Jaan e Jaana Novel by Asra khan – Episode 1

0
جان جاناں از اسری خان – قسط نمبر 1

–**–**–

السلام و علیکم سر۔۔۔۔۔!
گڈ آفٹر نون سر۔۔۔۔۔!
ویلکم سر۔۔۔۔۔!
وہ جوں ہی شوروم میں داخل ہوا۔۔۔۔۔بہت سی آوازیں اسکے کانوں سے ٹکرائیں۔۔۔۔
سر ہلا کر ہلکی سی سمائل پاس کرتا۔۔۔۔، جو اسکی ذات کا خاصا تھی۔۔۔۔ وہ آفس کی طرف بڑھ رہا تھا۔۔۔۔۔
سر کیا لیں گے۔۔۔۔ جوس یا کافی۔۔۔۔؟؟
اسکا مینیجر موؤدب سا ہاتھ باندھے سوال کر رہا تھا۔۔۔۔
فلحال کچھ نہیں۔۔۔۔۔!
تم جلدی سے اس ویک کا ڈیٹا لاؤ۔۔۔۔
مجھے دوسرے سٹی بھی جانا ہے۔۔۔۔
ہری اپ۔۔۔۔! ٹائم ویسٹ مت کرو۔۔۔۔
وہ کلائ پر بندھی قیمتی گھڑی کی طرف دیکھتا اسے آرڈر کرتا ہوا بولا۔۔۔۔
شیور سر ۔۔۔!
وہ تیزی سے باہر نکل گیا۔۔۔۔
جان نے گردن پیچھے گرا دی۔۔۔۔۔
آنکھیں بند کئے وہ آہستگی سے گنگنانے لگا۔۔۔۔۔
سفید رنگت پر گھنی چھوٹی سی داڑھی۔۔۔، کھڑی ہوئی تیکھی ناک اور لبوں پر ہلکی سی مسکراہٹ۔۔۔۔اسکی وجاہت کو چار چاند لگاتی تھی ۔۔۔
عامر۔۔۔۔۔، عامر یار یہ دیکھو۔۔۔۔ یہ والی گاڑی اچھی ہے ۔۔۔
اسکی سماعتوں سے ایک پتلی سی آواز ٹکرائ۔۔۔۔
جاناں۔۔۔۔، بیٹی دیہاں سے۔۔۔۔گر جاؤ گی ۔۔۔
ایک اور مردانہ آواز اسکے کانوں سے ٹکرائ۔۔۔۔
اس نے جھٹ سے آنکھیں کھولیں۔۔۔۔
“جاناں۔۔۔۔؟” کتنا میچ کرتا ہے نا میرے نام سے ۔۔۔۔۔
خود سے کہتا وہ ہنسا۔۔۔ اور اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔۔
اسے جاناں کو دیکھنے کی خواہش ہوئی۔۔
دروازہ کھول کر اس نے باہر جھانکا۔۔۔۔۔
سامنے ایک بیس بائیس سالہ لڑکی جینز اور ٹی شرٹ میں ملبوس کندھوں پر اسٹول اور پیروں میں جوگرز پہنے ماربل کے چکنے فرش پر سلائڈنگ کرتی ہوئی جوش و خروش سے ایک سے دوسری گاڑی کی طرف بڑھ رہی تھی ۔۔۔
جان اسکی حرکت پر بے اختیار ہنس پڑا۔۔۔۔
اسے وہ کوئی پاگل لگی۔۔۔۔ کیوٹ سی پاگل۔۔۔۔۔ اس نے ذرا اپنی راۓ میں ترمیم کی۔۔ ۔۔
وہ وہیں دیوار سے ٹیک لگاے اسے دیکھنے لگا۔۔۔۔
سر اس فائل میں سارا ڈیٹا ہے۔۔۔۔
یاسر (مینیجر) فائل لئے اسکے پاس آیا۔۔۔۔
جاناں کہیں گاڑیوں کے پیچھے غائب ہوگئی تھی۔۔۔۔
سر۔۔۔۔۔۔؟؟
یاسر نے ذرا حیرانی سے اسے پھر سے پکارا ۔۔۔۔۔
آ۔۔۔۔ہاں۔۔۔ہاں۔۔۔۔۔۔
وہ چونکا
اسے آفس میں رکھو۔۔۔۔میں آتا ہوں۔۔۔۔
اوکے سر۔۔۔۔۔!
وہ ذرا آگے اسکی تلاش میں بڑھا۔۔۔۔۔
قدم بڑھاتا وہ اسے تلاش کر رہا تھا۔۔۔
وہاں کے ورکرز حیرانی سے اپنے باس دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔
جو اپنے آفس سے ہی بہت کم باہر نکلا کرتا تھا۔۔۔۔
کدھر چلی گئی۔۔۔۔؟
اس نے سوچا۔۔۔۔۔
کہ اچانک اسے زور دار دھکّا لگا۔۔۔۔۔
وہ سنبھلنے کی کوشش سے پہلے ہی زمین بوس ہو چکا تھا۔۔۔۔
سر۔۔۔۔۔! سر۔۔۔اسکے ملازمین بوکھلا گئے ۔۔۔۔
اوہ۔۔۔۔ رئیلی سوری۔۔۔۔!
مم۔۔میں ایسا نہیں چاہتا تھی۔۔۔۔
گھبرائ ہوئ آواز پر اس نے نظریں اٹھائیں۔۔۔۔
سامنے وہی تو تھی۔۔۔۔۔
جس کو وہ تلاش کر رہا تھا۔۔۔۔۔
بیشک ملنے کا سٹائل بہت ہی برا تھا۔۔۔۔۔مگر یادگار رہنے والا ضرور تھا ۔۔۔
سر۔۔۔۔۔؟ یاسر فورا اسکی طرف اسے سہارا دے کر اٹھانے کے لئے بڑھا۔۔۔۔
مگر اسکے ہاتھ کے اشارے پر رک گیا۔۔۔۔
جاناں پریشان نظروں سے اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔
دکھنے میں تو یہ آدمی اسے بہت امیر کبیر لگتا تھا۔۔۔۔۔
کیا پتا اسکو کیا سزا دیتا۔۔۔۔
مس آپ مجھے اٹھائیں گی۔۔۔۔۔
اس نے جاناں کی طرف انگلی اٹھا کر اسے کہا۔۔۔۔
مم۔۔ میں۔۔۔۔؟
وہ گھبرا گئی ۔۔۔۔
جی گرایا آپ نے ہے۔۔۔۔تو اٹھائیں گی بھی آپ۔۔۔۔ ہے کے نہیں۔۔۔؟؟
وہ مسکرایا۔۔۔۔
جاناں پہلے شش و پنج میں کھڑی رہی۔۔۔۔
پھر نا چاہتے ہوئے بھی اسکی طرف ہاتھ بڑھا دیا۔۔۔۔
جان بھر پور انداز میں مسکراتا اسکا ہاتھ تھام کر اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔
تھینک یو۔۔۔۔۔!
اس نے سر کو ذرا خم دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔
جاناں بیچاری سر ہلا کر رہ گئی۔۔۔۔
حالانکہ غلطی بھی اسکی ہی تھی ۔۔۔۔
یہ کیا ہو رہا ہے۔۔۔۔؟؟
عامر کی آواز پر اسے کرنٹ لگا ۔۔۔۔
آ۔۔۔عامر کک۔۔۔کچھ بھی تو نہیں۔۔۔۔
وہ اپنا ہاتھ چھڑوا کر جلدی سے اسکے پاس جا کھڑی ہوئی۔۔۔۔
کون ہے یہ۔۔۔۔؟؟؟
عامر جان کو گھورتا ہوا بولا۔۔۔
“شوروم کا مالک۔۔۔۔”
جواب جان کی طرف سے آیا۔۔۔۔۔
عامر کے تنے ہوۓ نقوش وہیں ڈھیلے پڑ گئے۔۔۔۔۔
ناءس تو میٹ یو۔۔۔۔۔!
عامر اب کھسیانا سا اسکی طرف ہاتھ بڑھاتا ہوا بولا۔۔۔۔
جان نے رسما ہاتھ ملا کر چھوڑ دیا ۔۔۔
وہ بابا آگۓ ۔۔۔۔
جاناں کی آواز پر اس نے سامنے دیکھا۔۔۔۔
ایک ادھیڑ عمر آدمی جن کے ساتھ جاناں چپکی ہوئی تھی ۔۔۔۔
وہ انکا تعارف جان سے کروا رہی تھی۔۔۔۔
جان نے سر کے اشارے سے انہیں سلام کیا۔۔۔۔
آپ کون ہیں انکے۔۔۔۔؟
اس نے عامر سے پوچھتے ہوئے جاناں کی طرف اشارہ کیا۔۔۔۔
یاسر حیرانی سے اپنے باس کو دیکھنے لگا ۔۔۔
جو فضول سے فضول تر سوال ان اجنبیوں سے کئے جا رہا تھا۔۔۔۔۔
وہ تو کسی اجنبی سے بات تک کرنا پسند نہیں کرتا تھا۔۔۔۔۔
میں انکی فیانسی ہوں۔۔۔ اور آج بابا اپنے ہونے والے داماد کو گاڑی دلوانے لاۓ ہیں۔۔۔۔
عامر کی بجاۓ جاناں نے خود ہی پورا تعارف کروانے کے ساتھ یہاں آنے کی ریزن بھی بتا دی۔۔ ۔
“اوہ مطلب سسر کے ٹکڑوں پر ۔۔۔۔۔۔ پلنے والے داماد۔۔۔۔”
اسکی بات پر جہاں جاناں کا رنگ پھیکا ہوا۔۔۔۔وہاں عامر کا چہرہ غصّے سے لال پڑ گیا۔۔۔۔
اہم ۔۔۔اہم۔۔۔۔
یاسر کھنکارا۔۔۔۔
اسکا صبر جواب دے گیا تھا۔۔۔۔
اسکا باس ضرور سستی چرس پی کے آیا تھا ۔۔۔۔جو بہکی بہکی باتیں کر رہا تھا۔۔۔۔
اپنی سوچ پر لعنت بھیجتے ہوئے اس نے ایک نظر جان کو دیکھا۔۔۔۔
اور نرمی سے گویا ہوا۔۔۔۔
“سر آپ پلیز اندر چلیں ۔۔۔ہم کسٹمر کو ڈیل کرتے ہیں۔۔۔۔”
جان نے سر ہلا دیا ۔۔۔۔
ایک مسکراتی نگاہ جاناں پر ڈال کر وہ آفس کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔۔
پیچھے عامر کی کٹیلی نگاہوں نے دور تک اسکا پیچھا کیا۔۔۔۔۔
سنو۔۔۔۔! اس لڑکی کے بارے میں مکمّل انفارمیشن چاہئے مجھے۔۔۔۔
جی باس۔۔۔!
اسکا اشارہ سمجھ کر یاسر نے بغیر حیران ہوئے سر ہلا دیا۔۔۔
اور آفس سے باہر نکل گیا۔۔۔۔
“جان جاناں”
فائل پر جھکا وہ دھیمے سے گنگنایا تھا۔۔۔۔
______________________________
جاناں اپنے والدین کی اکلوتی بیٹی تھی۔۔۔۔۔
اسکے والد اکرم صاحب کی کپڑے کی ایک بہت بڑی دکان تھی۔۔۔۔۔
جس میں اللّه پاک نے بہت برکت رکھی تھی۔۔۔۔۔اسکی والدہ نور بیگم گھریلو خاتون تھیں ۔۔۔۔
عامر اسکی پھوپھو کا بیٹا تھا۔۔۔
اسکے والدین کا اسکے بچپن میں ہی انتقال ہو گیا تھا۔۔۔۔۔
اکرام صاحب نے اسے اپنا بیٹا بنا لیا تھا۔۔۔۔اور ساتھ میں داماد بھی بنانا چاھتے تھے۔۔۔۔۔
جاناں اور عامر ساتھ میں بڑے ہوئے تھے ۔۔۔۔
دونوں میں صرف ایک سال کا فرق تھا۔۔۔
وہ دونوں ایک دوسرے کو پسند بھی کرتے تھے۔۔۔۔
جان ایک مشہور بزنس مین تھا۔۔۔۔۔ اسکا گاڑیوں کا شوروم تھا۔۔۔۔جسکی برانچز تقریبا ہر شہر میں پھیلی ہوئ تھیں۔۔۔۔
اسکی والدہ یمنہ نے اسکے بچپن میں ہی اسکے والد سے طلاق لے لی تھی۔۔۔۔
وہ کسی اور کو چاہنے لگی تھیں۔۔۔۔۔
اور اب جان کے والد یوسف صاحب کے ساتھ نہیں رہنا چاہتی تھیں۔۔۔۔
انہوں نے یمنہ کو طلاق تو دے دی۔۔۔۔
مگر کبھی اسے بھلا نہیں پاۓ تھے۔۔۔۔ مگر صبر کا دامن ہاتھ سے چھوٹنے بھی نہیں دیا۔۔۔
جان ابھی اٹھارہ سال کا تھا۔۔۔۔
جب انکی ڈیتھ ہوگئی۔۔۔۔ انکی موت کا صدمہ بہت بھاری تھا اسکے لئے۔۔۔۔ مگر وہ خود کو سنبھالنا جانتا تھا۔۔۔۔۔
والد کے ساتھ رہتے ہوئے وہ کام سیکھ گیا۔۔۔۔
اسلئے خوب محنت کی۔۔۔۔ اور اپنے والد کی سالوں کی محنت کو ضائع نہیں ہونے دیا۔۔۔۔
دنیا کے سامنے تو وہ ہنسنے والا اور خوش باش انسان تھا ۔۔۔
مگر کسی کو اسکی ہنسی میں کھوکھلا پن محسوس نہیں ہوتا تھا۔۔۔۔
______________________________
چاۓ۔۔۔۔۔!
شام کے وقت اکرام صاحب اور عامر لان میں ہوا کھا رہے تھے ۔۔۔
اندر کچن میں نور بیگم چاۓ اور کباب تیار کر رہی تھیں۔۔۔۔
ساتھ ہی جاناں انکی مدد کر رہی تھی ۔۔۔۔
جاناں کی آواز پر اکرام صاحب مسکراۓ۔۔۔۔
آگئی میری شہزادی۔۔۔۔!
اکرام صاحب نے محبّت سے کہا۔۔۔۔۔
ملکہ عالیہ نظر نہیں آ رہیں۔۔۔۔۔؟؟
انہوں نے شریر لہجے میں نور بیگم کا پوچھا۔۔۔۔
جاناں ہنس پڑی۔۔۔۔
آ رہی ہیں بھئ ملکہ اپنے بادشاہ کے لئے کباب لے کر۔۔۔۔
وہ آنکھ مار کر سامنے سے آتی نور بیگم کو دیکھ کر بولی۔۔۔۔
اکرام صاحب کا جاندار قہقہہ فضا میں گونجا تھا۔۔۔۔
نور بیگم بس باپ بیٹی کو گھور کر رہ گئیں ۔ ۔۔
تمھیں کیا ہوا۔۔۔۔؟؟
جاناں نے عامر کو ٹہو دیا۔۔۔۔۔
مگر وہ تنے ہوئے نقوش لئے سامنے خلا میں گھورتا رہا۔۔۔
ارے بیٹا۔۔۔۔۔ مل جائے گی گاڑی۔۔۔آپ نے آج خود ضد کی کہ یہاں سے نہیں لینی۔۔۔۔
اچھی بھلی چیز آپکو پسند آگئی تھی۔۔۔۔
پھر انکار کرنے کی وجہ ۔۔۔؟؟
۔
۔
۔ خیر ہم کل چلیں گے نا۔۔۔۔آ جائے گی گاڑی بھی۔۔۔۔
چلیں اپنا موڈ اچھا کریں۔۔۔۔
اکرام صاحب نے پیار سے عامر کو پچکارا۔۔۔۔۔
وہ جواب دینے کی بجاۓ چاۓ کا کپ اٹھا کر لبوں سے لگا گیا۔۔۔۔
اکرام صاحب بھی مطمئن سے چاۓ کی طرف متوجہ ہوگئے۔۔۔۔
جاناں نے ناگوار نظروں سے عامر کو دیکھا۔۔۔۔
عامر سے مجبت سہی مگر اسے اپنے باپ کا یوں ذلیل ہونا ہرگز پسند نہیں تھا۔۔۔۔
______________________________
“جان جاناں۔۔۔”
گنگناتے ہوئے اسکے ہاتھ اور آنکھیں اپنے کام کی طرف متوجہ تھے ۔۔۔۔
تصور میں جاناں کا سراپا لئے وہ اسکا سکیچ بنا رہا تھا۔۔
ایسے ہی کتنے سکیچ اس اپنے باپ کے بناۓ تھے ۔۔۔۔
انکو بناتے وقت اسکی آنکھوں میں آنسو ہوتے تھے۔۔
مگر آج لبوں پر مسکراہٹ کھیل رہی تھی۔۔۔۔۔
فائنلی ۔۔۔۔۔!!
سکیچ مکمّل کر کہ وہ اسے پوری طرح دیکھتا خوشی سے بولا۔۔۔۔
اسکی گھنٹوں کی محنت رنگ لائی تھی۔۔۔۔
سیل کے بجنے پر اس نے نگاہیں اس طرف اٹھائیں۔۔۔۔۔
یاسر کی کال تھی ۔۔۔۔
اسکے لبوں پر خوشی سے بھرپور مسکان دوڑ گئی ۔۔۔۔
یاسر ہمیشہ اچھی خبر لاتا تھا ۔۔۔۔۔!!!
______________________________
بیگم میں سوچ رہا ہوں۔۔۔۔۔
اس عید پر بچوں کی پراپر انگیجمنٹ کرتے ہیں۔۔۔۔۔
کافی عرصہ ہوگیا ہے۔۔۔کوئی فنکشن نہیں ہوا۔۔۔۔۔
تم کیا کہتی ہو ۔۔۔۔؟؟
اکرام صاحب نے دھلے ہوئے کپڑے تہہ کرتی نور بیگم سے پوچھا۔۔۔۔
میں کیا کہ سکتی ہوں۔۔۔۔۔؟
انہوں نے ایک جوڑا بنا کر سائیڈ پر رکھتے ہوئے لاپرواہی سے کہا۔۔۔۔۔
کیا مطلب کیا کہ سکتی ہوں۔۔۔۔؟؟
شاید وہ دونوں تمھارے بھی بچے ہیں ۔۔۔۔
وہ زچ ہوئے ۔۔۔۔۔
ہاں ہیں تو سہی۔۔۔۔۔
خیر ابھی تو رمضان آنے والا ہے ۔۔۔۔
عید کے تیسرے دن رکھ لیتے ہیں فنکشن۔۔۔۔۔
وہ اطمینان سے بولیں۔۔۔۔
چلو ٹھیک ہے۔۔۔۔
انہوں نے سر ہلا دیا۔۔۔۔
دروازے کے ساتھ کان لگا کر سنتی جاناں خوشی سے اندر بھاگ گئی تھی ۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: