Jaan e Jaana Novel by Asra khan – Episode 8

0
جان جاناں از اسری خان – قسط نمبر 8

–**–**–

فریزر سے کباب نکال اس نے پلیٹ شیلف پر رکھی۔۔۔
اور فرائ پین میں آئل انڈیلنے لگی۔۔۔۔
ساتھ ہی ہلکی ہلکی آواز میں وہ آخری سورتوں کی تلاوت بھی کر رہی تھی۔۔۔۔
رمضان ختم ہونے کو تھا ۔۔۔
جلد ہی اسکا ولیمہ ہونا تھا۔۔۔۔
اور وہ اس رشتے میں مکمّل طور پر بندھنے سے پہلے تمام غلط فہمیاں اور کدورتوں کو دل سے نکال دینا چاہتی تھی۔۔۔۔
آج افتاری کے لئے اس نے اپنے ہاتھوں سے جان سے لئے چیزیں بنائیں تھی۔۔۔۔
اگرچہ وہ کوئی اچھی کوک نہیں تھی۔۔۔
مگر جتنا کچھ بنا سکتی تھی۔۔۔۔
وہ اس نے ضرور بنایا تھا۔۔۔۔
کباب تلنے کے بعد اس نے فروٹ چاٹ دہی بڑے اور رول بناۓ۔۔۔۔
ایک تو روزہ تھا اور اوپر سے کچن میں کھڑے ہو کر گرمی میں کام کرنا مشقت طلب کام تھا ۔۔۔
کام سے فارغ ہو کر وہ شاور لینے واشروم میں گھس گئی۔۔۔۔۔
بال ڈرائیر سے خشک کرنے کے بعد اس نے ہلکا ہلکا سا میک اپ کیا۔۔۔۔
گولڈن اور بلیک ڈریس اسکی گوری رنگت پر خوب جچ رہا تھا۔۔۔۔
اپنی تیاری سے مطمئن ہو کر وہ باہر نکل آئ ۔۔۔
وال کلاک پر نگاہ دوڑائ۔۔۔۔
ابھی افطاری میں ٹائم باقی تھا۔۔۔۔
تھوڑی دیر بعد ٹیبل سیٹ کرنے کا سوچ کر وہ وہیں صوفے پر بیٹھ گئی۔۔۔۔
اور ساتھ پڑی کتاب اٹھا کر پڑھنی شروع کر دی۔۔۔۔
تھوڑا سا ٹائم اور گزرا
۔۔۔۔۔
باہر مین گیٹ کھلا۔۔۔۔
گاڑی گیراج میں داخل ہوئی۔۔۔۔
جان اور یاسر کی ملی جلی آوازیں۔۔۔۔
جاناں نے بے اختیار لب کاٹے۔۔۔۔
جان سے اظھار محبّت کا خیال دل کو دھڑکا دیتا تھا۔۔۔۔
نجانے اسے کیوں جان کی آواز اونچی لگی ۔۔۔
ذرا سی بے چینی اسے اپنے وجود میں دوڑتی ہوئی محسوس ہوئی۔۔۔۔۔
کتاب سائیڈ پر رکھے وہ انگلیاں مروڑنے لگی۔۔۔۔
پھر بے چینی سے اٹھ کھڑی ہوئی۔۔۔۔
بپھرا ہوا جان جوں ہی اندر پہنچا۔۔۔۔
سامنے لش پش سے تیار ٹہلتی ہوئی جاناں پر نظر پڑی۔۔۔۔
اسکی آنکھوں میں ایک تاثر سا ابھرا۔۔۔
جاناں مڑی۔۔۔۔
اپنے سامنے کھڑے جان کو دیکھ کر اسکے لبوں پر شرمگین مسکراہٹ آ ٹھہری۔۔۔۔
جان مضبوط قدم اٹھاتا اس تک پہنچا۔۔۔۔
اور ایک جھٹکے سے اسکی کلائ اپنی گرفت میں لی۔۔۔۔
جاناں نے چونک کر اسے دیکھا۔۔۔۔
جان۔۔۔۔؟؟
اس نے کچھ کہنا چاہا۔۔۔
مگر وہ اسے کلائ سے کھینچتا باہر کی طرف لے جانے لگا۔۔۔۔
جان آپ مجھے کہاں لے کر جا رہے ہیں۔۔۔۔؟؟
وہ اپنی کلائ چھڑوانے کی کوشش کرتی اس سے سوال کر رہی تھی۔۔۔۔
مگر وہ لب بھینچے باہر لے آیا۔۔۔۔
جان میری بات تو سنیں۔۔۔؟؟
پلیز جواب تو دیں۔۔۔۔
جان۔۔۔۔؟؟
شٹ اپ۔۔۔۔!
جسٹ شٹ اپ۔۔۔۔۔!
اسکو اپنی گرفت سے آزاد کرتا ایک دم وہ دھاڑا۔۔۔۔
جاناں منہ پر ہاتھ رکھے دو قدم پیچھے ہوئی۔۔۔۔
ڈر سے جسم کپکپانا شروع ہوگیا تھا ۔۔۔
“میری پیٹھ پیچھے تم یہ سب کرتی ہو ۔۔۔؟؟”
موبائل کی سکرین اسکے سامنے کئے وہ تلخی سے پوچھنے لگا۔۔۔۔
جاناں کے پیروں تلے زمین کھسک گئی۔۔۔۔
“نہیں ۔۔۔۔۔نہیں پلیز جان میرا یقین کریں۔۔۔۔یہ سب کچھ میں نے جان بوجھ کر نہیں کیا۔۔۔۔
وہ تو میں گرنے لگی تو عامر نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ششششش۔۔۔۔!!
اسکی بات کاٹ وہ انگلی اسکے ہونٹوں پر رکھتا اسے خاموش کروا گیا۔۔۔۔
“آنکھوں دیکھے کو کیسے جھٹلاؤں۔۔۔؟؟”
اسکی کاٹ دار نظروں سے جاناں کی سانسیں رک گئیں۔۔۔۔
“جان اللّه کی قسم میرا یقین کریں۔۔۔۔۔
میں جھوٹ نہیں بول رہی۔۔۔۔”
بے تحاشا روتے ہوئے وہ اپنی صفائی پیش کر رہی تھی۔۔۔
چپ۔۔۔۔۔!
ایک دم چپ۔۔۔۔!
“میں ہی بیوقوف تھا جو تمھارے پیار میں اندھا ہو کر یہ سب نا دیکھ سکا۔۔۔۔”
اسکا لہجہ اسکی باتیں۔۔۔
جاناں کی روح نکالنے کا کام کر رہے تھے۔۔۔۔
“چلو تم نکلو میرے گھر سے۔۔۔۔!
جاؤ اپنے گھر ۔۔۔اور دوبارہ یہاں مت آنا۔۔۔۔”
اسے کہنی سے پکڑ کر کھینچتا وہ اب آگے بڑھانے لگا۔۔۔۔
“جان میرا یقین کریں۔۔۔۔میں نے کچھ نہیں کیا۔۔۔۔”
اسکے پیچھے کھنچتی وہ اسکی منتیں کر رہی تھی۔۔۔
“جان میں صرف آپ سے پیار کرتی ہوں۔۔۔۔
میری بات کا یقین کریں۔۔۔۔”
اسکی بات سن کر جان ایک لمحے کے لئے رکا۔۔۔۔
اور جاناں کی طرف دیکھا۔۔۔۔
جسکا چہرہ آنسوؤں سے مکمّل بھیگ چکا تھا۔۔۔۔
اگلے ہی لمحے وہ اسے گاڑی کی پچھلی سیٹ پر دھکیل چکا تھا۔۔۔۔
صدام ۔۔۔۔ جاؤ بی بی کی چادر اٹھا کر لاؤ اندر سے۔۔۔۔
دروازہ باہر سے لاک کرتا وہ صدام کو کہنے لگا۔۔۔۔
“جان میرا یقین کریں۔۔۔میں آپ سے محبّت کرتی ہوں۔۔۔۔”
اس نے جان کے آگے ہاتھ جوڑ دئے۔۔۔۔۔
“مجھے مت چھوڑیں۔۔۔
میں آپکے بغیر مر جاؤں گی۔۔۔۔”
مگر جان نے اسکی ایک نا سنی۔۔۔۔
چادر اسکی طرف پھینک کر اس نے صدام کو اسے اسکے گھر چھوڑ کر آنے کا اشارہ کیا۔۔۔۔
وہ سر جھکاۓ گاڑی کی طرف بڑھا۔۔۔۔
اور جان کے حکم کی تعمیل کرنے لگا ۔۔۔۔
گاڑی جھٹکے سے حرکت میں آئ۔۔۔۔
جاناں ہچکیوں سے رو رہی تھی۔۔۔۔
جان وہاں سے مڑ کر اندر کی طرف بڑھ گیا۔۔۔۔۔
گیٹ سے باہر نکلنے تک جاناں بے بسی سے اسے دیکھتی رہی۔۔۔۔ مگر وہ اسکی طرف نہیں مڑا تھا
______________________________
کام ہوگیا۔۔۔۔؟؟؟
سیگریٹ کا کش لگاتے ہوئے اس نے دریافت کیا ۔۔۔
جی مالک۔۔۔!
شفیق کی سرگوشی نما آواز گونجی۔۔۔
ہاہا۔۔۔۔۔
اسکا قہقہہ گونجا۔۔۔۔
آنکھوں کی چمک بڑھ گئی تھی۔۔۔۔
جلد تمھیں منہ مانگا انعام ملے گا۔۔۔۔
بس ایک بار مجھے میرے مقصد میں کامیاب ہونے دو۔۔۔۔
ایش ٹرے میں سگریٹ مسلتے ہوئے اس نے شفیق کو خوش کیا۔۔۔۔
اور کال کاٹ دی۔۔۔۔
ایک مطمئن مسکراہٹ اسکے لبوں پر دوڑ رہی تھی۔۔۔۔
“جان یوسف۔۔۔۔
بڑا کم ظرف نکلا۔۔۔۔”
ایک منٹ نہیں لگایا۔۔۔۔
اپنی جاناں کو گھر سے ہی فارغ کر دیا۔۔۔۔
وہ ہنس رہا تھا ۔۔۔ ۔۔۔۔بے تحاشا۔۔۔۔۔!!
وہ فتح کے بہت قریب تھا۔۔۔۔
بہت قریب۔۔۔۔!!
یہ اسکی سوچ تھی۔۔۔۔
______________________________
تھکے تھکے قدم لئے وہ گھر میں داخل ہوئی۔۔۔۔
آنکھوں سے آنسو سیلاب کی طرح رواں دواں تھے۔۔۔۔
مما۔۔۔۔۔!!
اندر داخل ہوتے ہی اس نے بوجھل آواز میں انہیں پکارا۔۔۔۔
ارے جاناں بیٹی ۔۔۔۔!
نور بیگم ذرا حیران ہوتیں حسب معمول کچن سے نکلیں۔۔۔۔
مما۔۔۔۔!!
وہ بچوں کی کہتی زمین پر بیٹھ گئی۔۔۔۔
جاناں بیٹی۔۔۔۔؟؟
اکرام صاحب اسکی عجیب سی حالت دیکھ کر اسے پکارتے کمرے سے نکلے۔۔۔۔
“جان کہاں ہے بیٹا۔۔۔۔؟؟”
مما نے اسے صوفے پر بٹھاتے ہوئے اسکا گال تھپتھاتا کر پوچھا۔۔۔۔
“مما جان نے مجھے چھوڑ دیا۔۔۔”
وہ نا چیخی۔۔۔ نا روئی۔۔۔
اسکے اس ٹھہرے ہوئے لہجے میں جو درد تھا۔۔۔۔
اس نے ان دونوں کا جیسے کلیجہ چیر دیا۔۔۔۔
کیا کہ رہی ہو بیٹا۔۔۔؟؟
اکرام صاحب کا دل دہل گیا ۔۔
“بابا۔۔، جان نے مجھے چھوڑ دیا۔۔۔
وہ کہتا ہے۔۔۔میں بہت بری ہوں۔۔۔اسکی پیٹھ پیچھے عیاشیاں کرتی ہوں۔۔۔۔گندی ہوں ۔۔۔بدقماش ہوں۔۔۔۔ واہیات ہوں۔۔۔۔”
وہ سامنے ایک جگہ پر نگاہیں ٹکاۓ ایک ہی سانس میں بولتی گئی۔۔۔۔
استغفار۔۔۔۔۔!
اکرام صاحب کے منہ سے بےساختہ ادا ہوا۔۔۔۔
نور بیگم شاکڈ سی بیٹی کا زرد چہرہ دیکھے گئیں۔۔۔۔
“اکرام صاحب مجھے اسکی حالت ٹھیک نہیں لگ رہی۔۔۔۔
آپ پلیز جان بیٹے کو فون کریں۔۔۔۔
اور اس سے پوچھیں۔۔۔۔
کیا کیا ہے جاناں نے ۔۔؟؟
جو اسے گھر سے یوں بے عزت کر کہ نکال دیا۔۔۔۔”
انکی آواز ضبط کی شدّت سے کانپ رہی تھی۔۔۔۔
“کیا کیا ہے جاناں نے۔۔۔۔؟؟”
جاناں بڑبڑائ۔۔۔۔
“میری پیٹھ پیچھے تم یہ سب کرتی ہو۔۔۔؟؟”
جان کی آواز ہتھوڑے کی طرح اسکے سر پر بجی۔۔۔۔
اس نے بے اختیار کانوں پر ہاتھ رکھ لئے۔۔۔۔
“میں ہمیشہ تمہارے ہنسنے کی وجہ بننا چاہتا ہوں۔۔۔۔
رونے کی نہیں۔۔۔”
کہیں دور سے جان بولا تھا۔۔۔
وہ وحشت سے اپنے بال نوچنے لگی ۔۔
“میاں بیوی ایک دوسرے کا لباس ہوتے ہیں۔۔۔۔ویسے ہی انکا نام بھی ایک ہو جانا چاہئے۔۔۔
جیسے ہمارا ہے۔۔۔۔
جان جاناں۔۔۔۔
کتنا سویٹ ہے نا۔۔۔۔۔”
جان۔۔۔۔۔پلیز مجھے چھوڑ کہ مت جاؤ۔۔۔ میں آپ سے بہت محبت کرتی ہوں۔۔۔۔
وہ کانوں پر ہاتھ رکھے چیخنے لگی۔۔۔۔
جاناں بیٹی۔۔۔۔
نور بیگم نے اسے سینے میں بھینچ لیا۔۔۔۔
اگلے ہی لمحات وہ ہوش سے بے گانہ ہوگئی تھی۔۔۔۔
پلیز ڈاکٹر کے پاس چلیں۔۔۔۔
اسکو بے تحاشا چومتیں نور بیگم چیخی تھیں۔۔۔
______________________________
سر بہت اچھا موقع ہے۔۔۔۔
بڈھا۔۔۔، بڈھی اپنی تتلی کو لئے ہوسپٹل کی طرف گئے ہیں۔۔۔۔
کیوں نا ایک ہی وار میں کام تمام کر دیں۔۔۔۔۔
فون کے اس پار عامر کو شفیق کی پر اسرار آواز سنائی دی۔۔۔
نیکی اور پوچھ پوچھ۔۔۔!
اسکا جاندار قہقہہ گونجا۔۔۔۔
اسے ایک ایکسیڈنٹ بنانا ہے۔۔۔۔
اور یہ تمہاری زمیداری ہے۔۔۔۔
الکہل حلق میں انڈیلتے ہوئے وہ سرگوشی کے عالم میں بولا۔۔۔۔
اوکے باس۔۔۔!
کال کٹ گئی۔۔۔۔
عامر سن گلاسز لگاتا اٹھ کھڑا ہوا۔۔۔۔
وہ اس گیم کا مزہ لینا چاہتا تھا۔۔۔۔
جو اس نے کھیلی تھی۔۔۔۔
گاڑی کی کیز انگلیوں میں گھماتا وہ باہر نکل گیا۔۔۔۔
دوسری طرف شفیق کے ساتھ کسی اور کا قہقہہ گونجا تھا۔۔۔
عامر کے مقابل بھی کوئی عام شخص نہیں تھا ۔۔۔
______________________________
تیز چلائیں گاڑی آپ پلیز۔۔۔۔!!
نور بیگم جاناں کو دیکھتیں بے چینی سے اکرام صاحب کو کہنے لگیں۔۔۔۔
ساتھ ہی وہ مسلسل جاناں کو ہوش میں لانے کی کوشش کر رہی تھیں۔۔۔
ٹپ ٹپ گرتے انکے آنسو جاناں کا چہرہ بھگو رہے تھے۔۔۔۔
الٰہی خیر۔۔۔۔۔!!
اکرام صاحب کے پیر بے اختیار بریکس پر پڑے۔۔۔۔
ایک طرف سے بڑی اسکول بس اور دوسری طرف سے مال سے فل ٹرک انکی طرف بڑھ رہا تھا۔۔۔۔
اور بیچ میں اتنی ہی جگہ بچی تھی۔۔۔۔
کہ حادثہ ممکن تھا ۔۔۔
ٹرک والے کو بجاۓ بریک لگانے کے خود کی طرف بڑھتا دیکھ کر وہ کلمہ پڑھنے لگے۔۔۔موت کے خوف نے انکے حواس سلب کر لۓ تھے۔۔۔۔۔
نور بیگم کی بے ساختہ چیخیں پوری گاڑی میں گونجنے لگیں۔۔۔
دور اطمینان سے گاڑی میں یہ منظر دیکھتے عامر نے گلاسز لگاۓ۔۔۔
بائے بائے ماموں ممانی اینڈ جان کی ہونے والی مرحوم جاناں۔۔۔۔
بڑے تفاخر سے وہ گاڑی موڑ گیا۔۔۔۔
اسے پتا تھا۔۔۔کہ ابھی ایک زور دار دھماکہ ہونا تھا۔۔۔۔
اور تین لوگوں کی سانس کی ڈوری ٹوٹنی تھی۔۔۔۔
مگر وہ یہ بھول گیا تھا۔۔۔
کہ زندگی اور موت اللّه کے ہاتھ میں ہوتی ہے۔۔۔۔
وہ اوپر سے جتنا بہادر بنتا تھا۔۔۔۔ اندر سے اتنا ہی ڈرپوک تھا۔۔۔۔
اسلئے اپنے ہی بناۓ ہوئے گیم کو پورا ہوتا نہیں دیکھ سکتا تھا۔۔۔
کوئی آواز نہیں تھی۔۔۔۔
وہی عام سا روز مرہ کا شور۔۔۔۔!!
اچانک ٹرک کے ٹائر چرچراۓ۔۔۔۔
وہ حیرانی سے پیچھے مڑا۔۔۔
اسکے خیال میں تو وہاں چیخیں ہونی تھیں۔۔۔۔ خون ہونا تھا۔۔۔۔
اور تھوڑی دیر بعد اسے بھی ٹسوے بہاتے ہوئے وہاں جانا تھا ۔۔۔۔
یہ کیا ہوگیا تھا۔۔۔۔
اگلے ہی لمحے پولیس کا سائرن بجنے لگا۔۔۔۔
“مسٹر عامر آپکو اپنے ہی ماموں ممانی اور انکی بیٹی پر قاتلانہ حملے کے جرم میں گرفتار کیا جاتا ہے۔۔۔۔”
اسکے سامنے ہتھکڑی لہرائ۔۔۔
خوف اور حیرانی کی شدّت سے اسکی آنکھیں ابل آئیں۔۔۔۔
وہ اتنا حیران تھا کہ ماموں کی گاڑی کو اپنے سامنے رکتا نا دیکھ سکا۔۔۔
“ہمت بھی کیسے ہوئی۔۔۔ میری بیوی اور میرے سسر ساس کی طرف میلی نظروں سے دیکھنے کی۔۔۔۔”
اب سڑو جیل میں۔۔۔!
جان یوسف تمھیں اتنی آسانی سے باہر نہیں آنے دے گا۔۔۔۔
آنے والی آواز پر اس نے کرنٹ کھا کر دیکھا۔۔۔۔
سامنے جان کے ساتھ شفیق کھڑا ہنس رہا تھا۔۔۔۔
شفیق۔۔۔۔؟؟
اسکے لب بے یقینی کے انداز میں وا ہوئے۔۔۔
“سوری عامر سائیں۔۔۔
پر ہم صرف جان یوسف سر کے لئے کام کرتے ہیں۔۔۔۔
اور آپکے ساتھ کام تو ہم کر رہے تھے۔۔۔
مگر جان سر کے لئے۔۔۔!!”
شفیق کی آواز اسے سنائی دی۔۔۔
“اتنا بڑا دھوکہ کیا اس نے عامر کے ساتھ ۔۔؟؟
یہ کیسے ہو سکتا تھا۔۔۔۔؟”
“جو تم نے اپنے باپ جیسے ماموں کے ساتھ کرنا چاہا۔۔۔
اس کے بعد تم کیا سمجھتے ہو۔۔۔
تمھیں وفا ملتی۔۔۔۔
ارے آگے اپنا انجام دیکھو۔۔۔۔
ضمیر فورا بول پڑا۔۔۔”
اسکے ہاتھ ہتھکڑیوں میں جکڑ دئے گئے ۔۔
ایک باب ٹھپ ہوا۔۔۔۔
گیم کا لیول اینڈ ۔۔۔۔
جس میں وہ اوور ہوگیا تھا۔۔۔
جان یوسف کے ساتھ وہ مزید گیم نہیں لگاۓ گا۔۔۔
اس چیز کا احساس اسے پولیس موبائل میں ایک مجرم کے طور پر بیٹھ کر ھوگیا تھا۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Read More:  Yaaram by Sumaira Hameed – Episode 55

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

%d bloggers like this: