Mera Ishq Teri Anayat Novel by Faiza Ahmed – Episode 29

0
میرا عشق تیری عنایت از فائزہ احمد – قسط نمبر 29

–**–**–

آپ وہی کھڑی دیکھتی رہیں گئی یا میرے قریب بھی آئیں گئی۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے وہی کھڑے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔پنار اس کے کہنے پر آہستہ قدموں سے چلتی اس کے قریب آئی ۔۔۔۔۔اب کیسی طبعیت ہے تمہاری ۔۔۔۔پنار نے چیئر پر بیٹھ کر اس سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔”آپ کو دیکھ لیا تو سمجھ لیں بہتر ہو گیا۔۔۔۔۔۔۔پنار پہلی بار اس کی بات پر ہلکا سا مسکرائی تھی۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کچھ کہنے ہی والا تھا ۔۔۔۔۔۔جب نرس اندر آگئی۔۔۔۔۔۔۔پلیز آپ باتیں کم کریں ۔۔۔۔۔۔نرس نے کہہ کر اس کے لیے نیند کا انجیکشن تیار کرنے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ اگر مجھے نیند کا انجیکشن لگانا چاہتی ہیں تو مت لگائیں ۔۔۔۔۔۔۔میں اپنی بیوی کو دیکھنا چاہتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے پنار پر نظریں جماے ہی کہا۔۔۔۔۔جس پر پنار اس سے نظریں چرا کر رہ گئی۔۔۔۔۔۔۔ہاو سو سویٹ لیکن یہ آپ کے لیے ضروری ہے ۔۔۔۔۔۔نرس نے اس کا اسکی بیوی کے لیے پیار دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔اچھا میں زرا باہر ۔۔۔۔۔کیا مطلب باہر آپ یہی میرے سامنے بیٹھیں گئی جب تک مجھے نیند نہیں آجاتی۔۔۔۔۔ہرمان نے اسکی بات کو سمجھ کر بیچ میں ہی ٹوک دیا ۔۔۔۔پنار دوبارہ اپنی جگہ پر ٹک گئی۔۔۔۔۔۔نرس اسے انجیکشن دے کر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔اب تم مجھے اس طرح دیکھو گئے تو میں باہر باہر چلی جاوں گئی۔۔۔۔۔پنار نے مسلسل اسے اپنی طرف دیکھتے دیکھ کر خفگی سے دھمکی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان ہلکا سا مسکایا ۔۔۔۔۔۔۔اور پھر آہستہ آہستہ اس کی آنکھیں بند ہونے لگی۔۔۔۔۔۔اور نیند میں چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اس کے سونے کا یقین کرنے کے بعد اس کی طرف دیکھا۔۔۔۔۔۔۔اور اسکی آنکھیں ہلکی سی نم ہو گئی۔۔۔۔۔۔۔۔افف میں کیا کروں مجھے اسے ایسا دیکھ کر کیوں برا لگ رہا ہے ۔۔۔۔۔پنار نے بیچارگی سے سوچا۔۔۔۔۔۔اور اٹھ کر باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جائیں بیٹا آپ اور ناہید گھر چلی جائیں میں یہی رکوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اسے روم سے باہر آتے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے ہلکا سا سر ہلایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔انکل آپ بھی گھر جائیں اور آرام کریں میں اور حارث آج یہی رکے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔عمر نے ان کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اسد عمر ٹھیک کہہ رہا ہے تم بھی جاو صبح آجانا۔۔۔۔۔۔عمر کے ڈیڈ خالد نے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھیک ہے بیٹا تم لوگ دھیان رکھنا اس کا میں صبح صبح ہی آجاوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسد نے عمر اور حارث کو شفقت سے دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔انکل آپ آرام سے آئیے گا۔۔۔۔۔ہم دونوں ہیں نا۔۔۔۔۔۔۔۔حارث نے بھی کہا۔۔۔۔۔۔انہیوں نے سر ہلایا ۔۔۔۔۔۔اور سب لوگ ہسپتال سے باہر چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ٹیڈی میں فریش ہو لوں تب تک تم میرے لیے سٹرونگ سی چائے بنا کر لاو۔۔۔۔۔۔۔رومان نے گھر میں اینٹر ہوتے ہوئے ہائمہ سے کہا۔۔۔۔۔۔۔جو لاونج میں بیٹھ کر نوٹس بنا رہی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اوکے۔۔۔۔۔۔یہی لی آنا میں فریش ہو کر آتا ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان کہہ کر اپنے کمرے کی طرف بڑھ گیا۔۔۔۔۔۔”ہائمہ نوٹس وغیرہ سمیٹ کر اٹھی ۔۔۔۔۔۔اور کچن میں چائے بنانے لگی۔۔۔۔۔۔۔۔رومان جب تک فریش ہو کر آیا ۔۔۔۔۔ہائمہ چائے اور سینڈوچ وغیرہ بنا کر لے آئی۔۔۔۔۔ٹھینکس یار ۔۔۔۔۔۔رومان نے اس سے چائے پکڑتے ہوئے ٹھکاوت سے کہا پُر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اب کیسی طبیعت ہے ہرمان بھائی کی۔۔۔۔۔۔ہممم، اب پہلے سے کافی بہتر ہے ورنہ میں تو ڈر ہی گیا تھا اس کی کنڈیشن دیکھ کر بہت ہمت والا ہے وہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔رومان نے سینڈوچ اور چائے سے انصاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔اور پنار آپا ۔۔۔۔۔ہائمہ نے اپنے نوٹس وغیرہ بیگ میں ڈالتے ہوئے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔بہت پریشان تھی وہ بھی۔۔۔۔۔۔۔۔وہی تھیں وہ بھی۔۔۔۔۔شاید تھوڑی دیر تک وہ بھی گھر چلی جائیں ۔۔۔۔۔۔رومان نے حالی کپ ٹیبل پر رکھتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ اس وقت رف سے حلیے میں تھی۔۔۔۔۔۔وائٹ ٹروزر ،بلیک شرٹ میں وہ بہت خوبصورت لگ رہی تھی۔۔۔۔رومان نے اس کا گہری نظروں سے جائزہ لیا۔۔۔۔۔۔۔۔مم میں چلتی ہوں اب سونے، صبح کالج بھی جانا ہے ۔۔۔۔۔ہائمہ نے اسکی جائزہ لیتی نظروں سے گھبرا کر جلدی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ویسے اچھی لگ رہی ہو اس سوٹ میں تم۔۔۔۔۔۔۔،رومان نے ہونٹوں پر مسکراہٹ روکتے ہوئے کہا
۔۔۔۔۔۔میں ہر سوٹ میں اچھی لگتی ہوں ۔۔۔۔۔ہائمہ نے اپنا ستواں ناک سکیڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔اچھا میں نے کبھی غور نہیں کیا تھا۔ ۔۔۔۔۔لیکن اب تم جو بھی پہنا کرو گئی میں ضرور اس کا جائزہ لیا کروں گا۔۔۔۔۔رومان نے شرارتی انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی نہیں کوئی ضرورت نہیں میرا جائزہ لینے کی۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہائمہ کہتے ہوئے پیر پٹختے ہوئے چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”رومان بھی مسکراتا یوا اپنے کمرے میں چلا گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ارے اسد تجھے مجھ بڑھیا پر ترس نا آیا۔۔۔۔۔۔وہاں میرا بیٹا موت اور زندگی میں مبتلا تھا۔۔۔۔۔۔۔اور تم لوگ مجھے گھر چھوڑ گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے صبح ہوتے ہی گھر میں رولا ڈالا ہوا تھا۔۔۔۔۔میں نہیں جانتی مجھے ابھی میرے بچے پاس کے پاس جانا ہے تو جانا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔دادی نے ضدی بچے کے سے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔اماں آپ کی طبیعت خراب ہو جائے گئی۔۔۔ اسد نے بے بسی سے کہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ہو جائے طبعیت خراب ۔۔۔۔لیکن میں جاوں گی ۔۔۔تم نہیں لے کر جاو گے تو خود چلی جاوں ابھی اتنی ہمت ہے مجھ میں ۔۔۔۔دادی نے روٹھے انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ٹھیک ہے چلتے ہیں ۔۔۔۔آپ ریڈی ہو جائیں۔۔۔۔۔۔۔۔میں اور ناہید جارہے ہیں آپ بھی تیار ہو جائیں۔۔۔۔۔اسد کہہ کر کمرے میں ریڈی ہونے چلے گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار اور عذوبہ کچن میں ہرمان کے لیے سوپ بنا رہی تھیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہسپتال لیے جانے کے لیے۔۔۔۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁🍁
دادی ٹھیک ہوں میں ۔۔۔۔۔۔اس طرح تو آپ کی اپنی طبیعت خراب ہو جائے گئی ۔۔۔۔۔۔پلیز کیپ کوائٹ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسلسل دادی کو روتے دیکھ کر بے بسی سے کہا۔۔۔.۔۔۔دیکھیں میں ٹھیک ہوں ،ایک گولی آپ کے بیٹے کا کچھ نہیں بگار سکتی۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کے ہاتھ پر ہاتھ رکھ کر اپنے سٹائل میں انہیں تسلی دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”ارے خاک ٹھیک ہو ایک ہی دن میں سوکھ کر تیلا ہو گیا ہے توں۔۔۔۔۔بیڑا گڑک ہو ان ظالموں کا کیڑے پڑے انہیں جنہوں نے میرے بچے کو ہاتھ لگایا۔۔۔۔۔دادی نے بد دعا دیتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتے ہوئے ناہید اور ڈیڈ کو دیکھا۔۔.۔۔۔۔۔۔اماں ہرمان کو سوپ پلادیں ۔۔۔۔ناہید نے سوپ کا ڈبہ بیگ سے نکالتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔. نو موم میں سوپ نہں پیوں گا ۔۔۔آئی ہیٹ دس ٹیسٹ۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے ناک سکوڑتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیوی تیری نے بنایا ہے ۔۔۔۔۔۔صبح سے کچن میں گھسی ہوئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔دادی کو پتا تھا اگر اس نے پینے سے انکار کردیا تو پھر کوئی اسے یہ سوپ نہیں پلا سکتا۔۔۔۔۔۔۔اس لیے پنار کا حوالہ دیا۔۔۔۔۔۔۔”ہرمان نے دادی کی بات پر ناہید کی طرف تائیدی انداز میں دیکھا ۔۔۔۔۔جنہوں نے سر ہلا کر سوپ پینے کا اشارہ کیا تھا۔۔۔۔۔۔تو اصولً سوپ بھی مجھے انہی کے ہاتھوں سے پینا چاہئے ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے دادی کو دیکھتے شرارتی انداز میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کو گولی والی جگہ درد تو بہت تھا۔۔۔لیکن وہ اپنی دادی کو پریشان ہوتے نہیں دیکھ سکتا۔۔ ۔۔۔۔۔ابھی وہ نیند سے جگا تھا نرس اسے ڈرپ پھر سے ڈرپ لگا گئی تھی۔۔۔۔اور زیادہ باتیں کرنے سے بھی منع کیا تھا۔۔۔۔۔۔لیکن ہرمان نے اپنے علاوہ کب کسی کی سنی تھی۔۔۔۔۔۔۔”بس منہ کھولو اور پیو ۔۔۔۔۔دادی میں نہیں پیوں گا۔۔۔۔۔۔بس ٹھوڑا سا پی لے ۔۔۔۔دادی نے سوپ کا چمچ اس کے ہونٹوں کے قریب کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔بس دادی اور نہیں پیوں گا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے صرف دو تین چمچ پی کر ہی باقی پینے سے انکار کر دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔پلیز آپ لوگ پیشنٹ کو زیادہ تنگ مت کریں انہیں آرام کی اشد ضرورت ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔نرس نے کمرے میں آتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اور ہرمان کو سکون آور انجیکشن لگایا۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے دیکھ کر منہ بنایا۔۔۔۔۔۔۔۔دادی پلیز آپ لوگ میری بیوی کو بھی بلا لیں ۔۔۔۔انہیں دیکھ کر میں جلدی ٙٹھیک ہو جاوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے نیند میں جانے سے پہلے کہا۔۔۔۔۔۔۔جس پر اسد صاحب بھی مسکرا کر رہ گئے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان میرے بچے کیا ہوا ہے تمہیں ۔۔۔۔۔۔۔سر خلیل نے روم میں اینٹر ہوتے ہوئے ہرمان کے پاس آکر بے چینی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔انکل میں ٹھیک ہوں ۔۔۔۔۔۔۔پلیز پریشان مت ہوں ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے انکی نم آنکھیں دیکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ارے کیسے نا پریشان ہوں میرا بیٹا کل سے ہسپتال میں تھا اور کسی نے مجھے بتایا تک نہیں۔۔۔۔۔اسد مجھے تم سے یہ امید نہیں تھی۔۔۔۔آخر میں انہوں نے اسد سے گلہ کیا ۔۔۔۔۔۔یار میں اتنا پریشان تھا کہ مجھ اس وقت کچھ نہیں سوجھ رہا تھا۔۔۔۔۔۔اسد صاحب نے بھی بے چارگی سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری تو جان نکل گئی جب مجھے پنار نے بتایا ۔۔۔۔۔میری کوئی اولاد نہیں ۔۔۔۔لیکن محھے اس کا کوئی افسوس نہیں تھا کیونکہ میرے پاس ہرمان تھا۔۔۔۔۔۔۔۔جس نے مجھے کبھی اولاد کی کمی محسوس نہیں ہونے دی۔۔۔۔۔اور آپ لوگوں نے مجھے ایک کال تک کرنا گوارا نہیں کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خلیل نے آنسو صاف کرتے ہوئے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔خلیل دیکھ اب وہ ٹھیک ہے ۔۔۔سوری یار پریشانی میں بھول گیا۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اس کے کندھے پر ہاتھ رکھ کر کہا۔۔۔۔۔۔ہرمان اب نیند میں چلا گیا تھا۔۔۔۔۔۔
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار باہر لاونج میں بیٹھی تھی جب اسے اسد نے فون کر کے ہسپتال بلایا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ ہرمان جب سے نیند سے جگا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار کو ہسپتال بلانے کو کہہ رہا تھا۔۔۔۔۔۔پنار کو شرمندگی سے ہوئی اسد سے یہ بات سن کر ۔۔۔۔۔۔انکل لیکن گھر پر بھی تو کسی کا ہونا ضروری ہے نا۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے نہ جانے کی بودی سی دلیل دی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بیٹا آپ اس کی فکر مت کرو۔۔۔۔۔ناہید اور اماں آرہی ہیں گھر۔۔۔پھر آپ ڈرائیور کے ساتھ آجانا ۔۔۔۔۔۔۔اسد نے اس کی بودی سی دلیل کو رد کر دیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔جی اچھا میں آجاتی ہوں ڈرائیور کے ساتھ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
پنار نے فون بند کر کے اسے ہتھوڑی سے لگایا ۔۔۔۔۔۔اور پھر ہرمان کو غائبانا ہی گھورا کہ ہسپتال میں بھی آرام نہیں یے تمہیں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پھر سر جھٹک کر چینج کرنے اپنے کمرے کی طرف بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
ساری رات وہ سویا رہا تھا صبح آٹھ بجے جگا تھا انکل کے آنے سے پہلے۔۔۔۔۔عمر نے ژالے کو ہرمان کی طبیعت کے پوچھے جانے پر تفصیل سےبتایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ہمم تم بھی آکر سو جاتے فون کرنا ضروری تھا کیا مجھے۔۔۔۔۔۔۔۔ژالے اس نے کے آرام کے خیال سے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سو رہا ہوں۔۔لیکن سوچا پہلے تم سے بات کر لوں دو دن سے تمہاری آواز نہیں سنی۔۔۔۔۔۔عمر نےچاہت سے پر لہجے میں کہا۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا جی اور اگر ابو نا مانے تو شادی کے لیے تو۔۔۔۔۔ژالے نے اسے ستایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ارے نا مانے تو کیا۔۔۔۔شادی تو پھر بھی تمہاری مجھ سے ہی ہو گئی۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا اور وہ کیسے ۔۔۔۔۔ژالے نے جاننا چاہا۔۔۔۔۔۔۔۔یہ تم وقت پر چھوڑ دو ۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا رکھتا ہوں دو تین گھنٹے سو کر پھر ہسپٹل جاوں گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم ٹھیک ہے خدا حافظ۔۔۔۔۔ژالے نے الودع کلمات کہہ کر فون بند کیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔”
🍁🍁🍁🍁🍁🍁
پنار جب ہسپتال آئی تو ہرمان سو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔یہ ابھی تھوڑی دیر پہلے ہی سوئے ہیں انہیں درد تھا تو میں نے ٹیبلیٹس دی تھی جس کی وجہ سے نیند زیادہ آتی ہیں ۔۔۔۔۔۔۔پنار کے پوچھنے پر نرس نے تفصیل سے کہا۔۔۔۔۔ہمم اوکے ۔۔۔پنار نے نرس کو کہہ کر سامنے رکھے صوفے پر نیم دراز ہوئی ۔۔۔۔ساری رات وہ سوئی نہیں تھی اب اس کا سر نیند سے بھاری ہو رہا تھا۔۔۔۔۔پنار نے ایسہی آنکھیں بند کی لیکن اس کی آنکھ لگ گئی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کی جب آنکھ کھلی تو کچھ دیر تک تو وہ سوئی جاگی کیفیت میں رہا ۔۔۔۔لیکن پھر نظر سامنے رکھے صوفے پر سی گرین سادہ سے سوٹ میں ملبوس پنار پر پڑی ۔۔۔۔۔جو ایک طرف سر گرائے نیند میں گھم تھی ہلکا سا نیم وا ہونٹ اسکے گہری نیند کا پتا دے رہے تھے۔۔۔۔۔۔ہرمان کی آنکھ ایک دم پوری کھل گئی پھر اسکی آنکھوں میں وہی چمک آئی جو صرف پنار کو دیکھنے پر آتی ہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہرمان کے ہلکے سے ہونٹ مسکاے۔۔۔اسے ایسے سوئے دیکھ کر اس کا دل چاہا وہ اٹھے اور اسے محسوس کرے ۔۔۔۔لیکن اپنی بے بسی پر وہ صرف ہونٹ بینچ کر رہ گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ایسے ہی پنار کو دیکھ رہا تھا جب ڈاکٹر اور نرس اس کے روم میں آئے۔۔۔۔۔۔۔۔کیسے ہو ینگ بریو بوائے۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر نے خوش اخلاکی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فیل بیٹر ۔۔۔ہرمان نے بھی ہلکی۔سی مسکان سے کہا ۔۔۔۔پنار کی آنکھ آتی آوازوں پر کھل چکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔اور اپنے ایسے سونے پر شرمندہ سی صوفے سے اٹھی۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر اب اس کا معائنہ کر رہا تھا۔۔۔۔۔۔اور پھر نرس کو کچھ ہدایت دے کر باہر چلا گیا نرس بھی ڈاکٹر کی بات پر سر ہلاتی ہوئی باہر چلی گئی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر کے جانے کے بعد ہرمان نے پنار کی طرف ہاتھ بڑھایا ۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر اسے کے بڑھے ہاتھ کو دیکھا ۔۔۔۔۔اور پھر پتا نہیں کیسے اس کا ہاتھ تھام گئی۔۔۔۔۔ہرمان نے اس کا ہاتھ پکڑ کر اسے اپنے پاس بیڈ پر بٹھایا ۔۔۔۔۔اور فرصت سے اسے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایسے کیوں دیکھ رہے ہو ۔۔۔۔پنار نے اس کا اپنی طرف مسلسل دیکھے جانے پر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔بس ایسے ہی۔۔۔۔ہرمان نے بھی اسے چڑایا۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ مجھے میرے ایک سوال کا جواب دیں گئی ۔۔۔۔۔۔پنار نے سوالیہ نظروں سے دیکھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے آپ سے اتنی محبت کیوں ہے ۔۔۔۔۔۔۔کیسے ہوگئی مجھے آپ سے اتنی محبت۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے محبت سے اس کا ہاتھ ہونٹوں پر رکھے کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔پنار نے یاتھ نہیں کھینچا ۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے کیا پتا یہ تو تم جانتے ہو گئے ۔۔۔۔۔۔پنار نے بھی اسے دیکھتے ہی کہا۔۔۔۔۔۔۔۔ہمم ۔۔۔۔۔آپ بھی میرے ماتھے پر پیار کریں ۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے محبت سے اس سے فرمائش کی۔۔۔۔۔۔لگتا ہے چوٹ کا اثر تمہارے دماغ پر زیادہ ہوا ہے ۔۔۔۔۔۔۔پنار نے اسے گھور کر کہا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اففف درد ہو رہا ہے۔۔۔۔۔۔پنار نے چونک کر اسے کراہتے ہوئے دیکھا ۔۔۔۔۔۔کہاں ۔۔۔۔۔کندھے پر ۔۔۔۔پنار نے پریشانی سے پوچھا۔۔۔۔۔۔نہیں دل پر ۔۔۔۔ہرمان نے مسکراتی نظروں سے کہا۔۔۔۔۔۔۔تم باز نہیں آو گئے اپنی خرکتوں سے کچھ یہی سوچ لو کہ کس حالت میں ہو۔۔۔۔لیکن نہیں تمہیں تو ہری ہری سوجھ رہی ہے۔۔۔۔۔۔پنار نے آنکھیں نکالتے ہوئے اسے ڈانٹا۔۔۔۔۔۔۔ہرمان نے اسے ہلکا سا جھٹکا دیا جس سے وہ اس پر جھکی تھی۔۔۔۔۔۔ابھی اتنا بھی کمزور نہیں ہوا آپ کا شوہر کہ اپنی بیوی کو پیار بھی نا کر سکے ۔۔۔۔۔۔ہرمان نے کہتے ہی لیٹے لیٹے ہی اپنے ہونٹ اس کی تپتی پیشانی پر رکھے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اففف یہ میں کیا دیکھ رہی ہوں لگتا ہے ہسپٹل نہیں بلکہ غلطی سے کسی کے بیڈ روم میں آگئی ہوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ردا نے دروازے پر کھڑے کھڑے ہی اپنی آنکھوں پر ہاتھ رکھے کہا

–**–**–
جاری ہے
——
آپکو یہ ناول کیسا لگا؟
کمنٹس میں اپنی رائے سے ضرور آگاہ کریں۔

Leave a Reply

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Subscribe For Latest Novels

Signup for Novels and get notified when we publish new Novel for free!




%d bloggers like this: