Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 20

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 20

–**–**–

آپا میں نے سب سن لیا ہے جو ہرمان نے ابھی آپ سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے شرمندگی سے کہتے ہوئے ژالے کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن آپا ہو سکتا ہے وہ آپ سے مزاق کر رہا ہو ژالے نے سوچ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”نہیں ژالے وہ جھوٹ نہیں بول رہا تھا وہ سیریس تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔افففف مجھے پہلے کیوں نہیں پتا چلا۔۔۔۔۔۔ژالے اگر سچ میں اس نے اپنے گھر والوں کو بھیج دیئے تو؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے پریشانی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپا پلیز آپ ریلکس رہیں ۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں ہوتا۔۔۔۔۔۔”ژالے نے اسے گلے لگاتے ہوئے تسلی دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ہونٹ بھینچ رہ گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کیا ۔۔۔۔۔۔لیکن کوئی وجہ تو ہو انکار کی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے رائمہ کے انکار کی وجہ پوچھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بھائی مرینہ نے پوچھی تھی لیکن اس نے کوئی خاص وجہ نہیں بتائی ،وہ کہتی ہے رومان سے شادی نہیں کرے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یاسر نے شرمندگی اشعر کو ساری بات بتائی۔ ۔۔۔۔۔ ۔ ۔۔ہوں کوئی بات نہیں ویسے بھی زندگی انہوں نے گزارنی ہے ہم نے نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بچے خوش تو ہم خوش اس لیے تم پریشان مت ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے یاسر کے ہاتھ پر ہاتھ رکھا۔ ۔۔۔۔۔اتنے میں عافیہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اشعر بات سنیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔باہر مہمان آئیں ہیں میں نے انہیں ڈرائنگ روم میں بٹھایا ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔کون لوگ ہیں ۔۔۔۔۔۔اشعر نے صوفہ سے اٹھتے ہوئے عافیہ سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان کے گھر ۔۔۔۔۔والے عافیہ نے ان کے پیچھے آتے ہوئے جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہرمان کے گھر والے خیریت بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔اس دفعہ یاسر نے پیچھے آتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔اشعر نے بھی سوالیہ نظروں سے دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پتا نہیں میں انہیں بٹھایا تو انہوں نے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ آپ سے ملنا چاہتے ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ انہیں کہتی ہوئی کچن میں چلی گئ تاکہ چائے وغیرہ کا انتظام کر سکے، جبکہ وہ دونوں ڈرائنگ روم میں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آپا، باہر ہرمان اور اسکے گھر والے آئیں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور آپ سے ملنا چاہتے ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے پنار کے کمرے میں آکر کہا اس کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔وہ جو اپنی کبڈ کی صفائی وغیرہ کر رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ژالے کی بات پر اس کے ہاتھ سے کپڑے گر گئے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیا بکواس کر رہی ہو ہاں، یہ کیا کوئی مزاق کی بات ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے ژالے کو کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپا میں سچ کہہ رہی ہوں آپ خود چل کر دیکھ لیں۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے سنجیدگی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔اوکے چلو۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نےکہہ کر باہر کی طرف بڑھی۔ ۔۔۔۔۔۔ژالے بھی اس کے پیچھے لپکی۔ ۔۔۔۔۔۔۔”اس کی ہمت کیسے ہوئی اس طرح کی گھٹیا بات کہنے کی اچھی تربیعت کی ہے آپ نے اپنے بیٹے کی میری بیٹی کی شافی اسی مہینے اور آپ لوگ رشتہ لے کر آگئے۔۔۔۔۔۔اور اگر بیٹی کی شادی نا بھی ہوتی تو بھی میں اس کی شادی آپ کے بیٹے سے ہرگز نا کرتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔وہ کیا کہتے وہ تو خود ان سے شرمندہ تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ ہمارے گھر مہمان آئے ہیں اور ہم مہمانوں کی بہت عزت کرنے والے لوگ ہیں ۔۔۔۔۔۔آپ لوگ چآئے وغیرہ پی کر جائیے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے غصے پر قابو پاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
نہیں شکریہ ہم لوگ چلتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے کرسی سے اٹھتے ہوئے انہیں کہا۔۔۔۔۔۔۔چلیں، اسد نے ناہید کو کہا جو بے بس بیٹھی ہوئی تھی وہ پنار سے ملنا چاہتی تھی لیکن ؟۔۔۔۔۔۔۔جی ۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید کہہ کر ان کے پیچھے باہر نکل گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”میں سوچ بھی نہیں سکتا تھا وہ لڑکا ایسا نکلے گا انتہا ئی بدتمیز انسان ہے پتہ بھی ہرے پنار کی شادی ہے پھر بھی رشتہ بھیج دیا ۔۔۔اپنی عمر بھی نہیں دیکھی۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” چھوڑیں نا بھائی صاحب ۔۔۔انہوں نے رشتہ مانگا اور ہم نے انکار کر دیا۔۔۔۔۔۔۔بات ختم۔۔۔۔۔۔یاسر نے اس ٹاپک کو ختم کرنا چاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن وہ لوگ نہیں جانتے تھے کہ بات تو شروع ہی اب ہو ئی ہے۔۔۔۔۔۔وہ ابھی ہرمان ڈیٹھ کو جو نہیں جانتے تھے۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اتنی شرمندگی اس لڑکے وجہ سے مجھے ہوئی ہے کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔میں تمہیں بتا نہیں سکتا خلیل۔۔۔۔۔۔۔اسد نے خلیل کو ساری بات بتاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سرخلیل ہرمان سے بات کرنے آئے تھے ۔۔۔۔لیکن بات بہت بڑھ چکی تھی اب۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کہاں ہے ۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے اس کی غیر موجود کو پا کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” پتا نہیں یہی کہی ہو گا وہ۔۔۔۔۔۔ جواب ناہید نے دیا جبکہ اسد نے غصے سے سر جھٹکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” ارے واو آج تو ہمارے گھر بڑے بڑے لوگ آئےہیں ۔۔۔خیرت ہو آج تو۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لاونج میں بیٹھے خلیل سر کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔” لیکن سر خلیل نے اسے غصے سے گھورا کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔ارے اتنا غصہ کیوں ہے آپ کو مجھ معصوم پر ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ایک نظر اسد، ناہید کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔جو غصے سے اسے گھور رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔” دور ہو جاو میری نظروں سے تم جیسی اولاد توتی ہے جو ماں باپ کی شرمندگی کا باعث بنتی ہے۔۔۔۔۔اسد نے غصے سے اسے باہر نکل جانے کو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈیڈ پلیز چل کریں اتنا غصہ اس عمر میں ٹھیک نہیں ہوتا، ویسے بھی میں جانتا ہوں انہوں نے انکار کر دیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹینشن مت لیں سب ٹھیک کردوں گا میں۔۔۔۔آپ کی بہو مس پنار ہی بنے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے ٹیبل پر فروٹ باسکٹ سے ایپل پکڑا اور اسے ہوا میں اچھالتے ہوئے اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے وہ تینوں ایک دوسرے کو بے بسی سے دیکھ کر رہ گے۔۔۔۔۔اور وہ کر بھی کیا سکتے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار بیٹا ۔۔۔۔۔۔تم پریشان کیوں ہو رہی ہو اس میں تمہاری کوئی غلطی نہیں ہے جاو جا کر فریش ہو کر آو۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے پنار کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” نہیں چچی ایسی کوئی بات نہیں بس طبیعت تھوڑی ڈل ہو رہی ہے۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چہرے پر زبردستی مسکراہٹ سجاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” اچھا تمہاری ساس کا فون آیا تھا ابھی وہ اور رمیز تھوڑی دیر میں آرہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔شادی کے کپڑے وغیرہ پسند کرنے تمہیں ساتھ لے کر جا نا چاہتے ہیں ۔۔۔۔جاو جلدی سے فریش ہو جاو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چاچی نے اس زبردستی کھڑا کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔،۔۔”لیکن مجھے کہاں اتنا تجربہ ہے کپڑے وغیرہ خریدنے کا پنار نے پریشانی سے کہا
اچھا۔۔۔۔۔۔چچی آپ ژالے کو چائے دے کر میرے لیے بھیجھ دیں سر درد کر رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کبڈ سے کپڑے سلیکٹ کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے آپ نے چائے مانگی اور چائے حاظر ہوگئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔چچی اس سے چائے کی عمر بڑی ہوئی یا میری آپا نے ہم دونوں کو ایک ساتھ یادجو کیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے،پنار کے کمرے میں چائے لاتے ہوئے شروع ہوگئ تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ رہی آپا آپ کی گرم گرم چائے پیئے اور مجھے دعائیں دیں ۔۔۔۔۔ژالے نے پنار کے آگے چائے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اور چچی اس کے انداز پر مسکرا دیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے ژالے بیٹا بے فکر رہیں آپ دونوں کی عمر بڑی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ کہتے ہوئے کمرے سے چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے مسکرا کر پنار کو دیکھا اور اس کے ساتھ بیٹھ گئ۔۔۔۔۔۔۔۔آپا میں بھی آپ کے ساتھ ہی جاوں گی۔۔۔۔انٹی نے کہا ہے پنار ژالے کو بھی ساتھ لے آئے۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کی باتوں پر مسکرا کر چائے کے گھونٹ بڑھنے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
آپا یہ کونسا سوٹ نکلا ہے آپ نے۔۔۔۔اتنا ڈل کلر۔۔۔۔۔۔نہیں میں یہ سوفٹ کلر ہی پہنوں گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کبڈ میں دوسرے کپڑے تلاش کرتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی نہیں آج آپ میری پسند کے کپڑے پہنے گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے پلٹ کر کمر پر ہاتھ رکھ کر اسے وارننگ دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہوں۔۔۔ژالے ہٹھوری پر انگلی رکھیں کپڑے دیکھنے لگی۔۔۔۔۔۔۔ہاں آپ یہ پہنے گئ۔۔۔۔۔۔یہ سی گرین آپ پر بہت سوٹ کرے گا دیکھئے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اس کے ہاتھ پر ہلکی کڑھائی پرنٹ والا سوٹ بڑھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اس میں کیا خرابی تھی پنار سوٹ لیتے ہوئے جھنجھلائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جائیں جلدی سے آپ کی ساس تو ویسے بھی ٹائم کی بہت پابند ہیں. ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اسے واش روم میں دھکیلتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کام اچھا کرو گے ۔۔۔۔۔تو دگنے پیسے ملیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے فون پر کسی سے بات کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فون میں پتہ نہیں کسی نے کیا کہا تھا جس پر وہ چونکہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پکی بات ہے۔۔۔۔۔۔۔اوکے ۔۔۔۔۔. ۔۔ہرمان نے فون بند کر۔کے ۔۔۔۔ٹھوڑی دیر کچھ سوچا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر کبڈ سے اپنے لیے کپڑے سلیکٹ کرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان مجھے تم سے بات کرنی ہے ابھی اسی وقت۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شزا نے اس کے کمرے میں آکر غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پلٹ کر اسے دیکھا اور پھر اپنا کام جاری رکھے ۔۔۔۔۔۔۔ہاں جلدی بولو مجھے کہی کام سے جانا ہے ۔۔۔.۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مصروف سے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
تم نے کیوں شادی سے انکار کیا۔۔۔۔۔۔ہاں کیا کمی ہے مجھ میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شزا نے اس کے سامنے آتے ہوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شزا تم میں کوئی کمی نہیں ہے۔۔۔۔لیکن میں تم سے شادی نہیں کرنا چاہتا سمپل بات ختم۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لاپروایی سے شانے اچکا کر جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”لیکن میں تم سے ہی شادی کروں گئ دیکھ لینا تم ،مجھے پروا نہیں کہ تم مجھ سے شادی کرنا چاہتے ہو یا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔شزا نے غصے سے کہا اور پھر پلٹ کر زور سے دروازہ بند کر کے چلتی بنی.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لاپرواہی سے سر جھٹکا اور کپڑے لے کر ڈریسنگ روم میں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار میں سوچ رہی تھی کہ آپ برائیڈل ڈریس بھی دیکھ لو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آسیہ نے دوسرے طرف کپڑے دیکھتی پنار سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انٹی آپ اپنی پسند کا ہی لے لیں نا دراصل میری پسند اتنی اچھی نہیں ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بالکل ٹھیک کہہ رہیں مس پنار۔۔۔۔۔۔۔آسیہ ابھی کچھ کہنے ہی والی تھی جب پیچھے سے آتی آواز پر متوجہ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر پیچھے کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان چاکلیٹ شرٹ جس کے ہاف بازو سے اس کے ورزشی بازو جھانک رہے تھے ،بالوں کو جل سے سیٹ کیے ،ہاتھوں کو پینٹ کی پاکٹ میں گھساے ایک سٹائل سے کھڑا مسکرا کر پنار کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کا اسے یہاں دیکھ کر ہی خون کھول اٹھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور غصے سے منہ دوسری طرف موڑ لیا۔۔۔۔۔۔۔۔ہیلو انٹی ۔۔۔۔کیسی ہیں آپ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان آسیہ کی طرف متوجہ ہوا، جو اسے نا سمجھی سے دیکھ رہی تھی ،جوابا آسیہ نے بھی خوش اخلاکی سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں تو میں کہہ رہا تھا کہ مس پنار کی چوائس بالکل بھی اچھی نہیں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے طنزیہ مسکراہٹ سے اسے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھور کی دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھیں نا انٹی اگر ان کی پسند اچھی ہوتی تو وہ آپ کے بیٹے کو تھوڑی پسند کرتی مجھ جیسے ہینڈسم لڑکے پسند کرتی ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر آسیہ سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی بات پر فق چہرے سے آسیہ کی طرف دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔جن کے مسکراتے ہونٹ ہرمان کی بات پر سکڑے تھے۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اور پیچھے کھڑا ایک اور وجود بھی ساکت ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔رمیز جو واش روم گیا ہوا تھا ،ہرمان کی بات سن کر رکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان نے مسکرا کر پنار کو دیکھا ۔۔۔۔جس کے چہرے پر پریشانی کے بادل چھا گیے تھے ہرمان کی بات پر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے انٹی میں تو مزاق کر رہا تھا یونو مجھے مزاق کرنے کی عادت ہے کیوں مس پنار ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر پنار سر تائید چاہی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سنبھلتے ہوئے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔”جی ٹھیک کہہ رہا یہ اسے مزاق کی عادت ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جبراً مصنوعی مسکان سے آسیہ سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔آسیہ بھی مسکرادی۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دل جلاتی مسکان سے رمیز کو دیکھا جو اسے وہاں دیکھ کر رسماً مسکرایا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مس پنار کیا آپ اپنی شادی کی شاپنگ کر رہی ہیں ؟
ہرمان نے سوال پنار سے پوچھا جواب آسیہ نے دیا۔ ۔۔۔۔جی بیٹا شادی میں دن کم رہ گئے ہیں تو ہم نے سوچا پہلے کپڑوں کا کام نبٹا لیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سنجیدگی سے سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار تم اور رمیز برائیڈل ڈریس پسند کر لو میں تب تک زرا ژالے کو دیکھوں کہاں رہ گئی ہے وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایکسیزمی بیٹا۔ ۔۔۔۔۔آسیہ نے ہرمان کو کہہ کر اوپر کی طرف چلی گئ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”وہ والا لہنگا دیکھائیں زرا ۔۔۔۔۔۔۔۔رمیز نے ڈمی پر لٹکے ایک شاکنگ پنک لہنگے کی طرف اشارہ کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی اپنا دھیان کپڑے دیکھنے پر لگایا۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے آنکھوں سے سیل گرل کوکچھ اشارہ کیا تھا جس پر اس نے صرف سر ہلا یا تھا ۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے اپنے ساتھ بلیک کلر کاڈریس لگا کر دیکھ رہی تھی جب عمر کی نظر اس پر پڑی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر ہرمان کے ساتھ ہی آیا تھا۔۔۔۔۔۔لیکن اسے مس پنار کی طرف بڑھتا دیکھ کر وہ دوسری طرف اگیا کہ کہی مس پنار اسے بھی نہ سنا دیں۔۔۔۔۔وہ بور ہو رہا تھا ہرمان کے ساتھ یہاں آکر لیکن جب اس کی نظر ژالے پڑی تو ہونٹ خود بخود مسکرانے لگے اور بوریت کہی دور بھاگ گئ تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ژالے اب بلیک رکھ کر پنک سوٹ اپنے ساتھ لگا کر دیکھ رہی تھی جب آواز پر چونکی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے بلیک زیادہ سوٹ کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کے پیچھے کھڑے ہو کر کہا۔۔۔۔۔ژالے جو اپنے دھیا ن میں مگن تھی ۔۔۔عمر کے ایکدم بولنے پر ڈر گئ تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پیچھے پلٹ کر اس غصے سے گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔مسلہ کیا ہے تمہارے ساتھ ہاں ،جہاں کہی جاو وہی پہنچ جاتے ہو ٹانگیں توڑ دوں گی جو میرا پیچھا کیا تو۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ناک سکیڑ کر اس وارننگ دی ۔۔۔۔۔۔۔۔،ویسے ژالے تم نے نوٹ کیا کہ ہم دونوں کتنی بار ایک دوسرے سے ملیں ہیں ، اور یہ اتفاق تو ہرگز نہیں ہو سکتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے سوچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں یہ اتفاق ہے بھی نہیں۔۔۔۔۔۔تم میرا پیچھا کرتے ہو ااور ہر اس جگہ پر پہنچ جاتے ہو جہاں میں ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے غصے کا اظہار کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے برا سا منہ بنایا جیسے اس کی بات پسند نہ آئی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جہاں خوبصورت لڑکی دیکھی وہی پہنچ جاتے ہو ٹھرکی کہی کہ۔۔۔۔۔ژالے نے ڈریس واپس اس کی جگہ پر لٹکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “ارے میم آسمان سے فرش پر آجائے کس نے کہا ہے کہ ژالے میم خوبصورت ہے ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے سر جھٹکتے ہوئے ژالے کو چرایا۔۔۔۔۔۔۔۔”
اپنی شکل تمہاری لنگور جیسی ہے تو اس کا مطلب یہ نہیں کہ تم ہر ایک اپنے جیسا سمجھو ، ژالے کی خوبصورتی سے جل رہے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے غصے سے کہہ کر ابھی آگے بڑھی تھی۔۔۔۔۔جب وہ دوبارہ اس کے سامنے آگیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا تکلیف ہے تمہیں ۔۔۔کیوں پیچھے پڑے ہو جاو کسی خوبصورت لڑکی کا راستہ روکو۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اس کا راستہ روکنے پر چڑ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف ژالے تم کبھی بنا لڑے بھی مجھ سے بات کرو گئ یا نہیں ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے محبت سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اور ایک بات تم سب سے خوبصورت ہو اور مجھے لڑتی بھی اچھی لگتی ہو اور مسکراتی بھی۔۔۔۔۔۔عمر نے محبت سے کہہ کر ژالے کو دیکھا جو خیرت سے اس دیکھ رہی تھی اور پھر پلٹا لیکن موڑا ویسے وہ بلیک سوٹ اچھا لگ رہا تھا تم پر، کہ کر وہ دوسری طرف چلا گیا۔۔۔۔۔۔ژالے نے خیران ہو کر اس کی پشت کو دیکھا اور پھر اس بلیک سوٹ کو۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ویسے مسٹر رمیز مس پنار کو شاکنگ پنک کلر کچھ خاص پسند نہیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے پنک کلر کا لہنگا سلیکٹ کرتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔رمیز نے ہرمان کی بات پر پنار کو دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کا غصے کے مارے برا خال تھا۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان صوفہ پر بیٹھے ٹانگ پر ٹانگ رکھے ہاتھ میں جوس پکڑے پنار کو دیکھ رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔پنار کے دیکھنے پر ہرمان نے تپانے والی مسکراہٹ سے اسے دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
رمیز میں زرا واش روم ہو کر آتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے رمیز کو کہا جس نے سر ہلایا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جاتے ہوئے ہرمان کو پیچھے آنے کا اشارہ کیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سر جھکایا۔ ۔۔۔۔۔جیسے کہا ہو آپ کا خکم سر آنکھوں پر۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایکسیزمی مسٹر رمیز ضروری کال آرہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پنار کے جانے کے بعد ہرمان نے رمیز کو کہا ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”رمیز سر ہلا کر سیل بوئے کی طرف متوجہ ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار شاپ کی دوسری سائیڈ پر کھڑی اس کا انتظار کر رہی تھی جو دو تین منٹ میں ہی اس کے سامنے تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے ہرمان کو کہر آلود نظروں سے گھورا۔ ۔۔۔اور آو دیکھا نا تاو۔ ۔۔۔۔۔۔کھینچ کر اس کی گال پر تھپڑ مارا تھا۔۔۔۔۔دونوں ہاتھوں سے اس کا گربان پکڑا، کیا ثابت کرنا چاہتے ہو تم اس طرح کی خرکتوں سے ہاں۔۔۔۔پنار نے اس غصے سے جھنجھورا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے تیکھی نظروں سے اس دیکھا ۔۔۔اگر آپ کا خیال ہے کہ آپ مجھے تھپڑ ماریں گئی یا نفرت کریں گی تو میں آپ کے راستے سے ہٹ جاوں گا تو یہ آپ کی بھول ہے۔۔۔۔۔۔۔مس پنار میں آپ کو کسی اور سے بات کرتا دیکھوں تو مجھ سے برداشت نہیں ہوتا۔ ۔۔۔۔۔۔۔یہ کیسے سوچ لیا آپ نے کہ میں آپ کو کسی اور کا ہونے دوں گا۔ ۔۔۔۔۔نو نیور ہرمان نے چلا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے زچ ہو کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔چاہتے کیا ہو تم ،کیوں میرے پیچھے پر گے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔اپنی عمر کی لڑکی ڈھونڈو اور میرا پیچھا چھوڑو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے دھکا دیتے ہوئے کہا وہ جو اس سے دو تین قدم کے فاصلے پر کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔پنار کے دھکا دینے پر اس نے سنجیدہ نظروں سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر ایک دو منٹ تک اس کے چہرے کو دیکھا اور پھر پلٹ کر تیز تیز قدم اٹھاتا باہر نکل گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پریشانی سے ارد گرد دیکھا اور پھر شاپ کے اندر چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان میری بات سنو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے ہرمان کو تیز قدموں سے کمرے کی طرف بڑھتے دیکھ کر روکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان دادی کی پکار پر رکا ۔۔۔۔۔اور پھر ان کے پاس آکر بیٹھا اور دادی کی گود میں سر رکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی محبت پر کسی کا بس چلا ہے جو میرا چلتا ۔۔۔۔۔وہ کہتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔میرا پیچھا چھوڑ دو دادی میرے بس میں نہیں ہے انہیں چھوڑنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی میں کبھی اتنا بے بس نہیں ہوا ۔۔۔۔۔۔۔دادی میں کیا کروں ۔۔۔۔۔۔پنار کے بغیر میں جی نہیں سکتا نہیں جی سکتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کی آواز میں شدت محبت بول رہی تھی۔۔۔۔ہرمان نے آنکھیں موند کر دادی کا ہاتھ پکڑ لیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے ہرمان کے بالوں میں ہاتھ پھیرتے ہوئے ہرمان کی باتیں سنی وہ ہرمان کی محبت محسوس کر چکی تھی اور اس کے لیے اللہ سے دل ہی دل میں دعا کرنے لگی۔۔۔۔۔۔۔اپنے ہوتے کی بے بسی پر دادی کی آنکھ سے ایک آنسو نکلا تھا اور ہرمان کے سر میں غائب ہو گیا تھا

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: