Jannat Kay Pattay Nimra Ahmed Urdu Novels

Jannat Kay Pattay Novel By Nimra Ahmed – Episode 38

Jannat Kay Pattay Novel By Nimra Ahmed
M Shahbaz Aziz
Written by Peerzada M Mohin
جنت کے پتے تک از نمرہ احمد – قسط نمبر 38

–**–**–

ﮐﭽﮫ ﭨﮭﯿﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﮔﺎ۔ ﺍﺏ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﭨﮭﯿﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﮔﺎ۔ ﻭﮦ ﺭﻭﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﺗﻨﺎ ﮨﯽ ﮐﮩﮧ ﭘﺎﺋﯽ، ﭘﮭﺮ ﺁﻧﺴﻮ ﮨﺮ ﻣﻨظر ﭘﮧ ﻏﺎﻟﺐ ﺁﻧﮯ ﻟﮕﮯ ﻭﮦ ﭘﻮﭼﮭﺘﺎ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ، ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺍﻧﺪﺭ ﺩﻭﮌﯼ ﭼﻠﯽ ﺁﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﭘﻮﺭﯼ ﺭﺍﺕ ﻭﮦ ﺳﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﯽ۔ ﺍﺗﻨﯽ ﺫﻟﺖ، ﺍﺗﻨﺎ ﺗﻤﺎﺷﺎ؟ ﺗﺎﯾﺎ ﺩﺭﺳﺖ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺗﮯ، ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﮐﻮﻥ ﺳﺎ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﺗﮭﺎ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ؟ ﺍﺏ ﺗﮏ ﭘﻮﺭﮮ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﻮ ﭘﺘﺎ ﭼﻞ ﭼﮑﺎ ﮨﻮ ﮔﺎ۔ ﻭﮦ ﮨﺮ ﺟﮕﮧ ﺑﮯ ﻋﺰﺕ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺭﮦ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺭﺍﺕ ﺑﮭﺮ ﻭﮦ ﺭﻭﺗﯽ ﺭﮨﯽ۔ ﺻﺒﺢ ﺳﺮ ﺑﮭﺎﺭﯼ ﮨﻮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻓﺮﯾﺶ ﮨﻮﻧﮯ ﺗﮏ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ کہ آج وہ ابا سے بات کر کے ﺗﺎﯾﺎ ﺍﺑﺎ ﮐﻮ ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﭨﺎﺭﻧﯽ ﺍﻥ ﻓﯿﮑﭧ ﺑﻨﺎ ﺩﮮ ﮔﯽ۔ ﺗﺎﯾﺎ ﺍﺑﺎ ﮐﻮ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﺠﺎﺏ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ، ﺍﺱ ﮐﮯ ﺁﻓﺲ ﺁﻧﮯ ﺳﮯ ﺗﮭﺎ، ﺳﻮ ﻭﮦ ﺍﺏ ﯾﮧ ﺳﺎﺭﺍ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﮨﯽ ﺧﺘﻢ ﮐﺮ ﺩﮮ ﮔﯽ۔
ﻧﺎﺷﺘﮯ ﮐﯽ ﻣﯿﺰ ﭘﺮ ﻭﮦ ﺍﻭﺭ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺍﮐﯿﻠﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺳﺒﯿﻦ ﭘﮭﭙﮭﻮ ﺍﺑﺎ ﮐﻮ ﻧﺎﺷﺘﮧ ﮐﺮﻭﺍ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍﻭﺭ ﺟﮩﺎﻥ ﭘﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮩﺎﮞ ﺗﮭﺎ۔
ﯾﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﺎﮞ ﺑﺎﭖ ﮐﯽ ﻧﺎﻓﺮﻣﺎﻧﯽ ﮐﺎ ﺍﻧﺠﺎﻡ۔ ﺳﺎﺭﮮ خاندان ﻣﯿﮟ ﺑﮯ ﻋﺰﺗﯽ ﮐﺮﻭﺍ ﮐﮯ ﺭﮐﮫ ﺩﯼ۔ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺧﻔﮕﯽ ﺳﮯ ﺑﻮﻟﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﻭﮦ ﺳﺮ ﺟﮭﮑﺎﺋﮯ ﭼﻨﺪ ﻟﻘﻤﮯ بمشکل ﺯﮨﺮ ﻣﺎﺭ ﮐﺮ ﺳﮑﯽ، ﭘﮭﺮ ﺍﭨﮫ ﺁﺋﯽ۔
ﺍﯾﺴﮯ ﻟﻤﺤﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﺍﺱ ﺳﯿﻤﯿﻨﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﭘﺲ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﯽ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﻧﺎﻃﻮﻟﯿﻦ ﺍﺳﺘﻨﺒﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺍﭨﯿﻨﮉ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺳﮯ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﭨﮑﺮ ﮐﮭﺎ ﮐﺮ ﮔﺮﺗﯽ ﭼﮍﯾﺎﮞ ﯾﺎﺩ ﺁﺗﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﺮﺩ ﺍیسی ﮨﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﮭﮍﯼ ﮐﺮ ﺩﯼ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻟﻮﮒ ﺗﻮ ﺍﻧ ﮩﯽ ﭘﺮﻧﺪﻭﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺗﮭﮯ۔ ﭘﮩﻠﮯ ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﺳﻦ ﻟﯿﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﺗﮭﮯ کہ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺳﻨﺘﯽ ﺭﮨﮯ ﮔﯽ۔ ﻭﮦ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺗﮭﮑﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭﻭﮞ ﺳﮯ ﭨﮑﺮﺍﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﭘﺮﻧﺪﻭﮞ ﮐﺎ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﻮ ﮐﯿﺎ ﻓﺮﻕ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ؟
ﺍﺑﺎ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻧﺤﯿﻒ ﻭ ﮐﻤﺰﻭﺭ سے ﻟﮓ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ذﺭﺍ سے ﻣﺴﮑﺮﺍﺋﮯ۔
ﮐﺎﻡ ﮐﯿﺴﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ؟
ﺳﺐ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ ﺍﺑﺎ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﺳﮯ ﺳﺐ ﺁﻧﺴﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﺗﺎﺭ ﻟﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﮐﺮ ﺑﻮﻟﯽ۔
ﺑﮩﺖ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﯾﮧ ﻟﮍﮐﯽ! ﭘﮭﭙﮭﻮ ﻣﺴﮑﺮﺍ ﮐﮩﺘﯽ ﻧﺎﺷﺘﮯ ﮐﮯ ﺑﺮﺗﻦ ﺍﭨﮭﺎ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﭘﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ، ﺍﻧﮭﯿﮟ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﻭﺍﻗﻌﮯ ﮐﺎ ﻋﻠﻢ ﺗﮭﺎ ﯾﺎ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﭘﮭﺮ ﺑﮭﯽ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻧﮕﺎﮦ ﻧﮧ ﻣﻼ ﺳﮑﯽ۔
* * * *
ﺁﻓﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﺮﯼ ﺧﺒﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻣﻨﺘﻈﺮ ﺗﮭﯽ۔ ﭨﺮﯾﮉ ﺳﯿﻨﭩﺮ ﮐﺎ ﭘﺮﻭﺟﯿﮑﭧ ﺍﻧﮭﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻼ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﺑﺎﺕ ﻧﮯ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﻣﺰﯾﺪ ﺷﮑﺴﺘﮧ ﺩﻝ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﺎﻗﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﻮ ﺑلواﯾﺎ ﺗﺎﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺭﺍﺩﮮ ﺳﮯ ﺁﮔﺎﮦ ﮐﺮ ﺩﮮ ﺍﻭﺭ ﻭﮐﯿﻞ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﻮ ﺑﻠﻮﺍ ﺳﮑﮯ، ﻣﮕﺮ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﮯ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮨﯽ ﻭﮦ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺩﮦ ﻣﻮﺿﻮﻉ ﺧﻮﺩ ﮨﯽ ﺍﭨﮭﺎ ﻟﯿﺎ۔
ﺍﺗﻨﯽ ﺍﭼﮭﯽ ﭘﺮﯾﺰﻧﭩﯿﺸﻦ ﺩﯼ ﺗﮭﯽ، ﭘﮭﺮ ﮨﻤﯿﮟ ﭘﺮﻭﺟﯿﮑﭧ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻼ؟ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﻭﺍﻗﻌﮯ ﮐﯽ ﺗﮭﮑﻦ ﺍﻭﺭ ﺍﺫﯾﺖ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺮ ﺁﺋﯽ ﺗﮭﯽ ۔
ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮨﻤﺎﺭﺍ ﭘﻼﻥ ﭘﺴﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﯾﺎ۔ ﻭﮦ ﺷﺎﯾﺪ ﮐﭽﮫ ﺍﻭﺭ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﺍﭼﮭﺎ! ﻭﮦ ﺧﺎﻣﻮﺵ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ۔ ﮐﭽﮫ ﺳﻮﭺ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﺎﻗﺮ ﺻﺎﺣﺐ ﺳﮯ کوئی ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﯿﺞ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﺎﺭﺍ ﭘﺮﻭﺟﯿﮑﭧ ﭘﻼﻥ ﻧﮑﺎﻻ ﺍﻭﺭ ﺍﺯﺳﺮﻧﻮ ﺟﺎﺋﺰﮦ ﻟﯿﻨﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ کہ ﻭﮦ ﺁﺝ ﺁﻓﺲ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﮮ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺑﮭﯽ ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ کہ ﺍﺳﮯ ﺍﻥ ﻣﻌﺎﻣﻼﺕ ﮐﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﺠﺮﺑﮧ ﻧﮩﯿﮟ، ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺻﺮﻑ ﯾﮧ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﯽ ﺗﮭﯽ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﮩﺎﮞ ﮨﻮﺋﯽ۔
ﺗﻤﺎﻡ ﺧﺎﮐﮯ ﺍﭼﮭﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺑﻘﻮﻝ ﺁﺭﮐﯿﭩﮑﭧ بے حد ﺷﺎﻧﺪﺍﺭ۔ ﻣﮕﺮ ﺟﺐ ﺍﺱ ﻧﮯ ﭘﮩﻠﯽ ﺩﻓﻌﮧ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺫﮨﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺑﺎﺕ ﺁﺋﯽ ﺗﮭﯽ؟ ﮐﭽﮫ ﻏﯿﺮ ﺁﺭﺍﻡ ﺩﮦ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺳﮯ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺫﮨﻦ پر ﺯﻭﺭ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮑ ﺪﻡ ﮐﺴﯽ ﺑﮩﺘﯽ ﻧﺪﯼ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﻭﮦ ﺧﯿﺎﻝ ﺍﻣﮉ ﺁﯾﺎ۔
ﻣﻮﺕ ﮐﺎ ﮐﻨﻮﺍﮞ۔
ﺍﻭﺭ ﺍﮔﻠﮯ ﻟﻤﺤﮯ ﮨﯽ ﺍﺳﮯ ﻏﻠﻄﯽ ﻧﻈﺮ ﺁ ﮔﺌﯽ۔
ﺩﺍﻭﺭ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﮐﭽﮫ ﺷﺎﭘﻨﮓ ﻓﺎﻃﻤﮧ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻻﮨﻮﺭ ﺳﮯ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﮐﺴﯽ ﮐﺎﻡ ﺳﮯ ﻭﮦ ﺷﺎﮦ ﻋﺎﻟﻤﯽ ﻣﺎﺭﮐﯿﭧ ﭼﻠﮯ ﮔﺌﮯ۔ ﻏﻠﻄﯽ ﯾﮧ ﮐﯽ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﺎﺭ ﻟﮯ ﮔﺌﯽ۔ ﻭﮨﺎﮞ ﺍﯾﮏ ﻣﻠﭩﯽ اﺳﭩﻮﺭﯼ ﭘﺎﺭﮐﻨﮓ ﺑﻠﮉﻧﮓ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﺭ ﭘﺎﺭﮎ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﯼ، ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﭼﻮﺗﮭﯽ ﻣﻨﺰﻝ ﭘﮧ۔ ﮔﻮﻝ ﮔﻮﻝ ﮔﮭﻮﻣﺘﯽ ﻣﻨﺰﻟﯿﮟ، ﺗﻨﮓ ﺗﺎﺭﯾﮏ ﺟﮕﮧ، ﮔﺎﮌﯼ ﺍﻭﭘﺮ ﭼﮍﮬﺎﻧﺎ ﯾﻮﮞ ﺗﮭﺎ ﮔﻮﯾﺎ ﻣﻮﺕ ﮐﮯ ﮐﻨﻮﯾﮟ ﻣﯿﮟ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮ ﮐﺮﻧﺎ۔ ﺗﺐ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﻣﻠﭩﯽ ﺳﭩﻮﺭﯼ ﭘﺎﺭﮐﻨﮓ ﻋﻤﺎﺭﺍﺕ ﺑﮩﺖ ﺑﺮﯼ ﻟﮕﺘﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺏ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﻼﻥ ﻣﯿﮟ ﭨﺮﯾﮉ ﺳﯿﻨﭩﺮ ﮐﯽ ﭘﺎﺭﮐﻨﮓ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺭﻗﺒﮯ ﭘﺮ ﻣﻠﭩﯽ اﺳﭩﻮﺭﯼ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﺍﺳﮯ ﺗﻌﻤﯿﺮﺍﺗﯽ ﮐﺎﻣﻮﮞ ﮐﺎ ﺗﺠﺮﺑﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﮕﺮ ﺷﺎﭘﻨﮓ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻃﻮﯾﻞ ﺍﻭﺭ ﻭﺳﯿﻊ ﺗﺠﺮﺑﮧ ﺗﮭﺎ، ﭘﮭﺮ ﯾﮧ ﺍﺗﻨﯽ ﺑﮍﯼ ﻏﻠﻄﯽ ﺍﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺋﯽ؟ ﺷﺎﯾﺪ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﮐﮧ ﭘﮩﻠﮯ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﮐﻢ ﻋﻠﻢ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮ ﺁﺭﮐﯿﭩﮑﭧ ﭘﮧ ﺑﮭﺮﻭﺳﮧ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﻧﺪﮬﯽ ﺗﻘﻠﯿﺪ، ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﺍﭘﻨﯽ ﻋﻘﻞ ﺳﮯ ﺳﻮﭼﺎ ﺗﻮ ﭼﻮﻧﮏ ﮔﺌﯽ۔ ﻟﻮﮒ ﺍﯾﮏ ﮐﮭﻼ ﺍﻭﺭ ”ﺯﻣﯿﻨﯽ“ ﭘﺎﺭﮐﻨﮓ ﻻﭦ ﭘﺴﻨﺪ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﻠﭩﯽ اﺳﭩﻮﺭﯼ ﭘﺎﺭﮐﻨﮓ ﺑﻠﮉﻧﮕﺰ ﺗﻮ ﺍﺩﮬﺮ ﮐﻢ ﮨﯽ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﭘﮭﺮ ﺁﺭﮐﯿﭩﮑﭧ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﯿﻮﮞ ﮐﯿﺎ؟
ﻭہ ﺟﺎ ﮨﯽ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺗﻮ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﻥ ﺻﺎﺣﺐ ﺳﮯ ذﺭﺍ ﺩﻭ ﭨﻮﮎ ﺑﺎﺕ تو ﮐﺮ ﻟﮯ۔ ﯾﮩﯽ ﺳﻮﭺ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺑﺎﮨﺮ ﺁﺋﯽ۔ ﺗﺮﮐﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺧﻮﺩ ﭼﻞ ﮐﺮ ﺟﺎﻧﺎ ﺳﯿﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮨﺎﮞ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﭘﻮﭼﮭﻮ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﭼﻞ ﮐﺮ ﺍﺧﯿﺮ ﻣﻨﺰﻝ ﺗﮏ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﮯ ﺁﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺳﻮ ﻭﮦ ﺧﻮﺩ ﺁﺭﮐﯿﭩﮑﭧ ﺻﺎﺣﺐ ﺳﮯ ﻣﻠﻨﮯ ﭼﻠﯽ ﺁﺋﯽ، ﻟﯿﮑﻦ ﮐﻮﺭﯾﮉﻭﺭ ﮐﮯ ﺳﺮﮮ ﭘﺮ ﻭﮦ ﺍﯾﮑﺪﻡ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﻮﺋﯽ۔
ﻭﻟﯿﺪ ﺍﻭﺭ ﺁﺭﮐﯿﭩﮑﭧ ﺭﺿﻮﺍﻥ ﺻﺎﺣﺐ ﮐﺴﯽ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﮨﻨﺴﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﮦ ﺍﻟﭩﮯ ﻗﺪﻣﻮﮞ ﻭﺍﭘﺲ ﺁﺋﯽ۔ ﺍﯾﮏ ﺳﺮﺥ ﺑﺘﯽ ﺟﻠﻨﮯ ﺑﺠﮭﻨﮯ ﻟﮕﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﮐﮩﯿﮟ ﮐﭽﮫ ﻏﻠﻂ ﺗﮭﺎ۔ ﮐﭽﮫ ﮔﮍﺑﮍ ﺗﮭﯽ۔
ﻭﺍﭘﺲ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﯿﭧ ﭘﺮ ﺑﯿﭩﮭﯽ، ﻭﮦ ﮐﺘﻨﯽ ﮨﯽ ﺩﯾﺮ ﺳﻮﭼﺘﯽ ﺭﮨﯽ۔ ﭘﮭﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺮﺱ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺑﺎﺋﻞ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮨﺎﺗﮫ ﮈﺍﻻ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻣﺨﻤﻞ ﮐﺎ ﭨﮑﮍﺍ ﺑﮭﯽ ﻧﻈﺮ ﺁ ﮔﯿﺎ ﺟﺲ ﭘﺮ ﺳﻨﮩﺮﯼ ﺩﮬﺎﮔﮯ ﺳﮯ ﺩﻭ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﻟﮑﮭﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﮦ ﺍﺳﮯ ﺩﻭ ﺍﻧﮕﻠﯿﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﻤﺎﺗﯽ ﺍﻟﭧ ﭘﻠﭧ ﮐﺮﺗﯽ، ﺳﻮﭼﺘﯽ ﺭﮨﯽ۔ ﻓﺮﺍﺭ ﮨﺮ ﻣﺴﺌﻠﮯ ﮐﺎ ﺣﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔
ﻣﺴﺌﻠﻮﮞ ﮐﺎ ﺣﻞ ﮈﮬﻮﻧﮉﻧﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ، ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺗﻼﺵ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﺠﺮ ﺍﺣﻤﺪ ﮐﺎ ﺳﺒﻖ ﺍﺳﮯ ﯾﺎﺩ ﺗﮭﺎ۔
ﭼﻨﺪ ﻣﻨﭧ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﺍﺭﺍﺩﮦ ﺑﺪﻝ ﺩﯾﺎ۔ ﻭﮦ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﮧ ﺗﯿﺎﺭ ﺗﮭﯽ۔ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﭖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻏﺪﺍﺭﯼ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺳﮯ ﺳﺎﺭﯼ ﮔﮍﺑﮍ کے ﻣﻨﺒﻊ ﮐﻮ ﮈﮬﻮﻧﮉﻧﺎ ﺗﮭﺎ۔
* * * *
ﮐﺎﻧﻔﺮﻧﺲ ﺭﻭﻡ ﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﮦ ﺑﻨﺎ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﺳﺮﺑﺮﺍﮨﯽ ﮐﺮﺳﯽ ﭘﺮ ﺁ ﮐﮯ ﺑﯿﭩﮫ ﺗﻮ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ، مگر ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﮐﺮ ﺗﺎﯾﺎ ﻓﺮﻗﺎﻥ، داور بھائی ﺍﻭﺭ ﺯﺍﮨﺪ ﭼﭽﺎ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ، ﺍﻥ ﺳﮯ ﻧﮕﺎﮦ ﻣﻼﻧﺎ ﮐﺘﻨﺎ ﺍﺫﯾﺖ ﻧﺎﮎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺳﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﺯﺧﻤﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺧﻮﻥ ﺭﺳﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﮐﺘﻨﮯ ﺁﺭﺍﻡ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﺗﮭﮯ، ﺟﯿﺴﮯ ﮐﭽﮫ ﮨﻮﺍ ﮨﯽ ﻧﮧ ﮨﻮ ۔
ﺗﻮ ﺁﭖ ﻧﮯ ﭘﺮﻭﺟﯿﮑﭧ ﮨﺎﺭ ﺩﯾﺎ۔ ﺗﺎﯾﺎ ﻓﺮﻗﺎﻥ ﻧﮯ ﻧﺨﻮﺕ ﺑﮭﺮﯼ ﺳﻨﺠﯿﺪﮔﯽ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮐﯿﺎ۔
ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﺟﮭﮑﺎ ﮨﻮﺍ ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ۔ ﻭﮦ ﺗﺎﯾﺎ ﻓﺮﻗﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺭﺍﺕ ﮔﺌﮯ ﭘﮑﮍﯼ ﻧﮩﯿﮟ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ۔ ‏(ﺟﯿﺴﺎ ﮐﮧ ﺗﺎﯾﺎ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺩﻓﻌﮧ ﺍﺳﮯ ﻓﻮﻥ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ) ﮐﮧ ﻭﮦ ﺳﺮ ﺍﭨﮭﺎ ﻧﮧ ﺳﮑﺘﯽ۔ ﻧﮧ ﮨﯽ ﻭﮦ ﺯﺍﮨﺪ ﭼﭽﺎ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﭼﯿﺦ ﭼﻼ ﮐﺮ ﺩﺍﻭﺭ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﻮ ﭘﻮﺭﮮ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺑﮯﻋﺰﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻣﺠﺮﻡ ﺗﮭﯽ۔ ﺯﺍﮨﺪ ﭼﭽﺎ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺳﺨﺖ ﺳﻨﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﮐﯽ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﻮ ﮐﯿﻮﮞ ﻓﺮﺍﻣﻮﺵ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ؟ ﺍﻭﺭ ﺗﺎﯾﺎ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺩﺍﻭﺭ ﮐﯽ ﺍﺱ ﺑﮯﻋﺰﺗﯽ ﭘﮧ ﺑﺎﺯ ﭘﺮﺱ ﮐﯽ؟ ﭘﮭﺮ ﺍﺏ۔۔۔۔۔۔۔۔؟ ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﺣﺠﺎﺑﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﺠﺎﺑﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﭘﮧ ﮐﺘﻨﺎ ﮨﯽ ﮐﯿﭽﮍ ﺍﭼﮭﺎﻟﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﮮ ﺍﺳﮯ ﻣﯿﻼ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺟﯽ ﺳﺮ! ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮨﺎﺭ ﺩﯾﺎ۔
ﺗﺎﯾﺎ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﭙﺎﭦ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎ۔
ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﻭﺟﮧ ﺑﺘﺎﻧﺎ ﭘﺴﻨﺪ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﯽ؟ ﻭﻟﯿﺪ ﮐﯽ ﺑﺎﺕ ﭘﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮔﺮﺩﻥ ﻣﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﺳﯽ ﺳﻨﺠﯿﺪﮔﯽ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ۔
ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺟﻮﺍﺑﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮞ ﻭﻟﯿﺪ ﺻﺎﺣﺐ۔
ﺩﺭﺳﺖ! ﭘﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﻣﻄﻠﻊ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﻮﮞ ﮔﺎ کہ ہم ﮔﺮﯾﻦ ﮨﺎﺅﺱ ﻭﺍﻻ ﭘﺮﻭﺟﯿﮑﭧ ﮈﯾﻠﮯ (Delay) ﮐﺮﻧﮯ ﭘﮧ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮ ﭼﮑﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﮐﯿﻮﮞ؟ وہ چونکی۔ ﺍﺳﮯ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﺗﮭﺎ کہ ﻭﮦ ﮐﺘﻨﺎ ﺍﮨﻢ ﭘﺮﻭﺟﯿﮑﭧ ﺗﮭﺎ ۔
ﮐﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺠﭧ ﻧﮩﯿﮟ ہے۔ ﻓﻨﮉﺯ ﮐﻢ ﭘﮍ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ ﺍﺱ ﮐﻮ ﮐﯿﺮﯼ ﺁﻥ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﺗﻨﺎ ﭘﯿﺴﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﺎﻏﺬ ﺣﯿﺎ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮍﮬﺎﯾﺎ، ﺟﺲ ﭘﮧ ﺍﯾﮏ ﻟﻤﺒﺎ ﺳﺎ ﻓﮕﺮ ﻟﮑﮭﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺍﺗﻨﯽ ﺭﻗﻢ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮐﯿﺴﮯ ﮨﻮ ﮔﺎ؟ ﻭﮦ ﺳﭻ ﻣﯿﮟ ﻣﻀﻄﺮﺏ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ۔
ﻣﮕﺮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﭘﺮﻭﺟﯿﮑﭧ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺑﮩﺖ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﮨﻮ ﮔﺎ۔
ﭘﮭﺮ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﯾﮟ ؟
ﯾﮧ ﻣﯿﺮﮮ ﺍﺑﺎ ﮐﺎ ﭘﺮﻭﺟﯿﮑﭧ ﺗﮭﺎ۔ ﮨﻢ ﺍﺱ ﮐﻮ ﯾﻮﮞ ﮐﺎﻝ ﺁﻑ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﮯ۔ ﻭﮦ ﻓﮑﺮﻣﻨﺪﯼ ﺳﮯ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﺗﻢ ﮨﻤﯿﮟ ﯾﮧ ﺍﻣﺎﺅﻧﭧ ﻻ ﺩﻭ۔ ﮨﻢ ﺍﺳﮯ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮐﮭﯿﮟ ﮔﮯ، ﺑﺎﺕ ﺧﺘﻢ۔ ﺯﺍﮨﺪ ﭼﭽﺎ ﻧﮯ ﺑﯿﺰﺍﺭﯼ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ۔ ﻭﮦ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺗﺎﯾﺎ، ﭼﭽﺎ ﺍﺳﮯ ﯾﻮﮞ ﻣﺨﺎﻃﺐ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ، ﺟﯿﺴﮯ ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮐﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﻧﮩﯿﮟ، ﻣﻼﺯﻣﮧ ﮨﻮ۔
ﻭﺍﻗﻌﯽ؟ ﺍﮔﺮ ﻣﯿﮟ ﺁﭖ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺍﻣﺎﺅﻧﭧ ﻻ ﺩﻭﮞ ﺗﻮ آﭖ ﮐﺎﻡ ﺟﺎﺭﯼ ﺭﮐﮭﯿﮟ ﮔﮯ؟ ﮐﯿﺎ ﺁﭖ ﺯﺑﺎﻥ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻟﮩﺠﮧ ﺗﯿﺰ ﮨﻮ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﻥ ﮐﺎ ﭼﯿﻠﻨﺞ ﮐﺮﺗﺎ، ﻣﺬﺍﻕ ﺍﮌﺍﺗﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﺍﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﺮﺍ ﻟﮕﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﺯﺧﻢ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﮐﮭﺮﭼﻨﮯ ﻟﮕﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﺑﺎﻟﮑﻞ! ﺗﺎﯾﺎ ﻓﺮﻗﺎﻥ ﻧﮯ ﺷﺎﻧﮯ ﺟﮭﭩﮑﮯ۔
ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ! ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺮ ﮐﯽ ﺻﺒﺢ ﺁﭖ ﮐﻮ اپنے ﻓﯿﺼﻠﮯ ﺳﮯ ﺁﮔﺎﮦ ﮐﺮ ﺩﻭﮞ ﮔﯽ۔ ﻭﮦ ﻓﺎﺋﻞ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺣﺘﻤﯽ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺑﻮﻟﯽ۔
ﭘﮭﺮ ﺟﺐ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﻓﺲ ﺁﺋﯽ ﺗﻮ ﻣﻮﺑﺎﺋﻞ ﺑﺞ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﺮﺳﯽ ﭘﺮ ﺗﮭﮑﮯ ﺗﮭﮑﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﮔﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻓﻮﻥ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ۔ ﻧﻤﺒﺮ ﺟﮩﺎﻥ ﮐﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﮐﯿﺴﯽ ﮨﻮ؟ ﻭﮦ ﭼﮭﻮﭨﺘﮯ ﮨﯽ ﻓﮑﺮﻣﻨﺪﯼ ﺳﮯ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ ﻟﮕﺎ۔
ﭨﮭﯿﮏ ﮨﻮﮞ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﻧﮕﻠﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﭘﯿﺸﺎﻧﯽ ﻣﺴﻠﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﯾﺎ۔ ﺑﮯ ﺧﻮﺍﺑﯽ ﮐﮯ ﺑﺎﻋﺚ ﺳﺮ ﺑﮯﺣﺪ ﺩﺭﺩ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﭼﻠﻮ! ﭘﮭﺮ ﻟﻨﭻ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺳﺎ ﺍﭨﺎﻟﯿﻦ ﺭﯾﺴﭩﻮﺭﻧﭧ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ۔ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺍﯾﮉﺭﯾﺲ ﺳﻤﺠﮭﺎﺅﮞ؟
ﺳﺎﺭﮮ ﺩﻥ ﻣﯿﮟ ﻭﮦ ﭘﮩﻠﯽ ﺩﻓﻌﮧ ﮨﻨﺴﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﯾﮧ ﻣﯿﺮﺍ ﺷﮩﺮ ﮨﮯ ﺟﮩﺎﻥ ﺑﮯ! ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﯿﮟ۔ ﺭﯾﺴﭩﻮﺭﻧﭧ ﮐﺎ ﺻﺮﻑ ﻧﺎﻡ ﺑﺘﺎﺅ۔ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﮨﻠﮑﺎ ﺳﺎ ﮨﻨﺲ ﺩﯾﺎ۔
ﺍﻭﮦ ﺳﻮﺭﯼ! ﺍﯾﻒ ﭨﯿﻦ ﻣﯿﮟ ﺍﭨﺎﻟﯿﻦ ﺍﻭﻭﻥ ﭘﮧ ﺁ ﺟﺎﺅ۔
* * * *
ﮐﺎﺭ ﮈﺭﺍﺋﯿﻮﺭ ﭼﻼ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮦ ﭘﭽﮭﻠﯽ ﻧﺸﺴﺖ ﭘﮧ ﺑﯿﭩﮭﯽ ﺳﯿﻞ ﻓﻮﻥ ﭘﮧ ﻧﻤﺒﺮ ﻣﻼ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﺑﺎ ﮐﯽ،ﻧﺼﯿﺤﺖ ﭘﮧ ﻋﻤﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺳﻮﭼﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﮐﺎﻝ ﻣﻼ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻓﻮﻥ ﮐﺎﻥ ﺳﮯ ﻟﮕﺎﯾﺎ،۔ ﺻﺪ ﺷﮑﺮ ﮐﮧ ﺍﻧﮭﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﺎﻝ ﺭﯾﺴﯿﻮ ﮐﺮ ﻟﯽ۔
ﺍﻟﺴﻼﻡ ﻋﻠﯿﮑﻢ ﺫﯾﺸﺎﻥ ﺍﻧﮑﻞ! ﻣﯿﮟ ﺣﯿﺎ ﺑﺎﺕ ﮐﺮ ﺭﮨﯽ ﮨﻮﮞ۔
ﮐﺎﺭ ﭨﺮﯾﻔﮏ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﮩﺘﯽ ﭼﻠﯽ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺗﻨﮯ، ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﺍﻋﺼﺎﺏ ﮈﮬﯿﻠﮯ ﭘﮍﺗﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺑﺎﺕ ﺧﺘﻢ ﮐﯽ ﺗﻮ ﺁﻓﺲ ﺳﮯ ﻓﻮﻥ ﺁ ﮔﯿﺎ۔ ﻭﯾﻨﮉﺭ ﻣﺎﻝ ﮐﯽ ﺳﭙﻼﺋﯽ ﮐﮭﻮﻟﻨﮯ ﭘﮧ ﺗﯿﺎﺭ ﻧﮧ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﺮﺍﻧﯽ ﻗﯿﻤﺖ ﭘﮧ ﺗﻮ ﮨﺮﮔﺰ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺳﺮﺍﺳﺮ ﺑﻠﯿﮏ ﻣﯿﻠﻨﮓ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﻠﯿﮏ ﻣﯿﻠﺮﺯ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺍﺳﮯ ﻧﻔﺮﺕ ﺗﮭﯽ۔
ﮐﻞ ﻣﯿﺮﯼ ﻣﯿﭩﻨﮓ ﺍﺭﯾﻨﺞ ﮐﺮﻭﺍ ﺩﯾﮟ ﻭﯾﻨﮉﺭ ﺳﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﺻﺎﺣﺐ ﺳﮯ ﺧﻮﺩ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﻮﮞ ﮔﯽ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﻨﺪ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔ ﮐﺎﺭ ﺭﯾﺴﭩﻮﺭﻧﭧ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁ ﮐﮭﮍﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔
ﻭﮦ ﺍﻃﺎﻟﻮﯼ ﺭﯾﺴﭩﻮﺭﻧﭧ ﮐﯽ ﺑﺎﻻﺋﯽ ﻣﻨﺰﻝ ﮐﯽ ﺳﯿﮍﮬﯿﺎﮞ ﭼﮍﮬﺘﯽ ﺍﻭﭘﺮ ﺁﺋﯽ۔ ﺩﻭﭘﮩﺮ ﮐﺎ ﻭﻗﺖ ﺗﮭﺎ۔ ﺗﻤﺎﻡ ﻣﯿﺰﯾﮟ ﺧﺎﻟﯽ ﺗﮭﯿﮟ۔ ﮨﺎﻝ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺑﻨﯽ ﺗﮭﯽ، ﺟﺲ ﺳﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﮈﺑﻞ ﺭﻭﮈ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺭ ﮔﺮﯾﻦ ﺑﯿﻠﭧ ﮐﮯ ﺩﺭﺧﺖ ﻭ ﺳﺒﺰﮦ ﻧﻈﺮ ﺁ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﻣﯿﺰ ﭘﮧ ﻭﮦ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺳﮯ ﺁﺗﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺩﮬﯿﺮﮮ ﺳﮯ ﻣﺴﮑﺮﺍﯾﺎ۔
ﻭﮦ ﺑﻨﺎ ﮐﺴﯽ ﺩﻗﺖ ﮐﮯ ﺍﺳﮯ ﻧﻘﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﭘﮩﭽﺎﻥ ﻟﯿﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ﭘﮩﻠﯽ ﺩﻓﻌﮧ ﺟﺐ ﻭﮦ ﻧﻘﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ، ﻓﺮﯾﮉﻡ ﻓﻠﻮﭨﯿﻼ ﮐﮯ ﺍﺣﺘﺠﺎﺝ ﮐﮯ ﺩﻥ، ﺗﺐ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺣﯿﺮﺍﻧﯽ ﻇﺎﮨﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺷﺎﯾﺪ ﻭﮦ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﮐﻢ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﭘﮩﻠﮯ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮐﺮ ﻟﻮ ﻟﻨﭻ ﮐﺲ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮨﮯ؟ ﮐﺮﺳﯽ ﮐﮭﯿﻨﭻ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﯿﺰ ﭘﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﭘﺮﺱ ﺭﮐﮭﺎ۔
ﺁﻑ ﮐﻮﺭﺱ! ﺗﻤﮩﺎﺭﯼ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﮨﮯ۔ ﺍﺻﻐﺮ ﺍﯾﻨﮉ ﺳﻨﺰ ﮐﯽ ﻗﺎﺋﻢ ﻣﻘﺎﻡ ﺍﯾﻢ ﮈﯼ ﻣﺠﮫ ﻏﺮﯾﺐ ﺁﺩﻣﯽ ﮐﻮ ﻟﻨﭻ ﺗﻮ ﮐﺮﻭﺍ ﮨﯽ ﺳﮑﺘﯽ ہے۔
ﺷﯿﻮﺭ! ﺍﺱ ﻧﮯ ﺑﺸﺎﺷﺖ ﺳﮯ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﻮبائل ﺭﮐﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﺮﺱ ﮐﮭﻮﻻ۔ مخمل ﮐﺎ ﭨﮑﮍﺍ ﺍﻧﺪﺭﻭﻧﯽ ﺟﯿﺐ ﻣﯿﮟ ﮨﺰﺍﺭ ﮐﮯ ﻧﻮﭦ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﮐﮭﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﮨﺰﺍﺭ ﮐﺎ ﻧﻮﭦ؟ ﻭﮦ ﺯﭖ ﺑﻨﺪ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﭼﻮﻧﮑﯽ۔ ﭘﮭﺮ ﻧﺎﻣﺤﺴﻮﺱ ﺳﮯ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﭘﺮﺱ ﮐﻮ ﺍﻧﺪﺭ ﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺭﻭﭘﻮﮞ ﻭﺍﻻ ﭘﺎﺅﭺ ﺁﻓﺲ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﺭﮦ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺏ ﺳﻮﺍﺋﮯ ﻻﻭﺍﺭﺙ ﺳﮯ ﺍﺱ ﻧﯿﻠﮯ ﻧﻮﭦ ﮐﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮐﭽﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻟﻠﮧ، ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭﯼ ﺍﻟﺠﮭﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﺅﭺ ﺍﭨﮭﺎﻧﺎ ﯾﺎﺩ ہی ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮨﺎ۔ ﺍﺏ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﮮ؟
ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺍ؟ ﺍﯾﻢ ﮈﯼ ﺻﺎﺣﺒﮧ! ﭘﯿﺴﮯ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﻮﻝ ﺁﺋﯿﮟ؟ ﻭﮦ ﻣﺴﮑﺮﺍﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮫ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﯾﮏ ﺗﻮ ﺍﺱ ﺁﺩﻣﯽ ﮐﯽ ﻋﻘﺎﺑﯽ ﻧﻈﺮﯾﮟ، ﺍﺱ ﻧﮯ ﺳﻨﺒﮭﻞ ﮐﺮ ﭘﺮﺱ ﺑﻨﺪ ﮐﯿﺎ۔
ﺗﻢ ﺍﯾﻢ ﮈﯼ ﺻﺎﺣﺒﮧ ﺳﮯ ﺍﯾﺴﯽ ﻏﯿﺮ ﺫﻣﮯ ﺩﺍﺭﺍﻧﮧ ﺣﺮﮐﺖ ﮐﯽ ﺗﻮﻗﻊ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﻮ؟ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﻣﺴﮑﺮﺍﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻭﮦ ﺳﯿﺪﮬﯽ ﮨﻮﺋﯽ۔
ﻧﮩﯿﮟ! ﺧﯿﺮ ﺁﺭﮈﺭ ﮐﺮﻭ۔ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺷﮩﺮ ﮨﮯ۔ ﺗﻤﮩﯿﮟ زﯾﺎﺩﮦ ﭘﺘﺎ ﮨﻮ ﮔﺎ۔ ﻭﮦ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﯿﺎ۔
ﺣﯿﺎ ﻧﮯ ﺷﯿﻮﺭ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﯿﻨﯿﻮ ﮐﺎﺭﮈ ﺍﭨﮭﺎﯾﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﻮ ﻟﻨﭻ ﮐﺮﻭﺍﻧﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﮨﺰﺍﺭ ﮐﮯ ﻧﻮﭦ ﺳﮯ۔ ﺍﮮ ﭨﯽ ﺍﯾﻢ ﺑﮭﯽ ﭘﺎﺅﭺ ﻣﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﺣﺮﮐﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﯽ ﺗﮭﯽ، ﺟﺲ ﺳﮯ ﺟﮩﺎﻥ ﮐﻮ ﭘﺘﺎ ﭼﻠﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﭘﯿﺴﮯ ﻭﺍﻗﻌﯽ ﺑﮭﻮﻝ ﺁﺋﯽ ﮨﮯ، ﻭﺭﻧﮧ ﺍﺩﺍئیگی ﮐﺮ ﺩﮮ ﮔﺎ۔ ﺳﻮﺍﻝ ﺍﻧﺎ ﮐﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﮏ ﮨﺰ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﺍﻃﺎﻟﻮﯼ ﻟﻨﭻ ﮐﯿﺴﮯ ﮐﺮوﺍﺅﮞ؟
ﺍﺱ ﻧﮯ ﻗﺪﺭﮮ ﺍﺿﻄﺮﺍﺏ ﺳﮯ ﻓﮩﺮﺳﺖ ﺩﯾﮑﮭﯽ۔
ﺳﻨﻮ! ﺻﺮﻑ ﻣﯿﻦ ﮐﻮﺭﺱ ﻣﻨﮕﻮﺍﻧﺎ، ﺳﻼﺩ، ﺍﺳﭩﺎﭨﺮ ﺍﻭﺭ ﮈﺭﻧﮑﺲ ﮐﮯ ﻓﺎﻟﺘﻮ ﺍﺧﺮﺍﺟﺎﺕ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺴﻨﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔ ﻭﮦ ﮐﺮﺳﯽ ﮐﯽ ﭘﺸﺖ ﺳﮯ ﭨﯿﮏ ﻟﮕﺎﺋﮯ، ﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﺩﺑﺎﺋﮯ ﺍﺳﮯ ﺑﻐﻮﺭ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﮐﮩﮧ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺍﻭﮐﮯ! ﻣﺠﮭﮯ ﺗﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺹ ﺑﮭﻮﮎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ، ﺩﻝ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﺎﮦ ﺭﮨﺎ۔ ﺁﺭﮈﺭ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﮐﺎﺭﮈ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ۔ ﺟﮩﺎﻥ ﻧﮯ ﻣﺴﮑﺮﺍﮨﭧ ﺩﺑﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮ ﺳﺮ ﮨﻼ ﺩﯾﺎ۔ ﭼﻨﺪ ﻟﻤﺤﮯ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﮐﯽ ﻧﺬﺭ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ۔ ﻭﮦ ﺷﯿﺸﮯ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﺍﺱ ﺷﯿﺸﮯ ﺳﮯ ﺗﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺮﻧﺪﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺁ ﭨﮑﺮﺍﯾﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺷﺎﯾﺪ ﭘﺮﻧﺪﮮ ﺗﻌﻤﯿﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ صرف ﭘﮩﻠﮯ ﻣﻮﺳﻢ ﻣﯿﮟ ﭨﮑﺮﺍﺗﮯ ﮨﻮﮞ۔ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﻋﺎﺩﯼ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﺑﺪﻝ ﻟﯿﺘﮯ ﮨﻮﮞ۔ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﭘﺮﻧﺪﻭﮞ ﮐﻮ ﮨﯽ ﺑﺪﻟﻨﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ، ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺗﻮ ﻭﯾﺴﯽ ﮨﯽ ﮐﮭﮍﯼ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﮯ۔
ﮐﻞ ﮐﯿﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ؟
ﺣﯿﺎ ﻧﮯ ﻧﮕﺎﮨﯿﮟ ﻣﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ۔
ﺍﺏ ﺗﮏ ﺗﻢ ﻧﮯ ﭘﺘﺎ ﺗﻮ ﮐﺮ ﮨﯽ ﻟﯿﺎ ﮨﻮ ﮔﺎ۔ ﺑﮩﺮﺣﺎﻝ! ﺗﺎﯾﺎ ﻧﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺮﺩﮮ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺑﮯ ﻋﺰﺕ ﮐﯿﺎ، ﺗﻤﺎﺷﺎ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﻧﮑﺎﻝ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﮐﭽﮫ ﺧﺎﺹ ﻧﮩﯿﮟ۔
ﺟﮩﺎﻥ ﻧﮯ ﻗﺪﺭﮮ ﺗﺎﺳﻒ ﺳﮯ ﻧﻔﯽ ﻣﯿﮟ ﺳﺮ ﮨﻼدﯾﺎ۔
ﭘﺮﺍﻧﯽ ﻋﺎﺩﺗﯿﮟ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎﺗﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﻮ ﺫﻟﯿﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ وہ ﻋﺎﺩﯼ ﮨﯿﮟ۔ ﮐﺘﻨﺎ ﺁﺳﺎﻥ ﮨﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻧﺎ ﮐﮯ پیچھے ﺭﺷﺘﮯ ﺗﻮﮌ ﺩﯾﻨﺎ۔
ﺟﻮ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ، ﻣﯿﮟ ﺍﺑﺎ ﮐﯽ ﮐﺮﺳﯽ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺧﺎﻟﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﯽ۔ ﯾﮧ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮐﺮ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺏ ﺍﺱ ﻗﺼﮯ ﮐﻮ ﺑﻨﺪ ﮐﺮ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺗﻢ ﺑﺘﺎﺅ! ﺗﻢ ﻧﮯ ﺗﺮﮐﯽ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮐﺎ ﮐﯿﺎ ﺳﻮﭼﺎ ﮨﮯ؟
ﺳﺐ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﯾﮩﯽ ﭘﻮﭼﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮐﺎ ﮐﯿﺎ ﭘﺮﻭﮔﺮﺍﻡ ﮨﮯ۔ ﻟﮕﺘﺎ ہے ﺳﺐ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺗﻨﮓ ﺁ ﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺩﻝ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﺍ ﮐﮧ ”ﻣﺎﮦ ﺳﻦ“ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﺒﻮﺗﺮ ﺑﻦ ﮐﺮ ﮐﺴﯽ ﻏﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﭼﮭﭗ ﺟﺎﺅﮞ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﻏﺎﻟﺒﺎً ﮐﻮﺋﯽ ﺗﺮﮎ ﻣﺤﺎﻭﺭﮦ ﺑﻮﻻ ﺗﮭﺎ۔
ﺧﯿﺮ! ﺍﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﺩﻥ ﺍﺩﮬﺮ ﮨﻮﮞ۔ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﮐﺐ ﺟﺎﻧﺎ ﮨﮯ؟
ﺟﻮﻻﺋﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮ ﭼﮑﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﭘﺎﻧﭻ ﺟﻮﻻﺋﯽ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﻠﺌﯿﺮﻧﺲ ﮐﺮﻭﺍﻧﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺑﺎ ﮐﯽ ﻃﺒﯿﻌﺖ ذﺭﺍ ﺳﻨﺒﮭﻞ ﺟﺎﺋﮯ، ﭘﮭﺮ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﯽ۔
ﻟﻨﭻ ﺁ ﮔﯿﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﻘﺎﺏ ﺳﮯ ﺑﺎ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﭼﮭﺮﯼ ﮐﺎﻧﭩﮯ ﮐﯽ ﻣﺪﺩ ﺳﮯ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﻟﮕﯽ۔ ﭘﮭﺮ ﮐﺴﯽ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﭘﻮﭼﮭﺎ۔
ﺟﮩﺎﻥ! ﺗﻤﮩﯿﮟ ﻣﯿﺮﮮ ﻧﻘﺎﺏ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﻣﯿﺮﺍ ﻣﻄﻠﺐ ﮨﮯ ﺗﻤﮩﯿﮟ ﺍﭼﮭﺎ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﻣﯿﺮﺍ یوں ﻧﻘﺎﺏ ﻟﯿﻨﺎ؟
ﻭﮦ ذﺭﺍ ﭼﻮﻧﮑﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺁ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ﮨﺎﮞ! ﭨﮭﯿﮏ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ذﺭﺍ ﺍﻟﺠﮭﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺷﺎﻧﮯ ﺍﭼﮑﺎﺋﮯ۔ ﻭﮦ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﮨﻮ ﮐﮧ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﻟﮕﯽ، ﻣﮕﺮ ﻭﮦ ﭼﻨﺪ ﻟﻤﺤﮯ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﺘﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔
ﺑﻞ ﺁﯾﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﺳﯽ ﺳﺎﻧﺲ ﺍﻧﺪﺭ ﮐﻮ ﺍﺗﺎﺭﯼ۔ ﻧﻮ ﺳﻮ ﭘﭽﺎﺱ ﺻﺮﻑ ﺩﻭ ﻣﯿﻦ ﮐﻮﺭﺱ ﻣﻨﮕﻮﺍﮰ ﺗﮭﮯ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ۔ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﭘﯿﺴﮯ ﮐﻢ ﮨﻮﮞ ﺗﻮ ﺑﻨﺪﮮ ﮐﻮ ﮐﻮﻟﮉﮈﺭﻧﮑﺲ، ﺳﻼﺩ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﭩﺎﭨﺮ ﺟﯿﺴﮯ ﻟﻮﺍﺯﻣﺎﺕ ﺳﮯ ﭘﺮﮨﯿﺰ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔
ﯾﮑﺎﯾﮏ ﮐﺴﯽ ﺧﯿﺎﻝ ﮐﮯ ﺗﺤﺖ ﻭﮦ ﭼﻮﻧﮑﯽ۔
ﻓﺎﻟﺘﻮ ﻟﻮﺍﺯﻣﺎﺕ؟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺫﮨﻦ ﺁﻓﺲ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮭﭩﮏ ﮔﯿﺎ۔ ﺟﮩﺎﻥ ﻧﮯ ﻧﺮﻣﯽ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺑﻞ ﻟﮯ ﻟﯿﺎ۔
ﻣﯿﮟ ﭘﮯ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ۔
ﻭﮦ ﭼﻮﻧﮑﯽ۔ نہیں ﯾﮧ ﺗﻮ ﻣﺠﮭﮯ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ﻣﯿﮟ ﻣﺬﺍﻕ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ، ﻟﻨﭻ ﻣﯿﺮﯼ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺗﮭﺎ۔ ﻭﮦ ﺑﻨﺎ ﺍﯾﮏ ﻟﻔﻆ ﺳﻨﮯ ﻓﺎﺋﻞ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺴﮯ ﺭﮐﮭﻨﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﺍﺱ ﻧﮯ ﺍﺻﺮﺍﺭ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺫﮨﻦ ﮐﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﻃﺮﻑ ﺍﻟﺠﮭﺎ ﮨﻮﺍ ﺗﮭﺎ۔
فالتو لوازمات؟
* * * *
ادھیڑ عمر صاحب نے آگے بڑھ کر دروازہ کھولا اور پھر ایک طرف ہٹ گئے۔ وہ پراعتماد اور سبک قدموں سے چلتی اندر آئی۔ دروازے سے نجمی صاحب (وینڈر) کی کرسی میز کا فاصلہ کافی زیادہ تھا۔ وہ سیدھ میں چلتی میز تک آئی اور بیٹھنے کے لیے کرسی کھینچی۔
نجمی صاحب نے انگلیوں میں پکڑی سگریٹ لبوں میں دبا کر سانس اندر کو کھینچی اور سر سے پاؤں تک سیاہ عبایا میں ملبوس دراز قد لڑکی کا جائزہ لیا جو بہت اطمینان سے کری کھینچ کر بیٹھ رہی تھی۔ انہوں نے سگریٹ ہٹائی، دھوئیں کا مرغولہ اڑ کر فضا میں تحلیل ہوا۔
میں حیا سلیمان ہوں، اصغر اینڈ سنز کی مینجنگ ڈائریکٹر۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کرسی کی پشت سے ٹیک لگا کر، ٹانگ پہ ٹانگ رکھے، کہنیاں ہاتھ پہ جما کر ہتھیلیاں ملائے بیٹھی وہ بہت سنجیدگی سے بولی۔
نجمی صاحب نے کندھوں کو ذرا سی جنبش دی، یعنی وہ جانتے ہیں، اب آگے بات کرے۔ ادھیڑ عمر صاحب اس لڑکی کے پیچھے ہاتھ باندھے مؤدب سے آ کھڑے ہوئے تھے۔ ان کے لیے دوسری کرسی موجود نہیں تھی۔ نجمی صاحب نے کرسی منگوانے کی ضرورت بھی نہ سمجھی۔
ہماری سائٹ پہ سپلائی آپ نے روک دی ہے جس سے ہمارا پروجیکٹ تاخیر کا شکار ہو سکتا ہے۔
دیکھیں بی بی! میں نے اپنی ڈیماڈ آپ کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
میری بات ابھی ختم نہیں ہوئی نجمی صاحب! اس نے ہاتھ اٹھا کر ایک دم بہت سخت لہجے میں انہیں روکا۔ اس کی آوز میں کچھ تھا کہ وہ رک گئے۔
چند باتیں ہیں جو میں آپ کو بتانا چاہتی ہوں۔ ان کی آنکھوں میں آنکھیں ڈالے بنا کی تمہید کے وہ کہہ رہی تھی۔
آپ کے پیچھے جو کھڑکی ہے، اس سے جھانک کر دیکھیں تو دائیں جانب، دور کہیں ایک زیر تعمیر منصوبہ دکھائی دے رہا ہے۔ کس چیز کا منصوبہ ہے وہ باقر صاحب؟ لڑکی نے رک کر پیچھے کھڑے آمی کو مخاطب کیا، مگر دیکھ وہ ابھی بھی نجمی صاحب کو ہی رہی تھی۔
اوور ہیڈ ہے میم! انہوں نے فورا بتایا۔
بالکل! اوور ہیڈ تعمیر ہو رہا ہے وہاں اور کیا آپ جانتے ہیں کہ اس میں سینڈ (sand) اور سلٹ (silt) استعمال ہو رہا ہے، اور وہ بھی کس کی جگہ؟ (Crusher) میٹیریل کی جگہ!
نفیس سے نقاب سے جھلکتی اس کی بڑی بڑی، سیاہ آنکھیں مسکرائی تھیں۔ نجمی صاحب نے سگریٹ والا ہاتھ نیچے کر دیا ان کے تنے اعصاب ڈھیلے پڑ چکے تھے اور وہ پوری طرح سے اس کی طرف متوجہ تھے۔
آپ اس اوور ہیڈ سے دو کلو میٹر دائیں چلے جائیں۔ تو ایک سکس اسٹار ہوٹل زیر تعمیر نظر آئے گا، اس کی تعمیل آخری مراحل میں ہے، مگر اس کے مالکان کو یہ علم نہیں ہے کہ اس کی روفنگ (roofing) اور واٹر پروفنگ میں سب اسٹینڈرڈ میٹیریل استعمال کیا گیا ہے۔ بے حد سستا اور گھٹیا میٹیریل۔ اس کی مسکراتی آنکھوں کی چمک بڑھ گئی تھی۔
نجمی صاحب نےکچھ کہنے کے لیے لب کھولے، مگر اس نے ہاتھ اٹھا کر روک دیا۔
میری بات ابھی ختم نہیں ہوئی۔
وہ لب بھینچ کر رہ گئے۔ پیشانی پہ بلوں کا اضافہ ہونے لگا۔
ایک روڈ بھی حال ہی میں مکمل ہوئی ہے اور اس کا بھی ان دونوں پروجیکٹس سے تعلق ہے۔ نگاہیں ان پہ جمائے وہ مسکراتے ہوئے کہہ رہی تھی۔ ار جو تعلق ہے، وہ آپ بہتر جانتے ہیں، میں تو بس اتنا جانتی ہوں کہ اس سڑک کے اطراف کو سیمینٹڈ (Cemented) نہیں کیا گیا اور اندر ہولز چھوڑ دیے گئے ہیں۔ وہ کون سا مسئلہ ہو گا جو سب سے پہلے چند دن میں منظر عام پر آئے گا باقر صاحب؟
نجمی صاحب کو اپنے سابقہ انداز میں دیکھتے ہوئے اس نے اپنے ساتھی کو مخاطب کیا۔ وہ اسی تابع داری سے بولے۔
ڈرین ایج کا مسئلہ میم!
بالکل! ڈرین ایج کا مسئلہ۔ مگر سب سے بڑا مسئلہ کون سا ہو گا؟ انسپکشن کا مسئلہ۔ چار انسپکشن ٹیمیں ان تینوں پروجیکٹس کو چند روپے لے کر اپروو کر چکی ہیں، لیکن وہ کیا ہے نجمی صاحب! کہ جو ہمارا میڈیا ہے نا، وہ ذرا سی ریٹنگ کے لیے ایسی خبروں کو خوب اچھالتا ہے اور یوں اس وینڈر کی ساکھ تباہ ہو کر رہ جاتی ہے، بالخصوص تب جب ان کے ہاتھ ڈاکومینٹڈ پروف بھی لگ جائے۔ باقر صاحب!
اس نے انگلی سے اشارہ کیا تو باقر صاحب نے چند کاغذات میز پہ رکھے نجمی صاحب ان کو اٹھانے کے لیے آگے نہیں بڑھے۔ وہ بمشکل ضبط کیے ہوئے بولے۔
مجھ پہ ہاتھ ڈالنا اتنا آسان نہیں ہے۔
ارے! اس کی سیاہ آنکھوں میں حیرت ابھری۔ آپکی بات کس نے کی؟ پھر وہ ذرا سا مسکرائی۔ میں تو اپنی سپلائی کی بات کر رہی تھی۔ کل ہفتہ ہے۔ میں امید کرتی ہوں کہ سوموار کی صبح مجھے اپنی کنسٹرکشن سائٹ پہ سپلائی کی بحالی کی خبر مل جائے گی۔ اپنا پرس اٹھاتے ہوئے وہ کھڑی ہوئی۔
اوہ وہ بھی پرنی قیمت پہ۔ چلیں باقر صاحب!
وہ مزید کچھ کہے بنا پلٹی، ادھیڑ عمر صاحب نے ہاتھ آگے بڑھا کر دروازہ کھولا۔ وہ ان ہی سبک قدموں سے چلتی باہر نکل گئی۔
سگریٹ نے نجمی صاحب کی انگلی کو جلایا تو وہ چونکے، پھر غصے سے ایش ٹرے میں پھینکا اور میز پر رکھے کاغذات اٹھائے۔
جیسے جیسے وہ انہیں پڑھتے جا رہے تھے، ان کی پیشانی پہ پسینے کے قطرے نمودار ہونے لگے تھے۔…

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Episode 01 Episode 02 Episode 03 Episode 04 Episode 05 Episode 06 Episode 07 Episode 08 Episode 09 Episode 10 Episode 11 Episode 12 Episode 13 Episode 14 Episode 15 Episode 16 Episode 17 Episode 18 Episode 19 Episode 20 Episode 21 Episode 22 Episode 23 Episode 24 Episode 25 Episode 26 Episode 27 Episode 28 Episode 29 Episode 30 Episode 31 Episode 32 Episode 33 Episode 34 Episode 35 Episode 36 Episode 37 Episode 38 Episode 39 Episode 40 Episode 41 Episode 42 Episode 43 Episode 44 Episode 45 Episode 46 Episode 47 Episode 48 Episode 49 Episode 50 Episode 51 Episode 52 Episode 53 Episode 54 Episode 55 Episode 56 Episode 57 Episode 58 Episode 59 Episode 60 Episode 61 Episode 62 Episode 63 Episode 64 Episode 65 Episode 66 Episode 67 Episode 68 Episode 69 Episode 70 Episode 71 Episode 72 Last Episode 73

About the author

M Shahbaz Aziz

Peerzada M Mohin

Leave a Reply

%d bloggers like this: