Jaan e Jaana Novel by Asra khan – Episode 5

0
جان جاناں از اسری خان – قسط نمبر 5

–**–**–

تم۔۔۔۔۔؟؟؟
اکرام صاحب شاک سے نکلتے ہی دھاڑے۔۔۔۔
آرام سے آرام سے ۔۔۔
وہ ہاتھ اٹھا کر قریب آتا انہیں ریلیکس کرنے لگا۔۔۔۔
بکواس بند کرو۔۔۔۔
میری بیٹی کہاں ہے۔۔۔۔؟؟ اسے ابھی اسی وقت بلاؤ یہاں پر۔۔۔۔
وہ غراۓ۔۔۔۔
جی سسر جی۔۔۔۔
جو حکم۔۔۔۔
جان جاناں۔۔۔۔۔
باہر آؤ۔۔۔۔
اس نے سینے پر ہاتھ باندھتے ہوئے آواز لگائی۔۔۔۔
اگلے ہی لمحے چادر میں لپٹی جاناں انکے سامنے تھی ۔۔۔۔۔
جسکی روئ روئ آنکھوں نے انکا دل دہلا دیا۔۔۔۔
جاناں۔۔۔۔؟؟
بیٹی تم ٹھیک ہو ۔۔۔۔۔؟؟
انہوں نے جاناں کو سینے سے لگاتے ہوئے وحشت زدہ لہجے میں پوچھا۔۔۔
بتاؤ بیٹی۔۔۔۔؟؟۔
انہوں نے اسے جھنجھوڑ دیا۔۔۔۔
بتاؤ بیٹی ۔۔۔؟؟
کیا کیا اس نے تمھارے ساتھ۔۔۔۔؟؟
جان کو کھا جانے والی نظروں سے دیکھتے وہ اس سے پوچھنے لگے۔۔۔
کچھ نہیں کہا بابا۔۔۔۔۔
بلکہ یہ چادر بھی اسی نے میرے سر پر ڈالی ہے۔۔۔۔
سر جھکا کر وہ بھرائ ہوئی آواز میں بولی۔۔۔۔
انکے دل کو جیسے سکون مل گیا۔۔۔۔
تم کیا چاھتے ہو۔۔۔؟۔۔
مسکراتے ہوئے جان کو دیکھ کر انہوں نے نہایت غصّے سے سوال کیا۔۔۔۔۔
“جاناں اور میرا نکاح”
ابھی اسی وقت۔۔۔۔!
نہایت اطمینان سے کہا گیا۔۔۔۔
تمم۔۔۔۔۔!!
وہ غصّے سے کانپنے لگے۔۔۔۔
میں تمھیں پہلے بھی منع کر چکا ہوں۔۔۔۔
سمجھ نہیں آتی کیا۔۔۔۔؟؟
اگر آ گئی ہوتی۔۔۔۔تو اتنی لمبی پلاننگ کرتا میں۔۔۔۔؟؟؟
نہایت حیرت سے سوال کیا گیا۔۔۔
دیکھو۔۔۔۔میں تمہاری شادی اپنی بیٹی سے نہیں کر سکتا۔۔۔۔
وہ ہاتھ اٹھاکر ذرا نرمی سے بولے۔۔۔۔
تو کیا آپ اپنی بیٹی کی شادی ایسے شخص سے کریں گے۔۔۔۔؟؟
فون کی سکرین کو ٹچ کرتا وہ مصروف انداز میں پوچھ رہا تھا۔۔۔۔
کیسے شخص سے۔۔۔۔؟؟
وہ ٹھٹکے۔۔۔۔
ایسے ۔۔۔۔!!
موبائل کی سکرین سامنے کر کہ وہ مسکراتے ہوئے بولا۔۔۔
اکرام صاحب کو لگا ۔۔
لاؤنچ کی چھت ان پر آن پڑی ہو ۔۔
وہ بہت ساری پکچرز تھیں۔۔۔۔۔
جس میں کہیں عامر شراب کے مزے لے رہا تھا۔۔۔۔
اور کہیں بے حیا لڑکیوں کے بیچ میں گھرا ہوا تھا۔۔۔
کانپتے ہوئے انہوں نے آخری پک کو ٹچ کیا۔۔۔۔
جو زوم ہوئ۔۔۔
اسکا لڑکھا ہوا وجود۔۔۔۔
انکے ہاتھ کانپنے لگے
نور بیگم کے چہرے پر جوش در آیا۔۔۔
دیکھا ۔۔۔۔میں کہتی تھی نا۔۔۔۔ کہ مجھے عامر کی سرگرمیاں مشکوک لگتی ہیں۔۔۔۔مگر آپ کی آنکھوں پر تو بھانجے کی محبّت کی پٹی بندھی ہوئی تھی ۔۔۔
وہ چمک کر بولیں۔۔۔۔
جاناں تو کنگ ہوگئی تھی۔۔۔۔
عامر نے اسکے ساتھ اتنا بڑا دھوکہ کیا تھا۔۔۔۔
مارے اذیت کے اسکی آنکھوں میں لالی اتر آئ۔۔۔۔
تو پھر سسر جی بلاؤں مولوی کو۔۔۔۔
نکاح کے لئے۔۔۔۔؟؟
اور ہاں انکار مت کیجئے گا۔۔۔
جان مسکراتے ہوئے اکرام صاحب سے پوچھنے لگا ۔۔
وہ خاموش رہے۔۔۔۔
بابا میں اس سے شادی نہیں کروں گی۔۔۔۔
جاناں روتے ہوئے چیخ کر بولی۔۔۔
سوچ لیں سسر جی۔۔۔
نکاح کئے بنا تو آپ یہاں سے ہل بھی نہیں سکتے۔۔۔
کیونکہ اس وقت آپ اپنے ہی گھر میں بند ہیں۔۔۔۔
اوہ سوری۔۔۔۔! آپکو لگا ہوگا کہ میں اسے اپنا گھر کہوں گا۔۔۔
نہیں آپ بھول رہے ہیں۔۔۔۔
میں عامر نہیں جان یوسف ہوں. ۔۔۔۔
وہ ذرا طنز سے بولا ۔۔۔
میں ایک بار عامر سے بات کرنا چاہتا ہوں۔۔۔
وہ جان کو دیکھتے ہوئے اٹل لہجے میں بولے۔۔۔
“شیور۔۔۔۔”
اس نے رضا مندی ظاہر کی۔۔۔
انہوں نے عامر کا نمبر ملایا۔۔۔
ایک بار۔۔۔۔ دو بار۔۔۔۔تین بار۔۔۔
نمبر مسلسل بیزی جا رہا تھا۔۔۔۔
تھک کر انہوں نے بے بسی سے سر جھکا دیا۔۔۔
بابا۔۔۔ ؟؟
جاناں انکے تاثرات دیکھ کر کانپی ۔۔
اکرام صاحب صاحب نے اسکے سر پر ہاتھ رکھ کر اسے گویا آنکھوں ہی آنکھوں میں راضی کیا۔۔۔
نہیں بابا۔۔۔ !
وہ انکا ہاتھ تھام کر نفی میں سر ہلاتی رونے لگی ۔۔۔۔
اکرام صاحب نے اسکا ماتھا چوما۔۔۔۔
اور جان کو “ہاں” کا اشارہ کیا۔۔۔۔
بابا ۔۔ ۔۔؟ نہیں ایسا مت کریں۔۔۔
جاناں مسلسل مزاحمت کرنے کی کوشش کر رہی تھی۔۔۔۔
مگر اسکی نا سنی گئی۔۔۔۔
جان نے فاتحانہ انداز میں مسکراتے ہوئے یاسر کو اشارہ کیا۔۔۔۔
وہ سر جھکاۓ اسکے حکم کی تعمیل کرنے لگا۔۔۔
______________________________
تو ٹھیک ہے پھر سسر جی ۔۔۔ نکاح تو ہو چکا ہے۔۔۔
ولیمے کا فنکشن تو بعد میں ارینج کریں گے۔۔۔
آپکے حکم کے مطابق۔۔۔۔
لیکن میری ایک شرط ہے۔۔۔۔ ولیمے تک جاناں میرے ساتھ ہی رہے گی ۔۔
اور یہ سمپل سی بات ہے۔۔۔ امید ہے آپکو اعتراض نہیں ہوگا۔۔۔۔
اسکی بات پر جہاں اکرام صاحب نے سر اثبات میں ہلایا۔۔۔
وہاں جاناں بے یقینی سے ماں باپ کو دیکھنے لگی ۔۔۔۔
مما نہیں پلیز۔۔۔۔!
میں آپکے ساتھ جاؤں گی۔۔۔۔
وہ تیزی سے ماں کی طرف لپکی۔۔۔
مگر بیچ میں ہی جان نے اسکی کلائ پکڑ لی۔۔۔۔
مما ۔۔۔۔۔، بابا۔۔۔۔
وہ کسی بچے کی طرح ضد کرتی اسکی گرفت میں مچلنے لگی۔۔۔۔
مگر وہ دونوں خاموشی سے وہاں سے نکلتے چلے گئے ۔۔
بابا. ۔۔۔۔۔۔
مما ۔۔۔۔۔۔
پلیز مجھے چھوڑ کے مت جائیں۔۔۔۔
میں آپکے بغیر نہیں رہ سکتی۔۔۔۔
وہ روتے ہوۓ تھک ہار کر نیچے بیٹھتی چلی گئی۔۔۔۔
جاناں۔۔۔۔
جان نے اسکا گال تھپتھپایا۔۔۔
آج پہلی بار اس نے اسے اسکے نام سے پکارا تھا۔۔۔۔
مگر وہ ساکت نظروں سے سامنے دروازے کو دیکھتی رہی ۔۔۔جہاں سے مما بابا نکلے تھے ۔۔
جان کا دل کٹ کر رہ گیا۔ ۔۔
جاناں کی یہ حالت اسے تکلیف دے رہی تھی۔۔۔۔
میں اسے جلد سنبھال لوں گا۔۔۔
اس نے دل ہی دل میں خود سے وعدہ کیا۔۔۔۔
______________________________
گھڑی پر ٹائم دیکھتے ہوئے اس نے دھیرے سے دروازہ کھولا۔۔۔۔
رات کے دو بج رہے تھے۔۔۔۔
اور اندر داخل ہوا۔۔۔۔
بنا آہٹ کے کے چلتا ہوا وہ جوں ہی ٹی وی لاؤنچ میں پہنچا۔۔۔
کہ سامنے بے چینی سے ٹہلتے اکرام صاحب اور سر ہاتھوں میں گراۓ صوفے پر بیٹھی نور بیگم پر نظر پڑی ۔۔۔
اسکے چہرے سے ذرا گھبراہٹ جھلکنے لگی۔۔۔
اہم ۔۔۔۔!
وہ ذرا کھنکار کر سر کے اشارے سے انہیں سلام کرتا کمرے کی طرف جانے لگا۔۔۔۔
ادھر آو۔۔۔۔۔
اکرام صاحب کی آواز پر اسے ایک سرد لہر اپنے جسم میں دوڑتی ہوئی محسوس ہوئی۔۔۔۔
جج۔۔۔ جی۔۔۔۔۔؟؟
وہ ذرا اعتماد سے انکے پاس جا کھڑا ہوا ۔۔۔
مگر اگلے ہی لمحے اپنے چہرے پر پڑنے والے زور دار تھپڑ نے اسے لڑکھڑانے پر مجبور کر دیا تھا۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Read More:  Surkh Gulab Novel by Farhat Nishat Mustafa – Episode 4

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: