Ishq Aisa Ho To Novel by Huma Waqas – Episode 8

0
عشق ایسا ہو تو از ہما وقاص – قسط نمبر 8

–**–**–

مما چھوٹی کہاں ہے۔۔۔ ماہا ہاتھ میں ہیر آٸل پکڑے میڈ کے بارے میں پوچھ رہی تھی۔۔۔
چھت پر تھی۔۔۔۔۔ مما کچن میں مصروف تھیں۔۔ مختصر ساجواب دیا تھا۔۔۔ انھوں نے۔۔۔
وہ اوپر آٸی تو چھوٹی کپڑے۔۔ پریس کر رہی تھی۔۔۔
چھوٹی۔۔ یہ سب چھوڑو۔۔۔ میرے بالوں کو آٸل لگا دو۔۔۔
باجی۔۔۔۔ آپ اور آٸل۔۔۔۔۔ چھوٹی منہ کھولے اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔
ھاں تو کوٸی مسلہ تمہیں۔۔۔ آٸل لگاٶ۔۔۔۔وہ اسکے سامنے کرسی پر بیٹھ گٸ۔۔۔۔
یہ بتاٶ ذرا۔۔۔ یہ کیسٹر اور کوکونٹ آٸل کیا واقعی ۔۔۔ بال لمبے کرتے ہیں جلدی۔۔۔ ماہا نے چھوٹی سے پوچھا۔۔۔۔۔
کس کے لیے زیغم بھاٸی کے لیے کر رہی ہیں لمبے باجی۔۔۔۔ چھوٹی نے شوخ ہوتے ہوۓ چھیڑا اسے۔۔۔۔
دل کے تار بج گۓ تھے۔۔۔چپ کر کے کام زیادہ کرو باتیں کم کرو۔۔۔۔۔ ماہا نے مصنوعی غصہ دکھایا ۔۔۔
وہ تیزی سے اسکے سر میں مساج کرنے لگی۔۔۔
ماہا کے چہرے پر مسکراہٹ تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو ماہ ہو گۓ تھے۔۔ اسے زیغم کودیکھے ہوۓ۔۔۔ اب تو ہر وقت اسکی یادستاتی تھی۔۔۔۔۔
پھپھو پھپو۔۔۔ وہ زارا کو پکارتی۔۔۔ اوپر آٸی۔۔۔
جی ۔۔۔ میری جان۔۔۔ انھوں نے ٹی وی بند کرتے ہوۓ محبت سے دیکھا۔۔۔
پھپھو وہی۔۔۔ وہ انڈے اور بیسن والا حلوا بنا دیں جلدی سے۔۔ بہت دل کر رہا ہے۔۔۔وہ بڑے لاڈ سے ان کے گرد بازو ڈال کر بولی۔۔۔
ابھی بناتی۔۔۔ ہوں۔۔۔ زارا خوش دلی سے اٹھی تھیں
زارا جب کچن میں گٸی۔۔۔ تو وہ چوری سے زیغم کے کمرے میں آ گٸی۔۔۔۔
کوٸی تصویر نہیں ۔۔۔ وہ حیران ہوٸی دیکھ کر۔۔۔ وہ محبت سے کمرے کا جاٸزہ لے رہی تھی۔۔۔۔ پہلے کبھی وہ اس کمرے آٸی بھی تو نہیں تھی۔۔۔
صاف ستھرا سادہ سا کمرہ تھا۔۔۔ بکس ریکس میں لگی ہوٸی۔۔۔ سٹڈی ٹیبل سلیقے سے سجا ہوا۔۔۔۔ ٹیرس کا خوبصورت منظر۔۔۔ اور اس کی۔۔ خوشبو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ آنکھیں بند کر کے۔۔۔ خوشبو کو محسوس کر رہی تھی۔۔۔۔
زارا کی آواز۔۔۔ پر وہ تیزی سے سٹڈی ٹیبل کے پاس سے گزری سکارف۔۔ ڈدا میں پھنس گیا۔۔ اسکو نکالنے کے لیے جیسے ہی اس نے ڈرا کھولا۔۔ سامنے شاٸید ۔۔ نہیں یقین زیغم کی ڈاٸریز پڑی تھیں۔۔۔وہ ڈرا بند کر کے باہر نکل گٸی ۔۔
اور پھر حلوا کھانے کے بعد۔۔۔ وہ جاتے ہوۓ چپکے سے ساری ڈاٸیرز اپنے ساتھ لے آٸی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات کو اس نے ساری ڈاٸیرز۔۔۔ پڑھ ڈالی۔۔۔ اور اپنی کی ہوٸی ہر زیاتی۔۔پر خود ہی روتی رہی۔۔۔جو اس نے لکھی تھیں۔۔۔ ماہا کے دل سے سارے بادل چھٹ تو پہلے ہی گٸے تھے۔۔۔ اب اسکی محبت کا سورج پوری آب و تاب سے چمکنے لگا تھا۔۔۔۔۔
وہ اسے بہت پہلے سے اچھی لگتی تھی۔۔۔ اسکا دل زور زور سے دھڑک رہا تھا۔۔۔۔
لاسٹ پیج پر اسکی مہندی کی شام کا ذکر تھا۔۔۔ جب وہ ٹیرس سے اسے چوری چوری دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔
اسکے لفظوں کو وہ بار بار پڑھ رہی تھی۔۔۔۔ دل گدگدانے لگا تھا۔۔۔ وہ ڈاٸیری کو سینے سے لگاکر سو گٸی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زیغم بھاٸی آنا کب ہے۔۔۔ اسد بھاٸی کی شادی سے کافی دن پہلے آٸیں نا یار۔۔۔ وہ پاپ کارن لے کر لاونج سے گزر رہی تھی۔۔۔ جب اسکی نظر پڑی۔۔اشعر۔۔ زیغم سے لیپ ٹاپ پر ویڈیو کال کر رہاتھا۔۔۔
دل دھڑکنا بھول گیا۔۔ تھا۔۔۔۔۔ اسکو دیکھنے کو دل مچلنے لگا تھا۔۔۔۔ لیکن ایسے کیسے اسکو دیکھوں۔۔ ایسے تو وہ خود بھی زیغم کو نظر آٸے گی۔۔۔۔۔
اس نے اشعر کو اسکے موباٸل پر ٹیکسٹ کیا۔۔۔
اپنی ساٸیڈ والا کیم آف کر ذرا ۔۔۔
اشعر نے ٹیکسٹ پڑھتے ہی۔۔ شرارت سے اسکی طرف دیکھا۔۔۔ آف کر دیا۔۔۔ اشعر نے اپنی ساٸیڈ والا کیم آف کر دیا۔۔۔۔
وہ تیزی سے آگے آٸی اور زور سے دھڑکتے دل کے ساتھ سکرین پر نظر ڈالی۔۔۔۔۔۔۔
افف۔۔۔۔ بلیک ٹی شرٹ۔۔۔ میں وہ بوجھل آنکھوں کے ساتھ بیٹھا تھا۔۔۔ وہ کتنا خوبصورت تھا۔۔۔۔ اور اسکی مڑی ہوٸی گھنی پلکیں۔۔۔ وہ بلش ہو گٸی تھی وہ ایک جھلک میں اپنی آنکھوں کو سیر کر رہی تھی۔۔۔۔
یار اشعر۔۔۔ تمھاری ویڈیو نہیں آ رہی۔۔۔ زیغم کی آواز۔۔۔ آہ ایسے لگ رہا تھاسالوں بعد سن رہی ہے۔۔۔۔۔۔۔ اس کے دل کو تسکین دے رہی تھی آواز۔۔۔۔۔
زیغم بھاٸی کوٸی مسٸلہ ھوگیا ہے شاٸید۔۔۔۔ اشعر نے اپنی ھنسی بمشکل روکی۔۔۔۔۔
اوہ اچھا چل یار۔۔۔پھرکریں گے بات۔۔۔ ماہا نے رونے والی شکل بنا لی۔۔۔ اتنی جلدی ابھی تو دل بھی نہیں بھرا تھا۔۔۔۔
وہ آف لاٸن ھو گیا تھا۔۔۔۔
اسکو دیکھنے کے بعد تو دل اور اداس ہو گیا تھا۔۔۔۔۔
اسد کی شادی کو تو اتنے ماہ پڑے تھے۔۔۔۔۔۔ وہ بے دلی سے اٹھ کر اپنے کمرے میں چلی گٸی۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اشعر کو لیپ ٹاپ پر ویڈیو کال کرنے کا مقصد ہی یہ تھا۔۔۔ کہہ شاٸید کہیں سے ماہا کی ایک جھلک نظر آ جاۓ ۔۔۔۔لیکن نہیں۔۔۔۔۔اس کو دیکھے آج چھ ماہ ہو گۓ تھے۔۔۔۔۔
بات اس سے کر نہیں سکتا تھا۔۔۔کیا پتہ وہ اسکی کال تک رسیو نہ کرے۔۔۔۔۔۔
کتنی دفعہ ۔۔ فون نمبر ڈاٸل کرنے کے بعد بھی وہ اسے مٹا دیتا تھا۔۔۔۔۔
وہ تو بہت خوش ہو گی۔۔۔۔ وہاں اب میں جو نظر نہیں آتا ہوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرروز آفس سے گھر آنے کے بعد وہ ان خیالوں میں الجھا رہتا تھا۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسد کی شادی کے دن قریب آ گیے تھے۔۔۔۔ آج پورا سال ہوا گیا تھا۔۔۔ رضا کو گیے ہوۓ ۔۔۔ ۔۔۔۔
وہ اداس سی تھی۔۔۔۔ بابا تو یاد آ ہی رہے تھے ساتھ زیغم بھی بہت یاد آ رہا تھا۔۔۔۔
ایک چکر بھی نہ لگایا اس نے کام بہت ہے کام بہت ہے۔۔۔ پھپو یہی کہتی رہتی تھیں۔۔۔۔
پتہ نہیں کہیں اسکو اب مجھ سے نفرت تو نہیں ہو گٸی اتنا تو تنگ کرتی رہی تھی میں اسے۔۔۔۔ مجھے بھول گیا ہوگا۔۔۔۔ دل میں کبھی کوٸی خدشہ آتا اور کبھی کوٸی۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اسد کی مہندی وال صبح تھی۔۔۔۔ ساری رات وہ نہ سوٸی تھی۔۔۔۔ نیند ہی نہیں آ رہی تھی۔۔۔ زیغم نےپہنچنا تھا آج۔۔۔جب کوٸی صبر کر رہا ہو نا تو قدرت اسکے صبر کا اور امتحان لیتی ہی۔۔۔۔ اسکی فلاٸیٹ لیٹ ہو گٸی تھی۔۔۔ اب اس نے مہندی کے فنکشن کے وقت پہنچنا تھا۔۔۔۔
اس نے سبز کامدار۔۔۔ قمیض اور کیپری کے اوپر بھاری کام کا دوپٹے والا سوٹ زیب تن کیا۔۔۔
بال جو اب کمر سے تھوڑا اوپر تک آ رہے تھے انہیں بلکل سیدھا کر کے کمر پر چھوڑ دیا تھا۔۔۔۔
سامنےسے سیدھی مانگ تھی۔۔۔
کانوں میں کندن کے جھمکے۔۔۔۔
وہ ھوش اڑا دینے کی حد تک حسین لگ رہی تھی۔۔۔۔
آٸینے میں خود کو دیکھ کر وہ پہچان ہی نہیں پا رہی تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اشعر اسے ایر پورٹ سے رسیو کرنے آیا تھا۔۔۔۔
کار میں معمول کے مطابق گفتگو۔۔۔ ہوتی رہی۔۔۔۔ جب وہ گھر پہنچا۔۔۔ تو سب لوگ ھال پہنچ گٸے تھے مہندی کے لیے۔۔۔ اشعر اسے کے کپڑٕے پکڑا رہا تھا۔۔۔۔
زیغم بھاٸی جلدی سے تیار ہو جاٸیں۔۔۔۔۔سب ہمارا ہی ویٹ کر رہے ہیں۔۔۔۔
ہیں ۔۔۔ میرون راٶ سلک کا کرتا۔۔۔۔ اس نے اشعر کو دیکھا وہ بھی ایسا ہی کرتا پہنے ہوۓ تھا۔۔۔۔
یار یہ کیسا کلر ہے پتہ ہے نہ میں نہیں پہنتا۔۔۔۔اس نے کرتا ہوا میں لہراتے ہوۓ اشعر سے کہا۔۔۔۔
زیغم بھاٸی بس کریں یار آپ۔۔۔ سب نے پہننا آج ایسا۔۔۔ پلیز جلدی کریں اسد بھاٸی ناراض ہو رہے ہیں۔۔۔۔
وہ برا سا منہ بناتا ہوا۔۔۔۔ واش روم میں گھس گیا۔۔۔۔
سب سے زیادہ آپکو سوٹ کر رہا ۔۔۔ ہم تو ماند پڑ گۓ۔۔۔۔
اشعر نےسیٹی بجا کے اسکی پرسینلیٹی کی داد دی۔۔ جب وہ تیار ہو کر اس کے سامنے آیا۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ھال میں داخل ھو کر وہ زارا کے سینے سے لگا ہوا تھا۔۔۔۔ جب وہ مڑا۔۔۔ تو حیرت کے پہاڑ ٹوٹ گٸے۔۔۔۔۔۔
وہ ظلمستان کی حسین دیوی اسکے ھوش اڑانے کے سارے ھتیار زیب تن کیے ہوۓ تھی۔۔۔۔
وہ چند لمحے ساکت۔۔۔ سا کھڑا رہا۔۔۔۔ اسکو اپنی آنکھوں پر شبہ سا ہوا۔۔۔۔
یہ یہ ماہا تھی۔۔۔۔ بال۔۔۔۔ ڈریس۔۔۔۔ وہ تو آج اسکے خواب اور خیالوں کی ملکہ لگ رہی تھی۔۔۔۔۔ دل کی دھڑکن نے ایسا شور ڈالا ہوا تھا۔۔۔ کہہ باقی سب میوزک۔۔۔ بند ہو گۓ۔۔۔۔
سب زیغم کی اس حالت پر ھنس پڑے تھے۔ ۔۔۔۔۔ بس کر یار ۔۔اسد نے اپنے مخصوص انداز میں اسے کندھا مارا۔۔۔۔
ایک دم جیسے طلسم ٹوٹ گیا ہو۔۔۔
سب قہقہ لگا رہے تھے۔۔۔۔ وہ بلش ہو رہی تھی۔۔۔۔ زیغم نے سب کے ساتھ ہنستے ہوۓ پھر سے اس کی طرف دیکھا۔۔۔۔ کیا کرے۔۔۔ نظر تھی کے کمبخت اٹک کر رہ گٸی تھی۔۔۔۔
سیریسلی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ حیرت کا ایک اور پہاڑ ۔۔۔ وہ بلش ھو رہی تھی سب کے مزاق پر۔۔۔ زیغم کو اپنی آنکھوں پر یقین نہیں آ رہا تھا۔۔۔۔
اور پھر ایک دم سے وہ منظر سے غاٸب ہو گٸی تھی۔۔۔۔۔۔
تو۔۔ ماہین رضا ۔۔۔ آج تم پوری میری ہو۔۔۔ تن من سے میری۔۔۔ اسے جیسے دنیا کی ہر خوشی ملی تھی۔۔۔۔۔اس کے حسن کے نشے میں سر شار۔۔۔ اب وہ سب کو ملنٕے کے بعد پھر سے اسے ڈھونڈ رہا تھا۔۔۔۔۔
ماہا ۔۔ اب تھوڑا تنگ کرنا تو میرا بھی بنتا ہے۔۔۔۔ آخر کو بہت قرض دار ہو تم میری۔۔۔۔ شرارت سے۔۔۔ زیغم کی آنکھیں چمک رہی تھی۔۔ اور بار بار اسے ہی تلاش کر رہی تھی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
افف دل کی بے ترتیب ہوتی دھڑکن کو سانبھالتی وہ ھال کے واش روم میں آ گٸ تھی۔۔۔ وہ کب سے تو زیغم کے انتظار میں تھی۔۔۔ اور اسکو پھپھو کے پاس کھڑا دیکھ کر دھڑکن تھم گٸی تھی۔۔۔
وہ شروع سے ہی اتنا خوبرو تھا۔۔ کہ اب ایسا ہوا تھا۔۔۔۔ میرون کرتا اس پر جچ رہا تھا۔۔۔ کتنی دیر تو وہ پلک جھپک نا پاٸی تھی۔۔۔
اور پھر تو زٸیغم نے ایسے نظریں گاڑی کہ پھر وہ نظریں اٹھا نہ سکی۔۔ گال اسکی نظروں کی تپش سے تپنے لگے تھے۔۔۔ وہ تھا کہ اسے کسی کی شرم ہی نہیں تھی۔۔۔۔
پھر سارے فنکشن میں وہ خود کو لڑکھڑانے سے سانبھالتی ہی رہی۔۔۔۔ اس کی نظروں کا تعاقب تھا ہر جگہ۔۔۔۔
سٹیج پر سب نے زبردستی اسد کے بعد ان دونوں کو بیٹھا دیا۔۔۔
اسکے ساتھ بیٹھی تو زیغم کی خوشبو اس کے دل میں اتر کر اتھل پتھل مچانے لگی۔۔۔یوں لگ رہا تھا۔۔۔ پلکوں پر جیسے کسی نہ پتھر باندھ دیا ہو۔۔۔ سارے کزن زیغم کو تنگ کر رہے تھے تو باربار اسکا کندھا۔۔ ماہا کے کندھے سے ٹکرا رہا تھا۔۔۔
اسکی بےترتیب دھڑکنیں تب تھم سی جاتی۔۔۔۔
زیغم نے اسکے مہندی لگاٸی۔۔ شور غل۔۔۔ سب لوگ انجواۓ کر رہے تھے۔۔۔۔
رات کے دو بجے واپسی کی تیاری شروع ہوٸی ۔۔۔ان دونوں کو زبردستی۔۔۔ اکیلے ایک گاڑی میں بیٹھا دیا۔۔۔
اس نے اشعر اور اسد کو اتنا کہا کہ وہ نہیں جاۓ گی اسکے ساتھ۔۔۔ پر سب نے زبردستی بیٹھا دیا تھا۔۔۔۔
پوری کار میں مدھم سی بس زیغم کی خوشبو تھی۔۔۔۔
دھیما سا انگلش میوزک۔۔۔۔ وہ کار کی فرنٹ سیٹ پر بیٹھی تھی۔۔۔۔ اور ساتھ اس کے وہ بیٹھا۔۔ تھا۔۔ جس کو اس نے۔۔۔ اس پورے سال میں اتنا سوچا تھا۔۔۔ کہ اب سمجھ سے باہر تھا اسکا خیال تھا۔ یا حقیقت۔۔۔۔۔
کیسی ہو۔۔۔۔ زیغم کے الفاظ نے گاڑی کی خاموشی۔۔ کو توڑا۔۔۔۔
ٹھیک۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بہت دور سے آواز آٸی تھی۔۔۔۔۔
میں نے تم سے ایک بات کرنی ہے۔۔۔ وہ سر جھکاۓ تابعدار بیوی کی طرح بیٹھی۔تھی۔۔۔۔۔۔۔
زیغم نے اپنی ھنسی کو دبایا۔۔۔۔ شرارت اس کی آنکھوں سے جھلک رہی تھی۔۔۔
جی۔۔۔ کریں۔۔۔۔۔
آہ۔۔ جی۔۔۔۔۔ زیغم کا دل الٹی کالابازی کھا رہا تھا۔۔۔۔۔ اتنی تمیز ۔۔۔ یہ ماہا ہی تھی یہ اسکے بھیس میں کوٸی اور۔۔۔۔
– پہلے تو میں اپنی ہر زیاتی پر اس بات کی معافی مانگتا ہوں۔جس سے تمہیں تکلیف ہوٸی ہو۔۔۔ وہ بول رہا تھا۔۔۔
– اور ماہا کا دل کر رہا تھا۔۔ یہ راستہ کبھی ختم نہ ہو۔۔۔۔
– میں نے اس ایک سال میں بہت سوچا ہے۔۔۔ اور میرے دل نے فیصلہ دیا ہے کہہ مجھے تمھیں زبرددستی اپنے ساتھ باندھ کر رکھنے کی ضرورت نہیں ہے۔۔۔ تم مجھ سے اتنی نفرت کرتی ہو۔۔۔ میرے ساتھ رہنا گوارا نہیں تھا۔۔۔ تو۔۔ میں اس دفعہ جاتے ہوۓ تمھیں آزاد کر کے جانا چاھتا ہوں اس زبردستی کے رشتے سے۔۔۔۔
– وہ بول رہا تھا کہہ بم پھوڑ رہا تھا۔۔۔۔ اسکے الفاظ ماہا کے دل پر خنجر چلا رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔
– دل کر رہا تھا زور زور سے چیخ چیخ کر اسے بتاۓ کہ وہ نہیں کرتی اس سے نفرت۔۔ کبھی کر ہی نہیں سکتی۔۔ اسے سمجھ نہیں آ رہی تھی اسکا انداز اسکا رواں رواں یہ وضاحت دے رہا تھا۔۔۔ کہ وہ اس سے شدید محبت کرتی ہے۔۔۔۔۔ اسے زیغم پر غصہ آ رہا تھا اور خود پر رونا۔۔۔۔
– اسکے ٹپ ٹپ آنسو گرنے لگے تھے۔۔۔ پر بولا نہیں جا رہا تھا۔۔۔ وہ اب وہ ماہا تو نہیں رہی تھی بدتمیز سی۔۔۔۔ جس کو اس نے اپنے دل کے تخت پر ارمانوں کا تاج پہنا کر بیٹھا دیا ہو ۔۔ وہ اس سے اب کیسے بد تمیزی کر سکتی تھی۔۔۔۔
– ماہین رضا اقرار تو تمہیں زبان سے ہی کرنا پڑے گا۔۔ بے شک تمھارا۔۔ رٶواں رٶواں میرا اسیر ھونے کی مجھے چیخ چیخ کے گواہی دے رہا ہے۔۔۔ پر کیا ہی مزہ ھو تم خود مجھ سے کہو یہ سب۔۔۔ زیغم اسکی حالت سے محزوز ہو رہا تھا۔۔۔۔
– ماہا رو مت ۔۔۔ دیکھو۔۔ میں سمجھ سکتا ہوں تم نے کتنا انتظار کیا اس لمحے کا۔۔۔تم فکر نہ کرو سب گھر والوں کو میں سجھا لوں گا۔۔۔۔ تم ریلکس رہو ۔۔۔۔
– ماہا نے تڑپ کے اسکی طرف دیکھا۔۔۔ دل کیا منہ نوچ لے اس ظالم کا۔۔۔
– کیا وہ اتنا ہی بدھو ہے۔۔۔ دل کیا سٹیرنگ پکڑ کر گھوما دے۔۔۔۔ اس کے بال نوچ دے۔۔۔ اسکے سینے میں چھپ کر ۔۔۔ اپنی ہر بیچینی کا اظہار کر دے۔۔۔۔۔۔ کار پورچ میں رکی تو وہ۔۔۔ تیزی سے گاڑی سے اتری دروازہ دھماکے سے بند ہوا۔۔۔
– زیغم نے دونوں ھاتھ اٹھا کر ڈرنے کی ایکٹنگ کی۔۔۔۔۔اور پھر اسکا قہقہ تھا۔۔۔ جو اسکی آنکھوں میں آنسو لے آیا تھا۔۔۔۔۔
– وہ آج بہت خوش تھا دل سے خوش۔۔ اسکی ہر دعا رنگ لے آٸی تھی۔۔۔۔۔۔
– اس نے مسرور ہو کر۔۔۔ سیٹ کے ساتھ سر ٹکا دیا۔۔۔ مدھم سی موسیقی۔۔۔۔ اس کے دل کو تسکین دے رہی تھی۔۔۔۔۔۔
– ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
– مما مما ۔۔۔ وہ صبا کو ڈھونڈ رہی تھی۔۔۔۔ جب چھوٹی نے بتایا کہ وہ زارا باجی کے ساتھ اوپر ان کے روم میں سوٸیں گی وہیں پر ہیں ۔۔ مطلب ان کے روم میں بھی مہمان ھی سوٸیں گے۔۔۔۔۔۔وہ کپڑے چینج کر کے باہر نکلی تو اس کی کزنز کے سارے بستر اسکے روم میں لگے تھے۔۔۔ اور اسی کے روم میں اسکے سونے کی کوٸی جگہ نہیں تھی۔۔۔
– وہ تیزی سے اوپر آٸی۔۔۔۔
– مما میں کہاں سوٶں اب۔۔۔ وہ بچوں کی طرح منہ پھلا کر کہہ رہی تھی۔۔۔۔
– کیا مطلب۔۔۔ تم زیغم کے کمرے میں اور کہاں۔۔۔ صبا کو اسکے بے تکے سوال پر غصہ آ گیا۔۔۔۔
– نہیں میں ادھر نہیں سو سکتی۔۔۔ بے ساختہ اس کے منہ سے نکلا جب کے دل زور زور سے دھڑکنے لگا تھا۔۔۔
– کیوں بیٹا۔۔۔ زارا نے پریشان سی شکل بنا کر ماہا کی طرف دیکھا۔۔۔۔
– اوہ پھپھو میں نے سوچا کہ وہ تھکے ہوۓ آۓ ھیں آرام کر لیں۔۔۔۔ وہ گھبرا سی گٸی۔۔۔۔
– ایسا بھی کیسا آرام تم چلو ذرا میرے ساتھ۔۔۔۔ وہ اسے بازو سے پکڑ کر زبردستی زیغم کے روم میں لے آٸیں۔۔۔۔
– وہ سامنے ریکس میں اپنی بکس چیک کر رہا تھا۔۔۔۔ ایک دم سیدھا ہو گیا۔۔۔۔
– بیٹا تمھیں کوٸی مسٸلہ ہے ماہا کے یہاں سونے سے۔۔۔۔
– ماہا ان کو کچھ بھی کہنے سے روکنے کے لیے ناکام کوشش ہی کرتی رہی۔۔۔۔
– نہیں تو مما۔۔ زیغم نے کندھے اچکاۓ۔۔۔۔
– تو سو جاٶ بیٹا یہ تمھارا ہی کمرہ ہے۔۔۔ پھپھو اسے کہتی ہوٸی واپس چلی گٸیں۔۔۔۔
– سنو تم آرام سے بیڈ پر لیٹ جاٶ۔۔۔۔ میں یہاں صوفے پر سو جاتا ہوں۔۔۔۔
– نہیں آپ بیڈ پر ہی سوٸیں مجھے کوٸی مسٸلہ نہیں۔۔۔۔۔ اس نے مدھم سی آواز میں کہا۔۔
– زیغم تکیہ اٹھا کر صوفے پر رکھتا ہوا ایک دم رکا۔۔۔
– شوٸر۔۔۔ بھنویں اچکاتے ہوۓ زیغم نے دیکھا۔۔۔۔
– یس۔۔۔۔ دل کی دھڑکن بےترتیب تھی۔۔۔ آواز کہیں دور سے آتی ہوٸی محسوس ہوٸی۔۔۔۔۔۔
– اوکے۔۔۔ اب وہ بیڈ کے درمیان میں تکیے لگا رہا تھا۔۔۔۔
– ماہا کا دل کیا کچھ اٹھا کر اسکے سر پر دے مارے۔۔۔۔۔۔۔
– اسے آج یہ تکیے زہر لگ رہے تھے۔۔۔۔
– وہ زیغم کی طرف پیٹھ کر کے لیٹ گٸی۔۔۔۔۔
– ماہا کے گھنے بال تکیے پر بکھرے ہوۓ تھے۔۔۔۔ ۔۔
– زیغم نے چھت کو گھورنا شروع کر دیا تھا۔۔۔ دل تو کر رہا تھا اسکو پاس بیٹھاۓ اسے بتاۓ وہ اسکو کتنا یاد کرتا رہا ہے۔۔۔۔ اپنی ہر بےقراری کے بارے میں بیان کرے۔۔۔۔۔۔۔
ماہا کے دل میں الجھن تھی۔۔۔کیا کروں ۔۔۔ زیغم کو سمجھ کیوں نہیں آ رہی کیا کروں کہ اس کو لگے کہ اب میں ویسی نہیں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔
انھی سوچوں میں گم کب اسے نیند آٸی خبر ہی نہ ہوٸی۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صبح اسکی آنکھ کھلی تو وہ بے خبر سو رہا تھا۔۔۔۔۔
اب تو تسلی سے اسے دیکھنے کا ماہا کو موقع ملا تھا۔۔۔۔۔۔۔
کتنا وجہیہ چہرہ تھا اسکا کتنی معصومیت۔۔۔ بس دل کیا وہ یونہی دیکھتی رہے۔۔۔ اسکے سینے پر سر رکھے۔۔۔ اور اپنی ساری بے قراری بیان کر دے۔۔۔۔
زیغم کی آنکھ کھلی تو وہ اسکے بےحد قریب بیٹھی ہوٸی تھی۔۔۔ وہ گھبرا کر اٹھنے لگی تو زیغم نے اس کی کلاٸی پکڑ لی۔۔۔ کیا کر رہی تھی۔۔۔۔ آنکھوں میں شرارت تھی۔۔۔۔
وہ کلاٸی چھڑوانے کی ناکام کوشش کر رہی تھی۔۔۔۔ پلکیں بھاری ہو گٸی تھیں۔۔۔ گال تپنے لگے تھے۔۔۔۔۔
زیغم اچانک اٹھ کر بیٹھا تو۔۔۔ وہ اس کے اتنا قریب تھا۔۔ کہ اس کا دل ایک لمحے کو ساکت ہی ہو گیا۔۔۔۔۔۔
کچھ کہنا ہے کیا تمہیں مجھ سے۔۔۔۔۔ وہ اسکے کانوں میں اپنی بھاری میٹھی زبان میں رس گھول رہا تھا۔۔۔۔
نہیں کچھ بھی نہیں۔۔۔۔ بولا بھی نہیں جا رہا تھا۔۔۔
اچھا مجھے لگا کچھ کہنا تمہیں۔۔۔
اتنا قریب کیوں آ رہا تھا۔۔ ماہا کا برا حال تھا۔۔۔ چھوڑیں مجھے۔۔۔
زیغم نے ایک دم سے ھاتھ پیچھے کیا۔۔ اور سیدھا ہو گیا۔۔۔
کل پھر میں وکیل کے پاس جاتا ہوں۔۔۔ دل پھر اسکو تنگ کرنے پر آ گیا۔۔۔۔
کککک کیوں۔۔ اس کی زبان ڈگمگا گٸی تھی۔۔۔۔
بتایا تو تھا کل رات۔۔۔ وہ لا پرواہی ظاہر کرتا ہوا واش روم میں گھس گیا۔۔۔۔ اور اسکا دل بے چین ھو گیا۔۔۔ کیا کروں کیا کروں۔۔۔ بچوں کی طرح اسے رونا آ رہا تھا۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: