Kanwal novel by Ghazal Khalid – Read Online – Episode 11

0

کنول از غزل خالد – قسط نمبر 11

–**–**–

کنول کی رات پرسکون گزری۔ صبح نماز کے وقت اس کی آنکھ کھولی تو اس نے اٹھ کر نماز پڑھی اور وظیفہ پڑھنے لگی۔ وظیفہ پڑھ کر کنول کمرے سے باہر آ ئ ۔۔۔تو صنم بیگم کو دیکھا جو کہ باہر صحن میں بیٹھ کر تسبیح پڑھ رہیں تھیں ۔۔۔
کنول ان کے پاس جا کے بیٹھی اور سلام کیا ۔۔۔۔
صنم بیگم نے سلام کا جواب دیا ۔۔۔اور پیار سے کہا ۔۔۔۔
اٹھ گیا میرا بچہ ۔۔۔نماز پڑھ لی ۔۔۔۔
کنول کہا ۔۔۔
جی امی پڑھ لی اور وظیفہ بھی پڑھ لیا ۔۔۔۔
صنم بیگم نے اچھااا کہا ۔۔۔۔
اسی وقت احمد اور شہریار نماز پڑھ کر آئے ۔۔دونوں نے کنول کو بیٹھے دیکھا ۔۔۔۔
تو صنم بیگم کے پاس ہی آکر بیٹھ گیے ۔۔۔۔
احمد بولا ۔۔۔۔۔
موٹی۔۔ طبیعت کیسی ہے تہماری ؟۔۔۔۔
کنول بولیی۔۔۔۔۔
ہمممم بہتر ہوں اللّٰہ کے کرم سے ۔۔۔۔۔
احمد بولا ۔۔۔۔
چلو آج تو تہمارے ہاتھ کے میں پراٹھے کھاؤں گا ۔۔۔۔
کنول نے اسے گھورا ۔۔۔۔
شہریار نے ہنستے ہوئے کہا ۔۔۔
احمد ابھی کنول کو کمزوری ہے ۔وہ کھڑی نہیں ہوسکتی ۔۔۔۔
احمد بولا ۔۔۔۔
بھائی صرف ایک پراٹھہ پلیز۔۔۔کنول پلیز نا۔۔۔۔۔۔
کنول ہنستے ہوئے بولی ۔۔۔۔
اچھااا اچھااا بنا دوں گی بھوکے ۔۔۔۔۔
اس بات پہ سوائے احمد کے سب ہنس دیے ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ دن بعد ۔۔۔۔۔۔
کنول کو وظیفہ پڑھتے کچھ دن ہی ہوئے تھے اور ان کچھ دن میں کنول کافی بہتر ہو گئ تھی ۔۔۔وظیفہ وہ روز پڑھتی تھی ۔۔۔۔میڈیسن بھی روزانہ لیتی تھی ۔۔۔ڈاکڑ سمیعہ سے بھی دوبار چیک اپ کروایا ۔ اور شہریار روز کنول کی طبیعت کے بارے میں عادی کو بتاتا رہتا۔۔۔۔۔۔
اور ان دنوں میں خنزر نے ہر کوشش کی مگر وہ کچھ نہ کر سکا ۔۔۔الطاف کو اس بات پہ شدید غصہ تھا کہ کون تھا جس کی وجہ سے خنزر کنول کو کچھ نہیں کر پا رہا تھا ۔۔۔۔وہ بھی جاننے کی کوشش میں تھا ۔۔۔مگر اسے کچھ نہیں پتہ چل رہا تھا ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول کچن میں کھڑی سالن گرم کر رہی تھی کہ ریاض صاحب گھر میں آئے ۔۔۔۔کنول نے انہیں سلام کیا ۔۔۔اور کہا…
بابا کھانا لاؤں ؟۔۔۔۔
ریاض صاحب بولے۔۔۔۔
نہیں ۔۔۔تم کھانا ٹفن میں پیک کر دو میں دوکان پہ لے جاؤں گا مجھے کچھ کام تھا اس لیے آیا ہوں ۔۔۔۔
کنول اچانک کر کے کھانا ٹفن میں پیک کرنے لگی ۔۔۔۔
ریاض صاحب کمرے میں گئے اور الماری کے لاکر سے کچھ رقم نکالی اور جیب میں ڈال کر کمرے سے باہر آئے تو صنم بیگم باہر صحن میں کھڑی تھیں۔۔۔ ریاض صاحب کو دیکھتے بولیں ۔۔۔۔
آپ آج اس وقت گھر سب ٹھیک تو ہے نا ۔۔۔
ریاض صاحب بولے ۔۔۔
ہاں ہاں ٹھیک ہے ۔کام تھا اس لیے آیا ہوں۔۔ اب میں جا رہا ہوں ۔کنول نے ٹفن لا کر دیا ۔۔۔۔
ریاض صاحب ٹفن لے کر چلے گئے اور کنول کمرے میں چلی گئ ۔۔۔۔۔
راستے میں ہی کنول کی کزن(کنول کے تایا کی بیٹی جیسے سب ایسے ہی لاڈو بلاتے تھے ) نے ریاض صاحب کو دیکھا تو بولی ۔۔۔۔
ارے چچا جان کہاں جا رہے ہیں آپ ؟۔۔۔
ریاض صاحب نے اپنی بھتیجی کو دیکھا تو بولے ۔۔۔
میں دوکان پہ جا رہا ہوں تم کدھر جا رہی ہو ؟۔۔۔
وہ بولی ۔۔۔۔
میں گھر جا رہی ہوں دوست کے گھر گئ تھی ۔۔اپ بتائیں اب کنول کیسی ہے اور اس کا علاج ہو رہا ہے ؟۔۔۔
ریاض صاحب بولے ۔۔۔۔
ہاں وہ ٹھیک ہے کوئ ڈاکڑ عادی ہے اس سے علاج ہو رہا ہے ۔۔۔۔
لاڈو النے یہ سنا تو بولی ۔۔۔۔
اچھاااا ۔۔۔۔اب میں چلتی ہوں چچا جان ۔۔۔
ریاض صاحب بھی سر ہلاتے چل پڑے ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عادی مریضوں کا چیک اپ کر کے اپنے کیبن میں جا رہے تھا جب ڈاکٹر سمیعہ نے اسے روکا ۔۔۔۔
عادی روکو ۔۔۔۔
عادی نے مڑ کر دیکھا اور کہا ۔۔۔۔
جی کیا ہوا اپی؟۔۔۔۔
ڈاکٹر سمیعہ بولیں۔۔۔
عادی میں ابھی ڈیوٹی پہ ہوں اور تہماری ڈیوٹی ختم ہو گئ ہے ۔۔۔تم پلیز مسز فاروق کے گھر جا سکتے ہو ؟۔۔ایمرجنسی ہے۔۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
آپی وہ آپ کی دوست ؟۔۔۔
ڈاکٹر سمیعہ بولیں ۔۔۔۔
ہاں۔۔۔۔
عادی بولا اوکے میں چلا جاتا ہوں ۔۔۔
ڈاکٹر سمیعہ نے مسکرا کر کہا ۔۔۔۔
تھینکس۔۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
یور ویلکم ۔۔۔۔
عادی کیبن سے اپنا سامان لیتا مسز فاروق کے گھر چلا گیا ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لاڈو گھر پہنچی تو اس کی ماں( کنول کی چچی) بولیں ۔۔۔
اتنی دیر کیوں لگ گئ؟۔۔۔
لاڈو بولی ۔۔۔۔
امی وہ ریاض چچا مل گئے تھے راستے میں ۔۔۔۔
اس کی ماں بولی ۔۔۔۔
کیا کہہ کریے تھے وہ؟۔۔۔۔
لاڈو بولی ۔۔۔۔
امی وہ بتا رہے تھے کہ کنول اب ٹھیک ہے کوئ ڈاکڑ عادی سے علاج کروا رہے ہیں ۔۔۔۔
اس کی ماں یہ بات سنتی چونکی اور بولی ۔۔۔۔
ہائے وہ ٹھیک کیسے ہوگئ ۔۔۔
لاڈو نے حیرت سے ماں کو دیکھا اور بولی ۔۔۔
کیا ہوا ہے امی۔۔۔۔
اس کی ماں بولی ۔۔۔۔
ارے وہ بیمار ہو اس میں ہمارا فائدہ ہے۔۔۔اس طرح تیرا راستہ بنے گا اور پھر ہی تیری شادی ہوگی شہریار سے اور تیرے لاڈ اٹھائیں گے ۔۔اس کنول کے ٹھیک ہوتے مجھے نہیں لگتا ہے ایسا ہو ۔۔۔۔
لاڈو بولی ۔۔
کنول کے ٹھیک ہوتے ہی کیوں نہیں ہو گی شادی میری شہریار سے ۔۔۔۔
اس کی ماں بولی ۔۔۔
وہ میری بھولی بیٹی تو جانتی تو ہے شہریار کو کنول کتنی عزیز ہے وہ بیمار رہے گی تو شہریار کی توجہ تیری طرف ہوگی ۔۔۔تو فکر نہ کر میں کل تیمور بھائ صاحب کی بیوی کے ساتھ جاؤں گی ۔۔وہ کوئ پیر کا بتا رہیں تھیں ان کے آ ستانے پہ جاؤں گی پھر دیکھنا سب ٹھیک ہو جائے گا ۔۔۔۔
لاڈو بولی ۔۔۔
ہممممم ٹھیک ہے امی ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عادی مسز فاروق کے گھر سے نکل کر گاڑی میں بیٹھنے لگا تو شہریار جو کہ گھر جا رہا تھا اس نے عادی کو دیکھا تو اس کے پاس آیا اور بولا ۔۔۔۔۔
اسلام علیکم ڈاکٹر عادی ۔۔۔
عادی نے سر اٹھا کر دیکھا شہریار کو اور سلام کا جواب دیا اور کہا ۔۔۔۔
کیسے ہیں آپ ؟۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
ٹھیک ہوں ۔۔۔اپ یہاں کیا کر رہے ہیں ؟۔۔۔۔
عادی نے اسے بتایا ۔۔۔۔
کہ وہ فاروق صاحب کی والدہ کا چیک اپ کرنے آیا تھا میں ۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
اچھاااا ۔تو ادھر آ گئے ہیں تو میرے ساتھ میرے گھر چلیں ۔۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔۔
نہیں میں بس اب گھر جا رہا ہوں ۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
عادی آپ آ جائیں چائے ہی پی لیجے گا ۔۔پلیز۔۔۔
عادی نے مسکرا کر کہا ۔۔۔۔
ٹھیک ہے چلیں ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول کمرے میں تھی جب شہریار اندر آیا تو عادی کو بھی لے آیا اسے لاونج میں بیٹھایا اور صنم بیگم جو کے کچن میں تھی ان کے پاس گیا ۔۔۔۔۔۔
عادی لاونج کو دیکھنے لگا ۔اسکی سجاوٹ دیکھی تو اسے اچھی لگی دیوار پہ کنول شہریار اور احمد کی تصویر یں لگی تھیں ۔۔عادی اٹھ کر دیکھنے لگا ۔۔۔۔
کچھ تصویریں میں سب اکٹھے تھے اور کچھ میں کنول احمد کو مار رہی تھی ۔۔۔اور ایک تصویر میں کنول کچھ سوچ رہی تھی ۔۔۔اس نے اس تصویر کو دیکھا تو کنول بہت ہی پیاری لگ رہی تھی ۔۔۔وہ اس تصویر کو دیکھتے ہی سوچنے لگا ۔۔کنول اب کتنا بدل گئ ہے ۔۔اسے جب ہسپتال میں دیکھا تو کتنی کمزور تھی وہ کوئ نہیں کہہ سکتا تھا کہ یہ وہی کنول ہے ۔۔۔۔
عادی یہ سوچتے ہی صوفے پہ آکر بیٹھا ۔۔۔۔
شہر یار نے صنم بیگم کو بتایا کہ عادی آیا تو صنم بیگم جلدی سے لاونج میں گئیں ۔۔۔۔
عادی نے انہیں دیکھا تو کھڑا ہوا اور سلام کیا ۔۔۔۔
صنم بیگم نے اس کے سر پر ہاتھ پھیر کر سلام کا جواب دیا ۔۔۔اور بولیں بیٹھو بیٹا ۔۔۔بتاو کیسے ہو؟۔۔۔۔
عادی بولا ٹھیک ہوں میں اللہ کا شکر ۔۔۔اپ بتائیں آ نٹی کیسی ہیں ؟۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
ٹھیک ہوں اللّٰہ کے کرم سے ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول کچن میں آ ئ تو شہریار کو چائے بناتا دیکھ کے بولی ۔۔۔۔بھائ کیا کر رہے ہیں ۔۔میں بناتی ہوں اور یہ اتنی ساری چائے کیوں؟کوئ آ یا ہے کیا؟۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
ہاں عادی آیا ہے تم چائے بنا دو ۔۔۔۔
کنول چائے بنا کر کپ میں ڈالنے لگی ۔۔شہریار چائے اٹھا کر لاونج میں آیا اور عادی کو چائے دی ۔۔۔
اور خود کی چائے اٹھا کر بیٹھ گیا اور بولا ۔۔۔
ہاں جی تو بتائیں کیا ہوا رہا ہے آج کل ؟۔۔۔۔
عادی چائے پیتے ہوئے بولا ۔۔۔۔
بس کام میں مصروف ہوتا ہوں ۔۔۔اپ بتائیں؟۔۔۔
شہر یار بولا ۔۔۔
ٹھیک سب ۔۔۔
اسی وقت کنول لاونج میں آئ ۔۔۔ اس نے عادی کو سلام کیا ۔۔۔
عادی نے سلام کا جواب دے کر کہا ۔۔۔۔
کیسی طبیعت ہے آپ کی کنول اب ؟۔۔۔۔۔
کنول بولی۔۔۔
جی ٹھیک ہے اللّٰہ کاشکر۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
گڈ ۔۔۔
چائے ختم ہوئ تو عادی بولا ۔۔
اچھا اب میں چلتا ہوں ویسے بہت بہت شکریہ چائے کے لیے ۔۔اور وہ جانے لگا۔
شہریار بھی اٹھا اسے دروازے تک چھوڑنے آیا اور بولا ۔۔۔
عادی آپ کا شکریہ آپ کی وجہ سے کنول بہتر ہورہی ہے ۔۔۔
عادی مسکرا کر بولا ۔۔۔
کوئ بات نہیں شہریار ۔۔۔
یہ کہتے ہی عادی سلام کرتا چلا گیا ۔۔۔۔
کنول چائے کے برتن اٹھاتی کچن میں آئ اور دھونے لگی ۔دھو کر کمرے میں چلی گئ۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
تیمور صاحب کی بیوی کنول کے تایا کے گھر تو کنول کی تائ اس سے بولیں ۔۔۔
ارے بھابی شکر آپ آگئیں مجھے اس پیر سائیں کے پاس جانا ہے ۔۔۔
تیمور صاحب کی بیوی بولیں ۔۔۔
ارے میں تو آج جانے لگی ہوں تم نے چلنا ہے تو چلو ۔۔۔
کنول کی تائی نے چادر اوڑھی اور کہا ۔۔۔
چلو چلتی ہوں ۔۔۔
وہ دونوں ہی اس پیر کے آستانے کی طرف چل پڑے ۔۔۔۔
آستانے پہ پہنچ کر کنول کی تائی اپنی باری کا انتظار کرنے لگیں ۔۔۔
باری آئ تو وہ پیر کے پاس گئ اور ساتھ تیمور کی بیوی بھی ۔۔۔ ۔۔۔
الطاف نے تیمور کی بیوی اور کنول۔کی تائی کو دیکھا تو بولا ۔۔۔
کیا مسلہ ہے بتاؤ؟۔۔۔
کنول کی تائی بولی۔۔۔۔
پیر سائیں میرے دیور کی بیٹی ہے کنول اس کی وجہ سے میری بیٹی کا اس کے بھائ سے رشتہ نہیں ہو رہا ۔۔۔اپ کچھ کرو کہ ہو جائے آپ جو کہو گے میں دوں گی ۔۔۔۔
الطاف نے کنول کا نام سنا تو آنکھیں بند کیں اور بولا ۔۔۔
پہلے کیا لڑکی بیمار تھی ؟۔۔۔
کنول کی تائی بولیں ۔۔۔
جی بیمار تھی اب اس کا علاج چل رہا ہے ؟۔۔۔
الطاف بولا ۔۔۔
کون کر رہا ہے علاج اس کا ۔۔۔
کنول کی تائ بولیں۔۔۔
وہ ڈاکٹر عادی ہے کوئ اس کے علاج سے ٹھیک ہو رہی ہے ۔پہلے بیمار تھی وہ تو میرا ہی فائدہ ہو رہا تھا۔کیوں کہ میں نے اس باپ کو ڈھکے چھپے لفظوں میں کہا تھا کہ وہ اپنی بیٹی بنا لیں میری بیٹی کو لیکن وہ ٹھیک ہو رہی ہے تو مجھے لگتا ہےکہ میری بیٹی کی شادی نہیں ہوگی ۔۔۔۔
الطاف نے آنکھیں کھولیں اور بولا ۔۔۔
تم کل آنا میں سب عمل کر کے تہمیں تعویذ اور کچھ پانی دوں گا تہمارا کام ہو جائے گا ۔۔۔۔
کنول کی تائی بولیں۔۔۔
جی ٹھیک ہے ۔۔۔۔
تیمور کی بیوی بولی ۔۔۔۔
سرکار میرا تو مسلہ جانتے ہیں آپ ۔۔۔
بس وہی اب پھر سے تنگ کررہی ہے ۔۔۔
الطاف نے آنکھیں بند کی ۔اور تو تھوڑی دیر بعد کھولیں اور بولا ۔۔۔
کام ہو جائے گا ۔۔۔
کاغذ پہ کچھ لکھ کر اس نے تیمور کی بیوی کو دیا اور کہا۔۔۔
یہ جا کے جلا دینا پھر دیکھنا ۔۔۔
تیمور کی بیوی اچھا کر کے کچھ پیسے اس کے پاس رکھ کے بولی ۔۔۔
سرکار یہ نظرانہ ۔۔۔۔
الطاف سر ہلا کر ہاتھ سے انہیں جانے کو کہا ۔۔۔تو دونوں ہی باہر آئیں ۔۔۔
کنول کی تائ بولیں ۔۔۔
پیر سائیں تو بہت پہنچے ہوئے ہیں ان کو پتہ چل گیا کہ۔کنول پہلے بیمار تھی ۔۔۔۔۔
تیمور صاحب کی بیوی بولیں۔۔۔
تم کل آنا پھر دیکھنا کیا کہتے ہیں اب چلو جلدی ۔۔۔
کنول کی تائ سر ہلاتی چل پڑی ۔۔۔
دونوں ہی گھر کی طرف چل پڑے ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ان دونوں کے جانے کے بعد الطاف نے اپنے آدمی کو بلایا اور کہا ۔۔۔۔
ڈاکٹر عسدی ہے کوئ مجھے دو گھنٹے میں اس کی ساری معلومات چائیے ۔۔۔
وہ آدمی سر ہلاتا باہر چلا گیا ۔۔۔۔
الطاف دل میں ہی سوچنے لگا ۔۔۔
کنول بہت بچ لیا تم نے دیکھو اب کرتا کیا ہوں تہمارے ساتھ ۔۔۔
____
کنول کمرے میں بیٹھی تھی جب احمد اس کے پاس آ یا اور بولا ۔۔۔
موٹی آ جاؤ آ ئس کریم کھانے چلیں ۔۔۔۔
کنول نے اسے گھورا اور کہا ۔۔۔
نہیں میرا دل نہیں ہے تم جاؤ کھا آ ؤ ۔۔۔..احمد کنول کا ہاتھ پکڑ کر باہر لے آیا اور صحن میں پڑی چارپائی پہ بیٹھایا اور بولا ۔۔۔۔
بیٹھو ادھر میں آ ئس کریم لایا ہوں مل کے کھاتے ہیں تہمارے بغیر نہیں کھائ جائے گی مجھ سے ۔۔۔۔
کنول ہنسنے لگی اور بولی ۔۔۔
اچھا لے آ و۔۔۔۔
احمد مسکرا کر کچن میں گیا اور جلدی سے آ ئس کریم دو باول میں ڈال کے لے آیا ۔۔۔ایک باول اس نے کنول کو دیا ایک باؤل میں سے خود کھانے لگا ۔۔۔۔کنول کھانے لگی تو احمد نے اسے دیکھا اور دل میں ہی دعا کرنے لگا ۔۔۔۔
اللّٰہ میری بہن بہت معصوم ہے کرم کر اپنا اس پہ ۔۔۔۔
کنول نے احمد کو خود کو یوں دیکھتے دیکھا تو بولی ۔۔۔
خیر تو ہے ایسے کیوں دیکھ رہے ہو۔۔۔
احمد بولا ۔۔۔
کچھ نہیں میں دیکھ رہا ہوں بہت جلدی جلدی کھا رہی ہوں تم بھوکی ۔۔۔
کنول نے اسے گھورا اور کہا ۔۔۔
تم نا پیٹو گے مجھ سے ۔۔۔
احمد اس کے ہاتھ سے باول لیتے ہوئے بولا ۔۔۔۔
پہلے پکڑو تو صحیح ۔۔۔یہ کہتے ہی اس نے کمرے کی طرف دوڑ لگائی ۔۔۔
اور کنول اس کے پیچھے بھاگی ۔۔۔۔
دونوں کی ہنسنے اور چیخنے کی آ واز گھر میں گونج رہی تھی ۔۔۔
صنم بیگم ان دونوں کو دیکھ کر شکر ادا کرنے لگیں اللّٰہ کا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دو گھنٹے بعد الطاف کا وہ آدمی واپس آیا اور بولا ۔۔۔۔
سرکار ڈاکڑ عادی پیشے سے ڈاکٹر ہے مگر روحانی علم بھی رکھتا ہے ۔۔اور یہ اسی مولانا کا شاگرد ہے جس کا آپ کہہ رہے تھے اس کے ماں باپ نہیں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔
الطاف نے یہ سنا اور بولا ۔۔۔
آؤ تو یہ بات ہے پھر تو کنول کو وہ تکلیف دینی ہے کہ وہ یاد رکھے کہ کس کے کام میں روکاوٹ ڈالی اس نے ۔۔۔اچھا اب تم جاؤ ۔۔۔۔
وہ آدمی سر ہلاتا چلا گیا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگلے دن کنول کی تائی اکیلی الطاف کے پاس گئیں ۔۔۔۔کمرے میں داخل ہوئیں اور بیٹھتے ہی بولیں ۔۔۔۔
پیر سائیں میں آ گئ آپ نے کہا تھا کہ آج دیں گئیں تعویذ۔۔۔۔۔
الطاف نے انہیں دیکھا اور کچھ تعویذ پکڑے اور پاس پڑی پانی کی بوتل دی ۔۔۔۔اور کہا ۔۔۔۔۔
یہ تعویذ اس پانی میں حل کر کے اس لڑکی کے گھر یا کمرے کے باہر ڈال دینا اور یہ پتہ کرکے بتاؤ کہ لڑکی کچھ پڑھ رہی ہے کہ نہیں ؟۔۔۔۔
کنول کی تائی بولی ۔۔۔۔
سرکار میں اج جاؤں گی اور یہ سب کروں گی اور آپ کو میں بتا دوں گی آ کے ۔۔۔۔۔
الطاف نے ہممم میں جواب دیا ۔۔۔۔۔
اور کنول کی تائی اٹھ کر چلیں گئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول کچن میں کھڑی صنم بیگم کے ساتھ کام کروا رہی تھی ۔۔۔۔کنول کچھ سوچتے بولی ۔۔۔۔۔
امی آج نا میں بریانی بنا لوں ؟۔۔۔۔
صنم بیگم نے کہا ۔۔۔
ہاں بنا لو ۔۔۔۔۔
کنول مسکرا کر بولی۔۔۔
ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔
دروازے پہ دستک ہوئ ۔۔۔۔تو صنم بیگم نے جا کے دروازہ کھولا تو کنول کی تائی کھڑی تھیں….وہ چہرے پہ نقلی مسکراہٹ لائے بولیں ۔۔۔۔
اسلام علیکم بھابھی کیسی ہیں ؟۔۔۔۔
صنم بیگم نے سلام کا جواب دیا اور کہا ۔۔۔
آپ آئیں اندر آئیں ۔۔۔وہ اندر کمرے میں لے کر گئیں ان کو۔۔۔۔۔
کنول نے انہیں دیکھا تو فوراً جا کے سلام کیا ۔۔۔۔کنول کی تائی نے سلام دے کر کہا ۔۔۔
کیسی ہو تم ؟۔۔۔۔
کنول نے کہا ۔۔۔۔
ٹھیک ہوں۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
کنول جاؤ تائی کے لیے چائے لے آؤ۔۔۔۔۔کنول اٹھ کے چلی گئ کچن میں ۔۔۔۔
کنول کی تائی صنم بیگم سے بولیں ۔۔۔۔
کنول کا علاج کیسا چل رہا ہے؟۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
ٹھیک چل رہا ہے بس اب کچھ قرآنی آیات پڑھ رہی ہے تو کافی بہتر ہے ۔۔۔۔اپ بتائیں بھابھی کیسی ہیں ؟اور بچے کیسے ہیں؟۔۔۔۔۔
کنول کی تائی بولیں ۔۔۔۔
سب ٹھیک ہے بھابھی بس میں گزر رہی تھی تو سوچا میں ملتی جاؤں۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
ٹھیک کیا آپ نے ۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
بھابھی میں آپ کی چائے لے کے آتی ہوں ۔۔۔۔۔
صنم بیگم اٹھ کے گئیں تو کنول کی تائی اٹھیں اردگرد نظر دوہرائ۔۔تسلی کرنے بعد انہوں نے اپنے پرس سے پانی کی بوتل نکالی جس میں وہ گھر سے ہی تعویز حل کیے ہوئے تھے ۔۔۔۔انہوں نے وہ پانی جلدی سے کھڑکی کھول کر کنول کے کمرے کی طرف پھینک دیا اور دوبارہ سکون سے آکر بیٹھ گیں ۔۔۔۔
صنم بیگم چائے لے کر آئیں ۔۔۔۔کنول کی تائی کو چائے دی اور بیٹھ گئیں ۔۔۔۔
کنول بریانی کے لیے سارا سامان اکٹھا کر کے رکھ کر کمرے میں آ کر بیٹھ گئ ۔۔۔کنول چپ کر کے بیٹھی تو کنول کی تائی عجیب نظروں سے دیکھنے لگیں کنول کو ۔۔۔کنول نے اپنی تائ کو خود کو ایسے دیتا دیکھا تو کنول نے کہا ۔۔۔۔۔
تائی آپ ایسے کیوں دیکھ رہی ہیں ؟۔۔۔۔
کنول کی تائی گھبرا کر بولیں ۔۔۔۔
نہیں نہیں کچھ نہیں ۔۔۔۔
چائے پینے کے بعد کنول کی تائی بولیں ۔۔۔۔
اچھا میں چلتی ہوں ۔۔۔۔
کنول کچن میں گئ اور صنم بیگم کنول کی تائی کو دروازے تک چھوڑ کے آئیں ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول نے بریانی بنائ ۔۔بریانی بنا کر کنول اپنے کمرے میں آ ئ اور میڈیسن کھانے لگی تو دیکھا میڈیسن ختم ہو رہیں اس نے سر پہ ہاتھ رکھا اور بولی ۔۔۔۔
او میں بھول گئ بھائ کو میڈیسن کا کہنا تھا کیا کروں اب میں ۔۔۔کنول اٹھ کر صنم بیگم کے پاس آئ اور بولی ۔۔۔۔
امی میں میڈیسن کو تو بھائ کو کہنا ہی بھول گئ کہ ختم ہو رہی ہیں ۔۔۔اب کیا کروں؟۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
ایسا کرنا کھانا لینے کوئ آئے تو نسخہ دے دینا اور کہہ دینا کہ شہریار سے کہے کہ وہ دوائیاں لیتا آئے ۔۔۔۔
کنول بولی ۔۔۔۔
ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔
تھوڑی دیر میں دوکان سے لڑکا کھانا لینے آیا اور احمد بھی آ گیا ۔۔۔۔۔صنم بیگم نے کھانا ڈال کر دیا اور کنول کمرے سے نسخہ لینے آ ئ ۔۔نسخہ کے کر باہر آئ تو اسے کمرے کی دیوار کی طرف پانی نظر آیا ۔۔۔کنول دیکھنے لگی ۔۔۔
یہ پانی کیسے آیا ادھر ؟۔۔۔
اچھا کوئ نہیں صاف کر دوں گی ۔۔۔۔
کنول خود سے کہتے ہوئ نسخہ لے کر صنم بیگم کے پاس آئ اور بولی ۔۔۔۔
امی یہ نسخہ دے دیں ۔۔۔۔
صنم بیگم نے نسخہ لیا اور احمد کو بلایا ۔۔۔۔
احمد صحن میں آیا اور بولا ۔۔۔
جی امی کیا ہوا؟۔۔۔۔
صنم بیگم نے اسے ٹفن دیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
احمد یہ ٹفن دے دو لڑکے کو اور یہ. نسخہ بھی دے دو اور کہنا کہ شہریار سے کہے کہ دوائیاں لیتے آنا ۔۔۔۔
احمد ٹفن اور نسخہ لیتے ہوئے بولا ۔۔۔
اچھا امی ۔۔۔۔۔
احمد نے لڑکے کو جا کہ ٹفن اور نسخہ دیا اور کہا ۔۔۔۔
یہ نسخہ بھائ کو دے دینا اور کہنا کہ یہ دوائیاں یاد سے لیتے آئیں ۔ختم ہو رہی ہیں ۔۔۔۔۔
وہ لڑکا بات سنتا اور سر ہلاتا چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔
دوکان پہ پہنچتے ہی اس لڑکے نے پہلے شہریار بلایا ۔۔۔۔
شہریار بھائ یہ نسخہ دیا ہے احمد بھائ نے اور کہا ہے کہ دوائیاں یاد سے لیتے آنا ۔۔۔۔۔
شہریار نے بات سنتے ہی نسخہ اس لڑکے کے ہاتھ سے لے لیا اور جیب میں رکھ دیا اور کہا ۔۔۔
ٹھیک ہے تم یہ ٹفن بابا کو دو ۔۔۔۔
وہ لڑکا سر ہلاتا چلا گیا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ریاض صاحب دوکان سے جانے لگے تو شہریار کو بولے میں گھر جا رہا ہوں ۔۔تم وہ آ ڈر دینے والا آ ئیے تو اس کو بات کر لینا ۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔۔۔
ٹھیک ہے بابا۔۔۔۔
ریاض صاحب ہممم کر کے جانے لگے تو شہریار بولا ۔۔۔۔
بابا بات سنیں ۔۔۔۔
ریاض صاحب نے روک کر شہریار کو دیکھا ۔۔۔۔
شہریار نے نسخہ اور پیسے جیب سے نکالا ریاض صاحب کو دیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
بابا یہ کنول کی دوائیاں لے لیجے گا ۔۔۔اور بابا یہی لیجے گا جو اس پہ لکھی ہوئ ہیں ۔۔۔۔
ریاض صاحب نے اس سے نسخہ لیا اور چلے گئے ۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: