Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 22

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 22

–**–**–

میں تیار ہوں تم سے نکاح کے لیے ۔۔۔۔۔۔پنار آہستگی سے چلتی ہوئی ہرمان کی طرف آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے فاتح مسکراہٹ سے رمیز کو دیکھا جو خیرت سے پنار کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب نے چونک کر پنار کو دیکھا۔۔۔۔یہ کیا کہہ رہیں ہیں آپ آپا ۔۔۔۔۔۔۔پلیز جلد بازی سے کوئی فیصلہ مت کریں۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے التجایا انداز سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان میں نے سوچ سمجھ کر ہی یہ فیصلہ کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔مجھے منظور ہے۔۔۔۔۔مولوی صاحب آپ پڑھائیں نکاح ۔۔۔۔۔۔پنار چلتی ہوئی سٹیج پر آ بیٹھی تھی۔۔۔۔۔۔بیٹا ۔۔۔۔۔۔سسر صاحب پلیز پنار جی کو ڈسٹرب مت کریں انہوں نے جو فیصلہ کیا ہے وہی بیسٹ ہے ۔۔۔۔اشعر صاحب جو پنار سے کچھ کہنے ہی لگے تھے ۔۔۔۔ہرمان نے انہیں بیچ میں ہی ٹوک دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔مولوی صاحب آپ نکاح پڑھائیں گے یا گولی کھائیں گے۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے مولوی صاحب کو اپنی جگہ پر جمے دیکھ کر غصے سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”نہیں نہیں میں پڑھا رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔مولوی صاحب نے رجسٹر کھولتے ہوئے جلدی سے جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔اسد نے بے چارگی سے خلیل کو دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔خلیل نے اسد کو آنکھوں سے ہی تسلی دی اور سٹیج پر جانے کا کہا جہاں انہیں بلایا جا رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پھر کچھ ہی منٹوں میں پنار اشعر لغاری سے پنار ہرمان اسد جڈون ہوگئی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان زبردستی اسد اور خلیل کے گلے لگا۔ ۔۔۔۔اور مبارکباد دی لی۔۔اور پھر باری باری عمر،حارث کے گلے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
سوری اسد صاحب ہمیں آپ کے بیٹے کو گرفتار کرنا ہوگا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پولیس انسپکٹر نے اسد کے پاس آکر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ایک منٹ انسپکٹر صاحب آپ مجھے ابھی گرفتار نہیں کرسکتے ، ایک گھنٹے کی مخلت چاہیئے مجھے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سٹیج سے اترتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔سوری۔ لیکن ہمہیں آپ کو ابھی گرفتا کرنا ہو گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ انسپلٹر نے ہتھکری نکالتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن میں پنار جی کو رخصت کراے بغیر تو گرفتاری ہرگز نہیں دوں گا۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔انسپکٹر صاحب ہم اپنا کیس واپس لیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اآشعر نے دور سے ان کے پاس آتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر اشعر کو دیکھا جنہوں نے غصے سے منہ دوسری طرف کر لیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ان کے اگنور کر لاپروی سے شانے اچکاے۔ ۔۔۔۔۔۔۔” اب تک میں تمہیں بچہ سمجھ رہا تھا۔ ۔۔۔۔لیکن اب میں تمہیں بتاوں گا کہ کھیلنا کسے کہتے ہیں ۔۔۔۔۔چھوڑوں گا نہیں تمہیں میری بات یاد رکھنا You have to suffer for it ۔ ۔۔۔۔۔رمیز نے اس کے پاس رک کر کہا اور پھر باہر نکل گیا۔ ۔۔۔۔۔۔پیچھے پیچھے آسیہ ،ظفر اورسارے باراتی بھی چلے گئے ۔۔۔۔۔۔۔اب صرف پنار کے گھر والے اور ان کے مہمان رہ گے تھے.۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ابھی ساکت بیٹھی ہوئی تھی اس کے ایک طرف ژالے اور دوسری طرف ہائمہ بیٹھی ہوئی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابو یہ آپ کیا کہہ رہیں ہیں ہمیں اسے پولیس کے لوالے کرنا چاہئیے ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے گھور کر ہرمان کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
رومان بیٹا اس میں ہماری ہی بیستی ہے ۔۔۔۔۔۔بھائی صاحب نے جو فیصلہ کیا ہے ٹھیک کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یاسر نے رومان کی بات پر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان جواباً صبر کے گونٹ بھر کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔. ۔۔۔”چلیں ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے پنار کے آگے جھک کر ہاتھ پھیلاتے ہوئے کہا
ژالے نے ہرمان کے پیچھے کھڑے عمر پر اب تفصیلی نظر ڈالی۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے ژالے کے دیکھنے پر ادھر ادھر دیکھنے لگا۔۔۔۔اور دل میں ہرمان کو ہزاروں گالیوں سے نوازا جس نے اس کا امیج بننے سے پہلے ہی خراب کر دیا تھا ۔۔۔۔۔۔خود تو کرلی لیکن میری کشتی ڈبو دی سالے نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے ہرمان کو گھورت ہوئے سوچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ تمہارے ساتھ نہیں جائے گیں۔۔۔۔۔رومان نے اس کا ہاتھ جھٹک کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بھی جواباً اس سخت نظروں سے دیکھا۔۔ ۔۔ ۔۔۔۔۔”میں چل رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے صوفے سے کھڑے ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔لیکن بیٹا۔۔۔۔امی پلیز میں اب اور کوئی تماشہ نہیں چاہتی ۔۔۔۔۔۔۔پنر عافیہ کی بات بیچ میں ہی ٹوک کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ پنار جو بھی۔فیصلہ کرتی ہے اس میں اس کا ساتھ دو۔۔۔۔۔۔۔پنار نے تشکر س اشعر کے سینے سے لگی اور نا چاہتے ہوئے بھی رو پڑی ۔۔۔۔۔۔جسے دیکھ کر ہرمان سے رہادہ نا گیا ۔۔۔۔۔۔پلیز پنار آپ روئیں مت آپ روز گھر ملنے آسکتی ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔I wouldn’t mind ۔۔۔۔۔پنار نے جواباً اس سرد آبکھوں سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان نے پنار کے لیے گاڑی کا دروازہ کھولا۔۔۔۔لیکن پنار نے اگنور کر کے اسد صاحب کے ساتھ جانے کو ترجیح دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار پلیز آپ میرے ساتھ جاو گی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسد کی گاڑی کا دروزہ بند کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان جب وہ تمہارے ساتھ نہیں جانا چاہتی تو اسے انسسٹ نت کرو۔۔۔۔۔اسد نے غصے سے اپنے ڈیٹھ بیٹے کو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن وہ ہرمان ہی کیا جو کسی کی بات مان لیے۔۔۔۔۔۔سوری ڈیڈ وہ میری وائفی ہیں تو اصولاً انہیں میرے ساتھ جانا چاہیئے لیکن ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کا ہاتھ پکرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر پنار میرے ساتھ نہیں جانا چاہتی تو اٹس اوکے آج وہ آپ کے ساتھ جا سکتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرستی آنکھوں سے اس کا تپا تپا چہرہ دیکھا جہاں اس کے ہاتھ پکرنے پر غصے کے تاثرات بڑے واضع تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے غصے سے ہاتھ کھینچا۔۔۔۔۔لیکن ہرمان ڈیٹھ نے پکڑ اور مضبوط کر دی۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پنار کا ہاتھ چھوڑو دیر ہو رہی ہے ہمیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس بار خلیل نے اس کی خرکت پر اکتا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے میں اپنی زندگی کو آپ کے خوالے کر رہا ہوں ۔۔۔۔۔اختیاط سے لیکر جائیے گا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا ہاتھ چھوڑ کر کہا اور دو قدم پیچھے ہٹا۔۔۔۔۔۔اسد نے سر کو دائیں بائیں ہلا کر گاڑی سٹارٹ کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان کے گھر اس وقت سب گھر والے موجود تھے۔۔۔۔۔احد کے گھر والے بھی آگے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے تو سر ہاتھوں میں گرایا ہوا تھا ہرمان کی خرکتوں کی وجہ سے ابھی کل ہی کتنی فرمانبردار دیکھا رہا تھا اور اب ۔۔۔۔۔۔البتہ دادی مطمن تھی ۔۔۔۔۔کہ ان کے پوتے نے ہار نہیں مانی جو چاہا وہ پا لیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے سب کو فون کر کے سب کچھ تفصیل سے بتا دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “اسد کی گاڑی کا ہارن سن کر سب صوفہ سے کھڑے ہوئے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آو بیٹا اسد نے گاڑی کا ڈور کھولتے ہوئے پنار کو باہر نکالا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے باہر آکر خیرت سے اتنے بڑے گھر کو دیکھا۔۔۔۔گھر بہت ہی خوبصورت تھا۔۔بڑا سا گارڈن اور چاروں طرف لگے پھول پنار کی کمزوری تھی۔۔۔۔۔۔۔۔آو بیٹا ۔۔۔اسد نے پنار کو کندھوں سے تھام کر اندر لائے ۔۔۔۔۔سب دروازے پر ہی کھڑے تھے۔۔۔۔۔سب نے پنار کو خیرت سے دیکھا انہیں لگا تھا وہ بہت خوبصورت ہو گئی جو ان کا بیٹا پاگل ہے اس کے پیچھے۔۔۔۔۔۔لیکن وہ کہی سے بھی ان کے بیٹے سے میچ نہیں ہوتی تھی۔۔۔۔۔۔۔عام شکل و صورت کی مالک تھی۔۔۔۔۔جب کہ ان کا بیٹا تو خوبصورتی کی مثال تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سب پر ایک نظر ڈال کر اسلام کیا ۔۔۔۔جس کا ناہید اور منیبہ نے تو جواب ہی نہیں دیا تھا۔۔۔۔لیکن احد اور دادی نے جواب دیا تھا۔۔۔۔عتبہ اور عذوبہ کافی پرجوش تھے اپنی بھابھی سے ملنے کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید پنار کو اندر لے جائیں۔۔۔۔اسد نے بت بنی ناہید کو ٹوکا”۔۔۔۔۔جی ۔۔۔۔۔ناہید نے اسے کندھے سے تھام کر اندر لائی اور صوفے پر بٹھایا۔۔۔۔۔۔۔ منیبہ نے ناک چڑھا کرصوفے پر بیٹھی پنار کو دیکھا جو نئے لوگوں میں نروس سی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی میں آپ کے لیے کچھ لاوں پینے کے لیے۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے ہلکی سی مسکان سے اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سر نفی میں ہلایا۔۔۔۔۔۔ارے عذوبہ جاو جوس لے کر آو ۔۔۔۔۔۔۔تھکی آئی ہے بیٹی ۔۔۔۔۔دادی نے اس کے سر پر ہاتھ پھیر کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔جی دادی ۔۔۔۔۔۔عذوبہ مسکراتے ہوئے کچن میں چلی گئ۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
مس پنار کے ساتھ تو نے اچھا نہیں کیا۔ ۔۔۔عمر نے گاڑی ڈرائیو کرتے ہرمان سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”I know but if I belonged to someone else, She’s only and only mine .۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان شدت سے پر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
حارث نے عمر کو کچھ بھی کہنے سے منا کیا۔۔۔۔۔سمجھایا اسے جاتا ہے جو سمجھنا چاہے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پنار کے معاملے میں کسی کی نہیں سن سکتا تھا وہ جانتے تھے یہ
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
بیٹاجاو بھابھی کو کمرے میں چھوڑ آو۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے عذوبہ سے کہا۔۔۔۔جو پنار کے ساتھ جڑ کر بیٹھ تھی۔۔۔۔۔۔اوکے ڈیڈ۔۔۔۔۔۔۔آئیے بھابھی۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے پنار کی طرف ہاتھ بڑھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے تشکر سے اسد صاحب کو دیکھتے ہوئے عذوبہ کے ہاتھ پر ہاتھ رکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔صادق بی بی کا سامان ہرمان کے کمرے میں رکھ آو۔۔۔۔۔۔۔۔۔” جی صاحب۔۔۔۔۔۔۔”عذوبہ پنار کا لہنگا پکڑا کر اسے اٹھنے میں مدد دی اور اسے ہرمان کے کمرے کی طرف لے کر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مجھے سمجھ نہیں آرہا میں اس لڑکے کا کیا کروں۔۔۔۔۔۔۔ناہید سخت غصے میں تھی۔۔۔۔۔۔۔۔اب جو ہونا تھا وہ ہو گیا ۔۔۔۔بہتر ہے آپ سب اب خالات کو فیس کریں۔۔۔۔اور پنار بہت سمجھ دار ہے یقینً وہ ہرمان کو سدھار دے گئی۔۔۔۔۔۔اسد نے سوچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔منیبہ اور احد کے جانے کے بعد اسد نے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یہ رہا آپ کا اور بھائی کا کمرہ ۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے ڈور کھولتے ہوئے پنار سے کہا۔۔۔۔۔۔پنار نے کمرے کے اندر آئی اور کمرے کی خالت دیکھ کر چکرا کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔وہ کمرہ کم اور کباڑ خانہ زیادہ لگ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ بھی کمرے کی خالت دیکھ کر پنار سے شرمندہ ہوگئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بھابھی آج ملازمہ چھٹی پر ہے تو اس لیے کمرے کی صفائی نہیں ہو پائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آپ یہاں بیٹھیں میں تب تک کمرے ٹھیک کرنے کے لیے کسی کو بھیجتی ہوں۔۔۔۔۔عذوبہ نے پنار کو بیڈ کی ایک سائیڈ پر بٹھاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔صادق سامان یہاں رکھ دو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے سامان لاتے ملازم کو بیڈ پر سامان رکھنے کو کہا اور کمرے سے چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار نے اب تفصیل سے کمرے کا جائزہ لیا۔۔۔۔۔۔کمرہ بہت بڑا تھا ۔۔۔۔۔کمرے میں ہر چیز تھی۔۔۔لیکن سلیقہ کی شدید کمی تھی۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کوفت سے کمرے پر نظر دورائی ۔۔۔۔۔اس کی طبیعت میں نفاست تھی اس کا اپنا کمرہ ہر وقت صاف ستھرا رہتا تھا ہر چیز سے نفاست جھلکتی تھی۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ناک چڑہا کر کمرے کی خالت دیکھی اور لہنگا سمیٹ کر اپنا بیگ کھولا ۔۔۔۔۔اپنا نائٹ سوٹ نکالا اور واش روم میں چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔تھوڑی دیر میں وہ نہا کر واش روم سے نکلی اور بیڈ سے سارے بکھڑے کپڑے اٹھا کر صوفے پر پھینکے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور کمبل کھول کر اس میں گھس گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اس وقت صرف سونا چاہتی تھی اور کوئی سوچ اپنے دماغ میں نہیں لانا چاہتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ “
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان عمر اور حارث کے ساتھ لانگ ڈرائیو پر نکل گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔وہ جب گھر آیا تو رات کے دس بج چکے تھے ۔۔۔۔۔۔۔سارے کمروں کی لائٹ بجھ چکی تھی جس کا مطلب تھا سب لوگ سو گئے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان شر شار سا اپنے کمرے میں آیا ۔۔۔۔۔۔۔کمرے کی لائٹ بجھی ہوئی تھی۔۔۔۔۔ہرمان نے بیڈ پر نظر دوڑائی جس سے اس کی آنکھوں میں انکھوئی چمک آئی تھی اپنے بیڈ پر پنار کو دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر پنار کو دیکھا جو کمبل میں فل پیک تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کبڈ سے اپنے کپڑے نکالے اور شاور لینے چلاگیا۔۔۔۔۔۔۔دس منٹ بعد وہ آیا تب بھی پنار اسی طرح لیٹی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مرر کے سامنے کھڑے ہو کر اپنے بال خشک کیے اور بیڈ کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان دھیرے سے بیڈ پر بیٹھ کر پنار کے چہرے کی طرف ہاتھ بڑھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اس کے منہ سے کمبل ہٹایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان نے کمبل ہٹا کر پنار کا چہرہ دیکھا جو گہری نیند میں تھی۔۔۔۔پنار جتنی مرضی ٹینشن میں ہو اسے نیند آسانی سے آجاتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن ہرمان کے بالوں سے ٹپکتی بوندوں نے اس کی نیند میں خلل ڈالا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔,پنار نے موندی موندی آنکھوں سے ہرمان کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔جو آنکھوں میں دنیا جہاں کا شوق لیے اس دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار پہلے تو اسے غائب دماغی سے دیکھتی رہی لیکن جب اپنی گال پر اس کا لمس محسوس کیا۔۔۔۔۔۔۔تو چونک کر ہرمان کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ایکدم اٹھ بیٹھی اور زور سے اس کا ہاتھ جھٹکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔how can you do this پنار نے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اور بیڈ سے اٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اسے بغیر شرٹ کے دیکھ کر رخ دوسری طرف موڑ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں جانتا ہوں آپ مجھ سے ناراض ہیں ۔۔۔۔۔۔لیکن ناراض ہونا تو بنتا ہے آپ کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے سامنے آکر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم پھر میرے سامنے آگے۔۔۔۔۔۔پہلے شرٹ پہنو پھر بتاتی ہوں میں تمہیں۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے رخ بیڈ کی طرف موڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”کیوں آپ کو مجھ سے شرم آرہی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہونٹ بینچتے ہوئے مسکراہٹ روکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر صوفے پر پڑی اپنی شرٹ پکڑی اور پہنی ۔۔۔۔۔بٹن اب بھی کھلے چھوڑے رکھے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔وہ ہرمان ہی کیا جو کسی کی بات مان ہی لے۔ ۔۔۔۔۔”اب آپ میری طرف دیکھ سکتی ہیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔لیکن پنار کو اس کا ہاتھ لگانا آگ ہی تو لگا گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے اس کا ہاتھ زور سے جھٹکا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک بار تمہیں سمجھ نہیں آتی ڈونٹ ٹچ می۔ ۔۔۔۔سنا تم نے مجھے ہاتھ لگانے کی جرات مت کرنا کبھی۔ ۔۔۔۔۔۔اور نکلو کمرے سے ابھی اور اسی وقت۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہنار نے غصے پر فل وقت کنٹرول کرتے ہوئے اس باہر کا راستہ دیکھایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے خیرانی سے اس کا غصہ دیکھا اور پھر باہر کا دروازہ دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ میری وائف ہیں اس لیے آپ کو ہاتھ لگانے کی مجھے پرمیشن کی کیا ضرورت ہے ہوں۔۔۔۔ ۔۔۔۔ہرمان نے اپنے پرانے موڈ میں آتے ہوئے کہا جس سے وہ لوگوں کو زچ کر دیتا تھا۔۔۔۔۔۔اور رہی بات کمرے کی تو یہ اب ہم دونوں کا کمرہ ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔نہ تیرا نہ میرا دونوں کا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پاکٹ میں ہاتھ ڈالتے ہوئے ریلکس موڈ میں کہا۔ ۔۔۔۔اور ایک قدم پنار کی طرف بڑھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے دنیا کے سب سے بڑے ڈیٹھ انسان کو دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور سر پکڑ کر بیڈ پر بیٹھ گی۔ ۔۔۔۔تو تم باز نہیں آو گے۔ ۔۔ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے آئبرز اچکاتے ہوئے اس سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان مسکراتے ہوئے اس سے تھوڑے فیصلے پر بیٹھا۔ ۔۔۔۔۔۔اور سر نفی میں ہلایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”میں اس وقت بہت تھکی ہوئی ہوں۔ ۔۔۔خبردار جو مجھے ڈسٹرب کیا تو۔ ۔۔۔۔پنار نے تکیہ درست کرتے ہوئے لیٹی اور چادر کوٹھیک سے اوپر لپیٹا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب آپ سو رہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مصنوعی خیرت سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”تم نے مجھ سے زبردستی شادی کی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی محبت نہیں تھی مجھے تم سے ۔۔۔۔بلکہ مجھے تو تمہاری شکل ہی زہر لگتی ہے ۔۔۔۔۔۔اور دور کرو میری نظروں سے اپنی یہ شکل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سپاٹ چہرے سے اسے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے تیکھی نظروں سے دیکھا اور۔۔۔۔۔۔اور پنار کے ساتھ بیڈ پر دراز ہونے کی کوشش کی لیکن پنار نے اس کی یہ کوشش ناکام بنا دی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے خیرت سے پنار کو اس کی جگہ پر بازو پھیلاتے دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔پنار آپ اپنی بازو تو ہٹائیے مجھے بھی آپ کے ساتھ لیٹنا ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔تم صوفہ پر سو گے۔ ۔۔۔۔یہ رہا تمہارا تکیہ۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے تکیہ اس کی گود میں پٹحا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔کیا میں صوفہ پر سوں گا؟۔۔۔۔۔۔۔آپ میرا سائز دیکھیں اور صوفہ کا دیکھئے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ویسے بھی میں یہی سوں گا آپ کو ہگ کر کے۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ایک آنکھ میچتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیاااااا تمہیں شرم نہیں آتی اس طرح کی بہودہ باتیں مجھ سے کرتے ہوئے۔ ۔۔۔۔۔یہی شرم کر لو تم سے پورے پانچ سال بڑی ہوں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بیڈ سے کھڑے ہوتے غصے سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اگر تم نے بیڈ پر سونے کی کوششی کی تو میں کمرے سے چلی جاوں گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے برا سا منہ بناتے ہوئے تکیہ صوفہ پر پٹخا۔ ۔۔۔۔۔۔اور صوفہ پر لیٹنے کی کوشش کی لیکن صوفہ اس کے قد کے لخاظ سے کافی چھوٹا تھا۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھا جو بیڈ پر دراز ہو کر اپنے اوپر کمفرٹر اوڑھا۔ ۔۔۔۔۔۔اور لائٹ بند کر دی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔واقعے سچ کہا
ہے کسی نے بیوی کے آگے کب کسی شوہر کی چلی ہے جو میری چلتی۔۔۔۔۔ ۔ ہرمان نے پنار کو دیکھ کر سوچا اور اسے دیکھنے لگا۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یار آپا کے بغیر گھر کتنا سونا سونا لگ رہا ہے نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ردا اور ہائمہ کو چائے کے کپ دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں یار پنار کے بغیر تو مجھے یہ کمرہ ہی کھانے کو دوڑ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ردا نے چائے کا سپ لیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور مجھے تو یقین نہیں ہو رہا کہ ہرمان ایسا بھی کر سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے کہا۔۔۔۔۔۔۔ویسے ردا آپا آپ کا کیا خیال ہے آپا کبھی ہرمان کے ساتھ خوش رہ پائیں گئی۔۔۔۔۔۔”ہائمہ نے اپنا اندیشہ بیان کرتے ہوئے ردا سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔یہ تو ہرمان پر ہے کہ وہ پنار کو خوش رکھتا ہے یا نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے پنار کی تصویر کو دیکھتے کو کہا ۔۔۔۔۔۔ان تینوں نے آج پنار کے کمرے میں سونے کا پلین بنایا ہوا تھا
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
صبح جب پنار کی آنکھ کھلی تو اسے کچھ عپجیب سا محسوس ہوا جیسے اس کی ٹانگ پر کچھ رکھا ہوا ہو۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر اپنی ٹانگ پر رکھی ٹانگ کو دیکھا…. اور چونک کر ٹانگ کی وجہ کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پورے بیڈ پر پھیل کر اوندے منہ سو رہا تھا۔۔۔۔۔اور ایک ٹانگ بیڈ کی دوسری سائیڈ پر اور دوسری ٹانگ پنار کی ٹانگ پر رکھے وہ نیند میں گم تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے اسے اور پھر صوفے کو دیکھا جہاں رات کو وہ لیٹا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے زور سے اس کی ٹانگ کوغصے سے جھٹکا۔۔۔۔۔۔اور بیڈ سے کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ٹانگ جھٹکنے پر منہ دوسری طرف کر کے سو گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کا غصے سے برا خال تھا ۔۔لیکن افسوس کے وہ اس ڈیٹھ انسان کا قتل نہیں کرسکتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مٹھیاں بینچی اور سائیڈ پر گلاس میں رکھا پانی زور سے اس کے منہ پر پھینکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان جو خواب میں بھی پنار کو ہی دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔ایک دم منہ پر پانی پڑنے سے وہ ایکدم ہڑبڑا کر اٹھا تھا ۔۔۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔اور منہ پر خیرت سے ہاتھ رکھے پنار کو دیکھا جو کمر پر دونوں ہاتھ رکھے اس کو قتل کرنے کے در پر تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہاری ہمت کیسے ہوئی میرے ساتھ بیڈ پر سونے کی ہاں۔۔۔ جان سے مار دوں گئی میں تمہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کا کالر پکڑ کر غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان تو ابھی تک خیرت میں تھا کہ اس کے ساتھ ہوا کیا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن میں تو صرف بیڈ پر سو رہا تھا۔۔۔۔۔۔اور تو کچھ نہیں کیا میں نے آپ کے ساتھ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے معصومیت کے سارے ریکارڈ توڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں منہ نہ توڑ دوں تمہارا ۔۔۔۔۔پنار نے اس کا کالر جھٹکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔تم بیڈ پر کیوں آئے جب میں نے تمہیں صوفے پر سونے کا کہا تھا تو ۔۔۔۔۔ہاں۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اہنی چپل ڈھونڈتے ہوئے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری لیکن میں صوفہ پر نہیں سو سکتا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اب کی دفعہ ٹکا سا جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”افففف پاگل ہو جاوں گئی میں، پنار نے گہرے گہرے سانس لیے اور اسے اگنور کرتے ہوئے اپنا بیگ کھولا اور اس میں سے سادہ سا سوٹ نکالا اور اسے گھورتے ہوئے واش روم۔چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پیچھے بیچارہ سا منہ بنا کر رہ گیا ۔۔۔۔۔جیسے کہا ہو میں نے ایسا بھی کیا کردیا ہو جو صبح صبح اتنی باتیں سنادی۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
بھابھی پنار کے لیے ناشتہ لے کر جانا ہے یا نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے کچن میں آکر عافیہ سے پوچھا جو چائے کو دم پر لگا رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں تمہارے بھائی صاحب نے منا کردیا ہے جن خالات میں پنار کی شادی ہوئی ہے ایسے میں کھانا لے کر جانا اکورڈ لگتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھیک ہے جیسے آپ کی مرضی ۔۔۔۔۔منیبہ نے فریج سے ناشتے کے لیے انڈے نکالتے ہوئے کہا
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار واش روم سے فریش ہو کر نکلی تو ۔۔۔۔۔عذوبہ کو اپنے انتظار میں کمرے میں بیٹھے دیکھا۔۔۔۔۔۔گڈ مارننگ بھابھی۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے صوفے سے کھڑے ہو کر پنار کے گلے لگتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی اس کی اتنی محبت پر خوش اخلاقی سے جواب دیا۔،۔۔۔۔۔۔۔اور ایک نظر ہرمان پر ڈالی جو پھر سے بنا شرٹ اوندے منہ لیٹے پھر سے سو گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کو اسے طرح دیکھ کر عذوبہ سے شرم سی آئی ۔۔۔۔۔۔بھابھی آپ تیار ہوجائیں ۔۔۔۔۔ڈیڈ لوگ آپ کا ناشتے پر ویٹ کر رہیے ہیں۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے اس کا ہاتھ تھامتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے میں بال بنا لوں پھر چلتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ایک نظر ہرمان پر ڈال کر اسے کہا اور مرر کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے پنار کی نظروں کا تعاقب کیا۔۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی بھائی کی ٹینشن نہ لیں ان کی صبح دوپہر کو ہوتی ہے ۔۔۔۔۔اور وہ ناشتہ+لنچ اکٹھا کرتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کی بات پر مروت میں مسکرائی۔۔۔۔۔۔۔۔

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: