Jaan e Jaana Novel by Asra khan – Episode 2

0
جان جاناں از اسری خان – قسط نمبر 2

–**–**–

عامر۔۔۔۔!
عامر یار کہاں بیزی ہو۔۔۔۔۔
تمھیں ایک خوش خبری سناؤں۔۔۔۔۔
وہ بغیر ناک کۓ اونچی آواز میں کہتی لپک کر کمرے میں داخل ہوئی۔۔۔۔
اندر فون پر کسی سے بات کرتا عامر جیسے گھبرا گیا۔۔۔۔
اس نے تیزی سے کال کاٹ دی۔۔۔۔
یار جاناں کیا تم میں ذرا سے مینرز نہیں ہیں۔۔۔۔؟؟
اتنا نہیں پتا کہ کسی کے کمرے میں جانے سے پہلے دروازہ ناک کرتے ہیں۔۔۔۔۔
وہ شدید ناگواری سے بولا۔۔۔۔
جاناں کو اسکی بات پر دھچکا تو لگا۔۔۔۔
مگر اس نے فورا خود کو سنبھال لیا ۔۔۔
کیا یار۔۔۔۔؟ ہر وقت مرچیں چباتے رہتے ہو۔۔۔۔۔
اس نے اس کے گال پر چپت لگاتے ہوئے ناراضگی سے کہا۔۔۔۔۔
اوکے میں ٹھیک ہوں۔۔۔۔؟؟
تم بتاؤ کیا بات کرنی تھی۔۔۔۔۔؟
اس نے تیزی سے اپنے چہرے کے بگڑے ہوئے تاثرات ٹھیک کۓ۔۔۔۔۔
ابھی اکڑنے کا وقت نہیں آیا تھا۔۔۔۔
وہ میں نے ابھی بابا اور امی جان کو ہماری انگیجمنٹ کی بات کرتے سنا ہے۔۔۔۔
وہ عید کا تیسرا دن ڈن کر رہے ہیں۔۔۔۔
وہ خوشی سے با مشکل اپنی آواز دبا کر آہستگی سے بولی۔۔۔۔
یہ تو بہت اچھی بات ہے۔۔۔۔۔
عامر جاندار انداز میں مسکرایا۔۔۔۔
ہاں نا۔۔۔۔!
وہ چہکی۔۔۔۔۔
بہت اچھی خبر دی جاناں۔۔۔۔۔
اپنی خوشی میں گم مسکراتی ہوئ جاناں کی طرف دیکھتا وہ بڑبڑایا تھا۔۔۔۔۔
______________________________
ٹھنڈا سلش حلق سے اتارتے ہوئے اس نے ایک نظر شیشے سے باہر دیکھا۔۔۔۔۔
باہر چلچلاتی دھوپ میں کام کرتے لوگ۔۔۔، ریڑھیوں والے۔۔۔۔۔کچھ فٹ پاتھ پر بیٹھے مزدور۔۔۔۔،
اے سی کی ٹھنڈک محسوس کرتے ہوۓ اس نے اللّه کا لاکھ لاکھ شکر ادا کیا۔۔۔۔۔
اسکا ڈرائیور ساتھ والے جنرل اسٹور سے راشن لینے گیا تھا ۔۔۔۔۔
اس نے جان سے اجازت مانگی تھی۔۔۔۔
اس نے بھی انکار نہیں کیا۔۔۔۔وہ بھلا کیوں انکار کرتا۔۔۔۔۔
عامر میں ونیلا آئس کریم کھاؤں گی۔۔۔۔۔
وہی پتلی مگر چیختی ہوئی آواز اسکی سماعتوں سے ٹکرائ۔۔۔
زیر لب مسکراتے ہوئے اس نے آواز کی سمت کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔
سامنے آئس کریم پالر کے دروازے پر ہی جاناں فرمائش کرنا شروع ہو گئی تھی۔۔۔۔
اور عامر اسے ناگوار نظروں سے گھور رہا تھا۔۔۔۔
اسے بہت زور سے ہنسی آئ۔۔۔۔
“کیوٹ سی پاگل” کہیں اپنی حرکتوں پر کنٹرول نہیں رکھتی تھی۔۔۔۔
وہ اسی کو دیکھنے میں محو تھا ۔۔۔
جب ہی صدام (ڈرائیور ) نے ڈرائیونگ سیٹ سنبھالی۔۔۔۔
سوری سر جی۔۔۔۔دیر ہوگئی۔۔۔۔۔
اس نے معذرت کرنے کے ساتھ ایک نظر جان کو دیکھا۔۔۔۔
وہ اسکی طرف متوجہ ہوتا تو سنتا ۔۔۔۔
کندھے اچکاتا وہ گاڑی سٹارٹ کرنے لگا ۔۔۔۔
انجن کے سٹارٹ ہونے پر جان چونکا۔۔۔۔
اور صدام کو دیکھا۔۔۔۔
جو ذرا حیرانی سے اسے جانچتی ہوئی نظروں سے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
جان نے فورا نگاہ واپس دوڑائ۔۔۔۔
وہ وہاں نہیں تھی۔۔۔۔
شاید اندر چلی گئی تھی۔۔۔۔
گہری سانس بھر کر اس نے صدام کو چلنے کا اشارہ کیا۔۔۔۔۔
اسکا دل بار بار یہ اقرار کر رہا تھا۔۔۔۔
کہ جاناں اسے اچھی لگنے لگی تھی۔۔ اسکی جان بن چکی تھی۔۔۔۔
جان کی جاناں۔۔۔۔!!
______________________________
ماموں جان نیا مال لینے جانا ہے۔۔۔۔۔
آپ کہیں تو میں چلا جاؤں۔۔۔۔؟؟
اب آپکی عمر بھی نہیں ہے۔۔۔۔سفر کرنے کی۔۔۔۔
ڈنر کے بعد نور بیگم اور جاناں تو اپنے کمرے میں چلی گئیں۔۔۔۔
جب کہ عامر ان سے نیا مال لانے کی بات ڈسکس کرنے لگا۔۔۔۔
ارے بھئ۔۔۔۔ میں ابھی اتنا بوڑھا نہیں ہوا۔۔۔۔۔
خود جاؤں گا۔۔۔۔تم ابھی بچے ہو۔۔۔۔لوٹے جاؤ گے۔۔۔۔
وہ ہنستے ہوئے بولے۔۔۔۔۔
آپکو کیا میں اتنا نکما اور بدھو لگتا ہوں۔۔۔۔؟؟
عامر کے تاثرات بگڑے۔۔۔۔
ہاہاہاہا۔۔۔۔۔
انہوں نے قہقہہ لگایا۔۔۔۔
سمجھ نہیں آتی بیٹے۔۔۔۔ آپ اتنا غصّہ کیوں کرنے لگے ہیں۔۔۔۔۔؟؟
آپ ابھی بچے ہو۔۔۔۔ اتنے بڑے نہیں ہوئے۔۔۔۔۔
جب کام کو اچھے سے سیکھ جاؤ گے ۔۔۔۔۔
تب تمھیں تمہاری زمیداری مبارک ۔۔۔۔
ایک دکاندار پہلے گاہک ہوتا ہے۔۔۔اور پھر دکاندار۔۔۔۔۔!!
پہلے تم اچھے گاہک بنو ۔۔۔۔ تو تمھیں اچھا دکاندار بننے سے کوئی نہیں روک سکتا۔۔۔۔
انہوں نے مسکراتے ہوئے نصیحت کی۔۔۔۔
“اچھا ماموں آپکی جو گاؤں میں زمین ہے۔۔۔۔میرا خیال ہے۔۔۔۔اسے بیچ کر ادھر سٹی میں ہی زمین لے لیتے ہیں۔۔۔۔۔
اس نے ایک اور کوشش کرنی چاہی۔۔۔۔۔
کیا بات کرتے ہو بیٹے۔۔۔۔؟؟
ہمارا سالانہ بہت اچھا ٹھیکہ آتا ہے اس زمین سے۔۔۔۔۔
اور جو اس پر ہر سال محنت کرتے ہیں۔۔۔۔
انکا کیا۔۔۔۔
آپ ادھر ادھر کی چھوڑو ۔۔۔۔
اور کام پر دیہاں دو۔۔۔۔
انکو عامر کی ایک ہی رٹ بری لگی۔۔۔۔۔
تب ہی ذرا سخت لہجے میں کہتے وہ وہاں سے چلے گئے۔۔۔۔
پیچھے وہ پر سوچ نظروں سے اسے انہیں دیکھتا رہ گیا۔۔۔۔
مچھلی جال میں نہیں پھنس رہی تھی۔۔۔۔
______________________________
سر کس سے ملنا ہے آپکو ۔۔۔۔؟؟؟
دروازے پر کھڑا چوکیدار اس شاندار پرسنلیٹی والے شخص کو اپنے سامنے دیکھ کر ذرا ادب سے پوچھنے لگا۔۔۔۔
“آپ بس اکرام صاحب کو بلا دیں۔۔۔۔ اس سے زیادہ کوئی سوال نہیں۔۔۔۔”
یاسر نے آگے بڑھ کے کہا۔۔۔۔ چوکیدار نے ایک نظر جان کو دیکھا۔۔۔۔
جو سن گلاسز شرٹ میں اٹکاتا اب اطمینان سے اسکی طرف دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
لبوں پر دھیمی سی مسکان دوڑ رہی تھی۔۔۔۔۔
وہ سر ہلا کر اندر کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔
سر آپ پلیز گاڑی میں بیٹھ جائیں تب تک۔۔۔۔۔
یاسر آگے بڑھا۔۔۔۔
اسکی کیئر پر جان ہنس پڑا۔۔۔۔
بس کرو یاسر۔۔۔۔اتنا نازک نہیں ہوں میں جو دو منٹ یہاں کھڑا نا رہ سکوں۔۔۔۔۔
سر میں تو بس۔۔۔۔!
یاسر سے کوئی بات نا بن سکی۔۔۔۔تب ہی سر کھجاتا ہوا شرمندگی سے جملہ آدھا چھوڑ گیا۔۔۔۔
آپ لوگ اندر آجائیں۔۔۔۔
چوکیدار کی آواز پر جان یاسر کو پیچھے آنے کا اشارہ کرتا آگے بڑھ گیا۔۔۔۔
______________________________
ڈریسنگ کے سامنے کھڑی وہ احتیاط سے مسکارا لگا رہی تھی۔۔۔۔
ریڈ شارٹ شرٹ اور سکن کیپری میں چنری والا دوپٹا کندھوں پر لٹکاۓ وہ پورے جوش سے تیاری میں مگن تھی ۔۔۔
ایک تو انگیجمنٹ والی بات کی خوشی اور دوسرا آج ان سب نے نئی گاڑی پر گھومنے جانا تھا۔۔۔۔
جو تھوڑی دیر پہلے اکرام صاحب کی جیب سے خرچہ کروا کر عامر کے نام ہو چکی تھی۔۔۔۔
جان ٹھیک کہتا تھا۔۔۔۔
“سسر کے ٹکڑوں پر پلنے والا داماد”
ریڈ لپسٹک اٹھاۓ وہ ہلکے سے اسے ہونٹوں سے مس کرنے لگی۔۔۔۔
پیچھے ہو کر اس نے اپنا مکمّل جائزہ لیا۔۔۔۔۔
آج تمیز والی ڈریسنگ میں وہ سچ میں بہت حسین لگ رہی تھی۔۔۔۔
یہ کون آگیا۔۔۔۔؟؟
لاؤنچ سے آنے والی آوازوں پر وہ دوپٹا سیٹ کرتی باہر کی طرف بڑھ گئی ۔۔۔
______________________________
تم اور یہاں۔۔۔۔۔۔؟؟؟
جان کو آرام سے صوفے پر ٹانگ پے ٹانگ چڑھا کر بیٹھا دیکھ کر عامر کو شاک لگنے کے ساتھ شدید غصّہ بھی چڑھا۔۔۔۔۔
“ہاں۔۔۔۔ کیوں میں نہیں آ سکتا کیا۔۔۔۔۔؟؟”
اس نے اٹھنے کی زحمت نہیں کی۔۔۔۔
وہیں اطمینان سے صوفے پر بیٹھا اس سے پوچھنے لگا۔۔۔۔۔
“تمھارے باپ کا گھر ہے۔۔۔۔جو اتنے دھڑلے سے بیٹھے ہو۔۔۔۔؟”
عامر کی لینگویج خراب ہوئی ۔۔۔۔
“گھر تو تمھارے باپ کا بھی نہیں ہے۔۔۔۔”
وہی اطمینان۔۔۔۔۔!!
“تم ہوتے کون ہو مجھے یہ طعنہ دینے والے۔۔۔۔۔؟”
عامر غصّے سے پاگل ہونے کو آگیا۔۔۔۔
کم آن۔۔۔۔! اتنا غصّہ مت کرو۔۔۔۔یاسر جلدی سے داماد جی کو میری فیوریٹ کینڈی دو ۔۔۔انکے گلے کے ساتھ دماغ بھی ٹھنڈا ہو جائے۔۔۔۔
وہ ذرا ہنس کر بولا۔۔۔۔
اسکی ہنسی عامر کو آگ لگا گئی۔۔۔۔
یہ لیں سر۔۔۔۔۔!
یاسر نے نہایت ادب سے ہیوٹ اسکے سامنے کی۔۔۔۔۔۔
اسکے کہنے پر جان بے اختیار ہنستا چلا گیا۔۔۔
اس سے پہلے کے عامر اسے کچھ کہتا۔۔۔۔
جاناں کی آواز پر اسے خاموش رہنا پڑا۔۔۔۔
ارے آپ ۔۔۔۔۔!؟؟؟
جان کی نظر جو اٹھی تو وہیں کھڑی رہ گئی ۔۔۔۔
واپس جانے سے گویا انکاری ہوگئی۔۔۔۔
دروازے کی چوکھٹ پر خود کو حیرانی سے دیکھتی جاناں کو وہ مبحوت سا دیکھے گیا۔۔۔۔۔ آج وہ اسکے پسندیدہ لباس میں ملبوس تھی۔۔۔
آپ یہاں کیسے۔۔۔۔۔؟۔۔
اسکے پھر سے سوال کرنے پر وہ ہوش میں آیا۔۔۔۔
“جی آپکے بابا سے ملنے آیا تھا۔۔۔۔”
وہ ایک نظر عامر کو دیکھتا اسے وضاحت کرنے لگا۔۔۔۔
وہ بے تکلفی سے اسکے ساتھ دوسرے سنگل صوفے پر آ بیٹھی۔۔۔۔۔
عامر سے یہ نا دیکھا گیا۔۔۔۔
وہ پیر پٹختا ہوا اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔
“بابا نماز پڑھ رہے ہیں۔۔۔۔وہ آتے ہی ہوں گے۔۔۔۔
تب تک آپ اپنا انٹروڈکشن ہی کروا لیں۔۔۔۔۔”
“آپ سوال کریں میں جواب دینے کے لئے بے تاب ہوں بے چین ہوں۔۔۔۔”
سینے پر ہاتھ رکھ کر ذرا جھکتے ہوۓ اس نے شاعرانہ انداز میں کہا۔۔۔۔۔
جاناں اسکے انداز پر ہنس پڑی۔۔۔
آپکے اور کتنے بہن بھائی ہیں ۔۔۔۔؟؟
ٹھوڑی کے نیچے ہاتھ رکھے وہ پوری توجہ سے اس سے پوچھنے لگی۔۔۔۔
“کوئی بہن بھائی نہیں۔۔۔۔، نا مما بابا۔۔۔۔نا کوئی اور۔۔۔۔!!”
وہ نرمی سے دھیمی آواز میں بولا۔۔۔۔
اسکے کہنے پر جاناں کو دھچکا لگا۔۔۔۔
آپ اتنے اکیلے ہو کر اتنا خوش کیسے رہ سکتے ہیں۔۔۔۔۔؟؟؟
اسکے لبوں پر کھیلتی مسکراہٹ کو دیکھتی وہ شدید متاثر تھی۔۔۔۔
تو کیا ہوا۔۔۔۔؟؟ مجھے اداس ہونا چاہئے۔۔۔؟ جب میرا اس دنیا میں کوئی ہے ہی نہیں تو دکھی اور اداس کس کے لئے ہونا۔۔۔۔۔؟؟؟ مرنے والوں کو کوئی یاد نہیں کرتا۔۔۔۔۔ بس چند دن کی رسم۔۔۔ پھر زندگی کی مصروفیات میں سب ختم۔۔۔۔!!
ناءس۔۔۔۔۔!
وہ امپریس ہوئی۔۔۔۔
جان فقط مسکرا کر رہ گیا۔۔۔۔
پھر سامنے سے اکرام صاحب کو آتا دیکھ کر اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔
خیر ہے جناب اب میرے غریب خانے پر۔۔۔۔۔؟؟
اس سے گلے ملتے ہوئے اکرام صاحب خوش گوار سی حیرت سے بولے۔۔۔۔
جاناں مسکرا کر اٹھی۔۔۔اور وہاں سے چلی گئی۔۔۔۔
دروازے کے پاس چھپ کر وہ وہاں پر ہونے والی باتیں سننے لگی۔۔۔۔۔
اسکی بری عادتوں میں سب سے بری عادت چھپ کر باتیں سننا تھی۔۔۔۔۔
کہئے کیسے آنا ہوا۔۔۔۔؟؟؟
اکرام صاحب نے چاۓ کپ میں انڈیلتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔
“جی آپکی بیٹی کے رشتے کے سلسلے میں آیا ہوں۔۔۔شادی کرنا چاہتا ہوں اس سے۔۔۔۔”
یہ جان کر بھی کہ وہ کسی اور سے جڑی ہے۔۔۔۔اسکا رشتہ مانگتے ہوئے اسکے لہجے میں ذرا سی لڑکھڑاہٹ نہیں آئ۔۔۔
اسکی طرف چاۓ بڑھاتے اکرام صاحب کا ہاتھ رک گیا۔۔۔۔
انہیں بے انتہا حیرت ہوئی۔۔۔۔
دوسری طرف جاناں جیسے فریز ہوگئی تھی۔۔۔۔
کمرے کی کھڑکی سے لاؤنچ کا منظر دیکھتے عامر کے تن بدن میں آگ لگ گئی۔۔۔۔
وہ اتنی جراّت کر کیسے گیا تھا۔۔۔۔
کہ اسکی منگیتر کا ہاتھ مانگے۔۔۔
اکرام صاحب نے ایک نظر اس وجیہہ شخص پر ڈالی۔۔۔
جو پوری امید سے انہیں دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
ایسا کیا نظر آگیا تھا اس شخص کو انکی بیٹی میں۔۔۔۔جو اسے کسی اور لڑکی میں نظر نہیں آیا تھا۔۔۔۔
انہوں نے فورا خود کو سنبھالا۔۔۔۔
“سوری۔۔۔۔، مگر میری بیٹی کسی اور کی منگیتر ہے۔۔۔۔”
وہ رسانیت سے بولے
“منگیتر۔۔۔۔؟؟
بہت آسان۔۔۔ میں یہ منگنی آرام سے توڑ سکتا ہوں۔۔۔۔”
جان نے ہاتھ جھاڑتے ہوۓ کہا۔۔۔
اکرام صاحب نے پوری آنکھیں کھول کر اسے دیکھا۔۔۔۔
جو اب منگنی توڑنے کا سلیوشن انہیں بتا رہا تھا۔۔۔۔۔
“لڑکی کے ہاتھ سے انگوٹھی اتار کر لڑکے۔۔۔۔۔، آئ مین ” سسر کے ٹکڑوں پر پلنے والے داماد ” کو واپس کریں۔۔۔۔اور اس سے اپنی انگوٹھی واپس لے کر اعلان کر دیں۔۔۔۔کہ بھئ ہم جاناں کا رشتہ عامر سے توڑ کر جان یوسف سے کرتے ہیں۔۔۔۔
سمپل۔۔۔۔۔۔!
وہ کندھے اچکا کر مزے سے بولا۔۔۔۔
جیسے انہیں کوئ کہانی سنا رہا ہو۔۔۔۔۔
اکرام صاحب نے بسی سے اسے دیکھ کر رہ گئے۔۔۔
عامر کو لگا اسکا دماغ غصّے سے پھٹ جائے گا۔۔۔۔
وہ جھاگ اڑاتا باہر لاؤنچ میں پہنچا۔۔۔۔
“ارے وہ دیکھیں۔۔۔۔ لڑکا خود آگیا منگنی توڑنے ۔۔۔۔۔”
عامر کو کاٹ دار نگاہوں سے خود کو دیکھتا دیکھ کر وہ با مشکل ہنسی روکتا اکرام صاحب کی معلومات میں اضافہ کرنے لگا۔۔۔۔
جاناں نے بے اختیار دروازے کا سہارا لیا۔۔۔۔۔
خوف سے اسکی جان نکلنے کو تھی۔۔۔۔
“گھٹیا انسان میں کہتا ہوں۔۔۔۔۔اٹھو اور یہاں سے دفع ہو جاؤ۔۔ اور دوبارہ یہاں کا رخ مت کرنا۔۔۔۔”
وہ حلق کے بل دھاڑا۔۔۔۔
اسکے اس قدر رعب سے دھاڑنے کا جان پر رتی برابر اثر نہیں پڑا۔۔۔۔
اسکو اگنور کے وہ اکرام صاحب کی طرف جھکا۔۔۔۔
“سسر جی۔۔۔۔، میں زور زبردست کا قائل ہرگز نہیں ہوں۔۔۔۔اور نا ہی کسی کو اپنی طاقت اور دولت کے زور پر دبانا چاہتا ہوں۔۔۔۔۔ مگر آپکی بیٹی مجھے سچ میں بہت اچھی لگنے لگی ہے۔۔۔۔۔
“دیکھیں نا۔۔۔۔ جاناں عامر نام کتنا بھدا لگتا ہے۔۔۔۔
اور “جان جاناں” ۔۔۔۔۔۔! جیسے دل کے تار چھیڑ دیتا ہے۔۔۔۔”
آپ اسے جان کو سونپ دیں نا۔۔۔۔
ورنہ ایسا نا ہو ۔۔۔کہ مجھے کوئی غلط قدم اٹھانا پڑے۔۔۔
پلیز۔۔۔۔۔!”
اسکی آخری بات پر جہاں اکرام صاحب کا رنگ سفید پڑا۔۔۔
وہاں جاناں کانپ کر رہ گئی۔۔۔۔۔
اللّه حافظ۔۔۔۔۔!
وہ اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔
اور یاسر کو پیچھے آنے کا اشارہ کرتا آگے بڑھ گیا ۔۔۔
لاؤنچ میں خاموشی چھائ ہوئی تھی ۔۔۔
موت کی سی خاموشی۔۔۔۔۔!!
کچن میں کھڑی نور بیگم کو بے چینی ہونے لگی۔۔۔۔
نجانے کس بات کی۔۔۔۔!؟
لاؤنچ سے باہر نکلتے ہوئے وہ جاناں کے پاس رکا ۔۔۔۔
جو دروازے کے سہارے پر کھڑی آنکھوں میں نمی لئے بے بس اور خوف زد نظروں سے اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔
تیری پلکوں کی نمی
آب حیات ہے جاناں
ترے ہونٹوں کی ہنسی
جینے کی بات ہے جاناں
جان جاناں۔۔۔۔!
جان جاناں۔۔۔!!
(از اسری خان)
جان جاناں۔۔۔۔۔!!
صرف جان کی جاناں
وہ اسکے پاس سے گنگناتا ہوا چلا گیا۔۔۔۔
اسکی مسکراہٹ جاناں کی جان نکالنے کا کام کر رہی تھی ۔۔۔
دروازے کے پاس وہ ڈھہ سی گئی۔۔۔۔
پرسکون ندی میں کسی نے زور سے پتھر دے مارا تھا ۔ ۔۔
جیسے جاناں اور عامر کی زندگی میں جان آگیا تھا۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Read More:  Dastan Iman Faroshon Ki by Inayatullah Altamash – Episode 1

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: