Ishq Aisa Ho To Novel by Huma Waqas – Last Episode 9

0
عشق ایسا ہو تو از ہما وقاص – آخری قسط نمبر 9

–**–**–

شام کو اسد کی بارات تھی۔۔۔۔ ماہا چاہتی تھی وہ اتنی پیاری لگے۔۔ کہ زیغم اپنے فیصلے کو ہی بھول جاۓ۔۔۔ ۔۔۔
پیچ کلر کی کلیوں والی فراک۔۔۔ جو پیروں تک جاتی تھی۔۔۔اسکے چہرے کا رنگ بھی فراک جیسا ہی ہو گیا تھا۔۔۔۔ آج اس نے بالوں میں کرل ڈالے۔ تھے۔۔۔۔۔۔ گڑیا ہی تو لگ رہی تھی۔۔
نک سک سے وہ تیار ہوٸی تھی۔۔۔۔وہ ہوش ربا حسن لیے۔۔۔ سیڑھیوں میں کھڑی تھی۔۔۔۔۔۔
زیغم تیزی سے نیچے کی طرف بڑھا تھا۔۔ ۔
آہ۔۔۔۔۔ وہ کیا غضب ڈھا رہی تھی۔۔۔۔ بڑی مشکل سے۔۔ وہ لڑ کھڑانے سے بچا۔۔۔۔۔
ماہا نے جلدی سے منہ موڑ کر اپنی ھنسی روکی تھی۔۔۔۔۔۔وہ آگے بڑ ھنے لگی تھی۔۔۔ جب زیغم نے اسے پیچھے سے پکارا۔۔۔
ماہا۔۔
دل بجنے لگا تھا پھر سے۔۔۔
جی۔۔۔۔ وہ بڑے پریم سے مڑی۔۔۔۔
ہاۓ یہ ظالم۔۔۔ جی۔۔۔۔ جان ہی لے لیتا تھا زیغم کی۔۔۔۔
چلو پھر بیٹھو جا کر کار میں ۔۔ اس نے کیز۔۔۔ ماہا کی طرف بڑھاٸی۔۔۔۔
اڑا دیۓ نا ہوش زیغم حسن۔۔۔۔ وہ دل ہی دل میں خوش ہوٸی۔۔۔۔
چابی پکڑ کر وہ گاڑی میں آ کر بیٹھی۔۔۔۔
تھوڑی دیر تک وہ کار میں آ کر بیٹھا تو۔۔ اس کے کان کو موباٸل لگا ہوا تھا۔۔۔
جی جی۔۔ وکیل اظہر سے ہی بات کرنی ہے ۔۔۔ جی پیپرز تیار کروانے ہیں۔۔۔
ما ہا کے کان کھڑے ہو گۓ۔۔ تھے۔۔دل دھک سے رہ گیا تھا۔۔۔
ماہین زیغم ۔۔۔۔ آج تو اقرار کرنا ہی پڑنا۔۔۔ آج آپ کے حسن نے صبر ختم کر دیا ہے۔۔۔ زیغم نے کار کا سٹیرنگ گھوماتے ہوۓ سوچا۔۔۔۔
ماہین کی حالت غیر ہو گٸی تھی۔۔۔
وہ زیرلب مسکراتا ہوا کن اکھیوں سے ماہا کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زیغم فوٹو بنواٸیں۔۔۔ وہ مسکراتی ہوٸی زیغم کے پاس آٸی۔۔۔
کار میں وکیل والی بات سننے کے بعد وہ زیغم کے ساتھ بار بار کوٸی بات کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔
اب وہ فوٹو گرافر۔۔ کو لے کر اس کے پاس پہنچ گٸ تھی۔۔۔۔
کیٶں نہیں۔۔۔۔.. وہ مسکرا کر۔۔ اسکے ساتھ کھڑا ہو گیا تھا۔۔۔۔۔
وہ زیغم کے قریب ہو کر کھڑی ہو گٸی تھی۔۔۔۔۔ زیغم سمجھ کیوں نہیں رہا مجھے اس سے پیار ہو گیا ہے۔۔۔۔۔۔
فٹو گرافر نے اپنے کیمرے میں کیپچر کیا۔۔۔۔۔ زیغم اور اسکے سامنے تصویر کی۔۔۔۔
وہ دونوں ایک ساتھ کھڑے بلاٸیں لینے کی حدتک خوبصورت لگ رہے تھے۔۔۔۔
سر بیوٹیفل کپل۔۔۔۔ کیمرہ مین نے زیغم کی طرف۔۔۔ تعریف کرتےہوے دٕیکھا۔۔۔۔۔
اس نے بڑی خوش کھڑی۔۔۔ اس ماورأٸی حسن کی دیوی کو دیکھا۔۔۔ محبت کے سمندر کو دل میں چھپاتا ہو ا وہ اسکے کان کے قریب ہوا۔۔۔۔
بہت اچھی پک اٸی ہے ۔۔۔ الگ ہونےکے بعد ایک دوسرے کی یاد گار بنا کے رکھیں گے۔۔۔۔۔ پرسوں میری واپسی ہے۔۔۔خنجر سے دل چھلنی کر رہا تھا وہ ماہا کا۔۔۔
ایکسکیوزمی سر۔۔۔ زیغم نے مڑتے ہوۓ۔۔۔ کیمرہ مین کو پھر سے آواز دی۔۔۔
پلیز یار اسکی دو کاپی ڈولپ کرنا ھاں کاٸنڈلی۔۔۔۔
ماہا کے گلے میں کانٹے چبھنے لگے تھے۔۔۔ اس نے ڈبڈباتی انکھوں سے اس پتھر شخص کو دیکھا۔۔۔۔۔
پھر تو تھا کہ رونا تھم ہی نا رہا تھا۔۔۔۔ بڑی مشکل سے وہ باقی سارا فنکشن خود کو سنبھالے رہی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
زیغم کے کمرے میں کوٸی نہیں تھا۔۔۔ وہ واپس آتے ہی وہاں گھس گٸی تھی۔۔۔۔
نیچے گھر میں بہت شور تھا۔۔۔۔ وہ لوگ دلہن گھر لاۓتھے۔۔۔۔۔۔
اب اسد کی اور اس نٸ نیولی دلہن کی رسمیں چل رہی تھی۔۔۔۔۔
سب ہنستے گپے لگاتے۔۔ اسد کے ساتھ چیھڑ خانی کرتے اچانک زیغم کو خیال آیا۔۔ کہ وہ کہیں نظر نہیں آ ررہی۔۔۔
ہر کہیں اسے کھوجتا ہوا جب وہ یہاں پہنچا تو وہ زارو قطار رو رہی تھی۔۔۔۔
وہ تڑپ کر اندر آیا۔۔۔۔۔
ماہا کیا ہوا۔۔۔۔وہ اسکے قریب کھڑا تھا۔۔۔
ما ہا سر نیچےکۓ مسلسل روۓ جا رہی تھی۔۔۔
ہوا کیا ہے ۔۔ بتاو تو ۔۔۔۔ وہ اسکا ہاتھ پکڑ کر اسے کھڑا کر رہا تھا۔۔۔۔
سب مسلے حل ہو جاٸیں گے۔۔۔ابھی وہ فقرہ مکمل بھی نا کر پایا تھا۔ کہ وہ جھٹکے سے زیغم کے سینے سےلگی۔۔۔۔۔
پلیز زیغم ایسا کچھ مت کریں۔۔۔۔ پلیز۔۔۔۔میں آپکے بنا نہیں رہ سکتی۔۔۔۔ میں نفرت نہیں کرتی۔۔۔ ہچکیوں میں روتے ہوۓ یہ سب کہہ رہی تھی۔۔۔۔۔۔
زیغم کا دل بھنگڑے ڈال رہا تھا۔۔ اورلب مسکرا رہے تھے۔۔۔
مجھے پتہ ہے یہ سب۔۔ زیغم نے اسکے کان میں سرگوشی کی۔۔۔
تمہیں کون پاگل چھوڑ رہا ہے۔۔۔۔۔زیغم اپنے ھونٹوں کو دبا کر اپنی ہنسی روکتے ہوۓ کہہ رہا تھا۔۔۔
وہ ایک دم اس سے الگ ہوٸی۔۔ اور زیغم کے سینے پر تھپڑوں کی بارش کر دی۔۔۔۔
ارے ارے ۔۔۔۔ وہ قہقہ لگا رہا تھا۔۔۔
اور وہ رو رہی تھی۔۔۔ ۔۔
ایکدم سےزیغم نے اسکا بازو کھینچ کراسے اپنے قریب کیا۔۔۔
اتنے لفظ تو ساری زندگی میری روح کو چھلنی کرنے والے بولتی رہی۔۔۔
یہ الفاظ بھی تمھارے بولے بنا میں کیسے مان لیتا۔۔۔ وہ ایک ھاتھ سے اسکے بالوں کو اسکے چہرے سے ہٹا رہا تھا۔۔۔
۔ یہ شرمانا۔۔۔ وہ کتنی حسین لگ رہی تھی۔۔۔
تمہیں پتا ہے۔۔۔ میں کب سے تمھیں چاہتا ہوں ۔۔۔مجھے تو خود خبر نہیں تھی۔۔۔
وہ اسکی بند پلکوں کو اپنی انگلی کی پوروں سے چھو رہا تھا۔۔۔
وہ ڈھے سی رہی تھی۔۔۔ ایسا لگ رہا تھا ٹانگو ں میں جان نہں رہی اور وہ ابھی ڈھیر ہو جاۓ گی۔۔۔۔۔
ماہی تم نے اس دن کے لیۓ مجھے معاف کر دیا نہ۔۔۔ زیغم نے تھوڈی سے پکڑ کرا سکا چہرہ اوپر کیا۔۔۔
جی۔۔۔۔ وہ دھڑکتے دل سے بس اتنا ہی کہہ سکی۔۔۔۔
وہ بے ساختہ نیچے جھکا تھا۔۔۔ اسکے چہرے کے بلکل قریب۔۔۔
وہ کرنٹ کھا کر دور ہوٸی تھی۔۔۔۔
زیغم نے ھاتھ کی گرفت کو مظبوط کر لیا۔۔۔
چھوڑیں مجھے نیچے جانا ہے۔۔۔۔ ماہا کو اسکے ارادے خطرناک لگ رہے تھے۔۔۔۔
تم نے چھوڑا تھا شام کو۔۔۔ جب اتنا تیار ہو کر وار کرنے سامنے آ پہنچی تھی۔۔۔ زیغم نے اپنی مدھوش آواز میں کہا۔۔۔
وہ ہلکا سا ہنسی تھی زیغم پلیز۔۔۔۔ ھاتھ سے اسے پیچھے کرنے کی کوشش کر رہی تھی۔۔۔۔جب کے دل دھڑک دھڑک کر پاگل ہو رہا تھا۔۔۔۔
پاس آجاٶ شرافت سے۔۔۔ ورنہ میری زبردستی جانتی ہو تم پھر۔۔۔ وہ اور شرارتی ہو رہا تھا۔۔۔ لیکن اس بات کے ذکر سے ایک دم وہ رک سا گیا۔۔۔
وہ جو تن من اس پر وارنے کو تیار کھڑی تھی ایک دم اسکے پیچھے ہونے پر حیران ہو کر اسے دیکھا۔۔۔۔
اچھا سنو ایک بات تم سے چھپاٸی میں نے زیغم کے چہرے پر ایک کرب اتر آیا تھا۔۔۔۔
تمھارہ مسکیرج ہوا تھا۔۔۔۔ جب ہم پاکستان آۓ تھے۔۔۔۔
وہ پیار سے اسکے گال کو اپنے ھاتھوں میں لے کر بولا۔۔۔۔
میں نے صرف تمھاری پریشانی کی غرض سے چھپایا۔۔۔۔مجھے معاف کر دو۔۔۔
ماہا تڑپ کر اسکے سینے سے جا لگی۔۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر یونہی گزر گٸۓ۔۔۔۔ بال اتنے لمبے کر لیے۔۔۔ وہ اسکے بالوں کو اپنے ھاتھوں سے سہلا رہا تھا۔۔۔
آپ کے لیے ۔۔۔ ماہم کی گھٹی سی آواز نکلی۔۔۔ اس نے منہ زیغم کے سینے میں چھپایا ہوا تھا۔۔۔۔
او ہوں ۔۔۔۔ میرے لیے۔۔۔۔ اس نے شرارت سے ماہا کا منہ اوپر کیا۔۔۔۔۔
ایسا کیسا عشق ہوا۔۔۔ میری وجہ سے کاٹ ڈالے تھے اور میری وجہ سے بڑھا لیے۔۔۔وہ مدھوشی میں بولے جا رہا تھا۔۔۔۔
ماہا کھل کھلا رہی تھی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک سال بعد۔۔۔۔
ماہی ۔۔۔ ماہی۔۔۔ وہ اسے کب سے آوازیں دے رہا تھا۔۔۔
چھوٹے سے سعاد کا رو رو کے برا ھال تھا۔۔۔۔
جی بولیں ۔۔۔ وہ تیزی سے دوڑتی ہوٸی آٸی شا ٸید کچن میں تھی۔۔۔
یار چپ کرواٶ اسے مجھے نہیں سمجھ آ رہی۔۔۔۔وہ پریشان کھڑا تھا۔۔۔۔
پکڑایں مجھےایسے پکڑتے کوٸی چھوٹے سے بچے کو۔۔۔ ماہا کے ماتھے پر بل پڑے تھے۔۔۔۔
اس نے سعاد کو جیسے ہی پکڑا وہ چپ ہو گیا۔۔۔۔
دیکھا دیکھا کتنا چلاک ہے یہ۔۔۔ تمھارے پاس آتے ہی چپ۔۔۔۔
کر گیا وہ ماہا کے پیچھے کھڑا تھا۔۔۔ سامنے دیوار پر لگے قد آدم آینٸے میں ان تینوں کا سراپا تھا۔۔۔۔۔۔

–**–**–
ختم شد
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: