Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 27

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 27

–**–**–

ویسے کس کا فون تھا ۔۔۔ہرمان نے اس کے کندھے پر ہتھوڑی رکھتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔تم سے مطلب ۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کی ہتھوڑی پیچھے کرتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔کہی اس کا تو فون نہیں تھا ۔۔۔۔۔جو خوبصورت سی ،لمبی سی ،اور ہاں جس کے بال بھی کافی لمبے ہیں۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے دوبارہ ہتھوڑی اس کے کندھے پر رکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیاااا ،تم نا ایک نمبر کے گھٹیا انسان ہو ۔۔۔۔۔۔تم میری دوست کو اتنے غور سے دیکھ رہے تھے چھچھوڑے کہی کے ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کی طرف پلٹ کر غصے سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے مسکراہٹ کنٹرول کرنے کے لیے ہوںٹ بھینچے ۔۔۔۔اور پنار کی طرف دیکھ کر مصعوم سی شکل بنائی۔ ۔۔۔۔۔۔۔”غور سے تو میں صرف آپ ہی کو دیکھتا ہوں قسم سے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے زچ کرنا اپنا فرض سمجھا ۔۔۔۔۔۔۔۔پیچھے ہٹو ۔۔۔۔۔پنار نے اسے زبردستی پیچھے کیا ۔۔۔۔۔جو بلکل اس کے ساتھ جڑ کر کھڑا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔نہیں ہٹتا۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے زچ کرنے کی حد کردی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پہلے تو اسے گھورا پھر چہرہ کھڑکی کی طرف موڑا۔ ۔۔۔۔۔اچھا نا میں مزاق کر رہا تھا قسم سے۔ ۔۔۔۔ہرمان نے اسے منانے کی کوشش کی ۔۔۔ویسے کیا کہہ رہی تھی ردا۔۔۔ ہرمان نے اس کا دھیان بٹایا۔ ۔۔۔۔۔۔۔شادی کی ڈیٹ فکس ہو گئی ہے اس کی یہی بتا رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہنوز خفگی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے مسکراتے ہوئے اس کی جیلسی ملاحظہ کی۔ ۔۔۔۔۔۔اور پھر سونے کے لیے صوفے کی طرف بڑھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار کی صبح آنکھ کھلی تو پہلی نظر صوفے پر پڑی جو حسب معمول حالی تھا ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر بیڈ پر دیکھا ۔۔۔۔جو سوتا تو صوفے پر تھا لیکن پایا وہ صبح بیڈ پر ہی جاتا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پورے بیڈ پر جناب پھیل کر لیٹے تھے اور شرٹ حسب توقع غائب تھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے کھینچ کر مکہ اس کے کندھے پر مارا۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے خیرت سے اپنی آنکھیں کھولی اور شولہ جوالہ بنی اپنی بیوی کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دس منٹ میں نیچے آو ۔۔۔۔۔۔۔تیار ہو کر کالج جانے کے لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیااا ۔۔۔۔ہرمان پر تو خیرت کا پہاڑ ٹوٹ گیا تھا۔ ۔۔۔۔۔کیا مطلب ہاں جلدی سے آو پنار نے واشروم کی طرف جاتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔میری نئی نئی شادی ہوئی کیا میں اب اپنی بیوی کے ساتھ وقت بھی نا گزاروں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے صدمے سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار فریش ہو کر آئی تو وہ بیڈ پر الٹا لیٹا آنکھیں کھولے اس کی طرف ہی دیکھ رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔آجانا جلدی سے ۔۔۔ورنہ اس دفعہ میں نہیں آنکل آئے گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جاتے جاتے اسے انگلی سے وارننگ دی۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے گھور کر اس کی پشت کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔اور زور سے سارے کشن نیچے پھینکے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
سب لوگ ناشتہ کر رہے تھے جب ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان یونفارم میں تیار ہو کر آیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔سب نے خیرانی سے اس کی تیاری کو دیکھا ۔۔۔۔۔۔گڈ مارننگ ویری ون ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کہہ کر پنار کے ساتھ والی چیئر پر بیٹھا۔ ۔۔۔”اسد صاحب نے چائے پیتے ہوئے تشکر سے پنار کی طرف دیکھا۔ ۔۔جس کی بدولت آج وہ خود ہی وقت پر تیار ہو کر آیا تھا ورنہ ہرمان اور وقت پر تیار ہو جائے نا ممکن ۔ ۔۔۔۔۔۔۔”میرا ناشتہ۔۔۔ ہرمان نے سوالیہ نظروں سے پنار کی طرف دیکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔جواباً پنار نے ہاف فرائی ایگ اور جوس کا گلاس اسکے سامنے رکھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔سوری لیکن میں یہ نہیں کھاوں گا۔ ۔۔۔ہرمان نے ناک سکورتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔لیکن پہلے تو یہی کھاتے تھے تم ۔ ۔۔ناہید نے خیرانی سے پوچھا۔ ۔۔۔ہاں لیکن پہلے میری بیوی بھی تو نہیں تھی۔ ۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر پراٹھا کھاتی پنار کو کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی نا سمجھی سے اسے دیکھا۔ ۔۔۔۔۔آپ میرے لیے پراٹھا بنا لائیں گئی ۔۔۔۔۔ہرمان نے معصومیت سے تھوڑی دیر پہلے کا حساب برابر کیا۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے معصنوعی مسکان سے اسے دیکھا اور پراٹھا بنانے کچن میں چلی گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار لاون میں بیٹھی چائے پی رہی تھی جب ۔۔۔۔۔شزا تیز قدموں سے چلتی ہوئی اس کے قریب آئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔او تو تم ہو ہرمان کی بیوی ۔۔۔۔شزہ نے تمسحرانہ نظروں سے اسے دیکھ کر پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے گھور کر اس بدتمیز لڑکی کو گھورا۔ ۔۔۔۔۔جی آپ کی تعریف ۔۔۔۔۔پنار نے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔میری تو سب ہی کرتے ہیں لیکن آپ کو دیکھ کر مجھے شدید خیرت ہو رہی ہے کہ ہرمان کی پسند ایسی ہو گئی ۔۔۔۔میں تو دیکھنے آئی تھی وہ کو نسی ایسے حور پری ہے جس کی وجہ سے اس نے مجھے ٹھکرا دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔لیکن تمہیں دیکھ کر مجھے مایوسی ہوئی ہے ۔۔۔شزہ نے آنکھوں میں جلن لیے اسے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”ایکسیزمی ۔۔۔۔۔۔۔ پنار ابھی کچھ کہنے ہی والی تھی جب۔ ۔۔۔۔۔۔ہرمان پنار کے ساتھ آ کھڑا ہوا تھا ۔۔۔۔اور اسے غصے سے دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا مسلہ ہے تمہارے ساتھ ۔۔۔۔تمہیں جو بھی بات کرنی ہے مجھ سے کرو ان سے نہیں ۔۔۔۔۔ہرمان نے اس سرد انداز میں کہا۔ ۔۔۔۔۔”او! تو بتاو گے مجھے کس سے کیسے بات کرنی چاہئے۔ ۔۔۔۔۔شزہ نے طنزیا مسکراتے ہوئے پوچھا! اس میں ایسا کیا یے جو یہ تمہیں مجھ سے زیادہ خوبصورت لگی تھی۔ ۔۔۔۔۔۔شزہ نے طنزیا کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”میں تمہیں بتانا ضروری نہیں سمجھتا ۔۔۔۔ہرمان نے سینے پر ہاتھ باندھ کر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار ہرمان کے ہی چہرے کی طرف دیکھ رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں لیکن ایک بات ضرور کہوں گا ۔۔۔۔۔آئندہ میری بیوی سے اس لہجے میں بات کی تو اپنا انجام بھی پہلے سوچ لینا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔شزہ جانتی تھی وہ اس سے کبھی نہیں جیت سکتی ۔۔۔۔اس لیے تنفر سے دونوں کو دیکھ کر چلتی بنی۔ ۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے اس کے جانے کے بعد پنار کی طرف دیکھا جہاں کوئی غصہ وغیرہ نہیں تھا صرف سکوت تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر اسے دیکھا اور پھر جھک کر اسکی پیشانی چومی ۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے پیچھے کیا اور پھر بنا کچھ کہے اندر چلی گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکرا کر بالوں میں ہاتھ پھیرا ۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
یہ تم مجھے روز روز فون کیوں کرتے ہو ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے فون ایک ہاتھ سے دوسرے میں منتقل کرتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔تو کسے کروں ہاں ۔۔۔ایسا کرو کسی لڑکی کا نمبر بیجھ دو اسی سے کر لیتا ہوں ۔۔۔۔۔عمر نے اسے تپایا۔ ۔۔۔۔۔تم کبھی نہیں سدھر سکتے۔۔۔۔۔ژالے نے غصے سے کہا۔ ۔۔۔۔۔اچھا یار مزاق کر رہا تھا چل کرو۔ ۔۔۔۔۔عمر نے مسکراتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔”عمر سدھر جاو۔۔۔ورنہ ۔۔۔ژالے نے اسے دھمکی دی ۔۔۔۔۔اوکے سدھر گیا اور کچھ ۔۔۔۔۔۔۔۔یار تمہارے گھر والے میرے رشتے کے لیے مان تو جائیں گے نا۔ ۔۔۔۔عمر نے پریشانی سے پوچھا ۔۔۔۔۔۔۔”میں کیا کہہ سکتی ہوں ۔۔۔۔۔۔ژالے نے بھی پریشانی سےکہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا چھوڑو تم ان باتوں کو اور بتاو کیا کر رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔عمر نے اسے پریشان دیکھ کر بات بدلی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ہممم میں ۔۔۔۔۔دال چاول کھا رہی ہوں۔ ۔۔۔پتہ ہے آپا کو بڑے پسند ہیں دال چاول بہت شوق سے کھاتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے محبت سے پنار کا زکر کیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
دادی یہ میری فرینڈ ردا ہے ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ردا کا تعارف دادی سے کروایا۔۔۔۔۔۔۔۔السلام عليكم ۔۔۔دادی جی ۔۔۔۔ردا نے ان کے آگے سر جھکاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”وعلیکم اسلام ۔۔۔۔جیتی رہو بچے۔۔۔۔۔دادی نے پیار دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔”اور دادی مزے کی بات یہ ڈاکٹر صاحبہ بھی ہیں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لاونج میں آتے ہوئے مزید کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ردا اسے دیکھ کر مسکرائی ۔۔۔۔ہرمان نے اسے استقبالیہ مسکراہٹ سے نوازا۔۔۔۔۔۔کیسی ہیں آپ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کے پاس بیٹھتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔میں اے ون تم سناو ۔۔۔۔۔ردا نے فرینکلی انداز میں کہا اسے تو وہ پہلے ہی بہت پسند تھا اب تو اس کی جان سے پیاری دوست کا شوہر بھی تھا تو اسے کیوں نا عزیز ہوتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے بیٹا تم ڈاکٹر لگتی تو نہیں ہو۔۔۔۔۔دادی نے ناک پر انگلی رکھ کر اسے بغور تکتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”پنار نے مسکرا کر ردا کو دیکھا کہ اب دو جواب ۔۔۔۔۔۔۔۔جی دادی میں ڈاکٹر ہی ہوں ۔۔۔اور ہرمان نے ڈسکس کیا تھا آپ کا کیس ۔۔۔۔۔۔آپ کسی دن آئیے گا ہسپٹل پھر میں آپ تفصیل سے معائنہ کروں گی۔۔۔۔۔۔”ردا نے خوش اخلاکی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔تبھی نوری چائے اور دیگر لوازمات لیے چلی آئی۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے چائے پکڑائی ۔۔۔۔۔دادی دراصل میں آپ سب لوگوں کو اپنی شادی پر انوائٹ کرنے آئی ہوں ۔۔۔ اور اسپیشلی آپ نے تو ضرور آنا ہے ۔۔۔۔۔ردا نے اسرار سے کہا۔۔۔۔۔۔ارے کیوں نہیں ضرور آئے گے ۔۔۔۔۔۔۔مطلب کہ آپ نے صرف دادی کو ہی بلایا میں اور پنار نا آئیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کی طرف دیکھ کر کہا ۔۔۔۔۔۔جس نے جواباً اسے دیکھ کر منہ بنایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے تم دونوں نے ہر فنکشن اٹینڈ کرنا ہے سمجھے ورنہ مجھ سے برا کوئی نہیں ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے چائے کے کپ سے گھونٹ بڑھتے ہوئے دھمکی دیتے کہا۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔”لیکن اتنی جلدی شادی کی وجہ ۔۔۔۔پنار نے خیرت سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔” سعد نے میزید سٹڈی کے لیے دو سال کے لیے لنڈن جانا ہے تو وہ چاہتا میں بھی اس کے ساتھ جاوں اسی لیے ۔۔۔۔ردا نے تفصیل سے اسے بتایا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سمجھتے ہوئے سر ہاں میں ہلایا۔۔۔اور مزید ادھر ادھر کی باتیں کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁 🍁🍁
آپ مجھے پڑھا دیا کریں نا ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے موبائیل میں مصروف دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں اب کونسا نیا چاند چڑھانا ہے جو مجھ سے پڑھنا ہے تمہیں۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جلے بھنے انداز لیے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔”ہاہاہا۔۔۔۔چاند تو اب چڑھ چکا مزید کی مجھے ضرورت نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کی بات پر قہقہ لگاتے اس کے پاس بیڈ پر بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جواباً اسے گھورنے پر ہی اکتفا کیا تھا۔۔۔۔اور دوبارہ نظریں فون پر مرکوز کی ۔۔۔۔۔۔لیکن ہرمان نے اچانک اپنا سر اسکی گود میں رکھ لیا اور اسے دیکھ کر مسکرانے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار تو اچانک اس کی اس خرکت پر بوکھلا کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا طریقہ ہے لیٹنے کا سر پیچھے کرو اپنا بے شرم انسان ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کےسر کو پیچھے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا یار اب انسان اپنی بیوی سے دو گھڑی بیٹھ کر باتیں بھی نہیں کرسکتا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے منہ بسورتے ہوئے دوبارہ زبردستی اپنا سر اسکی گود میں رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”بکواس بند کرو اور سیدھے ہو کر لیٹو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے کندھے پر چپٹ مارتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن ہرمان پر اس کا کیا اثر !۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اف یار وہ دن کب آئے گا جب آپ میرا سر اپنی گود میں رکھا کریں گئی ۔۔۔اور روز میںرے سر میں آئلنگ کیا کریں گئی واوا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کے ہاتھ کو اپنی آنکھوں پر رکھتے ہوئے اسے ستایا۔۔۔۔۔۔۔۔دنیا ادھر کی ادھر ہو جائے لیکن تم کبھی نا سدھرنا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسکی باتوں پر زچ ہو کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ اور ڈیڈ کو تو میں ہمیشہ بگڑا ہی نظر آتا ہوں۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔چلو اٹھو اپنی جگہ پر جاو ۔۔۔۔۔پنار نے اسکی خرکتوں پر زچ ہو کر کہا۔۔۔۔۔۔۔”میں تو نہیں جارہا۔۔۔۔۔۔آج میں آپکی ہی گود میں سر رکھے سوں گا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے آنکھیں بند کرتے ہوئے اپنی اپنی مسکراہٹ کو روکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔افففف اللہ پاگل کردیا ہے مجھے اس انسان نے ڈیٹھ کہی کا۔۔۔۔۔۔پنار نے زبردستی اس کا سر بیڈ پر پٹخ کر کمرے سے ہی باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے قہقہ لگا کر اسے چڑیا۔۔۔۔۔پنار نے جواباً زور سے کشن اس کے منہ پر پھینکا ۔۔۔جسے وہ مہارت سے کیچ کر گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہائمہ میری پیاری گڑیا کیا کر رہی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ جو مزے سے اپنے کمرے میں بیٹھی موبائیل پر اپنی دوست سے بات کر رہی تھی ۔۔۔۔۔جب رومان کے اتنے پیار سے مخاطب کرنے پر اسے اپنے آس پاس خطرے کی گھنٹی بجتی محسوس ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ اسکے اتنے پیار سے بلانے پر چونکی۔۔۔۔۔۔پھر سوچا ضرور یا تو کمرہ صاف کروانا ہو گا یا چائے بنوانی ہو گی یا پھر کپڑے استری کروانے ہوں گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اسے دیکھتے ہوئے سوچا۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا کہاں کھو گئی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے اسکے آگے چٹکی بجاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پہلے تو وہ چونکی پھر رومان کو گھور کر دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر آپ اپنا کوئی کام وغیرہ لے کر آئے ہیں تو برائے مہربانی ساتھ والے روم میں چلے جائیں ۔۔۔۔ کیوں کہ آپ کی بہن ساتھ والے کمرے میں ہی رہتی ہے مریخ پر نہیں جو آپ کو کام کے وقت صرف میں معصوم ہی نظر آتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے جلے بھنے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
کیا مطلب ہے تمہارا، میں تمہیں صرف کام کے وقت ہی بلاتا ہوں ہاں۔۔۔۔۔۔۔رومان نے کمر پر یاتھ رکھے اسے گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔
ہاں جی سو فیصد سچ۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے بھی اس کے مقابل آتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اڈیٹ ،میں باہر سے تمہارے اور ژالے کے لیے آئس کریم لایا تھا۔۔۔۔۔اس لیے تمہیں بلانے آیا تھا۔۔۔۔۔۔۔رومان نے کہتے ہوئے اس گھورا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کیااااا،سچ میں ۔۔۔۔۔اف میں بھی نا پاگل ہوں اور یقیناً وہ آئس کریم ژالے ہضم کر لے گئی اگر میں دو منٹ اور رکی رہی تو ۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے کہتے ہی کمرے سے کچن کی طرف دوڑ لگائی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے مسکراتے ہوئے اسکی اعجلت نوٹ کی ۔۔۔۔ اور پھر خود بھی اسکے پیچھے کچن کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ارے یار ناراض کیوں ہو مجھ سے ۔۔۔۔۔ہرمان نے ان دونوں سے پوچھا جو دو دن سے اسے مخاطب نہیں کر رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔تو ناراضگی کی بات کر رہا ہے میرا دل تو کر رہا تیری گردن دبا دوں جس کی وجہ سے ہمیں اتنی شرمندگی کا سامنا کرنا پڑا۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے غصے سے گھورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں میں نے ایسا کیا کردیا ہے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے لاپراہی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔تیری وجہ سے ہمیں اس دن برتن دھونے پر جاتے اگر چاچو وہاں نا آتے۔۔۔۔۔۔لیکن اب سوچتے ہیں برتن ہی دھو لیتے تو بہتر تھا۔۔۔۔۔۔حارث نے غصے سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔کیوں* ایسا کیا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کولڈ ڈرنکس کے گھونٹ لیتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔اس دن ہمارے پاس اتنے پیسے نہیں تھے۔۔۔ ویٹر مینجر کو بلا لایا ۔۔۔ اور مینجر نے ہماری بڑی بیستی کی ۔۔۔ بد قسمتی سے وہاں اپنے کلائنٹ کے ساتھ بیٹھے ڈیڈ نے سن سار بات سن لی ۔۔۔۔۔اس وقت تو ہمیں بچا لیا۔۔۔۔لیکن گھر آکر ہماری اتنی بیستی کی بس ۔۔۔۔۔۔عمر نے منہ بسورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاہاہا۔۔۔۔۔ہرمان کا قہقہ نکل گیا تھا بیچاروں کی اتنی درد بڑی داستان سن کر۔۔۔ لیکن جب انہیں گھورتے دیکھا تو مشکل سے اپنی ہنسی کو کنٹرول کیا۔۔۔۔۔۔سوری یار لیکن اس دن تم دونوں مجھے ایسے ہی اٹھا کر لے گئے تھے مجھے وائلٹ وغیرہ بھی نہیں لینے دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن آج میں تم دونوں کو تمہارے فیورٹ ہوٹل لے جاکر کھانا کھلاوں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے سیریس ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں لیکن پہلے اپنا وائلٹ چک کر لینا۔۔۔۔۔۔۔حارث نے طنزیا کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے یہ رہا میرا وائلٹ ۔۔۔تم دونوں میں سے جو چاہے پکڑ لے ہرمان نے وائلٹ پاکٹ سے نکالتے ان کے سامنے رکھا۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اسے گھورت ہوئے وائلٹ چیک کیا۔۔۔۔ارے اب اتنی بھی بے اعتباری نہیں ہونی چاییئے ۔۔۔۔۔۔حارث نے عمر کو وائلٹ چیک کرتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔ توں نے وہ کھاوت تو سنی ہی ہو گئی کہ دودھ کا جلا چھاچھ بھی پھونک پھونک کر پیتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر کے انداز پر حارث اور ہرمان کا قہقہ بے ساختہ تھا
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
نکل چکا ہے وہ کالج سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس آدمی نے فون پر کسی کو اطلاح دی۔۔۔۔۔۔اوکے مارو دو اسے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔فون میں سے اسے کسی نے کہا تھا۔۔۔۔۔ ۔۔اوکے سر ۔۔۔۔۔۔۔”

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: