Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 24

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 24

–**–**–

کیا مطلب؟ کیا آپ پہلے سے جانتے ہیں ژالے کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے پرجوش انداز میں اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے گھور کر عمر کو دیکھا۔۔۔۔ارے نہیں نہیں۔۔۔میرا مطلب تھا
کہ اس دن شادی میں انہیں دیکھا تھا ۔۔۔اب اتنی بھی میری ویک میمری نہیں کہ ایک چہرہ دیکھوں اور بھول جاوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے ژالے کی طرف دیکھ کر معنی خیز انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جس پر عذوبہ نے تو سر ہلایا۔۔۔۔۔لیکن ژالے نے اسے غصے سے گھورا۔۔۔۔۔۔اور عذوبہ کے ساتھ آگے بڑھ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے اس خوبصورت اتفاق پر وہ مسکرا کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہورا تھا یہ ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے پیچھے سے اس کے کندھے ہر ہاتھ رکھتے ہوئے آئی بروز اچکاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ بھی تو نہیں ۔۔۔۔میں تو بس عذوبی سے ہائے ہیلو کر رہا تھا ۔۔۔۔۔عمر نے بوکھلاتے ہوئے جو منہ میں بول دیا۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاہاہا۔۔۔۔۔۔۔شکل دیکھ اپنی پورا لنگور لگ رہا ہے ۔۔۔۔۔حارث نے قہقہ لگاتے ہوئے اس کا مزاق اڑایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بکواس بند کر ایسا کچھ نہیں ہے جیسا تو سوچ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے آگے بڑھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”اوکے پھر ٹھیک ہے دراصل مجھے نہ یہ ہرمان کی سالی اچھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی لفظ اس کے منہ میں ہی تھا جب عمر نے پلٹ کر اس کے منہ پر مکہ مارا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔نام بھی مت لینا اس کا ورنہ سارے دانت توڑ دوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے غصے سے وارننگ دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سالے مجھے پہلے ہی شک تھا تیری خرکتوں پر ۔۔۔شادی پر بھی کیسے اسے گھور گھور کر دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے منہ پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔عمر نے جواباً بیچارگی سے اسے دیکھا اور سوچا کہ اس بندے کو نہیں پتہ چلنا چاہیے تھا۔۔۔۔۔۔اس بارے میں یہ اب اس کا جینا حرام کر دے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان پاگل ہو گئے ہو تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے تائیدی انداز میں اسے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔،۔۔۔ہرمان زرا روم میں آنا مجھے تم سے کچھ ضروری بات کرنی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان سے کہا اور کمرے کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان سے موم کو دیکھا جو غصے سے اسے گھور رہی تھی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سب سے ایکسیز کرتی ہوئی نظروں سے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔اور پنار کے پیچھے اپنے کمرے کی طرف چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے وہ سب ایک دوسرے کو دیکھ کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار کمرے میں آکر غصے سے رکی۔۔۔۔اور سینے پر بازو باندھیں۔۔۔۔۔۔۔۔افففف کیا کروں میں ، پاگل کر دے گا یہ ڈیٹھ انسان مجھے۔۔۔۔پنار نے کمرے میں چکر لگاتے ہوئے غصے سے سوچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے کمرے میں قدم رکھا ۔۔۔۔اور چمکتی آنکھوں سے پنار کی پشت کو دیکھا۔۔۔۔۔اور آہستہ سے اس کے کندھے پر اپنی ہتھوڑی رکھی۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر اپنے کندھے پر رکھا ہرمان کا چہرہ دیکھا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر ایک آنکھ بند کی۔۔۔۔۔۔۔پنار نے زور سے اس کا چہرہ اپنے کندھے سے جھٹکا اور دھکا دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم باز نہیں آو گے نا اپنی ان بہودہ خرکتوں سے ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سرخ ہوتے چہرے سے اسے جھڑکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے زچ کرتی مسکان ہونٹوں پر سجائی اور نفی میں سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔اور اپنے قدم پنار کی طرف بڑھانے لگا۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرانی سے اسے اپنی طرف آتے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اس سے ایک قدم کے فاصلے پر رکا ۔۔۔ اور اس کا ہاتھ تھاما۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرانی سے اس کی خرکتوں کو دیکھا۔۔۔۔۔۔”آپ نے یقیناً مجھے باز پرس کرنے کے لیے کمرے میں بولایا ہے۔۔۔۔۔۔۔لیکن سوری میں آپ کے معاملے میں آپ کی بھی نہیں سنو گا۔۔۔۔۔۔۔آپ گھر جانے سے انکار کر دیں پلیز ۔ ۔۔میں نہیں رہ سکتا آپ کے بغیر ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے ہاتھ کی انگلیوں میں اپنی انگلیاں پھساتے ہوئے بے بسی سےکہا۔۔۔
پنار نے خیرت سے اس کے انداز کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔اور غصے سے اپنا ہاتھ کھینچا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں جاوں گئی اور اپنی مرضی سے آوں گئی ۔۔۔۔۔۔اور تم نا اپنی ان بہودہ خرکتوں سے باز آجاو ورنہ مجھ سے برا کوئی نہیں ہوگا ۔۔۔۔۔۔پنار نے پہنے کے لیے اپنے کپڑے نکالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک منٹ یہ تم کیوں اپنے کپڑے نکال رہے ہو ہاں ۔۔۔۔پنار نے اس کبڈ سے کوسٹلی کپڑے نکالتے دیکھ کر غصے سے پوچھا۔۔۔۔۔۔جب آپ میری بات نہیں مانتی تو میں بھی آپ کی بات نہیں مانو گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان، پنار سے پہلے اپنے کپڑے لے کر واش روم میں گھس گیا ۔۔۔۔۔۔۔پنار پیچھے خیرت زدہ سی دانت پیستی رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔یا اللہ مجھے صبر دے ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بے بسی سے کہا۔۔۔۔کیوں کہ وہ جانتی تھی کہ اس ڈیٹھ انسان کو ہینڈل کرنا دنیا کا مشکل ترین کام ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ویسے ہمارے ہاں رسم ہے کہ لڑکی کے ساتھ لڑکا بھی جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن ہم نے اس لیے نہیں کہا کہ شاید ہرمان نا مانے لیکن اگر ہرمان جانا چاہتا تو یہ بہتر ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے دادی اور ناہید کو کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اپنی دلہن کے ساتھ جائے گا اور ایک دن رہ کر واپس آجائیں گے آپ فکر نہ کریں۔ ۔۔۔۔۔۔دادی نے دودھ کا گلاس خالی کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھ آئی گھر بچے ۔۔۔۔۔۔دادی نے پاس بیٹھتی ژالے سے پوچھا جس نے ہلکی سی مسکان سے سر ہلایا۔ ۔۔۔۔۔ارے تم دونوں میں تمیز نام کی چیز ہے یا نہیں ہاں۔ ۔۔۔کیا پڑھنے جاتے ہو سکول ۔۔۔تم دونوں۔ ۔۔۔۔۔۔۔دادی نے عمر اور حارث کو بنا اسلام دعا کے باہر جاتے دیکھ کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر اور حارث شرمندہ سے ہوگے اتنے لوگوں میں واٹ لگتی دیکھ کر۔ ۔۔۔۔۔۔۔نہیں دادی ہم اسی طرف آرہے تھے ۔۔۔۔۔عمر نے جلدی جلدی کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نا تم لوگ پاگل سمجھتے ہو مجھے کیا باہر کا چکر لگا کر پھر اسلام دعا کرتے ہاں۔ ۔۔۔۔۔۔۔دادی نے دونوں کو اچھا خاصا ڈانٹا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اسلام علیکم ۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں نے جلدی سے وہاں بیٹھے سب لوگوں کو کہا جن کے چہرے پر دبی دبی ہنسی تھی ۔۔۔۔۔۔۔خاص کر ژالے اور عذوبہ کے تو باقاعدہ دانت نکل رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے ہم لوگ چلتے ہیں ہمیں ضروری کام ہے اللہ خافظ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے کہہ کر باہر کی طرف تیز تیز قدم بڑھائے کہ کہی دادی پچھلی کسی بات کو لیکر پھر سے ہی نا واٹ لگا دے۔ ۔۔۔۔۔۔حارث بھی اس کےپیچھے لپکا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نلائق نا ہوں تو ۔۔۔۔۔۔دادی نے منہ بنا کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے اور عذوبہ کھل کر مسکرائی تھی ان کو باہر بھاگتے دیکھ کر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”یار دادی کو بھی آج ہی بیستی کرنی تھی ۔۔۔۔۔۔شرمند کر کے رکھ دیا ژالے کے سامنے ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے شرمندگی سے سوچا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔حارث غور سے اس کے چہرے کے تاثرات نوٹ کر رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار گرین شرٹ جس کے دامن اور گلے میں موتیوں کا کام تھا اور سلیوز نیٹ کے بنے ہوئے تھے ،بلیو کیپری میں، کندھے سے نیچے آتے بالوں کی پونی ٹیل بنا رہی تھی جب ہرمان ۔۔۔۔ڈریسنگ روم سے نک سک تیار ہو کر نکلا وہ بہت ڈیشنگ لگ رہا تھا ۔ ۔۔۔وہ پرفیوم بہت تیز استعمال کرتا تھا جہاں بھی جاتا تھا اپنی خوشبو چھوڑ جاتا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے اس اگنور کرتے ہوئے پنک کلر کی لپسٹک اٹھا ئی جب ہرمان اس کی طرف آیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پلیز آپ پنک کلر کی نہیں یہ ریڈ لپسٹک لگائیں یہ آپ پر زیادہ اچھا لگے گا ،ہرمان کو پنک کلر دیکھ کر رمیز کا پسند کیا ہوا پنک لہنگا یاد آگیا تھا۔ ۔۔۔۔۔اس لیے پنار کو منا کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سنو میں اپنی مرضی کی مالک ہوں تم نے پہلے میرے ساتھ زبردستی سے جو شادی کی ہے نا تو یہ مت سمجھنا کہ میں تم سے ڈر کر تمہارے ساتھ رہ رہی ہوں ۔۔۔۔۔مجھے اپنے ماں باپ کا اور تماشہ منظور نہیں تھا۔ ۔۔۔ورنہ تم تو کیا کوئی بھی مجھے سے زبردستی نہیں کرسکتا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے اس کی طرف پلٹ کر کہا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار آپ بھی یہ بات یاد رکھیئے گا ۔۔۔خدا نے آپ کو صرف میرے لیے ہی بنایا تھا تھا۔ ۔۔۔۔تو پھر آپ کسی اور کی کبھی نہیں ہو سکتی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سنجیدگی سے کہہ کر کمرے سے باہر نکل گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سر جھٹکا اور ڈارک پنک شیڈ لگایا۔ ۔۔۔۔۔ہرمان کی ضد سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ویسے تم ٹھیک کہہ رہی تھی ٹڈی کہ میں نے منگیتر ہونے کے ناتے کبھی تمہاری تعریف نہیں کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ رومان نے کچن میں چائے کو دم لگاتی ہائمہ سے کہا۔ ۔۔۔۔۔ہائمہ اس کی آواز پر گھبرا کر اس کی طرف پلٹی ۔۔۔۔۔۔۔مم میرا یہ مطلب تو نہیں تھا۔ ۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے بوکھلا کر جلدی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”اچھا تو کیا مطلب تھا زرا سمجھاو گئی مجھے ۔۔۔۔۔رومان نے کچن چیئر پر بیٹھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کوئی مطلب نہیں تھا آپ اپنی چائے پکڑیں اور جائیں جہاں جانا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اس کے آگے چائے کا کپ رکھتے غصے سے کہا۔ ۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا بیوی لگ رہی ہو اس طرح خکم چلاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اسے اور تپایا۔ ۔۔۔۔۔۔آپ۔ ۔۔۔۔ٹن ٹن ۔۔۔۔۔۔ہائمہ ابھی اسے کچھ کہنے ہی والی تھی جب مین دروازے کی بیل بجی۔ ۔۔۔۔۔لگتا ہے پنار آپا لوگ آگیے ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے رومان سے کہا اور دروازہ کھولنے بھاگی۔ ۔۔۔۔۔”
اسلام علیکم آپا۔ ۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے پنار کے گلے لگ کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی مسکرا کر اسے گلے لگیا اور اسے کے اسلام کا جواب دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہائمہ آپ صرف اپنی آپا کو ہی اسلام کرئیں گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان گاڑی کو پارک کرتے ہوئے دو تین منٹ لیٹ ہوگیا تھا۔ ۔۔۔۔وہ پنار کو ضد کر کے اپنے گاڑی میں لے کر آیا تھا خلانکہ پنار نے صاف انکار کردیا تھا اس کے ساتھ بیٹھنے پر ،لیکن ہرمان نے آج تک کسی کی سنی ہے جو وہ پنار کی سنتا۔ ۔ ۔ ۔ ۔۔۔۔۔۔”اسلام علیکم ۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اسے بھی مروت سے کہا اور سب اندر آئے جہاں ۔۔۔۔۔رومان پنار کے ساتھ ہرمان کو دیکھ کر غصے سے اٹھا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔کیسے ہیں آپ سالے صاحب ۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو گلے لگاتے رومان کو اپنی زچ کرتی مسکان سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں بلکل ٹھیک ۔۔۔۔رومان جو اسے کچھ کہنے والا تھا ۔۔۔۔امی کے گھورنے پر نا چاہتے ہوئے بھی کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر سر ہلایا۔۔۔۔۔ژالے تم مجھے پنار کے کمرے میں چھوڑ دو گئی دراصل مجھے تھوڑا فریش ہونا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان دیکھ پنار کو رہا تھا۔ ۔۔لیکن کہا ژالے کو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں ہاں جاو بیٹا فریش ہو جاو۔ ۔۔۔۔مرینہ نے اسے جوس کا گلاس پکڑاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے دو گھونٹ جوس کے پیا اور پھر ژالے کے ساتھ پنار کے کمرے میں چلا گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”تاکے وہ سب پنار سے کھل کر بات چیت کر لیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار آدھے گھنٹے بعد کمرے میں فریش ہونے آئی تھی لیکن۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہرمان ،پنار کے بیڈ پر الٹا لیٹا ہوا تھا، شوز کمرے کے درمیان میں پڑے ہوئے تھے۔۔۔۔ کشن سارے نیچے پھینکے ہوئے تھے۔۔۔۔۔۔۔اور خود جناب پنار کی طرف معصومیت سے دیکھ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے گھور کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔ اور غصے سے اس کے پاس آئی، یہ کمرے کی حالت کیا بنائی ہوئی ہے ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔ سارا کمرہ بھکیڑ کر رکھ دیا ہے تم نے ۔۔۔۔۔۔کچھ تو مینرز سیکھو۔۔۔۔۔۔پنار نے افسوس سے کمرے کی حالت دیکھ کر اس ڈیٹھ کو کہا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان بیڈ سے اٹھا اور آہستہ سے چلتا ہوا اس کے پاس آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کو کمرے کی بکھڑی حالت نظر آرہی ہے لیکن میرے نہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ جب مجھے اگنور کرتی ہیں نا، تو میری حالت بھی کچھ ایسی ہی ہوتی ہے لیکن آپ کو وہ نظر نہیں آتی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سنجیدگی سے کہہ کر پنار کے قریب آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اسے بازو سے پکڑتے ہوئے خود سے قریب کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: