Kanwal novel by Ghazal Khalid – Read Online – Episode 2

0

کنول از غزل خالد – قسط نمبر 2

–**–**–
ہاں ٹھیک ہوں میں بس چکر آ رہے ہیں ۔۔
صنم بیگم نے کہا ۔۔۔
آ پ ایسا کریں سو جائیں تھوڑی دیر ۔۔۔
ریاض صاحب نے کہا ۔۔۔
اچھا ٹھیک ہے ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول کالج سے گھر آ ئ تو اس نے صنم بیگم کو سلام کیا ۔۔۔۔
صنم بیگم نے سلام کا جواب دیا ۔۔۔
کنول نے کمرے کا دروازہ بند دیکھا تو کہا ۔۔۔
امی بابا گھر ہیں کیا ؟
اس بات پہ صنم بیگم نے کہا ۔۔۔
ہاں ان کی طبیعت ٹھیک نہیں ہے ۔۔۔
کنول نے کہا ۔۔۔
اچھاااا۔امی میں اپنے کمرے میں جا رہی ہوں کھانا بعد میں کھاؤں گی ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول کمرے میں آ ئ کپڑے چینج کر کے لیٹی تو اپنے کی خیالوں کی دنیا میں گھوم ہو گئ ۔۔۔
اچانک ہی کنول کی آ نکھوں کے سامنے کچھ مناظر آ نے لگے ۔۔۔۔
ریاض صاحب کو دو کالے لباس میں موجود عجیب سے انسان نما وجود نے پکڑ رکھا ہے اور وہ ریاض صاحب کو مارنے پہ تلے ہیں ۔۔۔
کنول اچانک ہی اذان کے آ واز پر اپنے خیالات سے واپس آ ئ تو اس نے سوچا ۔۔۔۔
اللّٰہ یہ ہو کیا رہا ہے یہ سب نظر آ نا کیا ہے ۔۔شاہد شیطان مجھے اللّٰہ کے ذکر سے دور کر رہا ہے ۔۔۔
کنول یہ سب سوچتے ہی اٹھی اور وضو کر کے نفل پڑھنے لگی ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمرے میں اندھیرا تھا بہت ۔۔۔موم بتیوں کو جلا کر گول دائرے کی صورت میں رکھا ہوا تھا اور اس دائرے میں وہ شخص بیٹھا اپنا عمل کرنے میں مصروف تھا ۔۔اس کے اردگرد نا پاک اور حرام جانوروں کے کٹے ہوئے جسم کے اعضاء پڑے تھے اور پاس ہی آ گ جل رہی تھی ۔ وہ شخص کچھ منتر پڑھ کر ساتھ ہی ریت اٹھا کر آ گ میں ڈالے جا رہا تھا ۔اچانک ہی ایک دھواں اٹھا اور ایک وجود کالے لباس میں ملبوس ظاہر ہوا ۔۔۔
منتر پڑھتے ہوئے وہ شخص روکا اور بولا ۔۔۔
آ گئے تم ۔۔۔لو یہ تہمارے سوغات کھا لو اور پھر تم سے کچھ اہم بات کرنی ہے ۔۔۔۔
وہ وجود ان ناپاک چیزوں کو کھانے لگا ۔۔۔
کھانے بعد وہ شخص بولا ۔۔۔
خنزر انسانی روپ میں آ ؤ ۔۔۔
اسی وقت وہ وجود انسانی روپ میں آ یا اور بولا ۔۔۔
کیا حکم ہے سرکار ۔۔۔
وہ شخص بولا ۔۔۔
خنزر جو کام دیا تھا وہ ہو رہا ہے کہ نہیں ۔۔۔
اس بات ہے وہ وجود بولا ۔۔۔
سر کار جو آ پ نے کل دیا تھا وہ میں کر رہا ہوں لیکن ۔۔۔
وہ شخص بولا ۔۔۔
لیکن کیا ۔۔۔
خنزر بولا ۔۔۔
اس آ دمی کے گھر ایسا کوئ ہے جو روحانی طاقت رکھتا ہے ۔اور اس کی وجہ سے وہ آ دمی میرے کچھ وار سے بچ جاتا ہے ۔۔۔
وہ شخص بولا ۔۔۔
خنزر تم نے اس انسان کو پاگل کرنا ہے اور اس کو بچانے کے لیے جو بھی آ ئیے اسے اس قابل مت چھوڑنا کہ وہ کچھ کر سکے ۔۔۔۔
خنزر نے یہ سب سنا تو بولا ۔۔۔
جو حکم سرکا ر ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول کمرے میں بیٹھی تھی پنے کپڑے تہہ لگا رہی تھی احمد کمرے میں آ یا اور بولا ۔۔۔
موٹی آ جاؤ بھائ آ سکریم لائے ہیں کھا لو ۔۔۔
کنول نے غصے سے گھورا اسے اور کہا ۔۔۔
سانڈ تم چپ کرو ۔۔۔
احمد ہنسا کنول کا اسے سانڈ کہنے پر ۔۔۔۔
احمد نے اس کے بال کھینچے اور منہ چڑاتا ہوا کمرے سے باہر بھاگا ۔۔۔۔
کنول اس کے پیچھے گئ ۔۔۔
شہریار صحن میں کھڑا تھا ۔۔اس نے جب ان دونوں کو بھاگتا دیکھا تو بولا ۔۔۔
تم دونوں نہیں سدھرنے والے ۔۔۔
کنول نے روک کر کہا ۔۔۔
بھائ اس نے میرے بال کھینچے ۔۔۔
احمد نے ہنس کر کہا ۔۔۔
بھائ میں جب تک ایسے نہ تنگ کرو مجھے مزا نہیں آتا ۔۔۔
شہریار نے یہ سنا تو کہا ۔۔۔
احمد نہ تنگ کیا کرو اسے ۔۔۔
گڑیا میں نے تہماری فیس جمع کرا دی ہے اور پیپرز تہمارے ایک مہینے بعد ہیں نا؟
کنول نے بات سنی اور کہا ۔۔۔
جی بھائی شکریہ بھائ ۔۔۔
اچانک ہی وہ عجیب سی آ واز پر چونکے ۔۔۔
تینوں نے کمرے میں جا کر دیکھا تو ریاض صاحب بیڈ پے اوندھے منہ پڑے تھے اور ان کے منہ سے بہت ہی عجیب آ وازیں نکل رہیں تھیں ۔۔۔۔
شہریار نے آ گے بڑھ کر ریاض صاحب کو ہلایا ۔اور کہا ۔۔۔
بابا کیا ہوا ۔۔۔۔
ریاض صاحب نیم بے ہوشی کی حالت میں تھے ۔انہعں نے فوراً آ نکھیں کھولیں اور گھورنا شروع کیا ۔۔۔۔
صنم بیگم بھی کمرے میں آ ئیں ۔۔۔
شہریار نے دوبارہ ریاض صاحب کو کندھے سے ہلایا ۔۔۔۔
تو ریاض صاحب نے اتنے زور سے ہاتھ جھڑکا شہریار ر کا ہاتھ بیڈ کراؤن سے لگا ۔۔۔۔
ریاض صاحب نے عجیب سی آ وازیں نکال کر شور کرنا شروع کیا ۔۔۔
آ وازیں اتنی اونچی تھیں کہ کمرے میں موجود سب کو کانوں پہ ہاتھ رکھنا پڑا ۔۔۔۔
کنول نے اسی وقت دیکھا ۔۔۔
ایک کالا سایہ چلتا ہوا ایا اور اس کے باپ کے پاس آ کر غائب ہو گیا ۔۔۔۔
کنول نے یہ دیکھا تو اسے خوف آ نے لگا ۔اس نے فوراً کہا ۔۔۔۔
بابا کچھ نہیں ہو گا آ پ کو ۔۔۔
یا اللّٰہ رحم ۔۔۔
ریاض صاحب کو اسی وقت جھٹکا لگا اور وہ بے ہوش ہو کے گر پڑے ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کمرے میں موجود وہ شخص آ نکھیں بند کیے سب دیکھ رہا تھا ۔۔۔
خنزر اچانک حاضر ہوا تو وہ شخص بولا ۔۔۔۔
ہممممم سب دیکھ لیا ہے میں نے ۔۔۔
اتنا جھٹکا لگانا کافی ہے ابھی باقی کچھ دن بعد ۔۔۔
خنزر نے اس بات پہ کہا ۔۔۔
جو حکم سرکا ر ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ ہسپتال میں کھڑے تھے ڈاکٹر چیک اپ کر کے باہر نکلا اور انہیں دیکھ کر بولا ۔۔۔
سب ٹھیک ہے میرے خیال میں انہوں نے کوئ ٹینشن لی ہے ۔۔اپ تھوڑی دیر بعد انہیں لے جانا ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول اور صنم بیگم گھر میں پریشان کھڑے تھے ۔۔۔کنول کو باربار اس سایے کا خیال آ رہا تھا ۔۔۔۔
اس دوران احمد اور شہریار ریاض صاحب کو لے کر گھر میں داخل ہوئے۔۔۔۔
دونوں نے ہی انہیں کمرے میں لیٹایا ۔۔۔۔
شہریار اور احمد کمرے سے باہر آ ئیے تو شہریار نے کہا ۔۔۔
امی پریشان نہ ہوں بابا ٹھیک ہیں اب ۔۔۔۔
کنول نے باپ کو دیکھا اور اس کے دل سے دعا نکلی ۔۔۔
یااللہ میرے بابا کو سلامت رکھ ۔۔۔۔۔
کنول نے شہریار کو کہا ۔۔۔
بھائ میری بات سنیں ۔۔۔۔
شہریار نے اسے دیکھا اور کہا ۔۔۔۔
بولو گڑیا کیا بات ہے ۔۔۔
کنول نے شہریار کو دیکھا اور کہا ۔۔۔
بھائ وہ میں نے آ ج بابا کے پاس کچھ دیکھا ہے ۔۔۔
شہریار نے پریشان ہو کر اسے دیکھا ۔۔۔
کنول نے بات جاری کرتے ہوئے کہا ۔۔۔
بھائ مجھے نہیں پتہ مجھے کیوں نظر آ یا یہ سب لیکن مجھے کچھ ٹھیک نہیں لگ رہا ۔۔۔۔
شہریار نے بات سنی تو کہا ۔۔۔
گڑیا تم فکر نہ کرو میں کچھ کرتا ہوں ۔۔۔۔
___
شہریار کنول کی بات سن کر کمرے میں آ یا تو احمد بھی ادھر چلا آ یا ۔۔۔۔
شہریار کو پریشان دیکھ کر احمد بولا بھائ کیا ہوا ہے؟ ۔۔۔
شہریار نے احمد کی بات سن کر کہا ۔۔۔۔
احمد جاؤ امی کو بلا لاؤ اور کنول کے پاس بیٹھ جا نا وہ تھوڑا پریشان ہے ۔۔۔۔
احمد اچھا کہتا کمرے سے باہر چلا گیا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول ریاض صاحب کے پاس بیٹھی تھی اور احمد صنم بیگم کو شہریار کی بات بتا کے کنول کے پاس ہی بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
صنم بیگم شہریار کے پاس آ ئیں اور پوچھا ۔۔۔۔۔
کیا بات ہے بیٹا ۔۔۔۔
شہریار نے کہا ۔۔۔۔
امی مجھے ایک بات بتائیں کیا کنول کو پھر سے کچھ نظر آ رہا ہے ؟
اس بات پہ صنم بیگم بولیں ۔۔۔
ہاں پچھلے کچھ دنوں سے سے کچھ نظر آ دیا ہے ۔۔۔۔
شہریار نے پریشانی کے عالم میں ماں کو دیکھا اور کہا ۔۔۔
امی آ پ نے پہلے کیوں نہیں بتایا مجھے آ پ کو پتا ہے نا بابا جی نے کیا کہا تھا ۔۔۔
صنم بیگم نے بات سن کر کہا ۔۔۔۔
ہاں مجھے یاد ہے انہوں نے کیا کہا تھا۔اس لیے میں اسے اگنور کرنے کو کہتی ہوں ۔۔۔
شہریار نے کچھ سوچتے ہوئے کہا ۔۔۔
امی خیال رکھیں کنول کو کچھ پتہ نہ چلے میں نہیں چاہتا اس کے دماغ میں کو کوئ بھی ایسی بات آ ئیے ۔۔۔۔
صنم نے سن کر کہا ۔۔۔
ٹھیک ہے بیٹا ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول باپ کے پاس بیٹھی تھی ریاض صاحب سو رہے تھے اس نے ان کا ہاتھ اپنے ہاتھ میں لیا اور دل میں ہی کہا ۔۔۔۔
بابا میں آ پ کو کچھ نہیں ہونے دوں گی ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ دن بعد ۔۔۔۔
کنول کالج کے گروانڈ میں بیٹھی پڑھ رہی تھی ۔۔۔پیپرز ہونے والے تھے تو پہلے ہی تیاری میں مصروف تھے سب ۔۔۔۔
شمائلہ آ ج نہیں آ ئ تھی تو کنول اکیلے ہی بیٹھی تھی ۔۔۔۔
اچانک ہی کیسی نے کنول کو نام لیا ۔۔۔
کنول نے چونک کر اردگرد دیکھا تو اسے اپنا وہم لگ اس وہ اگنور کرتی پھر سے پڑھنے لگی ۔۔۔۔
پھر سے اس کا کیسی نے نام لیا ۔۔تو کنول نے نظر اٹھا کہ اردگرد دیکھا ۔۔۔۔تو کوئ نہیں تھا ۔۔۔
کنول نے فوراً آ یت الکرسی پڑھی اور کلاس میں چلی گئ ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
ریاض صاحب دوکان پہ بیٹھے تھے ۔۔۔وہ اٹھ کر اندر گودام میں گئے ۔۔۔۔
تھوڑی دیر ہی گزری تھی جب انہیں یوں لگا کوئ ان کا گلہ دبا رہا ہے وہ زور سے چیخے ۔۔۔۔
ان کی چیخ سن کر شہریار گودام میں گیا تو ۔۔۔
ریاض صاحب دیوار سے لگے اپنے گلے پہ ہاتھ رکھے کچھ چھڑانے کی کوشش کر رہے تھے ۔۔۔۔
شہریار نے فوراً ریاض صاحب کو جھنجھوڑ ا۔۔
اسی وقت ریاض صاحب کے گلے پر دباؤ ختم ہوا تو وہ ہوش میں آ ئیے ۔۔۔۔
شہریار نے پوچھا ۔۔۔۔
بابا کیا ہوا تھا ۔۔۔۔
ریاض صاحب نے اس بات پہ کہا ۔۔۔۔
گلے میں دباؤ پر رہا تھا ۔۔۔
شہریار نے کہا ۔۔۔
بابا آ پ پریشان نہ ہوں آ پ ا ئیں باہر آ کر بیٹھیں ۔۔۔۔
ریاض صاحب باہر آ کر بیٹھے ۔۔۔
سامنے وہ شخص بیٹھا ریاض صاحب کی حالت دیکھ کر دل ہی دل میں خوش ہوا اور سوچنے لگا ۔۔۔
کر دیا کام بابا نے ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
دوپہر میں سب گھر میں تھے کھانا کھا کر سب ہی اپنے اپنے کمرے میں آرام کر رہے تھے سوائے کنول کے وہ بیٹھ کے پڑھ رہی تھی ۔۔۔
کنول کو بھوک لگنے لگی تو وہ کچن سے کچھ کھانے کے لیے لینے آ ئ ۔۔۔
کھانا پلیٹ میں ڈال کر وہ کمرے میں جانے لگی تو اسے محسوس ہوا کہ چھت پہ کوئ ہے ۔۔۔
وہ یہ دیکھنے کے لیے باہر صحن میں آ ئ ۔۔۔اوپر اس نے دیکھا تو اس کے ہوش اڑ گئے ۔۔۔۔
ریاض صاحب جانوروں کی طرح رینگتے ہوئے چھت کے آ خری سرے پہ چل رہے تھے ۔۔۔
کنول یہ سب اس لیے دیکھ پائ کیوں چھت کا آ خری سرا صحن کی طرف تھا ۔۔۔
کنول نے فوراً اونچی آ واز میں شہریار کو بلایا ۔۔۔۔
بھائ ۔جلدی آ ئیں ۔۔۔شہریار بھائی ۔۔۔۔امی ۔۔۔۔
شہریار ابھی گہری نیند میں نہیں تھا اس نے کنول کی آ واز سنی تو فورا صحن میں آ یا…
اس نے آ تے ہی پوچھا۔۔۔۔
کیا ہوا ہے ؟
کنول نے اوپر کی طرف اشارہ کیا ۔۔۔
شہریار نے اوپر دیکھا ۔۔۔
اس نے فورا احمد کو آ واز دی اور اوپر بھا گا ۔۔۔۔
احمد اور صنم بیگم باہر آ ئیے تو وہ بھی سب دیکھ کر حیران ہو گئے ۔۔۔
احمد اوپر بھاگا ۔۔۔۔
شہریار اور احمد بہت مشکل سے ریاض صاحب کو نیچے لے آ ئے۔۔۔۔۔
ریاض صاحب کو کمرے میں لے کر آ ئیے دونوں تو ریاض صاحب نے چلانا شروع کر دیا ۔۔۔۔
ریاض صاحب کے جسم جو جھٹکے لگنے لگے ۔۔۔۔
سب ہی یہ حالت دیکھ کر پریشان ہونے لگے ۔۔۔
شہریار اور احمد نے ریاض صاحب کو پکڑا تو ریاض صاحب نے اسے گھورا ۔۔۔
کنول نے ان کی آ نکھوں کو دیکھا تو وہ بالکل ویسے ہی تھیں جیسے اس نے اس وجود کی دیکھیں تھیں ۔۔
کنول نے اسی وقت زور سے کہا ۔۔۔۔
اللّٰہ پاک حفاظت فرمائیے ۔۔۔۔
ریاض صاحب نے آ نکھیں بند کیں ۔۔۔۔پانچ منٹ بعد ہی ریاض صاحب ہوش میں آ ئیے اور سب کو دیکھتے ہوئے بولے ۔۔۔۔
یہ مجھے کیوں پکڑ رکھا ہے اور کیا ہوا ہے ۔۔۔۔
شہر یار نے کہا ۔۔۔
بابا آ پ کو کچھ یاد نہیں آپ چھت پہ کیسے چلے گئے ؟۔۔۔۔
ریاض صاحب نے حیران ہو کر شہریار کو دیکھا سور کہا ۔۔۔۔
میں چھت میں کیوں جاؤں گا میں تو سو رہا تھا ۔۔۔۔
شہر یار نے سب بتایا ریاض صاحب کو ۔۔۔۔
ریاض صاحب نے سن کر کہا ۔۔۔
پتہ نہیں کیا بول رہے ہو تم سب ۔۔۔۔
شہریار نے کہا ۔۔۔
بابا آ پ پریشان نہ ہوں آ رام کریں ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ شخص خوش ہو کر آ ستانے میں داخل ہوا ۔۔۔
کمرے میں داخل ہوتے ہی اس نے سلام کیا اور کہا ۔۔۔
واہ سرکار آ پ نے نے کمال کر دیا ۔۔۔۔
تخت پہ بیٹھا وہ انسان مسکرایا اور بولا ۔۔
تیمور تو ہمارا پرانا مرید ہے بس تو فکر نہ کر دیکھ آ گے آ گے ہوتے کیا ہے ۔۔۔۔
تیمور نے قہقہہ لگایا اور بولا ۔۔۔
سرکار اسے بچانے جو آ ئیے اس کا بھی حال برا کیجیے گا ۔۔۔۔
وہ شخص بولا ۔۔۔
فکر نہ کر ہو جائے گا سب ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔
ریاض صاحب کی طبیعت کا سب کو پتہ چلا تو سب ہی ملنے آ رہے تھے ۔۔
کنول کے چھوٹے چچا اور اس کی بیوی بھی ملنے آ ئیے ۔۔۔۔
اس کی چچی نے کنول کو کتاب اٹھا کے پڑھتا دیکھا تو بولی ۔۔۔۔
ہائے ہائے کیسی بیٹی ہو تم باپ بیمار ہے اور تہمیں پڑھائ کی پڑی ہے ۔
گھر میں اس وقت صرف صنم بیگم ، ریاض صاحب اور کنول تھے ۔
وہ بولی اٹھو یہ وظیفہ پڑھو جلدی باپ پے۔۔۔
کمرے میں اس کی چچی ،چچا اس کا باپ اور کنول ہی تھے ۔۔۔
صنم بیگم کچن میں تھیں ۔۔۔
اس نے اپنی چچی کی یہ بات سنی تو کہا ۔۔۔۔
چچی یہ وظیفہ ایسے پڑھنے سے کچھ ہو گا تو نہیں ۔۔۔۔
اسکی چچی یہ بات سن کر بولیں ۔۔۔
تہمیں تو باپ سے محبت ہی نہیں ہے اتنا ڈر رہی ہو کچھ نہیں ہوتا پڑھو ابھی یہ اور پانی میں دم کر کے پلا باپ کو ۔۔۔
کنول نے پہلے ریاض صاحب کو دیکھا اور پھر چپ کر کے وضو کرکے آ ئیے اور پڑھنے لگی ۔۔۔۔
اس نے وہ وظیفہ پڑھ کر باپ کو پانی پلایا ۔۔۔
اس کی چچی دل ہی دل میں خوش ہوئیں ۔۔اور دل میں کہنے لگیں ۔۔۔
اب آ ئیے گا مزا آ گر باپ پہ کچھ ہو گا اس پہ ضرو آ ئیے گا اب اس کی باپ کی دولت پہ اس کا کوئ حق نہیں ہو گا ۔ آ مزا آ گا ۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آ ستانے پہ موجود سب باہر گئے تو اندر کچھ لوگ آ ئیے وہ تخت پہ بیٹھا تھا جب اس نے ان کو دیکھا تو بیٹھنے کو کہا ۔۔۔
وہ لوگ بیٹھے اور ان میں سے ایک آ دمی اٹھا اور بولا ۔۔۔
الطاف بھائی آ پ تو بہت قابل ہیں میں آ ج باہر جا رہا ہوں یہ میرے آ دمی بھی آ پ کا شکریہ ادا کرنے آ ئیں ہیں ۔۔۔۔
الطاف نے بات سن کر کہا ۔۔۔
ہاں ہاں مجھے پتہ چل گیا ہے سب تم جو نظرانہ لے کر آ ئیے ہو وہ میرے بندوں کو دے دو مجھے ابھی کام میں کل بات ہو گی ۔۔۔۔
وہ اٹھ کے کمرے میں آ یا تو اسے کچھ ہی دیر ہوئ تھی ۔۔۔
کہ اسے چیخ کی آ واز آ ئ جب اس نے اردگرد دیکھا تو اسے خنزیر(جن) نظر آ یا جو کہ تھوڑا زخمی تھا اس کی یہ حالت دیکھی تو وہ بولا ۔۔۔
خنزر کیا ہوا ۔۔۔
خنزر انسانی روپ میں تھا وہ بولا ۔۔۔
سرکار میں نے کہا تھا کہ اس کے گھر میں کوئ ہے روحانی طاقت والا ۔۔۔اج اس کی بیٹی نے اس کو بچانے کے لیے وظیفہ پڑھ کر اس کا پانی پلایا س وجہ سے میری یہ حالت ہے ۔۔۔۔
اس پہ الطاف غصے میں بولا ۔۔۔
اب دیکھو کیا کرتا ہوں میں ۔۔
الطاف نے کچھ پڑھنا شروع کیا تو ا یک دھواں اٹھا تو ایک آ واز آ ئ ۔۔۔۔
کیسے یاد کیا مجھے ۔۔۔
الطاف بولا ۔۔۔
خلر (جن)اب تہمیں میں شکار دیتا ہوں جب تک خنزیر ٹھیک نہیں ہوتا تم اس کو اتنا کمزور کر دو کہ وہ کچھ نہ کر سکے ۔۔۔۔
وہ جن خلر بولا ۔۔۔
سمجھیں سرکار ہو گیا کا م ۔۔
____
خلر(جن) بولا ۔۔۔۔
سرکار ہو جائے گا کام آ پ بتا دیں کرنا کس کے ساتھ ہے؟ ۔۔۔
الطاف بولا ۔۔۔
ریاض نام ہے اس آ دمی کا اسے اذیت دینی ہے اور اگر وہ لڑکی اس کی بیٹی اگر درمیان میں آ ئیے تو اسے اتنا کمزور کر دینا کہ وہ کچھ کر نہ سکے اس نے میرے غلام کے ساتھ یہ سب کیا اسے چھوڑوں گا نہیں میں ۔۔۔اور تب تک کمزور کرنا جب تک خنزر ٹھیک نہیں ہو جاتا ۔اس کے بعد خنزر ہی اس لڑکی سے بدلہ لے گا ۔۔۔۔۔
خلر( جن) نے یہ سب سن کر کہا ۔۔۔۔
ٹھیک ہے سرکار۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وظیفے کا پانی پلانے کے بعد ریاض صاحب کو اپنی طبیعت بہتر محسوس ہوئی ۔۔۔۔۔
کنول نے اپنی ماں کو نہ بتایا کہ اس نے اپنے باپ کو وظیفے کا پانی پڑھ کر پلایا ہے ۔۔۔
کنول کمرے میں آ ئ اسے تھکن محسوس ہوئی تو وہ بیڈ پہ لیٹ گئ ۔۔
اچانک اسے کیسی چیز کی آ واز آ ئ اس نے اٹھ کر دیکھا تو ۔۔۔۔۔
کالے لباس میں ایک وجود کھڑا ہے جس کا کتے کی طرح اور باقی جسم بھیڑیے کی طرح ہے ۔۔۔۔
کنول اس چیز کو دیکھ کر ڈر گئ اور بولی ۔۔۔۔
کون ہو تم ؟
خلر(جن) ہنسا اور بولا ۔۔۔
میں وہ ہوں جس کا تم مقابلہ نہیں کر سکتی تہمارے باپ کو تکلیف دینے میں مزا آ ئیے گا ۔۔۔۔
کنول نے یہ سنا تو غصے میں بولی ۔۔۔
تم میرے باپ کو کچھ نہیں کر پاؤں گے ۔میں کچھ نہیں ہونے دوں گی اپنے بابا کو ۔۔۔۔
خلر طنزیہ ہنسی ہنسا اور بولا ۔۔۔۔
یہ تو وقت بتائے گا کہ کیا ہو گا ۔۔۔۔
یہ بات کہتے ہی وہ غائب ہو گیا ۔۔۔
کنول حیرت میں ادھر ادھر دیکھنے لگی ۔۔۔کنول کو اچانک ہی جسم میں جھرجھری سی ہوئ ۔وہ سوچنے لگی ۔۔۔
یہ میرا وہم تھا یا حقیقت ؟
لیکن جو بھی تھا میں بابا کو کچھ نہیں ہونے دوں گی ۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔
کنول نے اس بات کے بارے میں کیسی کو کچھ نہ بتایا ۔۔۔۔
پیپرز شروع ہونے والے تھے۔۔ک وہ تیاری میں مصروف ہو گئ ۔۔ساتھ ساتھ وہ روز نماز پڑھ کر اللّٰہ سے دعا کر تی اپنے باپ کی حفاظت کی ۔۔۔
یہ دعا اس کے باپ کو اس جن سے محفوظ رکھ رہی تھی ۔۔۔۔
خلر جن کو کنول اپنے کام میں رکاوٹ لگ رہی تھی اس نے کنول کو مزا چلانے کا سوچا۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ دن بعد ۔۔۔
کنول بیٹا میں سبزی لینے جارہی ہوں تم دروازے کو بند کر لو اچھے سے ۔۔۔
صنم بیگم نے باہر جاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔
کنول نے کہا ۔۔۔۔
اچھااا امی ۔۔۔۔
کنول نے صنم بیگم کے جاتے ہی دروازے کو بند کیا۔۔۔
کمرے میں آ کر دوبارہ سے پڑھنے لگی۔۔۔۔
دروازہ کیسی نے کھٹکھٹایا ۔۔۔۔
ک ول دروازے کے پاس گئ اور پوچھا ۔۔۔۔
کون ہے ؟
باہر سے ایک بچہ بولا ۔۔۔
باجی میں ہوں
عمر ۔۔۔
کنول نے دروازہ کھولا توعمر بولا ۔۔۔
باجی یہ لیں کھیر وہ انکل نے بانٹی ہے تو میں دینے آ گیا ۔۔۔۔
اس سے پہلے کنول کچھ پوچھتی عمر بھاگ گیا ۔۔۔
کنول کھیر لے کے اندر آ ئ کھیر ڈسپوزل کی ڈبی میں تھی ۔۔۔
کنول نے کمرے میں آ تے ہی بغیر بسمہ اللّٰہ پڑھے اسے کھانا شروع کر دیا ۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: