Jaan e Jaana Novel by Asra khan – Episode 3

0
جان جاناں از اسری خان – قسط نمبر 3

–**–**–

کمرے میں داخل ہو کر اس نے مڑ کر دروازہ بند کیا۔۔۔۔۔
اور وہی دروازے سے ٹیک لگا کر نیچے بیٹھ گئی۔۔۔۔۔
جان کے جانے کے بعد عامر نے اسے بہت بے عزت کیا تھا۔۔۔۔۔
اسکا کہنا تھا۔۔۔کہ اس نے ہی کوئی ادا دکھائی ہوگی اسے۔۔۔۔تب ہی وہ پہلی ملاقات کے بعد ہی اس کے گھر پہنچ گیا تھا۔۔۔۔۔
اسکی آنکھیں نمکین پانیوں سے بھر گئیں۔۔۔۔
یہ تو بابا کی دھاڑ بلند ہوئی تھی۔۔۔۔تو عامر کی زبان کو لگام ملی تھی۔۔۔۔ ورنہ عامر نے جاناں کو زلیل کرنے میں کوئ کسر نہیں چھوڑی تھی…..
وہ چہرہ ہاتھوں میں چھپا کر پھوٹ پھوٹ کر رو پڑی۔۔۔۔
دل تھا کہ ڈر سے بیٹھا جا رہا تھا۔۔۔۔۔
فون بجنے پر اس نے سر اٹھا کر دیکھا۔۔۔۔
بیڈ کی سائیڈ ٹیبل پر پڑا فون مسلسل رنگ کر رہا تھا۔۔۔۔۔
ہاتھ کی پشت سے آنسو رگڑتی وہ اٹھ کر بیڈ کے پاس چلی آئ۔۔۔
کوئی رونگ نمبر تھا۔۔۔۔
اس نے بے زاری سے کال کاٹ دی۔۔۔۔
وہ کبھی رونگ نمبرز سے آنے والی کالز ریسیو نہیں کرتی تھی۔۔۔۔
فون دوبارہ سے بجنے لگا۔۔۔۔
پہلے اس نے مسلسل اگنور کیا ۔۔۔
مگر دوسری طرف والے نے شاید دھٹائ میں پی ایچ ڈی کر رکھی تھی۔۔۔۔
زچ آ کر اس نے موبائل آف کرنے کا سوچ کر اسے اٹھایا۔۔۔۔
کہ اسی نمبر سے پیغام موصول ہوا. ۔ ۔۔
“جان جاناں”
اٹس می۔۔۔۔۔!
اٹینڈ دی کال….
جاناں کے پیروں تلے زمین نکل گئی۔۔۔۔
کانپتے ہاتھوں سے اس نے فورا مسیج ریموو کیا ۔۔۔۔
موبائل سائیڈ پر رکھ کر اس نے ساتھ پڑے جگ سے گلاس میں پانی انڈیلا ۔۔۔۔اور غٹاغت حلق سے اتار گئی۔۔۔۔
گہری گہری سانسیں لیتے ہوئے اس نے خوف زدہ نظروں سے موبائل کی طرف دیکھا۔۔۔۔
اسکا نمبر جان کے پاس کیسے پہنچا۔۔۔۔۔؟؟؟
یہ سوال بار بار دماغ میں اٹھ رہا تھا۔۔۔۔
“پاگل ہو تم بھی۔۔۔۔اگر ایک دن میں وہ تمھارے گھر پہنچ سکتا ہے۔۔۔تمہارا رشتہ مانگ سکتا ہے۔۔۔تو نمبر حاصل کرنا کونسا مشکل کام ہے۔۔۔۔۔؟؟؟”
اسکے اندر سے آواز آئ۔۔۔۔
بے اختیار وہ دل تھام کر رہ گئی۔۔۔۔
مسیج کی پھر سے ٹون پر اسکے پسینے چھوٹ پڑے۔۔۔۔
ماتھے پر آیا پسینہ پونچھتے ہوئے اس نے مسیج اوپن کیا۔۔۔
“جان_جاناں”
بیشک تم جان کی کال مت اٹینڈ کرو۔۔۔ مگر ایک دن تمھیں جان کی پناہوں میں ہی آنا ہے۔۔۔۔”
جاناں کا چہرہ سفید پڑ گیا۔۔۔۔یہ شخص بہت ہی بےباک تھا۔۔۔۔
“میں تمھیں کسی قسم کی دھمکی ہرگز نہیں دوں گا۔۔۔۔ کیوں میں اتنا گرا ہوا انسان نہیں ہوں۔۔۔۔جو اپنی ہونے والی بیوی کے ساتھ بدسلوکی کرے۔۔۔۔مگر میں تمھیں یہ بتا دوں۔۔۔۔کہ مجھے تمھارے گھر میں تمھارے کمرے کا نمبر۔۔۔۔، دیواروں پر پینٹ کا کلر۔۔۔، بیڈ شیٹ کا کلر۔۔۔، اور اس وقت تمھارے چہرے کا کلر اچھے سے معلوم ہے۔۔۔۔۔”
کیا یہ دھمکی نہیں تھی۔۔۔۔؟؟؟؟؟؟
اس نے بے اختیار جیسے تصدیق کیلۓ اپنے سفید پڑتے چہرے پر ہاتھ رکھا۔۔۔۔
جان کہ تو ٹھیک رہا تھا….
فون کو دور اچھال کر اس نے ایک خوف زدہ نگاہ کمرے پر ڈالی۔۔۔۔
اور تیزی سے بھاگ کر کمرے سے نکلتی چلی گئی۔۔۔۔
______________________________
بھاپ اڑاتی کافی کا مگ لبوں سے لگاۓ اس نے ایک نگاہ موبائل پر دوڑائ۔۔۔۔
شاید کوئی رپلاۓ مل جائے۔۔۔۔
مگر یہ امید۔۔۔۔۔، صرف امید ہی رہی۔۔۔۔
اس نے ایک بار پھر ٹراۓ کیا۔۔۔۔
مگر دوسری طرف سے نمبر بند جا رہا تھا۔۔۔۔
بازو آنکھوں پر رکھے وہ سیدھا ہو کر لیٹ گیا۔۔۔
نیند آنکھوں سے کوسوں دور تھی۔۔۔۔
“جان جاناں” کہاں پھنسا دیا تم نے جان کو۔۔۔۔
میرے خیالات۔۔۔۔، میرے دماغ پر مسلط ہوگئی ہو ۔۔۔۔
تمھارے لئے بہتر یہی ہوگا کہ شرافت سے میری ہو جاؤ۔۔۔۔۔
ورنہ میں عامر کو بھی تمہارا نہیں ہونے دوں گا۔۔۔۔
بند آنکھوں سے وہ جاناں کو تصور میں لئے بڑبڑایا تھا۔۔۔۔
______________________________
ویسے لڑکا تو بہت اچھا تھا ۔۔۔۔۔
عامر سے لاکھ گنا بہتر۔۔۔۔!
پتا نہیں آپ نے انکار کیوں کر دیا۔۔۔۔۔
دودھ کا گلاس اکرام صاحب کو پکڑاتے ہوئے نور بیگم نے مایوسی سے کہا۔۔۔۔
اکرام صاحب نے نہایت حیرت سے انہیں دیکھا۔۔۔۔
“تمہارا دماغ تو ٹھیک ہے۔۔۔۔؟؟ اس غیر لڑکے کے لئے میں اپنے بھانجے۔۔۔۔، اپنے خون کو ٹھکرا دوں۔۔۔۔۔؟؟
اور وہ جو دھڑلے سے میرے گھر میں گھس کے مجھے دھمکیاں رہا تھا ۔۔۔تم کیا کہتی ہو میں اسے اپنا داماد بنا لوں۔۔۔۔؟؟؟
انکی آواز غصّے کے شدت سے بلند ہوگئی۔۔۔۔۔
نور بیگم کے اطمینان میں کوئی فرق آیا۔۔۔۔
” اب ایسا بھی کچھ غلط نہیں کیا اس نے۔۔۔۔بڑے مان سے آپکی بیٹی کا رشتہ لینے گھر آیا تھا۔۔۔۔
سڑک پر ٹھہر کر آپکی بیٹی کو پرپوز نہیں کیا ۔۔۔
اگر اتنا بےغیرت ہوتا تو آپکے پاس رشتہ لے کر نا آتا۔۔۔۔”
اس سے پہلے کے وہ انہیں کچھ کہتے۔۔۔۔۔
دھاڑ کی آواز کے ساتھ دروازہ کھلا۔۔۔
روتی ہوئی جاناں بھاگ کر اندر آئ۔۔۔اور ماں کے گلے لگ کر رونے لگی۔۔۔۔
“مما۔۔۔مجھے بچا لیں ۔۔۔پپ۔۔۔پلیز۔۔۔۔!
میں عامر کے علاوہ کسی سے شادی نہیں کروں گی ۔۔۔مجھے بچا لیں۔۔۔۔۔”
جاناں میری بچی۔۔۔۔؟؟
کیا ہوا ہے ۔۔۔۔؟؟
نور بیگم پریشان ہوگئیں۔۔۔
مگر وہ جواب دینے کی بجاۓ انہیں لپٹی رہی ۔۔۔
جاناں بیٹی۔۔۔۔۔؟؟
اکرام صاحب نے اسکے سر پر ہاتھ پھیرا۔۔۔۔
ماں کو چھوڑ کر وہ انکے سینے لگ گئی۔۔۔۔
اور روتے ہوئے اٹک کر ساری حقیقت انہیں بتا دی۔۔۔۔
اکرام صاحب کے ماتھے پر بل پڑ گئے۔۔۔۔
جاناں کو تھپکتے ہوئے انہوں نے ایک پر سوچ نگاہ نور بیگم پر ڈالی۔۔۔
جو روتی ہوئی جاناں کو چوم کر چپ کروا رہی تھیں ۔۔۔۔
اچانک انکے دماغ میں ایک خیال آیا تھا۔۔۔۔
______________________________
جاناں بیٹی کی پیکنگ ہوگئی۔۔۔۔۔؟؟
اکرام صاحب نے اخبار ٹیبل پر رکھتے ہوئے جاناں کے کمرے سے نکلتی نور بیگم کو دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔
جی ہوگئی۔۔۔۔بس وہ چینج کر کہ آ رہی ہے ۔۔۔
گڈ مارننگ۔۔۔۔۔!!
نک سک سے تیار عامر خوشبوئیں بکھیرتا وہاں حاضر تھا۔۔۔۔۔
مارننگ۔۔۔۔!
بیٹھو یہاں۔۔۔۔۔!
انہوں نے اپنے ساتھ اسے جگہ دی۔۔۔۔
ساری تیاری ہوگئی۔۔۔۔؟؟؟
جی ماموں ہوگئی۔۔۔۔۔؟؟
ایک عورت کا بندوبست کر دیا ہے۔۔۔۔ جو آل ٹائم جاناں کے ساتھ رہے گی۔۔۔۔
چار گارڈز بھی ہونگے۔۔۔۔
اس نے اکرام صاحب کو ساری انفارمیشن دیں۔۔۔۔۔
اوکے۔۔۔۔۔! بس عامر میری بیٹی ٹھیک رہے ۔۔۔اسے کچھ نہیں ہونا چاہئے۔۔۔۔
انکے لہجے میں فکر تھی۔۔۔۔۔
کچھ نہیں ہوگا اسے ماموں۔۔۔۔
میں ہوں نا۔۔۔آپ بے فکر ہو جائیں۔۔۔۔
وہ ذرا اکڑ کر بولا
اکرام صاحب اسے ممنونیت سے دیکھ کر رہ گئے۔۔۔۔
کال آنے پر وہ ایکسکیوز کرتا باہر چلا گیا۔۔۔۔
پیچھے اکرام صاحب اٹھ کر جاناں کے کمرے کی طرف چلے گۓ۔۔۔۔
سب کے مشورے کے بعد یہی طے پایا تھا ۔۔۔۔
کہ جاناں کو خاموشی سے اکرام صاحب کے فارم ہاؤس بھیج دیا جائے۔۔۔۔۔
اور عید کے تیسرے دن انگیجمنٹ کی بجاۓ ڈائریکٹ نکاح کیا جائے۔۔۔۔
اس طرح سے وہ جان سے محفوظ رہ سکتی۔تھی۔۔۔۔
یہ فقط انکی سوچ تھی۔۔۔۔۔
______________________________
خود پر اچھے سے پرفیوم کا سپرے کر کے وہ مڑا۔۔۔۔
وائٹ کاٹن کے سوٹ میں ملبوس وہ بے انتہا وجیہہ لگ رہا تھا۔۔۔۔
گنگناتے ہوئے اس نے ٹیبل پر سے بجتا ہوا فون اٹھایا۔۔۔۔
ہاں یاسر۔۔۔۔۔؟؟؟
اسکی جاندار آواز گونجی۔۔۔۔
دوسری طرف سے یاسر نے کچھ کہا۔۔۔۔
جس کو سن کر اسکے لبوں پر مسکان پھیلتی چلی گئی۔۔۔۔
فون کاٹ کر وہ ایک بار پھر ڈریسنگ کے سامنے جا کھڑا ہوا ۔۔۔
اچھی طرف جائزہ لینے کے بعد وہ الماری کی طرف بڑھا۔۔۔۔
اور اس سے کچھ نکال کر مٹھی میں دباتا ہوا گنگناتا باہر نکل گیا۔۔۔
جان جاناں۔۔۔!!
جان جاناں۔۔۔!!

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: