۔۔۔۔۔ زیغم نے اسے بیڈ پر بیٹھے رہنے کا اشارہ کیا۔۔۔۔
بابا۔۔۔ وہ پھوٹ پھوٹ کے رو دی تھی۔۔۔۔ زیغم اسکے بلکل سامنے بیڈ پر بیٹھ گیا تھا۔۔۔۔ آنسو اسکی آنکھوں سے بھی جاری تھے۔۔۔
زیغم مجھے میرے بابا پاس جانا ہے۔۔۔ اس کی ہچکی بندھی تھی۔۔۔۔
زیغم نےاسکی آنکھوں سے آنسو صاف کٸے۔۔۔۔
زیغم۔۔زیغم ۔۔ میرے۔۔۔بابا۔۔لا دو۔۔۔۔وہ بری طرح رو رہی تھی۔۔۔ بے ساختہ۔۔زیغم نے اسے سینے سے لگا لیا۔۔۔۔۔وہ پھوٹ پھوٹ کے رو دی تھی۔۔۔ وہ بھی اس کے ساتھ رو ہی تو رہا تھا۔۔۔۔ ماموں اسکے بھی تو سب کچھ تھے۔۔۔۔۔۔۔
زیغم نے اسے اپنے سینے سے لگایا ھوا تھا۔۔۔ ایک دم سے جیسے کسی بہت ہی اپنے نے جیسے آغوش میں بھرا ہو۔۔۔ ایسا احساس ہوا تھا۔۔۔ ماہا کو۔۔۔ دل ۔بے قرار کو جیسے۔۔۔ تسکین ملی ھو۔۔۔۔ وہ اسے چپ کراتے ہوۓ ۔۔آہستہ آہستہ۔اس کے سر پر۔ ہاتھ پھیر رہا تھا۔۔۔۔
کتنا سکون تھا۔۔۔ اس سے الگ ھونے سے دل ڈر رہا تھا۔۔۔ ماہا کا وجود جو بے تحاشہ رونے پر مسلسل ہل رہا تھا۔۔۔ اب ساکن سا ہو گیا تھا۔۔۔ کتنی عجیب بات تھی آج وہ خود کو زیغم سے الگ نہیں کر رہی تھی۔۔۔
ایک دم خاموشی ہو گٸ تھی۔۔۔ سناٸی دے رہی تھی تو زیغم کی بے ترتیب دھڑکن۔۔۔۔۔
ماہا نے پہل کی۔۔۔ وہ آہستہ سے تھوڑا پیچھے ہوٸی۔۔۔ زیغم کو جیسے۔۔۔ سمجھ آ گٸ تھی۔۔۔۔ وہ بھی پیچھے ہوا۔۔۔
میں ڈاکٹر سے ڈسچارج کا پوچھ کر آتا ہوں۔۔۔۔۔۔
وہ اس سے نظریں چراتا ہوا۔۔۔باہر نکل گیا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر جا کر ماہا ہر وقت اپنے کمرے میں بند تھی۔۔۔ یا روتی رہتی تھٕی۔۔۔ گھر کے ہر فرد کا یہی حال تھا۔۔۔۔
زارا اور ساٸرہ۔۔۔ اسد اور اشعر کی مما۔۔۔ صبا کو سنبھالتی رہتی تھیں۔۔۔۔
آج دس دن گزر چکے تھے۔۔۔۔
مما۔۔۔ مجھے جانا ہے کل۔۔۔ وہ زارا کی گود میں سر رکھ کر لیٹا ہوا تھا۔۔۔۔۔
زارا نے جھک کر۔۔ زیغم کے ماتھے کو چوما تو۔۔۔ ان کے آنسو زیغم کے گال بھگو گیے۔۔۔۔
مما۔۔ وہ ایک دم سیدھا ھوا اور زارا کو زور سے گلے سے لگا لیا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ماہا سارا دن نیند کی گولیوں کے اثر میں رہتی تھی۔۔۔ زیغم نے اسے بتانے سے منع کیا تھا۔۔۔ وہ ویسے بھی ابھی تک اس صدمے سے نکلی نہیں تھی۔۔۔۔
زیغم چپ چاپ دبٸی چلا گیا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شام بہت بوجھل سی تھی۔۔۔۔ دل آج اتنے دن بعد کمرے سے باہر جانے کو کیا۔۔۔۔ اسکی آنکھ ابھی کھلی ہی تھی۔۔۔۔۔
اٹھ کر باہر آٸی تو وہی خا موشی تھی۔۔۔ کاٹ کھانے والی۔۔۔۔ درد سے بھری۔۔۔۔ آہ۔۔۔۔ بابا ایک آہ نکلی تھی۔۔۔۔۔ اب آنسو خشک ہو گۓ تھے۔۔۔۔۔
وہ مما کے کمرے میں آٸی تو وہ نماز سے فارغ ہوٸی تھیں۔۔۔
وہ ان کی گود میں سر رکھ کر لیٹ گٸی۔۔۔ نقاہت اور کمزوری سی محسوس ہو رہی تھی۔۔۔۔۔
صبا اسکے بالوں میں ھاتھ پھیر رہی تھی۔۔۔۔۔
زیغم چلا گیا ہے۔۔۔ پرسوں۔۔۔ زارا نے مدھم سی آواز میں کہا۔۔۔
ایک دم سے دل ڈوبا تھا ماہا کا۔۔۔۔ وہ اس احساس کو سمجھ نہیں پاٸی تھی۔۔۔
کیوں ۔۔۔۔۔ بے ساختہ۔۔۔ اس کے منہ سے نکلا۔۔۔۔
بیٹا۔۔۔ اسے جانا تھا نا۔۔۔ جاب ہے اسکی وہاں۔۔۔۔
پتہ نہیں کیوں اداسی پھیل سی گٸی تھی اسکے اندر۔۔۔ اس بات کو سن کر۔
وہ اسکو ساتھ نہیں لے کر گیا۔۔۔۔ لے کر جاتا بھی کیوں ۔۔۔ اب کونسا مجھے اور اسے مجبور کرنے والے بابا ہیں یہاں۔۔۔۔
اور میں نے اسے کتنا تنگ رکھا وہاں۔۔۔۔
اسے وہ نفرت محسوس کیوں نہیں ہو رہی تھی۔۔۔۔ کہاں گٸی۔۔۔ جب سے مما نے بتایا اس کے جانے کا تب سے لے کر اب تک۔۔۔ وہ۔۔بے ارادہ زیغم کو سوچے جا رہی تھی۔۔۔
بہت بار ذہن کو جھٹک کے کہیں اور لگانے کی کوشش کی۔۔۔
پر نہیں ۔۔ تھوڑی تھوڑی دیر بعد اسکا چہرا سامنے آ رھا تھا۔۔۔۔
کیا مصیبت ہے۔۔۔ وہ چڑ کر سونے کی تیاری کرنے لگی۔۔۔ بیڈ پر بار بار کروٹ بدلنے کے بعد آخر اسے نیند آ ہی گٸی تھی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
با با۔۔۔۔ بابا۔۔۔۔ رضا اس سے پیٹھ موڑے آگے کی طرف جا رہے تھے۔۔۔۔ وہ ان کے پیچھے ان کو پکارتی۔۔۔ ہوٸی۔ ۔۔۔ انھہیں رکنے کا کہہ رہی تھی۔۔۔۔
لیکن وہ اسکی بات ہی نہیں سن رہے تھے۔۔۔۔۔
سامنے سے زیغم آ رہا تھا۔۔۔۔ با با نے آگے بڑھ کے زیغم کو گلے لگا لیا۔۔۔۔ وہ دور کھڑی تھی۔۔۔۔
وہ بھاگتی ہوٸی۔۔۔ آٸی۔۔۔ بابا کا کندھا پکڑ کر اس نے اپنی طرف موڑا۔۔۔ اور ان کے سینے سے لگ گٸی۔۔۔۔۔
بابا آپ کہاں چلے گیۓ تھے۔۔۔۔ پلیز گھر واپس آ جاٸیں اب ۔۔۔۔ وہ ان کے سینے سے لگی روتی ہوٸی انکو کہہ رہی تھی۔۔۔۔۔۔
بابا کچھ تو بولیں۔۔۔۔ بول کیوں نہیں رہے۔۔۔۔
اس نے اوپر منہ کیا۔۔۔۔
وہ زیغم تھا۔۔۔
وہ ایک دم پیچھے ہوٸی ۔۔۔ ۔ اسکا دل زور زور سے دھڑکنے لگا تھا۔۔۔۔
زیغم سے نظر ہٹا کے اس نے ارد گرد دیکھا۔۔۔۔ بابا بہت دور کھڑے مسکرا رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔
ایک دم اسکی آنکھ کھلی۔۔۔۔ اسے پسینہ آیا ہوا تھا۔۔۔ گلا خشک تھا۔۔۔۔ اس نے ساٸیڈ ٹیبل سے پانی اٹھا کر پیا۔۔۔۔۔۔
اسکے دل ابھی تک تیزی سے دھڑک رہا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیٶں بے خیالی۔۔۔ میں وہ اس خواب کو بار بار سوچ رہی تھی۔۔۔۔
آج بابا کو گٸے پندرہ دن ہو گۓ تھے جس میں پہلی دفعہ وہ اسے خواب میں نظر آۓ۔۔۔۔۔
ماہا کیوں پریشان ہو۔۔ صبا صبح سے اسے نوٹ کررہی تھی۔۔۔
اس نے اپنا خواب مما کو سنا دیا۔۔۔۔
تمھارے بابا چاہتے ہیں کہ تم زیغم سے ۔۔۔ محبت کرو بلکل ویسی جیسی ان سے کرتی تھی۔۔۔۔ بے لوث شدید۔۔۔۔
اور انکے غم کو بھلا دو۔۔۔۔۔ تمییں پتہ ہے نہ زیغم ان کو کتنا پیارا تھا۔۔۔۔۔ صبا نے اسکا ماتھا چوما۔۔۔۔ اچانک اسکے دل کی دھڑکن بے ترتیب سی ھوٸی۔۔۔ وہ پریشان سی وھاں سے نکل کے اپنے کمرے میں آ گٸی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا تھی وہ۔۔۔۔ کیوں اسکو اتنا یاد آتی تھی ۔۔۔ گھر تو کاٹ کھانے کو دوڑتا تھا۔۔۔۔ وہ رہی ہی کتنا تھا صرف ایک ماہ ۔۔۔ جس میں سے دس دن تو وہ لڑتی رہی۔۔۔ دس دن بیمار اور دس دن بس چپ چاپ۔۔۔۔۔
پر اسے وہ ہر جگہ نظر آتی تھی۔۔۔۔۔ اسکا دل شدت سے کرتا وہ پاس ہوتی۔۔۔۔ بیڈ پر لیٹا ہوا۔۔۔۔ وہ چھت کو گھور رہا تھا۔۔۔۔
اسکا لمس یاد آ رہا تھا جب لاسٹ ٹاٸم ھاسپٹل میں وہ اس کے سینے سےلگی۔۔ تھی۔۔۔۔ دل اتھل پتھل ہو رہا تھا۔۔۔۔
اسے آۓ ہوۓ آج مہینہ ہو گیا تھا۔۔۔۔
وہ تو شدید نفرت کرتی ہے مجھ سے ایسی نفرت جسکی آگ کو شاٸید میں بجھا ہی نہیں سکتا۔۔۔۔۔اس نے اپنے دل کو سرزنش کیا ۔۔۔۔ جو بے تحاشہ چاہنے لگا تھا اس ظا لم کو اور آج اس کے دل نے تسلیم کر لیا اسےاس سے شدید محبت ہے۔۔۔۔ وہ احسا سات جو اسے عجیب لگتے تھے اب انکا مفہوم سمجھ آنے لگا تھا اسے۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سب لوگوں کی زندگی اپنے معمول پر آ ہی گٸی تھی۔۔۔۔ایک وہ تھی۔۔۔ جو بے چین تھی۔۔۔۔
ہر وقت کسی نا کسی بات پر زیغم کی یاد آ جا تی تھی۔۔۔ اگر وہ تھوڑا سا بھولتی تو کوٸی اور ذکر کر دیتا۔۔۔۔۔
دل کی دھڑکن تیز سی ھو جاتی جب کوٸی اسے زیغم کے حوالے سے چھیڑتا۔۔۔
رات کو گھنٹوں وہ اپنی ۔۔کھوٸی ہوٸی نفرت کو ڈھونڈتی جس کو اس نے سالوں سینچا تھا اپنے دل میں۔۔۔۔۔۔۔
وہ ملتی ہی نہیں تھی ۔۔۔ البتہ اس کو سوچتے ہی دل دھڑکنے لگتا۔۔۔۔گال لال ہو جاتے۔۔۔۔
ایسا کیوں لگنے لگا لگا تھا وہ برسوں سے زیغم کو چاہتی ہی ہے۔۔۔۔ شاٸید واقعی اس نے اپنی سو کالڈ نفرت کے پیچھے اس سے عشق کیا تھا۔۔۔۔ ہر وقت اسی کا سوچنا ہر لمحہ اسے ہرانے کا اسے گرانے کا۔۔۔ اس کی وجہ سے اپنا حلیہ تک بدل ڈالہ۔۔۔۔ دراصل وہ یہ سب اسکی نظروں میں رہنے کو کرتی تھی۔۔۔ نفرت کے اس نقلی سٹیکر کے پیچھے۔۔۔ جسم میں ٹیٹو۔۔۔ کی طرح کھدہ ہوا عشق تھا۔۔۔۔۔
تو کیا ماہین رضا تم آج دل بھی ہار بیٹھی اسکے آگے۔۔۔۔
پہلے۔۔۔ضد ۔۔پھر غرور۔۔۔ ۔۔۔ اکڑ ۔۔۔پھر وجود۔۔۔۔ اور اب دل ۔۔۔۔۔۔۔۔
ھاں دل۔۔۔۔ جس کے تخت پر وہ۔۔۔۔ براجمان تھا ایک بادشاہ کی طرح۔۔۔۔
وہ ہلکا سا شرما گٸی تھی ہر وہ لمحہ یاد کر کے جو اسکے سنگ گزرا تھا۔۔۔ آج تو اس کے ہر ستم پر بھی دل دھڑک رہا تھا۔۔۔۔۔
ماہین زیغم۔۔۔۔ وہ زیر۔۔لب اپنا نام پکار کر شرما گٸی۔۔۔۔۔۔۔ ھونٹ بے ساختہ۔۔۔ مسکرا مسکرا کے پاگل ہو رہے تھے۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: