Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 28

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 28

–**–**–

وہ مرر کے آگے کھڑی بالوں میں برش کر رہی تھی جب ایک آواز اچانک اس کے کانوں میں گونجی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہی اس کا فون تو نہیں تھا جس کے بال بھی کافی لمبے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر اپنے لیئر میں کٹے بالوں کو دیکھا ۔۔۔جو بامشکل اسکے کندھے تک آتے تھے۔۔۔۔۔۔جبکہ ردا کے بال تو کمر سے بھی نیچے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے غصے سے ہرمان کو دل ہی دل میں صلوتیں سنائی ۔۔۔۔۔۔اور برش کو سائیڈ ٹیبل پر پٹخ کر کھڑی ہوئی۔۔۔۔۔۔اور کپڑے چینج کرنے کے لیے کبڈ کھولا۔۔۔۔۔۔۔۔آپ پر ریڈ کلر زیادہ اچھا لگتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی اس نے بلیک سوٹ کی طرف ہاتھ بڑھایا ہی تھا۔۔۔۔۔۔جب ہرمان کی آواز پھر سے اسکے کان میں گونجی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اففف کیا مسلہ ہے تمہارے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہرمان کے خیال سے مخاطب ہو کر کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور زور سے کبڈ بند کرتی ہوئی بڑبراتی کمرے سے ہی باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان فل سپیڈ میں بائیک دوڑاتا ہوا گھر کی ہی طرف جارہا تھا۔۔۔۔۔جب اس کی بائیک کا ٹائر پنکچر ہوا تھا۔۔۔۔۔۔جس کی وجہ سے بائیک ایکدم رکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے بائیک سے اتر کر نیچے بیٹھ کر ٹائر دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔جس پر کِل لگنے کی وجہ سے وہ پھٹ گیا تھا
ہرمان نے کھڑے ہو کر پاکٹ سے موبائیل نکالا ۔۔۔۔۔اور ڈیڈ کو فون ملایا۔۔۔۔۔۔۔ہیلو ڈیڈ میری بائیک خراب ہو گئی ہے راستے میں گاڑی بیجھ دیں ۔۔۔۔۔۔۔پندرہ منٹ تک۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے بائے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے فون بند کر کے ابھی جیب میں رکھا ہی تھا۔۔۔۔۔جب اسے بہت سے قدموں کی آواز اپنے قریب سے سنائی دی ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے چونک کر پیچھے پلٹ کر دیکھا جہاں ۔۔۔۔۔۔چار لڑکے ایک ہی لائن میں کھڑے اسے ہی گھور رہے تھے ۔۔۔۔وہ شکل سے ہی کوئی گنڈیں بدمعاش لگ رہے تھے ۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار بچے یہ ہرمان نئیں آیا ابھی تک کالج سے۔۔۔۔۔دادی نے لاونج میں بیٹھتے ہوئے پنار سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔ نہیں دادی ابھی تک تو نہیں آیا وہ۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے دادی کی بات پر کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا ایک بات کہوں تمہیں برا نا ماننا میں تمہاری بھی دادی ہوں اور ہرمان کی بھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔ارے نہیں دادی میں برا کیوں مانوں گئی ۔۔۔آپ جو بھی کہیں گئی یقیناً میری بھلائی کے لیے ہی کہیں گئی ۔۔۔۔۔۔پنار نے دادی کا ہاتھ تھامتے ہوئے اخترام سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔”بیٹا شوہر چاہے چھوٹا ہو یا بڑا بیوی کا فرض ہوتا ہے وہ اسے اخترام،عزت اور محبت سے بلائے ۔۔۔۔۔۔۔۔میں نے کتنی بار دیکھا ہے تم ہر کسی کے سامنے اسے تم ۔۔۔۔کر کے بلاتی ہو ۔۔۔۔بیٹا ایسے اچھا نہیں لگتا۔۔۔۔دادی نے پنار کو پتے کی بات بتائی۔ ۔۔۔۔۔۔۔جی دادی اب سے میں پورا دھیان رکھوں گئی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے بظاہر تو مسکرا کر کہا۔ ۔۔۔۔۔لیکن دل ہی دل میں ہرمان کو کوس کر رہ گئی ۔۔۔۔جس کی وجہ سے اسے باتیں سننی پڑی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔” جیتی رہو میری بچی،سدا سہاگن رہو ۔۔۔۔۔دادی نے اس کے س پر ہاتھ پھیر کر دعا دی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔”بیٹا زرا فون تو کرنا ہرمان کو میرا دل بہت گھبرا رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔دادی نے بے چینی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔جی دادی ابھی کرتی ہوں ۔۔۔۔پنار نے موبائل پر اس کا نمبر ملا یا۔ ۔۔۔۔۔۔۔بیل تو جا رہی تھی لیکن وہ اٹھا نہیں رہا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔دادی وہ فون نہیں اٹھا رہے ۔۔۔۔شاید راستے میں ہو ۔۔۔۔۔۔پنار نے فون کو کان سے ہٹا کر دادی سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔جنہوں نے ہاں میں سر ہلایا تھا۔۔۔۔۔پنار نے ٹائم دیکھا, اب تک تو وہ آجا تا ہے ۔۔۔۔۔۔پنار نے دل میں سوچا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کون ہو تم لوگ ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنے ارد گرد گھومتے ان چاروں لڑکوں سے خیرانی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔بتا دیں گے پہلے کچھ حساب تو برابر کردیں ۔۔۔۔۔ایک نے اس کے سامنے کھڑے ہوتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔اور پچھے کھڑے ایک لڑکے کو اشارا کیا۔۔۔۔۔جس نے ہاں میں سر ہلا کر ۔۔۔پورے زور سے ڈنڈا اس کے سر پر مارا تھا جس سے اس کے سر سے خون نکلا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے تکلیف سے سر پر ہاتھ رکھ کر پیچھے کی طرف دیکھنا چاہا۔۔۔۔۔۔لیکن اگے والے نے اب زور سے ڈنڈا اس کے کندھے پر مارا ۔۔۔۔ہرمان نے تکلیف سے آنکھیں میچی ۔۔۔۔ابھی وہ سنبھلا بھی نہیں تھا ۔۔۔حب ان چاروں نے پے درپے اس پر وار کرنے شروع کر دئیے ۔۔۔۔۔ہرمان نے۔۔۔۔۔۔۔۔اپنے بچاو کے لیے اگے والے کے پیٹ پر زور سے لات ماری تھی ۔۔۔۔۔جس وہ دور گرا ۔۔۔۔پیچھے والے نے غصے سے ڈنڈا اس کے منہ پر مارنا چاہا ۔۔۔۔۔۔جب ہرمان نے ڈنڈا راستے میں ہی روکا ۔۔۔۔۔اور کھیچ کر اس کے کندھے پر مارا تھا۔۔۔۔۔۔۔وہ پوری کوشش کر رہا تھا اپنے بچاو کی لیکن وہ چار تھے اور وہ اکیلا کتنی دیر ان سے وہ لڑ سکتا تھا۔۔ایک کو اور کچھ نا سوجھا تو پسٹل نکال کر آو دیکھا نا تاو ۔۔۔۔۔اس کے کندھے پر فائر کردیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ کیا کیا تم نے۔۔۔۔۔۔بوس نے فائر کرنے کا نہیں کہا تھا بس مارنا تھا اسے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا! لیکن تم نے مجھے پہلے کیوں نہیں بتایا ۔۔۔۔۔۔فائر کرنے والے نے بوکھلا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔چل نکلتے ہیں ۔۔۔اس سے پہلے کہ پکڑٙے جائیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہتے ہوئے وہ جلدی سے گاڑی میں بیٹھے اور پوری رفتار سے وہاں سے نکال گئے۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ژالے یہ تم فون میں کس سے باتیں کرتی رہتی ہو زرا مجھے بھی بتانا۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اسے اچانک فون بند کرتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔کک کیا مطلب ہے تمہارا ۔۔۔اپنی دوست سے کرتی ہوں اور کس سے کروں گئی ۔۔۔۔۔ژالے پہلے تو بو کھلا گئی تھی ۔۔۔۔۔ لیکن پھر سنمبھل کر اسے جواب دیا…۔۔۔۔۔۔۔اچھا تو پھر میرے آنے پر اچانک فون کیوں بند کر دیتی ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے آئی بروز اچکاتے اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔کیا مطلب ہے تمہارا کہ میں کسی لڑکے سے فون پر بات کرتی ہوں ہاں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اگر ایسا سوچ رہی ہو تو ٹھیک سوچ رہی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے ہاتھ کی انگلیاں مڑورتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں جانتی تھی ۔۔۔ایسا ہی کچھ ہے، اور میں یہ بھی جانتی تھی ژالے میڈم زیادہ دیر تک یہ بات ہضم نہیں سکتی۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے مسکراتی نظروں سے اسے دیکھتے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے جواباً اسے گھور کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”کون ہے وہ بد نصیب۔۔۔۔۔۔میرا مطلب خوش نصیب جو ہماری ژالے کو پسند آیا۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ کے بد نصیب کہنے پر جب ژالے نے اسے زبردست گھوری سے نوازا تو ہائمہ نے جلدی سے تصحح کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ جو مجھ سے دو۔۔۔۔تین بار ٹکرایا تھا ایک بار روڈ پر اور دوسری بار مال میں ۔۔۔۔۔وہ ہرمان بھائی کا دوست بھی ہے۔۔۔۔۔۔۔عمر نام ہے اسکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے سر جھکاے ہی کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمممم، اس مسلے پر بعد میں بات کریں گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔پہلے جا کر دوپہر کے لیے آٹا تو گوندھو۔۔۔۔۔۔۔اور یہ میں نہیں چچی کہہ رہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ژالے نے آٹا گوندھنے والی بات پر صدمے سے ناک سکوڑی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔یا اللہ ،آٹا اور میں۔۔۔۔کبھی نہیں گوندھوں گئی۔۔۔۔۔۔جب سے کام والی گئی ۔۔۔۔تب سے سب نے مجھے ہی کام والی بنا لیا۔۔۔۔۔ژالے یہ کام کردو ۔۔ژالے وہ کام کردو۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے نا ہو گئی کوئی ملازمہ ہوگئ۔۔۔۔اس نے باقاعدہ ہاتھ نچاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ نے اس کے جھوٹ پر اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔ژالے کب سے تمہیں بلا رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔جلدی سے آو ۔۔۔۔اور آٹا گوندھو آکر۔۔۔۔۔۔۔رومان آنے والا ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے دروازے پر آکر کہا اور واپس پلٹ گئی بنا ژالے کے ایکسپریشن دیکھے ۔۔۔۔۔۔۔۔”ژالے نے منہ بسورا اور ہائمہ کو گھورتے ہوئے نا چاہتے ہو ئے بھی آٹا گوندھنے چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان پورے قد سے نیچے گرا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تکلیف کے احساس سے اس کی چیخ بے ساختہ تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کندھے پر تکلیف سے ہاتھ رکھا۔۔۔۔۔سر پر سے بھی خون بہہ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اپنے پاس رکتی گاڑی دیکھی ۔۔۔۔۔۔اور آہستہ آہستہ اپنی خون آلود آنکھیں موند گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی اسکے پاس آکر چلا رہا تھا لیکن اسے کچھ سمجھ نہیں آرہا تھا کوئی کیا کہہ رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا دماغ اندھیرے کی گہرائیوں میں ڈوب رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور پھر وہ خوش سے بیگانہ ہو گیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار بیڈ پر بیٹھی ایل آئی ڈی پر نیوز دیکھ رہی تھی جب۔ ۔۔۔۔۔۔اس کا دل ایکدم بہت گھبرایا تھا۔ ۔۔۔۔۔۔جیسے کوئی اپنا اس وقت بہت تکلیف میں ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے گھبرا کر گھر پر فون ملایا ۔۔۔۔۔۔۔تاکہ پتا کر سکے ۔۔۔۔کہ سب ٹھیک تو ہے نا۔ ۔۔۔۔۔۔اسلام علیکم امی۔ ۔۔۔۔۔۔کیسی ہیں آپ ۔۔۔اور گھر میں سب کیسے ہیں ۔۔۔پنار نے عافیہ سے گھر والوں کی جلدی سے بابت پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا سب ٹھیک ہیں ۔۔۔۔تم سناو وہاں تو سب ٹھیک ہیں نا۔ ۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان کے گھر والوں کا رویہ کیسا ہے تمہارے ساتھ۔ ۔۔۔۔۔۔عافیہ نے بھی تفصیل چاہی۔ ۔۔۔۔۔۔۔امی سب بہت اچھے ۔۔۔۔۔۔اور میرا خیال بھی بہت رکھتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔آپ بالکل بھی پریشان نا ہوا کریں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے عافیہ کی پریشانی دور کی۔ ۔۔۔۔۔۔۔”شکر ہے اس پاک زات کا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔خدا کرے وہ ہمیشہ تمہیں ایسے ہی خوش رکھے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا بیٹا وہ میں تم سے ایک بات کرنا چا رہی تھی۔ ۔۔۔۔۔عافیہ نے ہچکچاتے ہوئے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔امی کیا بات ہے سب ٹھیک تو ہے نا۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے پریشانی سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ہاں بیٹا سب ٹھیک ہے۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ظفر اور آسیہ آئے تھےکل ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر سنا ۔۔۔۔۔خیریت سے تو آئے تھے نا وہ لوگ۔ ۔۔۔۔۔۔پنار نے خیرانی سے پوچھا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہاں! بیٹا وہ رائمہ کے سلسلے میں آئے تھے ۔۔۔۔رائمہ کے لیے رمیز کا رشتہ لے کر ۔۔۔۔۔۔۔۔تمہارے ابو کہہ رہے تھے تم سے پوچھ لوں۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ نے ہچکچاتے ہوئے ساری بات کہی ۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔امی آپ میری طرف سے بلکل بھی پریشان نا ہوں ۔۔۔۔بظاہر تو رشتہ اچھا ہے اگر آپ لوگ اور رائمہ راضی ہے تو مجھے کیا اعتراض ہو گا۔ ۔۔۔۔۔پنار نے اطمینان سے کہا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔شکریہ بیٹا آپ نے تو میری پریشانی ہی دور کردی۔ ۔۔۔۔۔امی میں اب فون رکھتی ہوں اللہ خافظ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اللہ خافظ بچے خوش رہو آباد رہو۔ ۔۔۔۔۔عافیہ نے شفقت سے کہتے ہوئے فون بند کر دیا۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

پنار نے پرسوچ انداز میں فون کو دیکھا ،اسے واقعے کوئی دکھ وغیرہ نہیں ہوا تھا پتا نہیں کیوں ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کیوں پر اس نے بے ساختہ نظریں چرائی تھی خود سے۔ ۔۔۔۔۔۔۔اور گھڑی پر ٹائم دیکھا اب تک تو وی آجاتا آج کیوں نہیں ابھی تک ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے دل میں کہہ کر نیچے جانے کے لیے اٹھی۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”

پنار چینج کر کے نیچے آئی جب دادی اور ناہید کو موبائیل پر کسی سے بات کرتے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا ہوا پنار تو آ گئی ۔۔۔۔۔۔۔یہ ناہید کب سے فون پکڑے بیٹھی ہےکچھ بول نہیں رہی ۔۔۔۔۔اس سے پوچھ کس کا فون تھا جو یہ ساکت بیٹھی ہے تب سے۔۔۔۔میرا تو دل بیٹھ رہا ہے۔۔۔۔۔پنار نے دادی کی بات پر پریشانی سے ناہید کو دیکھا۔۔۔۔۔۔اور تیز قدموں سے اس کی طرف آئی۔۔۔۔۔۔انٹی کس کا فون تھا سب خیریت تو ہیں نا۔۔۔۔۔۔پنار نے انہیں ہلاتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔لیکن ناہید کچھ بھی نا بولی بس حالی حالی نظروں سے پنار کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک ماں کیسے سن سکتی ہے کہ اس کے بیٹا کو کسی نے گولی ماری ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔انہوں نے تو بہت سی منتوں مرادوں کے بعد اسے پایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کانپتے ہاتھوں سے موبائیل پکڑا ۔۔۔۔۔اور کال لوگ میں گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوپر فرسٹ نمبر دیکھ کر وہ بری طرح چونکی۔۔۔۔۔۔۔رومان کا نمبر ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے پرسوچ نظروں سے ناہید اور دادی کو دیکھا ۔۔۔۔۔اور پھر رومان کے نمبر پر کال کی ۔۔۔۔۔۔۔اور ہونٹ بھیچتے ہوئے کال اٹھائے جانے کا انتظار کرنے لگی
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
رومان گھر کی طرف آرہا تھا جب ایک گاڑی کو تیز رفتار سے وہاں سے گزرتے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے سر جھٹکا۔۔۔۔۔۔اور نظریں سامنے روڈ پر مرکوز کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن وہ بری طرح چونکا۔۔۔۔۔جب سامنے بائیک کے پاس کسی کو گرے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔رومان نے گاڑی کو روکا اور تیزی سے باہر نکلا۔۔۔۔۔اور اس گرے ہوئے لڑکے کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن اب وہ بری طرح ٹھٹھکا تھا۔۔۔۔۔۔جب نظر ہرمان کے وجود پر پڑی۔۔۔۔۔۔۔رومان نے ساکت نظروں سے اس کی حالت دیکھی۔۔۔۔۔اور پھر نظر اسکے تیزی سے بہتے خون پر پڑی۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان۔۔۔۔۔۔۔رومان چیلاتا ہوا اس کی طرف دوڑا۔۔۔۔۔۔۔۔۔دو تین اور لوگ بھی اکٹھے ہو گئے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے کوگوں کی مدد سے کانپتے ہاتھوں سے اسے اٹھایا اور گاڑی میں ڈالا۔۔۔۔۔۔ فل سپیڈ میں وہاں سے گاڑی نکالتے ہوئے وہ قریبی ہسپٹل کی طرف بڑھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار رومان کی بات سن کر اپنی جگہ پر جم کر رہ گئی تھی اور فون کو گرنے دے بچانے کے لیے مضبوطی سے تھاماں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اماں اسد کو فون کریں میرا بیٹا !۔۔.۔۔۔۔ناہید نے ایک دم چلا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور جلدی سے باہر کی طرف دوڑی۔۔۔۔۔۔۔پنار بھی ہوش میں آئی اور دادی کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔پنار یہ ناہید کیا کہہ کر گئی ہے ۔۔۔۔۔۔دادی نے بے یقینی سے پنار سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی کچھ نہیں ہوا آپ پریشان مت ہوں ۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ ۔۔۔۔ساتھ ہی عذوبہ کو آواز لگائی۔۔۔۔۔۔۔جی بھابھی۔۔۔۔۔ادھر آکر بات سننا ۔۔۔۔پنار نے اسے ایک طرف بلایا۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی کیا ہوا ہے اور آپ اتنی پریشان کیوں ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے اس کے ویران چہرے کی طرف دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ میری بات کو تحمل سے سننا ۔۔۔۔۔شور مت کرنا تم جانتی یو دادی کی طبیعت ٹھیک نہیں رہتی ۔۔۔۔بھابھی کیا ہوا ہے میرا تو دل گھبرانے لگا ہے۔۔۔۔۔عذوبہ نے پریشانی سے اسکے ہاتھ تھامتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہونٹ کاٹتے ہوئے آدھے جھوٹ اور آدھے سچ کے ساتھ اسے ساری بات بتائی۔۔۔۔۔۔۔کہ ہرمان کا چھوٹا سا ایکسیڈینٹ ہو گیا ہے۔۔۔۔۔۔اور وہ اب ہسپتال ہے۔۔۔۔۔۔۔۔کیااااا۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے چلا کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ آہستہ۔۔۔ میں انٹی کے ساتھ ہسپتال جارہی ہوں تم پیچھے سے دادی کا خیال رکھنا۔۔۔۔۔انہیں فلحال کچھ مت بتانا۔۔۔۔۔۔ اوکے۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے اپنے ساتھ لگاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے روتے ہوئے سر ہلایا۔۔۔۔۔۔بھابھی بھائی کو کچھ ہو گا تو نہیں نا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں ہو گا اللہ پر یقین رکھو ۔۔۔۔۔۔میں اب چلتی ہوں دادی کو ابھی کچھ بھی مت بتانا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کے سر پر بوسہ لے کر باہر کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ناہید اور پنار جب ہسپتال پہنچی تو وہاں سامنے ہی کوریڈور میں بنے کمروں کے سامنے اسے رومان دیکھا۔۔۔۔۔۔وائٹ شرٹ پوری خون سے بڑھی ہوئی تھی۔۔۔۔اور پریشانی سے وی ماتھا مسل رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید تو ہرمان کا خون اس کی شرٹ پر دیکھ کر ہی وہی فرش پر گر کر رونے لگی تھی۔۔۔۔۔۔۔رومان بھی انہیں دیکھ چکا تھا اور دوڑ کر ناہید کو تھاما ۔۔۔۔۔۔۔انٹی آپ پریشان نا ہوں ۔۔۔۔۔۔ہرمان ٹھیک ہو جائے گا ۔۔۔۔۔۔رومان نے پنار کو دیکھ کر انہیں تسلی دی ۔۔۔۔۔۔۔پنار آہستہ قدموں سے چلتی ہوئی ناہید کے پاس آئی اور انہیں گلے لگایا۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بھی کسی سہارے ہی کی تلاش میں تھی پنار کے گلے لگ کر رونے لگی۔۔۔۔۔۔۔آتے جاتے لوگ انہیں تاسف سے دیکھ رہے تھے۔۔۔۔۔۔کوئی کہہ سکتا تھا یہ وہی عورت ہے جنہوں نے کبھی ناک پر مکھی نہیں بیٹھنے دی تھی ۔۔۔۔۔۔آج اس وقت وہ صرف ایک ماں کے روپ میں نظر آرہی تھی ۔۔۔۔۔۔جو اپنے بیٹے کی تکلیف دور کرنے کے لیے کچھ بھی کرسکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد جڈون تیز تیز قدموں سے چلتے ان کے پاس آکر رکے تھے ۔۔۔ساتھ پریشان چہرہ لیے احد جڈون بھی تھا ۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا میرے بیٹے کو ۔۔۔۔۔اسد نے ناہید کو کندھوں سے تھام کر رومان سے پوچھا۔۔۔۔. وہ انکل ۔۔۔۔۔۔رومان نے انہیں ساری بات بتائی۔۔۔۔۔جسے سن کر پنار کی آنکھوں سے بے ساختہ آنسو ٹوٹ کر گالوں پر گرے تھے۔۔۔۔۔۔جن کا انہیں احساس تک نا تھا۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔اسد کیا ہو گیا ہمارے بیٹے کو ابھی صبح ہی تو وہ ہنستا کھلکھلاتا کالج کے لیے نکلا تھا۔۔۔۔۔اور اب یہ سب کیسے ہو گیا۔۔۔۔۔کسی کی کیا دشمنی تھی میرے معصوم بیٹے سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے روتے ہوئے اسد کے کندھے پر سر رکھتے ہوئےکہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کچھ نہیں ہو گا۔۔۔۔۔۔۔۔ہمارے بیٹے کو ۔۔۔۔۔اسد نے ضبط سے لال آنکھیں میچتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایکسیوزمی مسٹر رومان ۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے پریشن ٹھیٹر سے باہر آکر رومان کو بلایا۔۔۔۔۔۔۔۔جی سب ہی ڈاکٹر کی طرف دوڑے۔۔۔۔۔ڈاکٹر صاحب میں اس کا باپ ہوں کیا ہوا میرے ہرمان کو ۔۔۔۔۔۔اسد نے ڈاکٹر کے پاس آکر بے قراری سے پوچھا۔۔۔۔۔۔دیکھیں اس کا خون بہت بہہ گیا ۔۔ آپ لوگ خون کا جلدی انتظام کریں ۔۔۔۔۔اسے گولی کے علاوہ بھی کافی چوٹیں لگی ہیں۔۔۔۔۔یہ بھی خوش نصیبی ہے آپ لوگوں کی کہ گولی اس کے کندھے کو صرف چھو کر گزر گئی ورنہ ڈاکٹر نے نامکمل سی بات کی۔۔۔۔۔۔۔۔رومان آپ نے پولیس کو فون کردیا۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے اسد کو تفصیل سے بتا کر اینڈ میں رومان سے پوچھا۔۔۔۔۔دراصل یہ ہسپٹل رومان کے دوست کے چچا کا تھا اس لیے اس کی جان پہچان کام آگئی ورنہ کافی ٹائم لگ جاتا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی انکل کردیا ہے کچھ ہی دیر میں پولیس آجاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔ہممم۔۔۔۔۔۔آپ لوگ خون کا جلد سے جلد بندوبست کریں۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر میرا خون میرے بیٹے سے میچ کرتا ہے آپ کو جتنی ضرورت ہے لے لیں ۔۔۔۔لیکن میرے بچے کو کچھ نہیں ہونا چاہیئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے نم آنکھوں سے اپنی بات کہی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اوکے آجائیں ۔۔۔۔۔لیکن آپ سے ہم ایک وقت میں ایک ہی پیگ لے سکتے ہیں ۔۔۔۔ آپ مزید خون کا بھی بندوبست کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ آئے ہمارے ساتھ۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر اسد کو کہہ کر واپس اپریشن ٹھیٹر میں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پتا نہیں پنار کی کیا حالت ہو گئی۔۔۔۔عافیہ نے دکھ و پریشانی سے مرینہ کو دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے انہیں فون کر کے ساری بات بتا دی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عافیہ جانا چاہتی تھی لیکن رومان نے وہاں آنے سےمنع کر دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تب سے ہی سب پریشان حال صورت لیے بیٹھے تھے۔۔۔۔۔۔ہمم بھابھی اللہ ہرمان کو زندگی اور صحت و تندرستی دے اور اس کے گھر والوں کو اس مشکل گھڑی میں صبر دے۔۔۔۔۔۔۔۔آمین ۔۔۔۔عافیہ نے اور ژالے نے ایک ساتھ کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
کیا ہوا ہے بھابھی ہرمان کو۔۔۔۔۔وہ ٹھیک تو ہے نا ۔۔۔۔۔کہاں ہے وہ ۔۔۔۔۔۔۔عمر اور حارث بھی پہنچ چکے تھے ۔۔۔۔۔حارث نے ہرمان کو فون کیا تھا۔۔۔۔۔لیکن جب اس کا فون نہیں لگا تو اس نے عذوبہ کو فون کیا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔عذوبہ نے اسے روتے ہوئے ساری بات بتا دی۔۔۔۔۔۔جسے سن کر تو اس کو یقین ہی نہیں آیا تھا ۔۔۔۔۔اور پھر اسد کو فون کر کے ساری تفصیل پوچھی۔۔۔۔۔۔اور پھر اس کے بعد وہ دس منٹ میں ہسپتال تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عمر نے پریشان چہرہ لیے بیٹھی پنار سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اندر پریشن ٹھیٹر میں ہے پنار نے آہستہ سے کہا ۔۔۔۔۔اور انٹی ۔۔۔۔۔اب کی دفعہ حارث نے پوچھا۔۔۔۔۔وہ پریئر روم میں ہیں ۔۔۔۔انکل اندر ہرمان کو خون دے رہے ہیں ۔۔۔اور احد انکل سٹور سے میڈیسن لینے گے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ایک ہی دفعہ تفصیل سے سب کا بتا دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں نے پریشانی سے سر ہلایا ۔۔۔۔اور ایک سائیڈ پر کھڑے ہو گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خون کا انتظام نہیں ہو پا رہا۔۔۔۔۔۔۔رومان نے وہاں آتے ہوئے پنار سے کہا۔۔۔۔۔۔وہ اس کی بات پر پریشانی سے کھڑی ہو گئی۔۔۔۔۔۔۔۔آپ میرا خون لے لیے ۔۔۔۔۔۔میرا خون میچ کرتا ہرمان سے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے جلدی سے اس کے پاس آکر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔یہ تو پھر ٹھیک ہو گیا تم ایسا کرو اس روم میں چلے جاو ۔۔۔۔۔۔انکل بھی یہی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر سر ہلاتے۔۔۔۔۔۔اندر روم میں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
بلا آخر صبر ازما کےدو تین گھنٹوں کے بعد ڈاکٹر نے اس کو خطرے سے باہر قرار دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔ ہم نے پیشنٹ کو آئی سی او سے روم میں شفٹ کر دیا ہے۔۔۔۔۔ڈاکٹر اسے ہوش کب آئے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کے منہ سے بے ساختہ نکلا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تین چار گھنٹے میں اسے مکمل ہوش آحاے گا۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر کی بات پر سب نے تشکر کا سانس لیا تھا۔۔۔۔۔ناہید نے تو باقاعدہ پھر سے رونا شروع کر دیا تھا۔۔۔۔۔۔۔حوصلہ رکھیں اب تو اللہ نے آپ کی دعا سن لی نا۔۔۔۔۔۔۔آپ نماز پڑھ کر اس کا شکر ادا کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ان کے آسو صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھائی میں صدقے وغیرہ کا انتظام کرتا ہوں ۔۔۔احد نے اسد کے کندھے پر ہاتھ رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔میں بھی تمہارے ساتھ چلتا ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔اسد کہتے ہوئے احد کےساتھ چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان گھر کپڑے وغیرہ چینج کرنے گیا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔۔اشعر بھی ہسپتال میں ہی تھے ۔۔۔۔۔پنار کے پاس بیٹھے ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔عمر اور حارث بھی ایک سائیڈ پر رکھی کرسیوں پر بیٹھے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید دعا وغیرہ مانگنے پریئر روم میں تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے کمرے کی کھڑکی سے ہرمان کو دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بیڈ پر ساکت حالت میں لیٹا ہوا تھا۔۔۔۔۔۔سر پر پٹی بندھی ہوئی تھی۔۔۔۔۔ہاتھوں اور ماتھے پر بھی کافی چوٹوں کے نشان تھے۔۔۔۔۔۔۔۔شرٹ اس کی اتار دی گئی تھی۔۔۔۔۔اس لیے کندھے پر گولی والی جگہ بینڈیج کی نظر آرہی تھی۔۔۔۔۔۔۔پنار نے جلتی آنکھوں سے ایک بات شدت سے سوچی تھی کہ یہ انسان بیڈ پر خموش لیٹا نہیں بلکہ ہنستا کھلھلاتا اور شرارتیں کرتا زیادہ اچھا لگتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔تبھی وہی منیبہ بھی آگئی ۔۔۔۔۔۔پنار اب کیسا ہے ہرمان ۔۔۔۔۔۔۔جی اب بہتر ہے پہلے سے ۔۔۔۔۔ایک دو گھنٹے تک ہوش آجاے گا اسے۔۔۔۔۔۔۔۔منیبہ نے نم آنکھوں سے ہرمان کے زحمی وجود کو دیکھا۔۔۔۔۔ اور پھر سر ہلا کر کرسی پر بیٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔عمر کے ڈیڈ بھی وہی پہنچ چکے تھے۔۔۔۔۔۔اور رومان بھی آچکا تھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب وہی بیٹھے اس کے ہوش میں آنے کا انتظار کر رہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
آپ کے پیشنٹ کو ہوش آچکا ہے ۔۔۔۔۔۔۔لیکن ابھی وہ ٹھیک سے ہوش میں نہیں آئے رات تک وہ مکمل ہو ش میں آجائیں گے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے ہرمان کو چیک کرنے کے بعد کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی ڈاکٹر۔۔۔۔۔۔اسد نے ہاں میں سر ہلایا اور ناہید کے ساتھ بینچ پر بیٹھ کر اس کا ہاتھ پکڑ کر آنکھوں سے اسے تسلی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔انکل دادی سے بات کریں۔۔۔۔۔۔پنار نے فون ان کے سامنے کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے سر ہلا کر فون پکڑا اور کان سے لگایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اماں اب وہ ٹھیک ہے ۔۔۔۔آپ پریشان نا ہو آپ کی طبیعت خراب ہو جائے گی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ابھی ٹھوری دیر میں اسے ہوش آتا ہے تو میں اس سے آپ کی بات کرواتا ہوں۔۔۔۔۔۔
عمر چل یار سب کے لیے چائے وغیرہ لے آتے ہیں کب سے سب ایسے ہی بیٹھے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے ح
خموش بیٹھے عمر کو محاطب کیا۔۔۔۔۔۔۔عمر نے سر ہلایا اور اس کے ساتھ کینٹین میں چلا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁
ہرمان اگر تجھے کچھ ہو جاتا تو تیری موم کا کیا ہوتا ہاں بتا مجھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے اس کے ہاتھ کو اپنے ہاتھوں میں لے کے کر روتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اففف موم پلیز آپ روئے مت ورنہ میں نے ابھی یہی سے چھلانگ لگا کر آپ کی گود میں سر رکھ لینا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے انکی پریشانی کم کرنے کے لیے ہلکے پھلکے لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ناہید نے نم آنکھوں سے مسکراتے ہوئے اس کے بینڈیج کیے ماتھے کو چوماں۔۔۔۔۔اور پھر نا چاہتے ہوئے بھی باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سب آکر باری باری اس سے آکر مل رہے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر اور حارث ایک ساتھ کمرے میں آئے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیسا ہے اب تو ۔۔۔عمر نے اس کے پاس بیٹھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔تجھے کیسا نظر آرہا ہوں میں ۔۔۔۔۔ہرمان نے نقاہت زدہ لہجے میں پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔مت پوچھ جو تونے ہمارے ساتھ کیا ہے دل کر رہا ہے ابھی تیری دھلائی کر کے رکھ دیں ۔۔۔۔۔اتنا پریشان بھی کوئی کرتا ہے بھلا ۔۔۔۔۔۔حارث نے محبت سے پر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔ہممم, تم دونوں یہ مت سمجھنا کے مجھے چوٹیں اور گولی لگی ہے تو تم دونوں میری دھلائی کردو گے ۔۔۔۔میں ابھی بھی تم دونوں کو مزہ چکھا سکتا ہوں۔۔۔۔۔۔ہرمان کب چپ رہ سکتا تھا۔۔۔۔۔۔۔ابھی بھی ہلکی آواز میں انہیں دھمکانا نہیں بھولا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔ہاں ہاں ہم جانتے ہیں۔۔۔۔۔۔بس تو جلدی سے ٹھیک ہو جا۔۔۔۔۔۔۔عمر نے اس کاہاتھ تھامتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ہلکا سا مسکرایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ویسے ایک بات تو بتاو ۔۔۔۔۔کیا ؟تم دونوں کی مس پنار بھی آئی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔ہرمان نے آس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔عمر اور حارث دونوں اس کی بات پر مسکرائے ۔۔۔۔حارث نے اسے گھورا ۔۔۔۔۔۔۔دوپہر سے رات کے دو بج گے ۔۔۔۔تب سے وہ یہی ہیں باہر بیٹھی ہوئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے اسکی محبت پر سرکو دائیں بائیں ہلاتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔تو تم دونوں کیا یہاں پر آم کھانے آئے ہو جاو جا کے اپنی ٹیچر کو بیجھو ۔۔۔۔۔۔۔۔صبح سے میں نے انہیں دیکھا تک نہیں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے انہیں مصنوعی ڈانٹتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بڑا بے مروت ہے تو ۔۔۔۔عمر نے مسکراتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔چل حارث ٹیچر کو بھیجیں وہی ٹکور کریں گئی اسکی ۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے کہتے ہوئے حارث کو پکڑ کر اٹھایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور باہر چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”وہ مس آپ کو ہرمان بلا رہا ہے اندر ۔۔۔۔۔۔۔۔پنار جو صوفے پر دونوں پاوں اوپر رکھے بیٹھی تھی ۔۔۔۔۔عمر کے کہنے پر چونک کر اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔بلکہ اب سب کا دھیان پنار کی طرف تھا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے سب کو اپنی طرف متوجہ دیکھ کر ہچکچاتے ہوئے اٹھی۔۔۔۔۔نیچے نظریں کیے وہ اس کے روم کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
بھائی صاحب آپ نے پولیس کو کیوں کہا کہ آپ کی کسی سے کوئی دشمنی نہیں۔۔۔۔۔۔۔۔خلانکہ کتنے دنوں سے آپ کو ٹینڈر چھوڑنے کے لیے دھمکی بڑے فون آرہے تھے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔احد نے پریشانی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم جانتا ہوں میں ۔۔۔۔۔۔لیکن میں جلد بازی میں کوئی کام نہیں کرنا چاہتا۔۔۔۔۔۔تم پریشان نا ہو ۔۔۔۔۔میں نہیں چاہتے کہ وہ لوگ میرے بیٹے کو کوئی نقصان پہنچائیں ۔۔۔۔۔۔۔ٹینڈر چھورنے کے لیے کہہ رہے تھے نا۔۔۔۔۔۔۔تو ایسے لاکھوں ٹینڈر میں اپنے بیٹے پر قربان کر سکتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد کے لہجے میں ایک باپ کا پیار بول رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
وہ آئے ہمارے غریب خانے میں
کبھی ہم انہیں کبھی ہم اپنے گھر کو دیکھتے ہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار کو دیکھ کر ہلکی سی آواز میں شعر کہا۔۔۔۔۔بلکہ شعر کا ستیا ناس ماردیا تھا۔۔۔۔۔۔۔
پنار نے اس کی طرف بڑے بے ساختہ انداز میں دیکھا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔زرد اور نقاہت زدہ چہرہ لیے وہ پنار کی طرف محبت سے دیکھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔.

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: