Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 26

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 26

–**–**–

پنار کمرے میں فریش ہونے آئیں، لیکن کمرے کی حالت دیکھ کر وہ چکرا کر رہ گی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان خود مرر کے سامنے بنا شرٹ کے کھڑا بال خوشک کر رہا تھا۔۔۔۔۔اور ساری شرٹ کبڈ سے نکل کر فرش کی زینت بنی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان یہ کیا طریقہ ہے ہاں کیوں ساری شرٹ باہر پھینکی ہوئی ہیں تم نے۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کمر پر ہاتھ رکھ کر لڑاکا انداز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیا مطلب اب میں پہنے کے لیے شرٹ بھی نا چوز کروں ہمم۔ ۔۔۔ہرمان نے معصومیت سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نوری کر دیتی ہے تھوڑی دیر میں آپ کو کرنے کی ضرورت نہیں ہرمان نے اسے افسوس سے استری شدہ شرٹ دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم سے کس نے کہا یہ سب میں کروں گئی ہاں۔۔۔۔پنار نے تیکھے انداز میں اس سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پلٹ کر خیرانی سے اپنی لڑاکا بیوی کو دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔یہ سارا کمرہ تم خود ٹھیک کرو گے سمجھے تم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے انگلی سے کپڑوں کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”واٹ میں اور کمرہ صاف ۔۔۔۔۔ہاہاہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ایسا تو آپ کے خواب میں بھی نہیں ہو گا ۔۔۔۔ہاں لیکن ایک شرط پر ہو سکتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے سامنے آکر تجسس سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔کیسی شرط پنار نے بھںویں اچکاتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہوں شرط یہ ہے کہ۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کے ارد گرد گھومتے ہوئے کہا اور پھر اس کے سامنے آیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے گھورا یہ تم شرٹ پہن کر تیار نہیں ہو سکتے ، اپنی باڈی کی نمائش کرنا ضروری ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس سے نظریں چڑاتے ہوئے اسے لتاڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ پہنا دیں ہرمان نے صوفے سے شرٹ پکڑ کر اس کی طرف بڑھائی۔ ۔۔۔۔۔۔ ۔ ۔ میں کیوں پہناوں تم خود پہنو ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے زبردست گھوری سے نوازتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اور اپنی شرط بتاو ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس سے تجسس سے شرط کے بارے میں پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان مسکرایا ۔۔۔۔۔آپ ناراض تو نہیں ہوں گئی۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے معصومیت سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔یہ تو بات پر ڈیپینڈ کرتا ہے کہ میں ناراض ہوں گئی یا نہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے میں اپنے کپڑے دوبارہ کبڈ میں رکھ دوں گا ۔۔۔۔۔۔۔لیکن اس کے لیے آپ کو مجھے پہلے یہاں کِس کرنی ہو گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنے گال کی طرف اشارہ کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیاااااا۔۔۔۔۔۔بے شرم انسان مت کرو میں خود کر لوں گئی ۔۔۔۔۔۔پنار کہتے ہوئے سرخ چہرے سے باہر کی طرف بڑھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے شرط اتنی بری بھی نہیں تھی، جو آپ نے کمرے سے باہر کی ہی طرف دوڑ لگادی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے پیچھے سے اسے چھیڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار سنی ان سنی کرتے ہوئے سرخ چہرے سے باہر کی طرف چلی گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
منیبہ آپ ایسا کریں آج ہرمان اور پنار بلکہ سب کو رات کے کھانے پر انوائٹ کر لیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے تو شزہ سے ڈر لگتا ہے جب وہ ٹوور سے واپس آئے گئی تو بہت ہنگامہ کرے گئی۔ ۔۔۔۔منیبہ نے پریشانی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔یہ تو نصیبوں کی بات ہے سمجھ جائے گئی وہ بھی آہستہ آہستہ ۔۔۔۔۔۔۔احد نے اخبار تہہ کر کے رکھتے منیبہ کو سمجھایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”ہوں ٹھیک کہتے ہیں آپ میں ایسے ہی اس لڑکی سے خار کھا رہی تھی ۔۔۔۔۔خلانکہ اس میں اُس کی کوئی غلطی نہیں تھی لیکن پھر بھہ میں اس دن اسے سے مس بیہیو کر گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔منیبہ نے پشیمانی سے کہا” ہوں کوئی بات نہیں ،آپ اب ازالہ کر دیجیے گا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ٹھیک ہے میں پھر فون کر دیتی ہوں انہیں رات کے کھانے پر انوائٹ کرنے کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔منیبہ نے چیئر سے اٹھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔احد نے سر ہلایا اور نیوز کی طرف متوجہ ہوئے۔ ۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کیا مسلہ ہے تم دونوں کے ساتھ ہاں ۔۔۔۔۔کیوں زبردستی لے کر آئے ہو مجھے یہاں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دونوں کو گھورتے ہوئے غصے سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔”کیا مطلب تجھے کیوں لائے ہیں یہاں ۔۔۔۔۔۔شادی کی ٹریٹ کون دے گا ہاں ۔۔۔شادی کر کے بیٹھ گئے اور ٹریٹ دینا بھول گئے ۔۔۔۔۔۔۔حارث نے جواباً اس سے زیادہ غصے میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔” تم تو بھول گئے بچو لیکن ہم نہیں بھولے ۔۔۔۔۔۔اس بار عمر نے ٹیبل پر ہاتھ مارتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے دونوں کو زبردست گھوری سے نوازا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے کرو آرڈر اور چھوڑو میری جان ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے جان چھڑانے والے انداز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔”
عمر اور حارث نے ایک دوسرے کو دیکھ کر فاتحانہ انداز میں مسکراے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عمر نے ویٹر کو بلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی سر ۔۔۔ویٹر نے آرڈر لینا چاہا ۔۔۔۔۔پہلے میں آرڈر کروں گا۔ ۔۔۔۔۔۔حارث نے کہا۔ ۔۔۔۔اور ویٹر کو اپنا آرڈر لکھوانے لگا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویٹر نے خیرانی سے دونوں کی بتائیں ہوئی ڈشز لیکھیں۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دونوں کو گھور کر دیکھا ۔۔۔۔۔تم دونوں کتنے دن سے بھوکھے ہو ۔۔۔۔ہاں ۔۔۔ہرمان نے دونوں کو گھورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔”ہاہاہا جو دل کرے گا وہ کھائیں گے جو دل نہیں کرے گا وہ نہیں کھائیں گے سمپل ۔ ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے بے نیازی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے طنزیا مسکراتے ہوئے سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔اور ادھر ادھر بیٹھے لوگوں پر ایک سرسری سی نظر دڑانے لگا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ویٹر بل پلیز ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ویٹر کو بل لانے کے لیے کہا۔ ۔۔۔۔دونوں نے ایسی کوئی ڈش نہیں چھوڑی تھی ۔۔۔۔جسے آرڈر نا کیا ہو آخر بل جو ہرمان نے دینا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”ویٹر نے بل ہرمان کی طرف بڑھایا۔ ۔۔۔۔جو بل دیکھ کر مسکرایا تھا۔۔۔۔۔۔کیا ہوا مسکرا کیوں رہے ہو بل ہے یا لطیفہ ۔۔۔۔۔۔عمر نے ساری ڈشوں سے انصاف کرتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔”نہیں بل ہی ہے ۔۔۔۔لیکن دس ہزار کا۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے ریلکس انداز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔۔ہاں تو تیرے لیے دس ہزار کونسی بڑی بات ہے پیسے نکالو اور دو اسے۔ ۔۔۔۔۔۔حارث نے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان پھر پرسراریت سے مسکرایا۔ ۔۔۔۔۔۔کتنے پیسے ہیں تم دونوں کے پاس ۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان سے دونوں سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔کیوں تم کیوں پوچھ رہے ہو ہاں ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے گھورتے ہوئے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”کیونکہ میرا وائلٹ اور کریڈیٹ کارڈ گھر رہ گیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیاااااا ۔۔۔۔۔عمر کے ہاتھ سے تو صدمے سے بریانی کا بڑھا ہوا چمچ چھوٹ گیا۔۔۔۔۔۔۔کچھ یہی حال حارث کا بھی تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”تم ہمیں پہلے نہیں بتا سکتے تھے عمر کی تو صدمے سے آواز ہی نہیں نکل رہی تھی ۔۔۔۔۔تم دونوں نے مجھے کچھ کہنے کا موقع کہاں دیا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سے مسکان سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور ایک بات آگر پیسے ہیں دونوں کے پاس تو بل پے کردو ورنہ ۔۔۔۔برتن دھو لو ۔۔۔۔۔۔چوائس یور ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چیئر سے اٹھاتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔کیا مطلب تو ہمیں ایسے چھوڑ کر جا رہا ہے کمینے انسان ۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے اٹھتے دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ظاہر ہے اب برتن دھونے میں تو دیر لگے گی میں اتنی دیر ویٹ نہیں کرسکتا تم دونوں کا ۔۔۔۔۔۔۔بیوی والا ہوں تم دونوں کی طرح چھڑا چھانڈ تو ہوں نہیں۔ ۔۔۔۔۔۔۔سو بائے جب برتن دھل جائیں تو مجھے فون کر دینا ،ورنہ مجھے ٹینشن لگی رہے گئی۔ ۔۔۔۔اوکے بائے۔۔۔۔ہرمان نے ان دونوں کے صدمے سے کھلے منہ دیکھ کر ہونٹ بھینچ کر مسکراہٹ روکی ۔۔۔۔۔۔اور گلاسز لگاتے ہوئے پینٹ کی جیب میں ہاتھ گھساتے ہوئے بے نیازی سے باہر چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے وہ دونوں اسے گالیاں نکالتے ہوئے اب اپنی اپنی جمع پونجی نکال رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کہاں تھے تم ،میں کب سے تمہیں فون کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔مرام نے اس گھر میں اینٹر ہوتے دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں خیریت ۔۔۔ہرمان نے سوالیہ نظروں سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں خیریت ہی ہے منیبہ لوگوں کے گھر آج ڈنر پر جانا تھا ۔۔۔۔۔۔اور دپہر کو تمہیں بتایا بھی تھا۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اسے دیکھتے ہوئے خفگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”سوری موم صرف پانچ منٹ میں آیا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کہہ کر جلدی جلدی سیڑیاں پھلانگنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
ہرمان کمرے میں آیا تو پنار اسے کہیی نہیں دیکھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے خیرت سے خالی کمرہ کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اور پھر پنار کی تلاش میں انہی قدموں سے باہر کی طرف پلٹا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔موم پنار کہاں ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے نیچے لاونج میں آتے ہوئے ناہید سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تمہاری دادی کے روم میں ہے۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اسے گھورتے ہوِے جواب دیا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔اور اپنے کمرے میں چینج کرنے چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔. اور تھوڑی دیر بعد وہ نک سک سے تیار سیڑیاں اتر رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔سامنے ہی لاونج میں پنار دادی اور عذوبہ کے ساتھ بیٹھی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔وہ پنار کے سامنے رکا ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے دیکھا جو اسے سنجیدہ نظروں سے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔کیا ،پنار نے سوالیہ نظروں سے اس کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے نا میں سر ہلایا اور اس کے ساتھ بیٹھ گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔چلیں دیر ہورہی ہے اسد نے صوفے سے کھڑے ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
سب کھانا کھانے کے بعد گارڈن میں بیٹھے چائے پی رہے تھے جب۔۔۔۔۔۔۔۔۔اڑتی ہوئی بال پنار کے ہاتھ سے چائے کا کپ۔۔۔۔ٹھاہ کی آواز سے گرا گیا تھا۔۔۔۔۔۔سب نے چونک کر پنار کو دیکھا ۔۔۔اور پھر اس کی نظروں کا تعاقب کرتے ہوئے وہاں دیکھا جہاں سے بال آئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان بیٹ پکڑے ہونٹ بینچے پنار کی ہی طرف بے بسی سے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا طریقہ ہے کھیلنے کا ہاں۔۔۔۔۔۔۔اسد نے چیئر سے کھڑے ہوتے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار بھی کپڑے جھاڑتی ہوئی اپنی جگی سے کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔۔۔اور ایک غصے والی نظر ہرمان پر ڈالی۔۔۔۔۔۔۔جس نے عتبہ کو گھورا تھا ۔۔۔۔۔جس نے جان بوجھ کر بال ٹھیک نہیں کروائی تھی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بیٹ نیچے پھینکا اور تیز قدموں سے پنار کی طرف آیا۔۔۔۔۔۔۔بیٹا جاو آپ ایسا کرو واش روم جا کر دھو آو نہیں تو داغ نہیں جائے گا۔۔۔۔منیبہ نے پنار کے پاس آکر پریشانی سے اس کی پرپل کمیز پر داغ دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔آئیں میں آپ کو لے جاتی ہوں ۔۔۔۔۔عذوبہ نے پنار کا ہاتھ پکڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم رہنے دو میں لے چلتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔آئیں ،پنار کا ہاتھ عذوبہ کے ہاتھ سے چھڑا کر خود پکڑا اور آگے بڑھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار بھی سب کو اپنی طرف پریشانی سے دیکھ کر بنا کچھ کہے اس کے ساتھ چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے سب نفی میں سر ہلاتے واپس اپنی جگہ پر بیٹھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اندر آکر غصے سے اسے دیکھا اور کمر پر دونوں ہاتھ ٹکا ئے ۔۔۔۔ہرمان نے پریشانی سے اسے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مسلہ ہے تمہیں اور تمہاری بال کو مجھ سے ہاں یہ ہمیشہ مجھ سے ہی کیوں ٹکراتی ہے ہاں اسے کوئی اور نظر بہیں آتا۔۔ ۔۔۔پنار نے پھاڑ کھانے والے انداز میں اس سے پوچھا۔،۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ہلکا سا مسکرایا اور زبردستی اپنا سر اس کے سر کے ساتھ جوڑا۔۔۔۔۔ہم دونوں کا مسلہ یہی ہے کہ ۔۔۔۔۔اتنے لوگوں میں بھی ہمیں صرف اور صرف آپ ہی نظر آتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکے سے اس کی ناک کو چامتے ہوئے محبت سے کہا۔۔۔۔پنار نے بے ساختگی سے اس کی طرف دیکھا اور کئی لمحوں تک دیکھے گئی۔۔۔۔۔۔جس کے خوبصورت نقوش صرف اس کے لیے ہی محبت چھلکاتے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار پہلے تو اس کی محبت کو صرف دل لگی سمجھی تھی ۔۔۔۔۔لیکن کبھی کبھی اس کی محبت دیکھ کر خیرت زدہ سی رہ جاتی تھی جیسے اب۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم باز نہیں آو گے نا اپنی خرکتوں سے ہاں پنار نے اسے آہستہ سے پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جواباً ہرمان نے کندھے اچکا کر نفی میں سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے دائیں بائیں سر ہلایا ۔۔۔۔۔اور کمیز صاف کرنے واش روم کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھہریں میں صاف کر دیتا ہوں ۔۔۔۔چائے میں نے گرائی ہے تو اصولً شرٹ بھی مجھے ہی صاف کرنی چاہئیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے سامنے آکر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی ضرورت نہیں ہے میں خود دھو لوں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔اور میرے ہاتھ بھی سلامت ہیں ۔۔۔۔۔پنار نے دونوں ہاتھ اسے دیکھاتے ہوئے کہا اور واش روم کی طرف بڑھ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتی نظروں سے اسکی پشت دیکھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے چاچی کہہ رہی ہیں آکر چائے بناو۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے ریموٹ اسکے ہاتھ سے چھینتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم بنا دو یار میں یہ ڈرامہ مس نہیں کرنا چاہتی ۔۔۔۔۔ژالے نے دوبارہ ریموٹ چھینتے ہوئے التجایا کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب میں بنا دوں ۔۔میں ابھی دوپہر کے سارے برتن دھو کر آرہی ہوں ۔۔۔۔۔اور ایک سارا دن میں تم نے دو وقت کی چائے ہی تو بنانا ہوتی ہے وہ بھی تمہیں موت پڑھتی ہے بناتے وقت۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے غصے سے دوبارہ ریموٹ چھینتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک منٹ تم نا مجھ سے زرا تمیز سے بات کیا کرو ۔۔۔رشتی بدل گیا ہے اب ہمارا ۔۔۔۔تمہاری نند ہوتی ہوں رشتے میں ۔۔۔۔۔۔ژالے نے اپنا ستواں ناک سکوڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔اچھا تو یہ بات ہے تم بھی نا اب پھر تمیز سے رہا کرو میں بھی اب رشتے میں تمہاری بھابھی کے رتبے پے فائز ہونے والی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اسے کڑارا سا جواب دے کر اس کی بولتی بند کی ۔۔۔۔۔۔۔ژالے تمہارے ابو کب سے چائے مانگ رہیے ہیں اور تمہیں باتے بنانے سے فرصت نہیں ۔۔۔۔۔جاو جا کر جلدی سے چائے بناو۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے کشن نیچے پٹحتے ہوئے اٹھی اور بڑبراتی ہوئی چلی گئی۔۔۔۔۔۔اور ہاں ژالے چائے کو پانچ منٹ تک پکانا کچی نا لے آنا۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے پیچھے سے ہانک لگاتے اسے چھیڑا۔۔۔۔۔۔ژالے اسے گھورتی کچن میں چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔”ہائمہ کو ابھی ڈرامہ دیکھتے تھوڑی ہی دیر ہوئی تھی ۔۔۔۔۔جب رومان ایک فرمائشی آرڈر لے آیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹڈی۔۔۔۔۔۔۔پلیز جلدی سے میرے روم کی صفائی کردو ۔۔۔۔۔۔سارا کمرہ بکھڑا پڑا ہے جیسے صبح کسی نے صفائی ہی نا کی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں بیٹا کام والی نے چھٹیاں لی ہوئی ہیں اس لیے صفائی نہیں ہوئی آج۔۔۔۔۔۔۔۔مرینہ نے لاونج میں آتے ہوئے رومان کی بات سن کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب تو آپ نے ویسے بھی سونا ہی ہے نا تو صبح کردوں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے رونے والا منہ بناتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔جی نہیں مجھے گندھے روم میں نیند نہیں آتی اس لیے جاو شاباش جلدی سے میرا روم صاف کردو۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے ریموٹ اس کے ہاتھ سے پکڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔ہائمہ سنا نہیں رومان کیا کہہ رہا ہے ۔۔۔۔۔مرینہ نے اسے سرزنش کرتے کہا۔۔۔۔۔۔ہائمہ پیر پٹحتے ہوئے اٹھی اور رومان کو گھورا ۔۔۔جو اب نیوز کی طرف متوجہ تھا۔۔۔۔۔۔لیکن ہائمہ کے تاثراست باخوبی نوٹ کررہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ کمرے میں پوچا لگانا نا بھولنا ۔۔۔۔۔۔ژالے نے چائے کی ٹرے پکڑے لاونج میں آتے ہوئے اسے کہا ۔۔۔اور تھوڑی دیر پہلے والا اپنا بدلہ چکایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے جواباً اس سے بدلہ لینے کا اشارہ کرتے ہوئے چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کیا ! سچی واوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ایکسائیٹڈ سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان جو موبائیل میں بزی تھا پنار کے خوشی سے کھلکھلاتے چہرے کی طرف متوجہ ہوا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور تم مجھے اب بتا رہی ہو ۔۔۔۔۔۔پنار کھڑی کے سامنے کھڑی ۔۔۔ردا سے فون میں بات کر رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔یار سعد بھائی کتنے ہینڈسم ہیں شادی میں تو اور پیارے لگیں گے۔۔۔سچی ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چونک کر اپنی بیوی کے منہ سے کسی اور کی تعریف سنی ۔۔۔۔۔۔اور موبائیل رکھ کر مرر میں خود کو دیکھا ۔۔۔ہممم میری تعریف تو کبھی نہیں کی ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی پشت کو گھورتے ہوئے سوچا ۔۔۔۔۔اور آہستہ آہستہ چلتا اس کے قریب آ رکا۔۔ ۔۔۔۔۔۔ارے بابا معاف کردو مجھ معصوم کو ۔۔۔۔۔۔جو تمہاری تعریف کرنے کی بجاے سعد بھائی کی کردی۔۔۔۔۔۔۔۔یار کتنے کم دن رکھے ہیں شادی میں ۔۔۔۔پنار نے شادی کی تاریخ سن کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ابھی فون میں بات کر ہی رہی تھی جب پیچھے سے ہرمان نے اسے اپنی بازوں میں لیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر چہرہ پیچھے موڑا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ہلکی سی مسکان سے اسے دیکھا ۔۔۔ہاں ہاں سن رہی ہوں ۔۔۔۔پنار نے ردا کے متوجہ کرنے پر کہا۔۔۔۔۔اور ہرمان کا خصار توڑنے کی کوشش کی ۔۔۔۔۔جو کہ نا ممکن تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے اور زور سے اپنے ساتھ بھینچا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے شرم +غصے سے اس کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ کی تعریف کرنے اور چھونے کا حق صرف میرا ہے کسی اور کا نہیں۔۔۔۔۔۔۔اسی طرح ۔۔۔۔۔مجھے دیکھنے چھونے اور تعریف کرنے کا حق بھی صرف آپ کا ہے آپ آئندہ کسی اور کی تعریف نہیں کریں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی بات پر اس کی طرف دیکھا۔۔ لیکن اب کی دفعہ اس کا خصار توڑنے کی کوشش نہیں کی ۔۔۔۔۔۔۔۔کیونکہ پھر کونسا اس نے چھوڑ دینا تھا۔۔۔۔۔۔کرنی تو اس نے اپنی ہی مرضی تھی ۔۔۔۔۔۔ڈیٹھ جو تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: