Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 17

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 17

–**–**–

کیاااااا، کیا ابھی تم نے سسرال والے مطلب ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے شاک سے ایک بار پھر ژالے سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی ہرمان بھائی وہ آپی کے ہونے والا سسرال ہے اپا انگیجڈ ہیں رمیز بھائی سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دوسال سے وہ ابروڈ تھے بزنس کے سلسلے میں۔ ۔۔کل ہی آئے ہیں وہ۔ ۔۔۔۔۔۔۔”
ژالے نے اسے ساری بات تفصیل سے بتادی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان کا دل تو کررہا تھا کہ اس رمیز نامی انسان کا قتل ہی کردے۔ ۔۔۔۔۔۔جو اس کی پنار سے منگنی کر کے بیٹھا تھا اور اسے خبر نہیں ہوئی۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے تیش میں آکر پانی کے گلاس کو ہاتھ مار کر گرایا اور پھر غصے سے باہر کی طرف بڑھ گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ژالے بیچاری ہکی بکی سی اس کے اس طرح کے رداعمل دینے پر خیران سی رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان بات سننا زرا ۔۔۔۔۔۔۔سامنے سے آتے رومان نے ہرمان کے بازو پکر کر کہا۔ ۔۔۔۔۔لیکن ہرمان نے اس کے ہاتھ کو غصے سے جھٹکا اور آگے کی طرف بڑھ گیا۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔رومان نے خیرت سے اس کی خرکت کو دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔اور ژالے سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کو کیا ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔”
ژالے نے صرف سر کو دائیں بائیں ہلایا۔ ۔۔۔۔۔۔جیسے کہا ہو مجھے کیا پتا ۔۔۔۔اور نیچے گرا پانی کا گلاس اٹھانے لگی۔ ۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان بائیک کو ہواوں میں اڑاتا ہوا اگلے دس منٹ میں گھر پہنچ چکا تھا۔۔۔۔۔۔ مین اینٹرنس میں رکھے سار ے گلدانوں کو ہاتھ مار کر گرادیا تھا اس نے۔۔۔۔۔۔اور پھر لاونج میں رکھے شو پیس کو غصے سے ہاتھ مار کر گراتا سیڑیوں کی طرف بڑھا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی جو لاونج میں بیٹھی ہوئی تھی ہرمان کو غصے میں چیزیں توڑتے دیکھ کر دہل گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے ہرمان کیا ہوا ہے پتر تجھے پھر زے لڑ ائے ہو کیا کسی سے ۔۔۔۔۔۔دادی پیچھے سے بلاتی رہ گئی ۔۔۔لیکن وہ غصے میں تھا اور غصے میں تو وہ کسی کا بھی لخاظ نہیں کرتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید ناہید ۔۔۔۔۔کیا ہوا ہے اماں جان اور یہ سب چیزیں کس نے توڑی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے لاونج میں بکھڑے شو پیس اور ادھر ادھر گرے گلدان کو دیکھ کر دادی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے ہرمان نے گرائی ہیں یہ سب چیزیں، بہت غصے میں گیا ہے اپنے کمرے میں ،جاو جاکر دیکھو کہی خود کو ہی نقصان نہ پہنچا بیٹھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”دادی نے پریشانی میں ناہید کو ہرمان کے کمرے میں جانے کا کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ایک تو تنگ آگی ہوں میں اس لڑکے کی خرکتوں سے۔۔۔۔ناہید نے لاونج کی خالت دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے کیا ہو گیا ہے سب کچھ میرے بچے کی کمائی سے آیا ہے نیا آجاے ۔۔۔۔اگر دو تین چیزیں توڑ دیتا ہے تو کونسی قیامت آجاتی ہے ۔۔۔۔جاو پہلے میرے بچے کو دیکھو بہت غصے میں تھا آج سے پہلے تو میں نے اسے کبھی اتنے غصے میں نہیں دیکھا جاو پتا کرو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے پریشانی سے ناہید کو بتائیں سناتے ہوئے ہرمان کے کمرے کی طرف جانے کو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ناہید تاسف سے سر ہلا کر ہرمان کے کمرے کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان نے کمرے میں آکر زور سے دروازہ بند کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور کمرے کے بیچوں بیچ کھڑے ہو کر کمر پر ہاتھ رکھ کر کھڑا گہرے گہرے سانس لینے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر کمرے میں پڑی ساری چیزیں زمین بوس کر دیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس پر بس نہ کیا کبڈ سے سارے کپڑے نکال کر انہیں باہر پھینکنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان جب بھی غصے میں ہوتا تھا ۔۔۔۔اپنا غصہ چیزوں پر نکالتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اب تو اس کا غصہ ساتویں آسمان پر پہنچ چکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔. “
ہرمان یہ کیا ہرکت ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید کمرے کی خالت دیکھ کر چکرا کر رہ گی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اففففف ہرمان تم کب سدھرو گے ہاں ۔۔۔۔۔۔ناہید نے اس کا رخ اپنی طرف کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔لیکن جب نظر اس کے چہرے پر پڑی تو چونک گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان سرخ چہرے اور لال آنکھوں سے سامنے دیوار کو گھور رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” بیٹا کیا ہوا ہے بتاو مجھے ۔۔۔کسی سے جگھڑا ہوا ہے کیا ۔۔۔۔۔۔ناہید نے اس کے منہ کا رخ اپنی طرف کر تے نرمی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان نے ناہید کے پریشان چہرے کو دیکھا تو خو د پر کنٹرول کیا۔۔۔۔۔۔۔۔”
موم کوئی بات نہیں آپ پریشان نہ ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔ I’m ok i see what i want ……ہرمان نے ناہید سے کہہ کر ایک نظر کمرے کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔موم کمرے کی صفائی کروا دیں پانچ منٹ میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں تب تک شاور لے لوں۔۔۔۔۔۔ہرمان نے واش روم کی طرف جاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اف کیا بنے گا اس لڑکے کا۔۔۔۔ناہید نے کمرے کی خالت دیکھ کر تاسف سے سوچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اب کیا کرے گا توں ۔۔۔۔۔۔عمر نے پریشانی سے ہرمان کے سرخ چہرے کو دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عمر کو فون کر کے ہرمان نے خود ہی بلایا تھا ۔۔۔اور اس کو پنار کی منگنی کے بارے میں بتایا تھا جسے سن کر عمر بھی پریشان ہوگیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔”
وہی جو مجھے تھیک لگے گا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بال کو سامنے دیوار پر مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان پلیز بھول جا مس پنار کو اور ویسے بھی انکل کبھی ایکسیپٹ نہیں کریں گے تیرے اس Decision کو ۔۔۔۔عمر نے اسے سمجھانے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔لیکن ہرمان کو کون سمجھا سکتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تم نہ اپنی بکواس بند کرو اور مجھے کسی کی کوئی پروا نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔مس پنار صرف اور صرف میری ہیں You understand i don’t mean anything to anyone else ……
ہرمان نے غصے سے اس کا کالر ڈبوچ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے یار اتنا ہائپر کیوں ہو رہا ۔۔۔۔۔اچھا بتا کیا کرے گا اب تو۔۔۔۔۔عمر نے اسے نہ چھیڑنا ہی بہتر سمجھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”۔وہی جو میرا دل کہے گا۔۔۔۔اس بار ہرمان کے چہرے پر معنی خیز مسکان تھی۔۔۔۔۔۔۔جسے دیکھ کر عمر پریشان ہو گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
رمیز بیٹا کیسے ہیں آپ ۔۔۔۔۔۔اشعر صاحب نے رمیز کے گلے ملتے ہوئے اس سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”میں بلکل تھیک ہوں انکل آپ سب سنایں۔۔۔۔۔۔رمیز نے جواباً کہا ۔۔۔۔۔۔آہستہ آہستہ سب اس سے ملنے لگے تھے اور اس کا حال وغیرہ پوچھنے لگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” عافیہ بھابھی پنار نہیں دکھ رہی کہی ۔۔۔۔
سب لاونج میں بیٹھے باتیں کر رہے تھے جب آسیہ نے پنار کے بار ے میں پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔السلام علیکم ۔۔۔۔۔پنار نے اندر آتے ہوئے سب کو اسلام کہا۔۔۔۔۔عافیہ ابھی جواب دینے ہی والی تھی جب پنار چائے کی ٹرے لیے لاونج میں آئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
یہاں آجاو بیٹا ۔۔۔۔۔آسیہ نے اسے اپنے پاس بیٹھنے کو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”آسیہ کے ایک طرف رمیز بیٹھا ہوا تھا تو دوسری طرف پنار سب کو چائے دے کر بیٹھی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار کیسی ہیں آپ ۔۔۔۔رمیز نے ہلکی سی مسکراہٹ سے پنار سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”شکر الحمداللہ میں ٹھیک ہوں ۔۔۔۔آپ کیسے ہیں ۔۔۔۔پنار نے بھی مسکرا کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔السلام علیکم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی رمیز پنار کو جواب دینے ہی والا تھا جب ایک آواز ہال میں گونجی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔اور سب اس کی طرف متوجہ ہوئے تھے۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دروازے میں کھڑے سب کو دیکھ کر ہلکی سے مصنوعی مسکان سے کہا ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔
ورنہ دل تو اس کا اندر سے لاوا بنا ہوا تھا ۔۔پنار کو رمیز سے مسکرا کر باتیں کرتے دیکھ کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
سوری میں نے آپ سب کو ڈسٹرب کیا۔۔۔۔۔لیکن میرا بیگ یہاں رہ گیا تھا جس میں میرے بہت امپورٹنٹ نوٹس تھے۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مصنوعی شرمندگی ظاہر کی۔۔۔۔۔۔۔”
ارے بیٹا کیسی باتیں کر رہے ہو ۔۔۔۔ہم کوئی ڈسٹرب نہیں ہوئے ۔۔۔آو بیٹھو ۔۔یہ پنار کے سٹوڈنٹ ہیں ہرمان ۔۔۔۔۔یاسر نے اس کا تعارف رمیز کی فیملی سے کروایا اور یہ پنار کے ہونے والا سسرال ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اسے بیٹھنے کو کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ارے نہیں آپ لوگ بیٹھیے میں اپنا بیگ لینے آیا تھا۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھتے ہوئے یاسر کو جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ارے بیٹا آجاو اور یہاں بیٹھو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ظفر صاحب(رمیز کے ابو)نے خوش اخلاقی سے اس بیٹھنے کو کہا۔۔۔۔۔۔”
اوکے اب آپ سب اتنا فورس کر رہے ہیں تو میں تھوڑی دیر کے لیے بیٹھ جاتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے احسان کرنے والے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔مس پنار آپ عافیہ انٹی کے ساتھ بیٹھ جائیں ۔۔۔دراصل میں یہاں بیٹھنا چاہتا ہوں وہ ایکچلی باہر بہت گرمی ہے اس طرف کھڑکی سے ہوا آرہی ہے اس لیے۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے پہلے تو اسے گھورا اور پھر اٹھ کر دوسری طرف رمیز کے مخالف سمت بیٹھ گی۔۔۔۔۔۔۔۔”
ویسے یار یہ ہرمان بھائی کو بند کھڑ کی سے کونسی ہوا لگے گی ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ہائمہ کے کان میں کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہائمہ نے ایک نظر بند کھڑکی پر ڈالی اور پھر ژالے کو چپ رہنے کا کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان رمیز کو تیکھی نظروں سے دیکھ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔جواباً رمیز نے اسے مسکرا کر دیکھا ۔۔۔۔۔۔لیکن ہرمان نے یہ تکلف بھی کرنا ضروری نہ سمجھا۔۔۔۔۔”
آجائیں سب کھانا لگ چکا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے سب کو کھانے کی ٹیبل پر بلایا۔۔۔۔۔۔۔۔سب کھڑے ہوئے تھے سواے ہرمان کے جو اپنی جگہ پر بیٹھا کبھی رمیز کو غصے سے دیکھتا تو کبھی پنار کی طرف دیکھتا ۔۔۔۔۔۔۔”
بیٹا آپ بھی آو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر لغاری نے اسے بھی کھانے پر بلایا۔۔۔۔۔۔ہرمان ان کے بلانے پر اپنی جگہ سے اٹھا ۔۔۔۔۔نہیں انکل میں گھر چلوں گا بہت لیٹ ہوگیا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنا بیگ پکڑنا چاہا۔۔۔۔۔۔”ارے بیٹا میں آپ کو ایسے نہیں جانے دوں گی کھانا تو آپ کو کھانا ہی پڑے گا۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے اس کا ہاتھ پکڑ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کی طرف دیکھا جو اسے رک جانے کا کہہ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔”اوکے آپ لوگ اتنا انسسٹ کررہے ہیں تو آپ کی خاطر کھا لیتا ہوں۔۔۔۔۔۔”

کھانے کی ٹیبل پر بھی وہ رمیز کے بیٹھنے سے پہلے ہی اس کی جگہ پر بیٹھ گیا تھا، کیونکہ سامنے والی چیئر پر پنار بیٹھی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔”

جب تک رمیز کی فیملی نہیں گئ تھی ۔۔۔۔ہرمان بھی کسی نہ کسی بہانے وہی ٹکا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ان کے جانے کے بعد ہی وہاں سے گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔اور رمیز نے جو گھڑی پنار کو دی تھی گفٹ کے طور پر۔۔۔۔۔۔جب تک ہرمان وہاں رہا اس بیچاری گھڑی کو ہی گھورتا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
یہ ہرمان کچھ الگ ہی Behave کر رہا تھا آج۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پنسل میں ڈالتے ہوئے سوچا۔ ۔۔۔۔۔۔وہ اسائنمنٹ چک کر رہی تھی جب اسے ہرمان کے بارے میں خیال آیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اف پتا نہیں یہ کب سدھرے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سب چیزوں کو سمیٹتے ہوئے سوچا۔ ۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یار سیریسلی توں مس پنار کے گھر چلا گیا اور رمیز صاحب سے بھی مل آئے واوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔کیا کہنے ہمارے نیو عاشق ہرمان صاحب کے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے داد دینے والے انداز میں ہرمان کو سراہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”اور صاحب بھی وہ جو سیدھے منہ کسی سے بات نہیں کرتے۔ ۔۔۔۔سچ ہی کسی نے کہا ہے کہ۔ ۔۔۔محبوب کی گلی کا کتا بھی پیارا ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے کہتے ہوئے باہر کی طرف دوڑ لگادی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تیری بکواس تو میں بند کرواتا ہوں ٹھہر زرا توں۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے پیچھے بھاگتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” حارث بھی ان دونوں کے پیچھے بھاگا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”ارے کیا ہوگیا ہے تم لوگوں کو کیوں بھاگ رہے ہو۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”دادی بچائیں اپنے خونحوار پوتے سے عمر نے دادی کے پاس بیٹھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔”
تیری تو آج میں ساری نوٹنکی نکالتا ہوں ٹھہر زرا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے گلے کو پکرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان چھوڑ اسے دوست ہے تیرا کیوں لڑ رہے ہو اس طرح۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان چھوڑ دے ورنہ دادی کو سب بتا دوں گا۔ ۔۔۔۔۔”عمر نے اس بار دھمکی سے کام لیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”جسے دل کرتا ہے بتا میں ڈرتا نہیں کسی سے ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی گردن کے گرد بازو کستے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔” کیا ہو رہا ہے یہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے ان دونوں کو لڑتے ہوئے دیکھ کر پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔” ہرمان نے عمر کو چھوڑا اور سیدھا ہو کر کھڑا ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں ڈیڈ بس ایسے ہی ہرمان نے معصوم سا جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔” ہوں تم لوگوں کو صبح کالج نہیں جانا ہاں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے اماں کے پاس بیٹھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔” نہیں انکل ہم بس جا ہی رہے تھے ۔۔۔۔حارث نے جواب دیا ،اور پھر ہرمان کے گلے لگتے ہوئے چلے گے۔ ۔۔۔۔۔۔”ان تینوں کی ایسی ہی دوستی تھی وہ آپس میں لڑتے بھی تھے لیکن ایک دوسرے کے بنا رہ بھی نہیں تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
Can i come in مس پنار
ہرمان نے کلاس کے اندر آنے کی اجازت چاہی…………………..”پنار جو کورس کی بک پکڑے کلاس کو کچھ سمجھا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کے آنے پر اس کی طرف متوجہ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”تم پورے بیس منٹ لیٹ ہو۔۔۔۔۔۔۔۔پنار بک بند کر کے اس کی طرف متوجہ ہوئی تھی۔۔۔۔اور گھڑی اس کے سامنے کرتے ہوئے اسے ٹائم کا احساس دلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اور وہ جو ساری رات سویا نہیں تھا ۔۔۔۔۔۔پنار کی کلائی پر رمیز کی دی ہوئی گھڑی دیکھ کر وہ اندر باہر سے سلگ کر رہ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور پنار کو غصے سے دیکھا جو رمیز کی دی ہوئی گھڑی پہنے کھڑی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا میں اندر آسکتا یوں یا نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے غصے سے گھڑی کو دیکھ کر پنار سے ایٹی ٹیود سے انداز میں پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” پنار نے اس ڈیٹھ کو گھور کر دیکھا اور وارننگ دیتے ہوئے اندر آنے کی اجازت دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان اندر آیا ۔۔۔۔۔لیکن اپنی جگہ پر دائم کو بیٹھے دیکھ کر سارا غصہ باہر آگیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اٹھو میری جگہ سے اور تمہاری ہمت بھی کیسے ہوئی میری جگہ پر بیٹھنے کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان تم کسی اور جگہ پر بیٹھ جاو ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے تحمل کا مظاہرہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن وہ ہرمان ہی کیا جو کسی اور کی بات مان لے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں میں اسی جگہ پر بیٹھتا ہوں اور اسی جگہ پر بیٹھوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔تم اٹھ رہے ہو یا میں اپنے طریقے سے اٹھاوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی طرف بڑھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان کیا طریقہ یہ کلاس میں بیٹھنے کا ہاں پنار نے غصے سے اسے جھڑکا۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن وہ ہنوز غصے میں تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”دائم آپ اس سائیڈ بیٹھ جائیں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کو پتا تھا اس ڈیٹھ کو کوئی کتنا بھی کہہ لے اس نے کرنی اپنی ہی مرضی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس لیے اس نے دائم کو ہی اٹھ جانے کا کہہ دیا۔۔۔۔۔دائم نے غصے سے ہرمان کو دیکھ کر اٹھا تھا۔۔۔۔۔۔۔” جواباً ہرمان نے بھی اسے ڈبل گھوری سے نوازا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان یہ لاسٹ بار ہے اب تم نے ایسی خرکت کی تو پھر تم سے سر خلیل ہی بات کریں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی دھمکی کو مسکرا کر وصول کیا تھا ۔۔۔۔۔لیکن جب نظر گھڑی پر پڑی تو اپنے ہونٹوں کو بھینچ کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے تم کبھی نہیں سدھرو گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے ژالے کو ڈانٹتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے کیا کر دیا ہے میں نے ہاں ایک آئس کریم ہی تو کھانی ہے میں نے اور تم پتا نہیں کس پر چلی گئ ہو دادی اماں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ژالے چھٹی کے بعد ہائمہ کو زبردستی آئس کریم پارلر لے آئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اچھا ٹھیک ہے تم گاڑی میں ہی بیٹھو میں یہی لے آتی ہوں اوکے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ہائمہ کو کہہ کر خود آئس کریم پارلر کے اندر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” بھائی تین آئس کریم دو ونیلا فلیور اور ایک چاکلیٹ فلیور۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے آئس کریم کا آرڈر کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ایکسیوزمی ژالے لیکن پہلے میں یہاں آیا تھا تو آرڈر بھی پہلے میں ہی کروں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ژالے نے اپنا اتنے فرینکلی نام لینے والے کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور جب عمر پر نظر پڑی تو غصے سے ناک کے نتھے پھیلاے اسے گھورنے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے مسکرا کر اسے چڑایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے تو غصے سے لال پیلی ہوگئ۔۔۔۔۔۔۔۔تمہاری اتنی ہمت کہ تم نے میرا نام لیا ، ائندہ تم نے میرا نام لیا تو میں تمہاری زبان کھینچ لوں گئ۔۔۔۔۔۔ژالے نے اسے کہہ کر اپنا بیگ پکڑا اور باہر کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ایک منٹ ژالے میری بات تو سنو ،ارے اپنی آئس کریم تو لیتی جاو۔۔۔۔۔۔۔عمر نے پیچھے سے اس کو پکارہ ۔۔۔۔۔۔۔تم ہی کھاو اور میرا نام مت لینا آئندہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے انگلی سے اسے وارننگ دیتے ہوئے باہر کی طرف چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” عمر نے مسکرا اس راستے کو دیکھا جہاں سے ژالے گئ تھی۔۔۔۔اور ویٹر کی طرف متوجہ ہوا جو اس کا آرڈر لے آیا تھا۔۔۔۔۔۔۔عمر حارث کی بہن نیلم کی فرمائش پر اس کے لیے آئس کریم لینے آیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: