Jaan e Jaana Novel by Asra khan – Episode 6

0
جان جاناں از اسری خان – قسط نمبر 6

–**–**–

دروازہ بند کر کہ وہ پلٹا۔۔۔۔۔
سامنے وہ صوفے پر دونوں ٹانگیں اوپر کئے انکے گرد بازوؤں کا گھیرا بناۓ کسی سوچ میں گم تھی ۔ ۔
جان جاناں۔۔۔۔!
اسکے قریب جا کر اس نے دھیرے سے پکارا۔۔۔
وہ کرنٹ کھا کر سیدھی ہوئی۔۔۔
تم۔۔۔۔۔؟؟
جان کو دیکھتے ہی اسکی بھنویں تن گئیں ۔۔۔
ہم ۔۔۔۔میرے علاوہ اور کس کی جرّات جو یہاں میری بیوی کے ساتھ ٹھہرے۔۔۔۔
پر سکون سا کہتا وہ اسکے ساتھ ہی صوفے پر بیٹھ گیا۔۔۔۔
ہونہہ۔۔۔۔۔!
نفرت سے وہ منہ موڑ گئی ۔۔۔
اچھا بتاؤ۔۔۔۔میرا اور تمہارا نیا گھر کیسا لگا ۔۔۔۔؟؟
وہ دوستانہ لہجے میں پوچھنے لگا۔۔۔۔
یہ میرا گھر نہیں ہے۔۔۔۔اور دیکھنا میں اس گھر سے ایسے بھاگ جاؤں گی۔۔۔۔کہ تمہاری سوچ بھی نہیں جائے گی۔۔۔۔
اور تم ہاتھ ملتے رہ جاؤ گے۔۔۔
منہ پر ہاتھ پھیرتی وہ اسے دھمکاتی ہوئی بولی۔۔۔۔
جان نے ایک نظر اسے دیکھا۔۔۔۔
“سنو۔۔۔۔۔ وہ کھڑکی سے باہر لان کی طرف دیکھو۔۔۔۔۔”
اس نے اشارہ کیا۔۔۔۔
جاناں بے اختیار سسپنس کے مارے باہر دیکھنے لگی۔۔۔۔
مغرب کا وقت تھا۔۔۔۔ وسیع لان اس وقت ہولناک سا بنا سائیں سائیں کر رہا تھا۔۔۔۔
دیکھ لیا۔۔۔۔ایسا کیا خاص تھا۔۔۔۔؟؟
وہ ایک کڑوی نگاہ جان پر ڈالتی اس سے پوچھنے لگی۔۔۔
“کچھ نہیں بس تمھیں بتا رہا تھا۔۔۔۔
اگر گھر سے بھاگنے کا سوچا۔۔۔۔
تو رات کو یہیں باندھ دوں گا۔۔۔
اور اگر اگلے دن دفنانے کی ضرورت بھی پڑی۔۔۔۔
تو یہی جگہ ٹھیک رہے گی تمھارے لئے۔۔۔۔”
جاناں کا سانس اٹک گیا ۔۔۔
تم مجھے دھمکی دے رہے ہو۔۔۔۔؟؟؟
خشک لبوں پر زبان پھیرتی وہ ذرا بہادری سے پوچھنے لگی۔۔۔
خالی دھمکی تو نہیں دیتا میں۔۔۔۔جو کہتا ہوں کر کہ دکھاتا ہوں۔۔۔۔
پتا تو ہوگا تمہیں۔۔۔۔
مسکراہٹ دباۓ وہ جاناں کے چہرے پر امڈتا خوف دیکھنے لگا۔۔۔۔
ہونہہ ۔۔۔۔ میں نہیں ڈرتی کسی سے۔۔۔۔
ہار ماننے والی تو وہ بھی نہیں تھی۔۔۔۔
اچھا آؤ۔۔۔۔
چھت پے چلیں۔۔۔۔
دعا کرو آج رات رمضان کا چاند نظر آ جائے۔۔۔۔
اور اس با برکت مہینے کی شروات میں ہمارا ملن کس قدر خوش قسمتی کی بات ہوگی۔۔۔۔
شٹ اپ۔۔۔۔۔!!
اسکی آخری بات پر وہ بدکی۔۔۔۔
ہاہاہا۔۔۔۔
جان اسکے انداز پر ہنستا ہی چلا گیا۔۔۔۔
اسٹاپ اٹ۔۔۔۔!
اسکو مسلسل ہنستا دیکھ کر جاناں کو کوفت ہونے لگی۔۔۔۔
اچھا آؤ۔۔۔۔ چھت پر چلیں ۔۔۔۔
اسکا ہاتھ تھام کر وہ اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔
میں کوئی چھوٹی بچی نہیں ہوں۔۔۔۔
خود چل سکتی ہوں۔۔۔۔
اپنا ہاتھ اسکی گرفت سے نکالتی وہ ذرا جتا کر بولی۔۔۔۔
مگر اگلے ہی لمحے ٹیبل سے ٹکرا کر گرنے لگی۔۔۔۔
کہ جان نے ہمیشہ کی طرح بتیسی نکالتے ہوئے اسے بازو سے تھام کر بچا لیا۔۔۔۔۔
جاناں کا چہرہ شرمندگی سے پھیکا پڑ گیا۔۔۔۔
اپنا ہاتھ اسکی گرفت سے نکالتی وہ خاموشی سے آگے بڑھ گئی۔۔۔۔
یہ اچھا ہے۔۔
اسے خاموش دیکھ کر جان ذرا مطمئن سا مسکرایا۔۔۔۔
اور اسکے پیچھے چلا گیا۔۔۔
رمضان کا چاند نظر آگیا۔۔۔۔ مبارک ہو۔۔۔۔
تھوڑی دیر بعد ہر طرف شور مچ گیا تھا۔۔۔۔
______________________________
اپنے گال پر ہاتھ رکھے اسنے بے یقینی سے اکرام صاحب کی طرف دیکھا۔۔۔۔
اور کچھ بولنے کے لئے لب کھولے۔۔۔۔
کہ اگلے ہی لمحے اکرام صاحب ضبط کھو کر اس پر تھپڑوں کی برسات کر چکے تھے۔۔۔۔
بس کریں اب۔۔۔۔
نور بیگم نے آگے بڑھ کر انکے ہاتھ روکے۔۔۔
زمین پر گرے عامر کو ابھی تک یقین نہیں آ رہا تھا۔۔۔۔
کہ یہ تھپڑ ماموں نے اسے مارے تھے۔۔۔
کیوں بس کر دوں۔۔؟؟
ارے آج میرا جی چاہ رہا ہے ۔۔۔۔اسکا قتل اپنے ہاتھ سے کر دوں۔۔۔۔
اپنا بیٹا سمجھ سے پالا تھا۔۔۔۔ذرا فرق نہیں کیا اس میں اور جاناں میں۔۔۔۔
مگر اس نے کیا صلہ دیا۔۔۔۔؟؟
ارے مجھے اس بے حیا کی وجہ سے اپنی بیٹی قربان کرنی پڑی۔۔۔۔
اسکے آنسو۔۔۔۔ بیگم میرا دل کٹے جا رہا ہے۔۔۔
وہ کتنی منتیں کر رہی تھی۔۔۔۔۔ کہ بابا مجھے چھوڑ کہ مت جاؤ ۔۔۔۔
مگر میں کچھ نہیں کر سکا۔۔۔۔
کچھ بھی نہیں۔۔۔
وہ کہتے ہوئے پھوٹ پھوٹ کر رو پڑے۔۔۔ نور بیگم کی آنکھیں بھی بھیگ گئیں۔۔۔۔
عامر بے یقینی اور حیرانی کے ملے جلے جذبات لئے اسے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔
وہ کیا بول رہے تھے۔۔۔۔
اسے کچھ سمجھ نہیں آ رہا تھا۔۔۔۔
ماموں جان۔۔۔۔؟؟؟
اس نے کچھ کہنا چاہا۔۔۔
بکواس بند کرو اپنی۔۔۔۔
ارے اپنی گندی زبان سے میرا نام۔۔۔۔
۔۔۔۔۔
میرا قصور تو بتائیں۔۔۔۔؟؟
انکی بات کاٹ کر وہ دھاڑا
ان دونوں نے ایک نظر ایک دوسرے کو دیکھا۔۔۔
اور پھر نور بیگم نے ٹیبل پر سے وہ لفافہ اٹھایا۔۔۔۔
جو جان نے یہ کہ کر دیا تھا۔۔۔۔
کہ “میرے بچوں کے ماموں کو گفت کر دیجئے گا۔۔۔۔۔”
اور اسکی طرف اچھال دیا۔۔۔
لفافہ ایک جھٹکے سے نیچے گرا۔۔۔۔
اور اس میں سے عامر کی تصویریں نکل کر ادھر ادھر پھیل گئیں۔۔۔
عامر کے پیروں تلے زمین کھسک گئی۔۔۔۔
وہ دونوں ایک دکھ بھری نگاہ اس پر ڈال کر وہاں سے نکلتے چلے گئے۔۔۔
وہ پاگلوں کی طرح اپنی ایک ایک تصویر دیکھنے لگا۔۔۔۔
کچھ تو اتنی شرم ناک تھیں۔۔۔۔
کہ اسے خود کو بھی یقین نہیں ہو رہا تھا کہ وہ نشے میں اس حد تک گر سکتا تھا۔۔۔۔
اسکا سارا پلین اس پر ہی الٹا پڑ گیا تھا۔۔۔
سر ہاتھوں میں گراۓ وہ پاگل ہونے کو تھا۔۔۔
نہیں اتنی آسانی سے مجھے نہیں ہارنا۔۔۔۔
اپنے ماتھے پر آیا پسینہ پونچھتے ہوئے وہ بڑبڑایا۔۔۔
جان یوسف تیری الٹی گنتی شروع۔۔۔۔ تیار رہ۔۔۔۔۔!
______________________________
جان جاناں اٹھو سحری کا ٹائم ہوگیا ہے۔۔۔۔
اٹھ جاؤ روزہ نہیں رکھو گی۔۔۔۔؟؟
جان نے کوئی دسویں بار آ کر اسے پکارا۔۔۔
جاناں نے مندی مندی آنکھیں کھول کر سامنے دیکھا۔۔۔۔
مگر جان کو خود پر جھکا دیکھ کر اسکی آنکھیں پٹ سے پوری کھل گئیں۔۔۔۔۔
پیچھے ہٹو۔۔۔۔
اسکے سینے پر ہاتھ رکھ کر وہ اسے پیچھے دھکیلتی جھٹکے سے سیدھی ہوئی۔۔۔۔
ساتھ ہی اپنے پہلو میں نگاہ دوڑاٰئ۔۔۔
اسکی رات کو بنائی ہوئی تکیوں کی باڑ جو اس نے جان اور اپنے درمیان بنائی تھی ۔۔۔۔۔
بلکل اپنی اصلی حالت میں تھی۔۔۔۔۔
اسنے بے اختیار سکون کا سانس بھرا۔۔۔۔
فریش ہو کر ٹیبل پر آ جانا ۔۔۔
ناشتہ تیار ہے۔۔۔۔
وہ سنجیدگی سے کہتا باہر نکل گیا۔۔۔۔
وہ ذرا حیرانی سے اسکے ایپرن کو دیکھتی رہی ۔۔۔۔
پھر کندھے اچکا کر جمائی کو روکتی بلینکٹ سائیڈ پر کر کہ واشروم کی طرف بڑھ گئی۔۔۔
______________________________
جلدی کرو ٹائم ختم ہونے والا ہے۔۔۔۔
اور تمہاری سستی ہے کہ ختم ہونے کا نام نہیں لے رہی۔۔۔۔۔
اسکو جوتے گھسیٹتا اور نہایت سست رفتاری سے آتا دیکھ کر جان ذرا غصّے سے بولا۔۔۔
جاناں ذرا حیران ہوئی۔۔۔۔
اسکو پہلی بار وہ غصّے میں دیکھ رہی تھی۔۔۔
“ہونہہ” کرتی وہ کرسی گھسیٹ کر بیٹھ گئی۔۔۔۔
لگتا ہے ناشتہ تم نے خود بنایا ہے۔۔۔۔
تب ہی حلق سے نیچے نہیں اتر رہا ۔۔۔
نرم چپاتی کو حلق سے اتارتی وہ اسکا خون جلانا نہیں بھولی۔۔۔۔
جان اسے اگنور کئے اب ٹشو سے ہاتھ صاف کرنے لگا۔۔۔۔
جاناں کا منہ بن گیا۔۔۔۔
اتنا اگنور ہونا اب نجانے اس سے کیوں نہیں برداشت ہو رہا تھا۔۔۔۔۔
ابھی اس نے کوئی چوتھا لقمہ ہی حلق سے اتارا تھا۔۔
کہ سائرن کے بجنے پر اس نے بوکھلا کر جان کی طرف دیکھا۔۔۔۔
جو اب نہایت سکون سے اسکی حالت کا مزا لے رہا تھا۔۔۔
“جان جاناں” یہ سوچنا بھی مت کہ تم آج کا روزہ چھوڑو گی۔۔۔۔
ورنہ پورا دن ویسے بھی میں تمھیں بھوکا رکھوں گا۔۔۔۔
اپنی ہنسی ضبط کئے وہ اسے دھمکاتا ہوا بولا ۔۔
جاناں کی رونے والی شکل دیکھ کر اسکے لب پھر سے پھیل گئے۔۔۔۔
اٹھو اور برتن سمیٹو میرے ساتھ۔۔۔۔
کام والی آۓ گی تو دھو دے گی۔۔۔
میں نے سوچا تھا پہلی سحری اپنی بیگم کو میں اپنے ہاتھ سے کرواؤں۔۔۔۔
ایک جلا دینے والی مسکان اسکے لبوں پر سجی تھی ۔۔۔
جاناں کے پاس کچھ کہنے کو نہیں بچا۔۔۔۔
ناچار ہو کر اسے اٹھنا ہی پڑا۔۔۔۔
______________________________
دروازے پر دستک ہوئی۔۔۔۔
یس۔۔۔۔۔!!
اکرام صاحب نے اخبار پر نظریں جماۓ اندر آنے کی اجازت دی۔۔۔۔۔
سر جھکاۓ عامر اندر داخل ہوا ۔۔۔
اکرام صاحب کے چہرے پر اسے دیکھتے ہی ناراضگی جھلکنے لگی ۔۔۔
وہ انکے قدموں میں آ کر بیٹھ گیا۔۔۔۔
انہوں نے پیر سمیٹ لئے۔۔۔۔
ماموں جان مجھے معاف کر دیں۔۔۔۔
وہ سر جھکاۓ نہایت شرمندگی سے بولا۔۔۔۔
وہ خاموش رہے۔۔۔۔
ماموں جان میری کوئی غلطی نہیں ہے۔۔۔۔میرے فرینڈز مجھے عام پارٹی کا کہ کر لے گئے۔۔۔
انہوں نے وہاں جا کر زبردستی مجھے پلا دی۔۔۔
ماموں میں تو ایسے گناہ کا سوچ بھی نہیں سکتا ماموں۔۔۔۔
میرا یقین کیجئے۔۔۔۔
اسکی آواز بھرا گئی اور آنکھیں میں نمی جھلکنے لگی۔۔۔۔
یا اکرام صاحب کو ایسا لگا۔۔۔۔
وہ کچھ دیر اسے پر سوچ نظروں سے دیکھتے رہے۔۔۔۔
پھر اسکی طرف بازو پھیلا دیۓ۔۔۔۔اسکی محبت انکی کمزوری تھی۔۔۔
عامر فورا انکے سینے لگ گیا۔۔۔۔
تمہاری اس غلطی کا ازالہ تو نہیں ہو سکتا۔۔۔۔
کیوں کہ اب تم جاناں کو کھو چکے ہو۔۔۔۔
کوشش کرو کہ اسے بھول جاؤ۔۔۔
اسکا سر تھپتھپاتے ہوئے وہ نرمی سے کہ رہے تھے۔۔۔
جی ماموں۔۔۔۔
اس نے فرمانبرداری کے سارے ریکارڈ توڑتے ہوئے کہا۔۔۔
وہ اپنے آنسو صاف کرنے لگے۔۔۔
یا میں بہت سمارٹ ہوں۔۔۔۔یا آپ بہت بدھو ہیں۔۔۔۔۔
انکے سینے سے لگے عامر نے استہزائیہ انداز میں سوچا تھا۔۔۔۔
______________________________
ہااۓ اللّه جی۔۔۔
میں مر جاؤں گی۔۔۔
ابھی صبح کے گیارہ کا ٹائم تھا ۔۔۔
جان باہر لاؤنچ میں کچھ پپیرز اور فائلز پھیلاۓ کام میں بیزی تھا ۔۔۔
جب ہی جاناں کی آواز پر اسکے لبوں پر مسکان دوڑ گئی۔۔۔۔
اٹھ گئی جان جاناں۔۔۔۔!
پین کو حرکت میں لاۓ وہ اپنا کام کرتا اس سے پوچھنے لگا۔۔۔۔
میرا نام جاناں ہے۔۔۔۔
مجھے اس واہیات نام سے مت پکارا کرو۔۔۔۔
وہ بدتمیزی سے بولی
جان نے فائل سے نظر اٹھا کر اسے دیکھا۔۔۔۔
وہ اس وقت بنیان اور ٹراؤزر میں ملبوس تھا ۔۔
اچھا بتاؤ میں تمہارا کون ہوں۔۔۔۔؟؟
اسکی طرف مکمّل توجہ کئے وہ اس سے پوچھنے لگا۔۔۔
زبردستی کے شوہر۔۔۔۔!
اس نے ذرا لحاظ نا کیا۔۔۔۔
چلو تم مانتی تو ہو مجھے اپنا شوھر۔۔۔۔!
اس نے اطمینان سے کہا۔۔۔۔
ہاں بلکل مگر زبردستی کا۔۔۔۔!
وہ ٹی وی آن کرنے کے لئے اب ریمورٹ ڈھونڈنے لگی۔۔۔۔
او کم آن۔۔۔۔!
میں نے سنا ہے۔۔۔۔ میاں بیوی ایک دوسرے کا لباس ہوتے ہیں۔۔۔۔
اور میرے مطابق بعد میں انکا نام بھی ایک ہونا چاہئے۔۔۔۔
جیسے ہمارا ہے۔۔۔۔
جان جاناں۔۔۔۔
کتنا سویٹ ہے نا۔۔۔۔۔
اسکا خون جلانے میں جان نے کوئی کسر نہیں چھوڑی۔۔۔
اور اگر بیوی بور ہو رہی ہو۔۔۔۔تو میاں اسکو تنگ کر کے اسکی بوریت بھی دور کر سکتا ہے۔۔۔۔
جیسے میں تمھیں کرنے والا ہوں۔۔۔۔
اس سے پہلے کہ جاناں سمجھتی ۔۔۔۔
وہ اسے اپنی مضبوط بازوؤں کے گھیرے میں جکڑ چکا تھا ۔۔۔
جان۔۔۔۔ یہ کیا بدتمیزی ہے۔۔۔۔
چھوڑو مجھے۔۔۔
جان میں کہتی ہوں چھوڑو۔۔۔۔
وہ بوکھلا کر اسے پیچھے کرنے لگی۔۔۔
مگر وہ ڈھیٹ بنا ہنسنے لگا ۔۔۔
جان۔۔۔۔ چیپ آدمی چھوڑو مجھے۔۔۔۔
چھوڑو۔۔۔
اللّه جی میری بیوی مجھے “جان” بھی کہتی ہے۔۔۔اور چھوڑنے کو بھی کہتی ہے۔۔۔
میں کدھر جاؤں آخر۔۔۔۔
اسکی ڈھٹائ عروج پر تھی۔۔۔
نہیں نے تمھیں وہ والا جان نہیں کہا۔۔۔۔
وہ والا کہا ہے۔۔۔۔
وہ بوکھلاہٹ میں نجانے کیا کہے جا رہی تھی۔۔۔۔
کونسے والا۔۔؟
جان ہنس ہنس کے بے حال ہوئے جا رہا تھا۔۔۔۔
ایک تو تمہارا نام اتنا واہیات ہے۔۔۔میں کیا کروں۔۔۔۔
وہ تھک کر اب روہانسی ہو کر بولی۔۔۔۔
اپنے نام پر غور۔۔۔۔!!
اسکو آزاد کرتا وہ استہزائیہ انداز میں بولا۔۔۔
اور ہاں یاد رکھنا۔۔۔۔تمہارے نام زیادہ رومینٹک ہے۔۔۔۔
اسکو آنکھ مار کر وہ اپنے کام میں بیزی ہوگیا ۔۔۔
جاناں نے کھا جانے والی نظروں سے اسے دیکھا۔۔۔۔اور پیر پٹختی وہاں سے چلی گئی۔۔۔
جان سے وہ دوبارہ کبھی پنگا نہیں لے گی۔۔۔
یہ اس نے عہد کر لیا تھا۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: