Kanwal novel by Ghazal Khalid – Read Online – Episode 12

0

کنول از غزل خالد – قسط نمبر 12

–**–**–

عادی ،ڈاکڑ سمیعہ اور باقی ڈاکڑ سٹاف روم میں بیٹھے دوسرے شہر میں ہونے والے سیمنار کے بارے میں بات کر رہے تھے ۔۔۔۔
ڈاکٹر سمیعہ بولیں ۔۔۔۔
ڈاکٹر عادی اس دفعہ سیمنار میں چلیں گے ہمارے ساتھ ۔۔۔۔
عادی نے مسکرا کر کہا ۔۔۔۔
جی جی اس دفعہ میں بھی چلوں گا ۔۔۔۔
ڈاکٹر سمیعہ بولیں ۔۔۔
چلیں ٹھیک ہے پھر صبح نکلتے ہیں سب اور رات تک ہو جائے گی واپسی ۔۔۔۔
سب ڈاکڑ بولے ۔۔۔۔
ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ریاض صاحب میڈیکل سٹور پر دوائیاں لینے آئے ۔۔۔۔انہوں نے نسخہ میڈیکل سٹور پہ موجود لڑکے کو دیا اور بولے ۔۔۔۔
یہ دوائیاں دے دو ۔۔۔۔
وہ لڑکا نسخہ دیکھتے ہوئے بولا ۔۔۔۔
یہ دوائیاں اور کمپنی کی ہیں ۔جو اس نسخے پہ کمپنی لکھی ہوئ ہے وہ ختم ہو گئیں ہیں ۔۔۔۔
ریاض صاحب اس لڑکے سے بولے ۔۔۔۔
دے دو جو بھی ہے ۔۔۔۔
وہ لڑکا سر ہلاتا دوائیاں لینے چلا گا ۔۔۔۔دوائیوں کا سارا حساب کر کے ان کو شاپر میں ڈال کر اس لڑکے نے ریاض صاحب کو دیا اور پیسے بتائے ۔۔ریاض صاحب پیسے دیتے گھر کی طرف چل پڑے ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول کمرے کی سائیڈ پہ موجود پانی کو صاف کرکے کمرے میں آئ اور وضو کرکے وظیفہ پڑھنے لگی ۔۔۔۔
وظیفہ پڑھتے ہوئے اسے لگا کہ کوئ اسے گھور رہاہے اس نے پوری توجہ سے وظیفہ پڑھا اور اپنے پہ دم کیا ۔۔۔کنول آیت الکرسی پڑھنے لگی ۔۔۔پڑھتے ہوئے وہ اٹھ کر کمرے کے دروازے تک آئ تو اس نے دیکھا ۔۔۔۔
کالے رنگ کا سایہ باہر صحن میں گھوم رہا ہے اور کبھی وہ سایہ صنم بیگم اور ریاض صاحب کے کمرے کی طرف جانے کی کوشش کر رہا تھا توکبھی احمد اور شہریار کے کمرے میں جانےکی کوشش کرتا ۔۔۔۔کنول اس سایے کو دیکھ رہی تھی لیکن ساتھ ساتھ پڑھ بھی رہی تھی ۔۔۔کنول نے آیت الکرسی کو تھوڑا اونچا پڑھنا شروع کیا تو وہ سایہ موڑ کر کنول کی طرف بڑھنے لگا لیکن اس تک پہنچنے سے پہلے ہی غائب ہو گیا ۔۔۔۔۔
کنول نے آیت الکرسی پڑھ کر دعا کی اور اللّٰہ کا شکر ادا کیا ۔۔۔۔
کنول صنم بیگم کے پاس آئ ۔۔۔اور بولی ۔۔۔۔
امی بھائ نے دوائیاں نہیں بھیجوا یں ؟۔۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
نہیں ابھی نہیں بھیجوا یں ۔۔۔۔
کنول نے اچھااا کہا ۔۔۔
اور ریاض صاحب گھر میں داخل ہوئے ۔۔۔۔۔
کنول نے ریاض صاحب کو دیکھا تو سلام کیا ۔۔۔۔ریاض صاحب نے سلام کا جواب دیا اور کہا ۔۔۔
یہ لو اپنی دوائیاں ۔۔۔۔
کنول نے خوش ہو کر دوائیاں لیں اور دیکھنے لگی ۔۔۔۔
صنم بیگم ریاض صاحب کو دیکھا تو بولیں ۔۔۔۔
میں کھانا لے کے آتی ہوں آپ کے لیے ۔۔۔۔
ریاض صاحب نے کہا ۔۔۔۔
ہاں لے آ ؤ ۔۔۔۔۔
کنول دوائیاں لے کر کمرے میں ائ…..کھانا کھانے سے پہلے والی دوائ اس نے نکلا کے کھائ اور کچن میں چلی گئ اپنے لیے کھانا لینے ۔۔۔صنم بیگم نے ریاض صاحب کو کھانا دیا اور بولیں ۔۔۔۔
آپ کنول سے ناراض نہ ہوا کریں بیٹی ہے آپ کی تھوڑا بیمار ہے ۔۔۔۔
ریاض صاحب بولے ۔۔۔۔
کھانا تو کھانے دو سکون سے ۔۔اور تم کیا اس کی حمایتی بنتی ہو ۔۔تم جانتی ہو مجھے یوں لڑکیوں کے چوچلے کرنا پسند نہیں ۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
ریاض کچھ تو زبان میں نرمی لائیں ۔اپ کا خون ہے وہ آپ کیوں ناراض ہوتے ہیں کنول سے وہی بیٹی ہے آپ کی جس کو بچپن میں ذرا کھانسی بھی آتی تھی تو آپ تڑپ جاتے تھے ۔۔۔۔
ریاض صاحب چپ کرکے صنم بیگم کو دیکھنے لگے اور بولے ۔۔۔۔۔
ہممممم ۔۔۔۔۔
صنم بیگم سر جھٹک کے رہے گئیں ۔۔۔۔
کنول کھانا کمرے میں لے کہ آئ ۔۔۔کھسنا کھانے بعد اس نے اللّٰہ کا شکر ادا کیا ۔۔۔دوائیاں کھائیں اور سونے کے لیے لیٹ گئ ۔۔۔۔کب نیند آئ اسے پتہ ہی نہیں چلا ۔۔۔۔
احمد اور شہریار گھر آئے تو
احمد بولا۔۔۔۔
امی کنول کدھر ہے ؟
صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
احمد آج وہ جلدی ہی سو گئی ابھی بھی سو رہی ہے اب تم اسے اٹھانے نہ چلے جانا ۔۔۔۔
احمد بولا
نہیں جاتا امی ۔۔۔اپ ایسا کریں کھانا لا دیں ۔۔۔۔
صنم بیگم ہمممم کرتی کھانا لینے چلی گئیں ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رات کے دوسرے پہر کنول کو معدے میں عجیب سا درد ہوا ۔۔۔متلی سی ہونے لگی اس کی آنکھ کھول گئ ۔۔۔وہ اٹھ کے بیٹھی وال کلاک پہ ٹائم دیکھا تو 2 بج رہے تھے ۔۔کنول پیٹ کو پکڑ کر بیٹھ گئ ۔۔۔درد کے ساتھ ساتھ سے گھبرائٹ ہونے لگی ۔۔۔وہ بامشکل اٹھ کر کمرے میں ٹہلنے لگی اور لمبے لمبے سانس لینے لگی ۔۔۔کچھ دیر بعد طبیعت میں بہتری آئ تو وہ دوبارہ سے سونے کے لیے لیٹ گئ ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگلا پورا دن کنول کا تکلیف میں گزرا دوائیاں لینے کے باوجود اس کی طبیعت خراب ہوتی گئی ۔۔الٹیاں اتنی آ گئ تھیں کہ وہ نڈھال ہو گئ تھی ۔۔۔صنم بیگم ،شہریار ،احمد سب کو فکر ہونے لگی ۔۔۔اب بھی وہ اس کے کمرے میں تھے، عصر کا وقت تھا ۔۔۔۔کنول نیم بے ہوش کی حالت میں بیڈ پہ لیٹی ہوئی تھی ۔۔۔شہریار اس کی حالت دیکھ کر بولا ۔۔۔۔امی میں عادی کو کال کرتا ہوں بتاتا ہوں کہ کنول کی. حالت کے بارے میں ۔۔۔یہ بات سن کر احمد بولا ۔۔۔۔
بھائ میں نے کال کی تھی کچھ دیر پہلے وہ دوسرے شہر گئے ہیں اور ڈاکٹر سمیعہ بھی دوسرے شہر ہیں سیمنار اٹینڈ کرنے گئے ہوئے ہیں ۔۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔۔
آؤ اب کیا کریں اس کی حالت ہی ٹھیک نہیں ہو رہی ۔۔۔احمد بولا ۔۔۔
بھائ۔ کنول اب سو رہی ہے اسے تھوڑا سونے دیں ۔۔۔ارام کرے گی تو تھوڑا ٹھیک ہو جائے گی ۔۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
ہاں ٹھیک کہہ رہا ہے اٹھو چلو ۔۔۔۔
انہوں نے کنول کو دیکھا تو وہ واقعی سو چکی تھی ۔۔۔۔۔
اس کے کمرے سے باہر آ ئیے صحن میں آتے ہی شہریار نے آسمان کی طرف دیکھا اور بولا ۔۔۔۔۔
آج تو لگتا ہے بارش ہو گی بہت ۔۔۔۔۔
احمد بھی موسم دیکھ کر بولا ۔۔۔۔
ہاں بھائ لگ تو رہا ہے ۔۔۔چلیں کمرے میں چلتے ہیں ۔۔۔۔صنم بیگم بھی اپنے کمرے میں چلیں گئیں اور احمد،شہریار بھی کمرے میں چلے گئے ۔۔۔۔۔۔
کنول وظیفہ بھی نہ پڑھ سکی اپنی خراب حالت کی وجہ سے ۔۔۔۔۔اور یہی ا س سے غلطی ہوگئی
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
الطاف اپنے کمرے میں بیٹھا تھا ۔۔۔اس نے آنکھیں بند کیں اور سب کچھ دیکھتے ہوئے شیطان ہنسی ہنستے ہوئے اس نے خنزر کو بولا ۔۔۔۔
خنزر اب جا اس کنول کے پاس تیرا شکار ہے آج وہ ۔کر لے اپنے شکار کے ساتھ وہ یاد رکھے ۔۔۔اج اس کی عزت کی دھجیاں اڑا دے ۔ آج وہ اس چیز کو نہیں پڑھ پائ جو اسے مجھ سے بچا رہی تھی ۔۔۔۔جا ۔۔۔
خنزر سر ہلاتا چلا گیا۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بارش شروع ہو گئ ۔۔۔بادل زور سے گرجے ۔۔اور ساتھ ہی بارش تیز ہو گئ ۔۔۔۔خنزر کنول کے کمرے میں انسانی وجود کے روپ میں داخل ہوا ۔۔۔اس نے کنول کو بیڈ پہ دیکھا تو وہ کنول کی طرف بڑھا ۔۔۔۔
کنول کو نیند میں ہی کیسی چیز کا اپنے کمرے میں ہونے کا احساس ہوا اس نے آنکھیں کھولیں تو سامنے موجود ایک آدمی کو دیکھ کر گھبرا گئ ۔۔۔ہمت کر کے آٹھ کے بیٹھی اور بولی ۔۔۔۔
کون ہو تم اور میرے کمرے میں کیا کر رہے ہو؟ ۔۔۔۔۔
خنزر ہنسا اور بولا ۔۔۔۔
میں وہ ہوں جس سے تم اب تک بچ رہی تھی اب دیکھنا وہ حال کروں گا جو تم نے کچھ سوچا نہ ہو گا ۔۔۔۔
کنول اس کی بات سے ڈر کر پیچھے ہوئ ۔۔۔تو خنزر نے آگے بڑھ کر اس کا بازو پکڑا ۔۔۔۔
کنول کو یوں لگا جیسے کسی آگ نے اس کا ہاتھ پکڑ لیا ہے ۔۔۔۔
کنول اس سے اپنا ہاتھ چھڑوانے لگی ۔۔۔۔
خنزر نے اسے زور سے تھپڑ مارا ۔۔۔کنول کا دماغ گھوم گیا ۔۔۔۔کنول اوندھے منہ بستر پر گری پڑی ۔۔۔
خنزر نے کنول کو بالوں سے پکڑ آ اور گھسیٹ کر بیڈ سے نیچے پھینکا ۔۔۔کنول کا سر زور سے فرش پہ لگا اور زخم کا نشان چھوڑ گیا ۔۔۔کنول درد سے رونے لگی ۔۔خنزر نے کنول کو پھر سے بالوں سے پکڑا اور سنگھار میز کی طرف دھکا دیا ۔۔۔کنول سیدھا سنگھار میز پہ جا لگی کنول کے معدے میں شدید درد ہوا ۔۔۔۔
کنول پیٹ کو پکڑتی لڑکھڑا کر زمین پہ گری ۔۔۔۔خنزر اس کی طرف بڑھا بالوں سے پکڑ کر بولا ۔۔۔۔
اج میں تجھے بتاؤں گا کہ ہمارے کام میں روکاوٹ ڈالنے سے کیا ہوتا ہے ۔۔۔۔
اس کے ساتھ ہی اس نے کنول کی قمیض کا بازو پھاڑا اور بولا
تیری یہ عزت نہیں رہے گی ۔۔۔
کنول یہ بات سن کر ڈر کر رونے لگی ۔۔۔۔
خنزر اب اسی کی عزت لوٹنے لگا تو کنول بولی ۔۔۔
چھوڑو مجھے میں اپنا وجود گندا نہیں ہونے دوں گی چھوڑو مجھے ۔۔۔۔
کنول کا دماغ سن سا ہونے لگا لیکن خنزر اس کے کپڑے پھاڑنے لگا ۔۔۔۔۔
کنول کی جسم پہ خنزر کے مارنے سے نیل کے نشان بن چکے تھے ۔۔۔۔
وہ نازک سی معصوم سی کنول کو مسلنے لگا ۔۔۔۔اسی دوران ہی کنول کے دماغ میں آیت الکرسی آئ اور اس نے دل میں ہی آیت الکرسی پڑھنا شروع کی ۔۔۔۔اور دل میں ہی دعا کرنے لگی ۔۔۔۔
اللّٰہ مجھے معاف کرنا میں وضو نہیں کر پائی ۔۔۔
ابھی اس نے آیت الکرسی شروع ہی کی کہ خنزر کو جھٹکا لگا اور وہ کنول سے دور جا گرا ۔۔۔انسانی روپ سے اب وہ اپنے اصل روپ میں آنے لگا ۔۔۔۔۔۔کنول فرش پہ گری پڑی تھی آنکھیں حیرت سے کھولے زبان سے آیت الکرسی پڑھتے وہ خنزر کو دیکھنے لگی ۔۔۔۔خنزر غصے سے اس کی طرف بڑھا لیکن ایک زور دار جھٹکے سے پیچھے کی طرف گرا۔۔۔۔
کنول اب اونچی آ واز میں آیت الکرسی پڑھنے لگی ۔۔۔خنرر کو اپنا وجود جلتا ہو محسوس ہوا اور وہ چیختا ہوا کالے سائے میں تبدیل ہو کر غائب ہوگیا ۔۔۔۔کنول نے آیت الکرسی پوری پڑھ کر خود پہ دم کی اور ہمت کرکے زور سے چیخی ۔۔۔۔۔۔
بھائی ۔۔امی ی ی ی۔۔۔بھائ ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صنم بیگم کمرے میں بیٹھیں تھیں بارش تیز ہو گئ تھی ۔۔۔لیکن ان کا دل گھبرانے لگا ۔۔ایسے جیسے کیسی نے دبوچ لیا ہو ۔۔۔وہ کمرے سے باہر آئیں ۔۔۔۔
تو انہیں کنول کی آ واز آئ ۔۔۔وہ بھاگ کے کمرے میں گئیں ۔۔دروازہ کنول کے کمرے کا کھولا ۔۔۔تو کنول کو دیکھ کر پریشان ہو گئیں ۔۔۔۔
کنول کے کپڑے جگہ جگہ سے پھٹے پڑے تھے ماتھے سے خون نکل رہا تھا ۔۔۔قمیض کے بازو جو کہ پھٹ چکے تھے اور بازو پہ نیل کے نشان واضح تھے ۔۔۔
وہ بھاگ کے کنول کے پاس آئیں اس کو اٹھایا اور بیڈ پہ لیٹایا اور بولیں ۔۔۔۔
کنول میرے بچے کیا ہوا ؟۔۔۔۔
یہ سب کیا ہوا ۔۔۔۔۔۔
کنول ہمت کر کے بولی ۔۔۔۔
امی میں نے اسے خود کو گندا نہیں کرنے دیا میں نے بچا لیا خود کو میں نے بچا لی عزت اپنی ۔۔۔وہ مجھے گندا کرنے آیا تھا لیکن میں نے بچا لیا خود کو ۔۔۔۔۔
صنم بیگم اس کی بات سن کر رونے لگیں اور بولی ۔۔۔
میرا بچہ کچھ نہیں ہونے دوں گی میں تہمیں ۔۔۔۔
کنول نے مسکرا کر انہیں دیکھا اور بے ہوش ہو گئیں ۔۔۔۔
صنم بیگم نے فورا آٹھ کر الماری سے کنول کے کپڑے نکالے اور اس کے کپڑے تبدیل کروائے ۔۔۔۔
اور اس کے اوپر چادر اوڑھ کر شہریار کی کمرے کی طرف بھاگیں ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عادی سیمنار اٹینڈ کرکے کار میں بیٹھا اور ڈرائیور کو کہا ۔۔۔گھر چلو ۔۔۔۔
ڈرائیور نے اچھااا کہا ۔۔۔اور گاڑی چلا دی ۔۔۔۔
عادی سیٹ پہ سر رکھے آنکھیں بند کیے بیٹھا تھا ۔۔۔کہ اس کے کانوں میں آواز آ ئ ۔۔۔۔
عادی پلیز بچا لیں مجھے یہ مجھے مار دے گا ۔۔یہ مار دے گا ۔۔۔
عادی نے آنکھیں کھولیں ۔۔۔
اور سوچنے لگا ۔۔۔
یہ کس کی آواز تھی ۔۔۔اللہ خیر کرے ۔۔۔
اس نے پھر آنکھیں بند کیں ۔۔۔تو اس کی آنکھوں کے سامنے مناظر آنے لگے ۔۔۔۔
ایک لڑکی کو کوئ سانپ نما چیز جس. کا منہ کتے کی طرح ہے لیپٹی ہوئ ہے اور وہ لڑکی رو رہی ہے ۔۔۔مدد مانگ رہی ہے ۔۔۔ وہ سر جھکائے ہوتی ہے ۔سر اٹھاتی ہے تو عادی اس کا چہرہ دیکھتا ہے ۔۔۔
عادی حیرت سے دیکھنے لگا ۔۔تو وہ کوئ اور نہیں کنول تھی ۔۔۔۔
گاڑی کو جھٹکا لگا تو وہ روکی ۔۔۔
تو عادی نے ہڑبڑا کر آنکھ کھولی ۔۔۔۔
وہ خود سے بولا ۔۔۔۔
وہ میرے اللّٰہ ۔۔۔
کنول مشکل میں ہے ۔۔مجھے ابھی اس کے گھر جانا ہوگا ۔۔۔۔
ڈرائیور گاڑی کو دیکھنے لگا تو عادی بولا ۔۔۔
کیا ہوا ۔۔۔۔
ڈارئیور بولا
کچھ نہیں صاحب وہ آگے پتھر آ گئے تھے ۔۔۔ ۔۔۔
عادی بولا
جلدی کرو اور ہاں مجھے کیسی کے گھر جانا ہے تم ایسا کرو وہ شمس areaکی طرف لے جانا ۔۔۔۔
ڈرائیور کار میں بیٹھ کر بولا ۔۔۔
جی صاحب اور کار چلا دی اس نے ۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
شہریار اور احمد صنم بیگم کے اس طرح چلانے پہ فورا کنرے سے نکلے ۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
کیا ہوا امی؟۔۔۔
صنم بیگم روتے ہوئے بولیں۔۔۔۔
بیٹا وہ کنول ۔۔۔۔۔
شہریار اور احمد بھاگ کے کنول کے کمرے میں گئے ۔۔۔
کنول کو دیکھا تو وہ بیڈ پہ بے ہوش پڑی تھی ۔۔سر پہ زخم کا نشان تھا ۔۔۔
صنم بیگم بھی ان کے ساتھ کمرے میں آئیں ۔۔۔
شہریار نے کنول کو ہلایا اور بولا ۔۔۔۔
گڑیا اٹھو کیا ہوا تمہیں؟۔۔۔
کنول ہوش میں ہی نہ آئ ۔۔۔
تب ہی صنم بیگم بولیں ۔۔۔۔
شہریار جب میں کمرے میں آ ئ تو کنول بہت بری حالت میں تھی اس نے صرف یہ کہا ۔۔۔۔
امی میں نے خود کو گندا ہونے س بچا لیا ۔۔۔میں نے اس سے اپنی عزت بچا لی ۔۔۔۔
شہریار اور احمد دونوں یہ سن کر چونکے ۔۔۔۔
احمد بولا ۔۔۔
امی یہ سب آپ کو کنول نے بتایا ۔۔۔
صنم بیگم نے روتے ہوئے ہاں میں سر ہلایا ۔۔۔
شہریار نے آنسو ضبط کرتے ہوئے کہا ۔۔۔
احمد ابھی جاؤ ۔۔۔
فرسٹ ایڈ باکس لے کر آ ؤ ۔۔۔
احمد فرسٹ ایڈ باکس لنے چلا گیا ۔۔۔
دروازے پہ دستک ہوئ ۔۔۔
تو صنم بیگم نے شہریار کو کہا
تم جا کے دیکھو کون ہے ؟۔۔۔
شہریار اٹھ کر دروازے پہ دیکھنے گیا ۔۔۔
اس نے دروازہ کھولا ۔۔۔
تو سامنے عادی کھڑا تھا ۔۔۔
عادی نے سلام کیا اور کہا
میں اندر آ جاؤں ۔۔۔۔
شہریار نے سلام جواب دیا اور کہا ۔۔۔
ہاں آجاؤ ۔۔۔
اندر آتے ہی عدی نے کہا ۔۔۔
کنول کدھر ہے ۔۔کیسی ہے وہ ۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
عادی وہ کمرے میں ہے اس کی حالت خراب ہو گئ ہے ۔۔۔
عادی بولا ۔۔
آپ لے چلیں اس کے کمرے میں مجھے ۔۔۔
شہریار عادی کو کنول کے کمرے میں لے کر آیا ۔۔۔۔
عادی نے کنول کو دیکھا اور اس کے کمرے کو دیکھا ۔۔۔
کچھ پڑھتے ہوئے چل کر کنول کے پاس آیا اس نے کنول کی نبض چیک کی اور اس کے سر کے زخم جو دیکھا اور اس کے سر پر ہاتھ رکھ کے پڑھنے لگا ۔۔۔۔انکھیں بند کی تو کنول کے ساتھ ہونے والے سارے واقعے کے مناظر اس کے سامنے آ گئے ۔۔۔
عادی نے سب دیکھنے کے بعد آنکھ کھولی اور بولا ۔۔۔
کنول نے وظیفہ چھوڑ دیا تھا پڑھنا ؟۔۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
پتہ نہیں بیٹا ۔۔۔۔
تب ہی عادی بولا ۔۔۔
ابھی اسے ہسپتال لے چلیں ۔۔حالت ٹھیک نہیں اس کی ۔۔اور جانتے ہیں اس کے ساتھ اس جن نے زیادتی کی کوشش کی ہے۔۔ کہاتھا میں نے کہ وظیفہ پڑھنا ہے اس نے لیکن لگتا ہے اس چھوٹ گیا ہے ۔۔وہ تو شکر اللّٰہ کا کہ کنول نے بروقت آیت الکرسی پڑھ کر خود کو زیادتی کا شکار ہونے سے بچا لیا ورنہ شاہد یہ زندہ نہیں رہتی ۔۔۔۔
اس کی بات سنتے ہی شہریار اور صنم بیگم چونکے شہریار کی آنکھوں سے آنسو نکل آئے اور صنم بیگم بھی رونے لگیں ۔۔۔احمد جو کہ دروازے پہ کھڑا تھا یہ سن کر اسکے ہاتھ سے فرسٹ ایڈ باکس نیچے گرا ۔۔اور وہ کمرے میں آیا ۔۔۔
کنول نے اس وقت زور سے سانس لیا ۔۔۔عادی نے اس کی نبض چیک کی جو کہ سلو ہو رہی تھی ۔۔۔عادی شہریار کو بولا ۔۔۔
اسے ہسپتال لے چلو ابھی ۔۔۔
شہریار نے ہمت کی اور فورا ایمبولینس کو کال کرنے لگا ۔۔۔
عادی اسے کال کرتا دیکھ کے بولا ۔۔۔
شہریار ۔۔۔
اسے میری کار میں لے چلو تم اسے اٹھا کے او ۔۔۔
احمد تم انٹی کو لے کر آ و۔۔۔
شہریار کنول کو اٹھا کر کار تک لایا ۔۔ عادی نے پچھلی سیٹ کا دروازہ کھولا ۔۔۔شہریار نے کنول کو لیٹایا اندر ۔۔اور خود بھی بیٹھ گیا ۔۔۔اس نے اپنی گود میں کنول کا سر رکھا ۔۔۔
اور اس کا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لے لیا ۔۔۔۔
عادی ڈرائیور کے ساتھ بیٹھا اور ڈرائیور کو بولا ۔۔۔
ہسپتال چلو ابھی ۔۔۔۔
ڈرائیور نے اچھا کہا اور کار چلا دی ۔۔۔۔۔۔
صنم بیگم بہت رونے لگیں ۔
احمد خود بھی رونے لگا ۔۔۔وہ صنم بیگم کو چپ کرواتے ہوئے بولا ۔۔۔
امی کچھ نہیں ہو گا کنول کو
۔۔
صنم بیگم بولیں ۔۔۔
یہ سب تہماری تائی اور ابو کی وجہ سے ہوا ہے ۔۔۔۔میری بچی آج اس حال میں ہے ۔۔احمد دعا کرو ۔۔۔
احمد بولا ۔۔۔
امی ہمت کریں چلیں جلدی اٹھیں ہمیں ہسپتال جانا ہے ۔۔۔
____
احمد نے صنم بیگم کے آنسو صاف کیے اور کہا ۔۔۔۔
امی چلیں ۔۔اپ چادر پہن لیں میں کنول کی دوائیاں جو کہ وہ استعمال کر رہی ہے اور اس کی فائل لے کے آتا ہوں ۔۔۔۔
صنم بیگم نے اچھا میں سر ہلایا اور اپنی چادر لینے کمرے میں چلیں گئیں ۔۔۔۔
احمد کنول کے کمرے میں آیا ڈریسنگ ٹیبل پہ سامان بکھر ا ہوا دیکھا تو افسوس کرنے لگا ۔۔۔اس نے کنول کی میڈیکل فائل اور میڈیسن اٹھائیں اور کمرے سے باہر اگیا…
صنم بیگم جب تک چادر پہن چکی تھیں ۔۔۔۔
احمد انہیں بائیک پہ بیٹھایا ہسپتال چل پڑا ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شہر یار کنول کو اٹھائے جب گاڑی میں لیٹا رہا تھا تب لاڈو کے چھوٹے بھائی(کنول کا تایا زاد)افعان نے دیکھا اور وہ سوچنے لگا یہ کنول کو کیا ہواہے ؟۔۔۔۔
وہ اپنےگھر آیا تو اپنی ماں کے پاس گیا اور بولا ۔۔۔۔
امی شہریار بھائ کنول آپی کو گاڑی میں اٹھا کے لیٹا رہے تھے اور پھر وہ گاڑی تیزی سے بھاگا کے لے گئے ۔۔۔ایسا لگ رہا تھا کنول آپی بے ہوش ہوں ۔۔۔۔۔۔
کنول کی تائی نے یہ سنا تو وہ خوش ہوئیں دل ہی دل میں اور سوچنے لگیں ۔۔۔
لگتا ہے کام ہو گیا ۔۔۔۔مان گئ میں پیر صاحب کو ۔۔۔۔
وہ اپنے بیٹے کو دیکھ کر بولیں ۔۔۔۔
چھوڑ وہ بیمار رہتی ہے نہ اس لیۓ تو جا کام کر اپنا ۔۔۔۔
افعان اٹھتا کمرے میں چلا گیا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہسپتال پہنچتے ہی عادی نے شہریار کو کہا تم جلدی کنول کو اٹھا کر آؤ ایمرجنسی میں ۔۔۔یہ کہتے ہی عادی اندر ہسپتال گیا ۔۔۔شہریار کنول کو اٹھا کر اندر گیا ۔۔۔۔۔
ایمرجنسی وارڈ میں کنول کو بیڈ پہ لیٹایا۔۔۔۔عادی نے فورا نرس کو بلایا اور کہا اس کا بی پی چیک کریں اور شہریار کو باہر جانے کو کہا ۔۔۔۔
شہریار وارڈ سے باہر گیا ۔۔۔۔
نرس نے بی پی چیک کرنے کے بعد عادی کو بتایا تو عادی نے ڈرپ اور انجکشن لکھ کے دیں اور کہا جلدی یہ ڈرپ اور انجکشن لے کر آ ؤ ۔۔۔۔نرس بھاگتی ہوئ ڈرپ اور انجکشن لینے گئ ۔۔۔۔۔
احمد اور صنم بیگم اسی وقت ہسپتال پہنچے اور بھاگتے ہوئے ایمرجنسی وارڈ میں پہنچے ۔۔۔اور شہریار کے پاس پہنچ کر صنم بیگم نےروتے یوئے پوچھا ۔۔۔۔
کیسی ہے میری کنول؟
شہریار نے انہیں تسلی دیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔
امی وہ ابھی واڈ میں ہے ڈاکٹر عادی اسے چیک کر رہے ہیں ۔۔۔۔
نرس نے انجکشن اور ڈرپ لا کر دیں عادی کو ۔۔۔عادی نے نرس کو کہا یہ اور ڈرپ انہیں لگائیں اور ہاں ان کی کا بی پی چیک کرتے رہیے گا ۔۔۔۔۔
نرس نے سنا تو ہاں میں سر ہلاتی کنول کو ڈرپ لگانے لگی ۔۔۔اس نے کنول کے بازو پہ نیل کے نشان دیکھے تو ڈاکڑ عادی کو دیکھا تو عادی نے نرس کو دیکھ کر کہا ۔۔۔۔
کچھ نہیں ہے آپ کو جو کہا ہے وہ کریں ۔۔۔۔۔
نرس چپ کرکے انجکشن لگانے لگی کنول کو ۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ یہ کہتا باہر آیا اور شہریار کے پاس گیا ۔۔۔۔
شہریار نے عادی کو دیکھا اور بولا ۔۔۔۔
عادی کیسی ہے کنول؟۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔
شہریار میں نے ڈرپ اور انجکشن لگا دیے ہیں لیکن مجھے یہ سمجھ نہیں آرہی کنول نے وظیفہ کیوں چھوڑا۔۔۔اور وہ تو بتا رہی تھی اپنی حالت مجھے پھر کیا ہوا ایسا ۔۔۔۔۔
احمد بولا ۔۔۔
ڈاکڑ عادی اسے اچانک سے ہی الٹیاں شروع ہو گئیں تھیں اور معدے میں درد ہونے لگ گیا تھا ۔۔۔۔
عادی بولا ۔۔۔۔
احمد تم مجھے اسکی دوائیاں دیکھاؤ جو وہ لے رہی تھی ۔۔۔۔
احمد نے بات سن کر دوائیاں جو کہ وہ۔گھر سے اٹھا کے لایا تھا وہ عادی کو دیں ۔۔۔۔
عادی نے دوائیاں دیکھیں تو وہ حیرت میں آیا اور بولا ۔۔۔۔
یہ دوائیاں اور ہیں وہ نہیں ہیں جو کنول کو لکھ کے دی گئیں تھیں ۔۔۔یہ کنول کے لیے بالکل بھی ٹھیک نہیں ہیں ۔کہا تھا میں نے آپ نے کیوں دیں یہ دوائیں اسے ؟۔۔۔شہریار آپ کو تو میں نے بتایا تھا نا تو پھر یہ دوائیں کیوں دیں ؟۔۔۔اسی وجہ سے کنول کی حالت خراب ہو گئ ۔۔۔۔
شہریار ،احمد اور صنم بیگم یہ بات سن کر چونکے ۔۔۔
شہریار بولا ۔۔۔
یہ دوائیاں تو بابا کو میں نے لانے کو کہا تھا اور کہا بھی تھا بابا یہی والی دوئیاں لینا اور میرے اللّٰہ ۔یہ کیا کر دیا بابا نے ۔۔۔۔
صنم بیگم روتے ہوئے بولیں ۔۔۔۔
عادی بیٹا اب کنول ٹھیک تو ہو جائے گی ؟۔۔۔۔
عادی نے صنم بیگم کو دیکھا اور کہا ۔۔۔
انٹی ان شاءاللہ آپ دعا کریں ابھی کنول کا ہوش میں آنا ضروری ہے یہ بھی ہو سکتا ہے جب وہ جاگے تو خوف میں ہو آپ سب کو کنول کو ہمت دینی ہو گی۔۔۔۔
وہ یہ کہتا کیبن میں چلا گیا ۔۔۔
اور صنم بیگم وہیں بیٹھ کے رونے لگیں تو شہریار بھی پریشانی سے بیٹھا ۔۔۔
احمد نے صنم بیگم کو دلاسہ دیا اور کہا ۔۔۔
امی دعا کریں ۔۔۔کچھ نہیں ہوگا ان شاءاللہ ہماری کنول کو ۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: