Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 13

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 13

–**–**–

مجھ سے تم بات نہ ہی کرو تو تمہارے لیے بہتر ہوگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے پنار کے منانے پر ناراضگی سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔
یار میں کہہ تو رہی ہوں نہ کہ مجھے دھیان ہی نہیں رہا کہ میں اتنی آگے کیسے چلی گی، پنار نے ردا کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہو ے مصومیت سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اللہ نہ کرے اگر تمہیں کچھ ہو جاتا تو میں تمہارے گھر والوں کو کیا جواب دیتی ہوں انہوں نے تو مجھ سے ہی پوچھنا تھا نا کہ ہماری پنار کہاں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے منہ بسورتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے اچھا میری دادی ماں اچھا معاف کردے ، اب میں تمہیں باتھ روم میں بھی بتا کر جایا کرو گی کہ ردا صاحبہ میں باتھ روم جا رہی ہوں اگر کوئی میرا پوچھےتو بتا دینا کہ پنار باتھ روم میں گی ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کے کندھے پر سر رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔”
پہلے تو ردا نے گھور کر پنار کو دیکھا پھر دونوں مسکراتے ہوئے ایک دوسرے کے گلے لگ گی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ان دونوں کی دوستی ایسی ہی تھی کہ کھایا پیا بھی دونوں جب تک ایک دوسرے کو بتا نہیں دیتی ان کا کھانا ہضم نہیں ہوتا تھا ۔۔۔۔۔۔وہ دونوں سکول ٹائم سے ایک دوسرے کے ساتھ تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
یار تو جب سے آیا ہے سامنے دیوار کی طرف دیکھے جا رہا ہے ایسا کیا نظر آرہا ہے تمہیں دیوار پر جو ہمیں نظر نہیں آرہا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے ہرمان پر طنز کرتے ہوئے کہا جو بیڈ پر لیٹے کافی دیر سے سامنے دیوار پر نظر ٹکاے لیٹا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہوں مجھے تو لگتا ہے اس پر کسی چڑیل کا اثر ہو گیا ہے، ہے بھی کم عمر اور خسین و جمیل نوجوان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث کی خالص زنانہ تعریف پر وہ بھنا کر اٹھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔”تم دونوں کی بکواس ایسے ہی بند ہو گی یا دونوں کو ڈوز کی ضرورت ہے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نےدونوں کو گردن سے پکڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے چھوڑ دے ظالم انسان مانا کہ تم جم شم جاتے ہو لیکن ہم دو ہیں اور تو ایک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے دہائی دیتے ہوئے اپن گردن کو آزاد کروایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
میں باہر جارہا ہو اور اگر کوئی میرے پیچھے آیا تو وہی مار مار کر کیمہ بنادوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے انگلی سے انہیں دھمکاتے ہوئے باہر کی طرف چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے تو دال میں کچھ کالا نظر آرہا ہے یہ کافی دنوں سے عجیب سا بیہیو کر رہا ہے عمر نے بیڈ سے اٹھتے ہوئے پرسوچ انداز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہوں کہہ تو ٹھیک رہا ہے چل دیکھتے ہیں کہاں گیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اس نے پیچھے آنے سے منا کیا اور اس کا کوئی بھروسہ بھی نہیں کہ کہی لوگوں کے بیچ میں ہی نہ دھلائی کر دے۔ ۔۔۔۔۔۔عمر نے باہر نکلتے ہوئے اپنا ہدشہ ظاہر کیا
 
ہرمان جیسے ہی ہوٹل سے باہر نکلا ۔۔۔سامنے کا منظر دیکھ کر وہ رکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور غصے سے اپنے خریف کو گھورا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ردا تمہیں پتہ ہے یہ میری کلاس کا سب سے ہونہار سٹوڈنٹ ہے پنار نے ردا سے دائم کا تعارف کرواتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نائس ٹو میٹ مس ردا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دائم نے ردا کے آگے ہاتھ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نائس ٹو ۔۔۔۔۔ردانے بھی جواباً کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہم لوگ چلتے ہیں ۔۔۔۔آپ لوگ انجوائے کریں۔۔۔دائم نے پنار کو کہتے ہوئے وہ اور اس کے دوست آگے بڑھ گے۔۔۔۔۔۔۔”
ابھی وہ لوگ ٹھوڑا آگے بڑھے ہی تھے کہ ہرمان ان کے سامنے آیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جینز پاکٹ میں ہاتھ پھنسائے بلیک پینٹ اور وائٹ شرٹ پہنے مغرور تاثرات چہرے پر سجائے وہ دائم لوگوں کے سامنے پھیل کر کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا تکلیف ہے تمہیں ہمارے راستے میں کیوں کھڑے ہو ۔۔۔۔۔۔۔دائم نے ہرمان کو گھور تے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عمر اور حارث بھی پیچھے سے آکر ہرمان کے دائیں بائیں کھڑے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بات یہ ہے کہ دائم کے بچے دور رہنا ان سے ورنہ نتجے کے زمیدار تم خود ہوگے۔۔۔۔۔۔اور یہ میری دھمکی مت سمجھنا اور تم جانتے ہو میں صرف دھمکی نہیں دیتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان دائم کو انگلی سے وارن کر تے آگے بڑھ گیا ۔۔۔پیچھے عمر اور حاث بھی معاملے کو ناسمجھی سے دیکھتے ہوئے اس کے پیچھے چلے گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یہ کس سے دور رہنے کا کہہ رہا تھا تمہیں۔۔۔۔۔۔۔دائم کے دوست نے اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پتا نہیں کس کے بارے میں بات کررہا ہے ، اور مجھے تو یہ کبھی کبھی پورا سائیکو لگتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دائم جھنجلا کر کہتے ہوئے آگے بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔”
 
یہ تم دائم کو کس سے دور رہنے کا کہہ رہا تھے ہاں ۔۔۔۔۔عمر نے ہرمان کے سامنے آتے ہوئے تجسس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”تیرے لیے یہ جانا ضروری نہیں، ہرمان نے بےپروائی سے جواب دیتے ہوئے اس طرف بڑھا جس طرف پنار اور ردا بینچ پر بیٹھی ہوئی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار فون میں ژالے سے بات کررہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے میری چندہ اب جب بھی آوں گی تمہیں ساتھ لیکر آوں گی پکا وعدہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ژالے کی ناراضگی دور کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”رہنے دیں آپا آپ کو تو میری زرا فکر نہیں آپ یہاں نہیں ہیں تو امی سارے کام مجھ سے لیتی ہیں ژالے نے مصنوعی رونے والا منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” تم اپنا منہ تو تھیک کرو یار دیکھ کر ڈر لگ رہا ہے اتنی بری شکل بنائی ہوئی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
آپا میں آپ سے بات نہیں کروں گی ژالے نے منہ بسورتے ہوئے کہا اور ساتھ ساتھ نوڈلز پر بھی ہاتھ صاف کرتی جارہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
میری جان میں آرہی ہوں نہ کل تو میں پوچھ لوں گی امی سے پنار نے اس مناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا میں بعد میں بات کرتی ہوں تم سے اوکے اللہ خافظ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کو ردا سے باتیں کرتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان تم ایسا کرنا میرے ہسپتال لے کے آنا اپنی دادی کو ردا نے ہرمان کو کہا جس نے بتایا تھا کہ اس کی دادی شگر کی مریضی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے ردا کو گھور کر دیکھا جیسے پوچھا ہو کہ تمہاری اتنی کب سے اس سے جان پہچان ہوگی ہے کہ تم دادی تک بھی پہنچ گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ردا نے اس کی گھوری کو خاطر میں نہ لا تے ہوئے ہرمان سے اس کی دادی کے بارے میں تفصیل سے پوچھنے لگی، ردا جتنی باہر سے خوبصورت تھی اس کا دل بھی اتنا ہی خوبصورت تھا اسے جو لوگ اچھے لگتے وہ ان سے جلد گھل مل جاتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا کو ہرمان بھی بہت اچھا لگا تھا اس لیے وہ اس سے بھی اچھے طریقے سے بات کرتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
مس پنار کیسی ہیں آپ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کی طرف دیکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”الحمداللہ میں تھیک ہوں ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کی طرف دیکھ کر جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔”ویسے مس پنار مجھے آپ سے ایک سوال پوچھنا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سینے پر ہاتھ باندھ کر پنار سے اجازت لی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے بھی سینے پر ہاتھ باندھ کر اس سے سوالیہ نظر سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
وہ مجھے یہ پوچھنا تھا کہ اچانک سے آپ کوئی اچھا لگنے لگے تو اس کا کیا مطلب ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے معصوم سے انداز میں پنار کو زچ کرنا اپنا فرض سمجھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
افففف تم نے یہ پوچھنا تھا مجھ سے اور یہ تمہارا سوال تھا ہاں پنار نے غصے سے اس سے پوچھا اور خود کو کوسا کہ وہ اس سے کیسے کسی اچھی بات کی امید رکھ سکتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔”
مس پنار سوال تو سوال ہوتا ہے اور اس کا جواب دینا آپ پر فرض ۔۔۔۔۔ہرمان نے مزے سے اس کے چہرے کی طرف دیکھ کر کہا اور جو پنار کے چہرے پر غصے والے تاثرات تھے انہیں انجائے کرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ردا کی بھی ہرمان کے اس انداز پر ہنسی چھوٹ گی۔۔۔۔اور عمر نے اس کا بازو کھینچا چل یار چلیں ورنہ بڑی بیستی کروائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے ایک طرف کھینچتے ہوئے اس کے کان کے قریب منہ کر کے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جواباً نرمی سے اپنا بازو عمر سے چھڑوایا اور پنار کے چہرے کی طرف دیکھا جو ناک کے نتھے پھیلاے اس کو گھور رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ویسے مس پنار آپ کبھی مسکرا بھی لیا کریں ،یقین کرے آپ مسکراتے ہوئے اتنی بری نہیں لگتی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے
اسے زچ کرنے کی خد کردی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اسے جواباً کچھ سخت سنانے ہی والی تھی کہ ایک جونئر کلاس کا سٹوڈنٹ پنار کے پاس آرکا
مس پنار سر ارشد بلا رہے ہیں آپ کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے ہم آرہے ہیں،ایکسیوزمی گائز۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے عمر اور حارث کو کہتے ہوئے ہرمان کو اگنور کر ے آگے بڑھ گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
شان ادھر آو زرا ،ہرمان نے جونئر کلاس کے سٹوڈنٹ کو اپنی طرف بلا یا جس نے پنار کو سر کا پیغام دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی ہرمان بھا ئی وہ گھبراتا ہوا ہرمان کے پاس آیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم میں اتنے مینرز تو ہوں گے جب دو لوگ آپس میں بات کر رہے ہوں تو بیچ میں مداخلت نہیں کرتے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے سنجیدہ لہجے میں پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر اور حارث ہرمان کو ٹکر ٹکر دیکھ رہے تھے،کہ ہرمان ایسی خرکتیں کر رہا تھا جو ان کی سمجھ سے باہر تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
جی لیکن میں نے تو کو کوئی ایسی خرکت نہیں کی جس سے مینرز پر سوال اٹھے،اس بیچارے کی تو سٹی ہی گم ہوگی تھی کیونکہ وہ جانتا تھا ہرمان سے پنگا ناٹ چنگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاو لیکن ائندہ جب میں اور مس پنار آپس میں کوئی بات کر رہے ہوں تو بیچ میں مداخلت مت کرنا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے وارن کرتے ہوئے جانے کا اشارہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور وہ ایسے بھاگا تھا جیسے گدھے کے سر سے سینگ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اس کے جانے کے بعد ہرمان نے ان دونوں کو دیکھا جو ہرمان کو گھورنے میں مصروف تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے آئی بروز اٹھاتے ہوئے ان کے ہونق بنے چہرے کی طرف دیکھ کر پوچھا کہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جواباً دونوں نے نفی میں سر ہلادیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے پلٹ کر بہت مشکل سے اپنا قہقہ روکا تھا کیونکہ کہ ان دونوں کی شکلیں ہی کچھ ایسی بنی ہوئی تھیں، اور بس کی طرف بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” جہاں سب سٹوڈنٹ آج Fairy Meadows جانے کے لیے تیار تھے اور بس میں سوار ہو رہے تھے۔۔۔”
 
اسد کب آرہا ہے میرا ہرمان ۔۔۔۔۔۔ لو بھلا اتنے دن ہوئے بچے کی شکل دیکھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم دونوں کو تو بچے کی زرا پروا نہیں۔۔۔۔۔۔تم دونوں کو پارٹیوں سے فرصت ملے تو میرے بچے کی بھی خبر لو نہ، دادی کو پارٹی میں نہ لیجانے کا غصہ ابھی کم نہیں ہوا تھا اس لیے صبخ ناشتے کی ٹیبل پر ان سے باز پرس کر لی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اماں جان فون آیا تھا رات کو اس کا آپ سو رہی تھیں اس لیے آپ کو ڈسٹرب نہیں کیا تھا ہم نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔اسد صاحب نے ناشتہ کرتے ہوئے ساتھ ساتھ دادی کو جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔….
ارے بھار میں جاے دسترب ،میرے بچے سے بڑھ کر مجھےکو ئی چیز آگے نہیں ۔۔۔۔۔۔تم لوگ مجھے اٹھا دیتے میں کونسا سارا دن کام کرتی ہوں جو تھک جاتی ہوں ،سارا دن اکیلی پڑی رہتی ہوں گھر میں ،تو دفتر چلا جاتا ہے تیری بیوی پارٹیاں شارٹیاں میں چلی جاتی ہے اور عذوبہ سکو ل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے بھی اگلا پچھلا سارا حساب نکالا۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔”
اماں تو آپ نے احد کے ساتھ بھی جانے سے انکار کر دیا ہے اب بتائے کیا کریں ہم۔۔۔۔۔۔۔”
اسد نے کھانا چھوڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔”
میں کیوں جاوں احد کے وہ کونسا سارا ٹبر گھر پر ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا ایک اور بھی خل ہے میرے ہرمان کی شادی کردے ،اس کی بیوی ہو گی اس سے خدمتیں کرواں گی اور رونق بھی ہوگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے چائے کے گھونٹ بڑتے ہوئے اپنی بات اسد کو سمجھائی۔۔۔۔۔۔۔۔”
دادی کی بات پر سب کھانا چھوڑ دادی کی طرف دیکھنے لگے۔۔۔۔کہ آیا دادی مذاق کررہی ہیں یا سیریس ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب سے پہلے عذوبہ کی ہنسی چھوٹی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا دادی۔۔۔واوا کیا حل نکالا ہے آپ نے تنہائی دور کرنے کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ کھانے پر دھیان دو ناہید بیگم نے دادی کا منہ بنتے دیکھ کر عذوبہ کو خشمگیں نظروں سےٹوکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” جی موم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے شرافت سے کھانے پر دھیان دیا۔۔۔۔۔. ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید اماں کو بھی پارٹی وغیرہ میں ساتھ لے جائیں کریں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے کھانے کی ٹیبل پر سے اٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
جی تھیک ہے ، ناہید نے بھی اپنا کھانا فنش کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے مجھ سے کہاں بیٹھا جاتا ہے اتنی دیر کہی لیکن اگر تم کہہ رہے ہو تو میں چلی جایا کروں گی ناہید کے ساتھ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے گھٹنوں پر ہاتھ رکھتے اٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے ہلکی سی مسکراہٹ سے اماں کو سہارا دے کر کھڑا کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان کی بات پر ناہید اور عذوبہ بھی نیچے منہ کر کے مسکرادیں۔۔۔۔۔۔۔کہ دادی سے کیا بھید تھا وہ انہیں مسکراتا دیکھ کر بچوں کی طرح روٹھ کر بیٹھ جاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
 
سب سٹوڈنٹ Fairy meadows میں ِِاِدھر اُدھر پھیلے گھوم پھر رہے تھے اور کچھ نٹ کھٹ سٹوڈنٹ فٹ بال کھیل رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان بھی ان میں شامل تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فٹ بال کو اِدھر اُدھر گھماتے ہوئے کسی کی بھی باری نہیں آنے دے رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر منیب بھی ان کے ساتھ کھیل رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یار تو نے کتنی بار چیٹنگ سے مجھے گرایا ہے اس بار میری باری ہے ۔۔۔۔۔۔۔حارث نے ہرمان کے پیچھے بھاگتے ہوئے ہانپ کرکہا۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔کونسی چیٹنگ ثابت کرو اور بال لے لو ہرمان نے سر منیب کو بھی تھکا دیا تھا اور وہ ہار مان کر وہی بیٹھ گے تھے۔۔۔۔۔۔”
ہرمان بال کو زور سے کک مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور بال اڑتی ہوئی سیدھی پنار کے ہاتھ میں پکڑی آئس کریم کو گرا گی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اور باقی ٹیچرز جھیل کے پاس بیٹھی آئس کریم کھاتے ہوئے ماخول سے لطف اندوز ہو رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ پنار کے ہاتھ سے گری کبھی آئس کریم کو دیکھتی تو کبھی آئس کریم گرانے والی وجہ کو دیکھتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پنار نے غصے سے ہرمان کو دیکھا جو دونوں ہاتھ کمر پر ٹکاے ہونٹ بھینچے پنار کو بے بسی سے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے باقاعدہ نفی میں سر ہلایا کہ بچو اب بچ کر دیکھاو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اٹس اوکے پنار اس نے کونسا جان بوجھ کر بال تمہاری طرف پھینکی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے اسے غصے سے اٹھتے ہعئے دیکھ کر نرمی سے سمجھایا۔،۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ہے تمہارا کہ بال کو صرف میں ہی نظر آئی تھی تم لوگ کیوں نظر نہیں آئی ہاں پنار غصے سے کہہ کر ہرمان کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اسے اپنی طرف آتا دیکھ کر بالوں میں ہاتھ پھیر کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مس پنار میں نے جان بوجھ کر کچھ نہیں کیا۔۔۔۔۔۔۔اور ویسے بھی ایک آئس کریم گرنے کی وجہ سے آپ کیوں اتناغصہ ہو رہی ہیں میں آپ کو ایسی دس آس کریم اور منگوا دیتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے غصے کو کم کرنا چاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن یہ بات اسے اور غصہ دلا گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
چپ رہو تم سمجھتے کیا ہو خود کو ہاں تمہیں اپنے سے بڑے لوگوں سے بات کرنے کی تمیز نہیں نہ تم پڑھائی کو سیریس لیتے ہو اور مجھے تو یہ سمجھ نہیں آتا تم اس لیول پر کیسے اگے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے مٹھیاں بھینچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اور جسے سنا رہی تھی وہ کان میں انگلی گھماتے ہوئے اِدھر اُدھر دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جیسے وہ اسے نہیں کسی اور کو سنا رہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے غصے سے اس کے لاپروا انداز کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان سوری بھولو مس پنار سے سر خلیل نے ان کے پاس آکر رکتے ہوئے ہرمان سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان سر خلیل کی بات پر ہلکا سا مسکرایا تھا۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: