Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 18

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 18

–**–**–

آج سے پورا ہفتہ تم دونوں خود اپنے کپڑے دوھو گے۔۔۔اور اگر نہ دوھے تو پورے ہفتہ کی پاکٹ منی بند ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سمجھے دونوں۔۔۔۔۔۔۔۔ان دونوں سے تو صدمے سے بولا ہی نہیں جارہا تھا جواب کیا خاک دیتے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”Do you both understand or not خالد صاحب نے اب کی دفعہ اونچی آواز میں دونوں کو مخاطب کیا تھا۔ ۔۔۔جی ڈیڈ، جی چاچو۔ ۔۔۔۔۔۔۔دونوں ایک ساتھ بولے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب مجھے تم دونوں کی کوئی شکایت نہ آئے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔خالد صاحب کہہ کر اپنے کمرے کی طرف چلے گے۔ ۔۔۔۔۔۔۔”پیچھے وہ دونوں رونے والے منہ بناے صوفہ پر بیٹھ گے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔امی آپ کو کیا ضروت تھی ابو کو بتانے کی۔ ۔۔۔۔عمر نے عالیہ بیگم سے شکایت کی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے کب کی وہ خود ہی آگے تھے کمرے میں ۔۔۔۔۔۔۔۔اور ویسے بھی جس طرح کی خرکتیں ہیں نہ تم دونوں کی اس حساب سے تو بالکل ٹھیک سزا ملی ہے تم دونوں کو۔ ۔۔۔۔۔۔اب کی دفعہ کبریٰ بیگم حارث کی والدہ نے جواب دیا۔ ۔۔۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔آپ دونوں سے تو کچھ کہنا ہی فضول ہے ۔۔۔۔۔عمر نے منہ بسورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے بھائی آپ میرے کپڑے بھی لانڈری کردیں گے پلیز ۔۔۔۔۔۔۔نیلم نے موبائل سے نظر ہٹا کر ان دونوں کو چرایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔” تم تو چپ ہی رہو ۔۔۔سارا دن موبائل یوز کرتی رہتی ہو ۔۔۔۔۔ یا ٹی وی دیکھتی رہتی ہو ۔۔۔۔۔تمہیں تو کچھ نہیں کہتے ،صرف ہم ہی معصوم نظر اتے ہیں۔ ۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔حارث نے دل کے پھپھولے پھوڑے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ساتھ نیلم کو بھی سنادی۔ ۔۔۔۔۔”
ان دونوں سے غلطی یہ ہوئی تھی کہ انہوں نے اپنے سارے میلے کپڑے بیڈ کے نیچے گھسائے ہوئے تھے ۔۔۔۔اور استری شدہ کپڑے کچھ صوفے پر تو کچھ نیچے زمین پر پڑ ے ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور ملازمہ نے کمرے کے پاس سے گزرتے ہوئے خالد صاخب کو کمرے کی خالت دیکھا دی ۔۔۔۔۔تب سے دونوں کی شامت آئی ہوئی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
(خا لد صاحب دو ہی بھائی تھے ،بڑے حامد تھے ،حامد صاحب کے دو بچے تھے ،حارث اور نیلم ۔۔۔۔نیلم پانچ سال کی تھی جب ایک کار ایکسیڈینٹ میں حامد انتقال کر گے حارث اس وقت دس سال کا تھا اور عمر نو سال کا۔ ۔۔۔۔۔تب سے خالد صاحب نے ہی ان دونوں کو باپ بن کر پالا تھا اور نیلم تو ان کو جان تھی۔ ۔۔۔۔۔لیکن وہ عمر اور حارث پر بہت سختی کرتے تھے کیونکہ آئے دن ان دونوں کی شکایتیں آتی رہتی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔اس لیے وہ دونوں کو کھینچ کر رکھتے تھے۔ ۔۔۔۔۔”عمر خالد صاحب کی اکلوتی اولاد تھی)
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کیا ایک منتھ میں شادی، یار اتنی جلدی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جب ردا کو فون میں بتایا کہ آسیہ انٹی ایک ماہ میں شادی کرنے کا کہہ رہی ہیں تو ردا نے جواباً کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یار میں تو خود شاک میں ہوں۔ ۔۔۔پنار نے لیپ ٹاپ بند کرتے ہوئے ردا کو جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔”
ہوں انکل انٹی کیا کہتے ہیں اس بارے میں، ردا نے کافی کا کپ منہ سے لگاتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔”
امی ابو تو راضی ہیں ۔۔۔دراصل امی نے پہلے سے ہی کافی ساری تیاریاں کر لی تھیں ، اس لیے جب انٹی نے شادی کہا تو امی ابو کو بھی کوئی اعتراض نہ تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے تفصیل سے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔” ویسے یار کتنا مزہ آئے گا نہ تمہاری شادی میں، تو پانچ دن پہلے تمہاری طرف آجاوں گی۔ ۔۔۔۔۔”
ردا نے ایکسائیٹڈ ہو کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
انجوائے تو تم لوگ کروں گی نہ۔۔۔۔میں تھوڑی کروں گی ،دلہن بیچاری کہاں انجوائے کر سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے ناک سکیڑ کر جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے اب وہ زمانے کہاں ۔۔ جب دلہن بیچاری کو ایک ہی پر جگہ سٹیچو کی طرح بٹھا دیا جاتا تھا۔ ۔۔۔اب تو دلہنیں بھی اپنی شادی میں ناچتی گاتی ہیں۔ ۔۔۔خوب ہلا گلا کرتی ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔”
اچھا نانی اماں ۔۔۔۔سعد بھائی کا بتاو کیسے ہیں وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بات بدلتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”
ارے انہیں کیا ہونا ہے ۔۔۔۔ہمارا خون چوسنے کو بیٹھیں ہیں ۔۔۔۔ایک آدھ چھٹی تک نہیں کرنے دیتے قسم سے کس جلاد سے پالا پر گیا ہے میرا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے اپنے دل کی بھراس نکالی۔ ۔۔۔۔۔۔پنار کھل کر مسکرائی اس کی دوہائی پر۔ ۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آج اتنے لیٹ کیوں آئے ہو ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے ہاتھ سے بک پکڑتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔”گھر میں مہمان آگے تھے اس لیے لیٹ ہوگیا۔ ۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے اس کے چہرے کی طرف دیکھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مس آپ نے چہرے پر کیا لگایا ہوا ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پنار کے چہرے پر لگے ماسک کو دیکھ کر کہاں۔ ۔۔۔۔۔۔”
پنار نے جواباً اسے گھور کر دیکھا۔ ۔۔۔۔۔کچھ نہیں ۔۔۔۔تم اپنی نوٹ بک نکالو میں تمہیں اہم اہم سوال سمجھا دوں پنار نے اس کے سوال کو اگنور کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان بھائی پہلے آپ منہ میٹھا کریں پھر سوال وغیرہ کر لینا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے مٹھائی کی پلیٹ اس کے سامنے کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
مٹھائی کس خوشی میں۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے برفی کا پیس اٹھاتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے آپ کی مس نے نہیں بتایا۔ ۔۔کہ آپا کی ڈِیٹ فکس ہوگئ ہے وہ بھی اسی مہینے کی 28 کو ۔۔۔۔۔۔آج ہی انٹی اور انکل آئے تھے ڈیٹ فکس کرنے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ژالے نے پلیٹ ٹیبل پر رکھتے ہوئے تفصیل سے جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان نے جو پیس اٹھایا تھا وہ ہاتھ میں ہی پکرا رہ گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اور پنار کی طرف دیکھا جو ہونٹوں پر مسکان سجائے کتاب میں سوال دیکھ رہی تھی اور ایک نظر ژالے کو دیکھا جو اسے مٹھائی کھانے کا اشارا کر رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہونٹ بینچتے ہوئے برفی کا پیس نیچے گرا دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔او سوری غلطی سے گر گیا۔ ۔۔۔۔ہرمان نے ژالے کو جواب دیا جو اس کی طرف متوجہ تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی بات نہیں آپ دوسرا لے لیں ۔۔۔۔۔ژالے نے پلیٹ کی طرف اشارا کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”
نو مجھے سویٹس زیادہ پسند نہیں ہیں۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کی طرف دیکھ کر ژالے کو جواب دیا, جو اب اس کی ہی طرف دیکھ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار بیٹا آسیہ کا فون ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاو سن لو جا کر ۔۔۔۔مرینہ نے ژالے کی سائیڈ پر بیٹھتے پنار سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان تم یہ کوئسچن سولو کرو میں آتی ہوں توڑی دیر میں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے جلتی نظروں سے اس کی پشت کو دیکھا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اور دل ہی دل میں ایک فیصلہ بھی کر لیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔” وہ اٹھ کر ابھی مڑ ہی تھا جب وہ ثروت سے ٹکرایا تھا جو اس کے لیے جوس لے کر آئی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔ٹکرانے سے سارا جوس ہرمان کی شرٹ خراب کر گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔اف ثروت کبھی تو دیکھ کر کام کرا کرو ،بچے کی ساری شرٹ خراب کر دی۔ ۔۔۔۔۔مرینہ نے صوفے سے اٹھ کر ثروت کو ڈانٹ کر ہرمان کے پاس آئیں ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اٹس اوکے انٹی غلطی میری تھی میں سچسنک مڑا تھا ، آپ مجھے واش روم دیکھا دیں میں صاف کر لوں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے شرٹ سے جوس کے قطرے جھٹکتے ہوئے مرینہ سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں جاو ژالے بھسئی کو واش روم لے جاو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے ژسلے کو اٹھایا۔۔۔۔۔۔۔۔”آجائیں اس طرف ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے سیڑیوں کی طرف اشارہ کرت ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے مس پنار کا کمرہ کونسا ہے۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ژالے کو کہا جو آگے آگے چل رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔یہ والا ژالے نے جو اوپر سب سے پہلا کمرہ تھا اس کی طرف اشارہ کرتے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اوکے پھر میں اسی کمرے کے واش روم میں چلا جاتا ہوں۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے کمرے کے سامنے رکتے ہوئی کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے ایز یو وش۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے کندھے چکا کر چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے کمرے کا دروازہ کھلا۔۔۔۔۔۔۔اور اندر آیا۔۔۔۔۔۔کمرہ صاف ستھرا اور سادگی سے سجا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔بڑا سا بیڈ تھا جس کے اوپر بڑی سی تصویر لگی ہوئی تھی جس میں تینوں ژالے ،پنار ہائمہ مسکرا رہی تھیں۔۔۔۔۔۔”
ادھر سے اس کی نظر کھڑکی کے پاس رکھے ٹیبل پر پڑی جس پر پنار کی گھڑی جو رمیز نے دی تھی پڑی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ہرمان کے چہرے پر شطرانہ مسکراہٹ آئی تھی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ایک نظر گھڑی پر ڈالی ار ایک نظر ۔نیچے ڈالی جہاں سے اگر یہ پھینکی جائے تو یقینناً گھڑ ی ٹوٹ جاتی ہرمان نے واچ کو پکرا اور سیک سیکنڈ میں نے نیچے پھینک دی۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان یہ۔ ۔۔۔کیا کیا تم نے۔۔۔۔۔تم نے میری اتنی قیمتی واچ نیچے گرا دی ۔۔۔۔پنار جس ژالے نے بتایا تھا ہرمان کے کپڑوں پر جوس گر گیا ہے ۔۔۔۔۔اور وہ سن کر ہرمان کے پیچھے آئی تھی لیکن ہرمان کے ہاتھ سے واچ گرتی دیکھ کر صدمے سے بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان نے بے تاثر نظروں سے پنار کو دیکھا۔ ۔۔۔میں تو دیکھ رہا تھا لیکن پتہ نہیں کیسے میرے ہاتھ سے چھوٹ کر نیچے گر گی، اور ویسے بھی آپ قیمتی ہیں یہ واچ نہیں۔ ۔۔۔۔پنار نے اس زبردست گھوری سے نوازا ،اب میں رمیز کو کیا کہوں گی کہ کیسے واچ گر گی مجھ سے ،ہرمان زندگی میں کوئی کام تو اچھا کرلو لیکن نہیں۔ ۔۔۔۔۔پنار پیر پٹحتے ہوئے کمرے سے ہی چلی گی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ہرمان کے چہرے پر مسکراہٹ آئی تھی آپ کو گفٹ دینے ،پیار کرنے، اور دیکھنے کا حق صرف اور صرف ہرمان اسد جڈون کے پاس ہے ،اور اگر کسی نے آپ کو مجھ سے الگ کرنے کی کوشش تو اس کا انجام بھی اس بلڈی واچ کی طرح ہو گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے نیچے ٹوٹی پڑی ہوئی واچ کو دیکھ کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ڈیڈ مجھے آپ سے بات کرنی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ڈائننگ ٹیبل پر آکر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیا بات ہے بھئی تم آج جلدی ہی اٹھ گے. . . . . اور وہ بھی چھٹی کے دن ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے نیپکن سے منہ صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔” بیٹا ناشتہ کرو گے تم منگواو ۔۔۔۔ناہید نے ہرمان کو دیکھ کر پوچھا جو نائٹ سوٹ میں ہی نیچے چلا آیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” نہیں موم میں ناشتہ نہیں کروں گا مجھے ڈیڈ سے بات کرنی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ارے ہرمان پتر یہ دودھ ہی لے لے ۔۔۔۔دادی نے اپنے آگے رکھا گلاس دینا چاہا۔۔۔۔۔۔۔نو دادی مجھے ڈیڈ سے بات کرنی ہے
۔۔۔۔۔۔۔,۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں کہو ۔۔۔اسد نے اس کی طرف متوجہ ہو کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔”
ڈیڈ مجھے شادی کرنی ہے اور وہ بھی ایک منتھ کے اندر اندر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سر جھکا کر جلدی جلدی کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کی بات پر ناہید کے ہاتھ سے نوالہ چھوٹ کر نیچے گر گیا تھا۔۔۔۔۔اور تواور دادی نے بھی منہ کی طرف لیجاتا گلاس منہ سے لگانا بھول کر ہرمان کیطرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے سپاٹ نظروں سے اس کی طرف دیکھا آیا وہ سیریس ہے یا مزاق کر رہا ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن اس کا سرخ چہرہ اس بات کی گواہی دے رہا تھا کہ وہ سیریس ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” یہ کیا بکواس ہے تم صبح صبح ہی شروع ہو گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اسے سخت نظروں سے گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” بیٹا لگتا ہے آپ ابھی بھی نیند میں ہو جاو جاکر نیند پوری کرو۔۔۔۔۔ ناہید نے اس
نے اسے گھور کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
میں سیریس ہوں یہ کوئی بات ہے مزاق کرنے کی جو آپ لوگوں کو یقین نہیں آرہا۔۔۔۔اور کونسی ایسی انہونی بات کردی ہے میں نے جو آپ لوگ اس طرح کا رئیکٹ کر رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے غصے سے سب کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اور ہاں میں سیریس ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ڈیڈ آپ اور موم آج ہی جائیں گے مس پنار کے گھر والوں سے بات کرنے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے بھی جواباً غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تم ہوش میں تو ہو یہ کیا بکواس ہے ہاں، اپنی عمر دیکھو اور اپنی خرکتیں دیکھو ۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے کرسی سے کھڑے ہو کر غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”

ناہید بھی اسد کو اس طرح غصے میں دیکھ کر ڈر گی۔۔۔۔۔.” آپ سب کو وارن کر رہا ہوں میں کہ مجھے شادی کرنی ہے تو کرنی ہے میں سیریس ہوں ہرمان نے ہاتھ مارکر کھانے کی پلیٹ کو نیچے گرایا اور اسد صاحب کو اپنی سخ ہوتی نظروں سے دیکھ کر پلٹ گیا۔۔۔۔۔۔۔”

ژالے میں سوچ رہی تھی کہ کیوں نہ مہندی پر ہم دونوں ایک جیسے کپڑے بنائیں کیسا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے ژالے سے رائے لی جو پہلے سے ہی تیار بیٹھی تھی۔۔۔۔۔۔۔”
ہاں یار ۔۔۔اور میں سوچ رہی تھی کہ بارات پر لہنگے اور ولیمے پر ساڑی۔۔۔۔۔بنوائیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے تو ساری پلینگ کی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہاں لہنگے تو تھیک ہیں۔۔۔۔۔لیکن ساڑی ہمیں کوئی نہیں پہنے دے گا۔۔۔۔۔ہائمہ نے فروٹ چاٹ کی پلیٹ کو خالی کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”
ارے یار ابو اور امی نہیں پہنے دیں گے۔۔۔۔۔۔ژالے نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔*
ویسے شادی پنار کی ہے تم دونوں کی نہیں ۔۔۔۔۔پلینگ ایسے بنارہی ہیں جیسے ان دونوں کی شادی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
رومان نے ژالے کے سر پر چپت مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا مطلب ہے آپ کا ،ہاں ہم اپنی آپا کی شادی کی پلیننگ نہیں کریں گے تو محلے میں ہو نے والی شادی کی پلیننگ کریں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے یہ بھی کیا بات کی تم نے ٹڈی ۔۔۔۔تم دونوں تو محلے میں ہونے والی شادی نہیں چھوڑتی یہ تو پھر آپا کی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے فروٹ کی پلیٹ ہائمہ سے چھینتے ہوئے دونوں کو چڑایا۔۔۔۔۔۔۔۔”یہ آپ نہ مجھے ٹڈی کہنا بند کر دیں ورنہ مجھ سے برا کوئی نہیں ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اپنی چھوٹی سی ناک کو سکیڑ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے ہماری چھوٹی بلی بھی میاوں میاوں کرنے لگی ہے واوا جی واوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے ہائمہ کے بالوں کو خراب کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ژالے سمجھا لو اپنے بھائی کو ورنہ میں تایا جان کو بتا دوں گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے میری کونسا کوئی اس گھر میں سنتا ہے جو میں انہیں سمجھاوں۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے وہاں سے اٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” امی یہ اپنے لاڈلے کو سمجھا لیں مجھے ٹڈی کہہ رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے لاونج میں آتی مرینہ سے رومان کی شکایت کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔” کوئی تنگ نہیں کررہا میں اسے۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے مرینہ کو باہوں میں لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔” مرینہ نے دونوں کو مسکرا کر دیکھا۔۔۔۔۔لیکن پھر ان کے دماغ میں ایک کلک ہوا(اگر اتنا ہی اچھا بچہ ہے تو ہائمہ سے شادی کردیں اس کی)۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے دونوں کو دیکھا اور گہری سوچ میں چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
دیکھا آپ نے اماں یہ لڑکا کتنا ہاتھوں سے نکل گیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔اسی لیے میں کہتا تھا اس کو کنٹرول میں رکھیں۔۔۔۔۔۔لیکن آپ دونوں نے ہمیشہ ہی میری بات کو اگنور کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہے “
اسد صاحب نے غصے سے کہہ کر اپنے کمرے کی طرف بڑھ گے۔۔۔۔۔۔۔”۔
پیچھے دادی اور ناہید سر تھام کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کیااااا۔۔۔۔۔رائمہ نے انکار کر دیا۔۔۔لیکن کیوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یاسر نے پریشانی سے مرینہ سے پوچھا۔۔۔۔۔۔” ہاں میں نے بہت سمجھانے کی کوشش کی لیکن اس لڑکی نے صاف کہہ دیا ہے کہ وہ کبھی بھی رومان سے شادی نہیں کرے گی۔۔۔۔۔۔۔منیبہ نے انہیں ساری بات بتاتے ہوئے ان کے ہاتھ پر ہاتھ رکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
میں تو بھائی کو ہاں کہہ چکا ہوں اب انہیں کیا جواب دوں گا میں۔۔۔۔۔۔۔۔”
اگر آپ برا نہ مانے تو آپ کو ایک بات کہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔منیبہ نے ہچکچاتے ہوئے اجازت طلب کی۔۔۔۔۔۔۔۔” ہوں کہو ۔۔۔۔۔۔یاسر نے منیبہ کی طرف دیکھ کر اجازت دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔*
وہ میں کہہ رہی تھی کہ کیوں نہ ہائمہ کے لیے بات کر لیں بھائی صاحب سے ۔۔۔۔
کیا مطلب کھل کر کہو۔۔۔۔۔یاسر نے الجھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
وہ اگر ہم ہائمہ کی رومان سے بات چلا دیں تو ۔۔۔آپ بات کریں نہ بھائی صاحب سے ۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیا یہ کیا کہہ رہی ہو تم میں بھائی صاحب سے کیسے بات کر سکتا ہوں ۔۔۔۔نہیں میں بھائی کو نہیں کہہ سکتا ۔۔۔۔۔۔۔یاسر نے چائے کے کپ کو منہ سے لگاتے ہوئے پریشانی سے کہا
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
مس پنار مجھے آپ سے بات کرنی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے سامنے آتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا بات کرنی ہے تمہیں مجھے سے۔ پہلے ہی دیر ہو رہی ہے مجھے۔۔۔۔۔۔۔پنار نے موبائل پر ٹائم دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”یہ میں آپ کے لیے لایا ہوں ۔۔۔ہرمان نے چھوٹا ساایک گفٹ پیک پنار کی طرف بڑھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” پنار نے خیرانگی سے گفٹ کو دیکھا۔۔۔۔۔۔یہ کیا ہے اور میں کسی سے کوئی گفٹ وغیرہ نہیں لیتی۔۔۔۔۔پنار نے سینے پر ہاتھ باندھتے ہو ئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” کھول کر تو دیکھیں ۔۔۔۔۔پھر اس بارے میں بات کریں گے کہ آپ کو لینا ہے یا نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” پنار کو پتا تھا وہ ایک نمبر کا ڈیٹھ ہے جب تک وہ لے گی نہیں وہ جان نہیں چھوڑے گا۔۔۔۔اس لیے نہ چاہتے ہوئے بھی اسے باکس پکرنا پڑا۔۔۔۔۔۔۔۔”اور اس باکس کو کھول کر دیکھا جس میں ایک گولڈ کلر کی نہایت ہی خوبصورت واچ تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے اتنی مہنگی واچ کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کو دیکھا جو اسے دیکھتے ہوئے ہونٹ بینچے کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مجھے نہیں چاہئے اتنی قیمتی واچ ۔۔۔۔۔پنار نے بند کر کے اس کی طرف بڑھائی۔۔۔۔۔۔۔”سوری میں یہ آپ کے لیے لایا واپس لینے کے لیے نہیں ،ویسے بھی مجھ سے آپ کی واچ گر کر ٹوٹ گئی تھی تو اس لیے یہ آپ کو رکھنی ہی پڑے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کہہ کر آنکھوں پر گلاسز لگائی اور پھر اس کچھ کہنے کا موقع دیے بغیر آگے بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے پنار اس کی خرکت پر ہکی بکی کھڑی رہ گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان کیا خرکت ہے یہ کیوں کھانا نہیں کھا رہے تم ہوں ۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے ہرمان کے کھانے سے انکار پر اسے جھڑکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”میں کھانا اب تب ہی کھاوں گا جب آپ لوگ میری بات مانے گے۔۔۔۔ہرمان نے سنجیدگی سے جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔” کیوں کرنا چاہتے ہو شادی۔ ۔۔۔اسد نے اب صاف صاف بات کرنے کی ٹھانی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیوں کرتے ہیں شادی آپ نے کیوں کی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بدتمیزی سے جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کیا بکواس کر رہے ہو ڈیڈ ہیں تمہارے بھول چکے ہو ہاں۔ ۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے ہرمان کو غصے سے جھنجھور کر کہا۔ ۔۔۔۔۔” میں نے کوئی بدتمیزی سے جواب نہیں دیا۔ ۔۔۔۔۔صرف ایک بات کی ہے سمپل۔۔۔۔۔۔ہرمان نےڈھٹھ پن سے جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔” اچھا ٹھیک ہے کون ہے وہ لڑکی حس سے تم شادی کرنا چاہتے ہو ۔۔۔۔۔اسد نے اس کی آنکھوں میں بھگاوت دیکھتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے ان کی طرف دیکھا اور مسکرایا ۔۔۔۔۔۔مس پنار سے میری ٹیچر ہیں وہ ۔۔۔۔۔۔اور ہاں وہ مجھ سے پانچ سال بڑی بھی ہیں، وہ میری ٹیچر ہیں اور ایک بات اور ان کی منگنی بھی ہو چکی ہے انفیکٹ ایک ماہ تک شادی بھی ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن مجھے ان سب باتوں سے کوئی فرق نہیں پڑتا شادی تو میں انہی سے کروں گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سب کو ایک نظر دیکھتے ہوئے ریلکس انداز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اور ان سب کا تو شاک کے مارے برا خال تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔” کیا بکواس ہے سب سے پہلے اسد صاحب کو ہوش آیا تھا اور اس سے غصے سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہیں شرم نہیں آئی اپنی ٹیچر پر نظر رکھتے ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔اٹس ٹو مچھ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اسے کندھے سے جھنجھور کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
ؑہرمان بیٹا کیوں کر رہا ہے ایسا۔ ۔۔۔۔ہاں میں تیری شادی کروا دوں گئ لیکن تیری عمر کی لڑکی سے ۔۔۔۔۔دادی نے اسے سمجھانے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن ہرمان کو کون سمجھا سکتا تھا۔ ۔۔۔۔۔”دادی پنار نہیں تو کوئی نہیں ہرمان نے مسکرا کر ہاتھ پاکٹ میں گھسا کر جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ناہید نے تو سر ہی تھام لیا تھا۔۔۔۔۔ ۔اور پریشانی سے صوفے پر بیٹھ گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔” بھول جاو اپنی مس پنار کو ۔۔۔۔۔اور کچھ ہی دنوں میں میں تمہیں ابروڈ بیجھ دوں گا ۔۔۔۔۔۔اور شادی کا بھوت جتنی جلدی ہو اتار دو تو بہتر ہے تمہارے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے انگلی سے اس وارننگ دیتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہرمان اسد صاحب کے قریب آیا ۔۔۔۔۔اور پاس فروٹ باسکٹ میں رکھی نائف کو پکڑ کر اپنی کلائی پر رکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ مس پنار کے گھر جائیں گے یا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے نائف کو مضبوطی سے کلائی پر جماتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ناہید نے صدمے سے منہ پر ہاتھ رکھ کر کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور دادی نے تو اپنے سینے پر ہاتھ رکھ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان میرے بیٹے یہ کیا کر رہے ہو ۔۔۔۔چھور دو چھوڑی کو لگ جاے گی میرے بچے۔۔۔۔۔۔دادی نے صدمے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”Dad I want an answer, will you do Miss Panar today or not ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ان کی آنکھوں میں آنکھیں ڈالتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: