Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 14

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 14

–**–**–

“اشعر آپ نے یاسر بھائی سے بات کی رائمہ کے لیے میں سوچ رہی تھی کہ پنار کی شادی پر ان دونوں کا بھی نکاح کر دیں گے اور رخصتی چار پانچ ماہ تک کر دیں گے کیا خیال ہے آپ کا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عافیہ نے اشعر صاحب کے پاس بیٹھتے ہوئے بات کرتے ہوئے ان سے رائے لی۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہوں میں نے بات کی تھی یاسر سے اسے تو کوئی اعتراض نہیں بلکہ وہ بہت خوش ہوا تھا میں نے کہہ دیا کہ پہلے رائمہ سے اس کی راے پوچھ لو پھر بات آگے بڑھائیں گے۔۔
آپ نے بات کی تھی رومان سے”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اشعر صاحب نے چاے کے گھونٹ لیتے ہوئے تفصیل سے بات کی اور رومان کے بارے میں بھی پوچھ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اشعر ہمارا بیٹا بہت فرمانبردار ہے میں نے اس سے بات کی تھی لیکن اس نے کہا ہے جو آپ لوگوں کی پسند ہوگی وہی میری پسند ہو گی” ۔۔۔۔۔۔۔۔
عافیہ کے لہجے میں بیٹے کے لیے پیار ہی پیار تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے میری بیٹی بھی بہت فرمانبردار ہے میرے ایک بار کہنے پر اس نے سر جھکا دیا تھا۔۔۔
وہ ڈاکٹر بننا چاہتی تھی لیکن میرے ایک انکار پر اس نے پھر کبھی اپنی خواہش کا اظہار نہیں کیا۔۔۔۔۔
تمہیں پتہ ہے یہ پچھتاوا ہمیشہ میرے ساتھ رہے گا کہ میں نے اپنی بیٹی کی خواہش پوری نہیں کی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر صاحب نے سر جھکاتے ہوئے بات مکمل کی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔
“ارے آپ کیوں پریشان ہوتے ہیں ردا کے کہنے پر اس نے آپ سے بات کی تھی ورنہ اسے کوئی شوق نہیں تھا ڈاکٹر بننے کا، اس لیے آپ پریشان مت ہوا کریں بس اس کے اچھے نصیب کی دعا کیا کریں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
عافیہ نے ان کا ہاتھ تھامتے ہوئے دلاسہ دیا ۔ ۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“ہرمان تم نے سنا نہیں میں نے کیا کہا ہے ،سوری بولو مس پنار سے” ۔۔۔۔۔۔۔۔
سر خلیل نے جنجھلا کر ہرمان سے کہا جو ادھر ادھر دیکھ ایسے رہا تھا جیسے وہ اس سے نہیں کسی اور سے محاطب ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ضرور بولتا اگر میں نے جان بوجھ کر بال پھینکا ہوتا ۔۔۔۔۔ اس میں میری کوئی غلطی نہیں تھی اس لیے میں سوری بھی نہیں بولوں گا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے لاپروہی سے سینے پر ہاتھ باند کر سر کو جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اور ویسے ٹیچرز کو بھی اختیاط کرنی چاہئے تھی یہ کسی اور جگہ بھی تو جا کر آئس کریم انجوائے کر سکتی تھیں نہ، ہم کھیل رہے تھے یہاں اب بال اڑ کر انہیں لگ گئی تو اس میں میرا کیا قصور”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے شانے اچکا کر جواب دیا ،اور پھر پنار کو ایک نظر دیکھ کر دوسری جانب چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“پنار بیٹا ہرمان کی طرف سے میں آپ سے معافی مانگتا ہوں۔۔۔۔۔۔
وہ تھوڑا لاپروا اور ضدی ہے لیکن دل کا برا نہیں ہے وہ”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
سر خلیل نے پنار سے ہرمان کی طرف سے سوری بولا اور اس کی طرف سے پنار کا دل صاف کرنا چاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو کہ نا ممکن تھا۔۔۔۔۔۔۔
وہ ابھی بھی اس طرف غصے سے دیکھ رہی تھی جس طرف ہرمان گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“سر آپ کیوں سوری بول رہے ہیں اس میں آپ کی کوئی غلطی نہیں ہے اس لیے آپ سوری بھی مت بولیں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے احترام سے سر خلیل کو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور رہی بات ہرمان کی تو آپ فکر نہ کریں اس کو تو ایسا سیدھا کروں کہ یاد رکھے گا”۔۔
لیکن پنار یہ نہیں جانتی تھی کہ ہرمان خود ہی نہیں بھولنے دے گا اسے ، پنار نے ہرمان کی پشت کو غصے سے دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار کی بات پر ردا اور سر خلیل دونوں کھل کر مسکرائے تھے۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان نے جاتے ہوئے پلٹ کر پنار کی طرف دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے ہرمان کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
لیکن پنار کے براعکس ہرمان نے اسے مسکرا کر دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن پنار چونکی تب جب ہرمان نے اپنے کان کو پکڑ کر ہلکا سا سوری بولا تھا۔۔۔۔۔۔اور پلٹ کر چلتا بنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پیچھے پنار اس کی حرکت پر ہکا بکا رہ گئی تھی کہ جب اسے سب سوری بولنے کا کہہ رہے تھے تب اس ڈھیٹ نے کسی کی نہیں مانی تھی اور اب اپنی مرضی سے اسے سوری بول کر آگے بڑھ گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ حیران تھی اس عجیب و غریب بندے پر ۔۔۔۔جو سب کو پاگل بنا کر رکھ دیتا تھا۔ ۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“پنار کیا ضرورت تھی تمہیں اتنا ہنگامہ کرنے کی ہاں ایک آئس کریم ہی تو گری تھی کونسا تمہیں بال لگی” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ردا نے نائٹ کریم کو ہاتھوں پر لگاتے ہوئے پنار سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار جو کتاب پڑھنے میں مگن تھی ردا کی بات پر اسنے اسے گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اچھا تمہارا مطلب ہے میں بلا وجہ ہی ہنگامہ کریٹ کررہی تھی ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے کتا ب کو زور سے بند کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ویسے پنار آج کل تم کچھ زیادہ ہی غصہ نہیں کرنے لگی ہو ہاں ، یہ بات تو تمہیں ماننی ہی ہو گی” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ردا نے اسے اٹھتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔
ہوں ٹھیک کہہ رہی ہو تم ،لیکن تم نہیں جانتی ہو کہ ایسا ڈھیٹ انسان میں نے اپنی لائف میں نہیں دیکھا۔۔۔۔۔سر درد کر رکھا ہے اس نے میرا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
۔پنار نے سر کو دباتے ہوئے
جنجھلا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور وہ بندے کو زچ کرنے کی حد تک پاگل کردیتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہوں ویسے تمہیں ماننا ہو گا بندہ ہے بڑا پیارا قسم سے اگر سعد میری زندگی میں نہ آئے ہوتے تو میں نے پکا اسے پٹا لینا تھا، پھر کیا ہوا جو مجھ سے پانچ سال چھوٹا ہے تو” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ردا نے بالوں کو ایک ادا سے جھٹکا اور بیڈ پر لیٹتے ہوئے بلینکٹ منہ پر لیتے ہوئے پنار کو چھیڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“تم نہ ایک نمبر کی فلرٹن ہو پتا نہیں سعد بھائی کو تم میں کیا پسند آیا تھا جو تم سے سیدھا نکاح ہی کر لیا”۔۔۔۔۔۔
پنار نے غصے سے اسے تکیہ مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے اب کہ چپ رہنا ہی بہتر سمجھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اچھا میں تھوڑی دیر تک باہر جارہی ہوں مجھے نیند نہیں آرہی ،اور ویسے بھی کل تو ہم نے چلے ہی جانا ہے نا “۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے ردا کا کمبل کھینچ کر اسے بتایا اور باہر کی طرف بڑھ گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ادھر ہی رہنا جنگل میں نہ چلی جانا پھر سے”
ردا نے پیچھے سے اسے پھر چھیڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار اسے اگنور کرتی ہوئی باہر سیڑیوں کی طرف بڑھی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور وہاں سے بڑے سے کوریڈور ہال میں آئی جہاں دن میں تو بہت رش ہوتا تھا لیکن اس وقت کوئی کوئی نظر آرہا تھا۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چادر کو اپنے ارد گرد ٹھیک سے لپیٹ کر باہر آئی۔۔۔۔۔۔۔۔کہ ایک دم ہوا کا تیز جھونکا اس سے ٹکرایا تھا جس پر اس نے آنکھیں بند کر کے ہلکا سا مسکراتی ہوئی باہر چیئر پر بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اب اسے چائے کی طلب ہو رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان بالکنی میں کھڑا کب سے پنار کو دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ دونوں پاوں کرسی پر رکھے آنکھیں بند کئیے تازہ ہوا میں بہتر محسوس کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“سنیں ۔۔۔۔،پنار نے اپنے پاس سے ایک ورکر کو گزرتے دیکھ کر آواز لگائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“جی میم” ۔۔۔۔
ورکر نے اس کے پاس آکر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کیا مجھے ایک کپ چائے کا مل سکتا ہے۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہچکچاتے ہو ئے چائے کا کپ مانگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
سوری میم یہ میرا ڈیپارٹمنٹ نہیں میں صرف یہاں صفائی وغیرہ کرتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ورکر کہہ کر آگے بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ابھی سات آٹھ منٹ ہی ہوئے تھے اس بیٹھے کہ اس کے آگے ایک بھاپ اڑاتا چائے کا کپ آیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پہلے تو وہ چونکی اور پھر چائے کے کپ سے ہوتی ہوئی اس کی نظر کپ بڑھانے والے پر پڑی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جسے دیکھ کر اس کے ماتھے پر بل پڑے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
” لے لیں آپ ہی کے لیے لایا ہوں”۔۔
ہرمان نے چائے کا کپ پنار کے سامنے کرتے ہوئے کہا۔۔۔
“مجھے تمھاری چائے کی کوئی ضرورت نہیں اور تم اپنی چائے اپنے پاس ہی رکھو”۔۔۔۔۔۔
پنار نے چئیر سے اٹھتے ہوئے اندر کی طرف جانے ہی لگی تھی کہ ہرمان نے اسی وقت چائے کا کپ اس کے سامنے کیا۔۔۔
” یہ میں اپنے لیے نہیں لے کر آیا اور مجھےتو ویسے بھی چائے سے الرجی ہے سو یہ میں آپ کے لیے ہی لے کر آیا ہوں ، “ہرمان نے اس کے سامنے پھیل کر کھڑے ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے اس کو پھر سے اگنور کرتے ہوئے گزرنا چاہا کہ ہرمان پھر سے پنار کے سامنے آ کھڑا ہوا۔۔۔۔تم ایسے نہیں مانو گے نہ پنار نے پست انداز میں پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جواباً ہرمان نے نفی مہں سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“اوکے لاو ادھر دو”۔
پنار نے اس سے کپ لینے کے لیے ہاتھ آگے بڑھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چائے کا کپ اس کے ہاتھ پر رکھ دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اور پلٹ کر اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیا۔۔۔۔کیونکہ وہ جانتا تھا مس پنار اس کی موجودگی میں چائے نہیں پیئں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے اس کے جانے کے بعد چائے کا سپ لیا۔۔۔۔۔۔۔اور کمرے میں چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان جو پلر کے پیچھے چھپا ہوا تھا اس کے جانے کے بعد مسکراتی نظروں سے اس کی پشت کو دیکھنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“ارے اتنے دنوں بعد آیا ہے بچہ کچھ اس کی پسند کا ہی بنا لو”۔
دادی نے
ناہید کو لاونج میں آتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔ہرمان دادی کی گود میں سر رکھے آنکھیں موندے لیٹا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔
اماں نوری سے کھانے کی تیاری کروا رہی تھی ابھی کچن سے ہی آئی ہوں۔۔۔۔۔
ناہید نے لاونج میں رکھے صوفے پر بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔
“ہرمان میرے بچے جا کر کمرے میں آرام کرو”۔۔۔۔۔۔
دادی نے ہرمان کے بالوں میں پیار سے ہاتھ پھیرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“دادی جو آرام آپ کی گود میں مجھے مل رہا ہے نہ وہ کمرے میں کہاں”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کے ہاتھ چومتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔
ناہید اور عذوبہ دادی پوتے کے لاڈ کو دیکھ کر مسکرا رہی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“کتنا مس کیا میں نے آپ کو قسم سےآپا”۔
ژالے نے پنار کے گلے میں باہیں ڈالتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار جب سے آئی تھی زالے صرف یہی کہیں جا رہی تھی کے آپا میں نے آپ کو کتنا مس تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جوابا اسے ایک بار پھر سے گلے لگایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ویسے ژالے تم نے آپا کو نہیں بلکہ گھر میں جو تم سے چاچی جان کام کروا رہی تھی نا اس کی وجہ سے تم نے آپا کو مس کیا تھا” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہائمہ نے پنار کو آنکھ مارتے ہوئے ژالے کو چرایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“نہیں آپا قسم سے میں نے آپ کو بہہہہہہہت مس کیا ، جھوٹ بول رہی ہے یہ ہائمہ کی بچی تم سے تو میں بعد میں پوچھتی ہوں”۔ ۔۔۔۔۔۔۔
ژالے نے منہ بسورتے ہوئے پنار کے کندھے پر سر رکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ویسے آپا آپ جو اس کے لئے تحفے لائیں ہیں یہ اسی وجہ سے آپ سے زیادہ لاڈ کر رہی ہے” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رومان نے پنار کے ساتھ بیٹھتے ہوئے ژالے کو تنگ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“آپا آپ ان دونوں کو چپ کروا لیں ورنہ مجھ سے برا کوئی نہیں ہوگا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ہائمہ اور رومان کو گھورتے ہوئے پنار سے ان دونوں کی شکایت کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے تم سے برا کوئی ہے بھی نہیں ۔۔۔۔رومان نے اس کے سر پر چپت مارتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔”
“اب بس بھی کر دو ژالے ،بچی کو آرام کرنے دو جب سے آئی ہے وہ تم دونوں نے اسے بلکل آرام نہیں کرنے دیا اب جاو اپنے اپنے کمرے میں اور پنار کو آرام کرنے دو” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مرینہ نے سب کو اٹھنے کا اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“چچی آپا کو دو تین چھٹیاں ہیں کالج سے، وہ صبح آرام کر لیں گئی” ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے پنار کی گود میں سر رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
“ویسے بھی میں اور ہائمہ آج آپا کے پاس سوئیں گی دو تین چھٹیاں ہیں آپا نے آرام ہی کرنا ہے ہم تو ڈھیر ساری باتیں کریں گے آج”۔
ژالے نے کہا۔۔۔۔۔
” چچی آج میرے پاس ہی رہنے دیں ان کو میں خود بھی آج ان سے ڈھیر ساری باتیں کرنا چاہتی ہوں”۔
پنار نے ہائمہ کو بھی اپنے ساتھ لگاتے ہوئے کہا۔۔جوابا رومان اور مرینہ تینوں کی محبت پر مسکرا دئیے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁
“ہائمہ دیکھو یار کتنی پیاری سینڈل ہے اور وہ بھی براون کلر میں اور تمہیں پتہ ہے براون کلر میری کمزوری ہے”۔
ژالے نے خوشی سے ہائمہ کو جھنجھوڑتے ہوئے کہا جس پر ہائمہ بھنبھنا اٹھی۔۔
“اففف ژالے آرام سے اور کونسی سی ایسی چیز ہے جو ہماری ژالے کی کمزوری نہیں یہ بتاو مجھے زرا تم،کھانا تمھاری کمزوری، شاپنگ تمھاری کمزوری ،آرام تمھاری کمزوری”۔
ہائمہ نے بھی ژالے کی ٹھیک ٹھاک خبر لی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہاہاہا ۔۔۔۔۔۔ژالے جو ہائمہ کی خبر لینے ہی والی تھی کہ قہقے کی آواز پر دونوں نے پلٹ کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” جہاں عمر دونوں ہاتھ کمر پر رکھے قہقہ لگا رہا تھا اور وہ بھی لڑاکا ژالے پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب بچ کر دیکھاو بچو۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے ژالے کو غصے سے عمر کی طرف بڑھتے دیکھ کر سوچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا تکلیف ہے تمہیں،اور یہ تم ہنس کس پر رہے تھے ہاں بتانا ذرا ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے شاپنگ بیگ نیچے رکھتے یوئے میدان میں اتری۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
آپ کے پاس کیا ثبوت ہے کہ میں آپ پر ہی ہنس رہا تھا ہوں اور ویسے بھی میں ہنسو یا روؤں میری مرضی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے بھنویں اچکا تے ہوے ژالے سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بھی عمر تھا جو کسی لڑاکا عورت سے کم نا تھا ۔۔۔۔۔”تم چھچھوندر کی شکل والے تم سے تو آج میں نبٹی ہوں ،تمہاری تو میں ہڈی پھسلی ایک ایک کر کے چیل کووؤں کو کھلا دوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ہاتھ نچاتے ہوئے عمر کو دھمکی دی ۔۔۔۔۔۔اسے تو اس دن موقعہ نہیں ملا تھا ورنہ وہ اسی دن اسے مزہ چکھا دیتی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیوں آپ قصائی کا کام بھی کرتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے پر سوچ انداز میں ژالے سے پوچھا ۔۔۔۔۔”
ژالے چلو کیوں بلا وجہ تماشہ بنا رہی ہو۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اس کا بازوں کھنچتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: