Kanwal novel by Ghazal Khalid – Read Online – Episode 10

0

کنول از غزل خالد – قسط نمبر 10

–**–**–

کنول برقعہ پہن کے بیٹھی تھی ۔۔۔اسے گھبراہٹ ہونے لگی ۔۔۔شہریار اندر آیا اور بولا ۔۔۔
آجاؤ کنول چلیں ۔۔۔
کنول چپ کر ککےاٹھ کر چل پڑی ۔۔۔۔۔
شہریار نے اس کے بیٹھتے ہی بائیک چلا دی ۔۔۔۔
پورے راستے کنول کو عجیب سی گھبراہٹ ہو تی رہی دل اس کا چیخ چیخ کر کہنے لگا ۔۔۔۔
نہیں جانا دھر گھر واپس چلنے کا کہو لیکن کنول خود پہ ضبط کر کے بیٹھی رہی ۔۔۔۔
شہریار نے بائیک ایک گھر کے آگئے روکی اور اتر کر بیل بجائ ۔۔۔۔
ایک آدمی باہر آیا تو شہریار نے سلام کر کے کہا ۔۔۔
یہ عادی صاحب کا گھر ہے ؟۔۔۔۔
اس آدمی نے سلام کا جواب دیا اور کہا ۔۔۔
جی ۔۔۔۔
شہر یار بولا ۔۔۔
وہ گھر ہیں ؟ہمیں انہوں نے بلایا تھا ۔۔۔۔۔
تب ہی وہ آدمی بولا ۔۔۔۔
آجائیں اندر ۔۔۔اس کے ساتھ ہی اس نے دروازہ کھولا ۔۔۔۔
شہریار نے کنول سے کہا ۔۔۔
آؤ اندر ۔۔۔۔
شہریار بائیک چلاتا اندر داخل ہوا اور کنول بھی ساتھ آئیں ۔۔۔
شہریار نے بائیک سائیڈ پہ کھڑی کی ۔۔۔
تو وہ آدمی بولا آپ آئیں میرے ساتھ ۔۔۔۔
شہریار اور کنول دونوں اس کے ساتھ چل پڑے ۔۔۔
کمرے میں آتے ہی اس آدمی نے کہا آپ بیٹھیں میں صاحب کو بولا جاتا ہوں ۔۔۔
دونوں ہی صوفے پہ بیٹھ گئے ۔۔۔۔شہریار ادھر ادھر دیکھنے لگا کمرا بہت ہی اچھا ڈیکوریٹ کیا ہوا تھا ۔۔۔کچھ تصویر یں دیوار پہ لگیں تھیں تو شہریار اٹھ کر دیکھنے لگا ۔۔۔۔
اچانک اس کی نظر ایک تصویر پہ گئ تو وہ چونکا ۔۔۔
اور سوچنے لگا ۔۔۔
یہ تو مولانا صاحب ہیں اور یہ عادی کے ساتھ کھڑے ہیں ۔۔ شہریار کو اچانک یاد آیا اس آدمی نے بھی تو یہی نام لیا تھا کہیں یہ وہی تو نہیں جس کو مولانا صاحب علم دے گئے تھے ۔۔شہریار یہ سوچ رہا تھا کہ عادی نے سلام کیا ۔۔۔
شہریار نے موڑ کر عادی کو دیکھا اور سلام کا جواب دیا ۔۔۔
شہریار نے تصویر کو دیکھ کر اشارہ کیا اور بولا ۔۔۔
اگر برا نہ لگے تو آپ یہ بتائیں گے کہ یہ کون ہیں ؟۔۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔۔
یہ میرے انکل ہیں انہوں نے ہی مجھے علم دیا ہے ۔۔۔ویسے کیا آپ ان کو جانتے ہیں؟۔۔۔
شہر بولا ۔۔۔۔
جی میں جانتا ہوں ان کو اچھے سے کنول کو بچپن سے ہی ان کے پاس لے کر جاتے تھے ہم ۔۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔۔او اچھااا ۔۔
آئیں بیٹھیں ۔۔۔۔
شہریار کنول کے ساتھ آکر بیٹھا اور عادی سامنے صوفے پہ ۔۔۔۔
عادی نے کنول کو دیکھا ۔۔۔
جو اپنی ہاتھوں کی انگلیاں مروڑ رہی تھی چہرے سے لگ رہا تھا کہ وہ گھبرا رہی ہے ۔۔۔۔
عادی نے کنول کو کہا ۔۔۔۔
کیسی طبیعت ہے؟۔۔۔
کنول بولی ۔۔۔
ج جی می میں ٹھیک ۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
کنول ڈرو نہیں ۔۔۔
لگتا ہے آپ نے صبح کے وقت آیت الکرسی پڑھی ہے اب نہیں ۔۔۔
کنول نے ہاں میں سر ہلایا ۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
آپ ریلکس رہیں ۔۔اور مجھے بتائیں وضو کیا ہوا ہے آپ نے ؟۔۔۔
کنول نے نہیں میں سر ہلایا ۔۔۔
عادی بولا اچھا آپ ایسا کریں سامنے وہ واشروم ہے جائیں وضو کر کے آئیں ۔۔۔۔
کنول ہمت کر اٹھی اور وضو کرنے گئ ۔۔۔
عادی شہریار کو پکارتے ہوئے بولا ۔۔۔
شہریار کنول پہ کوئ انسان عمل کر کے کچھ ناپاک چیز وں سے اس کو نقصان پہنچا رہا ہے ۔۔۔وہ چیز جن بھی ہو سکتا ہے ۔۔۔۔
شہریار یہ بات سن کر پریشان ہوا اور بولا ۔۔۔
کیا؟۔۔۔۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
جی ۔۔اپ کی بہن وہ دیکھ سکتی ہے جو عام انسانی آنکھ نہیں دیکھ سکتی ۔۔۔اب میں کنول کو جو بتاؤں گا وظیفہ وہ روزانہ پرھنا ہوگا تاکہ وہ چیز کنول سے دور ہو جائے اور اس کا پیچھا چھوڑ دے ۔۔۔اگر ایک دن وظیفہ چھوٹ گیا تو وہ یہ بھی ہو سکتا ہے کہ وہ چیز کنول کو نقصان پہنچا ہے تو دھیان رہے کہ وظیفہ روز پرھنا ہو گا جب تک میں نہ کہوں کہ بس کر دیں پڑھنا تب تک پڑھتے رہنا ہے ۔۔اور آپ ساتھ میں صدقہ خیرات بھی کرتے رہیں ۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
ٹھیک ہے ۔۔
کنول وضو کیا تو خود کو بہتر محسوس کرنے لگی ۔۔۔
وضو کر کے وہ باہر آئ ۔۔۔تو عادی نے اسے بیٹھنے کو کہا ۔۔۔
اور اسے کہا ۔۔۔
کنول۔یہ جو وظیفہ بتا رہا ہوں روزانہ پڑھنا ہے ۔۔۔جب تک میں نہ کہوں پڑھنا بند نہیں کرنا ۔۔۔
کنول نے اچھا میں سر ہلایا ۔۔۔
عادی نے اسے وظیفہ بتایا اور کہا اسے پڑھیں اور پڑھ کر خود پہ دم کریں ۔۔۔
کنول نے کہا ۔۔۔
قرآن مجید دے دیں مجھے ۔۔۔
عادی نے قرآن مجید کا کر دیا ۔۔کنول نے قرآن مجید کھول کر وظیفہ پڑھنا شروع کیا ۔۔۔
کنول جیسے جیسے پڑھنے لگی اس کے دل کی دھڑکن تیز ہونے لگی ۔۔۔۔ہمت کر کے وہ پڑھتی رہی وظیفہ پڑھنے کے بعداس نے قرآن مجید عادی کو دیا۔۔۔۔
عادی نے اسے سے لے کر قرآن مجید رکھا اور صوفے پہ بیٹھ گیا اور کنول کی کو دیکھنے لگا ۔۔۔
کنول نے خود پہ دم کیا تو اسے ایسا لگا جیسے اس کا گلہ کو دبا رہا۔۔کنول نے شہریار کا ہاتھ پکڑا ۔۔۔
شہریار نے کنول کو دیکھا تو کنول کا چہرہ بالکل سفید ہو رہا تھا ایسے جیسے کیسی نے خون نچوڑ لیا ہو ۔۔۔
شہریار نے مدد طلب نظر سے عادی کو دیکھا ۔۔۔
عادی نے اسے اشارے سے پرسکون رہنے کو کہا ۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔۔
کنول ہمت کریں اور زور سے لمبی سانس لیں ۔۔۔
کنول نے لمبی سانس لی ۔۔عادی نے جلدی سے گلاس میں پانی ڈالا اور ک ول کو دیا ۔۔۔
کنول نے آہستہ آہستہ پانی پینے لگی ۔۔۔پانی پی کے اسے لگا کہ اس کا جسم ہلکا ہو گیا ہے جو زور گلے پہ تھا وہ ہٹ گیا ہے ۔۔۔
عادی نے کنول کو دیکھا اور بولا ۔۔۔
گلہ پہ زور تو نہیں ہے اب ؟۔۔۔
کنول نے نہیں میں سر ہلایا ۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔۔
پرسکون ہو دل کی دھڑکن نارمل ہوئ ۔۔۔۔
کنول نے ہاں میں سر ہلایا ۔۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
ہمت کر کے جو بتایا ہے وہ پڑھنا ہے آپ نے اوکے اور ڈرنا نہیں ہے آپ ایک بہادر لڑکی ہیں اللّٰہ پہ یقین ہے آپ کا اسے کم نہیں ہونے دینا ۔۔۔۔
کنول نے اچھا میں سر ہلایا
۔۔
عادی بولا میرے کارڈ پہ میرا نمبر ہے ہرسنل کچھ بھی ہو مجھے کال کر لینا ۔۔۔
شہریار نے اوکے کہا ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔
الطاف جو کہ پڑھنے میں مگن تھا
۔اچانک ہی اسے جھٹکا لگا تو اس نے آنکھیں کھولیں اور غصے سے بولا ۔۔۔۔
نہیں ایسا نہیں ہو سکتا مجھے کوئ نہیں ہارا سکتا ۔۔۔
_____
الطاف غصے سے دھاڑا ۔۔۔۔
اسے نہیں ہو سکتا مجھے کچھ کرنا ہو گا ۔۔۔مجھے کوئ نہیں ہارا سکتا کوئ نہیں ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شہریار کنول کو لے کہ گھر آیا ۔۔۔۔کنول گھر میں داخل ہوتی سیدھا صنم بیگم کے پاس گئ ۔۔۔۔صنم بیگم کمرے میں بیٹھیں تھی کنول برقعہ اتار کر ان کے پاس جا کے بیٹھ گی…شہریار بھی کمرے میں آیا اور صوفے پہ بیٹھ گیا ۔۔۔۔
صنم بیگم نے پوچھا ۔۔۔۔
شہریار کیا ہوا سب ٹھیک تو ہے؟…. شہریار بولا۔۔۔۔۔
جی امی انہوں نے وظیفہ بتایا ہے پڑھنے کے لیے جو اسے روزانہ پڑھنا ہے خیال رکھیے گا کہ یہ چھوڑ نہ دے پڑھنا ۔۔۔اور امی جن مولانا کے پاس ہم کنول کو لے کے جاتے تھے ڈاکٹر عادی ان کے شاگرد ہیں…..
صنم بیگم نے یہ سنا تو کہا ۔۔۔۔۔
شہریار یہ تو بہت اچھی بات ہے ۔۔۔شکر اللّٰہ کا کہ ہمیں اچھا انسان ملا ۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔۔
ہممم ٹھیک کہا امی۔۔۔۔۔
کنول شہریار سے بولی ۔۔۔
بھائ وہ جو ڈاکٹر عادی نے آپ کو کارڈ دیا تھا وہ دیں میں نمبر سیو کر لوں امی کے موبائل میں ۔۔۔۔
شہریار نے کارڈ نکال کر دیا تو کنول صنم بیگم کا موبائل اٹھا کر نمبر سیو کرنے لگی ۔۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
امی میں دوکان پہ جا رہا ہوں آپ کھانا دیں دے میں فریش ہو لوں ۔۔۔۔۔
صنم بیگم اٹھ کر کچن میں گئیں ۔۔۔۔کنول نے نمبر سیو کیا اور میسج لکھنے لگی ۔۔۔۔
اسلام وعلیکم ڈاکٹر عادی ۔۔۔
یہ میری ماما کا نمبر ہے ۔۔۔
کنول ۔۔۔۔
میسج لکھ کر کنول نے سینڈ کی اور بیڈ پہ لیٹ گئ ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عادی نے موبائل پہ میسج ٹون بجی س نے میسج ریڈ کیا تو رپلائے کیا ۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔
اوکے ۔۔۔
اپنا خیال رکھیے گا ۔۔۔
اور ہمت نہیں ہارنی۔۔۔۔
کنول نے میسج پڑھا تو رپلائے کیا ۔۔۔۔
اوکے شکریہ ۔۔۔۔
میسج کرکے کنول لیٹ گئ خود کو پرسکون محسوس کرنے لگی ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عادی کنول کا میسج دیکھ کر دوبارہ کام میں بزی ہو گیا ۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صنم بیگم کھانا شہریار کو دے کر اندر کمرے میں آ ئیں کنول کو لیٹے دیکھا تو بولیں ۔۔۔۔
کیا سوچ رہا ہے میرا بچہ؟۔۔۔۔
کنول اٹھ کر بولی ۔۔۔۔
کچھ نہیں امی۔۔وہ ڈاکڑ عادی نے جو بتایا بس وہی سوچ رہی تھی ۔۔کہ پتہ نہیں کیسے انہیں سب پتہ چل گیا ۔۔۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
کنول بیٹا یہ روحانی علم ہے اور غیب کا علم اللہ کے پاس ہے ۔۔تم جس حال میں تھی اور ہو ان کو اس لیے پتہ چلا شاہد کچھ ایسا ہو ان کے پاس ۔تم پریشان نہ ہو ۔۔۔۔
کنول نے اچھا میں سر ہلایا اور بولی ۔۔۔۔
امی میں اپنے کمرے میں جا رہی ہوں ۔۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
اچھا ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔
کنول اپنے کمرے میں آ ئ ۔۔۔۔
دل اس کا ڈرنے لگا لیکن وہ ہمت کرتی کمرے میں آ ئ اور کمرے کو دیکھنے لگی ۔۔۔۔اپنا برقعہ سنبھال کے الماری میں رکھا ۔۔۔اور بیڈ پہ لیٹ گئ ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شہریار دوکان پہ گیا کھانا لے کے تو اس نے ریاض صاحب کو سلام کیا ۔۔۔انہوں نے غصے میں اسے گھورا اور سلام کا جواب دیتے بولے ۔۔۔۔
آ گئے اس کے لاڈ اٹھا کے مل گئ فرصت تہمیں ۔۔۔۔
شہریار نے جواب اس بات پہ کہا ۔۔۔۔۔
بابا کوئ لاڈ نہیں کر رہی تھی وہ تھوڑا کام تھا وہ کر کے آیا ہوں ۔۔۔۔ریاض صاحب نے غصے میں ہاتھ اٹھا کے کہا ۔۔۔۔
بس بس اب کام کر لو ۔۔۔۔
شہریار اچھا میں سر ہلاتا اپنی جگہ پہ گیا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات ریاض صاحب گھر آ ئے ۔۔کنول اپنے کمرے میں سے آٹھ کر ریاض صاحب کے پاس آ ئ اور انہیں سلام کیا ۔۔۔۔ریاض صاحب نے سلام کرکے اسے دیکھا اور کہا ۔۔۔۔
ٹھیک تو ہو تم پھر کیاہوا تھا ۔۔۔۔۔کنول نے ریاض صاحب کو دیکھا اور کہا ۔۔۔
بابا وہ ہیضہ ہو گیا تھا۔۔۔ریاض صاحب بولے۔۔۔
کم الٹا سیدھا کھایا کرو ۔۔۔۔
کنول اچھا میں سر ہلاتی کمرے میں چلی گئ ۔۔۔۔
شہریار گھر آیا تو سیدھا کنول کے کمرے میں گیا ۔۔۔کنول بیڈ پہ بیٹھی کتاب پڑھ رہی تھی ۔۔۔۔شیریار دروازہ نوک کرتا اندر آیا تو کنول کتاب کو رکھتی ہوئ شہریار کو دیکھنے لگی اور بولی ۔۔۔۔
بھائ کوئ کام تھا کیا ۔۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
نہیں گڑیا تم بتاؤ طبیعت کیسی رہی تہماری ؟کچھ ہوا تو نہیں ؟۔۔۔۔
کنول بولی ۔۔۔
نہیں بھائ میں ٹھیک ہوں اب ۔۔۔۔
شہریار نے پیار سے اس کے سر پر ہاتھ پھیرا اور کہا ۔۔۔
یہ تو اچھی بات ہے ۔۔میں عادی کو فون کرکے بتادیتا ہوں اس نے کہا تھا کہ مجھے بتاتے رہیے گا ۔نمبر میں سیو کرتا ہوں اور ابھی اسے بتاتا ہوں ۔۔۔
کنول نے اچھا میں سر ہلایا۔۔۔
شہریار نے کنول کا اداس چہرہ دیکھا تو پوچھنے لگا ۔۔۔
کیا ہوا گڑیا۔؟بابا نے کچھ کہا کیا ؟۔۔۔۔
کنول بولی ۔۔۔
بھائ انہوں نے کچھ نہیں کہا ۔۔صرف پوچھا تھوڑا سا کہ کیا ہوا ۔۔۔شہریار سمجھ گیا کہ کنول چاہتی تھی کہ ریاض صاحب اسے پیار کرکے پوچھیں ۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
کنول مت سوچو کچھ بھی انہوں نے پوچھا یہی بہت ہے یہ ان کی محبت ہے ۔۔تم اب آ رام کرو اور ہاں یاد سے دوائ کھا لینا اوکے ۔۔۔۔
کنول نے اچھا میں سر ہلایا۔۔۔
شہریار اپنے کمرے میں آیا تو اس نے کارڈ نکال کر عادی کا نمبر موبائل پہ ڈائل کیا ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عادی کیبن سے گھر کے لیے نکل رہا تھا ۔۔۔اس کا موبائل بجا اس نے دیکھا تو ان نون نمبر تھا اسنے کال ریسیو کی اور کان سے موبائل لگایا ۔۔۔
کال ریسیو ہوئ تو شہریار بولا ۔۔۔
اسلام وعلیکم ۔۔۔ڈاکڑ عادی بات کر رہے ہیں ؟۔۔۔۔
عادی نے سلام کا جواب دے کر کہا ۔۔۔۔
جی میں ڈاکڑ عادی بات کر رہا ہوں ۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
ڈاکٹر عادی میں شہریار بات کر رہا ہوں ۔۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
جی شہریار صاحب کیسے ہیں ؟گھر میں سب کیسے ہیں؟۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
جی میں بھی ٹھیک ہوں اور گھر میں بھی سب ٹھیک ہیں ۔۔۔۔وہ آپ کو بتانا تھا کہ کنول بھی ٹھیک ہے ۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
شکر اللّٰہ کا ۔۔۔اپ بس اس بات کا خیال رکھنا جو آپ کو میں نے کہی ہے ۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔۔
جی ٹھیک ہے اوکے اللّٰہ حافظ ۔۔۔
عادی نے بھی اللّٰہ حافظ کہا اور فون بند کر دیا ۔۔۔۔
عادی گھر کے لیے نکل پڑا ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
ریاض صاحب کمرے میں بیٹھے تھے ۔۔۔صنم بیگم ان کے پاس آکر بیٹھیں اور بولیں ۔۔۔
آپ کو رات کو کوئ مسلہ تو نہیں ہوا تھا ؟۔۔۔۔۔
ریاض صاحب بولے ۔۔۔
نہیں ہوا تھا ۔۔۔تم یہ بتاؤ ۔۔یہ کتنا خرچہ آ گیا کنول کے علاج میں اور کس ڈاکڑ سے کروایا علاج ۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
اتنا نہیں آیا خرچہ ۔۔۔ڈاکڑ عادی ہیں ان سے علاج ہو رہا ہے کنول کا وہ کہہ رہے ہیں کہ کنول کا معدہ کافی کمزور ہو گیا ہے ۔۔۔
ریاض بولے ۔۔۔
ہممممم اچھا ۔۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
وہ ڈاکٹر کہہ رہا تھا کہ کنول کو ۔۔۔۔۔
صنم بیگم نے اتنی بات ہی کی تھی کنول کی آواز آ ئ ۔۔۔۔
امی بات سنیں ۔۔۔۔
صنم بیگم کمرے سے اٹھ کے باہر آئیں تو دیکھا کنول کمرے کے پاس کھڑی تھی ۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
کنول تم یہاں کیا کر رہی ہو اور کیا چاہیے تہمیں ۔۔۔۔
کنول صنم بیگم کا ہاتھ پکڑ کر انہیں کمرے میں لے گئ ۔۔۔۔اور بیڈ پہ خود بھی بیٹھی اور انہیں بھی بیٹھایا اور بولی ۔۔۔۔۔
امی آپ بابا کو بتا رہیں تھیں جو ڈاکڑ عادی نے بتایا تھا ؟۔۔۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
ہاں بیٹا انہیں بھی پتہ ہو کیا ہوا ہے ۔۔۔۔
کنول بولی ۔۔۔۔
امی آپ بابا کو کچھ نہیں بتائیں گی آپ جانتی ہیں نا بابا نہیں مانتے ان چیزوں کو ۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
ہاں جانتی ہوں لیکن کنول ان کو پتہ ہو تمہارے ساتھ جو ہورہا وہ کس وجہ سے ہورہا ہے ۔۔۔
کنول بولی ۔۔۔۔
امی آپ کہتیں ہیں نا بابا کو مجھ سے محبت ہے ۔۔پر وہ دیکھاتے نہیں ۔۔۔۔تو مجھے بھی ان سے محبت ہے بہت ان کو بچاتے ہوئے اگر یہ حال ہوا ہے میرا تو میں نہیں چاہتی ان کو پتہ چلے ور وہ دکھی ہوں ۔۔۔پلیز آپ مت بتائے گا ۔۔۔اپ جانتی ہیں نا میں آپ سب سے کتنی محبت کرتی ہوں میں آپ سب کو دکھی ہو تا نہیں دیکھ سکتی ۔۔۔۔
صنم بیگم یہ بات سن کر ۔۔۔
کنول کو گلے سے لگا لیا ۔۔۔
اور بولی ۔۔۔۔
میرا بچہ ۔۔۔۔۔ٹھیک ہے میں نہیں بتاؤں گی ۔۔۔تم پریشان نہ ہو ۔۔۔
کنول ان سے لگ ہوئ اور بولی ۔۔۔
اچھااااا۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
تم کرنے کیا آ ئ تھی ۔۔۔۔
کنول بولی ۔۔۔۔
امی بھوک لگ رہی تھی میں آپ سے کہنے آئ تھی کہ مجھے کھانا ڈال کے دے دیں ۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
اچھا رکھو میں لا دیتی ہوں مگر پہلے جو میڈیسن کھانی تھی وہ کھاؤ ۔۔۔
کنول نے اچھااا میں سر ہلایا ۔۔۔
صنم بیگم کھانا لینے چلی گئیں ۔۔۔۔
کنول نے میڈیسن کھائ ۔۔۔صنم بیگم نے اسے کھانا لا دیا ور کہا ۔۔۔
اسے پورا کھانا ہے ۔۔پتہ ہے مجھے تہمیں کھچڑی اتنی اچھی نہیں لگتی پر اسے پورا کھانا ہے ۔۔۔۔
کنول بولی۔۔۔۔
اچھا امی کھا لوں گی ۔اب آپ بھی آرام کریں ۔۔۔
صنم بیگم اسے پیار کرتیں ۔کمرے میں چلی گئیں ۔۔۔۔
کنول نے کھانا کھا کر میڈیسن کھائ اور وضو کر کے نماز پڑھنے لگی ۔ نماز پڑھ کر کنول آیت الکرسی پڑھنے لگی ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خنزر کنول کے کمرے کے باہر کھڑا تھا وہ کنول کے کمرے کی طرف بڑھا اسے جھٹکا لگا اور وہ دور ہو گیا ۔۔۔خنزر حیران ہو گیا ۔۔۔۔
اس نے پھر سے کوشش کی لیکن وہ داخل ہی نہ ہو سکا اس کے کمرے میں ۔۔۔
کنول نے آیت الکرسی پڑھ کر خود پہ دم کیا اور سورت اخلاص پڑھنے لگی ۔۔۔
پڑھتے ہوئے اس کے نظر باہر کھڑکی پہ پڑی ۔۔۔۔
اس نے باہر اس کھڑکی سے باہر دیکھا تو اس نے اسی کالے سایے کو دیکھا جو کہ اس کے کمرے دور کھڑا ہے اور چا کہ بھی اس کے کمرے میں داخل ہو پا رہا تھا ۔۔۔۔
کنول سورت اخلاص پڑھتی رہی اور اس سایے کو دیکھتی رہی ۔۔۔
خنزر پریشان ہو گیا بار بار کوشش کرنے پر بھی اندر داخل نہ ہو سکا ۔۔۔
کنول اسے دیکھ رہی تھی اچانک ہی وہ غائب ہو گیا ۔۔۔کنول نے سکون کا سانس لیا اور بیڈ پہ آ کر بیٹھی اور سوچنے لگی ۔۔۔۔
کیا کروں ڈاکٹر عادی کو بتاؤں کہ نہیں ؟۔۔۔اگر انہیں اب میسج کیا تو پتہ نہیں کیا سوچیں گے ۔۔۔۔لیکن انہوں نے خود تو کہا تھا کہ کچھ بھی دیکھو یا کچھ بھی ہو مجھے بتانا ۔۔ہممم کرتی ہوں میسج ۔۔۔یہ سوچتے ہی اس نے موبائل اٹھایا اور عادی کے نمبر پہ میسج کیا ۔۔۔
اسلام وعلیکم پلیز بات سنیں ۔۔۔۔ کنول
عادی جو کہ کھانا کھا کہ ٹی وی پہ نیوز سن رہا تھا ۔موبائل پہ میسج ٹون بجی تو اس نے موبائل اٹھا کر دیکھا میسج اوپن کر دیکھا تو کنول کا میسج پڑھ کر اسے رپلائے دیا ۔۔۔۔
وعلیکم السلام ۔۔۔۔جی کیا ہوا ؟۔۔۔۔۔۔
میسج لکھ کے سینڈ کر دیا ۔۔۔۔
کنول کے ہاتھ میں موبائل تھا ۔۔۔۔
میسج آیا تو کنول نے میسج پڑھا اور اس کا رپلائے دیا ۔۔۔۔
میں نے اپ۔کو ڈسڑب تو نہیں کیا؟ وہ اصل میں ۔میں جب نماز پڑھ کے آیت الکرسی اور سورت اخلاص پڑھ رہی تھی تب میں نے ایک کالے سائے نماچیز کو دیکھا اپنے کمرے کے باہر وہ کمرے کے دروازے تک آکر واپس دور ہو جاتی تھی پھر اچانک ہی غائب ہو گئ ۔۔۔۔۔۔
کنول نے یہ سب لکھ کر سینڈ کیا ۔۔۔۔
عدی نے مسیج پڑھا اور رپلائے کیا ۔۔۔۔
نہیں آپ نے مجھے ڈسڑب نہیں کیا ۔۔۔۔ہمممم کنول آپ ڈریں نہیں وہ چیز آپ تک نہیں پہنچ پا رہی ۔۔۔اپ کو جو وظیفہ بتایا تھا وہ آپ پڑھیں اور جو دوسری سورتیں اور آیت الکرسی کو پڑھنے کا روز کا معمول بنا لیں ۔۔۔اور be strong۔۔۔
۔اوکے اب آپ آرام کریں ۔۔۔۔۔۔۔
عادی نے یہ مسیج سینڈ کیا ۔۔۔
کنول کو مسیج سینڈ کر کے عادی نیوز دیکھنے لگا ۔۔۔۔
کنول نے عادی کا میسج پڑھا تو عادی کو مسیج کیا ۔۔۔
اوکے شکریہ ۔۔۔good night….
میسج سینڈ کر نے کے بعد کنول نے قرآن مجید اٹھا کر سورت یسن پڑھنے لگی ۔۔۔سورت یسن پڑھ کر کنول نے دعا کی اور میڈیسن کھا کر سونے کے لیے لیٹ گئ ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خنزر پریشان ہوتا الطاف کے پاس آیا ۔۔۔۔اور بولا ۔۔۔۔
سر کار کچھ ہے ۔کوئ تو اس کی مدد کر رہا ہے اس کی آج تو میں اس کے کمرے تک ہی نہیں جا سکا ۔۔۔۔۔
الطاف نے یہ سنا تو بولا ۔۔۔۔۔
یہی تو پتہ لگانا ہے کون ہے اس کے پیچھے وہ ایک مولانا تھا اب وہ تو رہا نہیں ۔۔۔مجھے لگتا ہے اس کا کوئ شاگرد ہے ۔۔۔۔
خنزر نے الطاف کو کہا ۔۔۔۔
سرکار آپ نے وہ محلول تو صحیح جگہ پہ رکھیں ہیں نا ۔۔۔اپ جانتے ہیں سرکار اگر وہ محلول کیسی نے ہم پہ ڈال دیا تو ہم جل کے راکھ ہو جائیں گے ۔۔۔۔
اور ہمیں کچھ ہو گیا تو آپ کی بھی موت ہو جائے گی ۔۔۔۔
الطاف نے اسے گھورا اور کہا ۔۔۔۔
ہاں میں جانتا ہوں ۔۔۔وہ محلول میں ایسا کچھ ہے اگر وہ تم پہ گر گیا تو تم جل جاؤ گے ۔۔اور تم دونوں کے بعد میرے پاس کیا رہے گا ۔۔۔۔۔ہو جائے گا کچھ نہ کچھ۔ وہ لڑکی کیا نام تھا اس کا۔۔ ہاں کنول اسکو تو چھوڑنا نہیں ہے اور تم بھی کوشش جاری رکھو ۔۔۔۔
خنزر بولا ۔۔۔۔
جی سرکار ۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: