Mann Musafir Novel By Qanita Khadija – Episode 9

0
من مسافر از قانتہ خدیجہ – قسط نمبر 9

–**–**–

’’ہالا!!‘‘ زکریہ آپا نے اسے پکارا جو انہیں اگنور کیے اپنے کمرے کی جانب گامزن تھی۔۔۔۔۔۔ پچھلے ایک مہینے سے اسکی بول چال بند تھی۔۔۔۔ اور ایک مہینے میں کوئی ایک ایسا دن نہیں تھا جب عبداللہ نے اس سے بات کرنے کی کوشش نا کی ہوں
’’جی؟‘‘ اسنے پوچھا
’’ادھر آؤ‘‘ انہوں نے پکارا تو وہ ان کی جانب چل دی
’’یہاں بیٹھو‘‘ اپنے پہلو میں اسے بیٹھنے کا اشارہ کیا
’’نہیں میں ٹھیک ہوں آپ بولے‘‘ اس نے انکار کیا
’’بات لمبی ہے بیٹھ جاؤ‘‘ انکی بات پر ہالا بنا کچھ بولے بیٹھ گئی
’’ناراض ہوں؟‘‘ انہوں نے محبت سے بالوں پر ہاتھ پھیرتے پوچھا
’’آپ کو فرق پڑتا ہے؟‘‘ ہالا کے شکوے پر وہ مسکراہ دی
’’بلکل پڑتا ہے‘‘
’’تو چھپایا کیوں۔۔۔۔۔۔ کیوں نہیں بتایا کہ آپ پہلے سے جانتی ہے اسے۔۔۔۔ کیا میری تکلیف، میرا دکھ، میرا سسکنا بے معنی تھا‘‘ اسنے شکوہ کیا
’’ضروری تھا ہالا‘‘ انہوں نے ایک لمبی سانس خارج کی
’’کیا میری تکلیف سے بھی زیادہ ضروری۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آپ ایک ایسے شخص سے ملتی رہی، جس نے آپ ہی کی بہن کے جذبات کا مزاق بنایا انہیں استعمال کیا، وجہ صرف ایک فضول سی شرط۔۔۔۔۔۔۔ جسکا نا کوئی سر تھا اور ناہی کوئی پیر۔۔۔۔ بکواس۔۔۔۔۔‘‘ اسکا لہجہ غصیلہ تھا
’’ہوسکتا ہے کہ جو وجہ تمہارے لیے بےمعنی ہوں وہ اس کے لیے خاص ہوں۔۔۔۔۔۔ اس سے ایک بار بات تو کروں‘‘ انہوں نے پیار سے سمجھایا
’’نہیں کرنی مجھے کوئی بھی بات۔۔۔۔۔۔ صرف معافی چاہیے وہی کافی ہے۔۔۔۔۔۔ اس کے علاوہ کچھ نہیں‘‘ ہالا کا سر نفی میں ہلا
’’اتنی بےرخی بھی اچھی نہیں ہالا حسن‘‘ انہوں نے تنبیہ کی
’’اور جو بےرخی اسنے اپنائی۔۔۔۔۔۔۔ اسکا خط پڑھا تھا نا آپ نے کتنے آرام سے اس نے کہہ دیا کہ میں غلط تھی۔۔۔۔۔۔ پڑھا تھا نا آپ نے کہ کس قسم کی لڑکیوں سے اس نے مجھے تشبیہ دی تھی۔۔۔۔۔۔ جو آج کسی کی تو کل کسی کی۔۔۔۔۔ اسکے باوجود بھی آپ چاہتی ہے کہ میں اسے سنو!!۔۔۔۔۔۔ کیا اس کے لیے اتنا کافی نہیں کہ میں اسے معاف کرنے کو تیار ہوں۔۔۔۔۔ مگر اس کے آگے کچھ نہیں‘‘ ہالا تو مانو پھٹ پڑی تھی۔۔۔۔۔۔ اسکا لہجہ حد درجہ سخت تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ زکریہ آپا صرف اس پھٹتے لاوا کو دیکھ رہی تھی جبکہ مین دروازے پر کھڑا عبداللہ وہی سے مڑ گیا۔۔۔۔ وہ تو صرف آج ہالا سے سب کچھ کلیر کرنے آیا تھا مگر شائد وہ موقع گنوا چکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ عمیر نے سہی کہاں تھا اسے بتا دینا چاہیے تھا۔۔۔۔۔۔۔ مگر اب وہ کس سے اپنے دل کا غم ہلکا کرتا۔۔۔۔۔ عمیر سے؟ جو اسے چھوڑ کر خود زمین میں جاسویا۔۔۔۔۔ جانا تو اسے تھا پھر عمیر کیوں۔۔۔۔۔۔ آج ایک بار پھر اسکی آنکھیں بھیگ اٹھی تھی۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر پہنچتے ہی وہ اپنے کمرے میں بند ہوگیا تھا۔۔۔۔۔ ماضی کی فلم نظروں کے سامنے چلنے لگی
’’ارے عبداللہ تم اٹھ گئے؟‘‘ عمیر کو جو خبر ڈاکٹر نے سنائی تھی وہ اسے برداشت نہیں کرپایا تھا اسی لیے دل ہلکا کرنے باہر چلا گیا تھا اور اب واپس آیا تو عبداللہ کو جاگتے پایا
’’مجھے کیا ہوا ہے عمیر؟‘‘ عبداللہ نے ٹھوس لہجے میں پوچھا، ایک پل کو تو عمیرگڑبڑا گیا
’’ارے وہی فوڈ پوائزنگ اور موسمی بخار۔۔۔۔۔۔ بس لالے کچھ دن میں ٹھیک ہوجائے گا میرا یار‘‘ عبداللہ سے زیادہ وہ خود کو تسلی دے رہا تھا
’’لیور کینسر۔۔۔۔۔۔ لیور کینسر ہے نا مجھے؟‘‘ عبداللہ نے بھیگی آنکھوں سے پوچھا تو عمیر نے اسے زور سے گلے لگا لیا
’’تجھے کچھ نہیں ہوگا۔۔۔۔۔۔ کچھ بھی نہیں‘‘ عمیر کا لہجہ بھیگا ہوا تھا
’’مجھے گھر جانا ہے عمیر۔۔۔۔ بھائی اور فریحہ سے ملنا ہے‘‘ اسنے شکست خور لہجے میں درخواست کی
یہ وہی لوگ تھے جن سے وہ ایک بار سب تعلق ، سب ناطے توڑ چکا تھا
’’ہاں ہم چلے گے ایک دو دن میں‘‘ عمیر اس سے الگ ہوئے بولا
’’ایک دو دن نہیں عمیر۔۔۔۔۔۔ آج ابھی۔۔۔۔۔۔ اب زندگی کا۔۔۔۔۔۔۔ زندگی کا بھروسا نہیں رہا‘‘ عبداللہ کی بات پر عمیر نے بامشکل اپنے آنسوؤں پر قابو پایا
’’ٹھیک ہے جیسی تیری مرضی۔۔۔۔۔ مگر ہالا؟‘‘ عمیر نے پوچھا تو ایک تلخ مسکان عبداللہ کے ہونٹوں پر آگئی۔
’’وہ سب مین سنبھال لوں گا۔۔۔۔۔ تو بس ٹکٹس بک کروا‘‘ عبداللہ نے جواب دیا تو عمیر نے سر ہلادیا
پھر اسی دن وہ عمیر کے ساتھ لاہور سے اسلام آباد آگیا تھا
حسیب اور فریحہ تو عبداللہ کی حالت برداشت ہی نا کرپائے، مگر ایک اور ہستی تھی جس کی جان نکل گئی اسے ایسے دیکھ کر۔۔۔۔۔۔۔ اسکی ماں۔۔۔۔۔۔۔ جن سے اسے سخت نفرت تھی۔۔۔۔۔۔۔ جن کی شکل بھی وہ دیکھنا نہیں چاہتا تھا۔۔۔۔۔ جو قاتل تھی اسکے باپ کی۔۔۔۔۔۔ نا صرف اسکے باپ کی بلکہ انکی عزت ، انکے وقار کی بھی
’’دیکھیے آپ کے پیشنٹ کی حالت بہت کریٹیکل ہے ہمیں جلد از جلد انکا آپریٹ کرنا ہوگا۔۔۔۔۔ ہی نیڈز آ ڈونر‘‘ ڈاکٹر کی بات پر وہ سب سن رہ گئے۔۔۔۔۔ عبداللہ کی حالت دن بدن بدتر ہوتی جارہی تھی۔۔۔۔ سر کے بال بھی گرنا شروع ہوگئے تھے۔
فریحہ، حسیب، عمیر، ھدی۔۔۔۔۔۔۔۔ غرض سب نے اسکا خوب خیال رکھا تھا
’’فیملی اللہ کی سب سے بڑی نعمت ہوتی ہے‘‘ اسے ہالا کی بات یاد آئی تو ایک موتی آنکھ ٹوٹا۔۔۔۔۔۔۔ وہ جب سے یہاں آیا تھا ایک دن ایسا نہیں گزرا تھا کہ جب اسے اسکی یاد نا آئی ہوں۔۔۔۔۔ وہ علی سے مسلسل کانٹیکٹ میں تھا مگر نمبر نیا تھا۔۔۔۔۔۔ جب علی نے اسے بتایا کہ ہالا نے اسکا نمبر مانگا ہے تو عبداللہ کے مشورے پر ہی اسنے عبداللہ کا پرانا نمبر ہالا کو دیا تھا
وہ علی سے ہالا کی پل پل کی رپورٹ مناگتا۔۔۔۔۔۔ وہ خط بھی علی کے ذریعے اس نے ہالا کے ہاسٹل بھجوایا تھا۔۔۔۔۔
اسے یہ بھی معلوم تھا کہ اسامہ مسلسل ہالا کے پیچھے تھا مگر جب اسے ہالا کے انکار کے بارے میں معلوم ہوا تو دل میں ایک درد سا اٹھا۔۔۔۔۔ ایسا نہیں ہونا چاہیے تھا۔۔۔۔۔۔ ہالا کو اسامہ کو قبول کرنا تھا۔۔۔۔۔ ہالا کو اسے بھول جانا تھا۔۔۔۔۔۔ مگر اب عبداللہ اس تڑپ، اس احساس کو محسوس کرسکتا تھا جو ہالا اسکے لیے کرتی تھی۔۔۔۔۔ ہالا کا نام ہی اسامہ کیساتھ اسکے لیے تکلیف کا باعث تھا۔۔۔۔۔
اسنے خدا سے خود کو اتنا نہیں مانگا تھا جتنا ہالا کو مانگا تھا۔۔۔۔۔ بےشک وہ زبان سے نا کہتا مگر دل میں صرف ہالا تھی۔۔۔۔۔ اللہ نے تو اسکی ان کہی دعائیں سن لی تھی۔۔۔۔۔۔۔ اسکے مانگنے سے پہلے ہی اسکی دعا کو قبول کرلیا تھا
عمیر نے اسے بہت بار سمجھایا کہ وہ ہالا کو سب سچ بتادے مگر اسے اپنی زندگی کا بھروسا نہیں تھا۔۔۔۔۔ اگر ہالا سچ جان جاتی اور وہ نا رہتا تو پوری زندگی اسکی محبت کے صدقےاکیلے گزار دیتی۔۔۔۔۔ مگر جھوٹ کی بنا پر وہ کبھی نا کبھی تو آگے بڑھ ہی جاتی۔۔۔۔۔۔ عبداللہ بھی بس یہی جاہتا تھا کہ وہ آگے بڑھ جائے۔۔۔۔۔۔۔
انہی بےکیف دنوں میں سے ایک دن ایسا بھی آیا جب عبداللہ کا آپریشن تھا۔۔۔۔ دونڑ کون تھا وہ نہیں جانتا تھا۔۔۔۔۔۔۔ اسکی سرجری کامیاب رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔ مگر ابھی بھی اسے انڈر ابزرویشن رکھا گیا تھا۔۔۔۔۔۔ تقریبا دو ہفتوں بعد عبداللہ کی طبیعت میں سدھار آیا تھا
’’بھائی‘‘ حسیب اس سے ملنے آیا تو عبداللہ اسے دیکھ کر مسکرایا۔۔۔۔۔ مگر حسیب مسکرا بھی ناسکا
’’بھائی کیا ہوا؟‘‘ عبداللہ کو اسکی حالت کچھ ٹھیک نہیں لگی
’’وہ چلی گئی عبداللہ‘‘ حسیب شکستہ لہجے میں بولا
’’کون چلی گئی؟‘‘ عبداللہ کو کچھ سمجھ نہیں آیا
مگر حسیب کی حالت ۔۔۔۔۔۔۔۔ اسکے دماغ میں سب سے پہلے فریحہ کا خیال آیا
’’فریحہ کہاں ہے بھائی؟‘‘ ااس نے بےتابی سے پوچھا
’’وہ ٹھیک ہے عبداللہ‘‘ حسیب کے جواب پر عبداللہ نے شکر کا سانس لیا
’’مگر ماما!! ماما نہیں رہی عبداللہ وہ چلی گئی۔۔۔۔۔۔ ہمیں چھوڑ کر۔۔۔‘‘ حسیب اس سے لپٹ کر رو دیا
’’مطلب؟‘‘ عبداللہ کو ابھی تک اسکی بات سمجھ نہیں آئی تھی
’’تمہیں لیور ماما نے ڈونیٹ کیا تھا عبداللہ۔۔۔۔ انہوں نے تمہیں یہ زندگی دی ہے‘‘ جبکہ عبداللہ تو اپنی جگہ سن ہوگیا
نہیں ایسا نہیں ہوسکتا۔۔۔۔۔۔ وہ ایک مطلبی عورت تھی۔۔۔۔۔ اسکے باپ کو مارنے والی بھلا اسے کیسے بچا سکتی تھی۔۔۔۔۔۔ مگر عبداللہ یہ نہیں جانتا تھا کہ بیوی اور ماں میں بہت فرق ہوتا ہے۔۔۔۔۔
’’یہ۔۔۔یہ خط دیا تھا تمہارے لیے۔۔۔۔ صرف تمہارے لیے‘‘ اسکے ہاتھ میں خط تھمائے حسیب باہر چلا گیا
’’میرے پیارے عبداللہ!!
ماما سے ناراض ہوں نا۔۔۔۔۔۔ جانتی ہوں۔۔۔۔۔۔ تمہارا ناراض ہونا بنتا بھی ہے۔۔۔۔۔۔ میری جان میں جانتی ہوں کہ میں کبھی بھی ایک اچھی بیوی ثابت نہیں ہوئی۔۔۔۔۔۔ مگر تم تو میرے بیٹے تھے۔۔۔۔۔ میری کوکھ سے نکلا ایک ننھا سا وجود تم سے کیسے نفرت کرسکتی ہوں میں۔۔۔۔۔۔ میں نے بہت غلط کیا عبداللہ تمہارے ڈیڈ کے ساتھ۔۔۔۔۔۔ مجھے ایسا نہیں کرنا چاہیے تھا۔۔۔۔۔۔۔ مگر غرور انسان کو کہی کا نہیں چھوڑتا۔۔۔۔۔ مجھے ہمیشہ سے اپنی خوبصورتی اور گھمنڈ رہا۔۔۔۔۔۔۔ میں تمہارے بابا کو اپنے مقابلے میں کچھ نہیں سمجھتی تھی۔۔۔۔۔ ہمیشہ انکی ناقدری کی۔۔۔۔۔۔ ان کی محبت کو اپنایا نہیں۔۔۔۔۔ اور دیکھو مجھے سزا بھی ملی۔۔۔۔۔۔ میں نے اپنے ہاتھوں سے اپنی محبت کو ختم کردیا۔۔۔۔۔۔ میرے بیٹے تمہیں خود سے دور کردیا۔۔۔۔۔ میں اپنے گھمنڈ میں یہ تک بھول گئی کہ اس عظیم شخص نے ایک بیوہ کو نا صرف محبت، عزت اور چھت دی بلکہ اسکے بیٹے کو بھی اپنایا۔۔۔۔ تمہیں اپنا نام دیا۔۔۔۔۔۔ مگر میں!!!!!!!! خیر مجھے معلوم ہے کہ تمہیں مجھ سے نفرت ہے۔۔۔۔۔ میں یہ نفرت کم نہیں کرسکتی مگر کفارا ضرور ادا کرسکتی ہوں۔۔۔۔۔۔ مجھے جینے کا حق نہیں۔۔۔۔۔۔ مگر تمہیں ابھی جینا ہے عبداللہ۔۔۔۔۔ اور ہاں اس لڑکی کو اپنا لوں۔۔۔۔۔ میری طرح خود اپنے ہاتھوں سے اپنی محبت کو خود سے دور مت دھکیلنا۔۔۔۔۔۔ میں نے تو پوری زندگی پچھتاوں میں گزار دی اب تم ایسا نہیں کرنا۔۔۔۔۔۔۔ سچی اور پاکیزہ محبت ہر کسی کا نصیب نہیں ہوتی۔۔۔۔۔۔ اسی کو ملتی ہے جس کی اچھی قسمت ہوتی ہے۔۔۔۔۔ اور اپنی قسمت کو خود اپنے ہاتھوں سے برباد مت کرنا‘‘ خط کے ختم ہونے تک عبداللہ ایک ہی پوزیشن میں بیٹھا تھا
ہاں یہ سچ تھا کہ وہ حسیب کا سگا بھائی نہیں تھا۔۔۔۔۔ ان دونوں کے ماں باپ کی دوسری شادی تھی ایک دوسرے سے مگر حسیب نے کبھی اس وجہ کو ایشو نہیں بنایا۔۔۔۔۔۔ عبداللہ کو ناصرف اس گھر میں خوش آمدید کہاں گیا بلکہ اسے ایک فرد کا درجہ بھی دیا گیا۔۔۔۔ سوتیلے باپ نے سگے باپ سے بڑھ کر چاہا۔۔۔۔۔۔ سوتیلے بھائی نے کبھی بھی سوتیلوں والا رویہ نہیں اپنایا۔۔۔۔۔۔۔ مگر یہ اسکی بدقسمتی تھی کہ اسکی ماں بہک گئی۔۔۔۔۔۔۔ ان کے قدم ڈگمگا گئے۔۔۔۔۔۔۔ اور جب ایک عورت کے قدم ڈگمگاتے ہیں نا تو پورا خاندان اجڑ جاتا ہے۔۔۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عبداللہ کو علی کے ذریعے ہالا کے بارے میں پتہ چلتا تھا مگر ایک دن علی نے اسے بتایا کہ وہ غائب ہوگئی ہے تو عبداللہ کی حالت خراب ہونا شروع ہوگئی۔۔۔۔۔۔۔ علی سے کہہ کر اس نے ہالا کا پتہ کروایا مگر وہ تو یوں غائب تھی جیسے کبھی اسکا وجود ہوں ہی نا۔۔۔۔۔۔۔ عبداللہ کی طبیعت میں بےچینی گھل گئی تھی۔۔۔۔ ہالا کہی نہیں تھی یہ سوچ اسے پاگل کیے ہوئے تھی
’’ایک وقت ایسا آتا ہے جب محبت اپنا آپ منوا لیتی ہے‘‘ ہالا کا کبھی کہا گیا جملہ اسکی سماعت سے ٹکڑایا
ہالا کو ڈھونڈنے کی غرض سے وہ حسیب اور فریحہ کے ساتھ لاہور شفٹ ہوگیا تھا۔۔۔
اسکا دل اس بات کی گواہی دے رہا تھا کہ وہ یہی ہے اسی شہر میں۔۔۔۔۔۔
ایک دن اسے لگا جیسے اس نے ہالا کو دیکھا ہوں۔۔۔۔۔ اسنے پیچھا بھی کیا مگر کال پر جو خبر اسے سنائی گئی۔۔۔۔۔۔ اسکے اوسان خطا ہوگئے۔۔۔۔۔ اسکا دوست اسکا بھائی جس کی شادی میں اسے شریک ہونا تھا، بھنگڑے ڈالنے تھے وہ نہیں رہا۔۔۔۔۔۔۔۔ عبداللہ مزید ڈیپریشن کا شکار ہوگیا تھا۔۔۔۔۔۔ مگر اتنے عرصے میں اس نے ایک بار بھی سیگرٹ کو ہاتھ نہیں لگایا۔۔۔۔۔۔۔۔ اسے صرف ہالا چاہیے تھی اور کچھ نہیں
ماضی کی فلم ختم ہوتے ہی دو موتی ٹوٹ کر اسکی آنکھوں سے بہہ گئے۔۔۔۔۔۔۔۔ اسے ہالا سے بات کرنی تھی۔۔۔۔۔۔ مگر وہ کچھ بھی سننے کو تیار نہیں تھی۔
’’میں تمہارا اور اپنا فیصلہ قسمت پر چھوڑتا ہوں ہالا۔۔۔۔۔۔۔۔ اب جو بھی کرے گا وہی (اللہ) کرے گا۔۔۔۔۔ میرے بس میں اب کچھ نہیں‘‘
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پچھلے ایک ہفتے سے عبداللہ اسے کہی نظر نہیں آیا تھا ایک بےنام سی بےچینی اسکے دل کو لگی ہوئی تھی۔۔۔۔ تھکی ہاری وہ گھر اینٹر ہوئی تو گھر کا نقشہ ہی الٹ تھا۔۔۔۔۔ تمام نوکر بھاگ دوڑ رہے تھے جبکہ زکریہ آپا ہر ایک کے سر پر سوار کام نکلوا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
’’آپا یہ سب خیریت؟‘‘ ہالا نے حیرانگی سے پوچھا
’’ہاں ہالا جلدی سے تیار ہوجاؤں مہمان آنے والے ہیں‘‘ زکریہ آپا مصروف لہجے میں بولی
’’کونسے مہمان؟‘‘ ہالا نے سوال داغا
’’ارے نیلم کے رشتے کے سلسلے میں۔۔۔۔۔۔۔ جاؤ تم جلدی سے تیار ہوجاؤں ڈنر کا وقت ہونے والا ہے وہ لوگ آتے ہوگے‘‘ زکریہ آپا کی بات پر سر اثبات میں ہلائے وہ اپنے کمرے میں چلی گئی
ٹھیک آدھےگھنٹے بعد وہ پنک کلر کا فراک زیب تن کیے اپنے کمرے سے باہر نکلی جبکہ سامنے بیٹھے مہمانوں کو دیکھ کر اسے دھچکا لگا
’’عبداللہ!!‘‘ اسکے لب پھڑپھڑائے
’’ارے ہالا آپی‘‘ فریحہ اٹھ کر اسکے پاس گئی اور اسکے گلے لگی
’’فریحہ تم لوگ یہاں؟‘‘ ہالا کو کچھ سمجھ نہیں آیا۔۔۔۔۔
’’جی ہم۔۔۔۔۔ یو نو واٹ ہم نیلم باجی کے لیے رشتہ لیکر آئے ہیں حسیب بھائی کا‘‘ فریحہ چہکی تو ہالا مسکراہ دی۔۔۔۔۔ ایک خوبصورت مسکان۔۔۔۔۔۔۔ عبداللہ غور سے اسکی مسکراہٹ دیکھتا رہا۔۔۔۔۔ جب حسیب گلا کھنکھار کر اسے ہوش کی دنیا میں لایا
’’اے اللہ یہ مسکراہٹ اور یہ شخص میرے نصیب میں لکھ دے‘‘ عبداللہ کے دل سے دعا نکلی۔۔۔۔۔۔ جبکہ اسے دیکھ کر ہالا کی مسکراہٹ تھم گئی۔۔۔۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اگلے کچھ دن کافی مصروف گزرے دونوں گھروں میں شادی کی تیاری عروج پر تھی۔۔۔۔۔۔ ہالا کی باقی سب بہنیں بھی آچکی تھی۔۔۔۔۔۔ ہر طرف افراتفری تھی
’’ہالا‘‘ زکریہ آپا نے اسے پکارا جو مایوں کا جوڑا لیے استری کرنے جا رہی تھی
’’جی؟‘‘ ہالا نے پوچھا
’’بیٹا تھوڑی دیر میں فریحہ آئے گی نیلم کے برات کا جوڑا لینے جانا ہے اسے تو تم اسکے ساتھ چلی جانا‘‘ زکریہ آپا نے اسے بتایا
’’مگر آپا نیلم باجی کو خود نہیں جانا چاہیے‘‘ ہالا نے حیرانگی سے پوچھا
’’اسنے صاف انکار کردیا ہے ویسے بھی اسے پارلر جانا ہے تو تم چلی جاؤں چندا‘‘ زکریہ آپا نے جواب دیا
’’اچھا چلے ٹھیک ہے میں تب تک یہ پریس کرلوں‘‘ ہالا نے جواب دیا
’’بی بی جی وہ نیلم بی بی کے سسرال سے آئے ہے وہ انتظار کررہے ہے آپکا‘‘ نوکر کے بتانے پر ہالا نے سر ہلایا
’’ضرور فریحہ ہوگی‘‘ ہالا سر ہلاتی کمرے میں بیگ لینے چلی گئی
’’سو سوری لیٹ ہوگئی تمہیں انتظار کرنا پڑا‘‘ بنا سامنے دیکھا وہ تیزی میں کار کے پاس آکر بولی
’’کوئی مسئلہ نہیں یہ انتظار مجھے صدیوں تک قبول ہے‘‘ مردانہ بھاری آواز پر اسنے چونک کر سر اٹھایا تو عبداللہ کو کھڑا پایا
’’آپ؟ وہ فریحہ؟‘‘ ہالا کو سمجھ نہیں آیا
’’ہاں وہ فریحہ کو کچھ کام تھا تو اس نے مجھے بھیج دیا۔۔۔۔۔ چلے؟‘‘ عبداللہ کی بات پر ہالا نے لب بھینچے اور سر اثبات میں ہلاتی اسکی کار میں بیٹھ گئی۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: