Jaan e Jaana Novel by Asra khan – Episode 4

0
جان جاناں از اسری خان – قسط نمبر 4

–**–**–

سنئیے جی۔۔۔! نجانے کیوں میرا دل بہت گھبرا رہا ہے۔۔۔۔
نور بیگم نے گہری گہری سانسیں لیتے ہوئے اکرام صاحب کو پکارا۔۔۔۔
خیریت۔۔۔۔؟
وہ اپنا کام چھوڑ کر انکی طرف لپکے ۔۔۔۔
بس جاناں کے لئے دل گھبرا رہا ہے۔۔۔۔
وہ انکا بازو تھام کر بھرائ ہوئی آواز میں بولیں۔۔۔۔
بیگم وہ خیریت سے ہوگی۔۔۔۔
آپ ٹینشن مت لیں۔۔۔
مگر آپ کو خود جانا چاہیے تھا۔۔۔۔اسے چھوڑنے۔۔۔۔آپ نے اسے عامر کے سہارے کیوں چھوڑ دیا ۔۔۔؟؟
دیکھو۔۔۔۔ اگر میں بھی ساتھ چلا جاتا ۔۔۔اور پیچھے سے وہ رئیس زادہ ہمارے گھر آ جاتا۔۔۔۔۔
تو تم انہیں کیا جواب دیتی۔۔۔۔؟؟
اس طرح اسے شک پڑ سکتا تھا ۔۔۔۔
انہوں نے رسانیت سے سمجھایا۔۔۔۔
نور بیگم خاموشی سے سر ہلا کر رہ گئیں۔۔۔۔ اسکے سوا کوئ چارہ بھی نہیں تھا۔۔۔۔
______________________________
چلو تم جاؤ اندر۔۔۔۔!!
عامر نے اسکی طرف کا دروازہ کھول کر اسے باہر نکلنے کا اشارہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔
تم نہیں آؤ گے۔۔۔۔؟؟
وہ پریشانی سے پوچھ اٹھی ۔۔۔
نہیں۔۔۔۔، مجھے فرینڈز پارٹی میں جانا ہے ۔۔۔آلریڈی بہت لیٹ ہو چکا ہوں تمھارے چکر میں۔۔۔۔
کلائ پر بندھی گھڑی کی طرف دیکھ کر وہ اسے جتانا نہیں بھولا ۔۔۔۔
“اگر وہ یہاں پہنچ گیا تو۔۔۔۔۔؟؟
وہ بہت خوف زدہ تھی۔۔۔۔
” کیوں یہاں کا اڈریس بھی دے دیا تم نے۔۔۔۔؟”
کوئی تسلی نہیں۔۔۔۔۔کوئی دلاسا نہیں۔۔۔۔
الٹا اسکے طنز تھے کہ ختم ہونے کا نام ہی نہیں لے رہے تھے۔۔۔۔
وہ چند لمحے تو لب بھینچے ضبط سے اسے دیکھتی رہی۔۔۔۔
پھر خاموشی سے اندر کی طرف بڑھ گئی۔۔۔۔
عامر اسکی گالوں پر پھسلتے آنسو بخوبی دیکھ سکتا تھا۔۔۔۔
شفیق ادھر آ۔۔۔۔!
اس نے اپنے خاص بندے کو بلایا۔۔۔۔
جس نے چند دن پہلے ہی اسے جوائن کیا تھا ۔۔۔
اور دو ہی دنوں میں اسکا بھروسہ جیت لیا تھا۔۔۔۔
جی سر۔۔۔۔؟؟
وہ جھکی جھکی نظریں لئے اسکے پاس ہاتھ باندھے آ کھڑا ہوا۔۔۔۔
بی بی کا بہت خیال رکھنا ہے۔۔۔۔اور ہاں کس سے بات کرے گی کس سے ملے گی۔۔۔۔ساری انفارمیشن مجھے چاہئے۔۔۔۔
اوکے۔۔۔۔؟؟
جی سر۔۔۔۔۔!
اس نے فورا سر جھکا دیا۔۔۔۔۔
وہ بڑے تفاخر سے گلاسز لگاتا گاڑی اڑا کر لے گیا۔۔۔۔
شفیق کے چہرے پر پراسرار سی مسکراہٹ ابھری تھی۔۔۔۔
______________________________
گہری سانس لیتے ہوئے وہ لاؤنچ کا دروازہ آہستہ سے بند کرنے لگی۔۔۔۔
“جان جاناں”۔۔۔۔۔۔۔
سرسراتی ہوئی آواز اسکے کانوں سے ٹکرائ۔۔۔۔۔
اسکا دل جیسے دھڑکنا بھول گیا تھا ۔۔۔۔
پیروں تلے زمین کھسک گئی تھی۔۔۔۔
اللّه کو یاد کرتے ہوئے اس نے یہ دعا مانگی کہ یہ جھوٹ ہو۔۔۔۔
اسکا وہم ہو۔۔۔۔یا کچھ اور۔۔۔۔۔!
مگر سچ نا ہو۔۔۔۔
۔
۔
۔
آہستہ سے وہ پلٹی۔۔۔۔
سامنے صوفے پر وہ نیم دراز سا ٹیبل پر ٹانگیں پر رکھے ہنس رہا تھا۔۔۔۔
خوف سے اسکا رنگ سفید پڑ گیا۔۔۔۔سانس تک لینا اسے بھول گیا تھا ۔۔۔۔
” جان جاناں۔۔۔۔۔”
وہ پھر سے گنگنایا۔۔۔
جاناں نے ایک نظر اسے دیکھا۔۔۔۔
اور پھرتی سے واپس باہر کی طرف بھاگنے کے لئے پلٹی۔۔۔۔
اسکی حرکت پر وہ بے ساختہ ہنس پڑا۔۔۔۔
یہ کیا۔۔۔۔۔؟؟
دروازہ باہر سے بند ہو چکا تھا۔۔۔۔۔
پتھر بن جانے کے خوف سے وہ مڑی نہیں۔۔۔۔
جان جاناں ۔۔۔۔؟
سسر جی اور ساسو ماں نہیں آئیں گے کیا۔۔۔۔۔؟
نکاح میں شرکت کے لئے۔۔۔۔۔؟
وہ اطمینان سے مسکراتا اس سے سوال کر رہا تھا۔۔۔۔
جاناں کی سانس کہیں اٹک گئی۔۔۔۔
یہ وہ کیا کہ رہا تھا۔۔۔۔
بے بسی کے احساس سے اسکی آنکھیں بھر آئیں تھی۔۔۔۔
پپ۔۔۔پلیز مجھے جانے دو۔۔۔۔
خوف کی شدّت سے وہ بری طرف کانپ رہی تھی۔۔۔۔
“بھلے کہیں بھی جاؤ۔۔۔۔تمہاری ہر راہ مجھ پر ہی تو آ کر رکتی ہے ۔۔۔”
پلیز سمجھنے کی کوشش کرو۔۔۔ میں عامر سے محبّت کرتی ہوں۔۔۔۔
وہ تھوک نگلتے ہوئے بولی۔۔۔
ششش۔۔۔۔۔۔۔!
وہ اچانک اسکے قریب آ کر سختی سے اپنے لبوں پر انگلی رکھتا اسے خاموش کروانے لگا۔۔۔۔
وہ ڈر کر بے اختیار دو قدم پیچھے ہوئ۔۔۔
جان کی آنکھوں میں اسے واضح سرخ لکیریں اترتی محسوس ہوئیں تھی۔۔۔۔
جاناں نے چور سی نگاہ اردگرد دوڑائ۔۔۔۔
سامنے بیڈ روم کھلا ہوا تھا۔۔۔۔
اسے دیکھنے کے ساتھ ساتھ اس نے ایک نگاہ جان کے چہرے پر دوڑائ۔۔۔۔
جو ذرا سنجیدگی سے اسے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
ایک زور دار دھکّا جان کو دے کر وہ بیڈ روم کی طرف بھاگی ۔۔۔
تا کہ اندر گھس کے کنڈی لگا لے۔۔۔۔
جان جھٹکے سے پیچھے ہوا۔۔۔۔
اور ایک حیرت سے بھر پور مسکراتی نگاہ اس جنگلی بلی کی طرف ڈالی ۔۔۔۔۔
وہ اتنی بھی ڈرپوک نہیں تھی۔۔۔۔۔
لمبے لمبے ڈگ بھرتا وہ اسکے پیچھے پہنچا۔۔۔۔
اور اسکے دروازہ بند کرنے سے پہلے ہی بیچ میں پیر اڑا دیا۔۔۔۔۔
جاناں گھبرا کر دو قدم پیچھے ہوئ۔۔۔
جان نے بڑے اطمینان سے لات مار کر پورا دروازہ کھولا۔۔۔۔۔
اور اندر داخل ہوگیا۔۔۔۔۔
اسکے قدم جاناں کی طرف بڑھ رہے تھے۔۔۔۔
جب کے سفید چہرہ لئے پیچھے ہوتی جاناں کے قدم الماری کی طرف بڑھ رہے تھے۔۔۔۔
جان نے اسکے دونوں طرف ہاتھ رکھ کر اسکی آنکھوں میں جھانکا۔۔۔۔۔
پپ۔۔۔پلیز دور رہو ۔۔۔
وہ مرنے کے قریب آگئی۔۔۔۔۔
جان ذرا آگے ہوا۔۔۔۔
اور اپنا ہاتھ بڑھایا۔۔۔۔
جاناں آنکھیں سختی سے بند کئے اللّه کو یاد کرنے لگی ۔۔۔۔
جان کا ہاتھ جاناں کی بجاۓ اوپر الماری کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔
اور اسکا پٹ کھولا۔۔۔
اسکے اندر سے ایک خوبصورت نفیس سی چادر نکل کر اس نے نرمی سے اسکے سر پر اوڑھا دی۔۔۔۔
جاناں نے پٹ سے آنکھیں کھولیں۔۔۔۔
جو چادر اس پر ڈال کر اب دو قدم پیچھے ہوگیا تھا ۔۔۔۔
وہ سختی سے چادر کو خود پر لپیٹنے لگی۔۔۔۔۔
جان نے ایک افسوس بھری نگاہ اس پر ڈالی۔۔۔۔۔
” تو آج تمھیں اسکی قیمت کا احساس ہوگیا۔۔۔۔جب تمہاری عزت کے برباد ہونے کا خطرہ تمھیں لاحق ہوا۔۔۔۔۔۔
اگر عورت ذات خود کو چھپا کر رکھے۔۔۔۔
تو کس کی ہمت ہے کہ اسکا پردہ اٹھا کر اسکو دیکھنے کی جرّات کرے۔۔۔۔”
کیا تم مرد اپنی نگاہوں کو کنٹرول میں نہیں رکھ سکتے۔۔۔۔۔؟؟۔
تھوڑی ہمت پا کر وہ ذرا اونچی آواز میں بولی۔۔۔
” مرد تو ہوس کا پجاری ہوتا ہے۔۔۔۔ جسکی رال آزاد عورت کو دیکھ کر ٹپکنے لگتی ہے۔۔۔۔
تم ایک مثال لے لو ۔۔۔۔جب ہم کسی چیز کو ڈھک کر رکھتے ہیں۔۔۔ چاہے وہ میٹھی چیز ہو۔۔۔۔ یا نمکین۔۔۔۔!
تو مکھیاں کوشش کے باوجود اس تک نہیں پہنچ پاتیں۔۔۔۔ مگر جب تم اسی چیز کو کھلا چھوڑ دو ۔۔۔۔
تو تم انجام تو جانتی ہو گی ۔۔۔”
اسکا لہجے اسکے لبوں پر دوڑتی مسکان کی طرح تھا۔۔۔۔
نرم و میٹھا۔۔۔۔!!
تم بھی مطلب انہیں مردوں میں سے ہو۔۔۔۔۔ جو عورت کو نمائش کرواتا دیکھ کر رال ٹپکاتے ہیں۔۔۔۔۔”
متفق ہونے کے باوجود وہ آخری کوشش کرنا نہیں بولی۔۔۔۔۔
“میں نے تمھاری صورت سے نہیں تمہارے نام سے محبّت کی ہے۔۔۔۔ “
جان جاناں۔۔۔۔!!
نرمی سے کہ کر گنگناتا ہوا وہ کمرہ لاک کر کہ چلا گیا۔۔۔۔۔
جاتے جاتے وہ اسکا سیل اچکنا نہیں بھولا تھا۔۔۔۔
اسکا خطرناک اظہار سن کر وہ واقع ہی ایک لمحے کے لئے سن رہ گئی۔۔۔
اب آخری امید بھی ختم ہوگئی۔۔۔۔
وہ بے بس سی وہیں ڈھہہ گئی۔۔۔۔۔
______________________________
ہے عامر بےبی۔۔۔۔! کم آن ڈانس وتھ می۔۔۔۔!!
پارٹی عروج پر تھی ۔۔۔
چھیتھڑے نما لباس میں تھرکتے وجود۔۔۔۔
دیکھ کر عامر نشے میں مدہوش اپنی آنکھیں سینک رہا تھا ۔۔۔
جب ہی نشے میں دھت تاشہ اسکے پاس آئ۔۔۔
اور اسے زبردستی اٹھاتے ہوئے بولی۔۔۔۔
نو بےبی۔۔۔۔ !!
اسے دھکّا دے کر پرے ہٹا کر وہ اپنے ڈولتے سر کو سنبھالتا بڑی مشکل سے بولا۔۔۔۔
پانچ گلاس “پی” لینے کے پاس اسے وومٹنگ محسوس ہو رہی تھی۔۔۔۔
فون کے بجنے پر اس نے ٹیبل پر ہاتھ مار کر اٹھانا چاہا۔۔۔۔۔
اکرام صاحب کی کال تھی۔۔۔
مگر وہ اسکے ہاتھ سے پھسلتا ہوا زمین بوس ہوگیا۔۔۔۔
اٹھانے کی ہمت اس میں نہیں تھی۔۔۔۔
ٹیبل پر سر ٹکاۓ وہ وہیں مدہوش ہوگیا۔۔۔۔۔
یہ اسکی اپنے مشن میں غفلت کی پہلی نیند ثابت ہوئ تھی۔۔۔۔
______________________________
جو میں کہ رہا ہوں۔۔۔۔وہی کرنا۔۔۔!
اگر ذرا سی ردو بدل کی ۔۔۔تو اپنا انجام دیکھ لینا۔۔۔۔
میں ذرا سا لحاظ نہیں کروں گا۔۔۔۔
اکرام صاحب کا نمبر ملا کر سیل اسکے ہاتھ میں تھماتا وہ اسے وارن کرتا ہوا بولا۔۔۔۔
جاناں کی آنکھوں سے اسکی بات سن کر سیلاب رواں دواں ہوگیا تھا۔۔۔۔
ابھی انہیں صاف کرنے کا حق نہیں ہے مجھے۔۔۔۔۔
اسکے آنسوؤں کی طرف اشارہ کرتا وہ اطمینان سے بولا۔۔۔۔۔
جاناں لب بھینچ کر رہ گئی۔۔۔۔
وہ اس شخص کے اطمینان کا مقابلہ نہیں کر سکتی تھی۔۔۔۔
بیل جا رہی تھی ۔۔۔۔۔
جاناں کی دھڑکنیں بے ترتیب ہوئے جا رہی تھیں۔۔۔۔۔
خشک لبوں پر زبان پھیرتے ہوئے اس نے رحم طلب نظروں سے جان کو دیکھا۔۔۔۔
مگر وہ نظریں چرا گیا۔۔۔۔
“ہیلو۔۔۔۔؟؟
جاناں بیٹی آپ ٹھیک ہو ۔۔۔۔۔؟؟؟؟
اکرام صاحب اسکے بے وقت کال کرنے پر گھبرا گئے۔۔۔۔
” بابا پلیز آپ جلدی سے یہاں آ جائیں۔۔۔۔مجھے بہت ڈر لگ رہا ہے۔۔۔پلیز تھوڑی دیر کے لئے۔۔۔۔”
جان کو ایک نظر دیکھ کر کہتی وہ بھرائ ہوئی آواز میں بولی۔۔۔۔
پر بیٹا۔۔۔۔۔
پر ور کچھ نہیں بابا۔۔۔۔۔
بس آپ آ جائیں۔۔۔۔۔
وہ تیزی سے کال کاٹ گئی۔۔۔۔
“گڈ گرل۔۔۔۔ مجھے ویسے بھی فرمانبرار بیویاں پسند ہیں۔۔۔۔۔”
اسکے ہاتھ سے فون لیتا وہ مزے سے بولا۔۔۔۔
“کتنی نافرمان بیویاں ہیں آپکی۔۔۔۔؟ جو اب فرمانبردار چاہئے۔۔۔”
غصّے سے وہ چبا چبا کر بولی۔۔۔۔
مسلسل رونے کے باعث اسکی آنکھیں اور ناک سرخ پڑ گئے تھے۔۔۔
“اسکی بات سن کر جان زور دار قہقہہ لگا کر ہنس پڑا۔۔۔۔۔”
“اوہو ابھی بیگم بنی نہیں۔۔۔۔اور شک پہلے شروع۔۔۔۔”
وہ ہنستا ہوا اسے چھیڑنے لگا۔۔۔۔
وہ غصّے سے اسکی ہنسی کو دیکھے گئی۔۔۔
کل تک تو وہ اسکی ہنسی سے امپریس ہوئی تھی۔۔۔۔ مگر آج یہی ہنسی اسے زہر لگ رہی تھی۔۔۔۔
“یقین کرو۔۔۔۔میں تمہارا ہوں اور ہمیشہ تمہارا رہوں گا۔۔۔۔۔”
ذرا جھک کر اسکے سامنے ہتھیلی پھیلاتا وہ مسکرا کر بولا۔۔۔۔
جاناں ایک تنفر بھری نگاہ اس پر ڈال کر پلٹ گئی۔۔۔۔
جان نے تیزی سے اسکی چادر کا پلو پکڑ
لیا ۔۔۔۔
ایک جھٹکے سے وہ رک گئی۔۔۔۔
“جان کو اگنور مت کیا کرو۔۔۔۔ وہ مریض عشق ہے۔۔۔ کیا پتا کب جان سے گزر جائے۔۔۔”
جاناں کا چہرہ لال پڑ گیا۔۔۔
ایک جھٹکے سے وہ اپنا پلو چھڑاتی وہاں سے بھاگتی چلی گئی۔۔۔۔
پیچھے وہ جذبے لٹاتی نگاہوں سے اسے دیکھے گیا۔۔۔۔
______________________________
جاناں۔۔۔۔، بیٹی۔۔۔۔ کدھر ہو۔۔۔۔؟؟؟
دیکھو ہم آ گئے۔۔۔۔
ٹیبل پر جاناں کی پسندیدہ چیزوں کے بھرے ہوئے شاپرز رکھتے ہوئے اکرام صاحب نے آواز لگائی۔۔
نور بیگم انہیں بیٹھنے کا اشارہ کرتی وہیں صوفے پر بیٹھ گئیں۔۔۔
جاناں بیٹی۔۔۔۔؟؟
انہوں نے پھر سے آواز لگائ۔۔۔
دروازہ کھلا۔۔۔
وہ مسکراۓ۔۔۔
مگر سامنے کمرے سے نکلتی شخصیت کو دیکھ وہ دونوں جھٹکے سے اٹھ کھڑے ہوئے تھے۔۔۔۔
ویلکم سسر جی اینڈ ساسو ماں۔۔۔۔۔!
فاتحانہ آواز میں کہا گیا تھا۔۔۔۔
ان دونوں کی آنکھیں پھٹنے کو آگئیں تھیں۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: