Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 19

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 19

–**–**–

آپا رمیز بھائی کا فون آیا تھا ابھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور گیس کریں انہوں نے ابو سے کیا کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ایکسائیٹڈ موڈ میں پنار کے پاس پھسکڑا مار کر بیٹھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”۔۔۔۔۔۔۔۔۔افف ژالے بتانا ہے تو بتاو ورنہ چپ رہو اور مجھے مووی دیکھنے دو ۔۔۔۔۔۔۔پنار کو تجسس تو تھا کہ رمیز نے کیا کہا ہو گا، لیکن اسے پتا تھا اگر وہ ژالے سے پوچھے گئی تو وہ اسے تنگ کر کے بتاے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اف آپا آپ اس زمانے میں کیا کر رہی ہیں ،آپ کو تو انیسویں صدی میں ہونا چاہئے ۔۔۔۔۔۔ژالے نے ایل آئی ڈی بند کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جواباً اسِ تگڑی گھوری سے نوازا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اچھا غصہ تو نہ کریں نا ۔۔۔۔بتاتی ہوں ۔۔۔۔رمیز بھائی نے نا ابو سے آپ کو باہر لیجانے کی پرمیشن لی ہے۔۔۔۔۔۔اور مزے کی بات ابو نے اجازت بھی دے دی۔۔۔۔۔۔” ژالے نے پنار کو ہگ کرتے ہوئے بتایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیااا, اف ابو نے کیوں اجازت دی ۔۔۔۔اللہ، ژالے میں نہیں جاوں گی۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔۔”
ارے آپا کچھ نہیں ہوتا ۔۔۔۔اور ویسے بھی آپ دونوں کو ایک ساتھ ٹائم سپنٹ کرنا چاہیے۔۔۔۔۔اس طرح انڈر سٹینڈنگ بڑھتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ژالے نے اس کی پریشانی کو کم کرتے ہوئے اسے سمجھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان یہ کیا پاگل پن ہے بیٹا ۔۔۔۔۔۔پلیز ہٹاو نائف کو اپنے بازو سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اس کو سمجھانے کی کوشش کی۔۔۔۔۔”
تو آپ لوگ ایسے نہیں مانے گے ہاں۔۔۔۔۔۔۔اوکے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کہتے ہی نازئف کو اپنی کلائی پر دبایا۔۔۔۔۔۔جس سے خون کی چھوٹی چھوٹی بوندیں نیچے گری تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھائی، سب سے پہلے خون پر عذوبہ کی نظر پڑی تھی۔۔
ارے اسد مان جا اگر میرے بیٹے کو کچھ ہوا نہ تو میں تمہیں کبھی معاف نہیں کروں گی سمجھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے اسد کو جھنجھورا جو بت بنے کھڑے تھے۔۔۔۔۔۔۔” دادی کے ہلانے پر ہوش میں آئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”. اور اس کی طرف بڑھے ۔۔اوکے ہٹاو نائف کو ہم لوگ جائیں گے ان کے گھر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اسد نے چھوڑی کی طرف ہاتھ بڑھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔”
اب تو رکھ دو بیٹا اتنا خون بہہ رہا ہے تمہارا ناہید نے روتے ہوئے ہرمان سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔بھائی پلیز ۔۔۔۔۔۔عذوبہ بھی اس دفعہ بولی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اوکے ۔۔۔لیکن اگر آپ لوگ نہ گے تو میرے پاس اور بھی طریقے ہیں۔۔۔۔ہرمان نے نائف کو ٹیبل پر رکھتے ہوئے سب کو وارن کیا۔۔۔۔۔۔”اف کتنا خون نکل رہا ۔۔۔۔۔عذوبہ ڈاکٹر کو فون کرو جلدی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اس کا بازو پکڑ کر پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اوکے موم میں ابھی ڈاکٹر کو فون کرتی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ کہہ کر فون کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔”
موم اینڈ دادی آپ لوگ کیوں پریشان ہو رہے ہیں اتنے سے خون نکلنے سے آپ کے بیٹے کو کچھ نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنی خون آلود ہاتھ سے ناہید کو اپنے ساتھ لگاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔اور دادی آپ کا بیٹا بہت بہادر ہے کچھ نہیں ہوگا مجھے ۔۔۔۔۔لیکن اگر مس پنار کی شادی مجھ سے نہ ہوئی تو پھر بہت کچھ ہوسکتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اللہ ایسی اولاد تو کسی دشمن کو بھی نہ دے اف کیا بنے گا اس لڑکے کا۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے کرسی پر بیٹھتے ہوئے پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ناہید اور دادی نے بیک وقت اسد صاحب کو گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یار میں سوچ بھی نہیں سکتا تھا کہ تو مس پنار کے لیے اس حد تک چلا جاے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے اس کا بازو پکرتے ہوئے پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پتہ نہیں یار کب اور کیسے وہ مجھ اتنی اچھی لگنے لگی کہ اب میں اپنی زندگی کا تصور بھی ان کے بغیر نہیں کرسکتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے تصور میں پنار کو رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں سوچ بھی نہیں سکتا تھا کہ میں کبھی کسی سے اتنی محبت کروں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کھڑکی کے پاس کھڑے ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”عمر اور حارث اس کی اس قدر دیوانگی پر ایک دوسرے کو پریشانی سے دیکھ کر رہ گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
یار دیکھ وہ تم سے بڑی ہیں اور پھر ان کی شادی بھی ہونے والی ہے اور ہو سکتا ہے وہ اپنے fiance کو پسند کرتیں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اس سنجھانے کی کوشش کی لیکن اسے نہیں پتہ تھا کہ ہرمان کا اس پر اس قدر شدید رئیکشن ہو گا۔۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
چپ ۔۔۔۔۔ایک دم چپ۔۔۔۔۔۔۔آج تو تم نے کہہ دیا لیکن آئندہ ایسی بکواس کی تو مجھ سے برا کوئی نہیں ہو گا ۔۔۔پنار صرف اور صرف میری ہیں۔۔۔۔۔۔۔Get out of my room and let me rest۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان غصے سے کہہ کر واشروم میں چلا گیا اور زور سے دروزہ بند کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” یار کیا ہو گیا ہے اس ۔۔۔۔۔۔۔حارث نے بند روازے کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مجھے تو مس پنار کی فکر ہو رہی ہے، یہ کبھی بھی مس پنار کی شادی نہیں ہو نے دے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے فکر مندی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان فریش ہو کر کپڑے چینج کر چکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اب مرر کے سامنے کھڑے ہو کر اپنے پر پرفیوم چھڑک رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عمر اور حارث اس کے بیڈ پر بیٹھے اس دیکھ کم گھور زیادہ رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔” کیا مسلہ ہے تم دونوں کے ساتھ کبھی کسی کو تیار ہوتے نہیں دیکھا جو مجھے اس طرح گھور رہے ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “
ابھی عمر کچھ کہنے ہی والا تھا جب ہرمان کا فون بجا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے فون اٹھا کر چک کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فون پر ژالے کا نمبر چمک رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے یس کا بٹن پش کرتے ہوئے فون کان سے لگایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں ژالے بولو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن پتہ نہیں ادھر سے کیا کہا گیا تھا۔۔۔۔۔جس پر اس کا چہرہ غصے سے لال ہو گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے ژالے لیکن تم بتا سکتی ہو کہ وہ لوگ کہاں گے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔بس ایسے ہی جنرل نالج کے لیے ہرمان نے غصے کو کنٹرل کرتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے ٹھینکس ہرمان نے کرٹیسی نباتے ہوئے فون بند کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان کہاں جارہے ہو بات تو سنو۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے ہرمان کو باہر کی طرف جاتے دیکھ کر پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان رکا لیکن پلٹا نہیں۔ ۔۔۔۔۔ضروری کام سے جارہا ہوں تھڑی دیر تک آجاتا ہوں۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر تیز قدموں سے باہر کی طرف بڑھ گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار پلیز آپ ریلکس رہیں…….پنار کو نروس دیکھ کر رمیز نے کہا ۔۔۔۔۔میں آپ کو لنچ پر لے کر آیا تو آپ کو برا تو نہیں لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رمیز نے ہلکی سی مسکان سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”نہیں مجھے برا نہیں لگا ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی جواباً شرمیلی مسکان سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے کیا کھانا پسند کریں گی آپ ۔۔۔۔۔۔۔”
میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مس پنارآپ یہاں ،Wow what a coincidence۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مصنوعی خیرانی ظاہر کی۔۔۔۔۔۔۔”
پنار تو اس یہاں دیکھ کر ہی خیران تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا میں بھی یہاں بیٹھ سکتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔واوا کیا طریقہ تھا اجازت لینے کا ۔۔۔چیئر گھسیٹ کر بیٹھ کر ہرمان صاحب نے اجازت طلب کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور تو اور وہ رمیز کو ٹوٹلی اگنور کر رہا تھا۔۔۔۔وہ دیکھ بھی پنار کو رہا تھا اور بات بھی اسی سے کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان تم بیٹھ چکے ہو ۔۔۔۔پنار نے دانت پیستے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہاں تو آپ مجھے منا تھوڑی کرتی بیٹھنے سے ۔۔۔۔۔۔۔ہاں رمیز صاحب کو ہو سکتا ہے میرے بیٹھنے سے اعتراض ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان نے تیکھی مسکراہٹ سے رمیز کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”رمیز بیچارے کو تو سمجھ ہی نہیں آرہی تھی کہ وہ کیا کہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں مجھے بھلا کیا اعتراض ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رمیز نے اپنی خیرانی کو کنٹرول کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”
آپ لوگوں نے ابھی تک کھانا بھی آرڈر نہیں کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویٹر پلیز۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے رمیز کو کہہ کر ساتھ ہی ویٹر کو بھی آواز لگائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے رمیز کو دیکھا جو خیرت سے ہرمان کے کونفیڈینٹ کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
مس پنار بتائے ویٹر کو آپ کیا کھانا پسند کریں گی۔۔۔۔۔ہرمان نے ویٹر کو انتظار میں کھڑے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”تم ہی آرڈر کردو پنار نے مصنوعی مسکان سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے میرے لیے تو یہ انرز کی بات ہے۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بنا شرمندگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مسٹر رمیز آپ کچھ آرڈر نہیں کریں گے۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اب کی دفعہ رمیز کو محاطب کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”میرے لیے بھی آپ ہی آرڈر کردیں۔۔۔۔۔۔اس بار رمیز نے بھی طنزیہ کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے نہیں اپنے لیے آپ کو خود ہی آرڈر کرنا ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے تپانے والی مسکان سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔رمیز کو سمجھ نہیں آرہا تھا اس لڑکے کی اس سے کیا دشمنی ہے ۔۔۔۔۔رمیز نے اسے گھور کر اپنے لیے کھانا آرڈر کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کھانا کھاتے وقت وہ پنار کا جائزہ لے رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس نے پنک شرٹ اور وائٹ کپری میں پونی ٹیل بناے ہلکا سا میک اپ کیے اچھی لگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان خود بلیک شرٹ ،بلیک پینٹ میں گلاسز گریبان میں اٹکاے انتہائی خوبصورت لگ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور وہ پنار کی تیاری کو ناگواری سے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ یہ تیاری اس کے لیے تھوری تھی” کھانا وغیرہ تو ہم نے کھا لیا ہے میرے خیال میں ہمیں اب چلنا چاہئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے نیپکن سے منہ ہاتھ صاف کرتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
رمیز نے بل پے کرنا چاہا لیکن ہرمان نے پہلے بل پکڑا دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور آنکھوں پر چشمہ لگا کر چلتا بنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے پنار اس کی پشت کو دیکھ کر رہ گئ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ سخت شرمندگی محسوس کررہی تھی رمیز سے
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ٹڈی تین کپ چائے اور ساتھ میں ریفریشمنٹ کا انتظام کر دو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے ہائمہ کے ہاتھ سے بک چھین کر خکم دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔.” پہلے شاید بنا دیتی لیکن اب مجھ سے تو امید مت رکھئے گا کہ میں آپ کی بات مانوں گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خبردار جو آپ نے اب مجھے ٹڈی کہا تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہائمہ کو تو غصہ ہی اگیا اس کے ٹڈی بولنے پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ارے میری پیاری سی گڑیا نہیں بولتا نہ اب تمہیں ٹڈی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جاو بنا لاو چائے ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار آپا نہیں ورنہ میں انہیں کہہ دیتا اور وہ جھٹ سے بنا دیتی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے چہرے پر زبردستی پریشانی لانے کی کوشش کی جو کہ کامیاب رہی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”بس کردیں یہ بلیک میلنگ جارہی ہوں میں بس یہ آخری دفعہ ۔۔۔۔۔ہائمہ کہہ کر ابھی اگے بڑھی ہی تھی جب اس کا پیر میٹ سے الجھا تھا اور وہ گر جاتی جو اگر رومان نے پھرتی سے اس کی کمر سے پکڑ کر اسے گرنے سے بچایا نہ ہوتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اااا میں گر گئ امی ی ی ،ہائمہ نے مرینہ کو آواز لگائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ بی بی آنکھیں کھولیں اور دیکھیں آپ گر نہیں بلکہ مجھے گرانے کی کوشش کر رہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اپنا سارا وزن رومان پر ڈالا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس پر رومان نے مسکراتے ہوئے طنز کیا۔۔۔۔۔۔۔”
ہائمہ نے ڈھرکتے دل کے ساتھ اس سے دور ہوئی اور بھاگ کر کچن میں چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے رومان اس کی جلد بازی پر صرف مسکرا کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کہاں سے آرہے ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے ہرمان کو رات کے دس بجے گھر لوٹنے پر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
کہی نہیں بس لونگ ڈرائونگ پر چلا گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنے کمرے کی طرف جاتے ہوئے بنا رکے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ہرمان میری بات سنو پھر جانا اپنے کمرے میں۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اسے سامنے بیٹھنے کا اشارہ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے نہ چاہتے ہوئے بھی واپس آیا اور ان کے سامنے رکھی چیئر پر بے دلی سے بیٹھ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” کہیں کیا بات ہے۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے نیند آرہی ہے ۔۔۔ہرمان نے لٹھے مار انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔*

ہوں تم شادی کرنا چاہتے ہو نہ تو مجھے کوئی اعتراض نہیں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ان کی بات پر خیرانی سے ان کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” میں تمہاری شادی کروا دوں گا لیکن تمہاری ٹیچر سے نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔شزا سے تمہارے چاچو سے میں نے بات کر لی ہے وہ بھی یہی چاہتیں ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ تمہاری ایج کے ہے اور ویسے بھی تمہیں کوئی اپنی لڑکی نہیں دے گا تم ابھی پڑھتے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کونسا کوئی جاب یا بزنس کرتے ہو تم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اسد نے اپنی بات مکمل کر کے اس کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اس کے چہرے کو دیکھ کر وہ چونکے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔”

آپا آپ نے انجوائے تو خوب کیا ہو گا آج۔۔۔۔۔۔۔۔واوا سو رومینٹک ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ژالے نے پنار سے پوچھا۔۔۔۔۔۔جو کبڈ سے اپنا نائٹ سوٹ نکال رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ژالے کی بات پر غصے سے اس کی طرف مڑی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں بہت انجوائے کیا اور تو اور کپل ڈانس بھی کیا ہم نے اور کچھ سنو گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔اور ژالے کا تو خیرت کے مارے سارا منہ ہی کھل گیا۔۔۔۔۔۔۔۔آپا آپ کو ابو نے کھانا ساتھ کھانے کی اجازت دی تھی ،کپل ڈانس کے لیے نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے پنار کے ہاتھ سے نائٹ سوٹ چھینتے ہوئے روب سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بکواس نہ کرو اور نکلو میرے کمرے سے ۔۔۔۔۔۔پنار نے دوبارہ اس کے ہاتھ سے نائٹ سوٹ چھینتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔” جارہی ہوں میں اور ابو کو کہوں گئ کہ آپا کھانا کھانے نہیں ڈانس کرنے گئ تھی۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے کہہ کر کمرے سے دوڑ لگا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ٹھہر جاو ژالے کی بچی تم سے تو میں اچھی طرح پوچھتی ہوں بدتمیز ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے واش روم کی طرف جاتے ہوئے ژالے کو محاطب کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اسد صاحب کچھ کہتے کہتے چپ ہو گئے تھے جب نظر ہرمان کے چہرے پر پڑی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ہرمان نے سرخ ہوتی نظروں سے اسد صاحب کو دیکھا تھا۔۔۔۔۔اور ایک جھٹکے سے چیئر سے کھڑے ہو کر زور کی لات کرسی پر ماری ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا کہا ہے آپ نے کہ میں شزا سے شادی کر لوں واوا کیا بات ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے تالی مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن وہ شزا ہو یا آسمان سے اتری کوئی خورI Don’t care اور ایک بات اور پنار نہیں تو کوئی نہیں. ایک اور بات یہ بات اگر کسی اور نے کہی ہوتی تو I don’t know کہ میں اس کے ساتھ کیا کرتا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پینٹ کی پاکٹ میں ہاتھ گھساتے ہوئے ٹھنڈے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔کل آپ لوگ جارہے ہیں مس پنار کے گھر بات کرنے۔۔۔۔۔۔وہ اگر نکار بھی کردیتے ہیں تو یہ میرا مسلہ ہے ۔۔۔۔۔۔آپ لوگوں کو پریشان ہونے کی ضرورت نہیں ۔۔۔۔میں سب ہینڈل کر لوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر اپنے کمرے کے طرف بڑھا اور راستے میں آتی چیزوں کو ہاتھ اور لات مار کر توڑ نا نہیں بھولہ تھا یہ اس کا غصہ ظاہر کرنے کا ایک خاص انداز تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” پیچھے اسد صاحب اپنے اس قدر ڈیٹھ بیٹے کو کوس کر رہ گیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار بیٹا میں سوچ رہی تھی اور تمہارے ابو بھی کہہ رہے تھے کہ تم اب کالج سے ریزائن دے دو شادی میں دن ہی کتنے رہ گے ہیں ابھی کافی تیاریاں بھی رہتی ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے پنار کے اگئے ناشتے کی پلیٹ رکھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” جی امی دے دوں گی لیکن پھر بھی چار پانچ دن تو لگ ہی جائیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پراٹھے کا نوالہ توڑتے عافیہ کی بات کا جواب دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آجائیں آپا میں آپ کو چھوڑ دیتا ہوں مجھے تھوڑا کام ہے اس طرف ۔۔۔۔۔۔رومان نے اپنا ناشتہ فنش کرتے ہوئے پنار کو کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے پانچ منٹ ویٹ کرو آرہی ہوں میں بیگ وغیرہ لے آوں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اماں آپا کے بغیر گھر کتنا سونا ہو جاے گا نا ۔۔۔۔رومان نے پنار کی پشت کو دیکھ کر افسردگی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔”ہوں ٹھیک کہہ رہے ہو بیٹا لیکن بیٹیوں کو گھر پر بھی تو نہیں بٹھایا جا سکتا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے اس کے سر پر بوسہ لیتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چلیں رومان دیر یو رہی ہے ،پنار اپنا بیگ وغیرہ لے آئی تھی ۔۔۔۔۔ہاں چلیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان بھی گاڑی کی کیز ٹھا کر اس کے پیچھے برھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پیچھے عافیہ نے ان پر ایةالکرسی پر کر پھونکی اور برتن سمیٹبے لگی۔ ۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان جڈون پیلس میں سب صبح کا ناشتہ کر رہے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب انہیں ایک اور سرپرائز ملا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
اسلام علیکم ایوری ون ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ڈائنگ ہال میں آکر سب پر سلامتی بیجھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سب لوگوں نے ہرمان کی طرف دیکھا اور پھر اسلام کا جواب منہ میں رہ گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان وائٹ شرٹ ،بلیک پینٹ، وائٹ لائنوں والی بلیک ہی ٹائی لگاے گلے میں ایک طرف بیگ لٹکاے ۔۔۔۔۔۔وہاں کے ماحول پر چھا رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب اس کے حلیے کو خیرت سے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس طرح فارمل تیار ہو کر کہاں جارہے ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اپنی خیرت پر قابو پاتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آفس۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ایک لفظ کہہ کر جوس گلاس میں انڈیلا اور منہ سے لگایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”کیا مطلب ہے تمہارا اسد نے چائے کا کپ ٹیبل پر پٹح کر پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”وہی جو آپ سب نے سنا۔ ۔۔۔۔ویسے بھی ڈیڈ آج نہیں تو کل مجھے ہی تو سنبھالنا ہے سارا بزس، تو آج سے کیوں نہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ایک بات اپنے لیے تو میں نے سن لیا کہ میں آپ پر ڈیپینڈڈ ہوں لیکن مس پنار کے لیے نہیں سن سکتا میں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اپنی بیوی کا خرچ وغیرہ میں خود اٹھاوں گا آپ کوگوں کو ٹینشن لینے کی ضرورت نہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جوس کا گلاس ٹیبل پر رکھا اور ایک نظر سب کے خیران چہروں پر ڈال کر باہر کی طرف بڑھ گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
افففف اور کیا کیا دیکھنا بقی رہ گیا ہے۔ ۔۔۔۔۔۔اسد نے اپنا سر ہاتھوں میں تھامتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور رہی دادی انہیں تو ہرمان کی کہی بات میں کبھی حامی نظر نہیں آئی اب بھی اس کے فیصلے پر انہیں کوئی برائی نظر نہیں آرہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔”
ناہید نے اپنا ہاتھ اسد کے ہاتھ پر رکھ کر تسلی دی کہ آپ ٹینشن نہ لے سب ٹھیک ہوجا ئے گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار بیٹا ہمیں ٹیچر مل گئی کل سے وہ جوائن کر لیں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا آپ نے جو وقت ہمارے سکول کو دیا اس کے لیے آپ کا بہت بہت شکریہ ۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے اس کا ریزائن ایکسیپت کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے اس میں شکریے کی کیا بات ہے ۔۔۔۔یہ میرا فرض تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے سر میں چلتی ہوں ۔۔۔۔پنار نے چیئر سے کھڑے ہو کر اجازت طلب کی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے بیٹا آئیں میں باہر تک چھوڑ دوں آپ کو۔۔۔۔۔۔ارے نہیں سر میں چلی جاوں گی اٹس اوکے ۔۔۔۔۔پنار نے مسکرا کر کہا اور دروازہ کھول کر باہر چلی گئ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” پیچھے خلیل صاحب نڈھال سے چیئر پر گرے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کیا کروں میں تمہارا آج پہلی دفعہ مجھے کسی سے اتنی شرمندگی ہوئی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔خلیل نے پانی کا گلاس منہ سے لگاتے ہوئے سوچا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”آج صبح ہی اسد نے فون پر اسے ساری بات بتائی تھی جس سن کر کتنے ہی لمحے تو وہ کچھ بال ہی نہیں سکے تھے ۔۔۔۔۔اسد نے اسے سمجھانے کا کہا تھا ۔۔۔کیوں کہ وہ ان کی نسبت خلیل سے زیادہ کلوز تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”لیکن خلیل جانتے تھے کہ اگر ہرمان نے فیصلہ کر لیا ہے تو کوئی اس ڈیٹھ کو اس کے فیصلے سے پیچھے نہیں ہٹا سکتا تھا خود وہ بھی نہیں اس لیے جب سے انہوں نے سنا تھا وہ پریشان بیٹھے تھے کہ کیا ہو گا اب؟ ۔ ۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان کہاں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اپنی چیئر پر بیٹھتے ہوئے اپنے سیکٹری سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ سر ابھی آپ کے ساتھ والے کیبن میں بیٹھیں ہیں ۔۔۔۔سر وہ جب سے آئے ہیں پہلے تو صفائی والے عملے کو ڈانٹ کر دوبارہ صفائی کروائی اور پھر سب آنے والے ورکر کو بہت ڈانٹا کہ ٹائم پر آیا کریں حلانکہ سروہ سب ٹائم پر آئے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔اور اب سب پیچھلی فائلوں منگوا کر ان کا معائنہ کر رہیے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سیکٹری نے اسد صاحب کو سب کچھ تفصیل سے بتایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ خود بھی تنگ آگیا تھا ہرمان سے جو اسے کب سے کبھی ادھر دوڑ رہا تھا تو کبھی کدھر۔ ۔۔۔۔۔۔۔”
ہوں ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔آج کا سارا شیڈول کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے پھر ہرمان سے نمٹنے کا سوچ کر اپنے سیکٹری سے آج کی معلومات لی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
تو سچ بول رہا تم آفس میں ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے بے یقینی سے ہرمان سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” یقین کرنا ہے تو کرو ورنہ میری صحت پر کیا اثر ہے ۔۔۔۔۔۔ہرمان Revolving chair پر بیٹھا سر کو کرسی کی بیک پر ٹکاے ریلکس انداز میں عمر سے فون میں بات کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” یار لیکن کیوں ۔۔۔۔۔عمر نے نا سمجھنے والے انداز میں پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ تمہیں میں بعد میں بتاوں گا ابھی مجھے کام کرنے دے ۔۔۔۔۔ہرمان نے ایسے کہا جیسے سارے آفس کو وہی تو چلا رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور فون بند کر کے وال پیپر پر لگی پنار کی تصویر جو اس نے اس دن اس کے مرے میں رکھے فریم سے کھینچی تھی دیکھنے لگا۔ ۔۔۔۔۔۔۔اور فائلیں ایسے ہی پڑی تھی جیسے منگوائی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
مس پنار مجھے آپ سے ضروری بات کرنی ہے وہ بھی ابھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے سامنے آتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان سیدھا آفس سے پنار کے گھر اس سے آج دو ٹوک بات کرنے چلا یا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار جو لان میں بیٹھی چائے پی رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کے اس طرح سامنے آنے پر پہلے تو ڈر گئ ۔۔۔۔۔۔۔۔پھر اسے گھور کر دیکھا ۔۔۔۔۔ جیسے کہا ہو یہ بات کرنے کا کونسا طریقہ ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن ہرمان پر اس کی گھوری کا کوئی اثر آج تک ہوا تھا جو اب ہوتا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”کہو کیا بات ہے ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے اجازت دی بات کرنے کی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان ایک منٹ تک تو چپ رہا پھر پنار کے چہرے کی طرف دیکھا جو سوالیہ نظروں سے اس کی طرف دیکھ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آپ اس رمیز سے شادی کرنے سے انکار کردیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بات کر کے اس کے چہرے کی طرف دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو نا سمجھی سے اسے دیکھ رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ہے تمہارا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نا سمجھی سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے اب سیدھے طریقے سے آپ کو سمجھاتا ہوں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ایک پل کے لے چپ ہوا اور پھر اس سے دو قدم کے فاصلے پر رکا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو مس پنار آپ خود اس رمیز سے شادی سے انکار کردیں کیونکہ I love you so much
You can’t be anyone else but me ۔……….
آپ صرف اور صرف میرے لیے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی آنکھوں میں دیکھ کر ایک ایک لفظ کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یہ کیا مزاق ہے ہرمان تم زندگی میں کبھی تو سیریس ہو جاو ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی بات کو مزاق سمجھی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کو میری بات مزاق لگ رہی ہے ہاں ۔۔۔۔۔۔یہ مزاق نہیں ہے۔۔۔۔اور سیریس میں صرف آپ کے معاملے میں ہوا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شادی آپ کی صرف مجھ سے ہی ہوگئ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ادر وائز کسی اور کی تو میں آپ کو ہونے نہیں دوں گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کا ہاتھ اپنے ہاتھں میں لے کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار پہلے تو ساکت ہوئی تھی اس کی بات پر ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر اس کے چہرے کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کے چہرے پر اس وقت اپنی کہی بات پر سنجیدگی چھائی ہوئی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے غم و غصے سے ہاتھ کھینچا ۔۔۔۔۔۔۔
“تم سے پانچ سال بڑی ہوں کچھ تو میری اور اپنی عمر کا لحاظ رکھا ہوتا “
پنار نے ہرمان کو گال پر زور سے تھپڑ مارتے ہوئے کہا”
ہرمان گال پر ہاتھ رکھے مسکرایا تھا، ضرور رکھا ہوتا عمر کا لحاظ اگر دل لگی کرتا لیکن مجھے تو آپ سے عشق ہے ،اور عشق عمروں کا فرق نہیں دیکھتا”
ہرمان نے پنار کے قریب ہوتے ہوئے کہا جو اسے آنکھوں سے قتل کرنے کو تیار تھی”۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دفع ہو جاو میری نظروں سے گیٹ آوٹ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے باہر کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا وہ اس وقت یہی کہہ سکی۔ ۔۔۔۔۔۔میں جا رہا ہوں لیکن میرے موم ڈیڈ آج آئیں گے بات کرنے ہمارے رشتے کے سلسلے میں بات کرنے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں جانتا ہوں آپ کے گھر والے میرے لیے کبھی نہیں مانے گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔But i don’t care about you ……….آپ صرف اور صرف میری ہیں اور میرے مرنے کے بعد بھی صرف میری ہی رہیں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پنار کو ساکت چھوڑ دو تین الٹے قدم پیچھے ہوا اور پھر پلٹ کر تیز تیز قدموں سے چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آپا ۔۔۔۔ژالے نے پنار کو ہلایا جو ابھی بھی ساکت کھڑی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر ژالے کے چہرے کی طرف دیکھا کہ اس نے کہی کچھ سنا تو نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کی نظروں کا مطلب ژالے سمجھ گئ تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپا میں نے سب سن لیا ہے۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: