Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 15

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 15

–**–**–

ڈرامہ میں نہیں یہ لنگور کی شکل والا بنا رہا ہے جو ہر جگہ لڑکیوں سے ٹکرانے یا ان پر ہنسنے پہنچ جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے غصے سے ہائمہ کا بازو جھٹکتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے حد کو لنگور بولے جانے پر برا سا منہ بنایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ژالے کو گور کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ژالے تم چل رہی ہو یا میں رومان بھائی کو فون کروں۔ ۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اب کی بار دھمکی سے کام لیتے ہوئے کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”چل رہی ہوں میں ،اور تمہیں تو بچو میں بعد میں دیکھوں گی ژالے نے
اس کے پیر پر زور سے ہیل مار تے ہوئے کہا اور نیچے سے اپنے شاپنگ بیگز اٹھاتے ہوئے ایک ادا سے عمر کو ناک چراتے ہوئے اس کے پاس سے گزر کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ بھی شکر کی سانس لیتے ہوئے ژالے کے پیچھے لپکی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
عمر نے گھور کر ژالے کی سینڈل کو دیکھا جس کی ہیل نہ ہونے کے برابر تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وہ اس جھلی لڑکی پر مسکراکر حارث کو شاپنگ مال میں ڈھونڈنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کی شاپنگ ختم ہونے کا نام نہیں لے رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اور پھر ایک مسکراتی نظر سے جاتی ہوئی ژالے کو دیکھا اور مسکرا کر آگے کی طرف بڑھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان کیا بات ہے بیٹا کیوں اتنا اندھیرا کیا ہوا ہے کہرے میں اوپر سے دوپہر کا ایک بج چکا ہے اور تم ابھی تک نہیں اٹھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ناہید نے کھڑکی سے کرٹن ہٹاتے ہو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان بیڈ پر اوندھے منہ بنا شرٹ کے لیٹا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور سارا کمرہ بکھڑا پڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان اب اٹھ بھی جاو اماں جان صبح سے کتنی بار تمہارا پوچھ چکی ہیں۔۔۔۔نا ہید نے ماتھے سے اس کے بال پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔موم بس دو منٹ اور ہرمان نے کروٹ بدلتے ہوئے ناپید کی گود میں سر رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان کیا بات ہے ساری رات سوئے نہیں کیا، کتنی ریڈ آنکھیں ہوئی ہیں تمہاری ۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اس کے ماتھے پر بوسہ دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
نہیں موم بس نیند نہیں آرہی تھی اس لیے۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بھی جواباً ناہید کا ہا تھ چومتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
موم ایک بات پوچھوں آپ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔پوچھو بیٹا ناہید نے اس کے گھنے بالوں میں انگلیاں پھیرتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” موم ایک انسان اچانک سے آپ کو اچھا لگنے لگے I mean You can see him all the time, even if you like his every act
تو موم اس کا کیا مطلب ہوا ہرمان نے سوالیہ نظروں سے ناہید کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔جو غور سے ہرمان کی طرف دیکھ رہی تھیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہوں جب آپ کو کیا اچھا لگنے لگے ایون کے آپ اسے ہی ہر طرف دیکھنا چاہیں ،تو اس کا مطلب یہ ہوا کہ وہ آپ کو پسند نہیں بلکہ بات اس سے بھی اوپر پہنچ چکی ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اس کا کیا مطلب ہوا موم ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اٹھتے ہوے سوالیہ نظروں سے ناہید سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
بیٹا چھوڑیں یہ سب باتیں یہ آپ کے کرنے کی نہیں ہیں ، آپ جلدی سے فریش ہو کر نیچے آ جائیں۔۔۔۔۔۔۔۔اور ناشتہ +لنچ کر لیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اب آپ نا آے تو آپ کی دادی نے اوپر آ جانا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید کہتے ہوے باہر چلی گیئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ہرمان پر سوچ انداز میں انکی پشت کو دیکھنے لگا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“آپ کو میری بات ماننی ہوگی آپ مجھ سے وعدہ کر چکے ہیں۔۔۔۔
یار تم کوئی دوسری بات منوا لو وہ راضی نہیں ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے ہرمان کو سمجھانے کی ایک اور کوشش کی جو کہ نہ ممکن تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
میں کچھ نہیں جانتا آپ کو ان سے بات کرنی ہوگی اور نہ صرف کرنی ہے بلکہ منوانی بھی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہرمان نے ادھر اُدھر دیکھتے ہوئے بے نیازی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
تھیک ہے تمہیں ٹیوشن پڑنی ہے نہ میں کسی اور ٹیوٹر کا بندوبست کردیتا ہوں۔۔۔۔۔۔سرخلیل نے صوفہ پر آرام دہ ہو کر بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
“کیااااااا میں آپ سے مس پنار سے ٹیوشن لینے کی بات کررہا ہوں اور آپ کسی دوسرے ٹیوٹر کی بات کررہے ہیں نو وے میں صرف مس پنار سے ہی پڑوں گا ادر وائز مجھ سے آپ اور ڈیڈ کوئی امید مت رکھیے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے صوفہ سے کھڑے ہوتے ہوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
یار وہ نہیں مانے گی ، پنار کے فادر سے میں نے پہلے ہی بہت مشکل سے اجازت لی تھی ایک ماہ پڑھانے کے لیے جب تک کوئی اچھا ٹیچر نہ مل جائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے اس ڈھیٹ کو سمجھانے کی ایک اور کوشش کی جو کہ نہ ممکن تھا آخر ڈیٹھ جو تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
” آپ کل مس پنار اور ان کے فادر سے بات کر لیں اور پرسوں میں ان کے گھر ٹویشن کے لیے چلا جاوں گا ۔۔۔۔ہرمان نے نیازی سے کہتے ہوئے باہر کی طرف چلاگیا ۔۔۔اور پیچھے سر خلیل بیچارے ہکا بکا اس کی پشت کو دیکھتے رہ گے۔۔۔۔۔اور اس وقت کو کوس کر رہ گے جب انہوں نے اس کی بات ماننے کا وعدہ لیا تھا”۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار بیٹا آپ کے سکول پرنسپل آئے ہیں۔ ۔۔۔۔۔آپ کے ابو بھی ادھر ہی ہیں جاو تمہیں بلا رہے ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے کچن میں بریانی کو دم لگاتی پنار کو کہا جو سر خلیل کے اس طرح آنے پر چونکی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔سر اور اس وقت ،اچھا میں جاتی ہوں آپ دیکھ لیجئے گا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سنک کے ٹیپ میں ہاتھ دھوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور پھر ڈرائنگ روم میں چلی گئ۔ ۔ ۔۔۔۔۔”
السلام علیکم ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اندر داخل ہوتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”وعلیکم اسلام بیٹا، آو بیٹا بیٹھو، سر خلیل نے شفقت سے اس جواب دیتے ہوئے اس بیٹھنے کا کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
جی سر ۔۔۔۔۔۔پنار بیٹا میں آج ایک درخواست لے کر آیا ہوں آپ کے پاس بیٹا انکار مت کریں گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے بات کا آغاز کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اشعر کی طرف سوالیہ نظروں سے دیکھا۔ ۔۔۔۔۔جیسے پوچھا ہو کیا بات ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا آپ کے ابو سے بات کر لی ہے میں نے اگر تمہیں کوئی اعتراض نہیں ہے تو انہیں کوئی مسلہ نہیں۔ ۔۔۔۔خلیل صاحب نے پنارکو اشعر کی جانب دیکھتے دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔بیٹا میں چاہتا ہوں کہ ہرمان کو آپ اگر ٹویشن دے دیا کرںں تب تک،جب تک آپ کالج میں ہیں بعد میں کوئی اور ٹیوٹر سے پڑھ لے گا وہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے تفصیل سے پنار سے بات کی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کا ہرمان کو ٹیوشن دینے کی ہی بات پر صدمے سے منہ کھل گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔”کیا ،سر یہ آپ کیا کہہ رہے ہیں۔۔۔۔۔آپ جانتے ہیں اس کی خرکتیں تو مجھ سے کالج میں برداشت نہیں ہوتی اور آپ گھر پر پڑھانے کی بات کر رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کے منہ میں جو آیا اس نے جلدی جلدی بول دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن سر اگر آپ کہہ رہے ہیں تو ٹھیک ہے میں اسے ٹیوشن دے دوں گی، اور آپ بھی اسے سمجھا دیجیے گا کہ تھوڑا مینرز سے رہے”
پنار نے پہلے تو جلدی جلدی انکار کرنا چاہا لیکن سر خلیل کے چہرے پر پریشانی آتے دیکھ کر اسے مانتے ہی بنی۔
“شکریہ بیٹا آپ نے میری بہت بڑی پریشانی سولو کر دی ہے ” ۔
سر خلیل نے پیار سے کہتے ہوۓ پنار کے سر پر ہاتھ رکھا ۔۔۔
“سر چائے تو لیں “
پنار نے چائے کا کپ پکڑاتے ہوئے کہا۔ ۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
“رات کو کتنے بجے آئے تھے تم دونوں” ۔۔۔
خالد صاحب نے ڈائنگ ٹیبل کی کرسی کھسکاتے ہوئے عمر اور حارث سے پوچھا۔۔۔۔۔۔
ووہ وہ ڈیڈ وہ ہم جلدی ہی آ گئے تھے”۔۔
عمر نے ہکلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔
” کتنے بجے آئے تھے میں نے ٹائمنگ پوچھی ہے” ۔
خالد صاحب نے کھانے کی پلیٹ سامنے کرتے ہوئے کہا اور ان کے تو ڈر کے مارے سر ہی اوپر نہیں ہو رہے تھے۔۔۔۔۔
” تو بتا تیری وجہ سے ہی لیٹ ہوے تھے
عمر نے حارث کو کہنی مارتے ہوئے جواب دینے کو کہا۔۔،۔۔۔،
“وہ چاچو جلدی ہی آ گئے تھے بارہ بجے تک “
حارث نے ہڑبڑاتے ہوئے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔
“ہمممممم کچھ زیادہ ہی جلدی اگے تھے تم دونوں ،چئیر سے اٹھو دونوں”۔
خالد صاحب نے بھاری آواز سے ان دونوں کو اٹھنے کا کہا۔ خالد صاحب کا کہنا ہی تھا کہ وہ دونوں جلدی سے چئیر سے اٹھے اور اپنی اپنی ماؤں کو بےبسی سے دیکھا کر رہ گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صبح کا ناشتہ اور دوپہر کا لنچ نہیں ملے گا تم لوگوں کو ۔۔۔۔۔۔۔۔اور اگر کسی نے انہیں کھانا دینے کی کوشش کی تو اسے ڈبل سزا ملے گی۔ ۔۔۔۔۔۔. ۔۔۔جاؤ۔ اب دونوں کمرے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔خالد صاحب نے ناشتے پر توجہ دیتے ہوے انکو جانے کا اشارہ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور وہ دونوں کھانے کو حسرت سے دیکھ کر رہ گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہاہاہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔واقعے یار تم تو اس سے کالج میں ہی تنگ تھی اور اب گھر پر بھی……..۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جب ردا کو ہرمان کو ٹیوشن دینے کا بتایا تھا وه تب سے اس کا ریکارڈ لگا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار اب تم مجھ تنگ کر رہی ہو ۔۔۔۔۔۔پنار نے منہ بناتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔” ویسے پنار یار اتنا کیوٹ ہے وہ تم کیوں اتنی ہار کھاتی ہو اس سے ۔۔۔۔۔۔ردا نے پنار کو تنگ کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب تم نے یہ ہرمان نامہ بند نہ کیا تو میں فون بیند کر دوں گی ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اکتا کر اسے دھمکی دی جو آخر کار کامیاب ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اچھا نہیں کرتی تنگ ۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے پنار میں تمسے بعد میں بات کرتی ہوں ابھی ایک ایمرجنسی ہوگئی ہے ۔۔۔۔۔اوکے خدا حافظ پنار نے جوابا کہہ کر فون بند کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اتنے میں ژالے چلی آیی ۔۔۔۔۔۔آپا یہ میں کیا سن رہی ہوں کہ آپ اب اپنے سٹوڈنٹ کو گھر میں بھی پڑھایا کریں گیئی واؤ ۔۔۔۔۔۔۔ژ الے نے بیڈ پر دھرام سے گرتے ہوے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
افففف ژالے آرام سے کیوں اس طرح کی حرکتیں کرتی ہو اب بڑی ہو جاؤ ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے کے سر پر چپٹ مارتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”
اف کیا ہے یہاں تو ہر کوئی مجھے ڈانٹتا ہی رہتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے منہ بسورتے ہوے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اچھا یہ سب چھوڑیں مجھ یہ بتائیں کہ جو خبر میں سن کر آیی ہوں وہ سچ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔بس ژالے بی بی نے جب تک الف سے ی تک کی سٹوری نہ سن لیتی اسے چین نہیں آنا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
خلیل کہہ رہا تھا تم ٹیوشن لینا چاہتے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شکر ہے تم نے بھی پڑھائی کو کچھ سریس لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے رات کا کھانا کھاتے ہوے ہرمان سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اسد کی بات پر ناہید اور عذوبہ نے کھانا چھوڑ ہرمان کو حیرت سے دیکھنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیااا تم ٹیوشن لینا چاہتے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے حیرت سے ہرمان سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔” آپ لوگ تو اس طرح بیہیو کر رہے ہیں جسے میں نے کوئی انوکھا کام کر لیا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کھانے کی ٹیبل سے اٹھتے ہوے نگواری سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”
ارے میرے بچے کھانا تو کھا لو ,تم سب لوگ پیچھے نہ پڑ جایا کرو بچے کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے سب کو ڈانٹتے ہوے ہرمان کو کھانا کھانے کا اشارہ کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”نہیں دادی میرا ہوگیا ، اور ویسے بھی عمر اور حارث میرا انتظار کر رہے ہونگے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کا سر چومتے ہوے کہا اور ایک نظر اسد پر ڈال کر باہر چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اسلام علیکم ،میں ہرمان ہوں مس پنار کا اسٹوڈنٹ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسلام کے بعد عافیہ سے اپنا تعارف کروایا جو اسے سوالیہ نظروں سے دیکھ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اچھا اچھا آؤ بیٹا اس طرف آجائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے اسے ایک طرف بنے روم میں لیجا چاہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”انٹی اس طرف کیوں میں اکیلا نہیں بیٹھو گا ،۔۔۔۔جہاں سب ہوں گے میں بھی وہی بیٹھوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے الگ تھلگ بنے کمرے میں جانے سے انکار کر دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور وہی جم کر کھڑا ہوگیا۔ ۔۔۔۔۔۔”مگر بیٹا۔ ۔۔۔۔۔۔۔عافیہ ابھی کچھ کہنے ہی لگی تھی کہ ہرمان بیچ میں ہی بول پڑا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انٹی آپ لوگ مجھے غیر سمجھتے ہیں میں نہیں میں آپ سب لوگوں کے بیچ میں ہی بیٹھوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے عافیہ کے ہاتھ تھامتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ اس کی اتنی اپنایت پر مسکرا دی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آجاو بیٹا اس طرف ۔۔۔۔۔۔عافیہ نے اسے ًدرائنگ روم کی طرف اشارا کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
السلام علیکم ،ایوری ون۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سب کو اپنی طرف متوجہ کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے چونک کر ہرمان کی طرف دیکھا جو سیدھا ڈرائنگ روم میں ہی پہنچ گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر سب کو دیکھا اور پھر نظر پنار پر آرکی تھی جو رف سے ہولیے میں تھی بلیو شرٹ نیچے حسب معمول جینز پہنے بالوں کا اونچا سا جوڑا بناے کچھ خاص نہیں لگ رہی تھی لیکن ہرمان کو وہ وہاں بیٹھے ہوئے سب لوگوں سے زیادہ خوبصورت لگ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے اسلام کا جواب دیتے ہوئے بیٹھنے کا اشارا کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان کو بیٹھے ابھی ٹھوڑی ہی دیر ہوئی تھی جب پنار نے اسے کتابیں نکالنے کو کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان نے اپنی ستواں ناک چڑاتے ہوئے بیگ کی طرف ہاتھ بڑھایا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
یار یہ کتنا خوبصورت ہے ،ژ الے نے ہائمہ کو کہنی مارتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے پہلے تو ژالے کو گھورا اور پھر ہرمان کی طرف دیکھا جو بلیو جینز پر بلیک شرٹ پہنے ہوئے گریبان میں گلاسز ٹکائے بہت ہی زیادہ خوبصورت لگ رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہوں واقعے یار غضب کا خوبصورت اور پرسنلٹی کا مالک ہے، یہ تو جہاں جاتا ہو گا لوگ اسے ضرور پلٹ کر دیکھتے ہوں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ دونوں ہرمان کو دیکھ کر کان میں باتیں کر رہی تھیں۔ ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”جب ہرمان نے ان دونوں کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔وہ دونوں جو اسے دیکھ رہی تھی ہرمان کے اچانک متوجہ ہونے پر اسے مسکرا کر دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جواباً ہرمان نے ہلکی سی سمائیل پاس کی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔”
یہ لو بیٹا چائے مرینہ نے ہرمان کو چائے کی طرف متوجہ کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پہلے چائے کو دیکھا اور پھر ہرمان کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کی طرف دیکھا جیسے کہا ہو آپ ہی انہیں کہے ۔۔۔۔۔۔” چچی جان ہرمان کو چائے سے الرجی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کے اگے سے چائے پکرتے ہوئے مرینہ کو کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”او، بیٹا آپ بتا دو میں آپ کے لیے کچھ اور بنا کر لے آتی ہوں مرینہ نے مسکرا کر ہرمان سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”انٹی پلیز آپ تکلف مت کریں۔ ۔۔۔۔۔مجھے اگر کسی چیز کی ضرورت ہو گی تو میں آپ سے مانگ لوں گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے انہیں مسکرا کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے بیٹا آپ تکلف مت کرنا۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: