Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 12

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 12

–**–**–

“جھیل سیف الملوک سے وہ لوگ رات گے تک واپس لوٹے تھے،ڈینر وغیرہ وہ لوگ پائن پارک ہوٹل سے کر کے آئے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
” تم جانتے ہو سعد میں نے تمہیں کتنا مس کیا پتہ ہے تمہارے بغیر تو میں نے بالکل بھی انجوائے نہیں کیا۔۔۔۔۔۔۔۔ردا سعد سے فون میں لگی ہوئی تھی اور اسے جھوٹی سچی داستان سنا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ،پنار نے اسے گھورا جو سعد کو الو بنا رہی تھی سارا وقت تو وہ خوب انجوائے کرتی رہی تھی سعد کو کب اس نے یاد کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” پنار دائیں بائیں سر ہلا کر رہ گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جیسے اس لڑکی کا کچھ نہیں ہوسکتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا ہوا یہ ایسی شکل کیوں بنائی ہوئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے فون بند کر کے اس کے پاس بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
میری شکل ہی ایسی ہے کیا کروں پنار نے تکیہ درست کر کے لیٹتے ہوئےکہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف چھوڑو یہ بات مجھے یہ بتاو کہ رمیز کب آرہا ہے پاکستان ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ردا نے اس کے ساتھ لیٹتے ھوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“انٹی بتا رہی تھی کہ اسی مہینے آرہے ہیں۔۔۔۔پنار نے فون چک کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ہوں ویسے یار اس سے فون میں بات کرتی ہو کے نہیں ۔۔۔۔۔ردا نے بھنویں اچکاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔”
کبھی کبھی حال وغیرہ پوچھ لیتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔اس سے زیادہ بات کرنا مجھے پسند نہیں۔۔۔۔۔۔اور اب مجھ سے کوئی فضول بات نہ کرنا مجھے بہت نیند آرہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کو منہ کھولتے ہوئے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا اس کو جواباً گھورکر رہ گی
 
ژالے ویسے ایک بات تو بتاو؟ ،ہائمہ نے ژالے کے بیڈ پر دراز ہوتے ہوئے ژالے سے سوال پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پوچو لیکن پلیز کوئی الٹی سیدھی بات مت پوچھنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے وارننگ دیتے ہوئے اجازت دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“تمہیں کس طرح کا لائف پارٹنر چاہئیے
ہائمہ نے ژالے کا من پسند سوال پوچھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے زندگی میں پہلی دفعہ تم نے کوئی ڈھنگ سال پوچھا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے پہلے تو ایکسائیٹڈ ہو کر بیٹھی اور پھر ہائمہ کے بازو پر تھپڑ مارتے ہوئے کہا. ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اف ژالے تم کبھی نہیں سدھرو گی۔۔۔۔جاو میں نہیں پوچھتی۔۔۔۔ہائمہ نے ژالے کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے میری پیاری بہن میں نے تو مذاق میں تمہیں تھپڑ مارا ہے ہاں تو کیا پوچھ رہی تھی تم مجھے کیسا لائف پارٹنر چاہیے ،ہوں بہت ہینڈسم ہو ،رچ ہو اپنا بزنس کرتا ہو ،مجھ سے بہت پیار کرتا ہو مجھ سے کوئی کام نہ کروائے،اور سب سے امپورٹنٹ بات میں جتنا مرضی کھاوں مجھے کھانے سے روکے ٹوکے نہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے تو اپنے ورلڈ میں لینڈ پہنچ گی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
بس کردو بی بی اور اپنی فینٹسی سے باہر آجاو ۔۔۔۔ہائمہ نے اس کو جھنجورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو ایک بار شروع ہوتی تھی تو چپ ہونے کا نام نہیں لیتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں بتاتی ہوں تمہیں کیسا شوہر ملے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو اپنے ابو سے اپنی پاکٹ منی لیتا ہو گا اور تمہاری طرح ہی ہر وقت کھاتا ہو گا اور تو اور وہ رچ بھی نہیں ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ہر وقت تم سے کام لیتا یو گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے کہہ کر دروزے کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہائمہ کی بچی میں تمہارا خون پی جاوں گی۔۔۔۔۔۔ژالے نے غصے سے لال پیلے ہوتے اس کے پیچھے بھاگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
آج ہم لوگ ناران کاغان ویلی کے وزٹ پر جائیں گے تو آپ سب ریڈی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر ارشد نے سب سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یس سر ہم سب لوگ تیار ہیں۔۔۔۔۔۔۔سب نے ایک آواز میں جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تو سب لوگ بس میں سوار ہو جائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” سر ایک منٹ پنار ابھی تک نہیں آئی ۔۔۔۔ردا نے سر خلیل کو دیکھتے ہوئے پنار کے بارے میں بتایا۔۔۔۔۔۔”
کیا، کہاں ہے وہ ?آپ بلا لائیں مس پنار کو ۔۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے گھڑی میں ٹائم دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
سر وہ صبح واک کے لیے نکلی تھی ، میں سو رہی تھی جب اس نے مجھے اٹھا کر بتایا تھا، لیکن میں دوبارہ سو گی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور جب میں اٹھی تو مجھے لگا کہ وہ باہر آپ سب کے ساتھ ہو گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن وہ باہر بھی نہیں ہے پتا نہیں کہاں چلی گی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے انگلیاں مروڑتے ہو ے پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیا کہاں گی وہ آپ پہلے بتاتی سر اشد نے بھی پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔آپ فون کریں مس پنار کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔
سر اس کا فون کمرے پر ہوا ہے۔۔۔۔۔ردا نے سر کو جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
سر ہرمان بھی صبح سے غائب ہے اس بار عمر نے پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔۔”
اور تم لوگ اب ہمیں بتارہے ہو سر منیب نے غصے سے ان سے پوچھا۔۔۔۔۔۔”
ہرمان فون بھی نہیں اٹھا رہا۔۔۔۔۔سر خلیل نے پریشانی سے فون کان سے ہٹاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔” تھوڑی دیر تک ان کا ویٹ کرتے ہیں۔۔۔۔۔اور اگر نہ آے تو
آپ سب لو گ ایسا کرنا گروپ کی شکل میں سب لوگ پھیل جانا۔۔۔۔اور جن لوگوں کو ملتے ہیں وہ فون کردے۔۔۔۔۔۔”
سر ارشد نے سب سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
واو بیوٹیفل پلیسز، پنار نے ارد گرد پھیلی خوبصورتی ، ہریالی اور پانی کے جھرنے کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار ارد گرد دیکھتے ہوئے کافی آگے نکل آئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آگے اب جنگل شروع ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار چاروں طرف دیکھتے ہوئے جنگل کے اندر نکل آئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب وہ جنگل میں کا فی اندر آگی تھی کہ اچانک قدموں کی آواز پر رک اورارد گرد دیکھ کر پیچھے کی طرف مڑی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم میرے پیچھے کیا کر رہے ہو ہاں۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کو گھوڑ کر دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
وہ جو آج جلدی اٹھ گیا تھا،اور صبح کی ٹھنڈی ہوا خوری کے لیے باہر آگیا تھا ،کہ اس کی اچانک نظر پنار پر ہڑی جو حسب معمول جینز پر گھٹنوں تک شرٹ پہنے بالوں کی پونی ٹیل بنائے کندھوں پر شال لپیٹے ارد گرد دیکھتی ہوئی سامنے کی طرف بڑھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان بھی کسی ٹرانس کیفیت میں پنار کے پیچھے پیچھے چلنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” وہ بھی پنار کے پیچھے آہستہ آہستہ قدم بڑھانےلگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان رف سے خلیے میں بال ماتھے پر بکھیڑے جینز کی پاکٹ میں ہاتھ گھساے پنار کی طرف دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
میں نے تم سے کچھ پوچھا ہے کہ تم میرے پیچھے کیا کر رہے
ہو ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے قریب آکر رکتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” میں بھی آپ کی طرح قدرتی ماخول سے لطف اندوز ہوتے ہوئے ادھر نکل آیا تھا آپ کے پیچھے نہیں آیا میں۔۔۔۔۔”ہرمان نے پنار کے چہرے کی جانب دیکھتے ہوئے بے نیازی سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھور کر گھڑی میں ٹائم کی طرف دیکھا ۔۔۔۔اف میں اتنی دیر گھومتی رہی کتنا لیٹ ہو گی میں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے دائیں جانب مڑتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان بھی اس کے پیچھے خاموشی سے چلنے لگا۔۔۔۔۔۔۔ کہ ایک دم پنار رکی ہم کس طرف سے آئے تھے پنار نے ہرمان کی طرف دیکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان وہ تو پنار کو ہی دیکھتے ہوئے ہی چلا آیا تھا اس نے راستے پر تو دھیان ہی نہیں دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہوں شاید اس طرف سے ہرمان نے ایک تنگ راستے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیا تم شیور نہیں ہو کہ ہم کس طرف سے آئیں ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کو گھور کر دیکھتے ہوئے پوچھا “
ہرمان جواباً سر کی گدی پر ہاتھ مار کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تم اس طرف راستہ ڈھونڈو اور میں اس طرف اور میرے پیچھے مت آنا۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کو کہہ کر ابھی چند قدم ہی آگے بڑھی تھی کہ اچانک وہ رکی کیونکہ سامنے سے ایک بڑا سا بھالو چلتا ہوا آرہا تھا جو انہی کی جانب آرہا تھا۔۔۔۔۔۔پنار کی اچانک نظر بھالو پر پڑی اور اس نے زور سے چیخ ماری اور ہرمان کو طرف دوڑ لگا دی ،ہرمان پنار کی چیخ پر چونکہ ۔۔۔۔۔ہرمان بچاو بچاو پنار کہہ کر اس کے پیچھے چھپ گئی اور اس کے کندھے کو مضبوطی سے پکڑ لیا۔۔۔۔۔۔
ہرمان کبھی اپنے کندھے پر رکھے اس کے ہاتھوں کو دیکھتا تو کبھی سامنے سے آتی مصیبت کو ۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر سمجھاری سے کام لیتے ہوے پنار کا بازو پکڑ کر محالف سمت دوڑ لگا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہم دوڑ کیوں رہے ہیں تم اسے مارتے کیوں نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیاااا ا آپ کو میرے پاس کو ئی ہتھیار وغیرہ نظر آرہا جس سے میں اسے ماروں ہاں۔۔۔۔۔اور اگر بھاگے نہ تو کچا چبا جاے گا وہ ہمیں ہرمان نے اس ڈرایا ۔۔۔۔۔۔۔کیا ،پنار نے پیچھے کی طرف دیکھا جہاں سے بھالو چلا آرہا تھا اور ہرمان کے ساتھ بھاگنے لگی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پنار کو کہہ کر اب کہی جھاڑیوں میں چھپنے کی جگہ تلاش کرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔کیونکہ بھالو بھی اب ان کے پیچھے بھاگنے لگا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس طرف چھپ جاتے ہیں یہاں پر گھنی جاڑیاں ہیں ہم نظر بھی نہیں آئےگے۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کو کہتے ہوئے ایک طرف اگی گھنی جھاڑیوں کی طرف بڑھا ۔۔۔۔۔ایک منٹ یہاں کوئی سانپ یا کوئی جانور ہوا تو پنار نے جھاڑیوں کی طرف دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔مس پنار اس وقت ہمیں اپنی جان بچانی ہے اس لیے ہمارا چھپ جانا ہی بہتر ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ابھی کچھ کہنے کے لیے منہ کھولنے ہی والی تھی کہ بھالو کے قدموں کی آواز پر جلدی سے اس کے پیچھے جاڑیوں میں گھس گی اور وہ دونوں اندر جاکر چھپ گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان نے ایک نظر پنار کو اپنے بالکل قریب بیٹھے دیکھ کر ایک دم اس کے ہونٹوں پر بہت خوبصورت مسکراہٹ آئی تھی ۔۔۔۔کے ایک پنار اس کی طرف متوجہ ہوئی ۔۔۔۔۔۔یہ تم مسکرا کیوں رہے ہو ہاں۔۔۔۔۔۔پنار نے اسکو تیکھے چتونوں سے گھورتے ہوئے آہستہ آواز میں اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
نہیں وہ مسکرا تو نہیں رہا تھا میں تو بھالو کو دیکھ کر مسکرایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بکھلا کر جو منہ میں آیا بول دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں وہ تمہیں کوئی جوک سنا رہا تھا ہاں پنار نے اپنے سٹوڈنٹ کو ذبردست گھوری سے نوازتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر اپنے کندھے ہر پنار کے ہاتھ کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں مجھے اپنی سچویشن پر ہنسی آرہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کو کوئی شرمندہ نہیں کر سکتا تھا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سامنے دیکھتے ہوئے سر کو دائیں بائیں ہلایا جیسا میں بھی کس سے پوچھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب بھالو انہیں ڈھونڈتے ہوئے دوسری جانب چلایا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان وہ دوسری طرف چلایا گیا ہے اب باہر نکلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھالو کو جاتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں اگر ابھی باہر نکلے تو وہ آپس بھی آسکتا ہے اس لیے پانچ منٹ ویٹ کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھتے ہوئے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پنار نے جواباً بے زار سا منہ بنایا۔۔۔۔۔۔۔۔”
ٹن ٹن ٹن۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بوکھلاتے ہو ئے فون کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔تم تو کہہ رہے تھے سگنل نہیں آرہے ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کھڑے ہوتے ہوئے ہرمان سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پہلے تو سگنل نہیں آرہے تھے اب آئے ہیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بھی کھڑے ہو کر جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور دونوں جھاڑیوں سے باہر نکلے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فون تو اٹینڈ کرو۔۔۔۔پنار نے اس کی توجہ فون پر لگا ئی فون کب سے بج رہا تھا لیکن وہ اٹھا نہیں رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے یس کا بٹن دباتے ہوئے موبائیل کان سے لگایا۔۔۔۔۔۔۔ہاں عمر میں ٹھیک ہوں یار، ہاں مس پنار بھی میرے ساتھ ہیں۔۔۔۔نہیں یار وہ مجھے بعد میں ملی تھیں ۔۔۔۔ہم لوگ راستہ بھول گے تھے ۔۔۔۔۔۔نہیں یہ کوئی جنگل ٹائپ جگہ ہے۔۔۔۔۔۔۔ہوٹل کے بائیں طرف جو جنگل ہے اس طرف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار راستہ نہیں مل رہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں اس طرف آجاو ٹھیک ہے ہم یہی رکتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے بائے۔۔۔۔۔۔ہرمان نے فون رکھتے ہوے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا کہہ رہا تھا عمر پنار نے اسے فون بند کرتے ہوئے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”وہ لوگ کافی دیر سے ہمیں ڈھونڈ رہے ہیں اور فون بھی کافی دیر سے ٹراے کرتے رہے ہیں اب جاکر لگا ہے۔۔۔۔۔۔میں نے انہیں ساری سچویشن بتا دی ہے کچھ ہی دیر میں وہ ہمیں ڈھونڈتے ہوئے آجاتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے اس وضاحت سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔”
اف میری وجہ سے سارا پروگرام خراب ہوگیا کتنا برا لگ رہا مجھے سب میری وجہ سے پریشان ہوئے۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ایک بڑے سے پٹھر پر بیٹھتے ہوئے پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” مس پنار آپ کیوں ٹینس ہورہی ہیں آپ کونسا جان بوجھ کر گھم ہوئی تھی سو اس میں آپ کی کوئی غلطی نہیں ہرمان نے بھی اس سے تھوڑے فاصلے پر بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے مس پنار ہمیں یہاں سے کوئی ڈونڈھ نہ سکے تو ہرمان پنار سے سوالیہ پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ نہ کرے تم نہ چپ ہی رہو تو بہتر ہے پنار نے اس غصے سے ٹوکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ویسے آپ امیجن تو کریں پھر کیا کریں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو زچ کرتا سال پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان میں ایسا کوئی امیجن نہیں کرنا چاہتی اور اب تم چپ نہ کرے تو میں یہاں سے چلی جاوں گی سمجھے تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے انگلی سے وارننگ دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ویسے آپ کو غصہ بہت آتا ہے ویسے آپ غصے میں کیٹ لگتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اپنے نام کا ایک ڈیٹھ تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے اس بار اسے صرف تیکھے چتونوں سے گھورنا بہتر سمجھا کیونکہ وہ جانتی تھی کرنی تو اس نے اپنی مرضی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 
شاید وہ لوگ اس طرف ہوں گے کیونکہ یہ راستہ کافی گھنہ لگ رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر منیب نے عمر اور حارث سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
آپ ٹھیک کہہ رہے ہیں سر وہ لوگ اس طرف ہی ہوں گے کیونکہ یہ راستہ کافی اگے تک جارہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے کہتے ہوئے اس راستے کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔باقی سب بھی اس کے پیچھے چلنے لگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب وہ لوگ کافی آگیے آ گے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ اچانک عمر کی نظر دور ایک پتھر پر پڑی جس پر دو لوگ بیٹھے نظر آرہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” سر وہ رہے مس پنار اور ہرمان عمر نےان کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب سب لوگوں کی ان پر نظر پڑی ،اور ان کی طرف بڑھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے بہت سارے قدموں کی آواز پر پیچھے کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اور ایکدم اٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے ہرمان کو آواز لگائی۔۔۔۔۔۔عمر نے پاس آتے ہوئے ہرمان کا پکارا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس پر ہرمان نے کھڑے ہو کر پیچھے کی طرف موڑا۔۔۔۔۔۔”
آپ لوگ ٹھیک ہیں ۔۔۔۔۔سر ارشد نے ان دونوں کے پاس آتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
Yes sir we are fine ۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے سر کو جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری سر میری وجہ سے آپ کو اتنی پرابلم ہوئی۔۔۔۔۔۔۔پنار شرمندگی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔
مس پنار اٹس اوکے ،لیکن آپ لوگوں کو کسی نہ کسی کو بتا کر آنا چاہئیے ہم لوگ کتنا پریشان ہوگے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔اس بار سر منیب نے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
آجائیں اب چلتے ہیں باقی لوگ انتظار کر رہے ہوں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر منیب نے عمر اور حارث سے کہتے ہوے واپسی کے لیے مڑے۔۔۔۔۔۔۔جو ہرمان سے جانے کونسی گفتگو کر رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔سر کے کہنے پر سب واپسی کے لیے مڑے۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: