Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 21

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 21

–**–**–

دادی آپ کیوں پریشان ہو رہی ہیں ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کا ہرمان ہے نہ سب ٹھیک کردے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کو پریشان دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان تو اسے بھول جا اس کی شادی ہونے والی ہے بیٹا ۔۔۔۔۔۔۔دادی نے ہرمان کو سمجھانے کی کوشش کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے ان کے ہاتھ اپنے ہونٹوں پر رکھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی ہونے والی ہے ہوئی تو نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنے اسی ڈیٹھ مود میں کہا جو اس کی خاصیت تھی ۔۔۔۔۔اور ہلکی سی مسکان سے دادی کو دیکھا جو خیرانی سے اسے دیکھ رہی تھی ۔۔۔۔۔۔جیسے سمجھ نہ پارہی ہوں کہ اب وہ کیا کرے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”دادی ریلکس کچھ غلط نہیں کروں گا۔۔۔۔۔۔۔لیکن آپ کو بتا دوں بہو تو آپ کی پنار ہی بنے گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان سے کہہ کر اٹھا اور اپنے کمرے میں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔” دادی نے پریشانی سے اس کی پشت کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
سات آٹھ دن سے ہرمان نے پنار کو بالکل بھی تنگ نہیں کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس سے پنار تھوڑی مطمئن ہوگئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔گھر میں شادی کی تیاریاں زورو شور سے ہو رہی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔آج گھر کی ڈیکوریشن وغیرہ ہو رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔پنار ،ژالے ،ہائمہ اور آج تو رائمہ بھی ان کے ساتھ بیٹھی ہوئی تھی۔۔۔۔وہ چاروں آئن لائن ولیمے میں پہنے کے لیے ڈریس دیکھ رہی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار آپا یہ دیکھیں کتنی پیار میکسی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔واوا ہائمہ نے پنک کلر کی بھاری کام والی میکسی کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں خوبصورت تو ہے لیکن یہ سلیولیس ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے میکسی دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں آگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے دروازے میں کھڑے ہو کر پنار کی طرف بازو بڑھایں.۔۔۔۔۔۔۔ردا سات آٹھ دن سے اوٹ آف کنٹری تھی۔۔۔۔۔۔۔اس لیے اب سیدھا یہی آگئ تھی پنار کی شادی اٹینڈ کرنے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار مسکرا کر ردا سے ملی ۔۔۔۔۔ردا نے اس زور سے بھینچا۔۔۔۔۔اف ظالم چھوڑ بھی دو پنار نے زبردستی اس سے الگ ہو کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار میں نے تمہیں بہہہہہہہت مس کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”میں نے بھی ۔۔۔ آو جاو اس طرف بیٹھیں ۔۔۔۔۔ارے کیسی ہو لڑکیو۔۔۔۔۔۔۔ردا نے سب ژالے ،ہائمہ وغیرہ سے ملتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کے لیے جوس وغیرہ کہہ کر منگوانے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار نے ردا کو ہرمان کے بارے میں کچھ نہیں بتایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ان کے روز مال کے پھیرے لگ رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔کبھی کوئی چیز رہ جاتی تو کبھی کوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”امی بھائی کو کہیں مجھے بس بازار چھوڑ آئیں واپس میں خود آجاوں گی۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے عافیہ کے گھٹنے پر ہاتھ رکھ کر رونے والی شکل سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اف ژالے میں تنگ آگئ ہوں تمہاری ایسی خرکتوں سے اونٹ جتنا قد ہو گیا ہے لیکن خرکتیں تمہاری ابھی بھی بچوں جیسے ہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔روز کچھ نہ کچھ تمہارا رہ ہی جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان گھر پر نہیں ہے۔۔۔۔ٹھہرو تمہارے چاچو سے کہتی ہوں انہیں اس طرف کام سے جانا ہے جاتے ہوئے تمہیں مال چھوڑ دیں گے۔۔۔۔لیکن یہ آخری بار ہے۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے بیڈ پر سے اٹھتے ہوئے اسے وارننگ دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے امی لاسٹ بار ۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے منہ بسورتے ہوئے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے کے مہندی والے کپڑوں کے ساتھ والی میچنگ سینڈل رہ گئ تھی
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان کیسی طبیعت ہے اب میرے بچے ناہید نے اس کی پیشانی پر ہاتھ رکھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کو تین چار دن سے بخار تھا۔۔۔۔۔۔۔۔آج اسکی طبیعت پہلے سے بہتر تھی۔۔۔۔۔۔۔۔”Mom i’m fine you don’t worry ہرمان نے مسکراتے ہوئے کہا اور ناہید کی گود میں سر رکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے افسردگی سے اس کا ماتھا چوما۔۔۔۔۔۔۔بیٹا میں خوش ہوں تم پنار کو بھول گئے ہو ۔۔۔شزا بہت اچھی لڑکی ہے اور تمہیں پسند بھی کرتی ہے۔۔۔۔۔۔۔تمہاری سٹڈی جب کمپلیٹ ہوجاے گی تو بہت دھوم دھام سے تمہاری شادی کریں گے ہم۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اس کے ماتھے سے بال ہٹاتے ہوئے کہا.۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے موم جیسے آپ لوگوں کی مرضی۔۔۔۔۔۔آپ خوش تو میں خوش۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان ہونٹوں پر سجاتے ہوئے ناہید کو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔جو اس کی اتنی سعادت مندی پر تو نہال ہی ہوگئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اففف اتنی دیر ہوگئی کیا کروں ۔۔۔بھائی کو فون کیا تو وہ غصہ ہوں گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے کی رہتی تو صرف سینڈل ہی تھی ۔۔۔۔۔لیکن اسے کوئی سینڈل وغیرہ پسند نہیں آرہی تھی تین گھنٹے بازار میں گھوم کر پھر اسے اپنے کپڑوں کے ساتھ کی میچنگ سینڈل پسند آئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اب شام ہو گئی تھی اور اسے کوئی کنوینس نہیں مل رہی تھی ۔۔۔۔اور روڈ پر کوئی کوئی گاڑی آتی جاتی جا رہی تھی یہ روڈ شام کے وقت سنسان ہی رہتا ہے۔۔۔۔۔۔۔ژالے ابھی تھوڑا آگے بڑھی ہی تھی جب دو آوارا لڑکے بائیک پر آکر اس کے پاس رکے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے میڈم لگتا ہے آپ کو کوئی سواری نہیں مل رہی۔۔۔۔۔کہیں تو ہم چھوڑ دییں۔۔۔۔۔۔ایک لڑکے نے بائیک سے اتر کر اس کے سامنے اتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے پہلے تو تھوڑا گھبرائی۔۔۔۔۔لیکن پھر اپنی گھبراہٹ پر قابو پاتے ہوئے اسے گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” کیا تکلیف ہے تمہیں ہٹو میرے راستے سے۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اس کو گھور کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس نے کمینگی سے ہستے ہوئے اس کا ہاتھ پکڑا تھا ۔۔۔اور دوسرا لڑکا بھی بائیک سے اتر کر ژالے کے سامنے آگیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے کے چہرے پر تو ہوائیں اڑنے لگی ان کی اتنی دلیری پر۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اپنا ہاتھ چھرانا چاہا ۔۔۔۔۔لیکن وہ لڑکا چھوڑنے کی بجاے اب اس کا بازو پکر کر سڑک کی دوسری طرف لے جانا چاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی ہے بچاو مجھے ۔۔۔۔۔ ژالے نے اپنا بازو چھڑاتے ہوئے چلا کر کہا۔۔۔۔شاپنگ بیگ تو کب سے اس کے ہاتھ سے چھوٹ چکے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”چپ چاپ ہمارے ساتھ چل ورنہ بہت برا حال کروں گا تمہارا۔۔۔۔۔۔دوسرے لڑکے نے اس کا منہ دبوچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پلیز مجھے جانے دو پلیز ۔۔۔۔ژالے نے اپنا آپ اس سے چھڑاتے روتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔چھوڑ دیں گے لیکن اتنی جلدی بھی کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے بھا گنا چاہا جب دوسرے لڑکے نے اس کا ڈوپٹہ کھینچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی ہے۔۔۔ژالے نے ایک بار پھر سے چلا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کوئی نہیں آنے والا یہاں ۔۔۔۔چپ کر کے ہمارے ساتھ چل ورنہ اپنی شکل بھی نہیں پہچان پائے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پہلے لڑکے نے اس کے بال کھینچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
چھوڑ دو لڑکی کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار اتنا کچھ ہو گیا اور تم نے مجھے بتایا بھی نہیں ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے پنار کی شادی کی ساری شاپنگ دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یار میں تمہیں ڈسٹرب نہیں کرنا چاہتی تھی۔۔۔۔۔ویسے بھی اب سب سیٹ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کپڑے واپس ڈبوں میں رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہوں ویسے تجھے ایک بات کہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی طرف سوالیہ نظروں سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے اس کی آنکھوں میں تمہارے لیے محبت تب دیکھی ۔۔۔۔جب ہم شاپنگ مال میں ملے تھے تب ہی میں نے محسوس کر لی تھا جس طرح تمہارا وہ جائزہ لیتا تھا تمہیں مسکرا کر دیکھتا تھا۔۔۔۔لیکن پھر میں نے اس کی خرکتوں کو اپنا وہم سمجھ کر جھٹک دیا۔۔۔۔۔۔۔ردا نے چائے کا سپ لیتے ہوئے بات مکمل کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار اس کی بات پر ساکت ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر ردا کو دیکھا۔۔۔۔۔۔اور تم مجھے اب بتا رہی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار میں خود اس وقت شیور نہیں تھی تو تمہیں کیا بتاتی ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے پنار کو دیکھ کر بے چارگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا چھوڑو یہ سب باتیں اور بتاو لہنگا کس کلر کا لیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے پنار کو پریشان ہوتے دیکھ کر اس کا دھیان دوسری طرف کرنا چاہا۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
امی یہ آپ کیا کہہ رہی ہیں پہلے آپ نے رائمہ کے لیے بات کی تھی اور اب ہائمہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عافیہ نے ہائمہ کے بارے میں جب رومان سے بات کی تو اس نے خیرانی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”وہ بیٹا رائمہ ابھی شادی یا انگیجمنٹ وغیرہ ان سب کے لیے وہ تیار نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے سلیقے سے رائمہ کے انکار پر پردہ ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور آپ نے ہائمہ سے بات کی وہ راضی ہے اتنی جلدی اس سب کے لیے۔۔۔۔۔۔رومان نے ہائمہ کی مرضی جاننا چاہی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” بیٹا مرینہ نے اس سے بات کی تھی۔۔۔۔۔وہ بہیت سعادت مند بچی ہے اس نے اپنا فیصلہ ماں باپ پر چھوڑا دیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہوں رومان سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا آپ کو تو کوئی اعتراض نہیں۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے سوچ میں ڈوبے رومان کی مرضی جاننا چاہی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔امی میں نے پہلے بھی فیصلے کا اختیار آپ لوگوں کو دیا تھا اور اب بھی جو آپ لوگوں کو بہتر لگے میں اسی میں راضی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے عافیہ کے ہاتھوں کو اپنے ہاتھوں میں لیتے ہوئے محبت سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے مسکراتے ہوئے اس کا سر چوماں اور دعائیں دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
دونوں لڑکوں نے پیچھے سے آئی آواز پر پلٹ کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور آنے والے کو سر تا پیر ا دیکھا۔۔۔۔۔۔وہ بلیک ہاف سلیو شرٹ اور بلیک ہی پینٹ پہنے ہاتھ حسب معمول پاکٹ میں گھسائے ایک ٹانگ پر وزن ڈالے اپنے سٹائل میں کھڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سنا نہیں تم دونوں نے چھوڑو اسے ۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں چھوڑیں ہم اسے اور تیری بات کیوں مانے ہم ہوں ۔۔۔۔۔۔پہلے لڑکے نے چمک کر اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے نہ چھوڑو تم دونوں کی مرضی۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے کہہ کر آگے بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے اس کی بات پر خیرت سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں لڑکے
ایک دوسرے کو دیکھ کر مسکرائے اور ژالے کا بازو پکڑنے ہی لگا تھا جب اس نے اس لڑکے بازو پکڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے اتنی بھی جلدی کیا ہے پہلے مجھ سے تو نبٹ لو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تیری تو پہلے والے نے اس پر مکہ تانا جب اس نے اس کا مکہ اپنی مٹھی میں جکڑا تھا۔۔۔۔۔۔۔اور زور سے اس کے پیٹ پر لات ماری ۔۔۔۔۔۔۔تمہیں تو ہم دیکھتے ہیں دونوں نے ژالے کا ہاتھ چھوڑ کر اس کی طرف بڑھے تھے جو اپنے ورزشی جسم سے دونوں پر بھاری پر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔اور وہ دونوں کمزور حسم کے مالک تھے اور اب ہرمان سے بری طرح پیٹ رہے تھے وہ دونوں بھی پوری کوشش کررہے تھے اسے مارنے کی ۔۔۔۔۔۔۔کون ہو تم اور کیوں آگے ہمارے راستے میں ۔۔۔۔۔پہلے نے نیچے گرے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اسد جڈون ہوں میں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا بازو مڑورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ دونوں دور سے آتی پولیس وین کا سئرن سن کر لنگڑا کر بھاگے۔۔۔۔۔۔۔۔تھے اپنی جان بچا کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے ابھی تک اسے خیرت سے دیکھ رہی تھی . ۔۔۔۔۔جو نیچے گرے ژالے کے بیگ آٹھا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔تم اکیلی اس وقت یہاں ،ہرمان نے اسے بیگ پکڑاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جواباً ژالے نے بچوں کی طرح ہونٹ باہر نکال کر رونے والا منہ بنایا اور اس ساری بات بتا دی ۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آئندہ خیال رکھنا۔۔۔۔۔۔آو تمہیں چھوڑ دوں ہرمان نے دور کھڑی اپنی بائیک کی طرف اشارا کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے نے ہرمان کے کہنے پر گھر میں کسی کو کچھ نہیں بتایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جیسے جیسے شادی کے دن قریب آرہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔گھر میں مہمانوں کی آمدورفعت بھی شروع ہوگئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کا گھر سے نکلنا اب بند ہو گیا تھا ۔۔۔۔۔۔آج پنار کی مہندی تھی۔۔اور ساتھ رومان اور ہائمہ کی انگیجمنٹ بھی تھی۔۔۔۔۔۔۔جس پر گھر میں ہر طرف رونق لگی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔کوئی آرہا تھا تو کوئی جا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ تو تین چار دن ہوگئے تھے وہ رومان کے سمامنے ہی نہیں جا رہی تھی۔۔۔۔اور ژالے اس کا خوب ریکارڈ لگا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے ہائمہ تم بھائی سے کیوں اتنا شرما رہی ہو وہ وہی ہیں جنکو تم چائے بنوانے پر خوب باتیں سناتی تھی۔۔۔۔۔ژالے نے اس کے کندھے سے کندھا مارتے ہوئے کہا۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جواباً ہائمہ اتنے لوگوں میں اسے صرف گھور کر رہ گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار گرین سوٹ جس کی شارٹ شرٹ تھی اور نیچے شرارہ پہنے کافی اچھی لگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا میرا دل بہت گھبرا رہا ہے پنار نے ردا کا ہاتھ پکڑتے ہو ے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے یار کچھ نہیں ہوتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے دل کو مظبوط رکھو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے اس کا ہاتھ دباتے ہوئے نرمی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”لڑکیاں سب نے شرارہ سوٹ پہنے ہوئے تھے اور لڑکوں نے بلیک کرتے اور وائٹ شلواریں پہنی ہوئی تھی گلے میں چنڑی ڈالی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سب لڑکیاں پنار کو ریڈ ڈوپٹے کے ہالے میں اسے سٹیج تک لائی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رمیز نے اٹھ کر پنار کا سواگت کیا تھا۔۔۔۔کیونکہ کمبائن فنکشن تھا۔۔۔۔۔۔۔پنار کو رومان نے ہاتھ پکڑ رمیز کے ساتھ جولے میں بٹھایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ردا کی باتوں پر ہلکا ہلکا مسکرا رہی تھی ۔۔۔۔رمیز بھی بہت سمارٹ لگ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پہلے پنار کی مہندی وغیری کی رسم کی گئی ۔۔۔۔۔۔۔اور مہندی کی رسم کے بعد مہمانوں کو کھانا وغیرہ کھلایا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اور پھر ہائمہ کو رومان کے ساتھ سٹیج پر بٹھایا گیا۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے گرین شرارہ اور شارٹ سکن شرٹ پہنی ہوئی تھی بال کچھ آگے اور کچھ پیچھے کھلے چھوڑے ہوئے تھے وہ بہت خوبصورت لگ رہی تھی۔۔۔.۔۔۔۔۔۔۔۔رومان سیریس سا بیٹھا تھا جبکہ ہائمہ ۔۔۔۔۔وہ بہت نروس فیل کر رہی تھی۔۔۔۔ ہائمہ تو ژالے کا ہاتھ ہی نہیں چھوڑ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”لو بیٹا رنگ پہناو ۔۔۔۔۔۔عافیہ نے رومان کو رنگ دیتے ہوئے کہا۔۔۔رومان نے رنگ پکڑی اور ہاتھ ہائمہ کے طرف بڑھایا۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اپنا ہاتھ گود میں چھپا لیا ۔۔۔۔۔۔ژالے نے مسکرا کر اس کا ہاتھ رومان کی طرف بڑھایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”رومان نے اس کا ہاتھ پکڑ کر رنگ پہنائی تو ہائمہ نے جلدی سے اپنا ہاتھ کھینچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سب اس کے ہاتھ کھینچنے کی خرکت پر مسکراِے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ جبکہ رومان کو رنگ یاسر نے پہنائی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رات دیر تک مہندی کا فنکشن چلا تھا۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان تم ٹھیک تو ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر حارث نے ہرمان کے کمرے میں داخل ہوتے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں مجھے کیا ہونا ہے
I’m so fine ۔۔۔۔۔۔۔I look bad for both of you ۔۔۔۔کیا ہوا ہے تم دونوں کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بیڈ پر ریلکس انداز میں لیٹتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ان دونوں نے خیرت سے ہرمان کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہم دونوں ٹھیک ہیں ۔۔۔۔ویسے بھی آج مس پنار کی شادی ہے تو اس لیے پوچھ رہے تھے ہم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عمر نے ہرمان کے ساتھ بیٹھتے ہوئے اس کی بات کا جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہوں جانتا ہوں اور میری بلا سے جس سے مرضی وہ شادی کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے موبائیل یوز کرتے ہوئے لاپراہی سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور وہ دونوں ایک دوسرے کی شکل دیکھ کر رہ گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں کہ وہ جانتے تھے ہرمان جب جب سیریس ہوتا تب تب کوئی طوفان آتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
تین کپ چائے گیسٹ روم میں بھجوا دو جلدی سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے کچن میں کھڑی ہائمہ کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس کا منہ رومان کے اس طرح کے آرڈر دینے پر کھل گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیوں کیا ہوا۔۔۔۔اب میرے کام کرنا تم پر فرض ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔اب منگیتر بن گئی ہو تو اپنی زمیداری بھی نبھاو۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اس کے پاس آتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔ جو منہ کھولے اپنے قریب آتے اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔رومان اس کے بالکل قریب ہوا اور پیچھے پرا پانی کا گلاس پکڑا۔۔۔۔۔۔ہائمہ اسے اتنے پاس آتے دیکھ کر آنکھیں زور بند کر گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔تم آنکھیں کھول سکتی ہو رومان نے ہونٹ بھینچ کر اپنی مسکراہٹ روکی اور اپنا منہ بھی بند کر لو مکھی چلی جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جلدی جلدی چائے بھیجو ٹڈی۔۔۔۔۔۔۔رومان کہہ کر باہر نکل گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے غصے و پریشانی سے اس کی پشت کو گھورا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائے اللہ ابھی تو شادی ہوئی نہیں ہے اور یہ مجھ پر اتنا روب جما رہا ہے اور اگر ہوگی تو یہ تو مجھ سے اگلے پچھلے حساب لے گا اور چائے بنوا بنوا کر مجھے آدھا کر دے گا۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے پریشا نی سے اپنے مستقبل کے بارے میں سوچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آپا میں نے پارلر والی کو گھر میں ہی بلوا لیا ہے ۔۔۔۔۔آپ کو تیار کروانے کے بعد وہ ہم سب کو بھی تیار کردے گئ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے پنار کے آگے کھانا رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس نے ٹینشن سے نہ رات کو کھایا تھا اور اب بھی کھانا کھانے سے انکار کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔یار تھوڑا سا تو کھا لو۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے نوالہ بنا کر اس کی طرف بڑھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔” نہیں یار میرا بالکل بھی دل نہیں کر رہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم لوگ کھاو میں ابھی تھوڑی دیر میں آتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کہہ کر کچن میں امی کے پاس آئی۔۔۔۔۔۔،۔عافیہ اور مرینہ ملازمائیں کے ساتھ مل کر مہمانوں کے لیے ناشتہ بنوا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب پیچھے سے پنار نے آکر عافیہ کو ہگ کیا تھا۔۔ ۔۔۔۔۔اور ان کے کندھے پر ہتھوڑی رکھ دی۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا بیٹا۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے پلٹ کر اس کا سر چومتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بیٹا یہ گھڑی ہر لڑکی پر آتی ہے اورہر لڑکی ایک نا ایک دن اپنا گھر چھوڑ کر جانا ہی پڑتا ہے اور اس گھڑی کا ہر ماں باپ انتظار کرتا ہے ۔۔۔۔ویسے بھی رمیز اچھا لڑکا ہے تمہیں خوش رکھے گا۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے اس کی پریشانی کم کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے صرف سر ہی ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔چچی ایک کپ چائے بنوا دیں۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے مسکراتے ہوئے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔آپا آپ کا برائیڈل ڈریس بھیج دیا ہے آپ کی ساسو ماں نے آکر چک کر لیں ۔۔۔۔۔۔ژالے نے بڑا سا ڈبہ پکڑے کچن میں آکے پنار کو کہا۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔آجائیں پارلر والی بھی آگئ ہے ۔۔۔۔۔۔۔تیار ہو جائیں ۔۔۔۔۔ژالے کہہ کر پلٹ گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔”
جاو بیٹا تیار ہو جاو ۔۔۔۔۔۔مرینہ نے اس کھڑے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔پنار سر ہلا کر چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
آپا پہلے اپنا ڈریس کا ناپ وغیرہ ے چک کر لیں۔۔۔۔۔ژالے نے ڈبے سے برائیڈل سو ٹ نکالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔ارے پنار تم تو کہہ رہی تھی پنک کلر میں برائیڈل ڈریس لیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ریڈ کلر میں ہے ردا نے ڈریس دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کی بات پر ڈریس کی طرف دیکھا اور ڈبے سے باہر نکا لا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار خیرت سے بلڈ رنگ ڈریدس کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔ہاں میں نے اور رمیز نے خود پنک کلر کا برائیڈل سوٹ سلیکٹ کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پیک بھی وہی کروایا تھا یہ کہاں سے آگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پریشانی و خیرت سے سوٹ دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ یار غلطی سے ہو گیا ہو گا۔۔۔اب ٹائم نہیں ہے کہ اسے واپس کیا جا سکے تم ٹرائے کرو دیکھو تمہارے ناپ کا ہی ہے ۔۔۔۔۔ردا نے اس زبردستی پکڑا کر اس ٹرائے کرنے کو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پنار نے ایک نظر بھاری خوبصورت ڈریس کو دیکھا ۔. اور پھر الجھتی ہوئی واش روم چلی گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
سب لوگ میرج ہال پہنچ چکے تھے لڑکیاں بھی تیار ہوگئ تھی ۔۔۔۔ اب پارلر والی پنار کو آخری ٹچ دے رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔.پنار ہیوی میک اپ بھاری جیولری میں بہت خوبصورت لگ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
اتنے میں برات آنے کا شور اٹھا تھا سب لڑکیاں برات کے سواگت میں مین اینٹرس میں چلی گئی۔۔۔۔۔۔اب پنار اکیلی برائیڈل روم میں رہ گئی تھی
🍁🍁🍁🍁🍁
پنار کو عجیب سی فیلنگ آ رہی تھی جیسے کچھ ہونے والا ہے۔۔۔۔۔۔پنار نے دوبارہ ڈریس کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔نہایت ہی خوبصورت لہنگا تھا جو بھاری کام سے بوجھل تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ارے پنار رمیز تو بہت ہی ہینڈسم لگ رہا قسم سے ۔۔۔۔۔۔ردا نے برائیڈل روم کا دروازہ کھولتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے ردا کی بات پر صرف مسکرانے پر ہی اکتفا کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سعد بھائی نہیں آئے کیا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پانی کا گلاس منہ سے لگاتے ہوئے ردا کو چھیڑا۔۔۔۔۔۔۔۔”مریضوں کی جان چھوڑیں گے تو میرا خیال آئے گا نا ۔۔۔انہیں تو خواب میں بھی مریض ہی دیکھائی دیتے ہیں میں نہیں۔۔۔۔مجھے تو شک ہے اپنی شادی پر بھی مریضوں کو دیکھ رہیے ہوں گے……….. ردا نے جلے دل کے پھپھولے پھوڑے۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کے انداز پر کھولے دل سے مسکرائی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
رک جائیے مولوی صاحب اتنی جلدی بھی کیا ہے پہلے دلہا تو آ لینے دیں۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہال میں اینٹر ہوتے ہوئے مولوی کو کہا جو برائیڈل روم میں پنار کا نکاح پڑھانے جا رہے تھے ہرمان کی تیز آوازپر سب نے مڑ کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اپنے سٹائل میں کھڑا انگلی میں پسٹل کو گھماتے ہوئے مسکراتے ہوئے بولا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اشعر اور رومان نے اسے غصے سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ہے تمہارا رمیز نے سٹیج سے اترتے ہوئے خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”میرا کیا مطلب ہے یہ میرے ہونے والے سسر اچھے سے جانتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں ٹھیک کہہ رہا ہوں نہ میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنی بکواس بند کرو ورنہ اچھا نہیں ہو گا تمہارے لیے ۔۔۔۔رومان نے اسے دھیمی آواز میں دھمکی دی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے میں اپنی بکواس بند کر لیتا ہوں لیکن پنار سے نکاح کر کے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر کہتے ہوئے بالوں میں ایک ادا سے ہاتھ مارا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آپا ہرمان بھائی آئے ہیں باہر ہال میں اور ان کے ہاتھ میں پسٹل بھی ہے۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار جو موبائیل یوز کرنے میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔ہائمہ کی بات پر اس کے ہاتھ سے فون چھوٹ کر نیچے کارپٹ پر جا گرا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا کہہ رہی ہو تم ہائمہ ۔۔۔۔۔۔پنار نے چیئر سے کھڑے ہوتے ہوئے خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپا میں ٹھیک کہہ رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے پریشانی سے اس کا ہاتھ تھامتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پریشانی سے اپنی پیشانی کو چھوا۔۔۔۔۔۔۔۔چلو ۔۔۔۔۔آپا آپ کیسے باہر ۔۔۔۔۔ہائمہ ابھی بات کر ہی رہی تھی ۔۔۔۔۔جب پنار نے اس کی بات کو بیچ میں ہی ادھورا چھوڑے باہر چلی گئ تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یہ کیا بکواس ہے ہاں ۔۔۔۔۔ دلہا آگیا ہے اور نکاح بھی اسی سے ہو گا سمجھے تم، شرافت سے یہاں سے چلے جاو تو بہتر ہے تمہارے لیے ورنہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اسے دھکا مارتے ہوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نا نا سالے صاحب اتنا غصہ نہ کریں ۔۔۔۔۔۔۔ابھی اور بھی بہت سے مواقعے آئیں گے جب آپ کو غصے کرنے کی ضرورت ہوگئ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مولوی صاحب لگتا ہے آپ کو اپنی زندگی کچھ خاص پیاری نہیں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مولوی صاحب کو اشعر اور یاسر کے ساتھ برائیڈل روم کی طرف جاتے دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور کہنے کے ساتھ ہی ہوائی فائرنگ کر دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس سے لوگ ڈر سے چیخیں مارتے ہوئے ایک دوسرے پر گرنے لگے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈرئیے مت آپ لوگ، آپ لوگوں کو کچھ نہیں ہو گا ۔۔۔۔۔۔۔ہاں اگر کسی نے میرے اور میری دلہن کے بیچ میں آنے کی کوشش کی تو پھر میں اس کی گرنٹی نہیں دے سکتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے رمیز کو دیکھ کر بات مکمل کی ۔۔۔۔۔۔رمیز اس سرخ آنکھوں سے غصے سے گھور رہا تھا ہرمان کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے برائیڈل روم سے آتی پنار کو مسکرا کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے غصے و نفرت کے ملے جلے احساس سے ہرمان کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔”تم ایک نمبر کے ڈیٹھ اور آوارا انسان ہو ۔۔۔۔فون کرو رومان اس کے باپ کو آکر لیجائے اپنے بیٹے کو ۔۔۔۔۔۔۔۔ارے میرے پیار سسر جی آج میرا باپ تو کیا کوئی بھی مجھے یہاں سے ہلا بھی نہیں سکتا جب تک میں خود نہ چاہوں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے انگلی میں پسٹل گھماتے ہوئے پنار پر ایک سرسری نظر ڈال کر مغرور انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”عمر اور حارث بھی اس کا پیچھا کرتے ہوئے وہاں پہنچ گے تھے ۔۔۔۔۔۔اور اب ہرمان کے پیچھے کھڑے تھے وہ جانتے تھے ہرمان کی جان بستی ہے مس پنار میں اس لیے وہ بھی اپنے یار کی جان کو بچانے کی پوری کوشش کرنا چاہتے تھے۔۔۔۔۔۔
او تو اس لیے نفرت کرتے تھے تم مجھ سے ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔رمیز نے اس کے پاس آکر رکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”نفرت اور میں تم سے ہاہاہا۔۔۔۔۔۔پہلے ہرمان اسد جڈون کی نفرت کے قابل تو ہو جاو۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی اچھی خاصی بیستی کر دی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سب لوگ منہ جوڑ کر آپس میں باتیں کر رہے تھے ۔۔۔۔کوئی کچھ کہہ رہا تھا تو کوئی کچھ۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار کی آنکھوں بھی ہلکی ہلکی نمی چھلکنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اس نے نفرت سے ہرمان کو دیکھا جس نے اتنے لوگوں میں اس کا تماشہ بنا کر رکھ دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” نکلو باہر یہاں سے ۔۔۔۔۔رومان نے اس کا بازو جکڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے میرے سالے صاحب ۔۔۔۔۔افسوس کے میں اس وقت آپ کی بات نہیں مان سکتا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا بازو اپنے بازو سے ہٹاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”رمیز اور اس کے ماں باپ ۔۔۔۔۔۔اب پتہ نہیں اشعر اور یاسر سے پتہ نہیں کیا بات کر رہےتھے۔۔ایک الگ کونے میں جاکر ۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے مسکرا کر انہیں گفتگو کرتے دیکھ کر سر جھٹکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “ہرمان۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے دور سے ہی غصے سے ہرمان کو پکارا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پلٹ کر مسکرا کر انہیں دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے خلیل کو فون کیا تھا اور پھر خلیل نے اسد کو فون میں ساری بات بتادی جسے سن کر اسد تو ساکت رہ گے تھے۔۔۔۔۔۔اور اپنی میٹینگ ادھوری چھوڑے فورا وہاں سے نکل آئے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اور اب وہ اور خلیل ہرمان کے سامنے تھے۔۔۔۔۔۔۔ ۔ارے ڈیڈ آپ آ گئے یونو میں آپ کا ہی ویٹ کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کے اور خلیل انکل کے بغیر تو میں نکاح نہیں کر سکتا تھا نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
بکواس بند کرو اور گھر چلو وہاں چل کر بات کرتے ہیں ۔۔۔۔اسد نے ہرمان کے سزمنے آکر دانت پیستے ہوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”نو ڈیڈ نو آپ نے اگر نکاح میں شامل ہونا ہے تو ٹھیک ہے۔۔۔۔۔۔۔لیکن اگر آپ مجھے یہاں سے لے جانا چاہتے ہیں تو سوری پنار کو لیے بغیر تو میں نہیں جاوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم ہوتے کون ہو میری زندگی کا فیصلہ کرنے والے ہاں ۔۔۔۔۔۔۔نہیں کرو گئی تم سے میں نکاح جاو جو کرنا ہے کر لو ۔۔۔۔۔۔۔اب کی دفعہ پنار نے اس کے قریب رکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے اسے سرد نظروں سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔تو آپ مجھے سے نکاح نہیں کریں گئی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے وارننگ دیتے انداز میں اس سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں نہیں کروں گئی میں جاو جو کرنا ہے کر لو ۔۔۔۔۔گولی چلاو گے مجھ پر ہاں تو شوق سے چلاو ۔۔۔۔۔ پنار نے سینے پر ہاتھ باندھ کر نفرت سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آپ کو کیسے میں کوئی نقصان پہنچا سکتا ہوں آپ کو نقصان پہچانے سے پہلے تو میں مرنا پسند کروں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چپ ہو کر سب پر ایک سرسری سی نظر ڈالی ۔۔۔۔۔سب نے پریشانی سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان چلتا چلتا رمیز کے پاس آکر کھڑا ہوا۔۔۔۔۔۔اور اس کی کنپٹی پر گن رکھی۔۔۔۔۔۔۔۔رمیز نے چونک پر اپنی کنپٹی پر رکھی گن دیکھی اور ایک نظر ہرمان کو جس نے آئی بروز اٹھا کر پنار کو دیکھا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آسیہ کی تو چیخ ہی نکل گئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے بیٹے پر تنی گن دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوچ لیں اگر آپ مجھ سے شادی نہیں کروگئی تو مجھے رمیز انکل پر گولی چلانے کا کوئی افسوس نہیں ہوگا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتی نظر سب پر ڈال کر کہا۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
عمر اور حارث دونوں نے ایک دوسرے کو بے بسی سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اور پھر عمر نے پنار کے پیچھے پریشان کھڑی ژالے کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔عمر ژالے کو وہاں دیکھ کر کافی خیران ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔سرسری نظر تو ژالے نے بھی ڈالی تھی لیکن اس وقت صورتحال ہی کچھ ایسی تھی کہ وہ اس کی وہاں موجودگی کو فراموش کر گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار نے دکھ سے ہونٹوں پر ہتھیلی رکھ لی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی تھوڑی ہی دیر ہوئی تھی جب ہال میں پولیس اینٹر ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آسیہ بھاگ کر پولیس انسپکٹر کے پاس آئی ۔۔۔۔۔.انسپکٹر صاحب پلیز میرے بیٹے کو بچا لییں پلیز اس پاگل انسان سے ۔۔۔۔۔۔۔۔مسٹر ہرمان اسد جڈون خود کو ہمارے خوالے کردیں ورنہ ہمیں آپ پر مجبوراً گن چلانی پرے گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شوق سے لیکن میرے ساتھ رمیز انکل بھی سیدھا اوپر جائیں گے۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے انگلی سے اوپر کیطرف اشارا کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان گھر چلو کیوں میری عزت کا جنازہ نکال رہے ہو ۔۔۔۔۔اسد نے بے بسی سے اپنے ڈھیٹ اور ضدی بیٹے کو ہینڈل کرنا چاہا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اسد ٹھیک کہہ رہا تم گھر چلو پھر بیٹھ کر اس بارے میں بات کرتے ہیں ۔۔۔۔۔خلیل جانتے تھے اس ڈیٹھ پر کسی کا کوئی اثر نہیں ہو گا لیکن پھر بھی وہ ایک کوشش کرنا چاہتے تھے ۔ ۔۔۔۔۔۔۔”- میں تین تک گنوں گا اور اس کے بعد آئی سویر میں گن چلادوں گا۔۔۔۔۔ہرمان نے ٹریگر پر دباو ڈالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بیٹا مان جاو مجھے تم سے کوئی شکوہ گلا نہیں ہو گا بس میرے بیٹے کو بچا لو، آسیہ نے پنار کے پاس آکر اس کی منت کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے منظور ہے ۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: