Ishq E Ghaiz Novel By Amrah Sheikh – Episode 5

0
عشقِ غیظ از امرحہ شیخ – قسط نمبر 5

–**–**–

وشہ کہاں رہ گئی ہو ؟ میں نے کہا تھا تمہے مغرب سے پہلے گھر آنا ۔۔۔۔۔امی پریشان نہ ہوں آ رہی ہوں بس۔۔۔
وشہ اپنی فرینڈ کے گھر سے باہر نکلتی۔۔ نورین بیگم سے بات کر رہی تھی۔۔۔جو دیر ہونے پر اسے ڈانٹ رہی تھیں
اوکے۔۔۔میں بند کر رہی ہوں۔۔۔۔آکر اپکا سارا غصہ چٹکیوں
میں ختم کردونگی۔۔۔اللہ‎ حافظ۔۔۔۔
وشہ نے مسکرا کر کال ڈسکنیکٹ کر کے موبائل پرس میں رکھا۔۔۔اچھی طرح دوپٹہ سر پر جماتی واک کرتی گھر کی جانب جانے لگی۔
تھوڑی دور ہی گئی ہوگی۔۔۔ جب کسی نے گاڑی اسکے نزدیک
لاکر روکی۔۔۔ وشہ ڈر کر دو چار قدم پیچھے ہوئی۔۔۔
ہیڈلائنس کی روشنی کی وجہ سے وہ چہرہ نہیں دیکھ سکی.. کوئی کار سے اتر کر اسکے قریب آرہا تھا۔۔۔چہرہ ابھی بھی واضع نہیں تھا۔۔۔
کون بدتمیز ہے؟ وہ اسکے قریب آیا۔۔۔۔تو چہرہ واضع ہوا۔۔
خالد کو سامنے دیکھ کر وہ تھوڑی گھبرا گئی۔۔جو کمینگی سے مسکراتا نزیک آ کر کھڑا ہوگیا تھا۔
“ہائے بیوٹیفل۔۔۔ اس وقت یوں اکیلی کہاں جا رہی ہو؟ خالد کی نظریں اپنے جسم کے آرپار محسوس ہوئی تو دوپٹہ پر گرفت سخت ہوگئی۔۔۔۔
پھر ہمّت کرتی وہ مظبوط لہجے میں گویا ہوئی۔۔۔۔ظاہر سی بات ہے گھر جا رہی ہوں اور آپ کو کیا تکلیف ہے ؟
اوہ تو چلیں میں ڈراپ کردیتا ہوں۔۔۔۔اسے اوپر سے نیچے دیکھتے بولا
جی نہیں شکریہ میں چلی جاؤںنگی۔۔۔ وشہ تڑک کر بولتی جانے لگی۔۔۔۔ جب خالد تیزی سے سامنے آیا۔۔۔۔
کم اون سویٹی میں ہوں نہ اپنے نازک پیروں کو کیوں تھکا رہی ہو۔۔۔میں کھا تھوڑی جاونگا۔۔۔
چلو ساتھ تھوڑا انجوائے کرتے ہیں صرف تم اور میں۔۔۔۔۔۔بعد میں گھر چھوڑ دونگا۔۔۔ کسی کو پتہ بھی نہیں چلے گا۔
خالد آنکھ دبا کر قریب بڑھا۔۔۔۔۔۔۔ اسے اکیلے دیکھ کر وو شیر ہو رہا تھا۔۔۔۔۔۔وشہ تو سلگ کر رہ گئی اس کی بات سن کر۔۔۔۔۔
شٹ اپ۔۔۔۔۔ اپنی حد میں رہو سمجھے منہ توڑدونگی میں تمہارا گھٹیا انسان۔۔وشہ آگ بگولہ ہوتی جانے لگی۔۔۔۔
جب اسنے آگے بڑھ کر جارہانہ طریقے سے اسکا بازو پکڑ کر کھنچھا
وشہ کی درد سے چیخ نکل گئی۔۔۔۔۔ خالد نے اسے اپنی گرفت میں لے کر سختی سے اسکا منہ بند کیا
بہت نخرے ہیں سالی آج کی رات تیری ساری اکڑ نکالتا ہوں۔۔کسی کو منہ دکھانے کے لائق نہیں رہے گی۔۔۔۔خالد اسے کھینچتا گاڑی کے پاس لیجانے لگا۔
وشہ تڑپ رہی تھی۔۔۔۔ اس سے اپنا آپ چھوڑوانے کےچکر میں اس کے سر سے دوپٹہ ڈھلک کر کندھے پر آگیا۔۔۔
ہاتھ میں پکڑا پرس چھوٹ کر زمین پر گرگیا۔۔۔۔ خالد ایک مضبوط مرد تھا۔۔۔۔ وشہ نازک سی اپنے آپ کو چھوڑوانے کے چکر میں پسینے سے شربور ہو چکی تھی۔۔۔
دل میں شدت سے دعا کر رہی تھی کوئی آجائے بے شک کھڑوس ہی آجائے۔۔۔اسکی سانس اکھڑنے لگی۔۔۔ آنکھوں سے آنسوں بہ رہے تھے۔۔۔
خالد نے ابھی تک اسکا منہ دبایا ہوا تھا۔ ۔۔۔۔اور گھسیٹ رہا تھا۔ ۔۔
وہ گاڑی کا دروازہ کھول کر وشہ کو اندر دکھیلنے لگا۔۔۔ جو بار بار اسے پیچھے کرنے کی کوشش کر رہی تھی۔۔۔۔
چھ چھوڑدو۔۔۔۔ یکدم زور زبردستی میں وشہ کے سر پر کھلے دروازے کا کونہ بہت زور سے لگا۔۔۔۔۔وشہ چکرا کر رہ گئی۔ ۔۔
زور سے کنارہ لگنے کی وجہ سے اس کے سر سے خون بہنے لگا۔،۔مگر وہ انسان کے روپ میں درندا پرواہ کیے بغیر
بے دردی اسے زور سے اند دھکا دے کر دروازہ بند کر چکا تھا
وشہ کا سر بہت زور سے سیٹ پر لگا۔۔۔ تکلیف بڑھنے لگی۔۔ اس نے اٹھنے کی کوشش کی
مگر درد کے ساتھ۔۔ زیادہ خون بہنے کی وجہ سے آنکھوں کے آگے اندھیرہ چھانے لگا۔۔۔۔۔۔ دیکھتے ہی دیکھتے وہ ہوش و حواس سے غافل ہوگئی۔۔۔۔
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
وشہ کو ہوش آیا۔۔۔۔۔۔ سر میں شدید درد کی ٹیسیں اٹھیں آہستہ سے آنکھیں کھولنے کی کوشش کی
مگر تیز روشنی کی وجہ سے آنکھیں کھل نہیں رہی تھیں ۔۔۔۔وشہ۔۔ ماں کی آواز سنتے ہی اسنے دوبارہ آہستہ سے آنکھیں کھولیں
مگر نظر سیدھا۔۔۔۔ رزم پر گئی جو صوفے پر تانگ پے تانگ رکھے اسے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔ یَکدم اسے سب یاد آنے لگا
تو جھٹکے سے اٹھ بیٹھی۔۔۔ آرام سے وشہ۔۔۔۔ نورین بیگم نے اسکے ہاتھ پر ہاتھ رکھا۔۔وشہ نے دیکھا وہ اپنے روم میں ہے
اسکی اور رزم کی فیملی سب اسکے گرد جما تھے ۔وشہ اپنی ماں کے گلے لگ کر رونے لگی۔۔۔۔
چپ ہوجاؤ وشہ تم ٹھیک ہو ۔۔۔.اللہ‎ کا شکر ہے۔۔رزم اور زیاف دونوں وہیں تھے۔۔۔۔ ورنہ جانے کون دیکھتا۔۔۔
وشہ ان سے الگ ہوتی سب کو دیکھنے لگی اسے سمجھ نہیں آیا۔۔۔ امی کیا کہ رہی ہیں۔۔۔۔ وہ تو اکیلی تھی
اور۔۔۔۔۔ اس سے آگے وہ سوچنا نہیں چاہتی تھی۔۔۔ “بیٹا پریشان مت ہو تم ٹھیک ہوجاؤ گی۔۔۔۔
بس خون زیادہ بہنے کی وجہ سے کمزوری ہوگئی ہے۔۔افشاں بیگم اسکے پاس بیٹھتی پیار سے اسکے گال کو سہلاتی بولیں۔۔۔۔
وشہ نے کن اکھیوں سے رزم کو دیکھا جو ابھی تک اسے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔ کتنا غصہ بھرا تھا اسکی آنکھوں میں
وشہ کی ریڑھ کی ہڈی میں سنسناہٹ دوڑ گئی۔۔ تیزی سے نظروں کا زاویہ بدل کر اس نے ربیکا کو دیکھا۔۔۔
جو مسکرا کر قریب بیٹھ گئی۔۔۔
وشہ آپی گیٹ ویل سون۔۔ربیکا کہتی اسکے گلے لگ گئی۔۔
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
افنان صاحب نے وشہ کو آرام کرنے کا کہ کر سب کو روم سے باہر جانے کو کہا۔۔۔۔”تم آرام کرو میں تمھارے لئے کچھ اچھا سا بناتی ہوں۔۔۔۔۔ ماں کی بات سن کر وہ مسکرا دی۔۔
سب اس سے مل کر روم سے جانے لگے. سب سے آخر میں رزم اٹھا۔۔۔۔جب پیچھے سے وشہ کی آواز پر روکا۔۔۔
ایک نظر اسے دیکھا۔۔۔ وشہ کچھ کہتے کہتے روک گئی۔۔۔
اسے ڈر تھا۔۔۔۔ رزم اسکی اچھی خاصی کلاس نہ لے لے
“میں کب آیا۔۔۔۔۔ کیسے وہاں پونھنچا۔ ۔۔۔ تمہے جاننا ضروری نہیں۔۔۔۔۔ تمھارے لئے اتنا ہی کافی ہے۔۔۔۔۔
کچھ غلط ہونے سے پہلے ہی تم سہی سلامت اپنے گھر پر ہو۔۔۔۔ رزم سرد لہجے میں بولتا۔۔۔۔۔۔قدم قدم چلتا اس تک آیا
پھر جھک کر اسکی آنکھوں میں جھانکتا کہنے لگا۔۔۔۔
آیئندہ اگر اکیلی کہیں گئی۔۔۔۔ اسکی زمیدار تم خود ہوگی۔۔۔۔
اب کی بار اسکا لہجہ برف کی طرح ٹھنڈا تھا۔۔۔۔۔ وشہ کے رونگٹے کھڑے ہوگئے۔۔۔عجیب خوف تھا۔۔۔۔۔وشہ کو پہلی بار خوف آیا اس سے۔۔۔
رزم کہ کر سیدھا کھڑا ہوا اور تیزی سے باہر چلا گیا۔۔۔
پیچھے وشہ اپنے ساتھ ہوۓ حادثے کو بھول کر رزم کی باتیں سوچنے لگی۔ ۔۔
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
رات کے تین بج رہے تھے۔۔ گہری پراسرار سرد رات ۔۔۔۔۔جہاں سے وہ گزر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔جگہ کافی سنسان تھی۔۔۔۔
اپنی گرل فرینڈ کو اسکے گھر ڈراپ کرتا وہ جھومتے جھوماتے اپنے گھر کی جانب جا رہا تھا۔۔۔۔
ماتھے پر سفید پٹی اس کے زخمی ہونے کا پتہ دے رہی تھی
تیز گانے لگائے ساتھ خود بھی گنگناتا۔۔۔۔بہت خوش لگ رہا تھا۔۔ سگرٹ کے کش لگتا۔۔۔۔۔مست تھا۔۔۔۔۔
جب یکدم اسکی گاڑی جھٹکا کھا کر بند ہوئی۔۔۔۔۔۔ گاڑی بند ہوتے ہی گھپ اندھرا ہوگیا۔۔۔ ہر طرف سناٹا تھا۔۔۔۔۔
صرف جھینگر۔۔۔۔۔کیڑے مکوڑوں کی آواز سنناٹے کو چیرتی اسکے کانوں میں پڑھ رہی تھی….
تھوڑی گھبراہٹ ہونے لگی مگر گہری سانس لیتا دوبارہ سے کار سٹارٹ کرنے لگا۔۔۔ گڑگڑ کی عجیب آواز آتی۔۔۔۔۔
مگر اسٹارٹ نہیں ہورہی تھی۔۔۔۔۔ دس منٹ تک یہی عمل دوہرایہ۔۔۔۔شٹ۔۔۔۔تنگ آکر اسٹیرنگ پر زور سے ہاتھ مارتا سر سیٹ پر رکھ کر گہرے گہرے سانس لینے لگا۔۔۔۔
یکدم پھر کار کی ہیڈلایٹس روشن ہوئیں۔۔۔۔ مگر گاڑی بند تھی۔۔۔۔خوف سے آنکھیں پھلائے وہ سامنے دیکھنے لگا
جہاں لال آنکھوں والا کالا کتا اسکی جانب دیکھ رہا تھا۔۔۔
اسکے پسینے چھوٹ گئے۔۔۔کانپتے ہاتھوں سے گاڑی کی چابی پر ہاتھ رکھ کر گھومانے لگا۔۔۔۔
مگر سب بے سدھ۔۔۔ایک بار پھر ہیڈلائٹس بند ہوئیں۔۔۔مگر اب کی بار وہ پاگلوں کی طرح چیخنے لگا۔۔۔باہر نکلنے کی ہمت نہیں تھی۔۔۔۔۔
کچھ سمجھ نہیں آرہا تھا کیا کرے۔۔۔۔۔ جب گاڑی میں دل فریب سے خوشبو انے لگی۔۔۔۔
اسنے ہاتھ روک کر ڈرتے ڈرتے اپنے برابر والی سیٹ پر سر گھوما کر دیکھا۔۔۔اور وہیں پتھرا گیا۔۔۔۔۔
ساتھ بیٹھی لڑکی نے ہاتھ بڑھا کر اسکے سینے پر۔دل کی جگا پر اپنا ہاتھ لیجا کر دباؤ دیا۔۔۔
دیکھتے ہی دیکھتے اسکا جسم سرد پڑھ گیا۔۔۔۔
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
ٹھک ٹھک ٹھک۔۔کیا میں اندر آسکتی ہوں۔۔۔ وشہ بیڈ کراؤں
سے ٹیک لگائے ناول پڑھ رہی تھی۔۔۔۔جب دروازہ نوک کرتی ربیکا نے مسکرا کر اندر انے کی اجازت مانگی. .
وشہ نے سر اٹھا کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔دروازے پر ربیکا کو دیکھ کر مسکرائی۔۔۔۔۔۔”یہ بھی کوئی پوچھنے کی بات ہے۔۔۔ تمہاری آپی کا روم ہے۔۔۔۔۔جب مرضی آؤ۔۔۔
وشہ اسے دیکھ کر مسکراتی۔۔۔۔۔ ناول بند کرتی سائیڈ ٹیبل پر رکھ کر اسکی جانب متوجہ ہوئی۔۔ جو مسکرا کر اندر آرہی تھی…وہ تو ہے۔۔ ربیکا نے گردن اکڑا کر کہتی دونوں۔ہنس دیں۔۔۔۔۔
ؓہممم۔ ۔۔۔اب کیسا ہے زخم آپ کا۔۔۔۔”بہتر ہے۔..درد تو نہیں ہوتا۔۔۔ نہیں سر میں درد تھا لیکن اب ٹھیک ہوں
وشہ نے مسکرا کر ٹانگیں سمیٹ کر اسے اپنے قریب بیٹھنے کی جگہ دی۔۔۔۔ربیکا تم سے ایک بات پوچھوں؟
وشہ کچھ سوچتی سیدھی ہو کر بیٹھی۔۔۔پھر اسکے ہاتھ پر ہاتھ رکھتی گویا ہوئی۔۔۔
جی پوچھیں۔۔۔ربیکا نظریں چرا کر بولی۔۔۔وہ جانتی تھی وشہ آپی کیا جاننا چاہتی تھیں۔۔۔
کل جو ہوا۔۔۔۔میرا مطلب رزم نے کیا بتایا گھر پر
وشہ کو سمجھ نہیں آرہا تھا کیسے پوچھے۔۔،مگر وہ پھر بھی لازمی جاننا چاہتی تھی۔۔۔
ہاہ۔۔۔۔رزم بھائی نے بس یہ بتایا کے آپ کتے سے ڈر کر بھاگ رہی تھی۔۔اپکا شاید پیر مڑا تھا کوئی پتھر لگا تھا۔۔۔۔۔۔
آپ کو بھاگتے اور پھر گرتے دیکھ لیا تھا۔۔۔۔ ہسپتال جانے تک آپ بیہوش ہوچکی تھیں۔۔۔ سمپل۔۔۔اور اتنا مت سوچیں۔۔۔
ربیکا کے چپ ہوتے ہی وشہ نے لمبی سانس لی۔۔۔ہوسکتا ہے گھر پر چھپانے کے لئے فرضی کہانی بنائی ہو۔۔۔
ویسے اچھا ہی ہے خوامخہ سب پریشان ہوجاتے۔۔۔۔۔امی سے کلاس بھی اچھی خاصی لگ جاتی۔۔وشہ سوچتی ریلیکس ہوگئی۔۔
یہی اللہ‎ کا بہت کرم تھا کے وہ عزت سے اپنے گھر پونھنچ گئی تھی
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
السلام عليكم آنٹی۔۔۔۔ وشہ اندر آتی افشاں بیگم کو سلام کرتی
ملی۔۔۔ وعلیکم اسلام۔۔۔کیسی ہو بیٹا۔۔۔۔اب زخم تو ٹھیک ہو رہا ہے۔۔۔
“افشنا بیگم نے اسکا ماتھا چھو کر پوچھا۔ ۔۔۔۔”ٹھیک ہے اب کافی دن ہوگئے تھے۔۔۔۔۔ہائے میں تو آرام کر کر کے تھک گئی ۔۔
اس لیے سوچا کیوں نہ آج آپ کے گھر کو رونق بخشی جائے۔۔۔۔
وشہ شرارت سے آنکھیں مٹکا کر بولی۔۔۔۔۔ہمم۔۔۔بہت اچھا کیا او بیٹھو میں جب تک ربیکا کو بھجتی ہوں۔۔۔۔
افشاں بیگم کہ کر جانے لگیں۔۔۔ جب پیچھے سے وشہ نے روکا۔۔۔۔ آنٹی کیا میں چلی جاؤں۔۔۔ ہاں کیوں نہیں اپنا ہی گھر ہے۔۔۔
تھنک یو وشہ مسکرا کر کہتی سیڑیاں چڑھ گئی
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
وشہ نے اوپر پونھنچ کر نوک کیا۔۔۔اجازت ملتے پر وہ مسکراتی دروازہ کھول کر اندر بڑھی۔۔۔
مگر اندر جاتے ہی وہ جو زور سے سلام کرنے والی تھی ربیکا کے ساتھ کسی لڑکی کو دیکھ کر چپ ہوگئی۔ ۔۔۔۔۔۔ کافی خوبصورت لڑکی اسکے سامنے بیٹھی تھی۔۔۔
ربیکا اسے دیکھتے ہی اٹھ کر اسے گلے لگایا۔۔۔۔۔کیسی ہیں وشہ آپی ؟۔۔۔۔مم میں ٹھیک ہوں تم سناؤ۔۔۔ جلدی سے سر جھٹکتی اسکی جانب متوجہ ہوئی۔ ۔۔
میں ٹھیک ہوں۔۔۔۔ وشہ اپی یہ ہماری کزن ہے آرا معقوف ۔۔۔ اور آرا آپی یہ ہماری دوست ہیں وشہ افنان۔۔۔۔۔ ربیکا نے دونوں کا تعارف کروایا۔۔۔
وشہ دوبارہ اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔لمبا قد۔۔۔۔۔(رزم سے تھوڑا کم) گورا رنگ۔۔۔۔ کرل ڈارک براؤن بال جو کندھے سے تھوڑے لمبے تھے۔۔۔ گرین آنکھیں۔۔ چست جینس اور ٹاپ پہنے ہلکا ہلکا میک اپ کیے وہ مسکرا کر اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔
وشہ کو جلن ہونے لگی مگر زبردستی مسکراہٹ کے ساتھ وہ اس سے ملی۔۔۔
خوشی ہوئی تم سے مل کر راستے میں بتایا تھا رزم نے ربیکا کی دوست کے بارے میں۔۔۔ آرا مسکرا کر بتا رہی تھی
جب لے وشہ تو جل بھن ہی گئی۔۔۔۔۔ اچھا ربیکا میں چلتی ہوں۔۔۔ وشہ خود پے ضبط کرتی
اسکی بات کا جواب دیے بغیر یکدم بولی۔ ۔۔۔ جانے کیوں اسے جیلسی ہو رہی تھی۔۔۔۔
کمینی کی آواز بھی اتنی پیاری ہے ضرور اپنے جال میں پھنسانے آئی ہوگی۔۔۔۔ ہنہ خیر میری بلا سے بھاڑ میں جائیں۔۔۔
وشہ دل ہہ دل میں جل کر بولی۔۔۔۔۔۔پھر ربیکا کو اللہ‎ حفظ کہ کر جانے لگی۔۔۔۔۔۔ جب آرا کی آواز پر رکی۔۔۔۔
وشہ کیا تم نہیں چلوگی ہمارے ساتھ رزم زیاف تمھارے دونوں بھائی ہم سب گھومنے جا رہے ہیں….
آرا جوش سے بتا رہی تھی مگر دوسری طرف تو مانو آگ ہی لگ ہے۔۔۔نو تھنکس۔۔ تڑخ کر کہتی تیز تیز قدم اٹھاتی کمرے سے ہی نکل گئی۔۔۔۔۔
پیچھے ربیکا شرمندگی سے اسے دیکھنے لگی ۔ آرا آپی شاید ان کا موڈ نہ ہو۔۔۔۔۔
اٹس اوکے۔۔۔۔آرا مسکرا کر کہتی دروازے کے سمت دیکھنے لگی۔۔۔۔۔پھر سر جھٹک کر واش روم چلی گئی۔۔۔
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
ہنہ اس دن کتنا بولا تھا میں نے۔۔۔۔۔۔۔۔ مگر میری تو بات نہیں مانی۔۔،۔ وہ تو ضامن نے کہا تو لے کر گئے۔۔۔
اور پھر وہاں حنان کو آرڈر دے کر خود گاڑی سے ہی اتر گئے تھے۔۔۔
اب اپنی کزن کو گھومنانے لیکر جا رہے ہیں خوبصورت جو ہے ۔۔مگر میں کونسی بدصورت ہوں۔ ۔۔۔۔
میں کزن نہ سہی دور کی پڑوسن تو ہوں اور بہن کی آپی۔۔۔۔ وشہ خود سے بڑبًاتی الٹا سیدھا سوچتی پورج تک آئی
جہاں رزم کے ساتھ زیاف حنان اور ضامن کھڑے خوش گپیوں میں مصروف تھے۔۔۔۔ وشہ ناک چڑھاتی انہیں نظر انداز کرتی پاس سے گزری۔۔۔
رزم نے ایک نظر اسے دیکھا۔۔۔۔ حنّان کو اندر سے بلالنے کو بھیجا اور خود وشہ کے پیچھے گیا جس کی بڑنڑاہٹ دوبارہ جاری تھی۔۔۔
کہاں جا رہی ہوں۔۔۔ رزم کی آواز پر خود بہ خود اسکے قدم روکے۔۔۔
آپ سے مطلب۔۔۔۔وشہ پھاڑ کھانے والے انداز میں بولتی گیٹ سے باہر نکل گئی۔۔۔۔
رزم نے غصے میں لب بھنج لئے۔۔۔۔ زیاف۔۔
رزم کی دھاڑ پر گیٹ کے پاس کھڑی وشہ اچھل گئی وہ سمجھی تھی رزم پیچھے آئے گا مگر سب الٹا ہوگیا
غصے سے پیر پٹختی گھر کی جانب جانے لگی
زیاف تیزی سے پاس آیا۔۔کیا ہوا بھائی۔۔۔۔
وشہ اکیلے جا رہی ہہے چھوڑ کر او اسے۔
رزم غصہ ضبط کرتا۔۔۔۔ گاڑی کی جانب بڑھا جب کے زیاف گیٹ سے باہر۔
۔~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
وشہ اپنی امی کے ساتھ ازمغان ولا آئی ہوئی تھی۔۔۔۔۔آرا گھر پر نہیں تھی۔۔۔۔۔چاروں لاؤنج میں ہی بیٹھے تھے۔
ربیکا بیٹا واشروم جانا ہے میرے ساتھ چلو۔۔۔۔۔کمرے تک۔۔۔۔۔نورین بیگم ربیکا کو ہلکی آواز میں بولیں۔۔۔۔اچھا آنٹی چلیں۔۔۔
ربیکا فورن کھڑی ہوئی اپنی ماں کو مخاطب کر کے “ہم آتے ہیں ۔۔۔۔ کہتی چلی گئی۔۔۔۔۔۔
لاؤنج میں اب صرف افشاں بیگم اور وشہ تھیں جب رزم آیا السلام عليكم۔۔۔۔ رزم۔ نے ایک نظر اسے دیکھا جو ابھی تک
ناراض تھی . ( خود ہی میں) وعلیکم اسلام ۔۔۔۔ہوگئیتدفین ۔۔۔۔
جی۔۔۔۔۔اچھا جاؤ نہا لو۔۔۔۔ رزم نے دوبارہ اسے دیکھا جو دوری طرف دیکھ رہی تھی۔۔۔۔پھر سر جھٹکتا اپنے روم کی جانب بڑھ گیا۔۔۔۔
رزم کے جانے کے بعد وشہ افشاں بیگم کی طرف متوجہ ہوئی۔۔۔ آنٹی کس کا انتقال ہوگیا ہے۔۔۔ وشہ نے ناسمجھی سے انھے دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔
رات کو خالد کا ہارٹ اٹیک سے انتقال ہوگیا۔۔نشہ بھی بہت کیا ہوا تھا۔۔۔۔اتنی عمر نہیں تھی پر خیر موت کا کیا بھروسہ کب آجائے۔۔۔۔۔
افشاں بیگم افسوس سے بتا رہی تھیں۔۔ جب کے وشہ بلکل چپ ہوگئی تھی۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: