Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 10

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 10

–**–**–

“ژالے جاؤ بھائی کو اٹھاو کتنی دیر ہو گی ہے ابھی تک نہیں اٹھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے ناشتہ کرتی ژالے کو رومان کو آٹھانے کا کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جو پراٹھا کھانے میں مگن تھی ،عافیہ کے رومان کو بولانے پر غصے سے دانت پیستی رہ گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف امی مجھے ناشتہ تو کر لینے دیں۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ناشتہ چھوڑے جانے پر منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تم جا رہی ہو یا میں خود اتھوں ،عافیہ نے ژالے کو گھورتے ہوئے کہا جو انتہائی ڈیھٹ واقع ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”جا رہی ہوں میں یہاں تو میری کسی کو پروا ہی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بڑبراتی ہوئی رومان کے کمرے کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے سے عافیہ بس سر ہلا کر رہ گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“اتھ جائیں شہنشاہ اکبر آپ کی یہ کنیز آپ کو اتھا نے پر آپ سے معافی چاہتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے رومان کے کمرے میں اینٹر ہوتے ہوئے طنزیا انداز میں بلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کنیز اس کی سزا تمہیں ضرور ملے گی لیکن بعد میں ابھی ہمیں سونے دو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان بھی اسی کا بھائی تھا اسی کے انداز میں کہتے ہوئے دوبارہ آنکھیں بند کر لیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“آپ اٹھ رہے ہیں یا میں امی کو بلاوں ،مجھے جو سزا ملے گی وہ تو بعد کی بات ہے لیکن شہنشاہ آپ کی اچھی خاصی خاطر تواضح ہوجاے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اسے دوبارہ آنکھیں بند کرتے دیکھ کر غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ امی،اور ساتھ ہی عافیہ کو آواز بھی لگادی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اٹھ رہا ہوں فسادن لڑکی تمہیں تو میں بعد میں دیکھتا ہوں ۔۔۔۔۔۔رومان نے آنکھیں ملتے ہوئے ژالے کو نیا خطاب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” آپ خود ہوں گے فسادی ایک تو میں اپنا گرم پراتھا چھوڑ کر آپ کو اتھانے آئی ہوں اور اوپر سے آپ مجھ ہی باتیں سنا رہیے ہیں ،ژالے نے کمر پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔اور ہاں آجائیں جلدی سے ورنہ اس دفعہ میں نہیں امی کی چپل آئے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے باہر جاتے ہوئے رومان کو دھمکی دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور رومان اس تیز تلوار کو بس گھور کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
مرینی میں سوچ رہی تھی کہ رمیز کے آنے میں تھوڑے ہی دن بچے ہیں کیوں نہ زیورات اور سامان وغیرہ کا کام نبٹا لیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے چائے بناتے ہوئے مرینہ سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہوں بھابھی تھیک کیی رہی ہیں آپ اور شادی کہ دنوں میں بہیت سے کام ہوتے ہیں جو ختم ہونے کا نام نہیں لیتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے دوپہر کے لیے سبزی نکالتے ہوئے عافیہ کو جواباً کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
” آج اشعرصاحب سےکہتی ہوں کہ فرنیچر وغیرہ کا کام تو نبٹا لیں ، بس مرینہ پنار کے اس گھر سے چلے جانے پر پریشان رہتی ہوں کہ پتا نہیں پنار سسرال میں خوش تو رہے گی نہ
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے چائے پیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے بھابھی کیوں پریشان ہوتی ہیں رمیز اور اس کے گھر والے بہت اچھے ہیں ہماری پنار بہت خوش رہے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے عافیہ کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آمین اللہ کرے ایسا ہی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے چائے کا کپ پکڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“یار سوری بول تو رہے ہیں معاف کر دے تجھ پہ تھوڑی ہنس رہے تھے ہم ہماری ہنسی تو ویسے ہی نکل گئی تھی”۔۔۔۔۔۔
حارث نے سوری کرتے ہوئے ہرمان کو منایا جو ان سے اپنی بےعزتی پر ہنسنے والی بات پر ناراض تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تم دونوں میرے کمرے سے نکل رہے ہو یا دھکے دے کر نکالوں ہوں”۔۔
ہرمان نے سینے پر ہاتھ باندھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔
“تو چاہے دھکے مار یا جوتے مار،ہم تو تجھے لیے بغیر یہاں سے ہلنے والے نہیں”
عمر نے ڈیٹھ پن سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“یار چل نہ پلیززز تیرے لیے بس کو آدھا گھنٹہ رکوا کر آئیں ہیں”
حارث نے اس کا بازو تھامتے ہوئے کہا جسے ہرمان نے جھٹک دیا۔۔۔۔۔۔۔
“یار دیکھ سر خلیل کا تیسری دفعہ فون آ چکا ہے”۔
عمر نے فون ہرمان کے سامنے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
“یار دیکھ مس پنار تو پہلے ہی اتنے غصے والی ہیں اور اگر اب ہم اور لیٹ ہو گے تو واٹ لگ جائے گی ہماری کہ ان کی کلاس کی وجہ سے سب لیٹ ہو رہے ہیں”۔۔۔۔
عمر کے مس پنار کہنے پر وہ چونکا اور ان دونوں کی طرف استفسار کرنے والی نظروں سے دیکھا۔
“کیا؟ مس پنار بھی جا رہی ہیں پررر انھوں نے تو جانے سے انکار دیا تھا نہ”۔۔۔۔
ہرمان نے سوالیہ نظروں سے دونوں کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔
“جی جی بلکل ۔۔نہ صرف خود بلکہ ساتھ ان کی دوست بھی ہے جو ہمھیں اس دن مال میں ملی تھی”۔۔۔۔
عمر نے وضاحت سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ویسے یار مس پنار کی دوست ہیں بہت خوبصورت اور آج تو غضب ڈھا رہی ہیں وللہ”۔۔۔
حارث نے اپنی فلرٹی عادت سے مجبور ہو کر ردا کو تعریف کی۔۔۔۔۔۔۔
“تم تو اپنی بکواس بند ہی رکھو اور شرم کر لو بڑی ہیں تم سے
عمر نے اس کی بکواس بند کروائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یار چل دیر ہو رہی ہے”۔۔۔۔۔۔۔ٹھیک ہے اب تم لوگ اتنا انسسٹ کر رہے ہو تو چل رہا ہوں میں،ہرمان نے ان پر احسان کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور
“چلو نکلو میرے کمرے سے اور مجھے چینج کرنے دو” ہرمان نے کبڈ سے ڈریس نکالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔”
“چل پھر پانچ منٹ تک نیچے آ جا تب تک ہم دادی کے پاس بیٹھتے ہیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“سر ہم کب نکل رہے ہیں کافی ٹائم ہو گیا ہے”۔
پنار نے کلائی پر بندھی گھڑی پر ٹائم دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
“بسس نکل رہے ہیں مس پنار۔۔۔۔۔وہ دیکھو آ گیا ہرمان ،ہرمان کا ہی ویٹ کر رہی تھے ہم”۔
سر خلیل نے ہرمان کی طرف بڑھتے ہوئے شفقت سے کہا۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کو دیکھ کر تیوری چڑھائی۔۔۔
” ارے یار پنار یہ تو وہی ہینڈسم لڑکا ہے جو اس دن ہمھیں مال میں ملا تھا”۔۔۔
ردا نے پنار کے پاس آتے ہوئے ہرمان کو دیکھ کر کمنٹ پاس کیا۔۔۔۔
“ہو گیا شروع تمھارا یا کروں سعد بھائی کو فون”
پنار نے موبائل کی طرف اشارہ کیا۔۔۔۔۔،۔۔
“اففف یار ایک تو تم مجھے سعد کی دھمکی نہ دیا کرو،اب کیا میں کسی خوبصورت لڑکے کی تعریف بھی نا کروں ہونہہہ”۔۔
ردا نے ناک چڑھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔
“چلو چلو بیٹھو بس میں پہلے ہی دیر ہو رہی ہے”۔۔
پنار نے بس کی طرف بڑھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔
یار اب تک تو آپا وغیرہ پہنچنے والے ہوں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ہائمہ کے پاس بیٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہائمہ جو اپنے نوٹس بنا رہی تھی ژالے کی مداخلت پر اسے گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف ژالے تمہیں کوئی بات نہ مل جائے پکڑنے کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چھوڑ دو جلنا اور آپا کو انجوئے کرنے دو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اد گھور کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“میں کیوں جلوں گی آپا سے ،اور تم سے تو بات کرنا ہی فضول ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ناک سکوڑتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے میں یہ پوچھنے آئی تھی کہ فریج میں کیک کا پیس کس کا پرا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ژالے نے شان بے نیازی سے ایل ڈی کا ریموٹ پکڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیوں تم کیوں پوچھ رہی ہو ہاں ۔۔۔۔۔ایک منٹ کہی تم نے میرا کیک ہڑپ تو نہیں کر لیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے سیدھے ہوتے ہوئے صدمے سے ژالے سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے اتنا پریشان کیوں ہو رہی ہو کھا لینا تھا نہ ،سارا قصور تمہارا اپنا ہے ویسے بھی میں نہ کھاتی تورومان بھائی نے کھا لینا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے سارا قصور ہائمہ پر ڈالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”
“ژالے تم نہ ایک نمبر کی پیٹو ہو ، جو کوئی چیز فریج میں کھا نے والی نہیں چھوڑتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے وہاں سے اٹھتے ہوئے اپنے کمرے کی طرف بڑتے ہوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“ژالے نے ہائمہ کی باتوں کو سنی ان سنی کرتے ہوئے ڈرامے کی طرف متوجہ ہو گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
واؤو یہ کتنی خوبصورت جگہ ہے نہ ردا نے کھڑکی سے باہر دیکھتے ہوئے پنار کو کہنی ماری ،وہ جو آنکھیں بند کیے نیند میں جارہی تھی ردا کے کہنی مارنے پر ہڑبرا گی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “اف ردا کیا مسلہ تمہارے ساتھ۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کو گھورا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“تم نہ ایک نمبر کی بورنگ پرسن ہو ۔۔۔۔۔۔۔ردا نے باہر کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
” یار مجھے بہت بھوک لگ رہی ہے۔ ۔۔۔۔۔۔عمر نے پیٹ پر ہاتھ رکھتے ہوئے ہرمان سے کہا ، وہ جو بہت ریلکس موڈ میں کانوں میں ہینڈ فری لگاے باہر دیکھ رہا تھا ،عمر کی بات پر اس کی طرف متوجہ ہوا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
” ہوں ہوٹل میں تم نے دو عدد پراٹھے ایک پلیٹ سلاد ،سویٹ ڈیش ،اور آخر میں تم نے ایک کپ چائے پی خیرت ہے تمہیں پھر بھی بھوک لگ رہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے عمر کو ایک گھنٹہ پہلے کیا ناشتہ یاد کروایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”
“ارے میں بھی کہوں مجھے پیٹ میں گربر کیوں ہو رہی ہے تم اپنا کھانا کھانے کی بجائے میرے نوالے گن رہے تھے ہاں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے حارث کو گھورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تم دونوں اپنی بکواس بند کرو گے یا نہیں یا میں اپنی جگہ چینج کروا لوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دونوں کو گھورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” یار کیوں ناراض ہورہا ہے ریلکس رہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے حارث کو چپ رہنے کا اشارو کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“اسد میں کہہ رہی ہوں کہ ائندہ ہرمان کو اس طرح نہ ڈانٹنا ، ابھی بچہ ہے ٹھیک ہو جائے گا آہستہ آہستہ” ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے اسد کو اس کے کل کے رویہ کے بارے میں باز پرس کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“اماں جان ابھی بچہ ہے اس لیے ہی تو سمجھاتا ہوں کہ کل کو زیادہ بگڑ گیا تو پھر نہیں سمھبلے گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے نیوز چینل کی آواز کو آہستہ کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اور پھر ایک سال تک اسے یورپ بیجھوں گا مزید سٹدی کے لیے اس لیے تھوڑا میچور ہو جائے گا تو بہتر ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے نیوز کی طرف پھر سے متوجہ ہوتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“ارے نہ بابا نہ میں نہیں دور کروں گی بچے کو اپنی نظروں سے ،لو کر لو گل بچے کو ساتھ سمندر آنکھوں سے دور بھیج دوں نہ میں تو یہ نہیں ہونے دوں گی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے دہل کر اسد کی بات کا جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
اماں دودھ لیں لے ناہید نے انہیں دودھ کا گلاس دیتے ہوئے اسد کو چپ رہنے کا اشارہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
دادی بڑبراتے ہوئے دودھ کے گھونٹ لینے لگی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“سنا ہے ہرمان ٹرپ پر گیا ہے بھائی صاحب آج آفس میں بتا رہے تھے”۔۔۔۔
احد صاحب نے رات کے کھانے پر منیبہ سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔
“جی جی۔ہرمان آیا تھا ملنے پر آپ اس وقت آفس میں تھے”۔۔۔۔
منیبہ نے عتبہ کو دودھ کا گلاس پکڑاتے ہوئے احد صاحب کو بتایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“شکر ہے ہرمان بھائی ٹرپ پر چلے گئے دو تین دن تو سکون سے نکلیں گے میرے”۔
عتبہ نے خوش ہوتے ہوئے کہا جیسے کوئی بلا ٹل گئی ہو۔۔۔۔
“کیوں تمھیں کیا مسلہ ہے اتنا پیارا بچہ ہے اسی کی وجہ سے تو دونوں گھروں میں رونق ہے”۔
منیبہ نے عتبہ کو ڈانٹتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“میں کیا سوچ رہا تھا کہ اماں جان کو دو تین دن کیلیے گھر لے آئیں پہلے تو ہرمان کی وجہ سے نہیں ٹھہرتی تھیں۔اب تو آ ہی جائیں گی ویسے بھی کافی عرصہ ہو گیا اماں جان ہماری طرف رہنے نہیں آئیں”۔
احد نے رومال سے ہاتھ منہ پوچھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“جی جی آپ نے بلکل ٹھیک کہا،ہم صبح ہی چلتے ہیں اماں جان کو لینے”۔۔۔
“نہیں صبح تو میری میٹنگ ہے میں صبح صبح ہی نکل جاوں گا ہم رات کو چلیں گے”۔۔
احد نے ٹیبل سے اٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“رہنے دیں کوئی فائدہ نہیں ،وہ پھر بھی نہیں آئیں گی”۔
شیزاہ نے کھانا فینش کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
“تم بڑوں کی باتوں میں مت بولا کرو”۔۔۔
منیبہ نے شیزاہ کو گھورا۔۔شیزاہ ان کی گھوری کو نظر انداز کیا اور اپنے کمرے میں چلی گئی۔۔
“عتبہ تم نے ابھی تک کھا فینش نہیں کیا۔کم کھایا کرو ہرمان سہی کہتا ہے کھا کھا کر پہاڑ بنتے جا رہے”۔
منیبہ نے عتبہ سے کہا۔۔۔۔
“بس موم ہو گیا فینش”۔۔
عتبہ نے ایک اور روٹی پلیٹ میں رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔
“یہ ختم ہو رہا ہے یا شدوع ہو رہا ہے تمھارا”۔۔
منیبہ نے بھنویں اچکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور برتن اٹھائے کچن کی طرف چل دی۔۔۔
“موم سلاد تو رکھتی جائیں ابھی تو میں نے سلاد کھایا ہی نہیں”۔
عتبہ نے منیبہ کو سلاد کی پلیٹ لے جاتے دیکھ کر پیچھےسے دوہائی دی۔۔۔۔۔
“تمھارا کھانا تو صبح تک ختم ہو گا نہیں مجھے اور بھی بہت کام ہیں ابھی تمھارے ڈیڈ کو کافی دینی ہے میڈ کے چھٹی پر جانے سے بہت کام بڑھ گیا ہے چلو شاباش اٹھ جاو”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“موم پر مجھے بھی دودھ کا گلاس دینا مت بھولئے گا”
عتبہ نے روٹی کا رول منہ میں رکھتے ہوئے کہا
Please no one says that I have written a little As soon as written .Shukriy

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: