Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 25

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 25

–**–**–

ہرمان نے اپنا ماتھا۔۔۔۔۔پنار کے ماتھے سے ٹکرایا اور ہلکے سے اس کی ناک کو دبایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے اس کے انداز کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔وہ غور سے پنار کے چہرے کو دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے سوری سوری میں نے کچھ نہیں دیکھا ۔۔۔۔۔رائمہ نے پنار کے دروازے کے باہر کھڑے کھڑے ہی کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کو دھکا مار کر الگ کیا۔۔۔۔اور شرمندہ نظروں سے رائمہ کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے گھور کر اس بلا کو دیکھا جو اسے پہلے دن سے ہی اچھی نہیں لگی تھی ۔۔۔۔جو اس کی پنار کے ساتھ بد تمیزی کرے وہ اسے کیسے اچھا لگ سکتا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ویسے ہم نے دروازہ بند ہی کیا تھا وہ الگ بات کہ آپ نے ناک کرنا ضروری نہیں سمجھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے طنزیا مسکان سے اسے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” تو غلطی تم دونوں کی ہوئی نا ،تم دونوں کو دروازہ لاک کر لینا چاہئے تھا ۔۔۔۔۔رائمہ نے بنا شرمندہ ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔لیکن۔ ۔۔۔پنار نے ہرمان کو گھورا۔ ۔۔۔۔۔۔رائمہ تمہیں کچھ چاہیئے تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جلدی سے رائمہ کو کہا کہ کہی ہرمان اس سے کوئی الٹی سیدھی بات ہی نا کر دے ۔۔۔۔۔۔۔،”ہاں وہ مجھے تمہارا چارجر چاہئے میرا مل نہیں رہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رائمہ نے بے نیازی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں کیوں نہیں یہ پڑا ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔پنار بیڈ کی سائیڈ ٹیبل سے چارجر اٹھا کر اسے دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنا رنگ کرتا فون نکالا اور اس پر بات کرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا کب ۔۔۔۔۔اوکے ہم آرہے ہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کی طرف متوجہ ہوئی جس کے چہرے پر پریشانی کے تاثرات چھا گے تھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان فون بند کر کے پنار کے پاس آیا جو اسی کی طرف ہی متوجہ تھی۔ ۔۔۔۔۔۔کیا ہوا سب ٹھیک تو ہے نا ۔۔۔۔پنار نے اسے ہونٹ بھینچتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”دادی کی طبعیت ٹھیک نہیں۔۔ان کا بلیڈ پریشر ہائی ہو گیا ہے
موم کا فون آیا تھا۔۔۔۔۔آئی ہیو ٹو گو۔۔۔۔۔کیا آپ میرے ساتھ چلیں گئی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس سے آس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔پنار بھی پریشان ہوئی تھی دادی کی طبعیت کا سن کر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رکو میں پہلے امی سے پوچھ آوں۔۔۔۔۔۔۔پنار کہہ کر باہر چلی گئی جو بھی تھا وہ اب اس کا سسرال تھا ۔۔۔۔۔۔اور سسرال میں تو چھوٹی چھوٹی باتوں کا دھیان رکھا جاتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے جانے کے بعد پھر سے گھر فون ملایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار اور ہرمان اس وقت دادی کے کمرے میں موجود تھے دادی لیٹی ہوئی تھی۔۔۔اور چہرے پر نقاہت کے تاثرات تھے۔۔۔۔۔ہرمان دادی کے پاس بیٹھا کبھی انکا ہاتھ ہونٹوں سے لگاتا تو کبھی ان کے بالوں میں ہاتھ پھیرتا۔۔۔۔۔ہرمان گھر میں سب سے زیادہ دادی کے ہی قریب تھا۔۔۔۔۔۔۔۔اگر دادی کی کبھی طبیعت خراب ہوتی تو اس کی جان پر بن جاتی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بچے میں اب ٹھیک ہوں جا آرام کر تم بھی جب سے آیا ایسے ہی بیٹھا۔۔۔۔۔۔۔ بہو کو بھی پریشان کردیا بیچسری کو رہنے دیتے۔۔۔دادی نے نقہت سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔دادی میں آپ سے سخت ناراض ہوں جب ڈاکٹر نے آپ کو پرہیز کا کہا ہے تو آپ کیوں سریس نہیں لیتی ڈاکٹر کی ہدایت کو ہاں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کو دیکھتے ہوئےخفگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں تو بہت اختیاط کرتی ہوں اماں کی لیکن پتا نہیں کیسے آج یہ خود کچن میں چلی گئی اور فریج سے مٹھائی نکال کر کھا لی۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے ہرمان کو اور اسد کو اپنی صفائی پیش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے بڑی بہو تیرا بس چلے تو توں تو مجھے سانس بھی نا لینے دے ۔۔۔۔۔۔۔پتا نہیں کب مر جانا ہے اب زندگی کے گنے چنے دن ہی تو رہ گیے ہیں۔۔۔اپنی پسند کی چیز بھی نا کھاوں۔۔۔ اور ڈاکٹروں کا کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔اپنی جیب بڑھنے کے لیے جھوٹ سچ کہہ دیتے ہیں۔۔۔۔اور توں ہر وہ چیز جو میں شوق سے کھاتی ہوں اس پر پابندی لگادیتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے ناہید کو اچھی خاصی سنائی ۔۔۔۔۔۔ناہید جواباً شکایتی نظروں سے اسد کو دیکھ کر ری گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”دادی میں کچھ نہیں جانتا آپ کو اب اختیاط کرنی ہوگئی ورنہ میں آپ سے پکے والا ناراض ہو جاوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ان کا ماتھا چومتے ہوئے خفگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے میرے بچے کچھ نہیں ہوتا مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب تک میں تیرے بچے نا کھیلا لوں۔۔۔۔۔دادی نے بھی جواباً اس کا ماتھا چوماں ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی پوتے کی محبت سے سبھی لطف اندوز ہورہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پنار تو دادی کی آخری بات پر شرمندگی سے صرف سر ہی جھکا کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔
دادی آپ بس دعا کیا کریں کہ آپ جلد ہی آپنے پرپوتوں کا منہ دیکھے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھ کر معنی خیز انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے یہاں سے اٹھ جانا ہی بہتر سمجھا اس بے شرم انسان کیا بھروسہ کوئی اور ہی بات نا کردے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ دادی میں تھوڑی دیر میں آتی ہوں ۔۔۔۔میں زرا فریش ہو لوں۔۔۔۔۔۔پنار نے جلدی سے کہہ کر باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے شرما گئی بچی دادی نے اسد کو اور ہرمان کو کہا جو دادی کی بات پر مسکرائے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے فل وولیم میں سونگ سن رہی تھی جب ۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ اس کا فون پکڑے روم میں داخل ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔یہ پکڑو اپنا فون کب سے بج رہا ہے باہر لاونج میں۔۔۔۔۔اور ٹیلی ویژن کی بھی جان چھوڑ بھی دیا کرو کبھی نا کام کی نا کاج کی دشمن اناج کی۔۔۔۔۔ہائمہ پتا نہیں کس کا غصہ اس پر نکال کر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ژالے منہ کھولے اس کی پشت کو گھور کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ایک بار پھر سے وہ بجتے فون کی طرف متوجہ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور یس کابٹن دبا کر فون کان سےلگایاے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہیلو کون ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور کیوں بار بار فون کر رہے ہو یا کر رہی ہو ۔۔۔۔۔۔ژالے نے ان نون نمبر دیکھتے ہوئے پھار کھانے والے انداز میں ہائمہ کا غصہ اس پر نکالا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔افففف ژالے کبھی تو نارمل لوگوں کی طرح بیہیو کر لیا کرو ۔۔۔۔۔.۔۔۔۔۔۔عمر نے ایک تو اس کے اتنے لیٹ فون اٹھانے پر اور پھر بنا بولے جانے پر چوٹ کی۔۔۔۔۔۔۔۔. ۔۔۔ژالے فون میں سے مردانہ آواز آنے پر اور پھر اپنا نام لیجانے پر چونکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کون ہو تم اور میرا نام اور فون نمبر کہاں سے لیا۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے کو جانتے نہیں تم، تمہاری تو میں ایک ایک بوٹی کو نمک مرچ لگا کر چیل کووں کو کھلا دوں گئی ۔۔۔۔گھر میں ماں بہن نہیں کیا جو دوسروں کی بیٹیوں کو تنگ کرتے ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے ایک بار شروع ہو جائے تو پھر کون اسے چپ کروائے۔۔۔۔۔۔۔عمر بیچارہ اپنا سر پیٹ کر رہ گیا اس نے اتنی مشکل سے تو ہرمان کے موبائیل سے اس کا نمبر چڑایا تھا۔۔۔۔لکین یہ ژالے بی بی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے بس کرو میں ہوں عمر ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر کے ایک دم بولنے پر وہ چونکی اور پھر گھور کر فون کو دیکھا جیسے وہ عمر ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم تمہاری ہمت کیسے ہوئی مجھے فون کرنے کی ابھی بھائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے پلیز یار ۔۔۔۔۔کبھی تو دوسری لڑکیوں کی طرح بیہیو کر لیا کر ۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کے نون سٹوپ بولنے پر زچ ہو کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو نارمل لڑکیوں کو ہی فون کر لینا تھا مجھے کرنے کی کیا ضرورت تھی۔۔۔۔۔۔ژالے نے دوسری لڑکیوں کے نام لینے پر تپ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے تم جیلس ہو رہی ہو ۔۔۔۔۔عمر نے ہلکی سی مسکان سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے جیلس ہوتی ہے میری جوتی ۔۔۔۔۔۔ژالے نے منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کونسی جوتی ہیل والی ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے بیڈ پر نیم دراز ہوتے ہوئے ژالے کو چڑایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر تم چپ نا ہوئے تو میں فون بند کر دوں گئی ۔۔۔۔اور تم نے میرا فون نمبر کہاں سے لیا ہے ہاں۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے آئی بروز اٹھاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس ڈھونڈ لیا تم چھوڑو یہ سب باتیں ۔۔۔۔۔کیا تم کل کالج جاوگی ۔۔۔۔۔عمر نے فون نمبر والی بات اگنور کرتے ہوئے اسے سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم کیوں پوچھ رہے اور تم مجھے ایسی ویسی لڑکی مت سمجھنا۔۔۔۔۔۔۔تم مجھے ابھی جانتے نہیں ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے چپس منہ میں رکھتے ہوئے کہا
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان تھوڑی بعد کمرے میں آیا ۔۔۔۔۔۔پنار واش روم میں تھی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کی اچانک نظر پنار کے بیگ سے جھانکتی واچ پر پڑی جو اس نے پنار کو دی تھی ۔۔۔۔۔۔اس نے پورا دن یہ واچ ًھونڈنے میں لگا دیا تھا۔۔۔۔۔اور پھر جا کر اسے یہ واچ پنار کے لیے پسند آئی تھی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے واچ کو بیگ سے باہر نکالا اور ہاتھ کی ہتھیلی پر رکھ کر دیکھنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تب ہی پنار واش روم سے ٹاول سے منہ کو خوشک کرتی باہر نکلی اور ہرمان کی طرف متوجہ ہوئی جو اب اس کی طرف ہی دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔آپ نے یہ واچ کو پہنا نہیں یا آپ کو رمیز کی دی ہوئی واچ زیادہ پسند تھی جو آپ نے اسے پہننا پسند نہیں کیا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے پاس آکر سنجیدگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں نہیں چاہئے مجھے تمہاری یہ واچ جاو جسے مرضی دے دو۔ لیکن میں نہیں پہنوں گئی یہ، پنار نے سنجیدگی سے کہتے ہوئے مرر کے سامنے رکی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے کندھے سے تھام کر اس کا رح اپنی طرف کیا۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کو اگر نہیں پسند تو اسے اس کھڑکی سے باہر پھینک دیں یا توڑ دیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اگر آپ اسے نہیں پہنے گئی تو کسی اور کی کلائی پر بھی یہ نہیں سج سکتی ۔۔۔۔۔۔۔آپ کا گفت ہے آپ چاہئے اسے پھینکے یا رکھیں یور چوائس ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا ہاتھ پکڑ کر سیدھا کیا اور ہتھیلی پر واچ رکھ کر الٹے قدم پیچھے ہوا ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر باہر چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے اس کی سنجیدگی نوٹ کی۔۔۔۔۔اور واچ کو ہٹھیلی میں بھینچ کر جھنجلا کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان نیچے آیا، اور پھر خیرت سے مرام کو موم کے ساتھ دادی کے کمرے کی طرف جاتا دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپی ۔۔۔۔ہرمان نے سیڑیوں سے ہی اسے آواز لگائی اور بھا گ کر مرام کی طرف آیا۔۔۔۔۔۔۔۔اور اس اپنے ساتھ لگایا ۔۔۔۔۔۔۔۔کیسی ہیں آپ ۔۔۔ احمد اور ہادی بھائی کہاں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے خود سے الگ کرتے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔اور احمد عذوبہ کے پاس ہے ۔۔۔۔۔اور ہادی آوٹ اف کنٹری ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرام نے سنجیدگی سے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں پہلے دادی سے مل لوں پھر تم سے پوچھتی ہوں اچھی طرح ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”مرام اسے کہہ کر دادی کے کمرے کی طرف چلی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسے کل ہی ناہید نے ہرمان کی شادی کا بتایا تھا جس سن کر وہ کتنے لمہوں تک ساکت رہ گئی تھی۔۔۔۔اور پھر دادی کی طبیعت کا سن کر وہ دوڑی چلی آئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ہرمان سے سخت ناراض تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے مرام کے جانے کے بعد لاپرواہی سے کندھے اچکائے اور پھر احمد کی تلاش میں باہر لان میں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
میں جانتا ہوں ژالے تمہیں اچھی طرح اسی لیے تو تم پر دل ہار گیا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔عمر کے اس طرح بولنے پر ژالے کا چلتا منہ بند ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے دل کے مقام پر ہاتھ رکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے ایک منٹ تک چپ رہی پھر بولی ۔۔۔۔۔تم کہی میرے ساتھ فلرٹ وغیرہ تو نہیں کرنے کی کوشش کر رہی ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے منہ میں انگلی ڈالتے ہوئے ناخن کترتے ہوئے سنجیدگی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔” تمہیں لگتا ہے میں تمہارے ساتھ فلرٹ کر سکتا ہوں؟۔۔۔۔۔۔۔۔اب تو میں نے سوچ لیا یے میں پڑھائی کو سیریس لوں گا۔۔۔۔اور پھر ڈیڈ کا بزنس سنبھالوں گا اور پھر تمہارے گھر رشتہ بھیجوں گا۔۔۔۔۔۔تاکہ تمہارے گھر والے انکار نہ کر سکیں عمر نے سنجیدگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”
ژالے نے جلدی سے فون بند کر دیا کیونکہ ہائمہ اس کے کمرے میں
اینٹر یو رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے دھڑکتے دل کے ساتھ اس کی طرف متوجہ ہوئی”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁

کیا ضروت تھی تمہیں اتنی جلدی شادی کی وہ بھی اپنے سے بڑی عمر کی لڑکی سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرام نے ہرمان کی کلاس لگائی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے شکایتی نظروں سے موم کو دیکھا جنہوں نے مرام کو ساری بات بتائی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہم تمہاری شادی شیزہ سے کرتے اتنی خوبصورت ہے پورے خاندان میں اس جیسی لڑکی نہیں ،اور اوپر سے تمہاری ہم ایج ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک منٹ آپی آپ کو کس نے حق دیا کہ آپ میری وائف کو تنقید کریں وہ اگر مجھے سے بڑی بھی ہیں I don’t care ۔۔۔۔یہ میری لائف ہے میں جسے چاہے اپنی لائف میں شامل کروں It’s not your issue ……ہرمان نے سنجیدگی سے مرام کو ٹوکا۔۔۔۔۔ اگر آج وہ چپ رہتا تو یہ لوگ ہمیشہ اس کی بیوی کو تنقید کا نشانہ بناتے جو اسے ہرگز منظور نہیں تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ہے تمہارا ہاں ۔۔۔تم ہمارے اکلوتے بھائی ہو ہم تمہاری شادی دھوم دھام سے کرنا چاہتے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نا کہ ایسے مرام بھی اسی کی بہن تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو آپ لوگ اب بھی میری شادی دھوم دھام سے کر سکتے ہیں مجھے کوئی اعتراض نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے صوفے سے ٹیک لگاتے ریلکس انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دیکھو ہرمان تم۔۔۔۔۔۔۔۔ السلام عليكم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرام جو کچھ اور اس سے کہنے والی تھی پنار کے اسلام پر اس کی طرف متوجہ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہال میں اینٹر ہوتے مرام سے کہا۔۔۔۔۔۔۔جس کا جواب مرام نے سر ہلا کر دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کے بیہیو پر تھوڑی کنفیوژ ہوئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آجائیں آپ یہاں ۔۔۔۔۔ہرمان نے کھڑے ہو کر اسے اپنے ساتھ صوفے پر بیٹھنے کو کہا ۔۔۔۔۔پنار پر اعتماد چال چلتی ہرمان کے ساتھ آبیٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مرام اور ناہید نے اس کا کھڑے ہونا شدت سے محسوس کیا اور ایک دوسرے کو آنکھوں ہی آنکھوں میں اشارہ کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے انہیں اشارہ کرتے دیکھ لیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف آپی یہ آپ کا بیٹا بہت تنگ کرتا ہے سنبھالیں اسے. ۔۔۔۔۔عذوبہ نے احمد مرام کو پکراتے ہوئے کہا اور دھرام سے صوفہ پر گری ۔۔۔۔۔آہستہ سے موٹی صوفہ توڑو گئی کیا ۔۔۔۔۔ہرمان نے احمد کو مرام سے پکڑتے ہوئے اس کے صخت مند جسم پر اسے چڑایا۔۔۔۔۔۔۔۔آپ خود ہوں گئے موٹے ہوں۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے منہ بسورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے احمد کو پنار کی گود میں بٹھیا ۔۔۔۔۔۔۔جاو احمد آپ کی مامی ہیں یہ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے احمد کے اوپر جھوکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔”پنار نے اسے گھور کر احمد کا رخ اپنی طرف کیا۔۔۔۔۔۔۔۔اور مسکراتے ہوئے اس کی گال کو چوماں۔۔۔۔۔۔بڑے خوش نصیب ہو تم ۔۔۔۔۔ورنہ ہیماری ایسی قسمت کہاں۔۔۔۔۔۔ہرمان نے آہستہ سی آواز میں پنار کو سنایا۔۔۔۔۔۔۔۔”

پنار نے ہرمان کی بات پر اس کی طرف دیکھا ۔۔۔۔۔اور سرخ ہوتے چہرے سے اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جواباً اسے آنکھ مار کر چڑایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف کیا کروں میں اس بے شرم انسان کا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار صرف سر ہلا کر سوچ کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔اور احمد کی طرف متوجہ ہوئی جو اسے مسکرا کر دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کیا بد تمیزی کر رہے تھے تم نیچے ہال میں ہاں شرم تو تم میں نام کی نہیں بے شرم انسان۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کمرہ درست کرتے ہوئے کمرے میں آتے ہرمان کو دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر اس کا سرخ چہرہ دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔اور اس کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کمرے میں تو کوئی اعترراض نہیں ہو گا نا آپ کو میری بے شرمی پر ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے سامنے آتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے اگنور کرنا ہی بہتر سمجھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور اس کے پاس سے گزرنا چاہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب ہرمان نے اس کے بازو کو کھینچا اور اسے اپنے سامنے کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بوکھلا کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بھی اپنی نشیلی آنکھیں اس کی سیاہ آنکھوں میں گاڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرت سے اسکی خوبصورت آنکھوں کو دیکھا اور اسکی آنکھوں سے آنکھیں چڑاتے ہوئے اس کا ہاتھ اپنے بازو سے ہٹایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار آپ میری ایک بات مانے گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دوبارہ اس کا رخ اپنے طرف کرتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے زچ ہو کر اس کی طرف سوالیہ نظروں سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔باہر چلیں ۔۔آئس کریم کھانے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چہرےپر معصومیت سجاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نہیں مجھے کوئی شوق نہیں رات کے ساڑھے دس بجے لُوڑ لُوڑ پھرنے کا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی ٹکا کے جواب دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پانچ منٹ ہیں آپ کے پاس میں باہر گارڈن میں آپ کا انتظار کر رہا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔ اور اگر آپ نا آئی تو میں آپ کو اپنے بازو میں آٹھا کر لیکر جاوں گا پھر مجھ سے کوئی شکایت مت کرئیے گا ۔۔۔۔۔آئی پرومس یو۔۔۔۔۔پنار کو بولنے کے لیے منہ کھولتا دیکھ کر وہ باہر چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔اففف کیا کروں میں اس ڈیٹھ انسان کا ۔۔۔۔۔۔پنار نے زور سے تکیہ نیچے پھینکا ۔۔۔۔۔۔اور بیڈ پر بیٹھ کر سر ہاتھوں میں گرایا۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کہاں جارہے ہو تم اتنی رات کو ہاں ۔۔۔۔۔۔مرام جو کچن میں احمد کا فیڈر لینے آئی تھی ہرمان کو کیز اُٹھاتے دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہی پر جہاں پر آپ اور ہادی بھائی اس ٹائم جاتے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر آگے بڑھا۔۔۔۔کیا مطلب ۔۔۔مرام نے الجھ کر پوچھا ۔۔۔۔۔مطلب میں آپ کو آکر سمجھاوں گا ۔۔۔اوکے ۔۔۔۔۔۔بائے۔۔۔۔۔ہرمان ہاتھ ہلاتا ہوا باہر چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے مرام اسے کوس کر رہ گئی اس کے گول مول سے جواب پر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پتا نہیں کب سدھرے گا یہ لڑکا بڑبڑاتی ہوئی وہ کمرے میں چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان کو پنار کا انتظار کرتے ہوئے دس منٹ ہو گے تھے ۔۔۔۔اب وہ اکتا کر اندر جانے ہی والا تھا جب پنار راہ داری سے آتی ہوئی دیکھائی دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان اسے دیکھ کر اپنی جگہ پر جم کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس وقت فل بلیک سوٹ میں ملبوس تھی ۔۔۔۔۔چوڑی پجامہ اوپر لمبی کمیز اس کے دراز قد پر کافی اُٹھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے توصیفی نظروں سے اسے سراہا۔۔۔۔۔۔پنار سنجیدگی سے اس کے پاس آ کر رکی۔۔۔۔۔اگر میرا جائزہ لے لیا ہو تو چلیں ۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔جس نے ہلکی سی مسکان سے سر جھکایا۔۔۔۔۔گاڑی کہاں ہے ۔۔۔۔۔پنار نے گاڑی کی تلاش میں نظریں دڑاتے یوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہم گاڑی میں نہیں بائیک پر جائیں گے ۔۔۔۔ہرمان نے بائیک کی کیز اوپر اچھالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا بائیک میں؟ ہرگز نہیں میں کبھی بھی بائیک پر نہیں بیٹھوں گئی نیور ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سینے پر ہاتھ باندھتے ہوئے ضدی سے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔لیکن آج آپ بائیک پر ہی بیٹھیں گئی اور آئی ایم شیور کہ آپ بہت انجوائے کریں گئی ۔۔۔۔۔۔آپ جانتی ہیں دیر ہو رہی ہے اور آپ اوپر سے اور دیر کر رہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بائیک سٹارٹ کرتے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔افففف ہرمان تم کیوں اتنے ڈیٹھ ہو ۔۔۔۔۔پنار نے زچ ہو کر کہا ۔۔۔اور اس کے پیچھے بیٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے میں آپ کا شوہر ہوں کوئی غیر نہیں آپ مجھے کس کر پکڑ سکتی ہیں نیور مائنڈ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو ہینڈل پکڑ کر بیٹھے دیکھ کر میٹھا سا طنز کیا۔۔۔۔۔۔ہاں زبردستی کا ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی طنزیا کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بائیک سٹارٹ کی جس سے پنار کی چیخ نکل گئی ۔۔۔۔۔۔۔آہستہ چلاو یہ بائیک ہے کوئی ہیلی کپٹر نہیں ۔۔۔۔پنار نے اس کے کندھے کو زور سے پکڑتے چلا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔آئی نو ۔۔۔۔لیکن یہ میری بائیک ہے ہرمان کی ہی سٹینڈر پر چلے گئی۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بھی چلا کر کہا اور اس کا ہاتھ اپنے کندھے سے ہٹا کر اپنے سینے پر رکھا۔ ۔۔۔ بلکہ حقیقتً اسے تپایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار جواباً اس کی پشت کو گھور کر رہ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بائیک آئس کریم پارلر کے سامنے کھڑی کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آئیں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے آگے ہاتھ کر کے اسے اترنے کا کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی بنا چوں چراں کیے اس کے ہاتھ پر یاتھ رکھ دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس تبدیلی کو مسکرا کر دیکھا ۔۔۔۔۔۔اور اسی طرح اس کا ہاتھ تھامے اندر لے گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہال میں بیٹھے بہت سے لوگوں نے اس خوبصورت لڑکے کو دیکھا تھا ۔۔۔جو اپنی بیوی کا ہاتھ پکڑے اسے کارنر والی ٹیبل پر بٹھا رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسے بٹھانے کے بعد ہرمان اس کے سامنے بیٹھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کونسا فلیور آپ کے لیے آرڈر کروں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنے پاس ویٹر کو بلاتے ہوئے پنار سے پوچھا۔۔۔۔۔۔ہممم ۔۔۔۔پنار نے کچھ سوچا ۔۔۔۔ہاں ونیلا فلیور۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ادھر ادھر بیٹھے لوگوں پر ایک نظر ڈال کر اسے کہا۔۔۔۔۔۔اوکے دو ونیلا فلیور۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ویٹر کو آرڈر دیا۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔کیونکہ وہ جانتی تھی اسے یہ فلیور سخت نا پسند تھا ،ایک بار ژالے نے اسے ونیلا آئس کریم پیش کی تھی جب اس نے ناک منہ چڑہا کر کہا تھا کہ اسے یہ فلیور سخت ناپسند ہے لیکن اب وہ وہی فلیور آرڈر کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہیں تو یہ فلیور پسند نہیں پھر کیوں آرڈر کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرانی سے اسے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان جواباً مسکرایا۔۔۔۔۔۔جو چیز آپ کو پسند ہو وہ مجھے ناپسند کیسے ہو سکتی ہے ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے آئی بروز اچکاتے ہوئے ہوچھا۔۔۔۔اور ویٹر سے آئس کریم لے کر پنار کے آگے رکھی ۔۔۔۔۔جس نے ایک نظر اسے دیکھ کر اپنی آئس کریم شروع کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چمچ میں آئس کریم بڑھ کر پنار کے ہونٹوں کے قریب کی۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ایک نظر ہال میں بیٹھے لوگوں پر ڈالی ۔۔۔اور پھر ایک نظر ہرمان پر ڈال کر اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔میرے ہاتھ سلامت ہیں میں خود بھی کھاسکتی ہوں ۔۔۔۔۔پنار نے اپنے چمچ میں آئس کریم بڑھ کر منہ میں ڈالنا چاہی لیکن۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے چمچ والا ہاتھ پکڑا اور اپنے منہ میں ڈال لیا ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے اپنے خالی چمچ کو دیکھا اور پھر اسے گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔شرم کرو کچھ کتنے لوگوں نے تمہاری یہ خرکت دیکھی ہو گئی پنار نے اسے گھور کر کہا اور اس کی توجہ اپنے طرف دیکھتے لوگوں کی طرف لگائی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آئی ڈونٹ کیر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے کسی کی کوئی پروا نہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرما نے ہنوز چمچ اس کے آگے بڑھاے کہا۔۔۔۔۔۔پنار نے اس ڈیٹھ انسان کو گھورا اور نا چاہتے ہوئے بھی اپنا منہ کھولہ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان سے اسے آئس کریم کھلائی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار سو رہی تھی جب اسے کسی کی سانسیں اپنے چہرے کے قریب محسوس ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے آنکھیں کھول کر دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔اور اپنے بلکل قریب چہرہ کیے ہرمان کو دیکھ کر چونک گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پنار کے بلکل قریب ہو کر سو رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یا اللہ یہ انسان کس ڈیٹھ مٹی سے بنا ہے ۔۔۔۔۔۔رات کو میں نے اس کتنا وارن کیا تھا کہ وہ آج بیڈ پر آیا تو اس کی خیر نہیں ہو گئی ۔۔۔۔۔جواباً ہرمان نے زچ کرتی مسکان سے فرمابرداری سے سر ہلایا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور حب پنار کے سو نے کا یقین ہو گیا تو وہ اس کے قریب ہو کر لیٹ گیا تھا ۔۔۔۔اور کافی دیر تک اسے دیکھتا رہا تھا اور پھر مسکرا کر پنار کا ہاتھ اپنے ہونٹوں پر رکھ کر سو گیا تھا وہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے اسے دیکھا جو اب نیند میں اپنی ٹانگ پنار کے اوپر رکھ چکا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے اس کی ٹانگ ہٹائی لیکن۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اب کی دفعہ ٹانگ اس کے پیٹ پر رکھ دی ۔۔۔۔۔۔ یا اللہ مجھے صبر دے ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے زچ ہو کر اور اس کی ٹانگ کو زور سے پیچھے کیا اور اُٹھ کر بیٹھ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جانتی تھی کہ اسے باز پرس کرنے کا کوئی فائدہ نہیں وہ کونسا کسی کی سنتا تھا ۔۔۔۔کرنی ہمیشہ اس نے اپنی ہی ہوتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جھنجلا کر اپنے کپڑے پکڑے اور واشروم میں چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور تھوڑی دیر بعد وہ فریش ہو کر نکلی اور ایک نظر اسے دیکھا جو اب بیڈ کے بلکل کنارے پر تھا اور وہی ٹانگ اب نیچے لٹک رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سر نفی میں ہلایا اور اس کی ٹانگ کو دونوں ہاتھوں سے تھام کر بیڈ کے اوپر کیا ۔۔۔۔۔اور ایک نظر اسے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔جو سوتے میں بھی معصوم نہیں بلکہ شیطان ہی لگ رہا تھا ۔۔۔۔۔۔جیسے وہ پنار کو جان بوجھ کر تنگ کر رہا ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اسے ایک نظر دیکھ کر باہر چلی گئی.۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ہرمان نے پٹ سے اپنی آنکھیں کھولی اور مسکرا کر اس کی پشت کو دیکھا اور پھر کروٹ کے بل لیٹ کر اپنی آنکھیں موند گیا
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار نیچے کچن میں آئی۔۔۔۔۔۔۔ اور دادی کے لیے بنا چینی کی چائے بنائی ۔۔۔۔اور اپنے لیے چینی والی چائے بنا کر دادی کے کمرے کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔اسے صبح صبح چائے پینے کی عادت تھی۔۔۔۔۔۔اس وقت سب گھر والے سو رہے تھے لیکن وہ جانتی تھی دادی ضرور جاگ رہی ہوں گئی اس ٹائم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی میں آجاوں ۔۔۔۔۔۔پنار نے دروازہ کھول کر اندر جھانکتے ہوئے کہا۔۔۔ ۔۔۔۔۔ارے میری بچی آجاو اس میں اجازت لینے والی کونسی بات ہے جب چاہے آو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے اسے کے سر ہاتھ رکھ کر محبت سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکرا کر چائے کا کپ دادی کو پکرڑایا اور اپنا کپ پکڑ کر دادی کے ساتھ ان کے بیڈ پر بیٹھ گئی۔۔۔۔۔۔۔دادی نے ادھر ادھر کی باتوں کے بعد اب محبت سے ہرمان کا زکر شروع کر دیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔دادی مسکرا کر بچپن سے لے کر جیوانی تک کی اس کی شرارتیں بتا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار بظاہر تو مسکرا کر سن رہی تھی لیکن دل میں ہرمان کو کوس رہی رہی تھی کہ جہاں جاو یہ اپنے کے وہی پہنچ جاتا کبھی خود تو کبھی زکر ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اسے نہیں پتا تھا وہ زکر کے ساتھ جناب خود بھی پنار کو ڈھونڈتے ہوئے دادی کے کمرے میں پہنچ گے تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ یہی ہیں ۔۔۔۔۔۔میں جانتا تھا آپ یہاں پر ہی ہوں گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو کہہ کر دادی کی گود میں سر رکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار اس دیکھ کر رہ گئی اور کر بھی کیا سکتی تھی بیچاری گھورنے کے ۔۔۔دنیا کے سب سے ڈیٹھ انسان سے اس کا پالہ پڑا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں تمہیں مجھ سے کوئی کام تھا۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے پو چھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے وہ اور شوہر ہوتے ہوں گے جنہیں بیویاں صرف کام کے وقت ہی یاد آتی ہیں ۔۔۔۔۔مجھے تو آپ ہر گھڑی اپنی نظروں کے سامنے چاہئیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے محبت سے چوڑ لہجے میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔دادی نے محبت سے اس کا ماتھا چوماں ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی جسے کہا ہے اصولً تو اسے میرا ماتھا چومنا چاہئے تھا ۔۔۔۔۔۔۔کیوں دادی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار گھبرا کر بیڈ سے اٹھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ارے چل بے شرم کہی کے ۔۔۔۔۔۔کچھ تو لحاظ کر دادی کے پاس بیٹھا توں ۔ ۔۔۔۔۔۔۔دادی نے اس کے سر پر چپٹ مارتے ہوئے اسے لتارا ۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی وہ کونسا میرے کہنے پر میرا ماتھا چوم لیں گئی ضد کی پکی ہیں وہ ۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو آنکھ مارتے ہوئے شریر لہجے میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔جس کا چہرہ شرم+ غصے سے سرخ ہو گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی مجھے کچھ کام یاد آگیا ہے میں آتی ہوں تھوڑی دیر میں ۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار جلدی سے کہہ کر کمرے سے بھاگ گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شرم کر تیری وجہ سے اٹھ کر چلی گئی ہے بچی ۔۔۔۔۔۔۔سدھر جا اب خیر سے بیوی والا ہوگیا ہے تو۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے اس کے کندھے پر ہاتھ مارتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے دادی آپ کی بہو کہاں مجھے تنگ کرنے دیتی ہے زرا زرا سی بات پر تو وہ ڈانٹ کر رکھ دیتی ہیں ۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی سے پنار کی شکایت لگائی اور مسکراتے ہوئے آنکھیں موند کر پنار کے رئیکشن کو سوچنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار باہر گارڈن میں ٹہلتے ہوئے ۔۔۔۔۔۔ساتھ ساتھ ہرمان کو اس کی بے شرمی پر کوس رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔افففف یہ انسان کسی دن مجھے پاگل کر کے چھوڑے گا ۔ ۔۔۔۔۔پنار نے چیئر پر بیٹھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” گڈ مارننگ بھابھی۔ ۔۔۔۔۔۔عذوبہ احمد کو اٹھائے اس کے پاس آتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔ارے گڈ مارننگ آج تم جلدی اٹھ گئی۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے مسکراتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں تو سو رہی تھی لیکن آپی نے مجھے جگا دیا اور احمد کو پکڑا کر خود نیند پوری کرنے چلی گئی۔ ۔۔۔۔۔۔میں رات کو بھی لیٹ سوئی تھی اسائمنٹ کی وجہ سے لیکن آپی کو کون سمجھائے۔ ۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے منہ بسورتے ہوئے اسے ساری بات تفصیل سے بتائی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا ایسا کرو احمد مجھے دو اور تم جا کر سو جاو ۔۔۔۔۔۔پنار نے احمد کی طرف ہاتھ بڑھاتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن بھابھی یہ آپ کو تنگ کرے گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی تنگ نہیں کرے گا ۔۔۔۔۔۔اور اگر کرے گا بھی تو میں مینج کر لوں گی یو ڈونٹ وری۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے احمد کو گود میں بٹھاتے ہوئے اس سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھینکس بھابھی۔ ۔۔۔۔اور اگر یہ آپ کو زیادہ تنگ کرے تو آپ مجھے جگا لیجئے گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھیک ہے پنار نے اسے کہہ کر احمد کو دیکھا۔ ۔۔۔جو اب اپنے رونے کی پوری تیاری کر رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔رونا نہیں اچھا، احمد تو پیارا بچہ ہے ۔ ۔۔۔۔۔۔۔میں آپ کو فیڈ بنا کر دیتی ہوں ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اسے لیکر کچن میں آئی اسے چیئر پر بٹھایا اور دودھ کو فریج سے نکالا اور اوون میں گرم کرنے رکھا اور خود احمد کی طرف آئی ۔۔۔۔۔۔۔اور اسے ہاتھوں میں اٹھا کر اوپر اچھالا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کو ایسے دیکھ کر مجھے نا کچھ اور ہی فیلنگ آرہی ہے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کچن میں اینٹر ہوتے ہوئے پنار کو احمد میں مصروف دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہیں جو بھی فیلنگ آرہی ہے انہیں اپنے تک ہی محدور رکھو تمہارے لیے یہی بہتر ہو گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے تھوڑی دیر پہلے والا غصہ نکالا ۔۔۔۔۔۔۔اور دودھ کو باٹل میں ڈال کر احمد کو اٹھایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف اتنا غصہ مجھ معصوم پر کیوں ہاں ہرمان نے اس کا راستہ روکتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہٹو راستے سے بے شرم انسان دادی کے سامنے کیا کہہ ریے تھے تم ہاں۔۔۔۔۔۔۔۔شرم تو نہیں آتی ہو گی تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھور کر غصے سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا۔ ۔۔۔۔۔۔بلکل بھی نہیں آتی قسم سے ۔۔۔۔۔ہرمان نے قہقہ لگا کر اس کی طرف جھکتے ہوئے معنی خیزی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے دھکا مارا اور افسوس سے سر ہلاتی باہر نکل گئی۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر اپنے پاکٹ میں ہاتھ گھسانا اور چینج کرنے اپنے روم کی طرف بڑھ گیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: