Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 23

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 23

–**–**–

السلام عليكم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ڈائنگ روم میں داخل ہو کر سب کو اسلام کیا۔۔۔۔۔۔جس کا جواب اسد اور دادی نے محبت سے دیا جبکہ ناہید نے سر ہلا کر جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بیٹا بیٹھیں۔۔۔۔۔۔آپ کا ہی انتظار ہو رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکرا کر سر ہلایا اور دادی کی ساتھ والی خالی چئیر پر بیٹھ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید بہو کو ناشتہ دو ۔۔۔۔۔دادی نے ناہید کو ٹوکا جو اسد کے اور دادی کے آگے چائے کا کپ رکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں دادی میں لے لوں گئی ۔۔۔۔۔آپ انٹی کو ناشتہ کرنے دیں میں خود لے لوں گئ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے عذوبہ سے چائے کا کپ پکڑتے ہوئے دادی کو کہا جو اپنی بہو کو گھور رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا آپ تکلف مت کریں اور ٹھیک سے ناشتہ کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے پنار کو کنفیوز دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سامنے رکھے بریڈ کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اسے بریڈ زہر لگتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔وہ صبح ناشتہ میں پراتھا اور آملیٹ کھاتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔شادی کے دنوں میں بھی اس نے ٹھیک سے کھانا نہیں کیا تھا۔۔۔۔۔۔اب اسے بہت بھوک لگ رہی تھی۔۔۔۔۔لیکن بریڈ۔۔۔۔پنار نے برا سا منہ بنایا۔۔۔۔۔۔۔پتر اگر کچھ اور کھانا ہے تو بتا دو نوری بنا لائے گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے اس ہاتھ پر ہاتھ رکھے بیٹھے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں دادی میں یہی کھاوں گئی۔۔۔۔۔پنار انہیں مسکرا کر کہا اور جیم لگے بریڈ کو منہ کی طرف لیجانا چاہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
اشعر لغاری ہاوس میں بھی صبح کا ناشتہ چل رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپا فون بھی یہی چھور گئی ہیں ۔۔۔۔۔۔اب ان سے رابطہ کیسے کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے چائے کا کپ اٹھاتے ہوئے بات کا آغاز کیا۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں نہ ہم ان کے گھر جا کر آپا سے مل آئیں اور انہیں لے بھی آئیں گے۔۔۔۔کیسا ژالے نے پرجوش سی ہو کر ائیڈیا دیا۔۔۔۔۔۔۔اشعر، ژالے ٹھیک کہہ رہی ہے ہمیں پنار کو رسم کے مطابق ایک دن کے لیے لے آنا چاہئے۔۔۔۔۔۔”ناہید کے بھی دل کو لگی تھی ژالے کی بات ۔۔۔۔۔۔۔”ہوں ۔۔۔۔۔ایسا کریں آپ اور مرینہ چلی جائیں اعر پنار کو لیں آئیں۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے نیپکن سے ہاتھ صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ابو کی بات پر منہ بسورا اور ہائمہ کو گھورا جو نیچے منہ کیے ہنس رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔ابو میں نہیں جانتی مجھے بھی آپا سے ملنا ہے۔۔۔۔۔۔ژالے نے بچوں کی طرح پیر پٹخا ۔۔۔۔۔۔وہ آجاے گی تو مل لینا۔۔۔۔۔۔۔ابو پلیز نا آخری بار میری بات مان لیں اب کوئی ضد نہیں کروں گئی پکا۔۔۔۔۔ژالے نے آنکھوں میں زبردستی آنسو لاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے اس کے آنسو دیکھے تو پسیج گے۔۔۔۔۔۔۔اوکے چلی جانا لیکن وہاں پر کوئی شرارت مت کرنا ادر وائز تم جانتی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔ اشعر نے ڈائنگ ٹیبل سے آٹھتے ہوئے اسے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شکریہ پیارے ابو میں کسی کو کو ئی شکایت کا موقع نہیں دوں گی۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے بھاگ کر اشعر کے سینے سے لگتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اشعر نے مسکراتے ہوئے اپنی نوٹنکی بیٹی کا سر چوما اور اپنے کمرے میں چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
بہت بڑی نوٹنکی ہو تم قسم سے ژالے۔۔۔۔۔۔رومان نے اسے مصنوعی آنسو صاف کرتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے جواباً اسے منہ چرایا۔۔۔۔۔اور اپنے چھوڑے ہوئے پراٹھے سے انصاف کرنے لگی۔۔۔۔۔۔۔سب اس کی خرکتوں سے لطف اندوز ہو رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار نے ابھی بریڈ کا ایک ٹکرا ہی منہ میں ڈالا تھا جب۔۔۔۔۔۔اس کے ہاتھ سے کسی نے بریڈ چھینا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ایدم بریڈ چھینے جانے پر ڈرگئی ،اور پھر بریڈ چھیننے والے کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب نے ہرمان کو چونک کر دیکھا۔۔۔۔۔۔جو پنار سے چھینے گئے بریڈ کا بائٹ لے رہا تھا ۔۔۔۔۔اور پنار کے ساتھ والی چئیر پر بیٹھ گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔.۔۔۔۔۔ہرمان یہ کیا طریقہ ہے کھانا کھانے کا ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اسے تیکھے چتونوں سے گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری ڈیڈ لیکن ۔۔۔۔میری وائفی کو بریڈ کھانا پسند نہیں ۔۔۔نوری۔۔۔۔ہرمان نے کہتے ہوئے نوری کوآواز لگائی۔۔۔۔۔۔پنار کا تو غصے سے برا خال تھا عجیب ڈیٹھ بے شرم انسان تھا کیسے اس کے ہاتھ سے چھین کر کھا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب لوگ اسے خیرت سے دیکھ رہے تھے جس نے آج تک کسی کی جھوٹی چیز نہیں چکھی تھی ۔۔۔۔۔اب کیسے وہ پنار کا جھوٹا اسی سے چھین کر کھا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جی چھوٹے صاحب،نوری فوراً خاضر ہوئی “۔۔۔۔۔۔۔۔اپنی بھابھی کے لیے گرما گرما پراٹھا لے کر آو۔۔۔۔۔۔پانچ منٹ کے اندر اندر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے نوری کو آرڈر دے کر پنار کو دیکھا جو اسے خیرت سے اسے دیکھ رہی تھی اور سوچ رہی تھی کہ اسے کس نے بتایا کہ وہ صبح ناشتے میں پراٹھا کھاتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا آپ ہمیں بتا دیتی۔۔۔۔یہ اب سے آپ کا بھی گھر ہے۔۔۔۔۔۔اس لیے کسی چیز کا بھی تکلف مت کریں۔۔۔۔۔۔۔اسد نے کہہ کر چائے کا آخری گھونٹ لیا اور چئیر کھس کا کر اٹھے۔۔۔۔.۔۔۔۔۔مجھے افس سے دیر ہو رہی ہے تو پلیز ایکسیوزمی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے پنار کو کہا اور اپنے کمرے کی طرف بڑھے۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ناہید بھی ان کی مدد کے لیے اٹھی۔۔۔۔۔اب پنار ،ہرمان ،دادی اور عذوبہ ہی بیٹھے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھائی ویسے آج کا دن کہاں سے نکلا ہے کہ آپ ٹائم پر اٹھ گے وہ بھی بنا کسی کے اٹھاے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے جوس کے گھونٹ لیتے ہوئے ہرمان کو چھیڑا۔۔۔۔۔۔دادی نے بھی مسکراتے ہوئے اپنے لاڈلے پوتے کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پہلے عذوبہ کو پھر پنار کو دیکھا جس نے ہرمان کے دیکھنے پر غصے سے منہ دوسری طرف کر لیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر اس دیکھا اور نوری کے ہاتھ سے پراٹھا لے کر پنار کے آگے رکھا ۔۔۔۔پنار نے اپنے آگے پڑے پراٹھےاور پھر ہرمان کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے نوالہ توڑا اور پنار کے منہ کی طرف بڑھایا۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے اسے دیکھا اور گھورا جیسے کہا تمہارے ہاتھوں سے کہی میں کھا ہی نہ لوں۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے مسکراتے ہوئے اس نئے جوڑے پر اپنی نظریں ٹکا دیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی پنار سے کہیں کہ پہلا نوالہ شوہر کے ہاتھ سے کھانے والی بیوی کتنی خوش نصیب ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کو پتا تھا وہ اس کے ہاتھ سے کبھی نہیں کھائیں گی جب تک وہ دادی کو انولو نہیں کریں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا ہرمان ٹھیک کہہ رہا ہے۔۔۔۔اللہ بخشے ہرمان کے دادا کو تب تک کھانا نہیں کھاتے تھے جب تک پہلے نوالہ مجھے نہیں کھلا دیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے یہ عادت انہی سے تو چڑائی ہے ۔۔۔۔۔۔اس لیے کھا لو بیٹا شوہر سے ضد نہیں کرتے اس کا کہنا مانتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے پنار کو سمجھایا۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ہرمان اور عذوبہ نے پنار کو دیکھا جو کھا جانے والی آنکھوں سے اسے دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے نوالہ اس کے ہونٹوں کے نزدیک کیا ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے زچ ہو کر اس ڈیٹھ کو دیکھا اور پھر دادی کو دیکھا جو انہی کی طرف متوجہ تھی۔۔۔۔اس لیے پنار نے نا چاہتے ہوئے بھی منہ کھولہ اور نوالہ رکھتے ہوئے وہ ہرمان سے بدلہ لینا نہیں بھولی تھی۔۔۔۔۔۔اس کی انگلی کو زور سے دانت کے نیچے پیسا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے تو خیرت سے پنار کو دیکھا اور پھر اپنی انگلی کو جو کافی ریڈ ہو گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکرا کر وارننگ دیتی آنکھوں سے اسے دیکھا…. جیسے کہا مجھے سے پنگا ناٹ چنگا بچو۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یار بتا پھر کیسی جا رہی ہے تیری میریڈ لائف ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے نوری کے ہاتھ سے سنیکس کی پلیٹ پکڑتے ہوئے ہرمان سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جو گیسٹ روم میں لیٹا۔۔۔۔۔ایل ائی ڈی ۔۔۔کا ریموٹ پکڑے چینل سرچنگ میں مصروف تھا۔۔۔۔۔۔عمر کی بات پر اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں اپنی پرائیوٹ لائف کسی سے ڈسکس نہیں کرتا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لاپراہی سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔عمر اور حارث نے چونک کر اسے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔اور ایک دوسرے کو خیرانی سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کچھ کہنے ہی والا تھا جب نوری نے پنار کے گھر والوں کی آنے کی اطلاح دی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان چونک کر اٹھا۔۔۔۔۔۔اوکے تم جاو میں آتا ہوں۔۔۔۔۔اس نے عمر اور خارث کو دیکھا جو طنزیہ مسکراہٹ سے اسے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔ہرمان نے دونوں کو گھورا اور مرر کے آگے کھڑے ہو کر اپنے بال سنوارے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے اتنا کانشنس پہلے کبھی نہیں دیکھا تھا اپنے خولیے کو لے کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس کردے کافی ہینڈسم لگ رہا تو اس نائٹ سوٹ میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے عمر کے ہاتھ پر ہاتھ مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دونوں کو گھورا ۔۔۔۔۔تم دونوں سے تو میں بعد میں نبٹتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان کہہ کر لاونج میں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار عافیہ کے سینے سے لگی آنسو بہا رہی تھی۔۔۔۔۔۔مرینہ اور ژالے پنار کو چپ کروا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید ،دادی بھی وہی بیٹھی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ بچے کونسا دور ہو تم جب دل کرے ملنے چلی جانا کرنا ۔۔۔اب چپ کر جاو دیکھو تمہاری امی اور تمہارے گھر والے پریشان ہو رہے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے نے پنار کو مسلسل روتے دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے دادی کے کہنے پر اپنے آنسو صاف کیے اور ہرمان کو لاونج میں آتے دیکھ کر پریشان ہوئی ۔۔۔۔۔۔ السلام عليكم امی اینڈ انٹی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ان دونوں کے آگے اپنا سر کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید تو خیران رہ گئی اپنے بیٹے کی خوش اخلاقی دیکھ کر ۔۔۔۔وہ جو کسی مہمان سے ملنے اپنے کمرے سے نہیں نکلتا تھا ۔۔۔اور اب ۔۔۔۔۔ارے میرا بیٹا تو بیوی کا غلام بن گیا۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے دل میں سوچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
خیران تو پنار بھی رہ گئی تھی کیسے اس کی امی کو امی کہہ رہا ہے پنار نے اسے سخت گھوری سے نوازا۔۔۔۔۔۔۔پہلے عافیہ نے اس کے سر پر ہاتھ رکھا پھر مرینہ نے ۔۔۔۔۔چاہے کیسے بھی ہوئی تھی شادی لیکن اب وہ انکی بیٹی کا شوہر تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”امی آپ لوگوں نے ابھی کچھ لیا ہی نہیں پلیز کوئی تکلف مت کریں۔۔۔۔۔ہرمان نے انہیں چائے کے کپ پکڑاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے اور عذوبہ تو آپس میں ایسے باتیں کر رہی تھی دو گہری دوست ہوں۔۔۔۔۔۔۔”جی بیٹا ہم لے رہیں ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔انٹی میں ژالے کو اپنا کمرہ دیکھا لاوں۔۔۔.۔۔۔عذوبہ نے عافیہ سے اجازت چاہی۔۔۔۔۔اوکے بیٹا ۔۔۔۔۔۔ژالے مسکراتی ہوئی عذوبہ کے ساتھ چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اپنا سر عافیہ کے کندھے پر رکھا۔۔۔۔ہرمان تو خسرت سے دیکھ کر رہ گیا کہ کبھی اپنے بھی ایسے دن آئے گے جب وہ میرے کندھے پر ایسے سر رکھیں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہائمہ میری یہ شرٹ جلدی سے پریس کر دو ۔۔۔۔مجھے ابھی اوٹ آف کنٹری میٹنگ کے سلسلے میں جانا ہے۔۔۔۔۔۔۔رومان نے ہائمہ کی گود میں شرٹ والا بیگ رکھا۔۔۔۔۔۔اور شاباش یہ شرٹ پریس کر کے میرے لیے اچھی سی سٹرونگ چائے بنادو۔۔۔۔۔۔۔۔۔”رومان نے ناول پڑھتی ہائمہ کو آڈر دیا۔۔۔۔۔۔جس کا صدمے سے برا خال تھا۔۔۔۔۔۔کیا مطلب یہ سب میں کروں گئی۔۔۔۔۔ہائمہ نے خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان جاتے جاتے پلٹا ۔۔۔۔۔۔۔ٹڈی ڈیئر کیا آپ کو اپنے علاوہ یہاں کوئی اور نظر آرہا ہے ۔۔۔۔۔رومان نے بھنویں اچکاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے منہ بناتے ہوئے سر نفی میں ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔چائے بنادوں گئی شرٹ وغیرہ مجھے سے پریس نہیں ہوتی۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے صاف انکار کیا۔۔۔۔۔۔رومان نے اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔۔۔پانچ منٹ مطلب پانچ منٹ کے اندر شرٹ اور چائے دونوں مجھے ریڈی چاہئے۔۔۔۔۔رومان نے کہتے ہوئے اپنے کمرے میں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ پیچھے سے اسے کوس کر رہ گئی۔۔۔۔ہائے یہ کیسا منگیتر دیا ہے اللہ ۔۔۔۔جو میری طعریف کرنے کی بجائے ہر وقت مجھ سے چائے یا کام وغیرہ کرواتا رہتا ہے۔۔۔۔۔
ہائمہ نے اونچی آواز میں بڑبڑائی۔۔۔۔۔۔پہلے چائے لے آو پھر تمہاری تعریف تفصیل سے کرتا ہوں میں۔۔۔۔۔۔۔رومان نے کمر پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے سے آتی آواز سن کر ہائمہ تو مرنے والی ہو گئی ۔۔۔۔۔۔اور سر پر ہاتھ مارتی کچن کی طرف دوڑ ی۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے مسکراتے ہوئے کچن کی طرف دیکھا جہاں وہ گئی تھی اور پلٹ کر اپنے کمرے کی طرف چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
عمر جو سیڑیوں سے اتر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ کے ساتھ ژالے کو اس طرف آتے دیکھ کر چونک کر رکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر بھائی آپ اوپر تھے ۔۔۔۔۔عذوبہ نے اس کے قریب آتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔ژالے نے بھی خیرت سے اسے دیکھا وہ اس کی موجودگی کو وہاں دیکھ کر خیرت زدہ رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”خیر چھوڑیں آپ ژالے سے ملیے یہ پنار بھابھی کہ بہن ہیں۔۔۔۔اور ژالے یہ بھائی کے بیسٹ فرینڈ عمر ہیں۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے دونوں کا تعارف کروایا۔۔۔۔۔۔۔۔انہیں کیسے بھول سکتا ہوں میں ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے مسکرا کر ژالے کو دیکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ۔۔۔۔عذوبہ نے خیرانی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے بھی اس کی بات پر چونک کر اسے خیرت سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہمارے ہاں ایک رسم ہے کہ لڑکی شادی کے دوسرے دن لڑکی ایک دو دن کے لیے میکے رہنے جاتی ہے ۔۔۔۔۔۔چاہے شادی جن بھی خالات میں ہوئی ہو لیکن رسمیں وغیرہ تو نبھانی پڑتی ہیں نا۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے دادی اور ناہید سے کہا۔۔۔۔۔۔۔جنہوں نے ان کی بات پر سر ہلایا۔۔۔۔ہم لوگ پنار کو لینے آئے ہیں ایک دو دن کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس بار مرینہ نے بات مکمل کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے اس میں ہمیں کیا اعتراض ہو سکتا ہے ۔۔۔پنار بیٹا آپ تیاری کرلیں۔۔۔۔۔۔دادی نے مسکراتے ہوئے پنار کے گھر والوں سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک منٹ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن مجھے عتراض ہے میں اپنی وائفی کو اپنی نظروں سے اتنے دن کے لیے دور نہیں کر سکتا۔۔۔۔ سوری ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھ کر عافیہ اور مرینہ کو کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس بے شرم انسان کو اپنی بڑی بڑی آنکھوں سے گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ اور مرینہ نے بھی چونک کر خیرت سے اسے دیکھا جس کے فیصلے میں کوئی لچک نہیں تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا یہ رسمیں ہیں انہیں نبھانا پڑتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اسے سمجھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”میں ان رسموں وغیرہ پر یقین نہیں رکھتا۔۔۔۔۔۔لیکن میں اپنی وائفی کی خوشی کے لیے راضی ہوں لیکن میری ایک شرط ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسی شرط ۔۔۔۔۔پنار نے تپے تپے انداز میں اس ڈیٹھ انسان سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔”میں بھی آپ کے ساتھ جاوں گا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ریلکس انداز میں کہا اور پنار کو مسکراتی نظروں سے دیکھا

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: