Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 11

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 11

–**–**–

آجائیں سب جلدی سے نیچے، سر خلیل نے سب کو بس سے اترنے کا اشارہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” سر خلیل نے ناران کاغان میں پہلے ہی ہوٹل بک کروا لیا تھا۔۔۔۔۔
“یار کتنی پیاری ہوا چل رہی ہے نہ ۔۔۔۔۔۔عمر نے بس سے اترتے ہوئے انگرائی لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہوں یار ویسے موسم تو واقع بڑا زبردست ہے کیوں ہرمان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے ہرمان سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہوں موسم تو خوبصورت ہے پہلے فریش ہو لیں پھر کہیں چلتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بیگ ایک کندھے سے دوسرے میں منتقل کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار میں سوچ رہی تھی پہلے کچھ کھا پی لیں پھر باہر چلتے ہیں اور موسم انجوائے کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ردا نے پنار کو کہتے ہوئے فریش ہونے چلی گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ٹھیک ہے پہلے فریش ہو لیں پھر چلتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جواباً کہا۔۔۔۔۔۔۔”پنار اور ردا کمرہ شئیر کر رہی تھی ،سب لوگ دو دو اور تین تین کمرہ شئیر کر رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“ہرمان تم لوگ کہاں جارہے ہو ،سر خلیل نے تینوں کو باہر جاتے ہوئے دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سر کہیں نہیں ہم بس تھوڑی دیر تک باہر فریش ہونے جارہے ہیں آدھے گھنٹہ تک آجائیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جواب جارث نے دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہوں تھیک ہے شام سے پہلے آجانا سر خلیل نے ہرمان کو دیکھتے ہوئے کہا جو بے نیازی سے ہاتھوں کو جینز کی پاکٹ میں گھساے ِادھر اُدھر دیکھ رہا تھا جیسے سر کسی اور سے محاطب ہوں وہ سر خلیل سے سخت ناراض تھا۔۔۔۔۔۔۔ڈیڈ سے اس کی شکایت لگوانے پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
“ویسے آپا کے بغیر گھر کتنا سونا سونا لگ رہاہے نہ ، ہائمہ نے ژالے اور رائمہ کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”تو
پہلے کونساوہ گھر میں ڈول بجا رہی ہوتی تھی جو تمہیں گھر سونا سونا لگ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔رائمہ نے اپنی بہن کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”
“اب ایسی بات بھی نہیں ہے آپا ،آپ کونسا ہمارے بھیچ بیٹھتی ہیں جو آپ کو پتا ہو گا کہ کس کی گھر میں رونق زیادہ ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے رائمہ کو جواب دیتے ہوئے دوبارہ اپنی پلیٹ پر توجہ کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“تمہاری زبان کچھ زیادہ ہی نہیں چلنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رائمہ نے ژالے کوگھورتے ہوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔” جواباً ژالے نے اگنور کرنا ہی بہتر سمجھا۔۔۔۔۔۔۔
ہائمہ میں اپنے کمرے میں جارہی ہوں تھوڑی دیر میں میری دوستیں آرہی ہیں انہیں میرے کمرے میں ہی بیجھ دینا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رائمہ نے ہائمہ کو کہتے ہوئے اپنے کمرے کی طرف چلی گی۔۔۔۔۔”
” ویسے ژالے۔میں سوچ رہی تھی کہ جتنا تم کھاتی ہو پکا ایک دن تم بالا پہلوان بن جاؤ گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے ژالے کو کہا جو ہر وقت کچھ نہ کچھ کھاتی رہتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی بھی وہ فروٹ چاٹ پر ہاتھ صاف کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” تم نہ ہر وقت میرے کھانے پر نظر مت رکھا کرو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور میں جتنا بھی کھا لوں موٹی نہیں ہوں گی سو تمہیں تینشن لینے کی ضرورت نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اللہ کرے تمہارا شوہر بھی تمہاری طرح ہر وقت کھاتا ہی رہے اور تم اس کے لیے کھانے بنا بنا کر تھک جاو اور وہ تم سے دن رات لڑاتا رہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے کہہ کر کچن کی طرف دوڑ لگادی۔۔۔۔۔۔کیوں کہ وہ جانتی تھی ژالے کی جوتی پڑنے والی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
“تو آج ہم وادی ناران کے وزٹ پر جایں گے سو آپ سب بس میں سوار ہو جائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر ارشد نے ٹیچر اور سٹوڈنٹ کو بس میں سوار ہونے کا اشارہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
وہ سب صبح ناشتے سے فارغ ہو کر سیر پر جانے کیلیے تیار ہو گے تھے ،تین دن کا وزٹ تھا ان کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
دو بسیں تھیں جو فل بڑی ہوئی تھی سٹوڈنٹ اور ٹیچر سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“یار ویسے میں نے ایک بات نوٹ کی ہے کہ وہ تمہارا جو ہینڈسم سٹوڈنٹ ہے نہ وہ تمہیں بہت غور سے دیکھتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے ہرمان کو دیکھ کر کہا جو پنار کو دیکھ رہا تھا لیکن جب ردا نے اس کی طرف دیکھا تو اس نے اپنی نظریں اس پر سے ہٹا لیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں ضرور دیکھ رہا ہو گا اور سوچ رہا ہو گا کہ اب کس طرح مس کے دماغ کی دہی بناے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کو جواب دے کر ہرمان کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔جو عمر سے اب کوئی بحث کر رہا تھا۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
Wow what a beautiful places
ردا نے ناران باےپاس روڈ کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔Yes, however many times we have come here but it does not fill my heart پنار نے ردا کی بات پر کہا ۔۔۔۔۔”
” آپ سب لوگ پہلے تھوڑا فریش ہو لیں پھر ہم سب لوگ سیف الملوک نیشنل پارک چلیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے سب کو بتاتے ہوئے ہرمان کے پاس آئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“کیا اب تک مجھ سے ناراض ہو ہاں۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے ہرمان کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے انہیں دیکھ کر سر نیچے جھکا لیا جیسے کہا ہو میں آپ سے ناراض ہوں مجھے اکیلا چھوڑ دیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
یار غلطی ہوگی نہ کیا اب مجھ سے سے بات بھی نہیں کرو گے سر خلیل نے ہرمان کو اپنی طرف متوجہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ان کی بات پر مسکرایا،۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” تھیک ہے لیکن آپ کو میری ایک بات ماننی ہو گی ہرمان نے پاکٹ میں ہاتھ پھنساتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔’
اوکے یار مجھے تمہاری سب باتیں منظور ہیں اب خوش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے ہاتھ اتھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ان کے انداز پر مسکرایا۔۔۔۔۔۔۔۔”
سر خلیل ہرمان کو اپنا بیٹا مانتے تھے کیوںکہ ان کی اپنی کوئی اولاد نہیں تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان بھی ان سے بہت اٹیچڈ تھا۔۔اس لیے وہ ان کی ڈیڈ سے شکایت لگوانے پر ناراض تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
یہاں آپ تھوڑا فریش ہو لیں، پھر ہم لوگ ناران کاغان ہوٹل سے لنچ کر کے سیف الملوک نیشنل پارک کی طرف چلیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر ارشد نے سب کو اپنی طرف متوجہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
میری پیاری سی گڑیا اب کچھ نہیں کہوں گا تمہیں بس آج میری یہ بلیک شرٹ پریس کردو پلیزززززز،
رومان نے ہائمہ کو بٹرنگ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
” اب جب آپ کو کام ہے مجھ سے تو میں گڑیا ہوگی ورنہ سارا دن مجھے ٹڈی کہہ کر چڑاتے رہتے ہیں وہ ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے بھی پچھلا حساب کتاب چکایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے یار امی، چچی گھر پر نہیں ہیں اور ثروت بھی چلی گی ہے اور ژالے بی بی سے کوئی امید لگانا چالیس کا گھاٹا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب نہیں کہوں گا ٹڈی او میرا مطلب ہے گڑیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اس گھورتے دیکھ کر تصحیح کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
” میرا بہت امپورٹنٹ ٹیسٹ ہے سوری میرے پاس ٹائم نہیں۔۔۔۔۔۔۔”
ہائمہ نے کورس کی کتاب کھولتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اچھا ٹھیک ہے چچی کو فون کرتا ہوں کہ ہائمہ مجھے شرٹ پریس نہیں کر کے دے رہی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”رومان نے موبائل جیب سے نکالتے ہوئے اس دھمکی دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
رومان بھا ئی یہ بس آخری دفعہ ہے اس بار تو میں کر رہی ہوں لیکن ائندہ مجھ سے ایسی کوئی امید مت رکھیے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ہائمہ نے رومان کے ہاتھ سے شرٹ چھینتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اور منہ بناتی ہوئی استری سٹیند کی طرف بڑھ گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” پیچھے رومان مسکرا کر بالوں میں ہاتھ مار کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
وہ سب لنچ کر کے سیف الملوک پارک کی طرف بڑھ گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہاں پہنچ کر سب اِدھر اُدھر ٹولیوں میں بکھڑ گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ہرمان یار تھیک سے پک بنا میری۔۔۔۔۔۔۔عمر نے سٹائل سے کھڑے ہوتے ہوئے ہرمان کو اپنا سیل پکڑایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ہرمان ابھی اس کی پک بنا ریا تھا کہ ہنسی کی آواز پر چونک کر اس طرف دیکھا جس طرف ہنسی کی آواز آرہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاہاہا بدتمیز تم نہیں سدھرنے والی کیوں تنگ کرتی ہو سعد بھائی کو ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنارنے ردا کے کندھے پر ہاتھ مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اتنی خوبصورت نہیں تھی وہ عام سی شکل و صورت کی گندمی رنگت کی مالک تھی ایسا اس میں کچھ نہیں تھا کہ جس پر لوگ اسے مڑ مڑ کر دیکھتے۔۔۔۔لیکن وہ جب مسکراتی تھی تو خاص لگتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے مقابلے ژالے ،رائمہ،ہائمہ بہت خوبصورت اور گورے رنگ کی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور رومان وہ بھی بہت ہینڈسم تھا بس پنار ہی عام نقوش کی ملک تھی۔۔چھوٹے چھوٹے بال جوکمر سے اوپر تک تھے انہیں ہمیشہ وہ پونی ٹیل میں باندھے رکھتی تھی ،جینز پر کرتے جو گھٹنوں تک ہوتا وہ پہنتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” لیکن ہرمان کو وہ اس وقت مسکراتی ہوئی بہت خاص لگی اتنی خاص کے باقی سب منظر پیچھے چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ٹکٹکی باندھ کر پنار کو دیکھے گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور عمر بیچارہ پوز بنا بنا کر اسے تصویریں کھینچنے کا کہہ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کیا کر رہا یار توں میری تصویر کھینچ بھی رہا ہے یا نہیں، عمر نے اس آواز لگا کر کہا کیونکہ وہ سیل پکڑے دھیان دوسری طرف کیے کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان میں تجھ سے کہہ رہا ہوں دھیان کہاں ہے تمہارا عمر نے اس کے پاس آکر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان نے چونک کر عمر کی طرف دیکھا جیسے پوچھا ہو کیوں چلا رہے ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے میں تجھے کب سے آواز لگا رہا ہوں ،اور ادھر دے میرا فون میری ایک بھی پک نہیں بنائی تو نے میں کب سے ایکشن مار مار کر تھک گیا ہوں عمر نے موبائل چک کرتے ہوئے صدمے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
بکواس بند کر میں تیرا نوکر نہیں ہوں جو تیری تصویریں کھینچتا رہوں ہرمان نے اس گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور دوسری طرف چلا گیا، پیچھے عمر اس کے ایٹی ٹیوڈ پر ہکا بکا کھڑا رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
گھر تو جیسے کاٹ کھانے کو دوڑ رہا میرے ہرمان کے بغیر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے لاونج کے صوفے پر بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ٹھیک کہہ رہی ییں آپ دادی بھائی ہر وقت گھر میں رونق لگاے رکھتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے دادی کی ہاں میں ہاں ملاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔” اور یہ تیرے ماں باپ کو فکر ہی نہیں ہماری کیسے پارٹی شارٹی میں دونوں چلے گے اور ہم سے جھوٹے منہ بھی نہیں پوچھا کہ اماں کو بھی ساتھ لیتے جائیں۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے افسوس سے سر ہلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
دادی آپ نے جو پچھلی بار کیا تھا نہ کہ موم کی فرینڈ سے جگھرا کیا تھا اس لیے آپ کو ساتھ لے کر نہیں گے ہوں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے دادی کو پچھلا واقعہ یاد کروایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے تو کیا غلط کیا تھا میں نے اس نے کپڑوں کے نام پر جو الم غلم پہنا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس یہی کہا تھا نہ کہ بی بی اللہ کو بھی جان دینی ہے تم نے اپنا پہنوا درست رکھو اس میں کیا غلط کہہ دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہنہہہ دادی نے نوری کو آواز لگا ئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
جی دادی ،ارے تجھے میری فکر ہے کہ نہیں ،دودھ لے کر آ میرے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی دادی ابھی لے کر آتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب تک خود نہ کہوں کسی کو میری فکر نہیں
ہوتی اس گھر میں ،دادی نے بڑبرا کر رہ گی۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: