Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 16

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 16

–**–**–

یار ویسے تجھے کیا ضرورت پر گی ٹیوشن لینے کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پہلے انکل نے اتنے ٹیوٹر رکھوائے لیکن تم نے ایک کو بھی ٹکنے نہیں دیا۔۔۔۔۔۔۔۔سب کیا وجہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے کھانے سے انصاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیوں تجھے کیا ٹینشن ہے ،پہلے میرا دل نہیں تھا ٹیوشن لینے کا ۔۔۔۔لیکن اب میرا موڈ ہوریا ہے ٹیوشن پڑھنے کا۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے بے فکری سے گیند کو ہوا میں اچھالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”
ہوں لیکن مس پنار سے ہی کیوں۔۔۔۔حارث نے بھی اب کی دفعہ گفتگو میں حصہ لیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تم دونوں کھانا کھاو اور نکلو میرے کمرے سے مجھے سخت نیند آرہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ان دونوں کو یہاں سے نکالنا ہی بہتر سمجھا۔۔۔۔۔۔۔۔”
یار ویسے توں کافی دنوں سے مشکوک حرکتیں کر رہا ہے مجھے تو دال میں کچھ کالا نظر آتا یے عمر نے جوس کا گلاس خالی کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
تم دونوں کے پیٹ ہیں یا ٹینکی جو فل ہو نے کا نام نہیں لے رہی۔۔۔۔۔ہرمان دونوں کو چلتا کرنا ہی بہتر سمجھا۔۔۔۔۔۔”یار پورے دن کے بھوکھے ہیں کیا اب بھی ہم کھانا ٹھیک سے نہ کھائیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے تو ہمیں دو وقت کھانا نہ کھانے کی سزا ملی تھی لیکن اس حارث کی وجہ سے رات کو بھی کھانا نہیں ملا ۔۔۔۔۔۔۔۔اسے کھانا چوری کرتے ہوئے ڈیڈ نے دیکھ لیا تھا اس لیے رات کھانا بھی سکپ ہو گیا ۔۔۔۔۔اور اب ہم کھڑکی سے بھاگ کر تیرے پاس آئے ہیں ۔۔۔۔۔عمر نے ہرمان کو کھانا کھاتے ہوئے ساری بات بتائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ٹھیک ہے اب کھا لیا نا کھانا تو نکلو یہاں سے مجھے نیند آرہی ہے ۔۔۔۔۔۔ہرمان دونوں کو باہر کا راستہ دکھایا۔۔۔۔۔۔۔۔”ہم تو نہیں جارہے ابھی ہم چائے پیں گے۔۔۔۔۔۔۔حارث نے اس کے بیڈ پر دراز ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
تو تم دونوں ایسے نہیں جاو گے ہاں۔۔۔۔ہرمان نے آخری بار پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
بلکل نہیں۔۔۔۔۔۔عمر نے بھی بیڈ پر نیم دراز ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔یہ تم فون کسے کر رہے ہو۔۔۔۔حارث نے اسے فون نکالتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
خالد انکل کو ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سکون سے فون ملاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔” کیااااا وہ دونوں بیڈ سے سپرنگ کی طرح اچھلے۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں اگر تم دونوں تین منٹ کے اندر میرا کمرا خالی نہ کیا تو پھر دس منٹ میں خالد انکل یہاں ہوں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے فون کو کان سے لگاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اور وہ دونوں دو ہی منٹ میں کمرے سے بھاگے تھے لیکن۔جاتے ہوئے ہرمان کو بد دعا دینا نہیں بھولے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ کرے تیری بیوی بھی تجھے کمرے سے ایسے ہی نکالے عمر اسے کہہ کر بھاگ گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پیچھے سے مسکرا کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان تمہارا اسائنمنٹ کہاں ہے ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان سے اس کا اسائمنٹ مانگا۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ساری کلاس نے اسائنمنٹ جمع کروا دیا تھا صرف ہرمان ہء تھا جو مزے سے چیونگم چباتے ہوئے ببل بنا رہا تھا ۔۔۔۔۔پنار کے بلانے پر اس کی طرف متوجہ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری لیکن میرا گھر رہ گیا کل لے آوں گا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے احسان کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا میں اتنی محنت سے تم سے اسائنمنٹ بنوایا تھا اور تم گھر چھوڑ آئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کی لاپرواہی پر آگ بگولا ہوگئ۔۔۔۔۔۔۔”
جواباً ہرمان نے معصوم سا منہ بنایا تھا جیسے کہا ہو اس میں میرا کیا قصور۔۔۔۔۔۔۔۔”
نکل جاو کلاس سے باہر۔۔۔ پنار نے باہر کی طرف اشارا کرتےہوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔” لیکن ہرمان اپنی جگہ ہر جمع رہا جیسے وہ کسی اور سے مخاطب ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان تم نے سنا نہیں۔۔۔۔۔۔۔
”ہرمان گیٹ آٶٹ فرام ماۓ کلاس ناٶ“
پنار نے سختی سے سے کہا۔پر ہرمان اپنی جگہ پر ڈٹا رہا اور ٹکٹکی باندھ کر پنار کو دیکھے جا رہا تھا اس نے اپنے غصے پر قابو پانے کیلیے کرسی کو زور سے پکڑا ہوا تھا۔
”ہرمان میں تم سے کہہ رہی ہوں نکل جاو میری کلاس سے“
اس دفعہ پنار نے انگلی سے اشارہ کرتے ہوۓ باہر کی جانب اشارا کیا۔پر ہرمان پر کوٸی اثر نا ہوا وہ اپنی جگہ پر ہی بیٹھا رہا۔
”ٹھیک ہے نا جاو میں ہی چلی جاتی ہوں۔تمھارے جیسا بدتمیز اور ڈیٹھ سٹوڈینٹ میں نے آج تک نہیں دیکھا۔“
عمر جلدی سے بھاگ کر اس کے پاس آیا اور اس کے کان کے پاس آ کر آہستہ سے کہا۔
”یار ہرمان چلا جا باہر اگر ٹیچر باہر گٸی نا تو سمجھو پرنسپل سے ہماری بینڈ بجے گی پلیز یار“
”تو۔۔میں کسی سے ڈرتا ہوں کیا؟ ہونہہہ“
ہرمان نے فخرانہ انداز میں کہا۔
”یار پلیز چلا جا پلیز بعد کا بعد میں دیکھا جاۓ گا“
پنار نے بیگ کندھے پر رکھا اور کلاس رجسٹر پکڑ کر باہر کی جانب قدم بڑھاۓ۔
”ارے ٹیچر! آپ کیوں جاٸیں گی باہر میں جاوں گا نا ایک تو آپ غصہ بڑی جلدی کر جاتی ہیں آپ پیاری ٹیچر۔“
ہرمان اسے ہلکی سی مسکان کے ساتھ دیکھتے ہوۓ باہر نکل گیا۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اماں یہ سوٹ میں آپ کے لیے لائی تھی۔۔۔۔۔۔۔اور میں نے خود ڈیزئن کیا ہے اسے ۔۔۔۔۔منیبہ نے ایک ہاف وائٹ نفیس سی کڑھائی والا سوٹ دادی کی جانب بڑھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔”. دادی نے سوٹ کو لیکر غور سے دیکھا اور پھر ناک چڑھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے میرے لیے یہی سفید اور ہاف سفید رہ گے ہیں۔۔۔۔۔۔۔ہاں۔۔۔۔خود تو بڑے چمکیلے بھرکیلے رنگ پہنتی ہو اور میرے لیے یہ مٹھے رنگ رہ گے ہیں۔۔۔۔۔۔۔دادی نے منہ بناتے ہوئے دونوں کوگھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔منیبہ جو کچھ کہنے ہی والی تھی ہرمان کے بولنے پر چپ ہوگی۔۔۔۔۔۔۔
ارے میری دادی کے ساتھ اتنی بڑی نا انصافی ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی آپ مجھے بتائیں آپ کو کس کلر کے سوٹ چاہئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں آپ کو مال ساتھ لے کر جاوں گا اور آپ اپنی مرضی کے کلر لے لینا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کو باہوں میں لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ناہید نے ہرمان کو گھور کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔”لیکن ہرمان پر کب کسی کی گوری کا اثر ہوا ہے جو اب ہوتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ارے میرے بچے ایک تو ہی تو ہے جسے اس گھر میں میری فکر ہے ورنہ اس گھر میں تو کسی کو میری پروا ہی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے دونوں بہووں کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔اور یہ بہویں بھی کبھی ساس کی سگی ہوئی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان جو پارٹی میں اس دن عورتوں نے جس رنگ کے کپڑے پہنے ہوئے تھے نا میں اسی رنگ کے کپڑے بنواں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پرانے سارے کپڑے میں نوری کو دے دوں گی ٹھیک ہے۔۔۔۔۔ دادی نے خوش ہوتے ہوئے ہومان سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے میری پیاری دادی جس کلر کے کہیں گی اسی کلر کے لے کے دوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ناہید اور منیبہ کو چراتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔جواباً وہ دونوں اسے گھور کر رہ گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان نے کچھ ہی دنوں میں پنار کے گھر والوں کے دلوں میں اپنی شوخ طبیعت کے باعث جگہ بنالی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان یہ کو ئسچن میں تمہیں تین بار سمجھا چکی ہوں دھیان کہاں ہے تمہارا ہاں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کب سے اسے سمجھانے کی کوشش کر رہی تھی لیکن وہ جان بوجھ کر بار با ر سمجھانے کا کہہ رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور معصوم سی شکل بنا کر کہتا مجھے سمجھ نہیں آئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” پنار نے زور سے کتاب بند کی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان یہ آخری بار ہے اب اگر سمجھ نا آئے تو بھار میں جاو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے انگلی سے اسے وارننگ دیتے ہوئے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اوکے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے شرافت سے کہا۔۔۔۔۔۔
یہ کرو میں تھوڑی دیر تک آتی ہوں۔۔۔۔۔۔پنار ہرمان کو کہہ کر کچن کی طرف چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے یرمان نے بک بند کی اور باہوں کو سر کے پیچھے رکھتے ہوئے ریلکس انداز میں بیٹھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اور مسکرا کر آنکھیں موند لیی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کیاااااا شادی اور اس رومان سے ۔۔۔۔۔۔۔امی آپ نے سوچا بھی کیسے کہ میں رومان سے شادی کروں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رائمہ نے بیڈ سے کھڑے ہوتے ہوئے مرینہ سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مرینہ نے جب اسے رومان کے بارے میں راے لی تو رائمہ نے شدید ردعمل دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیوں رومان میں کیا برائی ہے خوش شکل ہے پڑھنے کے ساتھ بزنس بھی سنبھالتا ہے اور سب سے بڑی بات اپنے گھر کا بچہ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے کا فی ناگواری سے کہا۔۔۔۔۔۔۔”
اگر اتنا ہی پیارا بچہ ہے تو ہائمہ کی کروادے اس سے شادی ۔۔۔۔۔۔۔۔مجھ سے تو آپ امید مت رکھئے گا کہ میں رومان سے شادی کروں گی۔۔۔۔۔۔۔رائمہ تن فن کرتی ہوئی کمرے سے نکل گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے مرینہ اس کے اتنے شدیش رداعمل پر ہکا بکا رہ گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور چونک تو پنار بھی گی تھی جو چچی کو کھانے کے لیے بلانے آئی تھی ، اور رائمہ کے اس عمل کو کافی ناگواری سے دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
مس پنار بات سنے زرا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دائم نے پنار کو آواز لگائی۔۔۔۔۔وہ جو گھر جانے کی تیاری کر رہی تھی ۔۔۔۔۔دائم کے بلانے پر اس کی طرف متوجہ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں کہو۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے دائم سے پوچھا۔۔۔۔۔وہ مس یہ کوئسچن تھوڑا دیٹیل سے بتا دیں اس کی تھوڑی سمجھ نہیں آرہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”دائم نے بک پنار کو پکراتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”
اوکے دیکھاو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کیا دیکھ رہا ہے ادھر چل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کا بازو کھینچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔” ہوں چلتے ہیں ۔۔۔۔۔لیکن کسی کو تھوڑا سا سبق سکھا کے ۔۔۔۔ہرمان نے دائم کو دیکھ کر کہا جو پنار کے پاس کھڑا اس کی طرف متوجہ تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ٹھینکس مس پنار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویلکم، پنار نے مسکرا کر کہا اور اپنا بیگ لے کر چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
دائم اور اس کے دوست ہرمان کے پاس سے گزرنے ہی لگے تھے جب ہرمان نے اپنی ٹانگ دائم کے اگے کی تھی ۔۔۔۔جس سے وہ بہت بری طرح گرا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” او چچچ زیادہ تو نہیں لگی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے پاس بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”تم نے جان بوجھ کر گریا ہے مجھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ دائم نے غرا کر ہرمان کو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ہرمان ہم دیکھ رہے تھے تم نے ہی دائم کو گرایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔دائم کے دوست نے بھی کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اوکے میں نے گرایا ہے دائم کے بچے کو ۔۔۔۔۔۔۔تو کیا کر لو گے تم لوگ ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے زچ کرنے والی مسکان سے انہیں تپایا ۔۔۔۔۔۔” تمہیں تو دیکھ لیں گے ہم چھوڑیں گے نہیں دائم کے دوستوں نے سر خلیل کو کمرے سے نکلتے دیکھ کر کہا اور باہر کی طرف بڑھ گے۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
یہ کیا تھا ہاں, کیوں گرایا تم نے دائم کو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کے سامنے آتے ہوئےپوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ایسے ہی میرا موڈ ہو رہا تھا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بے نیازی سے کہتے ہوئے اگے بڑھنا چاہا۔۔۔۔۔۔۔لیکن اب حارث اس کے سامنے آیا تھا۔۔۔۔۔۔۔”
کیا مسلہ ہے تم دونوں کو ۔۔۔ہٹو راستے سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مس پنار کو پسند کرنے لگے ہو نہ تم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جو ابھی دو تین قدم ہی اگے بڑھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔جب عمر کی بات پر اپنی جگہ پر ساکت رہ گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔” کیا بکواس کر رہے ہو تم ۔۔۔۔ہرمان نے پلٹ کر اسے جھڑکا۔۔۔۔۔۔۔۔”
تو خود سے تو چھپا سکتا ہے لیکن ہم سے نہیں، تمہیں بچپن سے جانتے ہیں ہم ۔۔۔۔تو پھر کیسے سوچ لیا تم نے کہ تو ہمیں نہیں بتاے گا تو ہمیں پتا نہیں لگے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” عمر نے اس کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان نے بے بسی سے لب بھینچے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔”چل کینٹین اور وہاں جاکر بات کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔حارث نے اس کو پکرتے ہوئے کینٹین کی طرف رخ کیا۔۔۔۔۔۔”
ِ 🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آپا سپرائز۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے پیچھے سے آکر پنار کے گلے میں باہیں ڈالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” کیسا سپرائز پنار نے اسے سامنے کرتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔” ہوں ،آپا آپ خود گیس کریں نہ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ڈرامائی انداز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”
مجھے سے نہیں ہوتا گیس وغیرہ۔۔۔۔۔پنار نے چائنز رائس کو دم لگاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اففف آپا آپ نا۔ ۔۔۔۔اچھا میں خود ہی بتا دیتی ہوں۔ ۔۔آسیہ انٹی کا فون آیا تھا کل رات رمیز بھائی نے آکر انہیں سپرائز دیا ہے اور آج رات وہ ہماری طرف آئیں گے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہے نا سپرائز ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے پرجوش انداز میں بتایا۔ ۔۔۔۔۔”
سچ میں۔ ۔۔۔۔پنار نے اس کی طرف پلٹ کر پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔ابھی ژالے کچھ کہتی کہ مرینہ اور عافیہ کچن میں چلی آئیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا رات کو رمیز اور اس کے گھر والے آرہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ تو میں سوچ رہی تھی کہ کچھ کھانا باہر سے منگوا لیتے ہیں اور باقی خود بنا لیتے ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”تم دونوں کیا کہتی ہو ۔۔۔عافیہ نے مرینہ اور پنار سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”بھابھی جیسے آپ کہہ رہی ہیں ویسے ہی کر لیتے ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔مرینہ نے عافیہ کی ہاں میں ہاں ملائی۔ ۔۔۔۔۔۔۔”جبکہ ژالے اب پنار کو چھیڑ رہی تھی جو اسے گھور کر چپ رہنے کا کہہ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے کوئی آرہا ہے آج ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کافی دیر سے نوٹ کر رہا تھا کہ آج سب خواتین کچن میں لگی ہوئی تھی اور پنار تو اسے نظر ہی نہیں آرہی تھی۔ ۔۔۔ملازمین صفائی وغیرہ کا کام نبٹا رہے تھیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ژالے اس کے لیے جب پانی لیکر آئی تو اس نے اس سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہاں وہ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے جاو تمہیں ہائمہ بلارہی ہے ۔۔۔۔۔ژالے ابھی اسے بتانے ہی والی تھی جب پنار نے اسے اپنی طرف متوجہ کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” واوا آپا آپ کتنی پیاری لگ رہی ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار ریڈ شرٹ اور ریڈ ہی جینز پہنے اور بلیک ڈوپٹہ اوڑھے بال کھولے عام دنوں سے الگ لگ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان پنار کو دیکھ کر کھڑا ہوا تھا۔ ۔۔۔۔اور اس کا گہری نظروں سے جائزہ لیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مس آپ کہی جا رہی ہیں۔ ۔۔۔۔ہرمان نے پہلے کبھی اسے اس طرح تیار نہیں دیکھا تھا تو اس لیے پوچھ لیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ابھی کچھ کہنے ہی والی تھی جب ۔۔۔۔۔ژالے نے فٹ سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔ارے ہرمان بھائی آج آپا کے سسرال والے آرہے ہیں نا۔ ۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: